Skip to main content

Full text of "Dars e Nizami Darja Sabeaa Maoqoof Alai 7th year"

See other formats


2 
را فك 


شح ادر 
وک و 


e 


?2 
55 
او م 


۰9 


27 ہی می 5 


ےج کے e‏ 


+ e 
5 
۹ 
2 ا‎ 


۴ 
ا و ےم 
ِء 


دا ہا 


و د 
بن 


"یں ھا 


3 
1 


ا بج اقول امقول س الو 
موا ا ترا رصا" دفو 
انی اموا ست لام یا اوت شغ ر 
فاو لت : 
تا اع رام دج 
:ايب صل اموا ست طامياءداوج شی لہ 


ناشر: 


۱ 2 ۰ 


تجا موا یس ٹلام ا اوت ٹسل زر 
ون ؛ 041-8715856 


بل طول 


ا ماب سیب فلوج تق رم يارو وسكلوةالمصائح جلدسوم 


افادات 007 رت مولا نا جرز ابرصا حب دامت برک آم 
لی اون 0 ........ والقعره ش۵ للع 
رار O‏ ايك برار 


اورف 22 9و0 لخلا امبو زر 


ار ۱ س0 مكلت العا رن تل چام اسلا مي ايراد تسم لآ باد 


اوارواسلامیات 

ادارة حرم دارالاغا عت کب ناد ميري 
لاور | مب سدحشید کرای | من مذ شان ١‏ تباي 

ے2 دی تقب عات ادار تا ليهات اش رپ 


مکی می راسلا م اسلا مآ باد 2-2-0 +9 
متب ف رید ییا ملام پاد کت سیداصشبیداکوڑوتلگ 


مر شید يرا وپنڈی 


اشر ف التو تمك تس ری جلد ایک دای سے اکر عر صہ کے و تھے کے بعد يك پار ی ےء اتی 
اخ رکاباعحث ایک نے ىہ ار باکہ اشر ف التو تي يبل دو جلرو کی بنياد حشرت و الد باد ت ی سر فك اما اور 
رورا در طلم سل كلت ہو ے نوش جھ, لیان مکو المصاتخكاجو حص تی ری جلد يمل زیر بث آنا یاوه 
چوک کان عرص يبك حطر کے زیر در سر تماش لئ اس کے متلق حضرت کے االىياطلبم کے اہے طور 
پر ضر سے بذ مین کے دورا نکیسے ہو نے فوٹس لاش بسیار کے پاوجوو تيبل عل کے۔ اس مل کے مل 
کے -ك ایک سال ضرت نے مكلوق جلر نا كدرل خود اسیا ی رکھا ا کہ اب نر کے افادات سا ھ٠‏ 
سات کے چا یں لین کپ ا یکاہ کم حصہ بڑھاپاۓ تھے (وہ پھ کاب الادب سے جب از ف الو 
جلد ٹا كاب الا طم سے شورع ہو رہی )ل آ کی ديد یو عناصلا ی اور ا ای مصروفيات 
او ربالخصوص ہر نیا كا آي ين اس در یکو چا رک كت می حائل م گیا ۱ 

اب نے مہ ہو اہ اشر ف التو کی تی ےی اور اس کے بح کی جلو لك نیاو تحضر ٹک الد تقار ر 
کیا ےکی بها با قا عر تيف کے انداز سے لکھاجاۓے اس کیو ری کے علاوه تی ری جلد کے لئے حر 
گی طرف ے سے کے ك / کے زیادہ مزاسب بھی می تماء چناخجہ ب كام برادرم مولانا صفق محر ماب ہیر 
رحاش کے ڈے لكاوما بھی ین تىكام کے ق٥‏ کہ اکم یا ذمہ داد کی مر ےا نوا لکند و ں بال 
دكن ديك عر کک تو جمد اللہ اقزر کے پاتھوں ب كام مناسب ر قار سے عار پا کن بعد عل شرع ت نی 
و ارہد وسر سے نايف كام شر وع مو ےکی وج سے د فأ ركان ست ہو ےگگیء اس لك حش احا بک جو سے 
مو ىك اس ط رح نے تنك جل دكا معامل. التذاء ہی یش ر ےگا ءاس سے ی کے لے احق رکا ملک جلمد خالا 
در سی تل ٹیپ د ییار ك دسح م رحب ومو نکر کے شا کر دیاجائے۔ ایت اء یش فو احق رکو ای مجو یز کے 
قو لك نے بیس ال وچ سے تددر کہ خوداور اق سا ہک نا ایک طالب علا كام ہے ابی در ک قار بر رب 
کر وانبجھ بيت ايك ناكار وطالب ع مکوز یب نی دبتا۔ چنا لیک عر ص تک احقراس ہجو كونالنار بعل نكام 
كي ست ر قاری د كر آخ كار مجبور أل ہجو کو تو لكرنايذاء چنا نہ اپنے بذول کے مشور ے سے متام خد اہے 
0 كيو زشر ومسودے کے قفري يأ تر ہ سات ا فى کے كك ہو نے ل :ال سے آ کے ”لزي کھانو ں کا کم “سل عنوان سے احق رکاککعاہواے۔ 


کا م ) 

كام شرو رك واد ا گیاء ا بکاب الا لق کی صد یٹ ہر ۲۷ م كلكا حصہ فو احق رکا اھا ہو ا سے اس سے ۲ گے 
ٹیپ د كاذ كاد دست مزب کے گے اج کے ور کی موو ول _ 0 

ان ذو نک لسلون حت ایز ب نشخ یکرانےء انیس صا فک کے مرجب وو نکر نے اور 
ضرورت کے موا ب حوالہ جات کے کاکام بماد سے دوست مو لان مق سهاد امہ صاحب زید مهم استاذ 
عد مث چام دار ال م۲ ان یل ادون شل پام اسزامی 311111 
سے اجام دیا القد تھالی ا یل الي جذاس قر عطافربائے۔ 

بی ماز کہا ال لے سنانا يذ کہ ایک فو تس ری جل رك تیار ی یش تا خی ری وج يج عل آ جاے 
دور ےار سم مج اس ناکارہکی در ی تقر بیروں کے ٹا ٹ کاب ند لان ےکی بور ی معلوم ہو جائے۔ 

اس لہ مل من ر ر چ إل امو رکا حاط رکھاگیاے : 
)۱( - کوک ہر صد ی کا ع لی من بھی بالالترام وكيا سء ہے مقن عمو] مكلو کی شر ںای مطبو یر 
ادار قال رآ ن والعلوم الا سلا می ےکر اہی سے لیاگیاے- 
(۴)----۔ پر زیر بحت عد بی کات جم کی د ےو اكيا .»ابنذ ای۳۷ احاد بی کا جم نذا تق رکاککھا ہو اے 
اتی اعاد بی ٹکاترجمہ کی احق ر کے درو سک یکیسوں ے لہا اا 
(r)‏ -- سر جما الہ کے اناز يل ہ ركاب کے شر وع ٹیل ایک سوط مققد مہ و گیا نسل میں مو ضورع 
سے متحلق اسدام کے موی م رارح اور اصو لکو پیا نکر نے میں اور نض فا کیو ں یاف راطو تفر پیا کے ازالے 
ک یکو شک کے 
(١‏ سیت ی الامكان تی رات بب لكر ےک یکو شش کی سے لیکن بہر حال على مراحدث مم کی قزر 
اصطلا ی اسلوب آ جانا اگز مي ہو جاسے خصو صا اسل لئ بھ یکہ زیادوتر حصہ ور ی تقر مروں بر تل ے اور 
دور ال درل اصط1ا ی انراز آ آ ا ایک فطری امر ہے۔ دوران ی الى لجرا ا ليك 
کو شی ے۔ 
(۵) سے مد ٹک کر کے دران لیے باح کی نے یں جن اسر جم تما 
کی کتابوں میس تيبل متا۔اییے موا تح برعلا عص رکی آرا کوان کے مق رد لا تل کے سا ھ ذک کر وی گیاے کہ 
سا بل طلب جو ور حقیقت “بل کے قن علااورراجنمايان امت ہیں کے سان ؟ حا نبل اور ا نکی تفيل 
کی علی و تق زی گی عن ل زین نے نے مار ون :نف زی بات وا و جا ےکن سكل عن ای 


(ا) زيادهتري درو ٣١۲٢‏ اھ کے ہیں۔ 


سے ذياده نقطہ نظ رک كنبا ہے اس ےا ےنا یک قال 2 داس يرايها مودت موك دوس رادا رکھنے 
بی پر اعترا ‏ کر کے بے اعت دا مكار کا بکیاجائ اميد س کہ ان مباح کو ای تناظر يبل د زیکھا جا ۓگا۔ 
کی بھی الى كام میں خی اک یکو تاج كار جانالیک فط ری اھر سے خصو ص ]اس جل رک جھ يس یک 
كا طالب عل مکی طرف بت تی خایوں ور کے امكان کے سے کان ہے۔اس لیے ال عم سے میری 
سب سے ادر خواست بے سج هكم وهال میں چو لوي تسا سوس فر يل برا وکر م اق كوا سے بر 
فرب )اقرا نک نون احا ہوگا_ 
E TO‏ 
اصلا نك لور یکو کی سے فاص طور ہے تق ری انداز کے جملو كو تر ےی اسلوب کے قریب تر لان ےکی 
کک یکو لک یکئی ہے بر كاذ بال يان اور تم کے انداز یٹ جو فرق ہو اہ اسے باللیہ خت ني سکیا اکا 
ہو سلتا ےک کی بول پر ملو ںکی سا خت وير داشت لین حرا کے زو قي اطیف برو رار اں ہوء ای طرح 
"وال جات در کر نےکااندافز بھی شاید يور کاب میں کجاساں نہ ہو الى طر کی انض وو ريق ناميل بھی 
حول ہو تی ل اميد ےک اللى زوق نفس شون پر نظ رکھت ہو ےا یں نظ راندا زک یں گے _ 
آم میس ال جلہ سے استفادہکر نے والوں سے اين لے »سخ دال درن با و ص وال ماد الد یٹ 
حضرت مولا نا نز برا صا حب ر حم الد ( تمن کے زیر ساي ہی كام اجام پیا ج ) کے سے دعا فرماتے 
ر ہیں پا نف وص مولن “فق سپاو ار صاحب کے لے مج نکی نت او رن کے بی راس جک رمام 
رطام بہت مشكل تھا۔ 
زیر 
٢ر‏ مضان ا با رک ۱۲۲۵ھ 


©..... کھا كما ف كل شرك حيرت 3000 ES SEES‏ 


©...... صوفياء کے ابر ارت ارلهم .... أُسسسس PADS‏ 
...دنع يل ایک ے زيادهم ع د تر شس RA E ES‏ تن 
6 ب كوا نو لكا م 701.9009 
...لم یذکھانوں کے جو ازی مطلوہییت کے د اا كل ET‏ مس کت 
٭.. طلب لذ تک نا ين يرك کے وا كل سس مس اتی رس ےس 92 
©...... صو ہکا اہر كي لذات 1[ ت12 
©......اسلا مكاقلق آراب E N BL CC AS‏ 
...)نل کے ير صو آراب 111101010101012 
6 "تر ار شاوی آداب اور شر ی اراب کی ا یا رکا ہی رن ا NEE‏ 6 
0 536 اسلام عل آدا بک اہمیت اورا کا تم رحب ومقام ESASA‏ 


......کھاے سے ييل الث کاتا م لينا 1ذ[ذ[1[ذ[1[1[1[ز[1[ز[ NE ARES‏ 
...او انام لین میں یں او فو اير NE‏ 
..کھانے کے شر وع شی الث ہکاتا م ین کا ا 71 RO SCAR‏ 
©.....اشكانا مكن لفظوس بس لیا ہاے ع شس ا e‏ 
...اش آہتہ ہی اوی اواز ے OO O OOOO‏ 
...اگ رش رو میں سم الث دکہنا بجول ہاے 0ج0 
© 7 بق ھانے شل ای کک ني كان یا كل" کن ES‏ 


...ا سے ہا سے ےکھانا ESSE ESEREN‏ 
o‏ س شیا ہن وجنات ک ےکھانے ہے ےکا مطلب LEE SSO‏ 
......کھانے میں تی كيال استنعا لك حال ؟ 0 0 
..کھانے کے بعد ا لليال چان دس سیل سس سم سا جس ص۶2 
.....افلیاں چا ےکی حت ری مص جم سج سی یھ 
©...... كيال چا ےکی 2 تيب امس E‏ سیسات 
...کر اہو الہ اٹھاک رکھانا E O e‏ مو ہے 
۵.. وعن ابی جحیفة رضى الله عنه قال قال رسول الله عه لا اکل متكمًا 
ضور اتر س ونه کے کیک اکر کیا ےکی و چ Eee As‏ 
0..... .کیا ادب حور از س عو کے سا تخد نای ؟ O a‏ 
..... مھ اکھان ےکا مطلب EP O‏ 00 
..... 0 لكا كا ۶ مسجم سس سس یسمش سر بک 
مو اب کس صورت مل ے؟ 012 جروجچجھوو وھ ا 
.کھانے کے وت ٹین کی بین کیا مو ؟ امو ا ھن کات جم اسان 122 
.....عن قتادة عن انسء قال: ما أكل النبى عه على خوان الخ 
گل الفاظ ASR bE TRE‏ 
6...... ا جزول کے استتعال كر ےک وچ ا SEERA‏ 
...کسی چ کو ضور ان رس ما نککااستعال ‏ ےک نار aê‏ 
...تچ رک یکا نٹ ےکا 2 گی سر a O‏ ص16 
©....ميزكرى ب ركها_ذكا عم ا ا ا OA OO‏ ری تر کے و 
©......وعن ابی هريرة قال: ما عاب النبى صلی الله علية وسلم طعامًا قط الخ 
کھان ےکی جز میں عيب میا لی ےکا تم م 
06 3 کھان ےکی تر لف .: ا کر تی سر سس دح مز ری کس ا ھا 
©......وعنه كان رجلا كان يأكل أكلا كثيرا فاسلم فكان يأكل قليلا الخ 


انز لك لخر او 7-2 7757755۶ س۹ '" 


لثمت 


6 585 عد بی کا مطلب او ر ای اشكا لکا اب 00000 
.عد بث نل و اق ہگ کا ے؟ ET SASS SA RS‏ 
©......وعنه قالء قال رسول لل مل طعام الاثنين كافى الثلاثة الخ El‏ 
0......وعن جابر قال : سمعت رسول الله عله يقول طعام الواحد الخ 

ایک تتعار اور ا یک کل 09.وت 
©......عن عائشة قال: قالت سمعت رسول الله عه يقول التلبینة مجمة لفواد المریض الخ 
©....تلبيع اور ای کے ثوائر OR‏ اا 
©......وعن انس ان خياطا دعا النبى صلی الله عليه وسلم الخ 

ضور ازز یں ی ۂک رکد و ين ر تیا a E‏ 
a E RR RS 22‏ 
6 .7 رھ نود مد شود ٦‏ ۱ 

وشح تچ ری سے کا فک رکھانا می الکو سی سو سی ھا اس رم و ۱۳۴۹ 
6 0 كي گی ٢و‏ چ کھانے سے وضو ج ے a‏ تی ۳۰ 
© وا وعن عائشة قالت: كان رسول الله عه بحب الحلواء الخ ۱ 

ضور لک عو اور شه ر يينر جے ا 
©......نعم الادام الخل الخ 

رک اھا ما نے عسمسہ سس ھن و ا 
۵... الکماۃ من المن وماؤها شفاء للعين الخ 

تین بیش سے سے ا “ّ9۶ 1 ٘""۹+, 

6 حب تھی کے واي ا ا ا ا FOS RASA RN A‏ 
0 3 كب ىكايالى گھوں کے ے شفاء سے مر ا اح تک 
6 - عن جابرٌ قال: کنا مع رسول الله عه إلى وهل من بنى إلا رعاها 

انمیاء کے کر یاں تج ان میں کلت GO yS‏ 
©..... حضوراكرم مکی توا اور سا ہکرام سے ےکی Cee eA‏ 
©......نهى رسول الله عه أن يقرن الرجل بین التمرتين الخ 


تین کے سے نت کن ےکی 1 ز ر E‏ سرت ۴۰ 


وہ ا کے بح رك دعاء 00 0.0009" 
لفظ یر اور ناكا عراب ا کا و کی لی ل ار ا کے 


کمائےے يكيل با تد رعو AES‏ 
کھانے سے يبد ب تيد د تو نامر تتيرى ہیں ا کے ہوا کر کک کک 
و تق سد یس مس مان 


وط ٹیو وہ جا نی 
مکھانا چا نے اور میا ہو ادال کی کی وجوه سی ضس 
5 گے رووا کی کے مب یک ا ا 
i‏ قور aS E‏ 


.عن النبى عه قال: : کیلوا طعامكم يبارك لكم فيه 


کھاناناپ فو لكر باو یی ل ا ROS‏ 


أن النبى َه كان إذا رفع مائدته الخ 


إذا اکل أحدكم فنسى أن يذكر اله على طعامه الخ 


کھانے کے در میا نکی دعاء SSeS‏ 


.أن النبى َه حرج من الخلاء فقدم اليه طعام الخ 


02210110001 


رڈ 


00- 2 .3ت 


وپمعمممر میم 


رر ےر یہ 


E 


سی ۱۵۳ا 


1017 7 


ھن 


6 کے خی راف کے نے سهدي کیا ےکا عم 90 6 19.. 
©..... يون کے جل کے اتر ا 
©.....وعن سعد: قال مرضت مرضا أتانى النبى صلی الله عليه وسلم الخ 

جلت پر تقد رک نکی وجو سی بن RIOD‏ مت ا فو 
0 -- فی کی ری قلات 0 E‏ ا 
©......وعن ابن عمرء قال قال رسول الله عه وددت ان عندی الخ 

کو رہ عد بی کی سند مل اختلاف LA AS SAR‏ 
6 5 وعن عکراش بن ذؤيب قال: أتينا بجفنة كثيرة الثريد الخ 

الیک نو عیت کےکھان ےکو ان سا نے سح لمانا مم اا 
o‏ 7+ وعن عائشة قالت: کان رسول الله عه اذا أخذ اهله 

تما کے وائر 210010111010119 IAF‏ 
©.....قال سول صلى الل عليه وسلم العجوة من الجنة 

العجوة من الجنة كا مطلب 70000 جح تہ AF E‏ 
---------------------- الفصل الثالث سا اا 

بات الصیافه 

-----------------------القصل الاؤل 0 
©......وعن عقبة بن عامرء قال: قلت للنبى عق إنك بتعثنا الخ 

ضافتكا E‏ ا ل 88 
...یف راجازت چ زل ےک صورت شس ما ن٤‏ م 0.۰.09 
..... جا تز ہکا ن اور اس میں وسعرت O AE AS‏ 
مد یٹ مل چا اه راد اا RNR‏ 
عد یت مل جن دن م راد یل یاچار دن ؟ کر مس ہر ا کن 
. .جن دن کے بع رکماتا صد تہ ے IVD SOSA RR‏ 


هسل 


6 2 می زا نک مر یع کے ران کے نا سیر ھا E‏ 
o‏ 1 وعن ابی هريرةء قال حرج رسول الله صلی الله عليه وسلم ذات يوم أو ليلة الخ 

صد بث شل بیا نکر وم وات سے مجو س آل EA SER ES‏ ریز 
O‏ کی مشكل سابتلا مکی صورت ٹیل تكد مدکی ضرو رکو لک رک پا سے چکپچھ ظظهظ1 0 ۹ 
©......جت کے وفت بے کلف احیاب کے يال کھانے يخ کے لے جاتا asena‏ 
©..ن فت ت ہو ے ل ا رنااورمم و اعدم موجوو 7 “ورك 

كيلع ہمان تمہ رانااور مانا کبس سح سس سس نک ٹا 
...مان یکا یک لطیف ارب NC‏ سس 1 00 
...ما نکی آم يباك سے کی خو شی کااظہا رکا EE‏ نا پک و 
...ما نکاکھانے ہے کے سیل مس می ز با کو مشو روو ینا 0 E A‏ 
0 ا برقت ب شر ارارم POS SALANE SS‏ 
0......عن المقدام بن معدى کربء النبى صلی الله عليه وسلم 

ممل الظفر Fea SE ESS‏ 
o‏ 586 كل نامك وور رعا ور ر ا 

غلب حال E EUSA 0 A‏ 
...ار کھا ای اور ن ےکھلایا ‏ تا كل دعاء تاس ین کی و 
...كرات دعاءاخباریاانثاء اس سم EER‏ ہس ھت تاب OS‏ 
©.....عن أبى عسيبء قال: خرج رسول الله صلی الله عليه وسلم ليا فمربى 
۔.۔ مرش ے مترو مسال 0 E‏ ",یٹ" 
9 ھت کے بارس میں سوال موك 00۶ھ OA‏ 
...سے کلف ااب سے اپنی پت رک جيز ما کے مس حرج نہیں سس سس ریسافت 
٭ ...اگ رکھا ان ہکھانا رو ت می زیا نکو ييل اطلا کر د يق عابت بصو9 .0 مم 
o‏ بک سس یروصم رم حي با مات ۱ 

دسر فاك قاذ يهان دز SS‏ 


©......ج یکھانے بیس جلد کی سے فارع نے وانے کے لے آراب ۶ ,پھر 
©......عن ابضيحح العامرىء أنه أتى النبى َه فقال ما يحل لنا من الميعة 
تک یراک ثم پا کال اورجواب E GS ODE‏ 
۵... وعن أبى واقد الليثىء أن رجلا قال: یا رسول الله اتا نكون بأرض فتصيبنا 

بها المخمصة الخ ۔ مي كب طال ر ے؟ اس سم 1 اا 
© وت مکی مق ار س حلال ہو ے؟ Rae E‏ 


9 -]) الال EEE‏ سے 


©......وعن جابر أن النبى صلی الله عليه وسلم دخل على رجل من الانصار الخ 

کک او راک حم EEF CR‏ 
©......نهى رسول الله صلی الله عليه وسلم عن الشرب من ثلمة القدح الخ 

بر تج نکی ٹوٹ م ل چک سے مد اکر بی ےکی انع ت کی وجوہ 920710 ص2 
0 یا وعن کبشةء قالت: دحل على رسول اللہ عه فشرب من فى قربة الخ 

یر ےکا من ہکاسٹ ےکی وجوه Ee E N‏ 
6 - كان النبى صلی الله عليه وسلم یستعذب له الماء من السقيا قيل الخ 

نر ے اور امھ پا یک ا کیت اکھد 0 1[ سس تہ 
© النبى صلی الله عليه وسلم قال: من شرب فى اناء ذهب او فضة الخ 

بر تن و غير وی سالس لبن EES eS aa‏ 
83 .... حورا لمعته تت سا نو ں میں پای ہے ے؟ و Ra‏ 
©..... عل تر ضغ ماس سس سک ea‏ سوہ یہر 
©.... جین سا سول میں یٹ ےکا وس سس سس مرا الم ا 
۵ .. دوساضوں میں کا گم نم 0 ےھ ۶ط 
o‏ 7 یک مرح پک م ات رض ا 1 1 1 ا تہ ا ا 


٥‏ 0 د تن کے اندر یھ وک مار ن ےکا عم وو دو تود لس وا واب ا ال 
©......ي إلى يد مک ے وق پچ کک مار نا الم اشامت حم کو 
...یز ےکومنہ کک پا بنا رت ےس رم ےم یت سس ۲۳٢۵‏ 
...كيزا ےکومنہ کیا يك وجده.. 000 0 .۶۷۹ 
هب ل رض 100 3 27 ESS‏ 5و 
...یز ےکومنہ این ےک كم EN RS aa‏ 
0 مد روو رکا و موا تو سک کک کل 0<“ * سی رک ا 
PFN esasen E 9-0 e 5 o‏ 
a o‏ مکی کے جو لكو يي کو طیعت نہ ها > وي خلافی شت نیل دی سو ۲۳۱۸۸ 
o‏ 7 کھڑے ہوکر ب ر FES SD SAS‏ 
@...... مل تیر ض بطر ان2 ع سی سم a e E O‏ 
©......اعار مث چوا زک وجو ي 0 ا ا جوم ۸۷ 
©...... عل تار ضاران نا O o O‏ 
و...... کل تیر س بطر ا ن يڻ سس aE‏ محر E‏ 
0 کر تے کے مکوج N OO POT‏ 
©...... سو اورا پان دی کے بر توں می ںکھانے پپی ےکا 1 ل POF sess‏ 


© 7 زان ہب یا مفضض میں پک م . سے ای کت 57 کپ بق 


0......إذا كان جنح اللیل او أمسيتم فكقّوا صبیانکم الخ 

كر شن بعد چرزللنوفردل کو اہر کا ےک جثیت ...... PORE‏ 
.. .را تکوسوتے وف در وازے بن کر 20 BSA‏ 
© ...... بر تو ںکوڈھای نكا 2 ...7 
۵ .. ذا سمعتم نباح الكلاب ونهيق الحمیر من الليل فتعوّذ وابا الله الخ 

را کی بيك وج ت FN ASS SAAS‏ 

مقدمه كتاب اللباس _. 

©..... ال وى سل ہے یاد بی ؟ ا 1 1 1 1 1 1 ااا 
©...... يبا اصول :لپاس سار مو 0+07 1 ak PO‏ 
o‏ کت بال یھو ٹا مو ےک وجہ سے ساترث مو و کا ل ا و نت 
o‏ 2 جع مکی كلت ر #1 يان کک حوس ہو RRS‏ کات 
...یس ج ےکچ ااشر عاض رو ری نہیں اگ روہ نظرآ 0010102328 ل 
©...... وو لیا جو جست مو ےک وجہ سے ساترتہ مو رٹ ظا سے سج اط 
©......ووسرااصول :لبا ل ياعث ز شت مو مس و ا 71 
E ©‏ ز نتيا كيز نت مطلوب ہو نے میں نخارض 2 ,007 8ب ESE‏ 
..... اذ ل(ساددگی کا معن EE DR CLR‏ 
60 ا زیت نم موم ہو ےکی صور یں 55 10 FEN‏ 
...8ز یت مود ہو ےکی صور تبن ۸7017+ 00001 ااا 
...کی تیک نقنت کے اظمار کے ےز من اقا رکنا......... ET‏ 
...تيب قلب کلم کے لے ز نت افقيا رکم ےت نت ا2ھ 
0...... زا3( ار کی )نہ موم مو کی صو ر تمل FA RAS‏ 


PLES AR aR 7 57 6‏ 
@...... تی رااصول :ساد FEO SAAS GRE a‏ 
۵ فاصول :طا فف 855 "77۳ھ ء"ٗےت"رم 
0...... ہار ت اور طا مت SARA‏ امو FEDS‏ 
...پا کچ اں اصول :ار اف سے با FERN OSS ESE‏ 

.. پہلادر چ ر لی دوس ارچ أسائلٌ, ا ا ا ا 
0 ...... چنا اصول :تب والالياس SARE‏ 1 29 
©......سا نوا اصول :نرک لپا ی شرت 2 1[ سن ےئ 
...نرک اتنام زينت مطلوب ےن ہک رکیز منت 000000 ا 
©... وان اصول: سبو لت والالياان م 55353075501006 A‏ 
©...... ضور جر ةلو ثيش يند ہو ےکی وجده د O‏ 
...اہم اول ھت سس ساس اک تید س اسم 9ط 
©..... شلوار میں یک سب ت ادا گی سیت زیادے Sa‏ 7 
©..... وال اصول :تب والا پا ا سا ماس سج سس کو سے AR‏ 
.بت یل ظاہ ری امیت وس تمس سی ساس یس مس مھ ا ا 
...کون ساي منورع ے ؟ وس لہ سرت ھت تحت نت 
©..... کر اخحتیا ریا مور شس مشابہت اا کر ای۴۸۸ 
...اقتا ر ا مور جو خی راغتار یک رع میں ان س کے 1 سس مالس سم رت AAS‏ 
۵ خا رى امور ملكي E‏ ساس ام بس سلیمہ 1 ۳۸۸-7 
©...... ارات ے لق امور اختيار ر س کے PARE oo‏ 
6 کے اورت سے متحلقا مور اخخقیار یہ میں 5ب TAN CE RS A‏ 
...کا فقوم کے شعار س "ثب سس مس ا 1 
o‏ 18 کم کے فير شعار س کے ااا کا 
6 ا مر یی 0 E A‏ 


©..... کو نكاسم سح ا FS O‏ 
©..... لون میں مفاسر 969 0*0" نے 
©......يإجاض اور يتلون میں فرق تہ ماس ل و 
...... یا کا لیا ہو ےد ہو نے ے کی فرق يذ ہے E‏ 00ھ ل 
۵... لہا f‏ مو شی رت O E‏ 
©..... سال انا بڑیی نا زک مہ دار کے 0۷9000000" 
کتاب اللباس 

امام یں سے [لفصل الاؤل ع سس چھ سض 
۵. کان احبّ الشياب إلى النبى صلی الله عليه وسلم أن يلبسها الحبرہ 

حر وپپند مو ےک وجوه lS‏ ا نے ےم 
0 .. جماليالى زوق خ كرناشر وأمطلوب تبس O EO‏ م 
©...... 1ب میگ رکون سالبال زياده يشر تی ؟ ل PR Sa‏ 
6 .أن النبى صلی الله عليه وسلم لبس جبّة رومية ضيّقة الكمين 

۶ و 00000007 رو 
o‏ 7 کنا رکی مصنو جات استعا لكر ےک عم ..... 70س -ع یی ت۶۴ 
 .‏ . .کفار کے طني يناوث والى صنو حا تک كم م 
.يل أستيو ل والاليان سے سس شس ساس 1 حسم ۷ 
ج...... ضور من کسی ليا سكو نض ببننااس کے مسنون ہو ےک علا مت ہیں سم 
0...... کان وساد رسول الله صلی الله عليه وسلم الذى يتكى عليه من أدم الخ 

وسادهكا ی ٤‏ يي ااا اا 
©...... ست اور ا لکااستمال ۴ وس ا E‏ 
٭.....ہ ترمیں لکل کی يجاب سادگی اخقیا رک نا سی 0 0 و 2.0 
...لاس او رکھانے ہے و خی ر وس زیادو سبو لتك مہا سے سادگی اور كشك کلم می رھ 
۵أ رسول الله صلی الله عليه وسلم قال له: فراش للوجل الخ 

مد یٹ میں تی نکاعر و قصود تيبل بللہ رور کی تلن افو اع میا نکر با تصورے سص وی ص:.:(:.ص۶۳۶۸ 


6 ا ال عم مکی ضر و دمت »دوس ری مکی ضرور تہ تس ری مکی ضرورت موس ار 1 
......گھریلوسامان کے لئے ضرورت کے در جات SS‏ ہے و و 
...شوپ رکو یوی کے سا تخد سو نا ایاگ ؟ 0 E E‏ 00پ 
© أسفل من الکعبینمن الازار فى النار 

یع نا ا OT‏ تسس مسر سس یی ات 
9.. سبال ازا رکا مطلب مھ اھت کا مس سس 1 ESSN‏ 
٭.....اسپال ازاركا كم E E RES‏ 
©......اسيال زا رک صو رتل .. مات اح تس a O OO‏ 
©....اسيال ازا رک حرمت معلول بلعلدے مم e‏ 
©.... رتبری سو مھ مت سے کس او سی اش سس م 
©...... اسيل ار مو رع مو ےکی علت ككب ري ANSE‏ ہے 
x‏ 5 نهى رسول الله صلى الله عليه وسلم أن يأكل الرجل بشماله الخ 

اشتزالی لص رک يبل تير ا ں نے ما a‏ 
©...... اتال ال مک دو ری تیر 1 12111111111 Re‏ 
0......حتباء فی ثوب واحد ¥ ن EIA O RD GED‏ 
۵ ...من لبس الحرير فى الدنيا لم يلبسة فى الآخرة 

مر دو ل كيلك د ایس ر مم يبنا خر ت مل ر م سے حرو كاذ د ليد سے RIO NO‏ 
© 2 ھی رسول الہ إل عن لیس الحریر إلا موضع اصبحين أو ثلاث أو اريع 

Eê 11111111 1 08 22 

8 می سس PASSES sa‏ 
...ری اقام جس من تسس بت سم سارہ ان نت 
6 کت آ کل ر م ہو نے کاحدار اکشریت پر سے i EEF OSL‏ 
O‏ 3 عفر کیو جہ سے مر دول کے لئ رکم يبنا 0.07 ا ا کا ا ا 
6 تک عفر ری وج سےکیسار م ینتا ہار ے ؟ 000008 ااا 


عل 


...رر میٹ كيزا کے عاشیہدغیر ویر م كان E SE‏ 


...لاع زر چا ہو نے کے لئے شرط 0 EBES ASO‏ 
....بلاعر جار انگ یکی مق دارم چا ہو ن ےکا وت وك ت7 
8 ...جار انگ یکی مقار رش مکی اجاز تک وجه ب كز تا سک می 77“ 
x‏ 2 مردوں کے لے سو نے کے بن استعا ل كرنا O RES‏ ا ا ا ا 
o‏ - رم سك ستر پر چن ےکا 2 E O‏ 
©......أهديت لرسول الله صلی الله عليه وسلم حَلَّة سيراء 

یبر ا کی تفار جو سس مہ کُُِّمّم یی سھھمسک ۶25 
۵ .وعن أسماء بنت أبى بكر : أنها أخرجت ججبة طيالسة كسرانية الخ 

تی اور جب یش فرق ہری م ٹہ عم سم ھا سس ھن مو ہہ قرم 
@..... .کنا رک اش اسما ل کر ع EES SR‏ 
ج...... حضو ر قرس کا عل اور عر و لہا يبنا کے ےت ۹ بب 
©...... تیار ض» کل تار EE SRSA aR EIEN‏ 
٭.... .اللہ تھاٹی کے و لين کے سا تہ تلق رکنئے وای ا شیا سے ت رک حص لکرم PERS‏ 
©..... تبرکیات میں افراطو تر را 00000000000 اج 
© ضور چا رس رہن فقین كفن کے لے تيش وی EE OS‏ 
o‏ تو وعن عبد الله بن عمرو بن العاص» قال: رأى رسول الله عه على وبين 

٠‏ معصفرين الخ 

محص رکا ن E‏ دببب 001011‏ ا 
...محص زک ری سیر کسی اا ال سوسم 
@...... ور تقول لے محص رکا م ا ER A‏ 
9 ... مردوں کے لی حص را 2 سے سس ند یح سی مد PE U‏ 
------------------ الفصل الثانى ا ٹ۳ 
6 سا كان كم قميص رسول الله صلى الله عليه وسلم إلى الوضغ 


آ كبا لكك مول چائۓ ؟ اھ شس سی ہے سی 50ط 


0 
0 


7 


د 


جسیم E AA‏ 
سسجت : وم ا 


7 .ےا ا ا ور سے سرت 


وعن وا فطل 2 اله کل عن عشر الخ 


essa 


aeons 


ا 00 


ل ا 00 


مومع عه مم سوه و ووو ووه و ووم وم العامة 


فومووة. 


MIN 


0.....وعن عائشةء قالت: كان على النبی عه ثوبان قطريان غلیظان الخ 

تع مو بحل میں جات OS‏ ےس سی ہی EE‏ 
©......راحت اور آسائی والا پا وس لہ 0 شس شس 906 
©.....وعن دحیة بن خليفة» قال : أتى النبى صلی الله عليه وسلم بقباطى الخ 
بت یک ڈوک E A Oa‏ 
o‏ وعن أم سلمةء أن النبى عه دخل عليها وهى تختم فقال اليّة لالييعن 

او ڑ صن یکودوم رج بل د سبي ے مالع كل وجوه 000001 007000000000 ور 
---------------------- الفصل الثالت. 200 
©......قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: عليكم بالعمائم الخ 

مامكا ن 00000010 
@...... کا ےک سلون موا ..... 010 ان 
©...... سنن شر ع سح عاد س عاد ےک كم 5ڑ ھٰ "ھ۶ 
...ام رارشادگیءام ار شاد یکا كم 00000000007 رر 
6 -- سفن شر عبہ اور سن عادیہ ل فرق رو ر کے 0 EF‏ 
هع قاے ل رت تان اعارهية اظاس ری ا امات ا ا ا ا العام ا 2 
.... تخ دطرق ے اماد يثك ضف ز ائل ہونا نی E EO AS Oa‏ 
©...... فضا تل یش ضيف عر ہک ول ہنا 9 0> E e‏ 
a 6‏ ايل ويس بر رک ےک ورت بس 1 ز1 1 ز 1 ھا سر 
©...... وی شی مو لوا ج؟ 1101 1 1 ا 
0 1 س رکو ڑا نکی صو ر ہیں 000 .جو 
©...... عام پا تر ع کا يقد ا لمان مس EA SAO ARS‏ 
۵ ما ےکا ریک ھا كاسا ر OE O E SE‏ ا 
..8ھومال سے یا ےکی سنت ...... 000 A RN‏ 
وعن أبى مطرء قال: إن عليًا اشترى ثوبًا بئلائة دراهم الخ 


حشرت على رمیا تخا م عن کی سا دگی اور توا شح a‏ سی 6ھ 


60 5-5 شك اور قاع کاچ 07 رو 
©...... يلكا مق ر ست راو رز ت ے باستحا خط و وا الع FATES‏ 
0...... من لبس ثوبًا جدیداً الخ - 

ياس ےکپ ےکو صد ق ہکر ےکی فضيات OEE‏ 00000 
©......عن جابرء قال : لبس وسول اللہ عأ ما قباء دیہاج أعدى له ٍ8 

رم 1 7 1 
©......اعلل اور نمق لياس يبنا ااا ٠‏ 
6 5 من أنعم الله عليه نعمة فان الله يحب أن يرى أثر نعمته على عبده 

عيره رکال اس ا ساس شر E RSS ED‏ 
i ©‏ وعن ابن عباس رضی الله عنهماء قال كل ما شء شئت والبس ما شئت شئت الخ 1 

اسراف اور گی ر ے ازاز eA SE‏ کرس EO‏ 
yT 5-5 o‏ 

سفیر لبا سفي ركفن SSSR‏ ا SERA‏ سس POO‏ 
© و یکیوں او رکب بنوائی ؟ مخ و ا اس EERE‏ 
...اگوی الع شیع تيار سر 2 ز 2< 2 2 2 ز 0 2 سرت a‏ 
ه...... ضور زوک اك و یکاگید شس سس ل ER‏ 
00 تولك رار SNE‏ اھ چس چو و ہو 
...نكي غلك اگ و شی ۴ص و _* 
٭... او شیک اش ہیس ا ساسح سب مس مج ج5 
0 تا اگوی میں جر ر سول الث کک کاانداز 00 اا 1 
۵......اگو یک عم کت و ا مر ہا نت کت ما سا 1 کہ کم 
.. فی رذی سلطان کے لے جا اتد یک اگوی م . PE aS aaa‏ 
o‏ کر پا تر ىاو یکی مقدار VES ARAS RRs‏ 


{IO 


...کون سے پا میں اگوی بی ی ہے ؟ ا a‏ 
© و یکون س اليل میں کنن ی ۓ ؟ RASA‏ 
a00. ٥‏ اگوی يمنتو دن گی كس طرف ہو؟ PONE‏ 


ات بی صلی اله عله وسلم قال لرجل عليه حاتم من شب 


0 
6 


......أن رسول الله صلی الله عليه وسلم رأى خاتما من ذهب فى يد رجلي الخ. 
ےسا سو رو ہے رمسسوووواسسبسبییسع1ہت272۵[0 
...... حطر ات کاب ہکرام کاجذ بر اطا عت ... تس ات ران ظ5 


ول اورک ےکا یا 07 Meee ES‏ 


0 ور ےط ا ا ES SA‏ 
.كان النبى صلی الله عليه وسلم یکره عشر خخلالي . 
مر عمل زیر PINS eee a‏ 
اولاد شل و قق ہکا عم ..... 0000 وھ 
...لا تدخل الملائكة بيتا فيه جرس الخ 
بجر سس سے اعت جس نمس مت سك ا IRD‏ 
..وعن عبد الرحمن بن طرفةء أن جدّہ عرفجة بن أسعد قطع أنفه يوم الکلاب الخ 


سو نےء چان کی کے مصنو گی اعضاءك پو نرکا ری سک ھتہ ساب س6 


...أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال: يا معشر النساء الخ 


سو سن کے زل رات صر ول پر ام اور گور نوں کے سك چا E e‏ 
...كور نول کے لے سونايي ےکا جو ت احاد بیث سے RS‏ اا 


...اہ و تا ٹین کے زمانے میس کور تڑں کے لے بلا كار سونايي کار وار ۳ئ بج 


...سو نا يي کے عم جو از وای احا ذ ےک جا بات AEDS‏ 
0 ب يكل ضرورت ا یت ہی ا ا یی ل ا وو یی 
©.... و جات 98 0 ای ےت [ [ [ EO‏ 
سي سب تفل انفائت EEE‏ 


7 أن رسول الله صلی الله عليه وسلم كان يمنع اهل الحلية والحرير الخ _ 
نی و نے سار 00007" 
...أن رسول الله اتخذ خاتمًا فلّبسه الخ ۱ 
و بصو رت الو شی ز بیعت کے ے يبننا 00000000000007 
...ئو تھی کے مشخو لکم رن کا مطلب فان سس ےت 
7 پا ہت 09" 
...متام و لا یت اور متام يدت مل فرق ...: 97ھ ای 
...عام حابم ری الث تخا م ......... E E‏ 
و عق مالك قال: أنا أكره أن يلبس الغلمان شيًا من الذهب الخ 
نا با بد كور ویر ينان مُشسم E‏ 


0 


0 


١ 5‏ 
سے کے میس سی سم حم سے سے سے سے س سے کے سے سے سے کے کک سے س ۹ سے لم لم سے سے سے سے سے سے لد سے سے کے شید سے بم سے 


.عن ابن عمرء قال: رأيت رسول الله عة يلبس النعال التى لیس فيها شعر 


000 


مب حم سے س سه 


FFAS 


LA 


۵3 استکٹرو من النعالء فان الرجل لا يزال راكبا ما انتعل 

مزووذات الر قارع كوج نیہ کت رق 1 E E‏ 
©...... ماص اورؤر الم مشر یک تفصیل 111119 و 77 
©......إذا انتعل أحدكم فليبداً بالیمنی 

چو ےکااد ب وال طرف ے يبننا PERSO‏ 
...اک رام کین می دابل ہا بكوتر بد یا اص مس ECA‏ 
© يمشى أحد کم فی نعل واحدة الخ 

لے مل عام عاد ت کے خلاف ہیک ينانا CEOS‏ 


...هى رسول الله صلی الله عليه وسلم أن ينتعل الرجل قائمًا 
كس م وك رجو حا يبنا ںا ےس ا PEAS‏ 


بالوں کو درست کرنے کا باب 


©......عن عائشة رضی الله عنهاء قالت كنت أرجل رأس رسول الله الخ“ 
٭. . .حاات تش بل ماک ہکا بدن نایاک کیل ہو تا TE‏ 
© فتمہاءکی عقت “و 
۵ ......حالت اعتکاف میں ییو یکا تج ھکلناعمتو دل RO N‏ 
...ماشہ کے لئ دخول کچ ر کور ے نل سم کس ھت کک تھا س ھ۲۳۶۸ 
©..... يول مهدع بابر ركتة مو ب تخد باکر سهد م كا مكرنادخول مس یں POs‏ 
0...... قال رسول الله صلی الله عليه وسلم الفطرة خمس الخ 

امو رفطرت‌اوران مل تعر ارکااخلاف 0 .“و 


©...... خا فک وجوه A‏ 9۷“ تو 


ع ۵ تج 

©...... ضار الراك كات چس مھت - ۶ 9 ےمم 
o‏ ات ع فطر 9.0 110700010 PRA‏ 
...و ر فطرت سے ما کل ہو وال اکر: تات کان وی ا تر صن سل وک..... ۲٢۹‏ 
٥‏ امور فط رت م تلور و تلور واو PON a‏ 
9 پہلاامراشان وجا ساعد سوط تبط ادوم Oe‏ 
@...... غت ےکا مطلب 0.00 1 سس سی می مس ا 7 لهم 
...رد کے غت میں عمتیں ES SR RE‏ ا 52۵6۴ 
©..... يبل كلدت نات دومرىی كارت قلي بوت تی رى كدح مكيل شورع ٹٍپ,/ۃ2 
٭.... غت عم مت رس ل 
زف د تخ کی مقرار ہم ایض تہ اج ھی را بای سس سرت را و 59۵ 
@...... تہ د مر ل ہونا جا ؟ 000 1 1 r‏ 
(x‏ -- د باوخ سے بل بہجرے ۸7 و 
ف تک ہما و یدن خت زیا ہر ے FON SSR‏ 
٭... بڑی عرس سل سے تدم 0001010101010 ااا 
...پرا ی ون NAA a‏ ا CBE‏ 
© يول کے خت ےک عم 1 ذ1[ 1 1 1 ا POL‏ 
...الا تہ اد (زیرناف پالو احم ) یماح سس سس تا 
رو ن ESASA‏ سس سس ا 
.... جات کا ن 9000007 9تبب ب 00101013021333 1 ارت 595 
... مقعد کے الو نكا كم ےت 0  ِ‏ ےب رر 7 

...علق الاي كارت /- - 2 کسی مض سی مر تہ وت 
©......زي تاف پال ںکوصا فک ےک صو ر یں E Se e‏ 
©..... تی اغارب( يجن مو بج كان ) CIEE ٠.‏ 0 
وہ 56 شار بک ن کو کا کک ا ا اد ا لی ہے ا کک ا ا ۳ 
©...... لض اثارب کے امور فطرت بطل وال ہو ےکی وج 000 0 CE‏ 


0 ا تسالغار بک عد SRSA‏ الما کے و NE‏ 
...... مو بك شاط يقد ٣۷۷٣۷۷‏ جز 
...مو جج اس تر تیب ےکا ن چا س ؟ موم سو مس a E‏ 
0 5 تله مر نار (اخ نكاغنا سس مسب بب-000010 0 0 ا 
6 مع ا خخول کے نع کل كيل بج کی صورت میں و ضواو رتس لا م 00000001 0 00 
...اع ن کاخ ل ب .اہ 0 اا و 
3... الف خیب سے ناش کاٹ ات مق ا رشن ا ا ا تس وت 
© ...کون سے دن ناش کا با پیل ؟ ہ اس ظجہ م مس مس جس 5ھ" 
© ا 0000 ا 9-90ص یا یی ا 
2 .....شخالفوا المشركينء أوفوا اللحى وأحفوا الشوارب ظ 

داڑ شمی 2 ]رط ادق کالفا 07و +۸ ا PEPE‏ 
ق..... تس واڑ گی رسک ےکا عم نیس يكل بڑھان ےکا عم سے 0 ا وو ہے ا 
© 5-5 دا ھی بذعا کا عم مض مزالت مش كين کے ے تيل 90 ص - EF‏ 
...ب ی مو ل دا کا ےکا م yT‏ 
© الیھود والنصارئ لا یصبغون فخالفوهم 

خضا بک كم می ا سا اہ ھت ا ا کا 52۹ 
©... ..كان النبى صلی الله عليه وسلم يحب موافقة أهل الكتاب فيما لم يؤم الخ 

فر نك ن 000" 
© ...... اکتا بکی موافتت الت AA ASE‏ 
©...... سرس الول کے اام 000101 ا 0 اا 
©..... فرق شن مانک انا نے سم ام ات ND‏ 
..؟ق؟ھھافگ ر کے در میان ٹیش هو ساسا سس ات رت ھت سج AE‏ 
و ا زياده با يال کی پت يده ہیں کرس ری سد راس ای بای اس ڑھسا سی سرت TAF‏ 
© .رانک کے پخیر بال رکھتا PAP SESERRA‏ 
...ر منڈوان ےکا گم ما ا ل e‏ شہ ۸6 


متجپگی یا مین ے با لكا نت ما یر رت ےر ےت 
e 6‏ عن نافع عن ابن عمر قال : سمعت النبی عه ينهى عن الزع الخ 

ی زروت عناأور يك ر سے دیا ENE ees‏ 
...لد کے پال موي عنا a‏ 
o‏ 5-75 قال وسو ال صلی ال حلي وسلم امن ال الف ھین من الرجال لع 
x‏ 5و کور فول اور ردو کا ایک دوسرے کے سا ۶ کر مشا ہت اتا رک نا CAN NS‏ 
o‏ 0 مور اق س حا کے اعت فرمان ےکی حیثیت el CE NECE IESE‏ 
©......لعن الله الواصلة والمستوصلة الخ 

بالول یل بے ت رکا ر یکر نے واليال ...... م ا ھن ت59 
©......لعن الله الواشمات المستوشمات الخ 

مصنو یز یس تک چند نا جاه كليل کک سھ اباد لصوا تی ۴۹9۵ 
©......الوشم ءالو اشير .2م م رت ھا مت سس جٹھ سس جن 
...ر ےی ایرو سك بال اكير ا 1[ سے 
کت لن سس یت ا او 
RR BO 6‏ و ORA‏ 
٭.... تير غق ا ہک ن ہاڑے؟ E SSA E‏ 
o‏ 3 عن عائشة رضی الله عنها قالت: كنت أطيب النبى صلی الله عليه وسلم الخ 

طوراقر یں کاخ شبد لا 0 Ba‏ 
a 6‏ عن نافع قال : کان ابن عمر إذا استجمر الخ ۱ 

1 ش حضو راق س ماد عون لین ان و a SOC Sa SS‏ ۵۰۳ 
-------------------- الفصل الثانى EE‏ 
© می وعن يعلى بن مرةٌ أن النبى َيه رای عليه خلوقا الخ 

مرد کے ےزنا دخ شو کم 0 a E a‏ 
۵ طیب الرجال ما ظهز زيحه الخ ۱ 


ردان اور زت خو شب وكا فرق 0018 1 ا ای 


ATO 


9 .کان رسول الله صلی الله عليه وسلم يكثر دهن رأسه الخ 

حضو ر اتر س چا کاک ت ل ا o‏ 
...2 جیا پڑا 108 1 1 E E‏ 
©....عن أم هانى قالت: قدم رسول 0 اله 

حضو ر اق ر س عو کے یسو مہا رک با رسس شس 
3)..... ور ا7 ETON‏ ار ا ما ولاه ا 
٭(... ‏ نافاق "مھ سس کک دمعوست 
o‏ 5-8 عن عائشة رضی الله عنها قالت: إدا فرقت لرسول الله َه الخ 

تضور اتر ں کی بات کی ایت ھی ھت A‏ 
o‏ ا قال رجل لفضالة بن عبيد ما لى أراك شعٹا؟ الخ ۱ 


زيادوناز و ثتنت اا کال شس شی A SAE‏ 


۵۰۴۰۸ ..... 


E‏ بی 


o‏ 0 ھی ابی هيقل پل چو وٹ وچ وت چو سو جو چس چس سر 


يكون قوم فى آخر الزمان یخضبون بهذ السواد الخ 


یگ 111111111100100 


وعن عائشةء قالت: كنت أغتسل أنا رسول الله صلى الله عليه وسلم الخ 


وفروء لی جم 111111111101098 


نعم الرجل خريم الأسدى الخ 


0 ل‎ Ss 


وعن عائشةء أن هندا بنت عتبة قالت: يا نبى الله الخ 


عور کو ہن د کی لان کا تم ea‏ 
كود تکوہا تيد میں اتد نےکر بيد یکر نا چائ بل یی 1 1 1 اک کی 


كان رسول الله صلی الله عليه وسلم إذا سافرء كان آخرء عهده الخ 


ھن 


7ل 


......إكتحلوا بالائمدء فانة یجلوا برغ 
دده و الفاح ع الموج الوه اله اس ما تھا سا ساس اص رہ۵۴۸ 
...اھر کے وائر مس سم دس ھی سو سس ےم ھا 
9ع دکاز يعنت کے لئ سر مہ لگانا لود ھت ج سک۸ 
...ر اور جدير میڈ يكل س كس مع تھانت اد رت ھک 
©......من كان يؤمن بالله واليوم الآخر فلا یدخل الحمام بغیر إزار الخ 
حمام بی وال ہو نے سے مانت OFS‏ 


0......سئل أنس عن خضاب النبى صلی الله عليه وسلم فقال : الخ ۱ 
ام ان ا ا سی کت ااا وق 


رس یں وعن عثمان بن عبد الله بن موهبء قال : دخلت على أمر سلمة الخ 
ار یہ اس ےا سم نل 7 


© 0 لا تدخل الملائكة بيتًا فيه كلبٌء ولا تصاوير ۱ 
تو موا ےگ مین (ر مت وا )فر څح ثيل آتے ۶ 01 
ضا رونت ارك لوي سو سرت سمخ مس سس مت سس اف 


۵..... مہ با تس تو اور کک ے ؟ O AR RS‏ 


تا - 


۵ وعن عائشة, أنها اشتريت نمرقة فيها تصاوير الخ 

مركا ن ES‏ وش شس سی سھس ا 0 
...منرت ما شک ہن ادب CRR‏ اد عم ھت SBN SS‏ 
3 0 وعنهاء أنها كانت اتخذت على شهوةٍ الخ 

لفط بو یس دی ار NSE‏ ا 00 
0 کت توي وال پرد أو يهار ےک وجوہ 000008 0 "و 
o‏ وعنهاء أن السی تاه خرج فى غزاة فاخدت نمطا الخ 

تقو مروانے يرد پ اظہارنارا 02 OE SRA SES‏ 

..... حت عاكث کے واقعہ س اخلافرویات a‏ ھدب کا 5۸ 

۵ یہ واقعہ ایک ہار موا تعر د پار نے سے ا ا ات 
۵ ومن أظلم ممن ذهب يخلق کخلقی الخ 

سب سے با ام ساس شس ش جج سس لا مس E‏ 
©......أشد الناس عذابا عند الله المصورون 

مور اام لجع وات ا مم ا و ما 811 
۵ من تحلّم بحلم لم یرہ الخ ۱ 

تو ناخ اب بیا نکر نے کاگناہ ۳ٌٰک99۳۳ کل E‏ 
...کسی کار از حا ص٥‏ لكر ےکاکناہ PEE‏ 111 کسی 520 
©...... لصوي کے احكام 7177 1 ,. BE‏ 
©...... تسو رکاج ازها ب کر نے کے كي بات 090 A‏ 
©...... موب کے باد میں فقہاء کے اقوال مر سس سس سس سامح مت اھ5 
۵ے جاك چر كل ضور کی کی ےر کے ای OED OS A AR‏ 
6 و عار ی اور تاپا تیر ار تو رکا تم 18 ا 
0 5 مام اعضاءوالى لصو رركا عم ايا سس 22ھ 
*....چیوں كحي وا ىريك م ےس سس RE‏ 
.27-220 1 1 لہ بت ات 


...جو تسوپ ايانت وال چک یر ہو مل SE A A RS‏ 0000 
یر سای دار تضو کا تم مو سھم مر 
.... لوي کے پارے میں مك جد ير میاحث ... کا ےا BE a‏ 

6 5 کر ےو ال تقوب کا جم و ا و EE‏ ااا 

...... صو بناناء تنو تالور رکمنا . O ala DS A‏ 

0 شاخ ت کے لے تو سیکا كم ..... 9 7 0 

...... ایک انم اصول OOS ES ENS‏ 8 
50 یہ صو حصول تن کے لے سے 2 0ھ" تو ھت کید 

MRE 211111 كوم یوک وج سے عم میس ی فکب موک ..... انا ا ا نے ا‎ i 

اخیا ا تک ناويك گم 11 a‏ 

6 بت :کیا موم اتا ءکااصول تھا مات کے سا كد فا امک ب ے1 
۶٦‏ پٹ ؛ئ 0 مس رت اک سس ری تا 
ا تو رک حقیقت 1110 و ۹26 
..... آڑلوکیس فک تقیقت 9 
...... وڈ کی قیقت سے سس مس سم سرچ سی ای ےا 


ET 7 o‏ ع نہیں و روچ ہا ہے 
6 ۲ وک Le 0 00 O E RN‏ 
6 و دي واد لوك ديكا م a‏ ا ا و ل چا ہی 
...سر ؤر ل ےکا مطلب 0 مت فا 
...... ایک اور فق نظر A O‏ 
...... ایک غ وک اصلارح نم سس جس سمش سی ELS‏ 
7 درد کے ایی ورمعل سر رم ما سے سے E‏ 


2 95 

رخن بک ون یش واکزی رم ایا اک ضرورت ې نے NEON ERS‏ 
...لابا رم کی تو برد یکنا ۶ رر 
0۵ ...... خوف فت ہکا مطلب یھ شس کس ا مم ت1 
6 جج تقو ری والى تقر یبات میں مک م 1[ 141[ 1[ [ کک TASA‏ 
٥‏ 57 1 کن امک رک ب وجب ہو تاے ؟ جار اه شر ھا کہ ھا 
عدت لف ا را یصو 
©......ن رسول الله صلی الله عليه وسلم رأى رجلا يتبع حمامة 

کوت بازی اور یر ندع رک ےکا م ا ا ا ا ا ا dl e EO‏ 


مس چٹ الفصل القالث جس سس 


©......وإنى اصنع هذه التصاوير الى آخره 

لصو ے سا زیکاپپشہ ga aR‏ ا اس ا IPOS‏ 
©......وعن» أنه سئل عن لعب الشطرنجء فقال: هى من الباطل الخ 

o E OOO E 0‏ 
©...... تز نكا شوت EIR‏ 0 اا 
(x‏ یی ورزش کے کش قفر 07 لجالج 00 ا ا زی اد 
o‏ 7 خيش کے مواق خو یکااظمار 00101010171772 1 اا 
...یل اور تفرع میں شش رگییابندیاں سس تسشن سو 969 
©...... بض كيلول میں كلت مفاسد 7 0 9پ a‏ 
3.... شرع ار وححي نكا حم سس مھت اھ رسس 0 اا 


صاحب ملک بو عبد الذد حم بن عبد الذد خطیب ترب ےکتاب کے شرو كناب ال م کک الى 

اعاد یٹ کر فربائی ہیں ہج ن کا تان ایمانیات اور عقا ند سے ہے۔ ب ركذا الطہار ۃ سے يبال تک زیادو ت ایی 

اعاد بیٹ لای ی ہیں جم نكااحكام و سال سے ان ہے۔ يبال كتاب الأطعمة سے امك اعاد بي ثکاسلسلہ 
شورع قرا سے ہیں جوز ت گی کے ملف امورومراعل میس آواب ے تحلق رکھتی ہیں 

مزاسب معلوم ہو تاس کہ اعاد بی ٹک شر سے يبل مون با بکی مناسبت سے چند ب یھی 


- يا محل جاک ام بك عاذ يعاو راق مفیاشین ل کے عل یرت م صل مو کے 


(١کھا‏ ھا نکی شی یت :- = 

انا كل زع اسل سر فق وأو ےک تیار ےء اس مقف رکو ی صل 
1 ور کاو وو راد و ل ےس رر 
عاد تكتى ہاور آخر تک تار كي ہوگا؟ ا لے ہن توائی نے نما نک وک الى نس عطار اق یں 
شن سے وها يقاذ ن رک یکو ہیا تا ے اور قات و صحح تك غو ونیا ان کے تحفظ اور بحالی ل مد ليق > پھر ا أو 


: عم س ےک ان فشو ںکواستدا لک کے ايز ند یکوبا كك اور صجت و قور تكوبحانر کے ۔ ا 


سےکھانے پٹ ہک اشیاء کی ہیں کر ا تحت ۱ 

اجازتبللہ رح گداٰے: 
کل من طِيْبَاتِ ما رَرَفْنكُم۔“ 
ہکا ی دی ہو گی کیزن انم لكماة- 


(1) سور ةالبقره: 0 ` 


5 8 
دوسرى مہ ار شادے: لوا مما ررحم اله ولا يعوا غطُوَاتِ الشيعان_^ 
٠‏ الشکادیاہو ارز قیکھاواور رطان ے تقل ترم يرت چاو 

لوا وَاشرَبُوا ولا رفوا 

کھاؤ بب گر حد سے تهاوز كرو 

ايها الرَسْلُ کُلُوا من الطَّيّبتِ وَاعْمَلُوا صَالِنَا0© 

اےرسولو!پاکبزہ ن اي كحااور ايك ايع گل كرو 

اسک بہت ی آيات ل علال رز عردو ریعت ع ريه ب ا ر 
كان لور اتی صمت و قود تكاخيال رکنان یکر مم صل اللہ علیہ و ام ايا بم الام فرات ما رکم 
ر ی ابش تی م اتن اورالئا کے تیک بندو ںکی منت > 

فقہاء کھانے کے امج كك ول ہر مر ےکا م انگ ے۔ا تی مق ار كحانا كل سے 
جان نع کے اور اتی قوت ما سل ہو کے جس کے اق نمازءروزواور دوصرے فر ال کا ہکرت من ہیں ر ۱ 
مر فرش ہے۔ الیک طم کے عل ات کیج سے پاک كاعري بو فر میں ل 
وال مو ےکاخطر ومو چائز نل :ایا خض تا رک ف رض شار مو 

دوس رام ميم س ےکہ ای نيت سے قزر رورت ے زا ک رکھا کہ نوا قل عباوتء آعم , لام , 
ضرمت ن اوردوسرے کی کک مو لك قوت دجمت حا صل موي وري مب ے۔ 

تہ راع رتب ہے س کہ پیٹ کور کے کھا ا کھایا جا ۓ كر تی كلكا مو ں کی قورت و ہمت حا صل مو ےکی 
غیت نہ بمو ہے عم تيم مهار ہے ءال پ رن گنا ے اورت لواب 

چرام حییہہےکہ ب قاد ميد ھرنے اور وک مٹانے کے لے کان ہے اس سے موی 
زياد هكعااءا 21 کو وکر و ہککھاے_ ۱ 
| | اردع امھ ھت E‏ ل 
ال سل كر ہے صمت كل رال اور فسا محر مكايا عث تھی ے اور اسراف عل بھی داضل ہے الہتہ زياده 
کھانااگ کسی متقصید صا کے -ك بو توا سک ھاش ہے۔ مشلا روز ودار ال نبیت ے زياد ہکھا ةك روزہ 
ھانے می رد ےکا زان ما کید کے کے لے اس کے مات حانج م ہمان 
منرم م و رکھانان چموڑو ے۳ 


() سور الا عام:۳ ۴(...۱۴) ور الاعر اف :اسا..... سا سور الم منون:۵۱.....(م) نس انی رد اار۷ E‏ 


ro BF‏ تج 

صوص میں تو رر ہے ے معلوم ہو ےک کھانے اور وو سرک لز ات میں اعتر ال مطلوب ےہ 
بالگی رک كرد ينا تك یکر نا بھی مزا بک جل سے کت خر اب ہو باضعف ہو نے گے اوس بها 
مشیقت اور گی ہو اور ات یادن بھی مزاسب نی لك امراف اور بل ضر ور تك عد کک کی جائے۔ چاچ 
نياك عل كُلُوَا وَاضْرَبُوْا (كماويدة) كا كم مھ ہے اودلا س روا (حد سے تهاوز كر و) یں اسراف 
سے اعت بھی ے۔ ای رح اعادبیث ش لکھانے ہے اور دوس رک لات س “بت زياد کی سے بھی 
ممانعت ے اور بت زياد وکھانے سے "مين میں حطرت الس ر ضی الد تا لی عد سے م روکے: 

جاء ثلئة رهط إلى أزواج النبی صلی الله عليه وسلم يسألون عن عبادة النبى صلى الله 
عليه وسلم فلما أخبروا بها كأنهم تقالوها فقالوا: أين نحن من النبى صلى الله عليه وسلم؟ وقد 
غفر الله ما تقدم من ذنبه وما تأخرا فقال أحدهم: أما أنا فأصلى الليل أبداً - وقال الآخر: أنا بر ظ 
أصوم النهار أبداً ولا أفطر وقال الآخر: أنا اعتزل النسآء فلا أتزوج أبداً فتجاء النبى صلی الله 
عليه وسلم إليهم فقال: أنتم الذين قلعم كذا وكذا؟ أما والله! إنى لأخشاكم لله وأتقاكم له 
لكنى أصوم وأفطر وأصلى وأرقد وأتزوج النساء ‏ فمن رغب عن سنتى فليس منى ۔'' 

تن آومیوں نے از واج مہ رات سے 7 خض ررح صلی الثر عا و سس ا الع لے اه 
نکر آ پکا تمل ا نکو تھوڑا حو یں ہوا پھر خوددی ہے اوج کیک (آپ صلی انفد عایہ وس مکو تو عم لكل 
ضرورت نیس اس لكك )آپ کے اکل کچل أل تن تھا لی نے معاف فرماد سيك ہیں ۔ پچ ران شس ے ایک 
کے کہ میس لور کیرات توا تل پڑھاکرو ل ادوس كباله عل پیش روزہ كحو ںگاہ تسر ے کہا 
م تور قولس الک رمو ں گا ی شاوی يي كرون »آي صلی ارہ علیہ و کم تن ريف لا ے اوران سے 
لھ باک تم نے اي ایی ےکہاتھاءدیھموائیس تم میس سے سب سے يادو الث تقال ڈر نے والا بون لان شس 
بھی روزو رکتا ہوں اور بھی نہیں ركتاء ل ران یکو راز بھی بز صتا مول اور سوج بھی ہوں اور ٹیش نے میا 
بھی کے ہو سے ہیں ء جو می ری ست سے اعرا كر ےا سکامیرے سا تع تلق نہیں 

ايك اور عد یٹ دل ے: 

کلوا واشربوا والبسو وتصدقوا من غير مخيلة ولا سرف۔!' 

کیا اور لاور صد تہ کرو 7ر اور ضول تبان مو 

ححضرت ابن عياش ر سی انتا لی ع نے ار شاد رايا >: 
() مع / م ۴ باب الا عتضاء پاکتاب رال ۔(۲) تیر وی نکش رج ۲ / ٣٠۰‏ مور ةالاع راف فل کن اھ ذاسمائی واب ماج 


٣٣‏ چ 

كل ما شئت والبس ما شئت ما اخطأخصلتان سرف ومخلیة۔ ( حال پالا) 

جوا مو ماج چا د بان بثر یہ دو با قال سے ےر ہو فضول خی اور تبر 7 ات 

حت سفيان لور یر حالش تھا ی فرمات پں: ٠‏ 

ليس الزهد فی الدنيا لبس الغليظ والخشن وأكل الجشب» إنما الزهد فی الدنيا 
قصر الأمل_^ 

مو ٹاو رک مور ايبن اود سب مز مغز اکھاناز بد نیس ءز بد فو رز واور تمنا تر رکھنا ے_ 

زا ہکا ےکی نم مت فرماتے ہو ۓ آپ صلی اللہ علیہ و کم نے ار شا را 

ما ملاً آدمی وعآءٗ شراً من بطن بحسب ابن آدم أكلات يقمن صلبه فإن كان لا محالة 
فثلث طعام وثلث شراب وثلث لنفسه_() 

انان نے بيشت برا بت بھی نیس بج راءانسمان کے لئ اس مل ےکی ہیں جو ا سک یک ركو سير ھا 
57 اکر اس سے زیادہ ضرو رکھانا ہو 2( پیٹ کے تن ےکر ل )ايك تبان ھا ایک فال الو راک 
ساس ے۔ ظ 
شْ اس عد ی ے وت بات معلوم مول جو ييل فتہاء ہے لکی بابل سك اتن مقر ارم کیا جل 

سے ز ندگی تحال رہ کے اورا تی قوت حاص ہوجس سے فر ال ادام و سكل فر ہے كسيد کی ر سے سے 

ظ کی در جہ راد ہے اس سے ززياده اكت ال کے سا تھ كعان سيار سے اتتا یاد كما 51 ید ال 7 ہو 
ساس بھی کل کے نوع ے۔ 

عافظ ا نکر ر حم اللہ نے کلوا وَاشرَبُوا وَلَا رؤا کی رت ہار فک تفر 
س ن یکر مم صلی او علیہ و سل مكار ار شاد قل فرمایاے: 

إن من السرف أن تأكل کل ما اشتھیت ۔ ٥‏ 

ہے بات بھی فضول خ بق بل سے کہ جو بھی کی پا ےکھالیا جائۓے۔ 

نی صرف اس بنياد ير كل كان چا کہ دل چاہتاے بل ضر دافا يت اور 9 7 
كرس جز ک وکماتا چا ج- 

ا وہ میں 0 ول نر اھ سد حول 


غيب تفر دب بق 


8 ع اع 
مطلوب نال کشم کر ے تمل سے غفل قسماوتہ بلادت او رای بيد اہو اور تہ اس قر قلت جتن 
سے صنت و قوت زا ہو جا یا بج وک پیا کے تا ےکی وج سے قل بكو تشو بي و ير رشان لا تن ہو اور 
جحعیت خاطراور ی يسول ہا ر ہے اس لكك حن عباد تک ایک بہت بذك بفياد سے ہی تل يسول اور 
جمعیت خاطر سجء اس کے ایر عباوت میں تقاط اور دجمت .حا صل نویس ہو ل مب وجہ س كل احاد میٹ نل 
ليم و یگئی سے :کھانا رکھا جا جا ہو اود ادر ماز شر ورع ہو جا ست ف كان كما كر پھر نماز ڑ فى پا ےے ورت دل 
كافك طرف تو چ ہو ن ےکی وجہ سے نما ليسول ما سل نیل م كلد چنانغچہ عد یٹ شی ے: 

إذا وضع عشاء أحد کم وأقیمت الصلاة فابدؤا بالعشاء ولا يعجل حتی یفر غ منه_^ 
ج بکھانا ركه دیا جا اور نما زک ی ہو جاے تيب هکھا ا کھالد اور جلد یکر د بیہا لک کک كماد 
سے فار ہو چا 
ماز ل د بی اور یجو كاش ريا مطلوب ہو ناس ے 7 اقل انا ےک يشاب روک ا 
پڑ عن سے ممالعت ہے چنا عد بی ش ریف شی : لا يصلى وهو حقن حتى يتخفف-() 
يشاب دو ککر نماز یں ب می چا سبك يبال کہ ہکا ہو جائۓے- 
ان اعاد یٹ سح ابت مو اک نماز و عبادت يل o‏ 
اتيك یکرم بھی شر ایند يدسج جس سے ار چ کو ر ینہ م وکرو يجت فوت ہو جائے۔ 
یہاں نمو نکی مناسبت سے حم ال ممت حضرت مولان اشر ف على تاوق قرس سر کی ایک 
یسا ہعبار تن لک ہا ہے بج شل کور موان جیب سا دک ادر جامعيت کے سا كت یال ہو اے: 
: عبات مل شاط اور سرو کرت اور وت سے ای ہو جا ہے ادر كرب س ےک آ ان 
کل قلیل غذا حصت برباد ہو ہا ےہ فاق کر سے نماز ڑ نے ے 1 آ0 تل مواشر 
يل كيان« قلب سے پچ د لله ای طرخ تا ے جنمان یک كثرنت سے فا ل 
SS‏ 
3 ےت کہ بی از طعام ٢‏ خی 
TT‏ ل اه 
ای لے سال ککو نذا جما یک یکرت كد چان بگہ کا ماظا ركنا چاچ کر ہے 
سا یت 


مع سے 

اور زیاد هكحانا بر اےءاسی رح او طا سح كم كايا ,مرج ایک ضر فو جسسال ےک 
تز اہ تک مکر نے سے ضعف لا ن ہو جاے او ركام غڑیں ہو اور ایک ضرر مقصو وسل وک 
کا سك انا نک اکال ىہ سےکہ تشب با لملا کک حاسم لكر سمب "بر با لملا بك اسل كو حا صلل 
ہو تا سے جو نہ شيع (سي ری )سے برست جوش جورع ( يحول )سح پر يشان ہو بل معتل 
عالت ٹیل ر كر طرائيندت وجمعیت قب سے صف ہو اور جمعیت قلب جساكم زياد ہکا کے 
سے وت بول ج کم کھانے سے کی فزت بول سے زياد هلها ف سے خطرا تکا بجوم 
ہو تا ےکی کہ مجر مكل تیر دی غکی طرف معو دک کی ہے تو دما پر نان ہوا ےاو رم 
کھوانے سے ہروقت روٹیو لك طرف دعيان گار بتاے اس لے عبات ىنا فص موق 
ہے لی ںکھانے سے اسل مقصودہمجیت تلب ےد بہ کیان مطلوب سے تک مکھاناء و لل 
ا کی ہے ے:إذا حضر العشاء والعشاء فابدؤا بالعشاء ۔ نقہاء نے یہاں کک ر عات 
کی س کہ اک رکھانا نح | مو نے سے ال کی لذت اکل موف کااندىیشہ مو جب بھی نما کو 
مو ت کر دیا پا ےنتا لكاوتى یل بيت قلب کہ پار بار ہے خیال نآو ےک نماز 
جل ر یبڑھوں: اک رکھانا تراك ہو چاوے_ 

اروم USE E‏ 
کر انشتهاء ( بم وک )کو فا كنا چا بے بلک ا ںکو ہا رک کر تھ روک لین چایے۔ 
(ش مر ہت وط ر لقت صل )٦٦٢‏ 


()صوفياء کے ابد ات ار لع :- 

صوفاء ۓ اصلايح 2 كبك مار برا تکوضروری قراردیاے:(ا) رکلم (۲) ترک منام 
(۴) تر ككلم (۴) ترک اشن الم 

چاروں ارات عل ترک ے نیل مرارے۔ ماصل ےک ہکھانے ء سو نے واو رل وگوں سے 
لات میں ده کی ارال کے سا ھ ۔ یہاں اس کے يارس مکی وضا حش یش نظ ہں: 
)2( وس کیا نے اور نین می سک كر نوو توو صلی تبس ب اصل لقصو ركازر بی .سي _اصل لقصو اوامر الہے 
عبان تا صق ارد كنات ےا بلع ان ر وك إن مارات ر ون ان كان 
می بدا تکولطور ؤر ويه قصو داورو سيد کے بو ب كياج اماسج» الل با ت کی ريو ضا حت ا سے الفاط ل لكك ججائے 


الها 
حفر ت كلم الا مت مولا اشر ف على قان وی کے مواعظ و قونلا سے جندا قتباسات م كك جات ہیں: 
”نر بی اور تقصودیہ دونو ل القائظ کاو رات اور رات د نکی بول پال می استعال کے جات ہیں يان ٠.‏ 
ان الغا كوبد كك وال به تك اي ہیں جوان کے تق موان و مطال بكو كتقث ہیں »زيادوتزنا ھی کے اعث 
ذری رکو مقصوداور صو د كو يه تاد ل ااذ يد کے ما تھ دحام ہک سے ہیں جو نقصود کے سا کا 
پاتا ے اور تقصود کے سا تيع ؤر مت جیا بر جا کے ہیں“ ۱ 
ور چا تيبل دنا ہس کس چ کی ضر ورت ہے اور وو کس طرع حاصل مول ہیں وی 
ضروری جز متصور ہے قور ؤر لہ اک وف تکار آھ ہو جا ے جب مقصو رکو حاص لكر نے 4 لے استعا کیا 
جاے۔ شاعم ک کہ چت چ ع کاڈ ليد ہے سير یکاہ زانادر ست اور ضر ور ٤ے‏ انار طڑد کے 
سا ت ھک چت بر چغ حك كام لا جا شدي كم سیر کی بناکر اعقیاط ےگ شل ركه لى جا اور ا لكو ۔ 
مف کر وا ے اور ا کواستعال کیا جائ٤‏ یا بہت ی یر حیاں بنا ناک رك ربل ركو لى پاس > ۵ 
ما ل ی ےکہ ؤر الح اور بقاص دكافرق بدى دضاحت سے متھایاکیاہے ر الع اور مقاص رکا فرق جم 
کہ رای ككوال کے در ہے کے مطا بن امیت دیا ضر ورک ہے۔ ج جنر لو رذ ر الع کے اختيا کی چان ہیں ان ۱ 
کو مقاصد نايا نکو متقاص دك طرر] انميت دس ےکر ان کے سا تخد مقاصد والا مام کر ی ہے۔ ورا کو 
۔ اک عد تک اختیا رکیا عا جب تك وہ لقصو و کا زر لور ہوں_ ذر الج مس اتااش ما كل مقصود سے ے گر ہو 
بجي عو فت ہونے گے قلعا چائ لي ہپ رات ارہ نكو صوفيكر ام ”نیا می “لكت ہیں 
راح ول اصل مقصودطاحعا کو بھالانااور موا کی سے اتلاب سے جم كو صو خی ہکرام ” هابر یی “لكت 
ہیں۔ اب یکو ےکی طعام و ما م کا اتنام ل بميش ر ہتا ہو گر ودا یکو عر در کال بج كر طاعات و اتنا ب 
ما به رہو لآ عددد سے تجاوز > اورؤر لهم کو لقصو ريناريااور لقصو وکوزر لور 
(r)‏ کت تلن ےر ے زوق ارات رد قرف لواح کی 
دس ہیں ای بی بض لوگ بس شی می جتلا کہ ان اراد کو برعت کے ہیں او ر کے ہ ںک صوص 
ٹل ا نکا موت أل ہےء یہ بات ت کی غلط ے اور خلاف واقعہ ے۔ ا ليکی ایک وج أو لويم ےک ب عادول 
ارات ےا صل لی جگہ یاد کی طور پرا کان بحل ش رما مطلوب ہوا حابت ے_ تقلیل منام (نینریکی )ی 
شر با مطلوب بون قيام الیل اور تججر کے فضائل سے بد میں آتاے۔ تيل نیہ مطلوب ٹر لجرت 
مدنا بھی انض اماد یش سے حابت سے ان میں سے لع رازه ”مون کے وو ران نف لک یکی ے _ شی ل کر مک 


(1) شر بجعت وطر لقنت ص ۲۵۳ 


شر ما مطلوب ہوم بھی متحدرداحاد ہش سے جد ٹس آرہاےء ال ىكالى احاد بيث ملک ۃ کے ہاب ” دز اللمان “ 
جس ٢‏ ںیا ہے بی اخنلا اور يبل جول میس قطي ليا مطلوب ہونا بھی صو ص ے ابت ہے۔ شلا مرت 
عقب بن عامڑنے 1 خض ر ہت صلی اٹہ علیہ و سلم سے لو بچھانصا السجصاۃ؟ ن نچا تكاط ريق ہکیاے ؟ 
آپ صل الث علیہ و صلم نے اد شاد فرمیا: 
أملك عليك لسانك وليسعك بيتك وابك على خطيئتك _^ 
جم ٠٠٠٠٠.‏ يزيا نکو اہو میں رکھو ميل تمہ راھ یکا ہو نايا بت اور ا گناہول پروی اک و- 
اس عد یث کے دوسرے تل ولیسعك بيتك سے تقایل ا خلا ط مح الانامكا مطلوب ہو مج 
عل آي 020071 ما صل ب ےکہ پار وں ابدات بنيادى اور اصول طور بر فصو سے خایت ہیں اس لے ا نوس 
سمل اور بر ع تأبزاد رست ید 
دوس رک بات یہ ےکہ صو فيا ء كرام ان میاہرات کے جو قا لل ہو ے ہیں ووا کو عم شرق نہیں کے 
. ہیں يللد ایک ذد بیج اور علارج کے طور يرال کے قائل ہو سے ہیں۔ ای کا مطلب ہہ ےک اسل قصور نو اجا 
2 يدت ے تی طاعات کو بالانااور معا کی و حریات سے یناور اس مقصو وکو ص کر كيلع ہوا ے اس 
(نفسالى خواہشات )کا متقابلرکر کے ا نکودبانا ڈ تا ے اورسو ف کا تر ہہ یہ کہ ان ار مباعات یش اعت دال کے 
سا وق لے بزر تولك نف سكامتقابل بہت شکل ہو جاہے۔ان چاروں مباعات میں کی 7 لقصو راو رر یسل 
نہیں یھت با متقصوداذر بيه اور س کا معا لہ قرار دسي ہیں اور معالجا تك ابنياد تسبي ہو لی ہے۔ ر ے 
سح كى چ ہکومفید پیا وا کواختیا رک لاو ری چ کو تر بے جع افوا یکو ےک کر دیاجاجاے۔ معا لیا کا 
صو سے صرا جن طابت ہون ضرو ری نی ہو ج نے طلبی بکی چ رک ری کے م رارج کے خلاف دكن اور اس 
کے عم میں وہ یز ا كيل مرون ے فو طبیب ا کو كرد ياس اور ج ججز ترس ےکی بفيا یہ ال کی نت 
كيك كز ہہ مو کی سے ا سکواس پر لاز كديب ءا یکو بر عت نی كبا جا سناو رشت دوااور بر ہی كيلع لصو مس 
سے شور کو مطالہ کیا اجا ہے ء بالكل می حيثيت صو فا کے ان ارا کی ہے۔ جلت اطباء ‏ مکی خاصیات اور 
ا لکی ضروریات اور تاضوںن کے ماہر ہوتے ہیں ای طرح صوفيأء ور اك کی خاصياات اور ا نکی ضر وریات و 
تقاضوں کے ماہر ہے ہیںءانہوں نے اہن ترب سے مقصو ريل یی کیل ان ماپا کو ض رو ری چیا و 
معا اورذر لع کے طور بر اس کے قا كل ہو گے جیے ا سکو مقصود بجمنااور گم شر كاد رج د یناغلدا ے اي 
بی صوص ے ان 1 ولت ماللا اور پر ع تكبنا بھی مد ورے تھاوزے اورتقيقت مال سے نا و ض اكابات ے۔ 
(1) مكلو ور م /ص ۳م ٠‏ 


BF‏ ا نے 

)۳( سپ وضاحت ہو بی سك تقلیل مم وی ہا سل قصوو يب با ا صل مقصوداہکام ريدت پر 
کر نا ہے مہ جز يل صر ف ملاح کے طور پر اتا رک یگئی نيل اور ططاح عل اتلاف م راخت في اشنا صء 
انتلاف الات اور اختلاف مان کو بڑا ول سه ایک جز ایک زارح کے لے معاي کاکا مک ری سے 
دوسرے زار کے لئ وتى جز مفیر ثيل مول 0 009 
ِ دوسرے کے ے موث فيل ہو مالكل ایک می قض کے لے ایک چ سی عالت جس مفير »وق ے او رك 
عالت یش مفید نیس ہو فی _ اس لئ ان یاپ ا تكوايق را سے اپنانا اوران بر لک نااند يش فتصان سے 
خال یں عبس جما علا ل طلبی بك راس ہے لکیاجا تا ہے ای ےکہ وو جر خض کے مارح اور اس 
کے مالا تكو دک ھکر علا کی صو رت اور ا کی قد ار ٹ ےکر اے ايك تى روعاف پار ات اور معاليات مل 
۱ ما سلوک(جھکہ اطباءابائی ہیں )کی د اور مثوره بہت روک ے۔ وہ كت پ لکیہ ایا تک 
کے گے مر ہیں او رسن کے گئ نیس و رشن مھ ے زین دجن و ی مق ور ل مر ون ل ات کی کے 
ما کی داكي س ےک ہکھانے اور نین میں اعت ال قو جه ر حال ضز وري سے لیکن ات نیک كناك اعتل ال اور 
زر ضرورت سے مھ یکم ہو مزاسب بل د رخ کل کی شيل اور طرالح اس کے “تمل ہیں تکی 
تالت بھی ش گی ف ريض ہے ال كلام اور غير ضر داضت اور یل چول میں تيل اور اعت رک اب بھی 
ضرورت ے لین ال میں ىا ت یھی نیس ہوک يلجل طیعت میں افيا او رشن پیر اہو نے گے۔ 

ال سے ہے بات بی ذاش وگ یک یفن حقرمین نے یل يام کے سلل می کیا ےکی مقار 
بتك کی سے خلا امم غا ایک چ لكت ہیں: 

”ياد رك ول (کھان ےکی )عقدار رك کنا لشن ادن ک0 
جلت كللذ میں تدك ہا ر سے یا ل میں فور آپاے 221 وط در چہ ہے س ےک روزا يمف 
بر ن دو تایا ل بر اکنفاکیاکرو رڈ اد ددجي س ےک روزاء نہ الیک دک مقد ا رکھاۓ » 7 0 

ایی رک مقرا رآ ریا اشن پاش ےا کا مطلب ہے كم (یاددے زیادہر وزانہ نی وکیا ےکی 
6رر سے کت سے 0+930 اس تی با تفيل جو سلف ے تقول 
ہیں ىہ بھی شرى سال نیس يله معاليات ہیں جوا نہوں نے ايز مان ےکی هل کویر نظر رھت ہو نے جين 
فراع ہیں جن مس عالات اور طبال کے بد لے سے تیر ہو کا ہے اصول اور متقاصر میں قو تفر ہیں ہو 
عابت ورا اور وما آل زمانے اور عالات کے بد لے سے بد لے رت ہیں اس ل كافك مقداروں کے 


)١( 0 ۱‏ دن ص۸۱ 


۱ 

سلل بل تنيز می نکی اتبارع اور تير ضرورى كثل» ال سیل مس اپنے ذاه کے مشار اور اطبا کی ر ا 
زیادوامم سب 

اب کک ہم نے جو یھ طعام اور لئ ماع ضرف ور 
کے معتل اور متوازان سک اور نتا نظ رک مث کے لن كال ہے۔ اب مناسب معلوم ہو جا کہ اس 
مو ضورع کے ات پر رس الصوفياء حاتم اید ين ححقرت بلا على القارى رہ اشک ایک صرت افروز 
عبار ت د کر وک جاۓ اک اقتا م کے علادہ مو ضورع ير صرت یس اضا ف كايا عش مو 

جنا نچ ہلا على قار کی ر حمہ ابر خا لل تن ىك شر میس فرمات ہیں: 

ومن جهلة الصوفية من يقلل الطعام وأكل الدسم حتى ييبس بدنه ويعذب نفسه بلبس 
الصوف ويمتنع من الماء البارد وما هذا طريقة رسول الله صلی الله عليه وسلم ولا طريقة 
صحابتهم وأتباعهم وإنما كانوا يجوعون إذا لم يجدوا شيئًا فإذا وجدوا أكلوا وقد كان رسول 
الله صلى الله عليه وسلم يأكل اللحم ويحبه ويأكل الدجاج ويحب الحلواء وكان رجل يقول: لا 
أكل الخبيص لأنى لا أقوم بشكره؟ فقال الہ سن البصرى: هذا رجل أحمق ۔ وهل يقوم بشكر 
الماء البارد؟ وقد كان سفيان الثورى إذا سافر حمل معه فى سفرته الشوى والفا لوذج- 

ر چم ...... نض چائل صو فكوا ک مکھاتے ہیں اور یکنا ہکم استعا لکرتے ہیں تك ا نک 
بدن خنگ ہو جاتا ہے ءوہاپنے آ پکواون کے موس كيه يبنا كر نیف میس ڈا لے ہیں اور ٹرے پان ے 
باذ دست ہیں عالاكلء بي ی گرم ينه وراب کے صحابہ و لی کا عرد اہ یں وو حطرارت بمو کے اس وذلت : 
سے ج بک ان کے پا کیا ےک كول ر ی ونی کی ۔ج بكوق جز لق ى توا سک وکیا سے ےی 
کر یم ميد هكوش تکھاتے تے اوراسے تند فرت تھے ء مرک یکھاتے سے اور ی چ زيند فرماتے تے۔ 

الیک ر یک اکر ا تیک می علوااس لئ نی ںکھاجا ہو ںکہ اس کا کر اوا ہی كر سا حضرت 
ین بعر کی رجہ الد نے ار شاد فرمایا:یہ ال ہے کیا ہے كياب نض شر ےب یکا شر او پت 
رہ الد سغ میں این سا تر بھتا ہوا اگوشت اور لوده نے كرت 42 


(۳) دن يبل ايك مرت سے زياد ہکماناعد بی کی نظ مل :- 
شر بجعت ع سکھان ےکی عقد اد اور ا کی سن کی ںکی اس ےک بر حبك ضر ور لأف 
مول ے۔ مقر ار الو قا نکی ت یکی صو رست میس حض ل وگو كو گی یش کن کاوا نح ادير تیاس لئے 


لحان 

مقر ار اور او قا ٹکیا یی نکی ہیا اصولى تعلیم ور شا قرا گئی سے تا ا نض ہے مز اناور عالات کے 
مطا لق ان اص لو ںکوا ےا پر ی یکر سے عم لكر کے شر بيت نے جو اصوی يم ری ے اس کی نیل 
ييل عر خ سک چا ہی ہا كاحا صل ور رذ ل امور ہیں : 

0 - کھاتے نان و پا ات کیاکی ا جنك وای :ات یکھڈ کی 
جا ےک “شم خراب ہواور طبيدت پول ر جے گے۔ 

(۴).....کھانے میس ات مک یک نا جل سے چان جا نکیا کر تک زور ہو كاخطر وجو پار ہیں _ 

م 3 کھانے میں ات یک یکنا بھی ہا ثبل ننس سے اگر جه فو ری طور يرت تراب د ہو گی مو 
اور ضف کی ہو جاہو 2 سے بعد رفت رف اسك كااشر نياج م وکر ضع فكاا تر رق ہو ءال یکی و مل ہے 
عد یٹ ے: ۱ ۱ ۱ ٠‏ 
تعشوا ولو بكف من حشف فإن ترك العشاء مهرمة- (رواه الترمذى ۷:۲ وقال هذا 
حديث منكر الخ-) 
ہے نت ججھہ....... را کیا ن کیال کر واک چ ران مورك ایک یی کے اکھانانہ 
کھانے سے بڑھایا آتاے۔ 

۱ ۱ 01 ا‎ sg 
ضف ہو جا ہے بللہ ال لے کی دک قسن هك كر چہ دا تکاکھانان ہکھانے سے فورىی طور بر ضع حسوس نہ‎ 
بعد اس ضر رکاا ال ہ ےکہ بااپ جلد ی آ جاے۔ اس سے معلوم ہو اک كاذ یی الى گیا‎ - 
كاك زياج جس ے تلش کک کیشر ف کار‎ ْ 


دی ال ب ےد کت : 
2 مطال قکھان ےکی مقدار اور او قات ےکر سا ہے۔ اگ رک یکو ایک ہا رکھا ےکا ضرورت ہو وه اب بار 
۱ كاك وہ کر سے زياد ہکھا ےگا نوي اص را اف وكا 22 |كودوياريا ا تن پا رک ضرورت ے وودديا تن با ركما 
سکنا ہے اس ایک م رہ ہے زیادہکھانااصراف او رول خی فیس بک ضرورت کے دا ےش وال جد 
ا تی ل کشا ےک ہکان کے لے دنر ات ٹس لي با رک ید نشین سے بر ضر ورت 
اور ملحت پ دار سه ضروزت اور لحت کے یی نظ رایک پار سے زیو مکھانے میں یھ یکو گی مضا ا لش اور 
کرام ت یں یا نكيم صلی اللہ علیہ و ا تول و حل سے صر اح ایی باد ے زياد وکھاناثابت ے۔ 


Err 5‏ 
ول دبل ہے س کہ اعاد یٹ یں ر مضان البارک میں کر ی اور افطارى دونو لک تر خی ب کے 
اہ دول ایی ترات دا می ہوتے یں :اس سے معلوم ہوکہ رات دن ماک بارے نا کے 
کی صرف اہازت نی بل بھی فضیلت بھی مول >- 
نعل بل ہے ےک حطررت عاکٹڑف مان ہیں: 
دو سور وس اھر ہجو 


رم تا ۳ +- +0 تب كاتا کھایا أو ایک عم رح 
تچور ہواکر کی لد 

ا سے صاف معلوم مور باس چک آپ مل علیہ لم کے بل دومج كاذ مول ت کر 
دونوں مرح رولو خيرم نيل ہو تی ی ایک مر تہ دول و تیر ہاور ایک مر جب جور مول ىآ سل اللہ 
علیہ و كلم سے توآاور جملا ايك رات دن یل ایک دفعہ سے زیادہ با رکھانکھان كابلا كر امت جو از خا ہت موكيا 
اور اصو لكا نقاضا بھی بی ے ج کہ اک یکل اکا ےکر دو صد ڑل سے شبہ ہو کنا کہ لیک دن مل دو 
مرجي ہکھانا جارد بل يا كم زک کر وہ اور نا يشر یرہ ضرور ے۔ یہاں در اکل ہے بكث ان دو عد يثول گنو 
ال ا اي 


ر نكا کھاتا ول فر) لے را تك اكمانا ۳ aT‏ 7 تول فر 5 7 
تاول تبش فرماتۓے سے اس سے معلوم ہواکہ دن بل دوي رکھانا آ پک مول بل تماء الل سے يظام را یت 
و SAE‏ لاک ۷اس رلور r‏ فور لہ دايج کا 
ٹس ایک ہار سے زیادہ مم حب مكها ےکا چو ازا کی شاب کیا جاچکا ہے تم يبل اس عد می ٹک اسناد کی حيثيت اور 
تج كفتك وک بی کے پھر ا سکا معن اور و یہ ذك كر يل گے۔ 
اس صد بی کوامام سيب ی رحد ایر نے ”الا مع اسر“ میں وک د ركذاو م کی عل 
الاولیاء'کاجوالہرد ےکر کی علامت لكان كر ووس ےل ملا راس سنتف تيبل ءووا سکو ضیف قرار 
دس رے ہیں۔ جناخير عمزی:ئی الجاع الصف رکی شرح میس کک ل :حل (أى حلية الأولياء لأبى نعيم) عن 
٠‏ أبى سعيد بإسناد ضعيف "البإ .00 - رواه ابن بشران فى ((الأمالى)) ۱/۷۳ 


وگ ٣۵‏ تج 
وابن عساکر فى آخره جزء أخبار حفظ القرآن ۔ (ق۲/۸) وكذا فى التاريخ ١‏ 5 عن 
سليمان بن عبد الرحمن ثنا أيوب بن حسان الجرشى ثنا الوضين بن عطاء عن عطاء ابن أبى باح 
قال: دعى أبو معید الخابرى إلى وليمة قرائ صغرة وخضرة فقال: : أما تعلمون أن رسول الله 
صلی الله عليه وسلم کان .سے (الحديث) ۱ 

وقلت وهذا أسناد ضعیف ورجاله.ثقات لكن الوضین بن عطاء سيى الحفظ فهو لهذا 
ضعيف ثم إنه مرسل كما هو الظاهر لأن عطاء لم يوصله عن أبى سعيد بمثل قوله: عن إبى 
سعيد و نحوة- ُ 

٠‏ تنبيه ...... هذا الحديث مما خفى مخرجه على الحافظ العراقى ثم التاج السبکی. 
فذكرا أنه من الأحاديث اللتى او ردها الغزالی فى الإحياء ولا أصل لها وعزاه السيوطى فى 
الجامع لأبى نعيم فى الحلية ولم أجده فی فهرسة ”البغية“ ۔ (سلسلة الأحاديث الضعيفة '. 
ج۱ / ص٦۲۷‏ حديث رقم )۲٥٢‏ 

0 ور 
زیی ی رحمہ اللر نے اتحاف می کاس کہ ال م کے علیہ الا ولیا ءل ہہ صد یٹ خضرت عطاء بن ال رباب 
ےط ل نك کی ای ہےء ال کے بعد بيد ى دحم اللہ نے ابو شی مکی سند بھی نک کیا ہے - نان علامہ 
عراقی رص ال کی مہ با تلم أجد لہ أصلاً فى المرفو ع لک نے کے بعد فرماتے ہیں: 

قلت: بل أخرجه أبو نعيم فى الحلية فى ترجمة عطاء بن ابی رباح حدثنا محمد بن 
عمر بن مسلم وأحمد بن السندى قالا حدثنا جعفر بن محمد الفريابى حدثنا سليمان بن عبد 
. الرحمن الدمشقى حدثنا أيوب بن حبّان حدثنا الوضين بن عطاء عن عطاء بن أبى رباح قال: : 
٠‏ دعى أبو سعيد الخدرى الخ - 09 

1 ا ل م جنع نوا ل 0 انار جال اقات ہیں 
1 جنول نے ضيف فكها سب و شی نی وج کہا ے اور وضین لف فير فون بھی ان دور تی 
بھی2 لبزاضد عب کل رات یں ضعف قاب لگواراے۔- 

صد یٹک ی.......علامہ منادکی ر حمہ اید فرماتے ہیں : 

كان إذا تغڈی لم یععش وإذا تعشٌی لم یتغد - اجصابًا للشبع وإيثارًا للجوع تنزمًا 
(0اتجاف | :يزانلا کال ٣‏ / ص ۳۴۴ اور تج یب اچد بنا | ص ۷ 


میں 


ظ .سا 
عن الدنيا وتقويًا على العبادة وتقديمًا للمحتاجين على نفسه 2 

یی آپ صلی الد علیہ وس لمکا ایک مر می کیا كاجو “مول عد یٹ ل ن كور ہے ا کی 
متقاصد ہیں:(ا )كفت اکل سے بنا_(۳) فاق انقیا رکنا۔(۴) د تیا سے ےر ٭ق۔(٣)‏ عاد ت کر غبت 
بڑھانا-(۵)دوم ے اجون 1 رورت کو کے ہوے خو وم كان اور دوس ول ایا 

علامہ ع زی زک یلت ول :أى كل فی يوم مرتين تنزها عن الدنيا وتقویًا على العبادة وتقديمًا 
للمحتاج على نفسه ففى قلة الأكل فوائدء منها: رقة القلب وقوة الفهم والإدراك وصحة 
البدن ودفع الأعراض فان سببها كثرة الأكل ‏ ومنها: خفة المؤنة فإن من تعوّد قلة الأكل 
كفاه من المال قدر یسیر۔ ومنها: التمكن من التصدق بما فضل من الأطعمة على الفقراء 
والمساكين وليس للعبد من ماله إلا ما تصدق فأبقى أو أكل فأفنى ۔“' 

0 آپ مهد نیا سے بے رمق اور عاد تکی قدت اور تاج ںکو اپنے آپ ب يدي کے ے 
دن ٹیش ايك با رکھانے پر اکنقاء فر ا٤خ‏ ساس كن فو ہیں ٠ایک‏ یہ > کہ دل خر ماور م وادراك 
لا كور ہوا ے۔ 07 رتا ہے اور ياريال چان ر ق ہیں اس لے يعار لول كا سب زیادہکھانا ہے٤‏ اور 
ایک فائدهي > کہ خر مشق تک ہوتے ہیں ای ےکہ جک مکھان ےکا عاد کی مہ وگاا سكو تمو ایال کی کان ہو 
جانا > اور یک فا ددید کہ ج ھکھانے سے پر تا سے اسے فق راراور ماکان صد دكا موتح مار تاے اور 
انان اپ ال سے می اد واٹھا تا کہ صر ہک کے آخرت کے لے ذ فر کے اکاک اکر رے۔ 

ل 1 لو جيم میم ال عد یے سح ہہ می (كالنادر ست أب کہ دان ٹل ايك ہار ے زیادہ 
کھانا تا ہا ریا لاف سنت ے اس ل کہ ا كا اکر اور سسنون ہو نا يله خاب تكياجاجكا جالعلا شيل کی 
تو چہات مو كق ل : ظ 

9 تان هري املاب كل آ پ کان ہوتے ہدئے بھی ایک وق ت اکان اول فرك 

دوس ے وف تک اکا :ا قصد ا رک فرماد ین تھے بک مطلب یہ كم گی اور فق رک مار آپ صلالل علیہ و صلم 

کودو پا رکاکھان عو ]میس ہیں ہو تھا۔(ی 4 ر7 يكافت راہ چ اتا ر ی تاک راء اور تاجوں بر خر کر سخ" 

كاج سے آپ کے پا کہ بان پچتاتھا) آي صل الث علیہ وس مکایک بارکھااتتاول فر نے پر امتفافانا 

ای ہے تيت دوس یعاد مش آ۲ س کہ آپ صل الث علیہ وسلم سے کی بھی تن دن تک کس تدم 
ہجوت مل یں نرا 


ےہ تج 

جتنت عا کٹ نے فر اي كر حم کی جن چا ند کے لیے ست ےکر ای دور ان پ صل الث علیہ وسلم کے 
گعروں نض آنگ جلان ےکی نوبت تيس آل ی صرف ال او بور یراکتڈاکیا ان تھا_ ( ٰ 

کیاان اعاد ی کی بنا كو لكب سنا ےکہ مل تین د نگندم باج کی روف سير م وک رکھان غلاف 
نت ہے ؟ اہر کہ اليا کی کہا جا لتابلا کچ کہا جا گگاکمہ آپ صلی الذد علیہ و حلم اور از ایج مطير ام کی 
و سوب ےہ پش رت ۱ 

تآ یکی تال عد یٹ کے بار ے ل "بی چا ے۔ 

عد یکا بے لجيه ربت كيم الات رحد ال نے واو تاور ضفي ۸ میں اختمار کے سا تھ 
ان فر ال ہے یہاں ا سکی ت ر ےتفصبل عر كرو یکی ہے۔ 
)...ا تق ناپ کے خيال مل ایک جات ہے کی آل سكم عرف میں عموراغداء(د نکاکھاتا)اور عشاء - 
(را تکاکھانا) سے مر ادو ہکھانا ہو ناس چو رول وغیر ووادی نام تل ہو مر ٹکامطلبے ‏ کہ آپ 
سل اش علي رر رھ رس کر وت 
کہ ربکا ہم ڑا کی تناول فرمایاکرۓ تھے - جعیماکہ پیل جج بنفار ىك عد یث نف ىكل آپ بپ سس 
اللہ علیہ وسلم ک ےگھری سکھانے کے دوو قال شل سے ایک وق کور ہو اکر تی تی ار عد شك ب 7 2 
کی جا زان عد یکا شون ونی ہوگاجو دوس رک عد یٹ شل واردہواے: 

لقد مات رسول الله به وما شبع من خبز وزیت فى يوم واحد مر تین(“ 

آپ سل اللہ علیہ و سل كاد صاال اس مات عمل مو اک آپ نے ایک دان دوم ج رول اور زج نک 
تل پیج کر أب ں تھایا۔ 

جائ نہ یں عد ييث کے الفاظ يم , 

oy 

غداك نمآ نے دن نمل دد مر ج روا رکو شت پیٹ ب رکر خی كمايا 

ال عد کا مطلب ب کی م وکاک آپ صلى افد علیہ و سلم با قاعر ود ول و یروم تل انايب پر 
ی تثاول فراتے 2 ` 
2١‏ 5200 کر 7ئ و 
رای ی چو ام تكوعطا نیس فرما كال لج کھانے ين کے پارے مس آي صلی الثد علیہ مت 


(re TO)‏ .۴ یی مل اص e‏ ) جا تن یی ٢۳/ص‏ ۵۸ كتا ب از ار 


۱ ABF 
ابد ا کی تمل اتا کر ا امت سك ب یک بات تمل ء عد يمث می ا کی نظیر ہوجو وس دو ےک لی‎ 
الہ علیہ و م نے جب حفرات صحاب ہکرا مکو وصال سے تع فرايا ماب ذ ہے ٭ا لکیا: إنك تواصل ۔‎ 
آپ بھی ذو صال فراسة ہیں ل 02 إلى لست مثکلمء إلى‎ 

اطعم وأسقى سس تہارک طررح نی ہوں جج ےکطایااورپلایا جانا ے_ 9 

۱ حافظ ابن تجرد حمہ الد نے جور علاء سے ا كل شر رح قل فرمائی كر کے ای وت عطاء سے 
کہ بخ ركها نين کے نح کھانے ہے وال ںکی طررع طافتت ما کل ہو جا ہے ۔کھانے ينكل كاك وج 
سے می ری قوت می ںکی نیو ںآنی اور ی بے اتاہٹ ہو لی ے_ O‏ 
ای سے بے بات بجھ يل اكول ہکھانے يبن کے معاطلات یس اص کو آپ صل اللد علیہ سکم پہ 
قا أب ںکیاجاسکنا۔ جب صما بي قاور الولعم حرا کو تا کی بات یں د ىكل اواو رک یکو 
كب اجات ہو گتی ے؟ 

الأكل فی الیوم مرتين من الإسر اف ...... دوسری عد یٹ جس سے دن ٹل 
دوبا رکھانے سے اعت معلوم مو لج دوي ے: الأكل فى الیوم مرتين من الإسراف ‏ شن دن يل 
دو با کھانااس راف ہے یہ عد ی كنز ارال می دیلھی کے جو ال سے اس ط رع نف لک یکئی ے: 

00٠‏ عن عائشة قالت: رألى رسول الله صلی الله عليه وسلم وقد أكلت فى يوم مرتين فقال: 
يا عائشة! أما تجين أن يكون لك شغل إِلّا فى جوفكء الأكل فى اليوم مرتين من الإسراف» 
والله لا يحب المسرفين .^ 

تخت عاش ر ی الث عنہا سے رایت ےک بك رسول اللہ صلى الد علیہ و کم نے دن س دوپار 
کھاتے ہو سے ديكا ار شا ف رايلم نیٹ کے علادہ او رکوئی مصروفييت بل چا ہت ؟ دن میس دو ہا رکھانااس راف 

ہے اور حم تا ی اس را فك نے والو نكو يشر ثيس فرراتے۔ 

اس عد ی کو امام ڑا رہ الد نے بھی احياء العلوم یں ول ا تی اڈ 
را ے :قال العراقى: رواه البيهقى فی الشعب من حديث عائشة وقال فی إسناده ضعف ۳ ٠‏ 
حضرت تحدم الا مت مو لان اش رف یی تھا ویر مانشد نے اس صد بی کش رح انس طرف رمال : 
أما الثانى أى دلالة الحديث على الكراهة فيطهر حاله بالتامل فى ألفاظ الحديث فإنه معلول 
() یج یئ /ص ۳ | اال حد: اس ۳٣م‏ 
" )تحاف نح / ص۱۰٣‏ خ زی :تائق, شع ب الايمان نه / ص٢٣‏ 


بک ٣۹‏ ےئ 
بكونه إشرافًا والإسراف لا يجتمع مع الحاجة والإباحة فیحمل الحدیث ما إذا أكل مرة ثانية 
من غير جوع كما هو عادة المترفين الخادمين للبطن يأكلون أداءً لحق الوقت كأن الوقت سبب 
لوجوب الأكل كما هو سبب لوجوب الصلوة وأما من أكل للحاجة فلا شناعة فيه أصلا حتى أن 
من احتاج إلى أكثر من مرتین لعارض للمرض أو النقاهة لا حرج فى اكثر من مرتين ایضٔا۔''' 
رپا اھر غالى کی صد بی تک دلالت (ایک پار سے زياد دکھان كل کر ہت بر سو ال كا حال خود 
عد یٹ کے الفاظ یش و رکرنے سے ظاہر ہو جاتا ےکی دکلہ ا کی علمت اسراف رما ی ے اور اس راف 
عاجت اور اباحت کے سا تيد جع بل ہو جا يبل حدیت اس صورت پر گول موك جيل دوس رک پار يدول 
وک کےککھائے جیا ل تم ادمان کک بعادت س کہ نض ادائۓ تن وقت کے ل كعات ہیں کیا 
وت بب سے وجب اك لكا جديا وذذت سیب ے وجو ب صلو وک زی ئن ات کے نو راو دان 
بھی شاعت یں تیریخ لدوب نيد كاذك مامت ہکم رياقت کے 
ہپ اس کے ے دوبار سے زياد ہکھانے بیس کی رج یں“ 


لذي زكعانو لكا م:- 

بہت کی ق رآ آیات اور اماد یث و ہے و آشار سلف سے معلوم بمو جا ےک مكحا ےکا بڑا مق راكر جر 
شی مکی خذائی ضرور فو كول اکر کے قؤان یکا حول اور صحت وز ندرگ یکابقاء سے لیکن اس مققصر کے سسا تخد 
سا تہ لذ تك بھی عل تقر رکھنا شر اکال تہ بات نمی يكل اک ع تک ش رجا طلوب ہے ۔کھانے ۰ 
می عو پک کا شی ہیی وان کرنے کے لے ييل يهال دہآیا تناعا مث خی کا مال یں جن 


سے ا کا چا ئزیامطلوب هونا معلوم ہو اچ اک کے بعد وورایات نف یکی جاع لك جن سے بظاہر ا كاغير 


مطلوب بو ناک ند موم ہونا معلوم ہو جاہے :پچ ردووں کم کے دلا تلكا ز یہ و کی کر نے ہو ے اکا براصت 
کے اقول کر خی می مص ل نفد کن ےک كاك کیا ےکا 


لزي زكهانؤل کے جوازیا مطلو يريت کے داائل:- 


...... إواورالتواوزض ےا )اور و ٹرے‎ )١( 


وک ١م‏ أ 
السيظطن ائه ذلكم عدو من 
جر ...... ا ےل وگواج جزل زین میں موجود ہیں ان س سے طال اور طیب چ زی 
كعااو ر شیطان کے قم قزم مت ملو فى الواح وو ہار اش مکحلا 9 
اس آیت مس طينها کی ای لضي لز یز ززوں کے سا تك كلق ہے۔ یرک نے وال حضرات 
ایکا ينه بي کرتے ہی کہاگ رطیسبا كا مت بھی ” علالل “ن یکیاجاۓ فو حلالا اور طیبا کا ”ن ایک بی ہو 
كاحالاكل تا ہیا مو یں یھو مسن 


مجع کم تر سے ےت 

۱ زی ںکھاوادر اد تدای ے ڈرو جس پر تم ایمان ر کھت بو 

ا ںآ یت شی تھی طيسبا سے م رام رتوب چ ر یں ہیں 91 0 کے علاوه 
يجال دوس راداي ريني س کہ اس سے ملآ تلایا الّذِينَ منوا لا تُحَرِمُوَا طيبَات سس الخ 
- میس طبيات سے مراد لذ یذ زی ی ہیں ۔ چناغچہ حافظ این جرحم الث ابن بطال سے لف لک نے مو نک 
مفس ری کا ای بات ب اتفال کہ ہے آ یت ان لو E‏ رکمانوں 
اور ووسر کی بار لز ا کواۓ او یر حرا مک لیا تھا_ (۳ 
مشہور ی فق اب وبکر جما رح اللہ ےکور مآ سی کی e‏ ا سآیت 
میں ان لوكون کے تول کے يطل ہو ےکی د مل جوز بر کے طو رگوش اور لز ی کھانول سے پر ہی زکرتے 
ہیں اس سل کہ الد تال نے ان چیززوں کے مرا مكر ینہ سے مع فرايااودان کے علال ہو ےکی خر دی ہے مہ 
آ ےتا بات يه دلا تک لس کان پل سے پر زکرنے م كول فضيات كل ہے۔ 9 

()...... فَحُلُوَا مما رركم الله له الا يبا وَاشْکرُوْا ِعَمَة نِعْمَة الله إن گنٹم 

اا تبون( 

ر جر ...... بل نم كعاووه علا ل اور طیب جزل جو اللہ تیا نے ہیں عطاف رمال ہیں اور 

تر تر 


دلالة على بطلان قول الممتغين عن رام تس سا Ee‏ سو 
فى قوله: ”لوا مما ررقم الله حَلَالا طب ' ويدل عن انه لا فضيلة فى الامتماع من اکلھا۔ ......(۵) سور ة/تخل :۳ 


5 اد تي 
6( ل من رم وة الله الى أخرّجَ لعباده وَالطَيبَاتِمِنَ الرزق-© 
جم ...... آ پکہہ دی ےک ہس نے حرا مكيا سے ال کی (ہنائی ہوک )زین کواور 
رزق یش سے ا بق ا بھی چڑو ںکو_ 
ن كوده پالا آیت شس ”طیسبا“ یا ”طیبات“ کا لفط استعال ہو اےء ع ریز بان اور جاور کے اعتبار 
سے اس کا کن علال کی آ ہا ہے اور لز یز ى چائ زی کی آعت عل دوم رای مرادے: 
يتم پوس مو 1 سو تا 00 


م شک ےوران سے فا رد 

بی وجہ ےک آیت ر( )کی ری بے تر ہی رم اللر نے ”طیبات“ کاعام 
ن مر اد لیا ے جو علال اور لز یذ دونو ل لوشائل ہے جنا دو فرمات ہیں : 

الطيبات اسم عام لما طاب كسبا و طعما ^ 

و یم سواہ سے و 


7ھ ۲ف" 

مر می تم لوک نی كوا کے مرش ول سنح و ےو کرو ان ال روہ خوش دی 

سے وذ ديل خ مکواس مب میں ست كول جز نو تم ا سکوکھاوعزودارخوش كوار ہبی كر 

يبال جیلو ل كل طرف ے بطیب اطم موا کر وہ مه ر اسنا لكر ن ےک اجازت دسي ہے 
یع مَرِيْمًا کالفظ بڑھایاے جح لكات جم دم الات حطرت تیان وی رح القد نے ”مووا رخو شکور“ کی 
سے یی لفظ رآ نکر مم میس تعر و جہوں پر ایل بجنت کےکھانوں کے ے بھی استعمال ہو ے ہیں » يبال ہے 
وی ہریت یر سر کے یت ہے 
بات کیل بل ایک در ہے میں مطلوب ہے 


اعاد یت وی: چ 
)1( .چٹ کے ےرس ست 


دا ۵ خ 
بل ىك دس یکا خوہ- کی ر سق بی میس و ایا تی۵ 
2( .......... نطرت الو بير ر شی اللہ تعالی عد (إجو حضو ر صل اش علیہ وآلہ و و آزادکر دو لام سك ) 
سے روایت ےک انہوں نے حور اتر س صل اٹہ علیہ و آلہ و سل مکی و عو کی او رگوشت بی جد كل وى 
اثر ں صل اللہ علیہ و آلہو مم کرو یکا اوش يشر تااس لج حر ت الو عبر ر ی اش تا ى عد فرمات ہیں 
کہ دستی آ پک دمت میس یی کی ءاس تماول فر كراد شاد فريك ”ند سی يكزا ٹس نے دوس ری وس بھی 
بی کی ءاس تاول فرك اد شاد فر يأك ”دسق دو“ یش نے عر كياك_كلر یکی كت ستيان موق ہیں شی 
دو سے زیادہت جج یکی د ستيال نی ہو تی آپ نے فرمایاکہاکر تم ناموش رجت تج ب کک میس انار بنا 
ر ستيال ی لک ر ےر O‏ 
(r)‏ 4ہ 75 رون پہ'" 
سكياس ايك دف گوشت لا یاگیا و حضور ازز ی صل الذد علیہ و ل وس ل مکودستی كيال اوردق أ كو يشر 
یئ آپ نے الت دانتقؤل سے تو ڑکر تقاول فررايا_ 990 
(۳)........ ایک وفعہ حور ار س صلی اللہ علیہ و آلہ و کم ححضرت جا بر ر شی ا قد عنہ کے پا نکی سلليل یل 
تر یف لاۓ دوپپہ رکا آرام آپ نے خضرت چا بر ر سی اش عند کے بالل بی فرماباء ضرت جا بر ر کی القد عر 
, نے آپ کے آرام کے دوران جل کی ےکم يلا ہو اكد کیکا ایک بيه ذ نكر کے بكواياء حضرت جابر رن 
ایل عنک یکو شش یکر حضور اتر ی لعل آلو 7 بيدار م وکر و ضوح فار مول لور ا آپ 
کے ساس تیا رکھانا ہوجو و ہو اس مقصید کے لے ضرت حاير ر می الذد عد خو و بھی این ادم کے سا تجح کام 
سم کک گے جب می اکرم صلی اد علیہ و آلہ و كلم بيدار ہو ے تو وضو کے لئ بی منگویاہ وضدے فار 
مو ےی بھنا ہو اتیار بكر ا آپ کے سان یی کر دیاگیاء حطررت جا برض الثد عن فرماتے ہی ںکہ ضور انر ی 
سل اللہ علیہ و آلو کم نے مير ى طرف ويكعااور ارشاد فراي: كانك قد علمت حبنا للحم ادع لی ابا 


(۱) شال نري ی اسن ام رخ اص ٣۵ر‏ ت ے ےے سا شب الا یمان ی رن / ص۰۹۱ دس کی پت یدگ یک وج عد يث برك تقر ج 
ع نياك نان ل 

(٢)شمائل‏ ترمذى ص7 ١‏ - وقال الشيخ الكاندهلوى فى الاوجز ج ١۱/ص‏ ۳۷۸: وروی احمد نحو هذه القصة عن ابی 
رافع وقال القاری: والظاهر ان القصة متعددة وقال الشیخ الكاندهلوى: وأخذ منه الصوفية الصافية ان الاعتراض 
على الشيخ يحرم البرکة۔ ۱ 

(۳) رواوالترمہ یوان ماج ( مكروص ۷٣س)‏ 


8 ح۵ 
بكر - گا فو اكد سب کو شت يندس ءال وم رکو بھی باو لوو“ © 
(ہ) .......... حت حاير ر گی اللہ عت ففرماتے ہی لك ایک د فد مر ے واللد نے ۶ ےہ( لف چزوں ے 
تیار شد ہ علو س|)تيا رک ےکا عم دياء جب وہ تیار ہو يك تو نح حضور اتر س عق خر مت میس نك یکر نے 
کے لے پیا ضور ارس یل نے بے دک ھکر بد جما كي أوشت لاے ہو ؟ شل نے عر كيال ال بے 
زیر ہے اپنے وال مكو جاكر مم نے یہ بات با امول ن ےکہاکہ شاید “ضور افر س عي كوشت تناول 
فانا ات ہیںء چنا نہ انہوں ن كعك ایک پا بر ذ نك اور اسے جو نکر کے حضور ارس مدکی 
دعت می پیٹ یکرنے کے لئے بصا »ل نے ير بجوف مول بر ی مور اقرس تلك غد مت میس كل 
اور لور ابا جر استایا وآ پ نے ار شاد قرا کہ اللہ تال یٰ انصا رکو زا شر عطافریاے پا غو س عير ال بن رو 
بن حرام (ضضرت جابرر ی اٹہ عنم کے و الد )اور سعد بن عپاو كو(" 
0( ...رت بر رور شی الد عن ایک پان ری یں جنہیں حضرت ماک رط الثر عتها نے خی بک رازا 
فر يتنه ان کے واقعات ز ن دی سے فقہاء نے بہت سے ساكل کے ہیں ای ٹس سے ايك واقعہ ہے بھی سے 
کہ ایک دقع حضو راق رس صلی اولہ علیہ ول مكح تشریف لا سے او رکھانا طلب فمایاہ اس وق تگھ رکے اندر ہنڈیا 
مم كشت پک رتا لین ضور اق س صلی الثد علیہ و م کے سان هكح رتيل ييل سے موجو كول عام اسان 
ب کر ويكلياء فور اق س سی الث علیہ وم نے فراا: الم اربرمة فيها لحم؟ کیا نے ہیام شسگوشت 
يناوا ل دیچھا؟ مگ ردالوں نے ع رح کیا:یار سول اور صلی اشر علیہ حلم امہ ای اگوشت ے جو خط رت بر رہ 
رضی الث عنباك کسی نے صد تے میں دا (او رآ صد ت ہک جز اول تس فرت )تو حضور اق رس صلی الد 
علیہ و كلم نے زملاک ريه کے -ك لي صدقہ سے يان دہ ایک دفعہ ا سک مالک ین جا کے بعد کے بطور 
بدو سے سے 1 ویر حك صرق یں رے بلك مر ہے نج وريم بین جا گا ٣‏ 


)١(‏ رواه احمد فی مسندہ ج٥/ص ۲۱٢‏ رقم ٠١۲۸۱‏ فى قصة استشهاد ولد جابر ومجئی رسول الله صلی الله عليه وسلم 
فی قضاء ديونه ورواه البیهقی فى شعب الایمان ج٥/ص‏ ۹۱ رقم الحديث ٣۸۹۲٦‏ مختصراً وروی احضر منه الترمذى فى 
الشمائل ص7 ١‏ ورواه مفصلاً الحاكم فی المستدرك ج٤/ص ١١١‏ وقال: هذا حديث صحيح الاسناد ولم يخرجاه وقال 
الذهزى: يح د 

)٢(‏ شعب الايمان ج٥‏ /ص ٩۰‏ رقم الحديث ٦۸۹۵٥‏ ورواه الحاكم فى المستدرك ج ٤/ص ۱١١‏ وقال: صحيح الاسناد 
ولم يخرجاه وقال الذهبى: صحیح - 

(۳)رواوالفار ى, مخلووص اا 


or Se‏ تج 

ا وات میس 1 خض رن صل الد علیہ وم نے عام سال نکی ھا ےگوشت طلب فرمایا ل ر حافظ 
ان تج رر حم الشرام ط ری ر ہے او سے شل فرماتے ہیں: 

دلت القصة على ايثاره عليه الصلاة والسلام اللحم اذا وجد اليه السبیل ۔ 

رم کت يه قعہ امل بات پد لال کر راس ےکہ حضور از س صلی اللہ علیہ و سل لكر کن ہوا 

گوش کور ند تے کک 
()........ کو ہی لتاب الا لہ می عد بييث قب ر11 ردی سے جس میں حطر الس رطق الل عور 
فر مات ہی ںکہ حضور اتر س صلی الذ علیہ و سمل مکی ند مت عل ای اکھانا یی كي اليا جمس میں ل وکی بھی تی و تضور 
ارس صلی ال علیہ و سکم پر من میں سے ل وک ڈو نر ڈعو كر تاول فرمارسے تھے لن مج روایات می ا کی 
وج صراحٹا وکر فر یگئی ےکہ آ پکولوکی يشر تھا_ چنا یہ ححخرت الس ر ی اللہ عنہ فرماتے ہی لك اس 
وت سے كك لول بیش پن د ر ا۔ 
(۸).........کھان كا صل ادرب فو ہے ہ کہ اپنے سانے سےکھایا ہا سے کن اکر بر کے میس ملف افو کے 
کھانے ہول قذايق بین دکی چ کھانے کے لے اس اد بک ر مایت ت ہو ای سے جك ايك د مل لواو يلو 
پن کر ے وال عر یٹ ہے امام خا رک دہ الد نے ىال سے یہ متلہ کال ے اس کے ملاو حر رت عراش 
ر نی اثر عت ہک الیک عد یٹ میں ا کی تقر بھی ہے تآس هكتاب الا لق بی کے بر ہے پآ ری سه اس 
سے گی مہ بات جد یش آ ف ےک ہکان کا منقتصر نل بھوک هذا ےکی ضر ورت بی تيل بک اس میں لير 
ان دک اٹ ایک اہمیت ہے ءا کی ناطرش ربدت نے سات سےکھان ےکا عمش مکر دیاے۔ 
E 0‏ کاپ الا لہ ہی یں ہر۱٢‏ بر عد یٹ آرت سك حور اق رس صلی اللہ علیہ و سلم حلوواور شير 
ند فرماۓ تك > علوم س كيا مراد ہے , ا کی فصیبل فو عر ی کی تشر کے و فت آ جا ےی ءال وت ہے 
غاب تكرنا ےک حضور اقرش صلی اللہ علیہ دس مکوکھانے ہین نبل بض پیز يل نبتأياد ند ل “جنال 
اک عد بی کی قث رج کے معن میس حافظ ابن تج رر حل اللہ فرماتے ہیں : 

ودخل فی معنى هذا الحديث كل ما يشا به الحلوى والعسل من انواع المآ كل اللذيذة . 

رجہ ...... ابی عد یٹ کے مون می ل کا ےکی سار ی لذ يذ جز بل جو حلوى اور شبد کے مشاہ 
ہیں داخل ژں_(۳ ۱ ظ 

ال عر بيث پر ا٣ن‏ کہ ہریت ذکر الخبر المدحض قول من 


چا هم جج 
كره من المتصوفة اكل العسل والحلوی مخافة ان لا يقوم بشكره_^ 
)1١(‏ .......... كاب الا لہ میں مر ۴۴ پر خضرت الو ہر یور شی اٹہ عت كك عد یث آ ری ےک ضور 
اتر ی صل اللہ علیہ و کم نے فرمیا: 
جس الشاكر کالصائم ما 9 


جو وو سو 7 “م مق الحسن الحال 
فی الطعم ۔ ”ج وکھانے بے شل ا یکی عالت میں ہو“ 
انت تر ES‏ 
رس یچچ نوز ور كور لاک کیا ے تاور وا ے ےک ان ست کرک دور ےکی ماک ۱ 
اور ای كك نشرک ذو سرس یرب سے شت ہو ہا ہے۔ ا عد بی ٹک تق رت کے شعن میں ع رخ کیا ہاے 
كاك يبال ايك قول کے مطاب نک ی اور سر دی سے م راو ىكرى اور ینرک ہے جس میس جور کے ک کی 
زی بھی داخل ےم گویادوون ا گور کی تی زی ت ہ کر ؤا کے عل اعت دال بيد اہو جااے_(۳' 

اہو ت مکی ایک ضوف روایت میس ىہ بھی آ اہ :و كان احب الفاكهة اليه ۔ ن خربوزه آ پکا 
موب تين جل تھا۔ زف 
(۱۳)............ حشرت كير الگ ہن بس راو ر عطید بن بس رر ی ایر عنہ اک عد ينث و رر 
ا تش رليف لاۓ تا نہوں نے جوراو رمن سے 7 اپ 
کی ضاف تکیء سا تجھ ی یہ ى فرماتے ول :و كان يحب التمر وامزید ۔ ”او رآ خضرت صل اللہ علیہ وسلم 
كبو راو رمن شر فا تے_“ 


) الا حا ن ن تق رييب کچ این حبان ر۱۳ / ص 9ه‎ )١( 

)٢(‏ رواه الترمذى ورواه ابن ماجة والدارمى عن سنان بن سنة كذا فى المشكاة وكذا رواه احمد عن ابی هريرة 
ج۳/ص ٣٢١‏ رقم۷۸۱۱ وعن سنان بن سنة ج۷/ ص ٢٢‏ رقم ۳٣‏ ۱۹۰ وذكزه البخارى تعلیقا عن ابی خریرۃ فنع الباری 
ج۹/ص ٠۸٢‏ ۱ ۱ 

(۳) وفی الطب لابى نعيم من حديث انس كان ياخذ الرطب بيمينه و البطيح بيساره فياكل الرطب بالبطيخ وكان احب 
الفاكهة اليه وسنده ضعيف فتح البارى ج ۹/ ص ”01/7 وراجع ايضا المستدرك للحاكم ج٤‏ /ص ۱۲١۱‏ 

(١‏ 200 | ص سمه 


وا ۵٦‏ نم 

(۱۳)........ باب لضیاف رك | ھھ ا 
انضارى ‏ بارع س اا ادا ےءاس میں ہے بھی ےکر حضور اق س صلی اللہ عليه 
و كلم سذ انصارى سے فرايا :اطعمنا بسرا_” ہیں 1 دی کی بل و رکا“ “اسل وقت حضور قرس صلی 
الہ علیہ و كلم صرف بپھ وک بی جل مٹانا ميات تھے بللہ بس رکھان ےکو بھی دل ياو اہج کہ ہاں ے ”کی 
گی ا سے انی ينديدءجز نک ی۔ 
(r)‏ وت 9 00 
میت ا لاء ہے بام تشر لف لے لي دعاءیڑ عےے: ٠‏ 

الحمد لله له الذى اذاقنى لذته وابقى فيّ منفعته واخرج عنى اذاه 

رجتم ...... تام ت لل اس اود کے لے ہیں جس نے مك ا كها ےکی لذت يكال اور کا 

فا ترو مثر حص میم ےبد کے اتد ر رکھااو كيف دہ کے کو وا لرا_ ٥‏ 

حر ت عا كش ر ی اٹہ عنہا کی عد بمث بل آ٥ا‏ س کہ خضرت فوخ علیہ العلام کی يبت الفاء سے 
ك لكري دعاہڑ اکر سے ے O‏ ) 

مقر ت نح بن زید سے ادایت ےک لو ]کو عبدا شکورا کیاکی وج ےکہاگیاے۔_ ^ 
(۵) رت تاب الاعلقہ یل تبر ۵۷بر صد یٹ آر بی ےک ضور اق ی زی کوش تكودانتل سے 
نو جک رکھا ےکا گم فرمایاہ ا کی وج ہے بیان فرماگی:فانہ اہنادامرا ”ىہ زیادوخوشگوار اورم مو والا سج“ 
نس روايات شل رافظ ثيل :فانه اشهى واهنا وامرا۔ "یہ زیادولز یذ خو داراو رم ہو ےکاباعث ے۔“ رگ 

كور ه بالا آيات اود اعاد ی سے ے بات وا يح ہو س ےک ہگ وکیا ےکا ل ممقصود فو بجو ل مان اور 
مك کت وبقاء سے کن ہے مقتصر لز يز اور يتنر ید ہکھاٹوں ے م صم ل كرح بج یکو کی نا بيد یہ بات میں ے 
لكا ےکی تفع تك ط را کی لات بھی ايك فقت الب ہے جس پر كرك لوق بل جائے لوي ديه 


(ا) عمل اليوم والليلة لابن السنى ص٢٢‏ وقال محققه لم اجده عند غير الصنف واسماعيل من رافع مختلف فيه ورواية 
رويد بن ناقع عن ابن عمر منقطعة قاله المناوى عن العراقى قلت: لکن له شاهدا من حديث عائشة کا سياتى من اثر العوام 
عند ابن ابی شيبة ج١‏ /ص ٢‏ 

(۲) رواه العقيلى فى الضعفاء والبيهقى فى شعب الايمان والديلمى کذافی كشف النقاب ج١‏ /ص ۲۳۹ 

(۳) رواه البيهقى فی شعب الايمان ج٤‏ /ص ۱۱۳ وراجع ايضاً الدر المنٹور ج٤‏ /ص ۱٦١‏ 

(۳) رواه الطبرانی من حديث صفوان بن امية المعجم الكبير ج۸/ص ٦۸‏ رقم ۷۳۳۱ 


و ےی 
تلكا بذ موث اور آسمان ذر بير بھی ے, تضور اق س زی کو بح یکھان ےکی نض میں زیاد وم رغوب یں 
اور آپ انل شوق سے تقاول فرہا کر کے تھے بك گھ ریا بے کا یکی يبلل الى جز لب بھی فرمالاکرتے 
تھے كه نسل نض طر بتو ںکواس لئ بھی آپ نے ند فمایاکہ ان می لذ ت زیادہعا صل ہو ل ے۔ 


70 رد لی ے مل وک كف کلپ اق 
دہ ہے ةيل رولت كلك چا ۔ 


)۸ 9 

مم ...... یہ بات اسراف ئل وال ےک جس چ رکو بھی ہار ادل يا ے اس ےکھا ےکک چا( 

ين ىہ عد یٹ سند کے اقتبار سے اچاق ضيف ہے اس مل کے اك سند مس ایت راو قير بن 
الو لير شف پل »دوس ے راو ی سف بن ا یکی یول ہیں اور تس ےر اوک و بن ذکوان انتها ل ضیف 
ہیں سند يفصي یکلام عاشیہ می لاح فرہاسے © ٠ ٠‏ 


(ا) رواه ابن ماجه ص ۲٥٢‏ والبيهقى فی شعب الايمان ج٥/ص ٦٤‏ وابو نعيم فى حلية الاولیاء والبخارى فی الادب 
المفرد والذهبى فی ميزان الاعتدال ج٤/ص ۲۷٦‏ فى ترجمة نوح بن ذكوان ۹۱۳١‏ وعزاه الالبانى فى سلسلة الاحاديث 
الضعيفة ج۱/ص ۲۷۲ الى ابن ابی الدنيا فى کتاب الجوع ايضا 
(*) الحديث اورده ابن الجوزی فى الاحاديث الموضوعة كذا فی سلسلة الاحاديث الضعيفة للالبانی ج١/ص‏ ۲۸۳ وذكره 
الحافظ ابو الفضل المقدسی فى تذكرة الموضوعات ص ٥٤‏ وقال: فيه نوح بن ذكوان وهو منكر الحديث وذكره المنذرى فى 
الترغيب ج٤‏ /ص ۲ ١۲ب‏ ”'روی“ ممايدل على ضعفه عندہ۔ 

واسانيد هذا الحديث تنتهى الى بقية بن الوليد عن يوسف بن ابی كثير عن نوح بن ذکوان عن الحسن عن انس 
رضی الله عنه ولم اجد من تابع بقية فی هذا الحديث وتتلخص علله فيما يلى: . ۱ 

بقية ضعفه بعض الائمة وقال احمد: اذا حدث عن قوم غير معروقين فلا تقبلوه ومثله روى عن يحيلى بن معين 
والعجلى وابن المبارك والنسائى راجع تهذيب التهذيب ج١/ص ٦۷٤‏ ومابعد وهذا الحديث رواه عن يوسف بن ابی كثير وهو 
مجهول كما سياتى وبالاضافة الى هذا فان بقية مدلس ولكن تنتفى.هذه العلة بتصريحه بالتحديث عند ابن ماجه ‏ 

وف بن ای كير مجهول قال الحافظ فى تعیب لیب ج15 رص 489 هو اعدا شیوخ يقي الذين لا يفون 
وكذا صرح بجهالته الذهبى فى الميزان ج٤‏ /ص ٦۷٤٤‏ - 

(ہائی حاشي را كل کے پر ملاحطہ فر بل ) 


5 ۵۸ے 
اکر ہے عد بث تقایل قجول ہو بھی توا كاري مطلب ہو کاک علال و مرامء مناسب و تیر مناسب او 
E‏ کشم ر ل ول تر تی شرا ہے 


اياك والتنعم فان عباد الله ليسوا 4007۶+ 

ب تم نيادهاذه ثنت واف تدك سے پچ اس س ےک الث کے تیو ل بندسهنازه لم کی 
وك دار واي كن بن 09 9 

مشلوة کے ماشہ يبل مرقات کے حوانے سم (إنانزو نقنت )كا مطلب ہے 1 كياكيا ےکہ خ اہشات 
××" ہر و ار 


(حاشی ہے لزشرے يوست ) 
نوح بن ذکوان ضعیف الحديث جدا قال ابو حاتم: لیس بشئى مجھول قال ابن عدى: احاديثه غير محفوظة 
قال ابن حبان: منكر الحديث جدا يجب التدكب عن حديثه قال الحاكم: ليس بالقوى وقال ايضا: يروى عن الحسن كل 
معضلة وقال ابو سعيد النقاش: يروى عن الحسن مناكير وقال ابو نعيم: روى عن الحسن المعضلات وله صحيفة عن 
الحسن عن انس لا شئی راجع تهذيب التهذيب ج١١٠١/ص‏ 484 وميزان الاعتدال ج٤/ص ۲۷٢‏ قلت: وهذا الحديث 
ایضا من رواية عن الحسن عن انس۔ 
وقال المنذرى: وقد صحح الحاكم اسناده لمتن غير هذا وحسهه غيره (الترغيب والترهيب ج٤‏ /ص” )5١‏ ونقل 
عمر بن حسن فى كتابه الوضع فی الحديث ج7/ص78 4 عن الحافظ ابن حجر ما نصه: هذا الحديث صحه البيهقى كما نقله 
عنه المنذری فی الترغيب والترهيب ولكن لم يوجد فى نسخة الترغيب المطبوعة تصحيح البيهقى هذا الخديث وانما فيه 
تصحيح الحاكم حدیثا غير هذا روى بنفس السند ولكنه لا یستلزم صحة هذا الحديث او هذا السند عنده فلعله صحح حدیٹا 
بهذ السند لانه وجد لله متابعات وشواهد وكيف يصحح الحاكم هذا السند وهو نفسه القائل فى نوح بن ذكوان: لیس بالقوى 
ويروى عن الحسن كل معضلة۔ 
الحاصل ان الحديث ضعيف جدا ولكن لا نتفق مع ابن الجوزى فى حكمه عليه بالوضع لانه لیس فى سنده من رمى 
۱ بالوضع او الکذب۔ ۱ 
)١(‏ رواه احمد فى مسندہ ج۸/ ص ۲٥۷‏ رقم٦٦١٢۲۲‏ وقال المنذرى فی الترغيب ج٤‏ /ص 7١”‏ : رواه احمد والبيهقى 
ورواة احمد ثقات وقال الھیٹمی فی المجمع ج١۰١/ص ٣٥٢‏ رواة احمد ورجاله ثقات قلت: فى اسناده بقية بن الوليد 
وهو مدلس كما مر وقد عنعن فى اسناد احمد وفيه ايضا صريج بن مسروق لم اجد ترجمته فى التهذيب ولا فى اللسان 
واطلاق قول المنذرى والبيهقى: رجاله ثقات يدل على انه ثقة- 


مقن 

سيكون رجال من امتى ياكلون الوان الطعام ويشربون الوان الشراب ويلبسون الوان 
الثیاب ويتشدقون فى الكلام اولئك شرار امتى الذين غذو ابالنعيم ونبتت عليه اجسامھم ۔ 

7 .یز کی ات مین ينه ل وكات مون کے چو طرخ رع ے کان لعا کرس گے 
7 7 5 0 1 سجر 5 یم 
انواغواقسام کے مشروبات پیا إل کے »ر گا ربک کے کڑرے پناک ہی کے اور بے احقیا شی سے زياد ہب س 
کیک يل کے مہ میرک امت کے بد تر ین لوگ ہوں کے جن میں از و نت والى غز انیس على ہو لك اورا فى سے 
ان کے جب مکی پر در مول ہ وگی_( 

رت الد ایام ی الث عت کی ىہ حدیث فوس ر اف ے ان ای ے ذر قر شون حطر الو ہریرہ 
ری اد عنہ ؛حضرت کپ ر الث بن “غر ر صی الث عنہ اور ضرت فاط ر ی الث عنہا سے بھی منقول ے © 
(1) رؤاه الطبرانى فى الکبیر ج۸/ص ۱۰۷ و کذا رواه ابن ابی الدنيا كذا فى الترغيب ج٤/ص ٣۰٢‏ واشار المنذرى الى ضعفه 
ب روى ولكن له شواهد كما سیاتی وكذا قال الھیٹمی كما نقله عنه محقق المعجم الكبير للطبرانی: وحسنه شيخنا (اى 
العراقى) لشواهده ولم اجد هذه العبارة فى نسخة مجمع الزوائد المطبوعة فى مؤنسسة العارف بيروت (5 )0١ 4 ٠‏ واما ما فيه 
من قوله: رواه البزار وفيه عبد الرحمن بن زياد بن انعم وقد وثق والجمهور على تضعيفه وبقية رجاله ثقات فلعله من غلط بعض 
النساخ فان الذى رواه البزار والذى فيه عبد الرحمن ابن زياد هو حديث ابی هريرة رضى الله عنه الاتى بيانه بمتن اخصر من 
هذا لا حديث ابی امامة كما يظهر من كلام المنذرى فى الترغيب ج4/ص 4 ۲١‏ وحاشية المطالب العالية ج۳/ص ٥٥١‏ 
رقم ۳۱٣٥‏ ومن سلسلة الاحاديث الصحيحة ج4/ص ١6‏ ه : 
() اما حديث ابی هريرة رضى الله عنه فرواه البزار وراته ثقات الا عبد الرحمن بن زياده ابن انعم (الا فریقی فانه ضعیف) كذا 
فى الترغيب ج٤/ص ٣۰٢‏ وكذا رواه ابو یعلی فى مسنده كما فى التعليق على المطالب العاليه ج۳/ص ۱٥١‏ رقم 5.18 

واما حديث عبد الله بن جعفر رضى الله عنه فرواه ابن ابی الدنيا والطبرانی (الترغيب ج٤‏ /ص )٠۰ ٤‏ وكذا رواه 
الحاكم فى مستدركه ج۳/ص 558 فى كتاب المناقب فى ذكر عبد الله بن جعفر رضى الله عنه وسکتا عليه لکن قال الذهبى: 
اظنه موضوعا فاسحاق متروك واحرم متهم بالكذب وقال العزيزى فى السراج المنير ج*/ص ۲۳۹ بعد عزو الى الحاكم 
وقال الشيخ: حديث حسن لغيره واما حديث فاطمة رضى الله عنها فرواه البيهقى فى شعب الايمان ج©/ص ”” رقم فكدكه 
عن حسن بن على بن ثایت عن عبد الحميد بن جعفر الانصارى عن عبد الله بن حسن عن امه فاطمة رضى الله عنها بدت رسول 
الله صلی الله عليه وسلم الخ وقال: تفرد به على بن ثابت واما حديث فاطمة بنت حسين فرواه احمد فى الد وابن ابی الدنيا فى 
المجموع وابن عدى فى الكامل قال الالبانى وهذا اسناد جيد رجاله موثقون الا انه مرسل راجع سلسلة الاحاديث الصحيحة 
ج4/ص ٥۱۳‏ رقم۱۸۹۱ قلت: ولا ادرى اهذا الحديث والذی قبله حدیثان مستقلان ام اشتبهت فاطمة بنت حسين بفاطمة 
بنت الرسول صلى الله عليه وسلم على بعض الرواة من عبد الحميد بن جعفر وان كليهما من روايته ‏ 

واما مرسل عروة بن رويم فرواه ابن المبارك فى الزهد وقال الالبانى: هذا مرسل صحيح الاسناد كذا فى سلسلة 
الاحاديث الصحيحة ج ٤‏ /ص ٢٤١٥‏ ۱ 1 


.0اا 

ا نکی سند می بھ یکو ضیف ہیں لیکن کو ی طور پر تخد اسانيد مو ےکی وج سے ہہ عد یث كبن 
قبول بن ہا > »الى وج سے علا شی ر حمر اللہ نے حافظ عراقی سے ا س کا صن ہو تق لکیاے , با وص 
اس وجہ سے كك بی عد یت خضرت فاعم بنت این ر ی الثر تپا اور روه بن روم سے مرسلا بھی 
موك ے اور دول مر عل عديثو لك سنريل بقول البالى جا یاجید لمر سل ووعد بی کہلاتی سے جس 
يل تال ی کی سیا ی کاو اط کر ہک میں یر اور است ا کی فبدت حضو ر اق س صلی اٹہ علیہ وس مکی طر کر 
دل اور عد ييث م سل پزات خود کی بہت سے علاء کے زديك قابل قبول مولى سے جو اے قول ہیں 
کےا نے ناريك کی ای کے تو ىك دا رد عر کی یت ا ی کی و م کم 
٠‏ جاۓ تووم قائل تول بن جالى ےء يبال کی ايك تو ايك م رس لکی حار دوس رق م مکل سے مو ری سے 
ووسر سے ا کی جام حط رات الو امام ءالو پر واور عبر الث بن حف رر على افر م خی ہک ضیف احاد یٹ 
سے مو ر نی ہے لبذ اب عد مث تن لزاع ن لخر و ےک مکی بھی حالت میس ہیں د 

حر ت الو ہر ور شی ال عن ہکی عد ی کا تن حسب بل سے حطرت عبرال ڈ رہن فز ر ی الله 
عت رک عد بی تک سنن بھی تر کی ے: 

ان اشرار امتی الذين غذوا بالنعيم ونبتت عليه اجسامھم۔ 

7ٹ شرق ام له نان ادك ون ع را عن لی وو نگ 
اوراى يران کے سو لك رور شش ہوگی موی 

727 ور ہج نظررنے پاس ULE‏ 
الفا یش بیش اس اکھانے اور اجا يتنه کے سا تخد سا ت تشدق فى الا ما بھی کر ے سكا معن ہے ہے 
احا ی سے زیادہ با تی کر نا جس میس عمو ]بہت یکنا ہک پا یں بھی شا ل ہو حال ہیں یاااس اند از سے با یکر نا 
جس نے حاطب کے سا ته استپزا یں ہو ی ج مو ]از وت اور یر گی زت ر یکی وج ےپ اموق 
جا ىس ےگوبانفکوروو عیدران تام او صاف کے کے پر ہے لین نار کہ برو ص فکا اس وعید کے تن 
ہونے عل يدت یھ و خل ضر ور ے۔ ٠‏ 

دوس رگا بات ہے س ےکہ مشر احم وغير وك روايت يل ياكلون الوان الطعام کی يجاح بطلبون 
الوان الطعام والوان الثياب کے الفاظ ہیں جس سے معلوم م واک ري وعيد ی تز ت ر یکی طلب اور شوق 
باع ل پا سے کا 


* سن 


(م( 20 4پ سی ری رح یت لت 
جس میں حضور اقل مَل کے ب الفاظا بھی ہیں :نعم الادام الخل۔ ”ہرک بتر ين سان سي“ 

اسکی تر کے ہوے ملام خطال ار حم ال فر سے ں: 

معنی هذا الكلام: الاقتصاد فى الما كل ومنع النفس عن ملاذ الاطعمة كانه يقول: 
سم سد ا ا تتأنقوا فى المطعم 
فان تناول الشهوات مفسدة للدين مسقمة للبدن 29 

ال عرد ی ٹکا مقص رکھانے میس میانہ روک اختیار,گر نا "تم سے گدیا 
خضرت یھ یہ ار شاد ف انا چا ہی ںکہ سرك اور ال یکم مققت او ركم تمت جز بل جکیاب أل 
ہو أي ںکو یی بور سان استعا لک ل کر و او رکھانے میں زياده کلف كام نہ لیک وال ےک خو ابشا تكو 
اص کر تادر نکوفاسد اور بد نكويها رکر دیتاے۔ 

)۵( تس تایلی نج ھب الا یمان محرت الو ہر ہر وى الث عند کے جو انے سے ہہ مدب لک ے: 

للقلب فرحة عند اكل اللحم وما دام الفرح بامر الا اشر وبطر فمرة ومرة- 0 

مرجم مس كوش تکھاتے وقت و كو ايك خو شی حا صل ہوتی ے اور کے بھی سلسل خوش 
ا وود تأ زور كيز هوي اخ ابن کے کے کی ر کک 
۱ لن اس مر ی ےک ماف ابو الفضل ا مقر ى اور حافط این تر رجہ الثد نے مو ض عات میں شا رکیا 
ہے اک ریہ عد ی مو ضوع نہ بھی ہو نوكم ازم نچا ضوف ضرورے_(۳ ۱ 


() ماما سن رح مقر سن ای داور / ص۲۸٣۳‏ 
() غمبال مان۵6 /| ص٣۳۲‏ 
(7) ذكره الحافظ ابو الفضل المقدسئ فی تذكرة الموضوعات ص ٤ ٤‏ وقال: فيه احمد بن عيسى الختساب التينسى هو 
كذاب وذكره الحافظ فى لسان الميزان ج١/ص 4١‏ 7 فى ترجمة احمد بن عيسى هذا وقال: قال ابن عدى: له مناكير وقال 
ابن طاهر: : كذاب يضع الحديث وقال ابن حبان فى ترجمته: كان يروى مناكير عن المشاهير والمقلوبات عن الثقات لا 
يجوز الاحتجاج بما انفرد بەلڑگال مسلمة : کذاب حدث باحادیث موضوعة۔ 

قلت: تابع احمد بن عيسى عبد الله بن محمد بن المغيزة عند البيهقى فى شعب الايمان ج©/ص ۳۲ لکن عبد الله 
بن محمد بن المغيرة هو الاخر ضعيف جدا ذكره الحافظ فى اللسان ج/ص 7 وقال: قال ابو حاتم: لیس بقوى قال 
ابن يونس: منكر الحديث قال ابن عدى: عامة ما يرويه لا يتابع عليه ثم قال بعد سرد مروياته منها الحديث المذكور ان 
للقلب فرحة .......---.. الخ قلت: وهذة موضوعات قال النسائی: روى عن الثورى ومالك بن مغول احاديث كانا انقی الله ان 
يحدثا بها وهذا الحديث ايضًا مما رواه عن الثورى - . 


و 


7- ۰" کت 

(زیادہ كوش تکھانے سے بچو اس لكك ا کی کی اريك بی عادت يذ جالى ہے يت شرا بك“ 

تقر ]یی مون حضرت ءا کش ر ی الثد عنہا سے بھی مدکی سے اس کے الفاظ مہ ہیں : 

يا بنى تميم! لا تدیموا اكل اللحم فان له ضراوة كضراوة الخمر -" 

”اسه بی میم اپمیشہگوشت تو ہکھاتے ر باکر وال ہک ہگوش یکی ا 
جیے شر بکی_“ 

حشرت عرد بن لير نرا نے ب کہ بے ی بک بات کی ہا کہ آو ی گو شت کے ار صر نہ 
كرح (r)‏ 

یہاں يبي ضاحت بھی مناسب معلوم مولى بك حضرت تیان ویر ہے ال نے انکشف ص۵۷۸ 
يل تیر سے لف لکرتے مو سے موطاامام .الك کے حوانے سے خضرت عم رر نی الث عن ہکا کور دبالا اد شاو 
تق کیا :اس میں ہے الفا زا دوک فا مین 

وأن الله يبغض اهل البیت اللحميين ۔ 

وراش تھا لی ىك كعرو الو کو پٹ كرت جني كوش کیا ےک( لا زی )تاوت و ہاے_“ - 

لین مو ملا کے مطبویہ وال میس حت عم ركان كو ره بالا اد شاو تو سے ان اسل میں ہہ آخرى جملہ ان 
:الله يبغض سس اللخ یں سے ۴2 ای ط رح حضرت اليد یت مو لان مد کر یکا تر علو ی فر سل رہ 
نے بھی او ہز کے اندر اس تلاکو وکر نیس فرمایا ا لالکہ جہاں موطا کے خوں عل اختلاف ہو وبال 
ظرت تر و لاحت راز ارت اد 

بال الات تاٹی رح الف نے شعب الا مان مم ل كعب احا رکا قول ق کیا اس میں كور دبالا جملر 
کی ییو رص الث ال را مکو ر س تايل کے ہوا ےے سے ہی حضو راق ر س مار شو ی کیاے: 

ان الله ببخض البیت اللحم ”الہ تخا حكوشت وا ےگ رکون بپند فرماتے ہیں_“ 

ححضرت مرة بن جناب ر ی الد عت جو اس عد بیث کے ر اوک ہیں کے صا مز او مطرف سے لو تھا 
كيال كوشت وا ےکر ےکیامادسے فوا مهال نے فر راي كل ایگ ننس میں لوكو كل بتكل وال ل2 یی 


و چک 
تي ردام تال رہ اللہ نے سفیان فو ری رح الل سے بھی نف لکی ے ۵ ور سی 
الله يبغض البیت اللحم) سےا ےون و تراغ 
زل ۔ اک سنہ مب 5 


خض رر چایر ر ی الہ عد سے رات یی ملا e‏ 
ماد مگوشت انها مو سے تھاء حضرت رر ی ال عنہ نے لو بچھا: ‏ کیا سے ؟ خضرت جار ر شی الد عذد نے 
ر كيك يب كو شه تك خو ای بو گی اس ك عل نے ایک ور تمك ا كوشت خر یراے۔ حضرت ع رر ی 
الشعت نے ار شاد فررايا: ظ 

ما يريد احدكم ان يطوى بطنه عن جاره او ابن عمه اين تذهب عنك هذه الاية: 
اذهبتم طيباتكم فى حياتكم الدنيا واستمتعتم بها-0) 

2 جم ......کیاتم اپنے بدو كايا با ذاد با کی اطر ۶ 0 ر 
آیت تسح كبال فی ہو کی( نمل عل الث تھا کار شاد چ )تايف لذ تل دید یذ نرک م کر اور 


ان ح فا تہ( جو انات تھا )ا ٹھا گے _ ۱ 
ان ال شير روايت مل ہے کی آنا هك ححضرت چا بد ر ی الدّد عت كلا بات نکر نضرت مر 
.مر ى اش عنہ نے فرايا: 


أكليما اشتهيت شيئا اشتريته- ”ج ب کی تہا راک چ كود لها > ات لا زی خر یی ليت ہو؟“ 
0227 کت او پر لکروودونوں طرف کے ولا تل میس غو رکرنے سے مثر رج ؤ مل ا مور 
كته یس آتے ہیں ادا ٹیا مو ركوذ کن شل ر کے سے یہ بات بھی واج ہو جاک ے کہ دوٹوں طر فک آ أيات 
اا الول تقاض يل > 
()...........اصل حم ش ریت با كد لیذ اورمر و بکھانے اغیر لب وھ کے میں توان سکول 


(1) شع بالا یمان۵ | ص ٦ ٣٣‏ 

() اما غياث بن كلوب فقال الحافظ فى اللسان ج4/ص "77 4 ضعفه الدارقطنى قال البيهقى غياث هذا مجهول (ملخصًا) 
واما الحسن بن الفضل فقال الحافظ فيه: قال ابو الحسين المناوى اكثر الناس عنه ثم انکشف فتركوه وخرقوا حديثه ‏ 
2020011111 

(۳) مو طا رح او الال رح ١6‏ ص۹٣۳‏ 


EA. 
قباحت تيبل بک اللہ تال يك نمت ہیں ای ط رح اعت دال کے سا تھ ا نکی طلب و ”جو بھی چا ے اس ےل‎ 


جے ار نے پان تر بجو ء ان عل بت رہن ابات نین اور سويت بھی یش ال مین ج کی سوال مه 
عیاش ٹیس کہ دوس ری طر فک بش اعد تاتا ضيف ہیں یا سپچ ملب پرا نادلا 
اتی اح س۔ 


NT‏ و بھی جائے عو 
وہ شرن ان تک کد ود مو جا ہے بأل تش او قات ورك لذت کے اتنا مکی وجہ سے ائ اوير چب اور خور 
ند یک نظ رون للق اور آ دی اس خيال بعلل جتلا ہو پاتا س ےکہ عل اللہ تیا یکی تمتو سے يب تكم 
مستتفید ہورپاہول نسل سے ایک طرف لو عبد یت ج کہ لوس دی نکی اصل روح ہے سے کروی ہو ہا ے٠‏ 
دوس ری طرف شلك نیب بھی سلب ہو ہا ے جب کر ان اتتا ہم نقصووى در ےکی عبادات یس سے 
ے مج نكاس لل جنت میس بھی جارد ےگا_ © 

بجی وج ےکہ اپ دور کے مرو تضوف و کل وک حط رت انی اعد اللہ ہا کی ر حل اش نے حدم 
الا مت خضرت مو لا نا اش رف طلى تیان وی رہ او کور شیع فرمائی ىك “ميال اشر ف على ایا جب گی 
ناح اچنا “اور تست ا کی ىہ بیان ف مال یکاک مگ م پا و گے تو صرف يان ا مد يش کے ےگ اور ٹر ابل 
پنٹ ےکی صورت عل رو كل رو لس بے مختد امد ٹہ ےک 


اض ردی اور اكتاث بيدا د ہا ے جو عباوت میں معفراور توج الى اللہ گل ایت ہو لی ہےءاس کے 
وك عاذ وف ادال کن ر تچ ہو نے لاتق کے کی بى خو ش کر لیا ہا ے تو طبيعمت ٹس شاط پیر اہو 
ک كيف عبادت اور توج الى ال س تق ہو کی ے۔ عبادت میس نشاط بھی شر بت میس مطلوب و مقصورے_ 
خا حضو ر ار س صلی اللہ عر و م کارشارے: 
عليكم بما تطيقون من الاعمال فان الله لا يمل حتى تملوا۔ 
کر جم ...... تم ےی اعمال اخقیا ركياكرو جل نکی تمہارے اند رمت ہو اس ےک الث تعالى تایا 
فل فر نے ے سا اکتا نے بک تم ووی اکتا جا گے( 


EKO)‏ اب زر عنوان ر (r). ...٢‏ بتار الا ىر ۷/۴ اا 


ہے ۵ تج ۱ 

ای طر ایک دف ضور قرس نے دوستو فول کے در ميان ایک ری بند ھی ہو گی د کی آپ 
کے ل کے با اک ہے حثرت زب ر ی اور تھا ے پاندھ ر کی کے را کوجب نماز سکھڑرے 5 
تک ال ہیں ا سكاسهارا._ل لیق ہیں۔ حضوراق رس ےار شاف اہ :ر یکھول ووچ بتک نشال ہو 
ماپ ”ار ہے جب طبيصث ب مل بيد اوج لبيك ہاے۔ 0 ۱ 

ان اعاد یٹ سے عبات شی نشا زک اهيبت وا ت ہوگئی۔ E‏ 
رن ےکا باعث ٹن سے ایی ہی یکا رذ نکی عا چاو ضردرت سے زا ند یامتدیال عا ی رر کا 
انداز بھی اس پر یا شات مرخ بکردیاے۔ 


(۴)........ لفریفذکھانو ںکی مش روعیت و مظلوبيي تآ چ ثابت سے لن اس عل عداختا لكاخيال ركنا بت 
ضرو رک ے۔ مند رچ زی صو رتل طلب لزت کے اندر اعت الى عبن دا کل سا 


)0( مت ایک سے لذي ذكحان ير طالب وكاوش کے عن ير خو شی ےکی ینای يكف كل چ میس مسجو ار 


1 مس کن کی قوقع ہو توطل بكر لیا ىہ اوخو و حور عه کے ١خ‏ مل سے خا بت ہے۔اس سے زائر * قاور 


کو شش اکر چہ ارڈ لے سے م وكم رکم خواص کے لے مناسب ثيل حضو ر اقرش ذه کے ينض كوانول 
بن خی امطاب ھی خطالى اور این الین نے لول میان ان 

< لم یکن حبه صلی الله عليه وسلم على معنى كثرة العشهى لها وشدة نزاع النفس اليها 
70 فی ف خت نماد ادن ات انها شح 

”ضور جه کے ا نکھانو كو ند فرا ےکا و 
ول الود آپ کے دل شلا نکی شی خوائش يداول تويلا مطلب بی ہ كدي یہکھانے ہب پ کے ہا سے 


يبل کے جات و انس ا تھی مق رار یس تاول فرت نس سے اداه ہو جاع ل | نبال شر را ے ص * ۹ 
مم ٭ ۰ 3 م 


)2 تی ز دی یس بثاشت و راحم تك انميت حضور اقرش صل اللہ علیہ و کم کے اس ار خاد سے بھی 
دامع ہوئی ےک سف عرا بکاای گا ےہ آد یکو سب اکا نے پٹے اور 2ھ 
جب رورت لو ري ہو جا نے لر ىكرلوك ٹف آنااجت- 9 

88110+ 
کہ دن :داك رک کے ك کاود گار 


() جج بخاری مع جن المبارى ج۳/ ص باسم ۳( 2 البارى ج۹ / ۵ ۳( تح البقارى مع جع اباری رح ٣۴/ص‏ ناد 


۷۲۳ ابر ى٣ /|ضص‎ )٢( 


رم 20102 e‏ ےت 
خطرناك لمك بے ات الى ہے بی ءلذات یں ایا شاک بھی مر ہے بس سے انا نکی توج تدك کے 
ماد اصلیہ ہے رمث جا ادر وہا کی لذ ائزكام كارو جاع اور من شد لذ ي ةکھانو ل كاعم دستيالي اس کے 
لے پر ینا یکا سب بن جائے۔ لذا کی شر عا مطلوبيبت و شرو عي کی ایک کلت اد پر یہ ھی ذک ہک یگئی ے 
کہ ان سے لبق نشاط ما کل ہو ما ہے ىہ مقصدد بھی ای وت کک ما سل ہو سنا ہے جب کیک لت للق 
ص اور شد ی انها كك مد جک نہ کی ہو وكرت کی لت جحعیت نار بر ہا وکر ےکا عت بھی بین علق 
ہے اس ےک نس چ کودل چاسے دوفو رٹل بھی جا ہے صرف جر کی خصو میت ہے ونیا بل اليا موا 
مان ہیں حر رر ی اد عنہ اور حط رت عاش ر سی ابر عنهاك اس ار شا رک وشت کے نے سے 
پچ کا بھی بی مقر ے اور ميو راز سے حطرت ع روہ کے اس قو کاک ای با تكو عیب “جما جاحا تاک ٣وی‏ 
گوشت کے بف رع ر نکر ے۔ 

لز ی كح فال کے اتی رک رن ےکی ایک کت مہ بھی یا نک یگئی یک اس سے شک رک تو فق زیادہ 
ہو کے ىہ کی ھی ہے جب لز تک حم دل مس پیدانہ ہونے دك جاسة وکر دی زس نض اوقات 
انمان ے تاعت می کون ور احت ر سماصفت بك نکر ا سے بے ص ر ااور نا کر ابناو بق ہیں مطلوب معاز نہ 
لت پر صب ركد اسان ہا تھ سے لکل جا ےگااور اذ ہکن میں ٹے کے ہو ے معیار سے اس کے ز عم می ںکم ر 
تو نك نافد ری و نا شک بک ز بان سے ا نکی قو ین ٹس بتلا ہو جا ۓےگاادر یہ بد ى خطرناک صو ر تحال ے۔ 
این یٹ می نیک رھ صل اطع وع کاارشادے: 

نعم الادام الخل» و کفی بالمرء شرا NR‏ :1 

5 رک ایک اھا ان ہے آ دی کے پراہہونے کے لئے ع با کان هك ای کے 
عا كفة کے لے يع کیا جانے وال چ کی دج سے راش ہو جاے۔ ' 
(م) مہ لزت لی عل ے اعتل ال یکی ایک صورت ہے مھا سكم آد یکو لز بڑکھانو لكا شوق خر غرض 
اور ووسرو كل ضر و ریات چ جاخ ل يناد ے» اسلائی حي و و روزت اط انی 
ضر ور ت کم يري م کیک نے حضو راق س صلی الثد علیہ وسل مکار شاد آ کے آر پاس ےکہ ایک آد ی کیان 
د وکواور د وکا چا رک وکا ہو جانا سبك اگ ہے نہ ہو کے فو كما كم دورو ںکی شد یر ضر ورت کے پیش نظرايق 
خواہشا تک قربا کے لے فوتیار ہو نا ہے۔ 


)١(‏ شحبالا مان۵۴6 / گ۸۵ 


EE 

حضرت رر تی الہ عنہ نے خضرت جا پر ر ی اللہ عند ک كوشت خر یر نے پر جو اعتراض فر ای سے 
ا کا متقصر بھی می سے جلراکہ ترک لز کی اعاد بیت کے سليل بر بر لف لکر دو حطر رر ملق لقرعت 
کے الفاط سے معلوم ہو جا ہے علا با گی دحم القد فرماتے ہی ںکہ رت رر سی الد عثد نے ہے بات الت 
عالات شی ف رمال ے جب عام لوگ خت تنک عالی میں بتو سے( حضرت الجخ مو لان مجر زک راک ند علوى 
ت مس صردفرماتے و لك آپ نے مہ بات ماد دانے سال فربائی گی( 

دمادهوا لا ال ۱۸ ھک کہا ہا تا سج ءال سال جياز می بڈاشد بی قط پڑانھاء ا کو عام الرماد کی کی وجم 
كلاس سك تيك سا ىك وج سے ز ۲ نكا ركك راكد ( سے على بی ر ماد وک ہیں )کی طر رح م وی تیاور کی 
بھی اک ہک ط رم اڑل ءا قا سك زہانے می فرت عمرر شی الث تدك طرف سے ايا وار اور 
موا سارت کے نے مل مناظ ر ہا سے 1 1 ڈیا سے پیل حف رت رر تی الل چو كور ول کی اور وود یش يلصو ۱ 
کروی باق تی لین اس موق ر آپ نے یہ فيصل فر ليا تاکہ وگوں کے خو شاك ہو نے میک می سکھی استعوال 
رو 9 پچ پب-   ْ‏ رش پکو بڑی مشقت انما لی ديرو کی 
راب مو گیا تا , نض او قات خك کے روران پیٹ س ےگ رگ زکی آواز آل يان سے 0 كر حك 
فر ےک جب کک کی او قو عل ( ن سے واموں) ہیں کک لك جاااس و فت کک #مبل ا یکی مارت 
ڈلنا ہیاس ریات د اپد کو چ ہے آ كاركك تھی یاو گیا تھااور ضعف کی کان ہ گیا ت_ (۳ 

و فی نحن با ی 
ا يديرك وارد ہو گی ے ا کا مقصمد ب کور بالا نو عی تکی بے اعت الیوں سے ”کر نا ےء مطلقاً لا تباال نک 
خو ا كو موم قراردینا أل ۱ 


صو في ہکا ایدو رک لزات:- 

(۵) 0 .... مکورہ يالا شتو سے جتبال ہے بات وا لح ب وك کیہ علال دائرے مس رتے ہو سے لذ يذ اشياء 

کھانے ب شر بعت سكول تن عا تدك ے اور نرت یکی افقبار سے قال ملا مت یا ايمل ور و عا کال کے . 

مال قراد دیاے وہیں مہ بات بھی جد یس کیک لذ ازس ا نماک 'ض او قات انسا نکواصل متا صد سے 
کقلےح» ر کک E‏ کاو روو غ ی کے ملک رذائل یں بت( اردتا ےج نض أو قاس 


(۳) شعبالامان رجه ا۳۵٣‏ ےت ۰ء مو طلاامام الک من او بزا سال لح ۱۳| ص٠ ۳٣‏ 


5 ۸ 2 
ا گاب ترا مکاذر ليه بھی بن جا ا اس لئے اس بجاء :لزت لل وعد اعت الك اندر رکمناض رور کے 
56 ایا يا نفس طلب لز تک عدودائئز ال کو يلاف چکا سے ده کور دبالا ر اکل بس 
تا ہو يك بهي عنقر یب ا نکانشانہ ین جا ےکاضط و ہے ا كودوياروعد اعت ال شل لان ےک ضرورت سے الكار 
کن ہیں ے اور اس بات سے بھی اختلاف مان نيب سکہ ای کان الريك طر فکوم راہ اہے وا سیر ما 
ری ےکن من اھ سے بل كرسي سا كرد يناكالى یں بللا ہہ د ہے کے لئ دوس رى جاب مو ڑکررکھنا 
ہوگاءاسی ط رح بے اعت لی کے ششکارنٹس کے علا ںی حفط ان مكيلع نض او قات ا سے شض اعت ا لکا ر د ینا 
كان یں ہو الہ ا لات کے اس دا سے سے می دور دكناية تاچ چو عام الات مل حد اعت ال سے بام 
ثيل ہو تا۔ مشا صوفيه بل او جات انز ت میت مر یرہ یکو لات میں بہت زیاد فی لکی تيم يكرت . 
ہیں ا كان بھی بی اصول سے ۔ جع اکہ يي ہکدا جا کا ےک نیل طعا مكا جا پر ہے اصصل شيش »الى طرح 
تقایل لزات وانے ابد كابوت 2 آن وعد بیثء اقوال سلف اور فقهاءه حر ین کےکلام سے تاج 
۱ سد ور لیے تو فتہاء کے ہاں ايك تقل ياب سے جم کا ما صل ہے س کہ ج چ زی اام يا كا مکا 
ذر بير بن عق ہو اکر چ بزات خو دوہ چا مو ای سے کی عکر دیا جانا ہے۔ الى ليل اسل حطرت مان 
ان ےر ےر یل ان می مر اوت 
ا تتاب کے سا تجھ سا تج مشت امور سے بھی دی کی تر یب دسية ہو ہے ار اد فرمایاکہ جو نص مشقیبا تكو 
بھی چھوڑ دكا ووو ا يح رام کا مول ے زياده تر طرق ے نج سک ہگااور جو حص ان شتی امور س بڑنے 
کی جرا تكس هكاال کے پارے نل خطره سكم عقر یب داع ترام كا مول میں كل جائے۔ می م ىكل 
یت اس جز اكه ی ے جو بادشاه کے سا تیر صوص مون ے او ری دوس ےکواپنے جانور ے جا ےکی 
اہازت نہیں ہوئی_ اب جو تنص اس جراكاه کے قريب اپنے جاندرج اتا ہے (فواکر چ یہ پات خو ممنورع نہیں 
ہے لیکن ) ىہ خطره ضرور س کہ اس کے جاور ہے چ ہے اس چ اگاہ کے اندر جاگھسییں (اس -ك جراكاه کے 
قريب جانے سے بھی بناجااۓے)۔_' 
صو کالطور مهال لزا مز ے من كر بایان میں آقلی ل کر اع بھی در حقیقت ای اصول بر نی ہے یی 
وج ےکہ ہے بات صرف صو نے کے إل نیس کل فقہاءد حر ٹین کے ں کی ما ہے۔ يهال صرف ده 
0 
فاك ريك مد یٹ سے دكا كات خیب نب یکر سے کے بعدان با کے وا 


() الغا ری تالبار ىرجه / ی۲۹۰ 


79١ 5‏ م 
دی انما كره السلف الادمان على اكل الطيبات خشية ان يصير ذلك عادة فلا 
تصبر النفس على فقدھا۔ 

لف نے ی کاو می انپا ککوصرف ا خطرے کے ور ايكيا ےک كاذ ا سکیا 
عاد ت بن جا بل اوران کے نہ سمل ےکی صو رت می ینف سکاصبرکرا مشكال ہو جا ۹ے“ 

رآ نکر مک٦‏ آیت آذهَبتم م يباكم فی خیلوتگم اڈنا 00 
یش تازل مول سے کان حضرت عوڑنے بح می شت کا شق ا راکرنے سے کے بے ای 
ایتک حال لے" , 

ارک تھے مم لام تل E‏ 

د2 ۱ بیو وو سو 
فَالْمَوْمَ نُجَرَون عَذَابَ الْهُون۔ 
ر سی أ یں ذلت دالاعذ اب دياهاة6- 
لن اس یی صو ر تیا لکا ان مومنین میں بھی خطرہ ہو سک ے جو چات ايك 

کھانوں یل من ہہک ہیں اس ےک ج حل ا نكاعادى ہو جا ا ا کال نس ریک طرف 

انل ہو جأجا سج اور ہے خطرہ ر بتا ےکہ دو خواہشات اور لذ تال عل بن سک رہ جاےء 

جب ایک واش میں تف سک بات مانے ووو دور ی خوش ےک رکھٹراہو جا مت اہ 

بت یہاں تك گی جا کہ ا سکیل ےکی بھی خو ا کے مها لے میں نف سکی علقت ١‏ . 

کن د رج اور اس کے لے عبادت و بثك كاراءت بند مو با جب ہے صو ر تیال ہو : 

جا ےکی قر ص بھی اس آ یکا صدا بن جا #اورات کی کہا ہا ےکک م 

نے ابی لذی ونو یز تدك شس حا صل پک یس لود ان سے فا دو انها ليا( اور اس انها كك 

وجہ سے آخرت کے كب تب كيا) ليذ الج “ميل رسواكن عذ اب تھا ہا ےگا۔ اپا 

ہا کی پات خی ںکہ شف سکوابہ امیس تو ایی الکو یا وی بنالیاجانۓ جس ے وع ص 

میس بجلا ہو جاۓ پھر اسے تا ھکر نا مشکل ہو جاے ا سک جا شرو ںی سے اسے ميات 

روگ یکی نش کرای چا سے ای ل کہ ہے آسان ہے اس ےکہ يل قد اسے پگ ڑکاعادک ينا . 

لیاجاے ء براح اصلا کی طرف لانے کے لئ مشقت اٹھا نا ,شع 99 ۔ 
)اپار یت۹ / ههه : ...(۴) دی ! طلب لذت كل ناپیند يدك کے ولا كل می سلملہ بسر ك.. () شعب الماك 9 /۷ ۳٣‏ 
ال رغیب والتر جيب رح" ]ص ٣٣۳‏ . 


۱ ۱ 

أو سف ...... شب الا يهان کے مہو نے یس بك اغلا ہیں اس لئ ىہ تر جم الت غیب وار جيب 
کیش تر رک ك رکیاکیاے۔ 
۱ کین يل لذاح كي ہہ ھی شض اوقات عدودادل سے لكر ردان كيت كا شل 

ايا رک يقاب ؛ اس سے بے کے کے در رن ذ یل امو ركاخيال مرکھنا ضر ور ىا >: ۱ 

.)0( ا ا نع کی یں رر ان ا ل ا رر 
شر بعت میں بزات خو مقصوداو رکو كال ہیں ہےءامام ر ی فرمات ہیں: 

لم ينقل عن النبى صلی الله عليه وسلم انه امتنع عن طعام لاجل طيبه قط _^ 

”ر سول اولہ صلی اللہ علیہ و کم سے ہے قول نی کیہ کپ نے یکی کیا ف كاا كار حض اس کے 
لمو ےکوی ےرا ہو“ 

دم المت حضرت مولانا اشر ف على تھانوی اور اش مر تہ فرت ہی نك اکر لذ تن کا جرا 
شر لت میں بزات خوو قصوو ہوم فو غلب ہو کی ایک صو رت ٹیل جک گناہ میس متلا بمو ےکا قوق اند ليث ہو 
صرف دوز سے سے اس قاع كود ب سك گم داج جب حضو ر از س صلی الثد علیہ و حلم نے يبيل ہا طم ہے 
سے اس اقا کو لور اکر ےکی صورت تجوي ہک ے ہوے کاک عم ديا .الى حالا تک وج سے ا یکی 
استطاعت نہ ہو كل صورت میں بمرت روزے رک ےکا اھر فررايا ال لے ترک لزار یکو مقصود پالزات 
کہ ینا بہت بذك جہالات ہے۔اصل بات ہہ ےک ہتد وج وگیوں اور اسل طررح کے دور وك ال یک دو شی 
سے عار ال ريااضت کے ہاں نف سکومارنا تقصود ہے جيل شر یع تکافشااسے مار نا ال يكلم مہرب ينانا » 
ان گے -ك ابش تال کی حرا مک دہ جز ول سے يجناء علال لذ لال می بہت زیادہاش اک و کلف ےکر ہی 
کاٹ ہو تا ہے۔اس سے بڈ ھکر بل لات کے تر كك تنام صرف صوص الات یس معا ہکی نیت سے 
ہی کیا جا سكت ءاسح مفصودش بیت بج لياس یکو ہر ع تك مد ود یں داخ لك رعلتاج-_ 

لدم الا مت خضرت تمان نے فوا بات پر يهال تك زور ويا سيك انض صو فير کے غلب محبت 
ال یی وجہ سے لات سے عدم الا تكو بھی سنت قرار بل دياء آپ فرہاے ہیں نش او قا كا لوجت 
لذات متروک ہو اف ہی ںکہ غلب عبت الى ش لزا تک طرف الات نیل ربت سوي ترک في راققيارا 
سے ع سنت سے مہ ير کت _ 5 


E تر‎ 


(۴).......... جب ہے سل م وگیاکہ لذا تکابہ ترک بذات خود مقصود ہیں صرف ایک علا ے جو بوق 
ضرورت شد یرہ اختیا كي جا كنا ے تو یہ بھی وا يح كيال اس نك كا ترام صرف الى صورت می لکرنا 
جائے جيل متاق مفاسر ے ےک اور راست شر ہوء باد ل رامت وور بوث وق علال ل لكا 
اتتام مناسب ل داك ایک د بل تو بجی ےکہ غلبم شهدت اور اثر يشر محصی تك صو رت میس ييل ہکا 
کا عم ہے ءال لک استطاعحت نہ ہو ن ےکی صو ر ت می ل كثرت صو کا 
۱ دوس ركد لل حطرت ان عا کی میک روات س ہک ای حور اتر ی مکی خر ممت میس 
عاضر جو الور ۶ كيال جب می لكشت كاتا مول تو طبیعت بل اتتتغار يد امو چات ے اور جو تک لیے ہو 
. جاناہے الك نے اپن او كوشت را مكر لیاے۔ ای بر آ یت ازل مول: اھا الذِينَ آمَنْا لا 
تُجَرِمُوًا طَيِّبَاتِ ما حل الله كم اےایھان والو ات ان | ی بزو ںکواپبنے اور ترام مس کر وچھ 
الد نے تمھارے لے علا لك ہیں“ ۵ 
ال ر دای تكاسياق بظام لی جار ہے 92 کوش كو لور ميل شر ع اپنے اد بر ترام يس بھتا تھا 

. لمکا مکار لچ ہو ےکی د چہ سے ال س ےگو شت ن ہکم ےکا ا سے اد یہ الترا م کر ليا تھا جییما کہ روابیت کے الفاظ 
فحرمت اللحم على نفسى ال يردال ہیں۔اس کے ا ذال شم سك از ام کو بھی پند سک ییا ای سے 
معلوم مدال سد ذر بی ہگی بھی يك عد وده قود مو ل ہیں ء یہ نی سکہ جس جز سك تق ذر ييه حرام س كال كان بدا 
بب جاائ اس دے کاپ دا متام شر و ]کر دیا ھا سے اکر جر اس مف سح حكن كول صو ر رت بھی ممکن ہوں 
)۳( ادگ سی ترک پا یل لزات کے كوه ار ے شل اس با تامام کی بہت رو رکس ےک ال 
مک کول انی ای مض سے تہ ہو باک کی كا لك جو یز کے مطابق ہو۔ جس طررح جسمالی صنت کے 
حول کے لئ نض ابی غذ لال سے يتيز بھی اگ ے ہو لى ہے لین کا ی طبیب سے بو بر پ ہی زکا 
الیل مفید مو ےکی بجا سوء تخذ یہ ونير وكايا عدث بل نکر الڑا معن بھی ہو کا ہے ای ط رح رو حال علا 
کے لے بھی بر ہی زکی ض رودت كا ذكار خی سکیا چا )يكن اس کے ناطرخواو ضا بھی ہا سل ہو کے ہیں 
یی ما یز کور کے کے ردن بات شی می الو نکی ی ین لئ ان وو 
4 علاوه اوير ذك کر وہ روايت ے ھی مھ مس آل سه وشت سے پر بی ڑکا اتزا مک نے وا لٹ ےکی ایک 
ور بھی ی الال ےا او ے ییایند ی 52 يفاذا ل اكت ما کر کی ات 

() اخرجه الترمذى وحسنه وابن جرير وابن ابی حاتم وابن عدى فی الكامل والطبرانى وابن مردويه (الدر المنثور 
ج۲ /ص۳۰۷ واحكام القرآن للجصاص ج٢‏ /إص ٦٥٥٤‏ 


2 


اسلا م کا فلسفہ اداب 


وو ل ازا ور ان 
رك رميو ل کا سہارا ليت بر یور ہے لیکن ايك انان ادر عام حيدان نش ہے فرق ہ هكم حيوانات ايا ان 
٠‏ ضروریا تكو وراك نے می کی نا س ضا لط يا اصول کے پابند تال جیسے اور جہاں سے دل چاہتا ےکھاتے 
اور يط ہیں جب انال فطر تکا تقاضایہ ‏ کہ ج وکام ب یکیاجاے دوڈڑھب اور سی سےکیاجائے بجی وج 
ےکہ وتاک ہر قوم اور لت میں زت رک یکی تام سرمگرمیوں کے ك ين رسوم و آداب مقر ہیں جو ان ۱ 
سرگرمیو ںکوان کے تصور کے مطاای يذ ہب اور ال قوم وت کے بنيادى افد ار و نظریا تکا عكال جنائے 
ہیں انان کے ای فط ری تا ےکو پور اکر نے کے لے اسلام نے بھی عبادات کے سا تج سا تخد شاک بياه 
می رجا ى و سای تق بات سے ےک رکھانے لے ی الفرادى ضروریا تكو لور اکر نے كك تنام شع 
ظ ری انك تاور ات ےر ونان سر یں کے رک رت دی 
پاک سة كم دد نکیل ت ی خواہشا تک سکن کا ی ف ارہ ہا صل نہ ہو یکل ان ٹیش سل مشر ى لور 

ا یب بيد یب يبيد اک جا اورا ہیں متا رش راجت کے حصو لكاؤر لج بنایاجائے۔ 

مسد البند كليم الاسلام حخرت شاووی اللہ حرث دباو فرماتۓ ہی ںکہ ملف اقوام نے ان رسو مو 
آداب کے ے ملف زو ںکو جیا ناا ے۔ لس نے بی سا نس پرا نکی بنياد کی اور تج بے اور ط بکی 
رو سے مفید ط ريقو ںکو اغا رکر ليإاور م رکو چو ڑ ديا نض نے اي مت کے دہیے ہو سے ”توان احمان“ 
ین اھا اور بر ائی ل اقیازکرنے والى اتا رکو یلد ينا اور بض ا قوام نے اسن باوشاہوں: كرو رين 
عباد گر ارو کی مشاہ کو اس مها عل مس ا سل قرار دیا نغ نے ان کے علادواور قیادوں پر لن ر سو مد 
آدا بك عمار تکواستوا رکیاء ان میس مئر پہلو بھی ہیں اور معخر بھی اور بن الى بھی ہیں جو لفح و ضرور 
دونوں سے غال ہیں ۔ان يبلوو ںی تین و ان مصما احص ے ج نکی اط حور قرس صلی اللہ علیہ 
وک مکی یش بول ے۔ اس کے بعد عخرت شادول اڈ نے جه ابي اصول ذكر فراے ہیں جن ب موب 
اسلائی آداب می ہوتے ہیں احاد یٹ توي یس و رکرنے سے بك اور اصول بھی بجھ یسل آتے ہیں ء ولل 
میس خر رت شاه صاحبٌ کے ذك رکرواصول عریداضافات کے سا تح ذكر سك جاتے ہیں۔ ا نکاذ من يمل ر ہنا 
انعا يلصيل داب کے كفن یں معاون خابت ہوگا۔ 
(ا)............ شاو صاحب فرماتے ہیں :ا نكا موں (کھانے ء سم ء کے و خی مر وا فول اك لاد تاور 


مه ےم 


9 ع ب ۱ 
ر لک صفا کو ترا بکرد يق ے۔ فلت کے ال زج رکاعلار کی ریا سے رور کے اوروهتياق بر ےکا : 
ا نكاضول سے يل »ان کے دور ان اور ان کے بعد يك ازکار مسنون قرار وبح گے ہیں جو سكوا تی ووی 
7 دہندوں پر کی ہونے سے ر و کے ہیںءاس ل كل ان میں اليا مون ہو جاے جو منعم سکوی رو لات اور 
زج نکواس مقر س تسق طرف متو کر جڑے_( 
(r)‏ را بعد ان آدا بکا دوس را بذ بنيادى اصول ہن تیا مك شكر ے_ اصل میں خا 
شر لیت یہ ےکہ انیز ن د یکو كام اور لے وکر اور شکر سے الى ہیں ہونا جا ہے کر و کر بض با ع 
اجر گل یی کیں بللہ بات خود لذ ينين یں ہیں بھی وج سب كر جنت جو وار امل یں صرف وار لجز 
اور تو ںکام کر ہے وباب ھی زكرو شک اللہ پا رک ر ےگاءوہاںن 7ں A‏ لله رب الْعَالَمِين 
7 و کی سوریاو میں ے: و آخجز دَعَوَاهُم آن الْحَمْدُ لله رب الْعالمين ۔ 
مور فاعطل میں الثم تھا لی ے ال جن کا قول نف کیا ے: 
وَكَالوَا الْحَمْدُ له الذِئ آذْهَبَ عا الْحُزُن إنَ رَبَنَالْعَمُوْرٌ شَكُوْر ل | 
ر2 5-5 اال جنت كئبل کے :نام تر یی اس لطا کے ے ہیں جل نے تمسح كيف وم شقنت 
لودو رکرو _ : ۱ 
۱ کھانے پیے میس شک کی رو يمو کے کے ےکی آداب كما گے نل ایک ن وکھا نے کے ار جد 
دعا سكماك ہیں ج کی تيبل مد بی نہر ؟؟ کے مت آ ری ے وہ بھ کات شگر پر مل ہیں ہے 
کے بعد بھی الحمد ل ہنا آداب میں سے ہے ءکھاتے و نت ٹین یس عبد بت او رو اش حکاانرانز بھی اسی سليه 
کیا ای كك کی ہے اس کے علادہ جا ای تخلبمات د ىق ہیں جن سے فق تك قر دا یکا مکی مظاہرہ ہو تا 
سج تيت بر تن صا فکر :ہا تھ دوذ باصا فک نے سے ييل گے ہو ےکھانے کے اہتزاء پاٹ لین گر اہو 
لق صاف ہو ےک صورت مم کم لباو رہ 
(r)‏ سک ڑج عمو اذ كرو عباوت بیس شیطالی و او ںاور و غل انراز کے ی ےکا ہتمام تو ہو جا سے ايان ایک 
20100 نظ كلاب ب ریز ندكى موی الى کے مطا بن بننااور اس يفيت اسان سے می یکر نا 
ہو تاے اس كات ز ترك کے ہر لے ٹیش اور ہر موز ير انی ساز شوں ے جال اور شيطالى اثرات بد 
فوت رسب ےکا امنتنام دالتزا مکنا جاخ(" شیطانی اثرات سے تفاظت کے لے من در چ ذعلى امو رکی تيم 
وی و سے 


0 الال الف رج ۳ / ۹ ےا.....(۴) ويك الى با بک عد ہے نم ۹ 


ڑ ء8 
(الف)..... ان مواق بر ذکر ال رکا عم اس ك دا گی اکہ شيطان کے خلاف مم كا سب ےڑا 
بتحيار نکر الشدتى ےء شیطان قلب ذاكر بر وسوس اندازگی کی كرحا 


(سورة بی اسر ائیل)ز بالى گر اور اين طرزٹل سے نقد تك تد ر دال یکا انداز شيطال ا ات کے غلاف دوا 
مور تھیارے۔ ۱ 

(ج)..... شاوول اللہ محر ث دلو فا سنت ہیں : نض افعال او “كتيل اہی ہیں جھ شبيطالى ماخ سے 
مز ست رتح ہیں اسل طور ہک اکر شر ی کی کو خو اب یا ہیارک یش نظ رآ عل توا نافال اوربكيات عل 
نان انر اد اضرو مون نک ا و متصف ہو ناان سے شرب اور ان کے زین 
او صاف کے لف و ل میس اث اند از ہو ن کا باععث ہو جا اپ اضرو رک کہ ا تيل حت کے مطال ن کر وديا 
قرام قرا دس ےکم ان سے کیا جاۓ جب ایک يقال مل جو حاب نکر جلنااو ربا بل بايد سح كمايا ”) 

کور ہ بالا عبارت يبل حر ت شا صاح بك مقصید ا نكا مول سے مرا نح کی حلست بیان راا 
نہیں مضور اق رس صلی اذ علیہ و لم نے شطانوں كاكام يا طر یقہ قرا دیا سے ملا آ خضرت صلى اللہ علیہ 
و مم نے ار شاد فيكم شیطان با ل ب تھ سےکھا تاور ينبا ےہ ایی ےکا مول کے ار :تهاب می ايك نتصاان تو 
ع ہو تا کہ کہ ظاہ ركااثر ان پر پڑنا الیک فط ری ام ر ے اس لے جب شیا ین وای بيت اتا رک جائے 
گی نوا نکی ری عادات اور اغلاق کی انان میں ٹل مول كل ٠‏ 

دو سرس جب الن کی یا نکی پہند یرہ ببيتت اختیا رکی ہا ۓےگی لوو اے اپا بعال تو رکر نے یں 
کے اوراس ودلا كاداعي ان میس نشدت انقیا ركر ےکااور اس كور درست سے باذك انی ع٠‏ 
پیر اہ وی تح بع یلان ش بیع تکاایک تفل باب ہے ,بہت سے اجام شر لدت نے دسي ىال مقصر کے 
لئے ہی ںکہ ان پر “كاوج سے شیطا نكوابتذ ای سے مال کی مد جالى ہے۔ فرض نمازوں سے ييل سنتوں کے 
شرو د فك حدمت بھی فقہاء کے بیان کے مطابق شیطا نكوي تاثردینا يكل بي مک مان جب یم فریضہ 
کے باد سس میں تی رے م اشر شس ایو فرش کے معاعلہ بل ا كرا كر ےکاامکان بد ر چ او لی تيبل رياد 
2١‏ تہ سوا ب کا مقصدبہ س کہ ا نکی د جہ سےکھانے ء ہے :پیش وغی رہ مو لات ز ن رك اوران 
کے وس اتل واسيب میں پرکت ما کل فهو فى جء ا تحر داحاد یش س كها ف کے شورع یس الث ركانام لنت 
کالیک فا دوي بھی معلوم ہہو جا کہ یہ باعش بركت ہے ۔کھانا نا پک یا تو لكر يكنا ى برك تكاايك ور ليه 


٥١۹/۲ر تجےےالل البالذ‎ )١( 


لہ ۵ے اٹ 
ہے ماتا اکش ےھکھانے سے بھی ب رت ہا صل ہو کی ے۔ ہے بھی تضور اق س اکا ار شاد س ےک کھانا بر تی 
کے در ميان تن ےکھان ےکی يجا كناد سه سح كهانا يا سبك اس ےک بكت در میان عل نازل مول ے۔ 
مک سے مفیوم لوراك یقت تی رون میٹ برا تج کے تن یں ڈالی ہا ےگ 
(۵) ع قن آدا كا مقصر انان ود وى لليف» مشق ور امن سے بان اور راحت و آرام يا 
ے۔ تفور اق س عو نے مکی ےکومنہ اکاک پا عند سے نح فرمایاہے اس میس ووس ری حکمتوں کے علاوه 
ایک کت مہ ھی ہ کہ منہ لاک پا ين سے لد م با یکا دباو کر ا ججوو غير ولک سنا يكم اكم یف ے قاو 
ہوک رکپڑوں بكر سن _(اتفصييل باب الاش ہہ کے تحت آ دی ہے ) بیک وقت د كور میں هنر میں ڑا لے 
سے مما نض کی ایک کلت بھی ححضرت شام وی الث محر ت دلوق نے کی بیان ف رمال کہ اسل ٹس بيك ونت 
د وكشليال مضہ جس آجانے سے نتا نکاخطرہ ہے۔ حضو ر ازز س صلی اللہ علیہ و کم نے اد شاد فرمایانہ جمس ۱ 
آدى کے پا تھو کو پچکزائ کی مول ہو وواک عالت میس ب تو ںکو ر ہو سے خی رسو جاے اور اس ےکوی نتصان ج 
جاے صرف اپنی ذا کلام یکر ے۔ ضور اق س صلی اللہ علیہ و سل مکی تخليرا ت کا یک امھ اصا حم 
ایا نس كامقصر اال ایما نكودنموى تاليف ح انا سه 
(۹)...........کھانے سك آدا ب كاليك بڑامقصید نظا فت و تالكا اجتمام بھی ے جو كم طهادت دپاکیزگی سے 
بھی اگلادر چہ ہے اس سک کہ ہار تکاعا سل ایک چ زول سے دو رک اور اتاب ہے نميل شر يدت نے جس 
اورتاياك ثرار ديا ے اوران كةو عبادت تيبل ہو عكق یس بول و انزو غير داور ظا سک مقصر 
ای چ زول سے گی ےکا تما مک نا ہے جو اك چہ شرعاناپاک نمی ہیں لین اناف فطرت ١‏ مي لگند ااور ابل 
ترت تق ہےءاس مقصمد کے لے دیے كك انام جس سےکھانے سے بيبل ا رکھانے کے بعد تیر دعو 
ہے ای طرررح حضو راق س صلی اللد علیہ و سکم نے پیا کی ٹوٹی ہو گی چگ پر مضہ لاک مھ ين سے نع رايا اس 
کہ ایک 20ے یل پیل زیادہ کے اور و نے سے بھی جلرى صاف یں ہوتی۔ 
(ے) -- بش ایی ےکاموں سے بھی م ےکی گیا ہے جاک چ طبارت اور ای کے خلاف تز ہیں نین 
اطافت ذو کے خلا ف رور ںان گی قال میس واس ےکماۓے کے تم اور ہا ا چ کے ا 
کھانے سے مان تكو یی کیا جا کنا ہے اس ل کہ ا کی مل اور عمتوں کے ایی کت ب بھی سكم 
انا ن کہا کے وو ثم کےکاموں سے لے اتا لک نا يست ہیںء ایک وکام جدكطرا او کن کے قامل کے 
جات ہیں جیے ناک صا فک رنااور ا سنياء ور دوسرے و ہکا م ہیں جو صاف تمر ے کے جات ہیں تت 


() بج۔الش ا با غ۲ / ۲٢۴۳‏ 


کے ہے ےئ ۱ 

کھانا بپنا و غیرد اب اگر ایک مخض ایک پ تیر سے شا اتا كرحا سے اور اک پا تہ سے کیام بھی سے اوی 

بارت و نطات کے لاف تو ثبل اس ل ےکہ اوقت اس پ کسی خجاست ياك دگ یکاکوئی بھی اث نیس ے 
. الہ یہ بات اطات وق کے خلاف ضرور کہ جس پات کو يب ہگن کی کی ہو کی تا یک دهان کے لئے 

بھی اسان استعا لكر چنا یہ حضرت ماک ر سی اڈ عنہا قران ہیں: ا ۱ 

کانت ید رسول جو جاريم بس ود تسود کی يده الیسری 
لخلائه وماكان من اذى 
تر جم ...... ضور اتر س صلی اللہ علیہ ول مكادايال ات و ضو او ركها__ن کے لئے ممت تمااور 

ایاں پا تيد ا ستنياءاو رگن دگی وا کا موں کے ے۵ 

(^A)‏ ماد حش آوا کی لیم اس لئ د یکئی ےک ہکھانا ہولح و راج کی عالت می رق کے 

سا تجح مكايا جا » حضور اق رس صل الد علیہ و مکار شاد سے مک ہکھاناکھاتے و فت جو تے اجار لم اکر و ای کے 
کہ اس سے تہارے ثر مو ںکوزیادوراحت ےکی نطرت شام وی اد حدر ت ويلوي ل ینان کے سا ہے 

یٹ ہک رکھان ‏ كو ب رک او ر اك بی یل جلاء کیا ل كوب ب ركقكاباعث قرادديا هال لكك رب سے 
کہ دوس رک صو رت مل انا نكا معدو قور جا اے ليان طیع تكوسي ری خیں ہو 

,9( ایت بض آوا بکی تيم اس لے د یی س ےک ان بر مل برام سف كما ےکی لزت وخو شکواری 

ل اضافہ ہو اتا ے ای لک من طر کیا ےکی نو رع اوراس كل تیا رک کے طم بتكا رکا ا سك لزت راث 

رتب ہو تا سے ای ط رر حکھانے کے ط ر لے سے کی لذت یں فرق آ جات ہے اسك حضور ات س صلی الد 

علیہ و م ےکوشت تچ ری سے کا فک ركها ےکی جا دائتقال ے نور خک رکا کو يشر فرمایااور ا ل كلاوج 

ےا ران الداعت ارت کم بھی آسالی سے ہو جاے او رخو وار بھی زیادہلتاے۔ ۱ 

2( ہہ بض آوا بکی لم لی فوا رک بنياد يرد أ جیسے پا یکو ین سسا نسوں میس بی ےکا عم !ا سکی 
و تضو رار ی مذي بیان فر اك اس سے پال مو لت تشم ہو تا ہے اور بياس بھی جلرى “قي 
)0 وش كما ےکی نض بيات اور ط رإتقوال سے اس کے کیاکی كل دہج یب اور لیے من رک کے ۱ 

خلاف ہیں حضرت شا صاحبٌ فرماتے ہیں: :اوران (بثيادى اصولون )یش سے ایگ ہے ے ہک ایی اول ے : 
۱ چا ہے ۶د سك مال ل ددا كادجست انان بدا تی ا ے و زر نال کے ام ل 
الول ان 5 


9 ےے حي 

(ır)‏ - ..... چہاں ش ربعت ن ےکھانے ہے اور لہا ی ونج ره ل بے ڈھنگا يان اور برو کو پئ کیا ول 
ان امور میں تن کے اندر غلوجو کل فك ع وو یل داخل ہو جاۓ جیے )کے اس ءاف بیس یو لكا و ستو ر تھا 
سے تكن ب بھی زور وی كياج حطر ت شاو صا حب فر ست یب :الن اصول میس سے ایک مہ بھی ےک کی جس 
تفہ الع وریز ترک ر یہت زیادو کن ہو چانے کے مادق ہیں اس شل ا نکی لفت اققا کی ہا ےا 
صور مال نے ا نکوال کیاد سے تا ل بنادیاہے اور طلب وناكو یڈ اکر لا کوان کے دلول میں رچادیااے_ 

الل کے بور حر ت شاو صا نے رشم تسا سر اور سونے چا رق کے رق نکی حم کو کی 
ای اصول میں وال فرءيا>- 


سرك اور تور ے کے ٹس نے وانے مہ چٹ بغيادى مقاصد ہیں جن کے حصول کے ل ےکا نے 
يغ کے آ دا بک تيمر یگئی ے جن طور طربیقوں سے ہے مقاصد حا صلل ہوں کے دوش عا مطلوب ہیں اور 
جن سے ان مقاص رکی أل مون مدو دشر مانا ليش یرہ سك جائیں ك-اى سے یہ بات بھی بج میں کیک 
نض بز كول س كفا ف کے يب ایی آداب ذکر فر سن ہیں جو _ظاہ ری عد یت میس جيل لے ملا امام خرن الى 
کی کاب احياء علوم الد بین یس اريس آدا ب بم ت ن کور ہیں ا کا مقر بھی بی كد ہے آدا باكر چ صر احا 
حضور اق س صلی الذد علیہ و كلم سے ثابت یں نیشن آ پک اعاد یت مہا رک سے بج ل آذ وال بفیادگی 
اصولول کے تت وال اور آواب صو م کے بنيادى متقاصد کے حصول میں معاون نل خلا ينض منصوص 
آدا بکی تيم اس سے د گی س کہ ان کے ممم باتك ا ات رحب ہے ہیں یے تین ساس میں إلى 
أكون کو وال سح نور جک رکھاناوغیمر وہ اس سے ہے معلوم ہو اک ہکھانے يعن كاالياطر بيد افيا ركرنا سل 
سے م میں سبو لت ہو منقاصد شر بعت يبل وا غل ءا بنياد یر امام غزالى و تیر ےکھانے کے آداب میں 
لت ےکوا بھی ط رح چیانا ی ذیاا سک کہ اس سے بھی ن ہکوروبالا مقصید حاصل مور بے مکی ےکومتہ وکر 
ہے سے اس لے مع فرمایاکہ اس بل كن انار سے نتصا ن کاخطر ہے ای کے شی ر ہے کے آداب میں 
یہ بات بھی لیے د کیک گلا ی من کو لک نے سے ييه الیک دفعہ ا دك دنا جا لبذ االن آداب پر اس وج سے 
اقترا کر کہ ا کا كر صر انی عد بیٹ یل نیس متناو قذي تك د عل ہے ججیباکہ ان آدا بکو منصوص 
آداب (عر يل میں ص١‏ اجامھ کور آداب )وال انميت د یناعد ود سے تھاوز اور ناو ے_ 

اس سے معلوم واک ہداب دوطر کے ہیں :ليك آداب نصوصہ مك وه آداب نكاؤكر قرآن ۔ 


ےا ہے ج 
وعد یٹ شل صراهثاً ے» دوسرے آداب غير منصو م یا آداب محبطہ من وه آواب جو اکر چ راح کی 
عد یت میل ن زکور بل کان ا کا آواب صو صل میں نو كر کے ای ط رح اتنب كي كياج بجت عام مسال 
ند س اس کے ر لے انبا ہو جاہے۔ ظا ہر ےکہ ييل ثم کے آدا بک ش گی ثيت ددس م ے 
آداب ے زياده و 2 

ب رآداب متیر بھی ولتم کے ہیں ليك ده جن سے مقاصد ثري تكاحصول اتپا وا ےکی 
كرود تر بے پر نی بل ہے تی ےکھانا ھی ط ررح بال رکھانے ےکم میں مد نا انی کےگلا کو وک كر يبن 
سے اعقیا ےکا مقتصر ما ل ہو ناوخ ره دوس رس وه آواب جن ےکی مقصود شرب کا تصول کر وو تج ہے پر 
نی ہو جا ہے بے امام خزائ ین ےکھانے کے آداب شل كلصا ےک کھانے کے دو ران يال زیادونہ ے» صرف ای 
و قت إلى ے جب لقرعلق یس يض جائے باشد يديا کک جائے۔ ا کوج ىہ میا نک گا ہے نہ ہن ےک صور ت 
میں معر كوك کر نے یس سبلت ہو فى ہے۔امام عاق اسے مح ےکی دياغت قرارديا ”© 

ظامر س هكد ايك محعدود ترسك جفیاد يك اك بات علا ياكها ےکی نو عي کی تبر بی سے برل 
ھی کی ينض عالات شل پان شیر سے معد میں برود تکاپید اک :اا نوضام ل ركاوث پر اکر کت 
ےت سکھانے ایی بھی ہو کے ہیں ہن یں خود تز یاک ہ کہ معد ےکو مث ی چ کی ضرورت ہوء اں 
نبل اطبا ہک تحقیقات ف بھی ہو کن ہیں_ 

دوس ری م کے آدا بوكر ض مفید ر ہے کے طور پر قو لک کیا جا توکو جک بات نیل 
1رس ضر أ يديرت سے اس ط رب کے آداب ایک میات سے ابت ہیں جن 
كاعد يث ٹل تیاور گی مشپور و حرو سے ماما اح ان الا ل کو ند فرماتے تھے اس کہ ہے 
آکھ د کن کی بهار ىس حفاظت کے لك مفید ہے ناشن القن تريب سكاس كا ليك ریقہ محروف حرث 
حافظ ع ال نے کی ذکر فرایاے اد ہے ف رياس کہ بیس نے اسے رم (آکھ دکھنا) سے حفاطظت کے لے جرب ایا 
ع- 2 کے کے کی وضاحت فرماد کہ ال مین ل ج عد ی ث كرك ہا ےوہ ے! کے 


() احياء اللو مع تحاف الہ تين ح٥‏ ص ۲۱۷ 5 
)اد جزا مالک رح ۱۳ اص ۴۲۸ حافظ ع ا یک تر تیب یہ ہے :پل دائیں ب ت ےکی شیا تك الكل يم رھد فى گی سكسا تح والىا کی رگوش 
بردم ميال بد یا گی پھر چو ٹیا گی پھر بانمیں پا ھک يال اک تر یب سےہ پھر دا لو لك يجوف کی پھر در ميال بم کو یہ برجو 
کے سا تح دای الگیء باتكو لك کے سا تح وال اس کے بحد بابل پا کاا کو شیا پھر در ميان والى» پچ چو فا کی راکو لح کے سا تح وال پر 
چو نی نل کے ساتھ وال . 


وے 2 


مین عوام کے -ك کک عدودشر یہ اور فرق مر اتنب كاخيال ركهنا مشكل ے اس لے بہت یی سے 
كدان کے ہا آداب بي نکر سے ہو اس لتم کے آ دا بکا ذکر ت ہکیا جا ال کر نا بھی ہو فو یقت 
مالک لو رکو ضاح ہرد بن جایے۔ 


ارشاد ی آ داب او رشق آداب:- 

ری ضر کے و و فی و ون ون کان 
درن ٹل براوراست ترک اور در جات یں اضافہ ہو تا ہے تی کھانے اور پٹے سے پل م الث ہنا ءکھانے کے 
بعر صو عل دعاول یں سح كول رعا مڑ عتا وا یں پا تج سح ےکھانا كما ےکی نافد رك وا ےکا مول ے بجناو ره 
اور بض آدا بکی تيم كحض ام یک کی ونیو ى فا تر ے کے تصول ای ديد ضر سے بانے کے لے دی 
گئی ہے دہ براوراست دين کاڈ ر بیہ نی اکر چہ پالوا۔طہ طور بر ان سے ہہ مقصید ہا سل ہو جاتاے کے جو تا 
اتا رک رکھان ےکا عم کوش کا ترك ےکا فک رکھان ےکی با دانوں سے و ےک کیا ےکا کم بی کا کیل 
کھانا ہو ٹکیا لکا ل چ نك رکھاتا ۔ يبل ثم سك آداب أو آواي قصورو آ آواب 2 می ب کے ہیں اور ووسر ی 
کم کے آداب ارشادى آدا بکہلاتے ہیں۔ يبل م کے آداب دين کے باتقاعدہ ماک ہیں اور ا ن کک ناكار 
ثاب ہے ان کے ترک پ کہ كولم كناد بل کان ہے دی نکی ز ینت اور پان می لک یکا باعث ضرور ے۔ 
دوس ری نم کے آداب یر لکرنے سح ايك تز مطلوبہ فا دم حال ہو جا ۓگا۔ جم سک اط ر تضور انر ی 
صلى اود علیہ وم نے اسك م دی ہے یا نخاض نتصان سے فوط ہو جا كاجو اس ار بکی دست ےی 
ووسر ے حضو راق رس صلی اللہ علیہ وک مكل اتا عو اطاعح تک یت سے ب كا مكرناياعث بركت وسعادت بھی 
ہوگا۔ا نبي تک و ج سے ایان اور حب سول صلی الث علیہ و سلم میں تر تی بھی موک لیکن ا نکاترک اس طرح 
کی محرو ى اور وی ننتصا نکاباععث ہیں جس طط کا می تم کے دا ب کات :5 


اعلام یش آدا بک انميت اور ا كارح مرتير متام :- ) 

پیل بے كر ہو پا جےکہ جس ط رر دخ اک ہر دھرمء هذ جب اور مھ ہب مل انال ذ تر یکو باسلیقہ 
ورای دادس تم ہگ بنانے کے لئ وا بکی تی مک یکی سای طرح الام نے بھی انا تل ورخ 
متقاصد کے حول اور ملمان کے وين اور وکو سفوارنے کے لے زترك کے ہر شع سے متحلق آواب 
سکھاۓ ہیں ءکھانے غ کے آداب کے بنيادى اصول و مقاصد پیل بیان ہو گے ہیںء ان یش سرس رك خور 


۸۰ 


كرتت اسلا ى آداب كل ایت و ضر ورت ا يق ط روا جال ٘ے۔ 
آداب کے پارے میں عام طور پر دو خلطیاں ہو جا نی ہیں نف ل وگ آداب کے من میس تفر ا ے 
كام لیے ہیں اور ہے سورك دك ہے فرض وواجب فو ہیں يبل ا نکی مارت بنا ےکی اکر نيب کرت بكر ؛تض 
او قات ان کے اجتما مکو فضو كام كك لك جات ہیں ؛ ىہ نقطہ نظردرست نی اس کہ ب ر 7دا بک 
حیشیت اکر چہ فر دواج بک نیس لیکن ىہ دين کے لے ز ہن تکاباعث اور اس نس چا شف پیلد اک رن ےکاذر لج 
رور یں شل طررع اس عن خز ورك وري # ضرف اع فعا ے کن لاس شورق در سے کے 
حصو لکوکانی ہیں مھا جانا بل ہر شی كد دري قن ر بھی ضرو رکر جا سے ءکم ا زم 
لاس میں بالكل ےڈ مگایں يبن ہی ںکر جار شلو ار تبي بالكل ملف رک کی ہوں۔ان كول متك اور 
مناسبت نہ ہو نب بل لبا كابنيادى مقر اور ضرو ری ور چ حاصل ہے جن لبس خو شنال پان ر یءاییا 
لاس یہ نکر اس س کا بی خوش ہو گاء نہ دوس رو کا ءکھان کا بنیا ری مقصر نز ايت كا تمول ہے ہے 
متعد ياك بے عرہبابد مز ہیا سے ڈ گے انداز سے بر تن جس ڈانے ہو ۓےکھانے سے بھی حاصل ہو ہا ےک 
ناس صورت مكحا ےکا ی لطف پر قرار تثبل ر ےگااور بالواسطر اکا کھانے کے بفیادی مقصید ير 
بھی مر تب ہوگااس ل كم ای صورت می لکھانااکچھی طرح نمی ںکھایا اكور مطلوبر خذ عيبت مكو 
قل میں ہو یر 
بی عال اسلا ى آدا بکا ہے ان سے انان ز ند كوز ینت لق اور دی نکی علاوت تعيب م ودک ال 
میں تق مول سے صرف فرائض اور واجبات لوراك نے والااور آدا ب کاا ام نکر نے والا دی نکی چا شن 
سے روم د جتاہےء اس کے درین شل ر وکھاس وكعايان ہو جا ے سکیا وج سے اسے دين میں زیاو ہت قی عیب 
یں م لى اور پالواسیہ طور یر ا سکااثر بض او قات فراش دواجبات اور علال و ترام ير بھی مر تب ہو چاتا 
سے جات در اسل یہ سكم سق وکا اور شر گی پان لول سے بج اتا نای طبح تکا الیک حص » آداب 
وین کا امام ایک بتر سے جو فالغل اور واجبا تكو بی سق كال کے سيلاب سے تف فرا مكرجا ہےء 
اک صورت میں اسای یت بين کور و ستیکاخلبہ ہو بھی نوا کا داب و سخ ن کک بحر ود تا ہے »اکر 
آداب و مل نكا اجتقام بی نہ مو و اگ رچہ تی دير کی تقاضو كا نصح کے سا مقاب لكر کے ف ال و 
وابات می کو ای سے ينا کان ہو جاہے لکن ل عام ھور ہو انی کہ دورو طب ا نے غااب 5 
انا نکوپا نو فر الل کے انر رکو بای میس تا اکر سيت ہیما شف س سینا چا وکا کامر کب ہو جاتا سے اس لئ 


م چجھ ‏ ہوتی۔ 


سن و آدابكاا تنام دید ا رک کے ف كانم ذر ل ے۔ 


وہ الم E‏ 

دو سرك طرف نض لوك آآ داب کے مھا ےے میں لواور افر اط شس تنا مو جات ہیں ء ىہ کی درست 
نمی یکلہ دين کے برج کواس کے يهم ريم مام پر رکھناضردری ہے۔ آ داب کے مها لے میں لواور اغراد 
سے نك کے ے در رج ہل باتو ںکو ٹیش ٹر ناض رو رکے: ١‏ 
0 790 کہ وا یٹ بی غو رکر نے سے جو بات سب سے مايال نظ رآ کی سے دو 
س کہ ی قرس ی الث علیہ و لم نے کر چہ ا نکی تر خیب دى ے اور خود کی انس اپنایا سے ليان ان کے 
لے آپ نے بہت زیادہ لف ےکام نیس ليه جہاں ہو لت آدا بکی ر مایت ن ہو گی آي نے فرالى 
يان جا لكل عد ال شل رکادٹ نادہاں آپ نے ان آداب کے -ك زیادومشقت اانا اود ا آ يكو 
تيف مس ڈالنا ند نبل فر مایاءکسی سستی وكامك يا بل انار ىكل وج سے نیس يلل دا بك مر حبر وشام 
بل نظ رمد فك وجح اوردوسرول پر یقت وا کرنے کے كن 

ایی بہت سے مثالا طق ہیں جہاں آپ نے متمولى نظ رذ وال اعزا رك وج سی اد بكو 
تچوڑدیا۔ پا نے کے آداب یں سے سكم بی ھکر پیا جاے ای طررع مکی ےکو مضہ لكك ريإ ہے سے بھی 
أب نے من فر مایا ےلین تر نر ى نل حر تہمبہ ر سی الڈد نہ اک عد بیث ےک ضور اتر س یٹ ان کے 
ظ ۱ کرت ریف لے گے اور ایک للكت ہو ہے “کین ےکومنہ لک رہ آپ ن ےکھٹرے م وکر یا ینوش فر میا( 

وجي تاك یہاں يال کا كيبن کے لے بر تن مہ اک :الهو لت تمن نشل تھا سے آي نے 
یز ےہ یکو منہ اکر پان نوش فرمالیاءای طررع آپ نے می کر يعن کے لے لكك ہو ے مکی ےکو ني 
اتار نے کے تکل کی ضرورت بھی محسوس نیس نرا 

کھانے سے يكذ او رکھانے کے بد با تج دعونا کی آداب طعام ل سے سے اور اعاد یٹ ے ا ہت 
سے مک نکتاب الا طخ یی کے اندر ابي بہت سے واقعات آنل گے جہاں حضو راق رس صلی الث علیہ و کم اور 
حاب ن ‏ ےکھاتاکھایا لیا نکھانے سے يبل بعد جس پات نیس دو ے لك وجي کیہ اس ماحل مل الى نہ 
> کر تاور پا تھ وعو ذكابند و بست كر نکر چ نا من نہیں تی ليان مشكل ضر ور تاد 
(r)‏ کن و اب کے اہتما مكل وج ست دوعر ول ا نیف عل النایاایمااند از اختیا ركرنا سل سے 3 1 گی 
کاامکان ہو لومیش را قل اور نا چائز ے۔ د روايمت سے حلت می آیا ےک حدم الا مت خضرت رانو یر ج 
اش کے غلیفہ از حضرت مولانا اڈ ان صاحب ر حم الث يك اباب کے سا تيد ایک د کوت میں تثر یف 
نے گے ہنس میں ایک مو لاناصاحب ج آدا ب کا بببت زیادوامتمام فرمانے وا ل تھے بھی شيك تھے کھانا جناكيا 
. () متلووص ا سا باب الا رہ ۱ 


A 9‏ تج 

اور سب حر ات ےکھاناشر و رماو يكن دہ مو لانازور سے بول ا کہ می ےپ تر دلواۓ بابل میس تو 
| جد دجو ۓ بی رکھاناشر وع تب کر و کا ای بر تر تر مہ الد نے اتہر نار ا حك فرماتے ہو ے ار شاد قرا 
کہ پا تح دجو ناج تخل ایک ادب سے ا كاف آي نے خيال رکھا لیکن اس کے سا تک یکنا ہوں میس مجنا ہو کے, 
ایک و صاحب نان کی تیر ہو کہ ابول نے پا تر دجو نے کابندویست ہیں کیا دور 2 یکن ہے کہ ان کا 
اتام صاحب ناش کے لم کسی وجہ سے مشكل اور وق تكايا ع ہو ء با تجھ دجو کا مطالہ کر کے انیس ایک 
نیف میں من اکر دياء ملا نکی قرو لز ز یل او تيف دتى دوٹوں ترام او كناد ہیں »ال کے علادوا مل بي 
دوك لاسب کہ اس اد بکاصرف تھے اتنام ہے باقی حاط رین تاس اس می ںکوتاوہیں۔ 

(m~‏ جو جو کیاد کاایام پا ی ل خی كر ج اال يهال کے اسیا كاعم موجو دی 
میں اعترا ضكرن بھی فل وکا ایک حصہ ہےء ابت تر بیت کے موا اس سے ی ہیں۔ 


(1)-----عن عمر بن ابی سلمة قال: كنت غلامًا فی حجر رسول الله 

صلی الله عليه وسلم وكانت يدى تطيش فى الصحفةء فقال لی رسول الله 

صلی الله عليه وسلم: سم الله وكل بيمينك وكل مما يليك (متفق عليه) 

تر چم ...... خضرت عم رب الى لے ر سی الف تند سے رواييت ہے ء انم ہوںل نے فراي كم 

یش 1 خضرت می ھک پر ورش میس بجر تاور مزا تھ بر تن بم گر وش کر ر باتمائة آي 

۱ سیر سی و0‎ ET 

2 تک خلا“ بيد انق سے با ہو کے کک ہچ کو خلا مکہا جا تا سے نانج حم رن الي سل 
ہے یھ - آي صلی اللہ علیہ و حلم کے وصال کے وقت ا نکی عمرفوسسال تھی۔ 

حجر اس اف ےکی مع نيل »مهالا ىہ افظ يرو دشل اورت بيت کے مت ل ے۔ 

”الصحفة“بڑابر تن نسل میں مو ايارع افرا كعاباكما کے بول 

اس عدييث ۴ لکھانے کے تن آداب بیان فرمائے گے ہیں : 

0 کر ۱ 


(ا) قال الحافظ: قوله: فى حجر رسول الله صلی الله عليه وسلم بفتح الحاء المهملة وسكون الجيم ائ فى تربیتہ وتحت نظرہ 
واه يربيه فى حضنه تربية الولدء قال عياض : الحجر يطلق على الحضن وعلى الوب فيجوز فيه الفتح والكسر واذا اريد به معنی 
الحضانة فبا لفتح لا غير فان اريد المنع من التصرف فبالفتح فى الف وبالكسر فى الاسم لا غیر-(البار یت۹ أ (arr‏ ` 

قال بد والصحفة كالقصعة ........... وهى تشبع الخمسة ونحوهم السو كناك وفى السزیل: يطاف 
عليهم بصحاف من ذهب ......... والصحيفة اقل منها وهى تشبع الرجل وكانه مصغر لا مكبر له قال الکسائی: اعظم 
القصاع الجفنة ثم القصعة تليها تشبع العشرة ذ ٹم الصحفة تشبع الخمسةۃ ونحؤهم ثم الملكلة ثشبع الرجلين والثئلاثة 
ثم الصحيفة تشبع الرجلء اقول: وبه ظهران ما قال الحافظ: ii SCR‏ عد مت 
Grr)‏ فيه نظن 5 


و 8 


یہاں ان آدا بک قد ر غيل یا نک جا ہے- 
ال رکانام لين نیس اور وار 


كا ےی يي کے شرو یش الث دکانام لیے ےکی وا کرم صلل ہوتے ہیںء شل:: 
)0( او الہک كر ہو جاجاے اور وکر اٹ کی تو شی بزات خودم من کے لے بہت بذى نت ے_ © 
(۴).........الل رکا نام لین شک رکاایک شعبہ ہے گیا اک مم بن ےکاىہ اعتراف ر ہو تاس ےک ہکھانے با ين 
کے لے جيك بے ملا سے ود عيرس اہ ےکس یکاک تتو نہیں بك منعم يقي عحضس فضل و احران ءا 
کے پر تس الث ركانام_ك بخی رکھانا ينار ور كرد ينال بات کی حعلاصت ہ ےک اس خض کے ول می اس نمت 
کی ناص ندر تيبل سے ۔کنزالعمال مس حر ت عبد اللہ بن لی رر شی اٹہ ع کی عد یٹ نف لک یکئی س ےک حضور 
دسل صلی اللہ علیہ و سم نے رمل کہ عم ہے امل ذا تک جھس کے قيض میس مي رک جان ہے تم فار ل اود روم 
کی ز نيل ين كرو کے او رکھا ےکی كثرت م وکی کی وج س كحا ف ير الث دكانام نیس لیا ہا ےکا بن 
فراوا یکی و چہ س كا ےک فقد ر فیس ر ےکی لك وج سے الث دكانام لین کی یاد تمل رباك ےکا 
(۳)........... الف دکانام پل کی کت سےکھانا شيطالىاثرات سے کفو طط ہو پاتا ے_ ۹ 
)۲( ںہ وکر ال ےکھانے میں ب ہکرت پیا ہو لى ہے آرح کے مادک دور نے جس میں ہر چ رکو مادی 
يفول سے نايا جانا ےہ تسبل برك کی متقیقت سے نا آشتاينادي لور ا یکی انميت و ضر و رر تكو د سند لا دیاےء 
آج جب تمس كباج انا کہ فلا نكا مکرنے سے برکت ما سل ہ وی یہ جملہ بمارى طبيعت مل وذ را ۱ 
سی تبش اوران بيدا ني سکرپا تہ اس ل ےک تمارى نظروں میں ”بر“ تق ایک ہے مع لفظ م وکر ر کیا 
ءاس لے آ کے بد عن سے يبل ب ہکرت کے مفہوم پر روك ڈالنا مناسب معلوم مو جا ہے کہ بركت سے 
تلق اماد ی کو بجھنا سان ہو جائے۔ 
)مز پر يكت !”اسلا مکافسفہ آواب “ل زس عنوان را 
(۲ )كنز امال رح ها ۵۰ ٣مد‏ یٹ نبر» + ”.عد بی کی سن دکی تن ہی ىق 
(۳) شيطالى ثرا تک تفصيل عد ہے نر کے تخت 1 ےگی۔ 


٠‏ ا ۵ہ تج 
رکا تکا هوم :- 0000 

مور لقو ی ابن منظور -#ن برکمت کے درز ل معالى دک سك ہیں: 
ک0 سج N‏ والزيادة۔ کیچ کی يوت ىاوراشاف- 
۱ (۴)..........سحادت وتيك می ء فرشتول نے خضرت براقم علیہ السلام ‏ ےکہاتھا:رَحْمَة اله و رگائ 
غلیگم آهل الْبَیْت۔ ا برکا تا تفی رسعادات ےک ے۔ 
رو ہج دوام وپا یړ ارىء در ودش ریف ل جو آ ا ے:بارك على محمد ایک تر کے ہو ہے 
اين عنظور فرماتۓ ہیں: اى اثبت له وادم ما اعطيته من الصشریف والكرامة ۶ل زيان س 
برك البعی رك معن ہو جاہے اون کاک جل جمكر بی انلود جل دان اماء ۶ ل میں ب ركةحو خ شک وک ہیں 
اس مل ےکہ اس شيا لذ يت ککھڑار بناج 
(۴)............ پک کا یک ر قر لكثرت ھی ے: ابتركت السحابة کا 5 برسنا- 
۱ برک ت کا یورم بو مفهوم زجع نشی مکرنے کے ے يهال دوا باس پیش كك جات ٹیہ ایک 
یم الاسلام ححضرت شاو الد ر الث دكا ور دوس رامعالا سلام حطر ت مو لان تج لقن عذال امت برک مک ' 
ی دو ول اقاات آل چ به طويل ہیں لان ان ہے انثاءاثد مركت کا نہوم اور ا کی يبت و ضرورت 
کم نیس يك یدرد ل ےگی۔ 

حلت شام وی القد ر حم الشد فرماتے ہیں: 
2 ”باکت می ہے بات دا غل ےک دل سیر مو جاےء ككل ئ ڑ ی ہو حال و مق یا سل ہو اور 

آدئی الیالا ان سک كماما نورے م پیل ا لكاي کہ نس دو آدمیوں ٹل ست ہر 

ایک سے پان :زم رت می لن ایک لف راز نت بردت لمکا از ےلکن کے 
اموا لكو لهال مول نظروں سے دتا ہے اور ابنابال ای مہ خر خرن کی توف تيل مو لى جہاں اح دی یا 
دنا فا کدہ یچ اور وو سر حص ید لا او سوال سے نكن والاسج» نادقف حص اسے خی مھت ہے 6ن 
ص ابل معیشت مل مياد روك ای کر سج بل دوسرے مشش کواس کے مال (تھوڑا ہونے کت 
اود كت دق ہاور يبلا نض بركتح ال جد" 

اب سيد يا يالا سلام حضرت مولان مر ی عثال رامت برک آم سل ايك طول ”مون کے جنر 
اققامات بی کے جات ہیں 


)0( سور و البوو: 2۴ 


2 +۸۰ م 
”اس ریا راحت و آرام 21 حت اوى و سان لک حلاش میں چم دن رات س مگردال ہیں وہ 
راحت و آرام کے وسا ل واسياب ضر ورئل کن بزات خودراحتو آرام تال ہیں۔دوروییہ يبيل ہوءز كان 
جام اد ہو لو شی کے بول لو وکیا پک مول »كار يل اور مو ال ججباذ مول یوک سنك اور ۶ز يذ رشت دار موں ہے 
سب چ يل راحت و را ياسكون وا ینان ا ص٥‏ لكر كاؤر بيد تو یں نان می لا طوري ميش أرام 
نيا ف اور کون عطاكر ےکی بذزات خود طافتت ٹنیس ے اپ ای ضرورى ہیک جس شف سکومہ تتام زيل 
مسر ہوں اسے پر عال میں ا کا آرام ضرور نیب ہو۔ كته لوگ ہیں جن کے يال دو پل ينيك ريل تل 
ہے جو عالیشا نك یوں میس رج اور پر شکووکاروں میس مغ كرست ہیں کان ان تنام اسباب راحت کے 
باوجو دان ترون شر ی شن جاع 7-2 بس آرام و ون یر یں دو سی ایے رب میں ١۶‏ 
یں جس نے مال ودولت کے ان تنام متلا رکواان کے تن شل پار :اکم كو ديا ۔ ایک س کے وسر وان ے 
ٹوا واقرام کے کت کھانے ہے ہو ئے ہیں از ہاور لز یز تعلو ك١‏ تاب مباے صاف تمر ری > 
موس ہیں ء ماحول ب كيف خو شو سے معط ر ے فو لزت کے سار اسباب بظاہر موجود ہیں لیکن كر اس کا 
معد خر اب ہے فلت کے مہ سال اسياب ل لكر بھی اسے لذت عطا کی لكر کے یاک معد ہ بھی ٹیک ے 
لی كول شر ید ذ نی ب انی لاتق ہے جس نے بھ وک اڑا رکی ہے فذ ىہ تلام لذي کھانے دعر کے دھرے 
رہ جاتے ہیں اورا سے لف تك نت عطا كر ةد 
دوس رک طرف ایک عحن كش منزوورياكسان ہے ء وہ ار پا گن ےکی مشقت اٹھانے کے بعد جب 
كا نر کے .لئے اپ تر ی کھت ہے نو ظا ہراس میں مکی کی ہوقی موی اگ رول ے لین ا کا مود ہ 
۱ کت مئ اورا لک ب کب ریو رہے؛اسے یقن ای ب رک کے مالم ٹل سأك رول سے وولزت حا سل ہو ہا 
ہے جو يار مجر کے وولت مث شس كو افوا داقمام کےکھانوں یل تعیب نہ مو کی يجب رات کے 
توركل ئن ے ےا ری بارال ب اتات و ےا کی كيل ب جل ہیں اور وواس کی 
ایانب لیت ی دنیادمانیماسے بے ر ٢ڈ‏ جا تاے اور ا کن ےک کر ر ند ن ےکر کو اق وج بنداٹتاے 1 
ال کے يال نہ مسر ی تی ون گراز بس ر اہ نہ ای رکنڈ یش رہ تھاءنہ دوم اسر ےک میک تی يان ا سك ےو ری 
پان بھی اے ووراحت میس رای جو اس دولت من وکوا رنڈ یش ڈ خو ا بكاه س بھی میس ر ہی ںآ تھی 
اس مک دسیوں مثالال روز رہ تماد سام آل رعق ہیں جن میں ایک ی لذت اور راحت 
سے روم وج اور:زوم را تح بن وی ازو تایان کے ہاو دای سکیس زراووة کی عون اور 
انان سے سر شار الل سے یہ بات دامع ہو کی ہ كه دای راحت و آرائّش کے حت وسا کل ہیں ان سے 


GE‏ 4م سي 

وا قا لزت اور ر احت حا گل ہو نا رج الى عوائل ب مو توف ے جو انما نکی قد رت اورافقيادت باہر ہیں 
انان ردپیہ خر خکر کے راحت کے اسباب فوخ ید سكن ايان وه عوائل يني سے نیس ر یر ے ہا گے جن 
كاوج سے ان اسياب میس سق راحت و آرام عطاكر ےکی صلا حت يبد اہ" کی ے۔انسائن دن رات ای یکر 
کے دول کا سنا سب» نگل بناسکتا سے :کار میں خر بد سلاج می سکھب یکر ککتاے کان ان چیزوں سے تی 
لیف اور و فق آرام جا لكر نے کے لئ بو صنت دركار ےء مجن بر و نكيلو نعلقا تک ضرورت ے 
اور چو ذ ہنی کون اكز بر ہے وونہ نو روپے بي کے مل پر حاص کیا ہا تا ے نہ ات كول شین تيا رب سی 
:و كل طور پر انسا نکی حدود انار سے باورا ےو تلصتا اہ تتا یک عطاے اور اس عطاس ا سكاكولٌ 
ریک تقال وماك چاج تو یہ جيل عطاکر کے يمو ل کے مون ےکو جن ينا او ر کر چاے تو ہے 
زس سل یکر کے عالنظاق ك لکواہگار دق کے فرش بیس تيزب لکرنے۔ 

”اللہ تا یکی ہے عطاجھ بلا کت ساق کے فض تد رت ل ہے ای کانام ”جات ے۔ ہے 
”یکرت“ ما صلل ہو فو تجوز بجزز کی کان ہو ہا ے اور اس ے مطلوب نا روا ل ہو چاتاے اور ”ی کی“ 

مفقود ہو ؤوولت کے عب رك انما نکوفا کرم ہیں پا کے _ ای ”جک ت ایک دوس راچہلو یہ بھی کہ اکر 

دنيا ےکی سازوسامان سے وت طور يريك راحت مل بھی رہی سے توا كااشهام بھی کر ہو۔ اکر ایک ڈاکو 
ل حول روي لو كر تین دن تک خوب مر ے اذا اور چو تھے دن ثيل س جات تو دہ تمن دن کے 
مز ےک ںکام ان لبزادنيا پر اطف» لذت اور آرام اک وت قال تر ے جب ا سكا اما کی بای 
نکی ف کی صو ر ت میس تلام رت مو اور ”مت“ کے ہوم میں ہے بات بھی را قلے۔ 

اب ”يلت “دو جز ول کے جوع كانام مو گی ایک ب کہ راح تکاجھ بظاہ ری سبب تمل نظ رآ ربا 1 
ہے دموا قتا لت یا ]دام بياس او كول اسک عالت بيد انہ ہوجو ا كاز ہک رکراکرڈانے اور دوس ر ےی ےک ٠‏ 
ا سکااضجام بھی تر بمو لور الل سے حا سل ہو نے والى نظاہ رکال تیآ رامک ی خر اب نبو“ ۵ 

جر اهام اجا ہونے میس ىہ بھی داضل سبكم ونو ی قار سے اس بر انك متام رحب ہوں کیان 
تك و قانتعال و فز يح كلق ارق لور رق تک کر ہر ےکر سار 
ل ضا ہونے سے پیر ہے اور یہ بھی داخل کہ د بنی اور اتر وی اقباس بھی ا سکااضجام امامو ءکھانے 
سے ووتو اماک ودیک ت ادر ادات می مزيد خت اب ہو طیعت م امول سے 
نتقاتے پیل ان کر - 


(1) سانا م الصيات وال جا ساح ص٣۳٣ ۳٣‏ 


ْ E AE 
مو ہی وم ھک تج _ نل حضرات‎ 
نے اسے واجب راردا 7 الین یح بات يبلت ےواج بک والوں کے ٹیش رناب بات دگاکہ‎ 
اعاد یث نيل الث دكانام لک كاعر ہے اور ام را ل میں وجوب کے لے ونا نان اس کے اق ے بات ذ ہکن‎ 
ھن چا ےکہ داب کے اندرجب اع رکاصیغہاستائل بوتا چ ازو موا خیب کے ےکی ہو ہے الام‎ 5 
گر کے نلك موق اررق تيم متم ر آخزت كو مزاب سے بها س لہ‎ 
سعات و ب ہکرت حاص ل کر ناور ز ن رک یکو شا تست و مهذ ب بنانا ہو تا ہے جنا ہکھانے ب “م الد کہ کے بارے‎ 
میس يمو گی طور بر ترام احاد مش سات رکنے سے جو مضہ كا هوهي ے ل ال انام تہ دنا کت وسعادت ے‎ 
۱ رو ىكاسبب نے 5 ا ثرو ىعز اب اور و کی رکا ہپ یر‎ 
حافظ ابع جر رخن اٹہ علیہ نے واج بكي والو لکا یک اتر لال ىہ بھی ق لکیا ےک الى صد مث‎ 
مس دای ہا تھ سح كما ےکا بھی ار سے اور اسے عمو اواج بکہا جا تا ہے ءا کا تقاضاي کہ مع الل كب‎ 
کو بھی واجب قرا دیا جاۓ لکن ہے اتد لال بھی درست نیش اس لكك دای پا تد سےکھان ےکاصرف‎ 
امم ی نیس بل با یں پا تخد سے ی بھی ہے ( ی اس سح کی گیا ے )اور ہے صور تال مال کے ارے‎ 
شس ںے۔‎ 


اکان نظو ں میں لیا جا ے:- 
1 اعاد ہے می لفظو كل تین کے بفی اڈ انام لی کا عم سے لیکن اود اؤداور تر نیش حضرت 
اشر خی اللہ نياك عد یٹ ےک “ضور اق س صلی اللہ علیہ و كلم نے فراي: اذا اکل احد کم طعامًا .. 
فلیقل بسم الله فان نسى فى اوله فليقل: بسم الله اوله وآخره - عب مش سح كل کہ 
کرانے گے تو کے :دم انش اکر شروش بھول جا لو کے:بسم الله اوله و آخرہ۔ ) 
اعد یٹ سے فقونى ین كاد کہ ہملک ہنس م یٹ کون بدا مس عتمت 
امے من ع ی ر تی اٹہ عر سے بھی موی ے۳ 
GÊ (0F [Ê CD‏ / ۵۳۱ ...... (۳) (حوال ساب ) ويؤيده ايضاً حديث عائشة عند احمد 
والبيهقى وحدیث انس عند.الضياء وان السنى وابن عباس عند الحاكم والطبرانی والبيهقى راجع ۔ (كثزالعزال 


ر۱۵ / گے ۸۲۰۳۴ ۲۵۰۰۲۳) 


یھ 
كنز اعمال میں عاك کے حوانے نے حطر ت ان بالل ر شال عن سے موك ایک عد یٹ من 2 
الثدوي كت اٹہ کے الفاظ “ی آے ہیں۔ 0 ۱ 
الام ووی ر حم اللہ نے فر ایا کہ اکر محم اود ار صن الر جم لپ رک پڑھ نے قو زياده تر ے كر جر 
تی عد یٹ نبل ا كا ص رج وکر فيب مان لیکن شا لاك لووك اد فوزع اقبية ندع 
تراردیاے۔ 
اام فزالی ر حمہ الد نے بيهال دوب تل اور وکر فربائی ہیںء کی تو ےک VE‏ تر مح اد اور 
دور سے کے سا و ھ0 تر ے کے سا کیٹ رٹ كمركي ولق 
کے سا تج بھی م ا كتاج( 
عافظ ان تج رر حمہ الد ے وو فول پا کو بااو مل 3 ٹارياے_(۳ 
يبل با کی و خود امام خزالی ر حمہ اللہ نے یکو 9ص ھ0۳ھ*0+۶0"م)( 
راید حم ال نے ب بیان فربائی سبك ہککھان کیا تمس اور ا کی طرف لاج کی وج سے ذک رنڈ سے فلت ۱ : 
نہ امام خزال یر حمل ان دکی اس با کو بطو ر علا اور وسيل تو صلی کیا چا سکس ہے ء با قاعد هآ داب طعام شل شار 4 
کرم شل ہے ای كم ایک ف ثرت ذکر آداب طعام ل سے تال بکد آداب يات جس سے سے 
۱ دو سرس شر یت ںو کردا یک یکڑت ارچ مطلوب ے لکن اس در جك مور تا کی ے کے ون ۱ 
در میا می بیز ان سے کا جار اد ہے ابر یکر یلال علیہ سم سك مل اور 
صحاہ كر ام ر ضوان اللہ “مس تال سےا د راوتا کا وت یں م 


مال آبت کے ياك آ آوازے:- 
کسی .ےھ ہے تون رق ا عاو سو سا 
دلاسةكا مول ہو دہاں جر کے ے و زک کاخ اب بھی ل جا ےگا 


۱ اکرش رو یں میس م الث ہکہنا بجول جا : 5 
رکھانے کے شروش بم کہا کول ہا ے أ سياد سة لاله فول و اخ کے ا 
انت ہت 5 


1 


ظ ه407 س مہ : 

ا ری د لک رکا ارسج بون لزب كام اي ناا چیا سب کا پڑھناضروری ہے۔ ۱ 
اام فووئار حم لد سف امام شق حم ال سے ل فيج چب لو تكاس كد سب محم اث م ھی ں کر 
کی ایک کے شعنت بھی اصل سنت اداو وال 0 

اح کے من تس میں ےآ تاس کہ يهال ددوضا نٹ ضر و ری ںای ےک اکر چہ ايك کے بڑھ 
لے سے اسل سنت اداہو جا كل كر سم اللہ پٹ نكا واب صرف بذ نے وا ےکوی ل ےگا س بكو واب 
ا ل ہو ن ےکی صورت یہ كم سب دم یلد يال د دوس رک بات كل مم اڈ ع کا ایک مقصر تصول 
رکریں ادر شیطان کے اشثرات سے بجنا ہے۔ ل اعاد بمث سے بظاہر ہے جھ یں ا ےک ہے مقر حا سل 
ہر نے کے لے تنام ش رکا کا ہم الد يذهنا شر طا سے٠‏ 1 اکر ایک منص بھی لم الہپ من کے ای کیا نے میس 
شیک م وکیا تو خیطان ک ےکھانے پر اثرانداز ہو ےک کنیا ب پا ہو جال ۓے كل او رکھانے می بے کن ہو 
جا ےگ شاد حرمت امام اث رہ الیل کے ار شاو می ”صلی سنت “عاصل ہون ےکی تید اہی دو باقن 

کے شی نظ کا ی مو ۱ 

اس دوس رگ باتک دتمل ای با بک عد یٹ نر ٭ ٣ے‏ جو حل مان یکی جيل عد بیث ے بج لكا 
مال یہ ہ ےک یکرم صل الث علیہ و سم کے سات ھکھا حا ار اء شرو م ل کھانے ‏ بہت يده 
رک ک2 شون فت دی نے کن نون برل ۔ آپ ی اله علیہ و کم سے ا کی وج ہے ب یکی تو 
آپ نے اد شاد فرمااکہ تم نے الث دكانام كك رکھاناش رور )کیا زاء اس لے برکت حا صل تھی پھر رين آبااور 
ال کاام ذکر کے اخ رکم نے لگا ءا لك وج بے کت ہ وك 

يتبال نمام شر کا نے ریم الد بھی تھی : صرف ایک تر اوج سے بے کن ب داك 
اليكل داقعہ امام تانق رح ادن نے حطررت ءاتش ر د القد عنييات واي تكياس>: ١‏ 

ان رسول الله صلی الله عليه وسلم كان ياكل طعاما فى ستة من اصحابه فجاء اعرابی 
فاكله بلقمتين فقال رسول الله صلی الله عليه وسلم اما انه لو ذكر اسم الله كفاكم_0» 

الن اعاد ی ٹک وچ سے دو با ال یش سے ایک با تكهنااضرو رك ےءیا 0-20 

می ایک نض بھی ا یباہو جس نے ماش دہ بڑھی ہو و کے مھ بے بد جا چا ب کہا چا ۓکہ الیک 


یب 


() ر وضتالطا دن رحس / صل اس ست ش رح مس لو وی ح٢‏ | اها 
() شب الايمان ی ح٥‏ ص ۴ء2 ع٢‏ / + وقال هذا حديث حسن صحيح - 


5 او تج 
ونت یش جو لوگ اكش كناش وراك يل ان مم سح کی ای کا ال يد ناكا ہے »ان شل ے دوسرو ںکا 
نہ پڑہنار اف برکت نہیں ہو جا لین اک ركو نش شر ركاء کے سا تج د كعانا ر ون كر بلک بعد يل ش ريك مو 
سه فو ديدم مانس کت جال ید ہق ہے اکر چہ ييل سب نے مس الد يذ ى جو 


وا ل ا تر ےکھانا:- 
عد یٹ مم کھانے کاد وسر الب یہ با نکی گیا س ےک ہکات دای بات كحي جائے ال کے 
پارے س در مل امور قابل كر ہیں: 
(1) ا اد بک كت (۲) دابل اھ ےکھانےکاعم۔ (۳) سے اھ ا 
)١(‏ اس اد بک کلت جک و ور ہت ود ہج ہے 
0 سس اہ کرای ی خت عاضا لھا میں کے لے ےی 
استعا لکیاجاۓ- ۱ 
یا ین او ہے ھا شیطال کم ہے ءا نے کہ باشیبان لازم ا 
E‏ مسبت تقاضاي ‏ ىك صفائی و ستمر ای ان هك مول اور کی امو سے 


مہ ای شل اتلاف بواج مہو علد سے لوو 04 لات - کھانا میں“ انی ماتھ سے ll‏ 
ادب او رکر وو تی ہے جب رش علاء جن میس این الھب یء کاو بی شا نی ہیں کے تز یی داس ہے سے 
کھاناواجب اور با ہیں پا تھ سےکھاناناچاتز ہے امام شای نے بھی تعر جل يراك تقر 7ف رمال ے_ ٣۳‏ 
| جو رکا اتد لال بظاہر اک بات سے مو گاکہ آداب کے حلسد بیس اکٹ اوا م اتباب کے لئے ی 
ہوتے ہیں ساك پیل گزراہ چنا قرٹی ر ہے الف فرطم ہیں: هذا الامر على جهة الندب لانه من 

باب تشریف اليمين على الشمال_“ . 

60ا کی تیل ”اام ال آواب “کے زیر خان ير سی لاحظہ فر 
(۴) تخصيل دبكت کور م حنوان قت فر 7 ظ 
(۳)اوبزالےازل 17 أ ص۰٢٣‏ 

(۳) وال بالا . 


وخ ٢٣‏ م 
جو صحطرات الت واجب قرار و ے ہیں ا نکیا ایگ ديل حضرت سمل بن الاکو کر شی اللہ ريح 
مر وی ی مسل مکی ایک عد ييث س ےک حور اق س سی الہ علیہ وسم نايل کو مس با تت كعات 
ہو سے دک كردا ل پا تد ست كعا ےکا امرف فرايا» ا ے جو اب م كها: لا استطيع میں توا بل پا سے 
51 بس ع“ “حصوراثرءل ص0 م ٹریا:لا استطعت ۔ وا ںاہ سے كعات د لور“ 
جنا ني ا کاب تھے اهيا مغو رج م وآکہ اس کے بحد وواے دو بار هاو يرث انما سكا- © 
ضور اق رس صلی اٹہ علیہ و سل مکی ست بكام سك چھوڑنے پہ بددعا أبس فرما علج ء آي كابددعا 
فرمانادایں ات س ےکم کے کے وجو ب اور پا بل ہا تھ سےکھان ےکی حر م کی دلبل ليان اس امت لالم 
ہے قوی اکال ہو عا کہ يهان آپ کے بددعافرمائےکادجہ ہے کہ اکردنے ججوناعط ریا نکر کے ۲ آپ 
کی نيعم کور رکر دی تاور ا کاشٹا كبر تھاء جنانيه اكياعد یث لے افظ إل :ما منعه الا الکبر اباب 
گی بددعاال کے کک رک وج ہے ہے ء با یں پا کے س ےکھا کیو ج سے کھیں۔ 
ای سے اتا ہلاو اق حض رت سویعہ اسلمیہ ر تی الشد عنہا کے باد یں بھی ظط رای نے روا کیا 
ہے۔( ال میں بظاہر ای یکول بات تيبل روابی تک کی جح سکی وج سے اس كبري مو لکیا جائے لپ ١ای‏ 
کی سن اکر کے نو یہاں بھی ای یکوک بات نر ور ہر جود م كك جو بد عاكابا عث بی م وكاس ےہ پا 
ت س كه ےکوتا چائز تل یمک لیا جا تنب بھی 1 تفضرت صلی الث علیہ وسل مکی عادت مبا کے کش اچاگ 
كام دک ھکر ب دعا قرا ةك نہیں یف yT‏ 
کر نے ب گو لکیا ہے۔ (© بیز ای عدبي ٹکو بد دعاك بجا ب كول بر بھی مو كيا ہا سكناه ن ہے 
مطلب نی لك اس کے سا تح یامد جائے با مطلب ہے س کہ اس کے سا ت ایام گا۔ 
قا ینغ وجو بک دوس رکد عل بي س کہ اعاد یٹ شش صرف دائیں باتجد س ےکھانےکاام ری یں 
کک با بل اھ کے سا تھکھانے سے ى بھی ہے ادراسے شیطائی أل دو ایا یج دای اتھ کے سا تھ 


کھانے کے وجو بک د ل ہے۔ 
بر حال اتی بات وا يس كد دامیں پا تھے سےکھانے ارآ رارت ادا جاے تب کی ے بال 
آدا بک تبن کان کی ری کارب ضر ور >- : ۱ 
ای ن مورت ی عو کات می ا 
جاۓ وا لرن 


رو ور تی یہ 
معلوم ہو تا چ ایک حفرتت عبد الث بین غ رر ی اللہ عت کی عد بیت سے طبر انی نے يم اوسط ل روات 
کیا ےکہ می نے ر سول الثد لی ال علیہ و کم کے دای پا تھ بل كك او ريا بل می جاز جورو ھی آي 
ایک مر حہاس يبل سے اول فر ست تے اور الیک مر تب اس شی سے دوس رک عد یٹ حر رت الس ر ی اللہ 
عت ہک ہے نت ال "یم ےناب الطب جس روای کیا ےکہ حضور اق رس صلی اللہ علیہ وصلم خر بوزودامیں 
1 ل او ورا" با میں يا کے مل يكذ لت سے اؤرووثول کول اک کہا ے ے۵ ۱ ۱ 

نزک كول شف صل قدائیں اھ س ےکھارہاہو ین ا پات ھکوبھ کسی وج سے خا یکر نے 7 
عر ا سے بای پا تھ س ےکعانا شار تب كيا جا ا اس کا مقتنا بھی بجی س ےک ره صو ت بابل با کے ےےکھانے 
کی ممانضت می داخل خی ہو ا لن داب اھ س ےکھانے کے مکی جو تی شرو مل ما نکی ) 
کی ہیں ان بین سے تی ری کل کا خقتتنا ہہ معلوم ہو جا ےک کھان ےکی چ کو بایاں با تھ (كانا مطلقاً منورع ہو 
اس عليه میس فیصل کن بات ىہ معلوم ہو لى سكل با یں پا جح کو ضمت شاب لكر ینکر جر اچائ نیس ے اور ای 
سے ترک واجب لازم تثبل آ٣‏ کان بلاضرور تاس ےکر اوی اور “تمن ے۔ 


ا سے سان سےکھانا:- 

۱ اس عد یٹ مل كما كا تیر ااب بر بیان فرمایاگیاہ ےک کھانا انے سا سحن سےکھایا جا » اس 

ہے کیل 2 نی خدمتدے۔ 
0 ہج ا سے مان سے کھانے اور دوس رک جاب سے یا در ميان سے ن كماد 
یش بھی یی خا ٰ 
ES 0‏ ای ابل سو 9 019 
(٢۲)‏ 20006 یرت ل يلا مقصیدادھ رادھ ات مارنا ےڈ حتگاین اور بد سیک کی علا می ے۔ 
ےت بلا صر پر طرف پا تق كران ر کی بھی ملا مت ے۔ 

لدان ارول د 

ا کک اکم ا کی طبيعت بہار مو 


)١(‏ الاد یع۹ / اه 


گا ٢‏ جج 
٠ E (۵)‏ ل ايا بھی ہو سنا س هك ہکھا اس یکی طرف سے جن یک یاکیاے اور ولا لت مال ےر معلوم 
ہو را کہ ی یکر نے وا ےکی طرف سے ہر ای ککو اپنے سامش والا حص ت ىكحا ےکی اجازت ساس 
مودت می دوس کی طرف س كيك 3 لكك بات کے لادد مر سے لس می دوس رے کے تن 
ar‏ نی یل آلے۔ 
..... اگ کوک خی تھا ب یکو اہے عب بھی لح کھانوں خی کھان ےکی شكل بلادجہ پرا کی ہو جال 
ہے یسوی ہر اور كال ےکھانے 
كو بھی نہیں چا اء ایی واا نکھانوں میں ہو تاجو شور بے وی روك ط رع بالكل پک بھی تيس مزق 
ول 27 کل الك الك بھی یں جب نزي اور چاول و 7 و : 
مس عالت میں سے ؟...... اپے ساح سےکھانے کے بارے میں احاد يهش ل بظاہر 
تھوڑاسااختلاف نظ رآتا ہے اس خد یٹ ٹم ء ای ط رح اس جا بکی عد یٹ تسر ۸ یل اپنے سال سے 
۱ کھان ےکااخر ہے لان اک بابك عد یٹ تبر ۹ای ہے رپا ےک حضور اقرس صلی اللر علیہ و صلم ایک وف 
٠‏ ایک درز یکی د عوت پرا ی كك رت ریف لے گے اس نے شور بای کیا بل ہو ٹیاں او رلوک تھا ءآپ 
درن نعلت کا ھون ڑکر تناول فرمارسے ے۔ 
يهال آ تحضر ت صل الث علي کم نے اپے ساحن س كاك تام یں فيان دوفو م 
کی جد يل کے پارے ‏ علا ء كال بات ير اتفال ب ےکہ ىہ الك الك حالتول پر مول ہیںء مض حالات بن 
ووسر ی طرف سس هكعانانا ينيد ہو اے اور بض حالات یں اليا بل ہو جا ين سیآ تفصبل عل علاء ے 
متف" قوال بین جو در ذ یل ہیں: 
(۱)..........اگ رکھانا میک یی عم مکاہو تو دوس رک طرف سس ےکھانادرست يأك كان تتف کے کے 
ہو رت نو وت رھ یٹ ۱ 
جو میں یی ليان تاف انوا حکی ہیں تو حب نا جز اسم لکر نے کے لئ دوس ری طرف بات بوا لیے یس 
بھ یکوئی حرج نہیں ۔ اکٹ علا نے اس مسد مس بھی نیل بیان فرمائی ہے اود ا کی ديبل خضرت ا 
ر شی الہ ع ہک عد مش جو ااس ہاب کے نہرہے پرآر ٤ے‏ 
(۳)..........امام بار ی رحمہ اللہ تھا یک داكي کہ اکر يقي ان قاب ہ وک اور ادر ےکی“ 
سا تق ھکھانے وا ےکوگراں نی گر ےگا واي رت رت تس جنانيه الام بغار کر اللر* 
تقال با بکاعنوان كيا :باب من تشبع حوالى القصعة اذا لم يعرف منه کراہیة۔ اوراس ` 


>- لس تھا 
جار كرو حضرت الس شی ال تھا لی عن وای عدخ كل ہے شن ہیں وك کے کے تلاش 
رن كاذك ع0 
عا بن جرد ال فر سق ہی کہ لام بقار كارح الك يبال مقصود حم ری کر اش ر ی الد 
عنہ وال صد یٹ کے ضع فك طرف اشار هكرتا سے جس ے ہے معلوم ہو جا ےک ايل یی نم كاكعانا مو تو 
ووسر ی طرف باد بڑھانا غلاف ادب ے وگنہ یں چاچ اس عد ييث کے ايك راو ہیں العلاء بین 
الفضل_ امام تر ہیر حمہ الد فرماتے می ںکہ وہ اک عد يمث کے رای تکرنے میں متف رو ہیں سن صرف وت 
روا کر رے ہیں( ان کے بادسه میں ذ ی کہا ے:صدوق ان شاء الله - يان دوسرے اکر 
مد بن نے انكو ضعيف قراردیاہ عباس من عبد ایم ن ےکسا کہ عد بث تکرش ا نے خود و کی ہے۔ 
ابن حبان نے ےہا ےک اکر ووسر سے تہ داوى ا نکی نموافق یکر ر ہے ہوں تڑا نکی رواعت تو لک چاسق 
۱ ےار تفرد بمو وا كا ردایت سے امد لا لکن کے ين بلج(" 
الى کے تم نتن ايك اور عد یث بھی مر وک ہے جس کے الفاظ ہے ہیں: کان اذا اتی بطعام اكل 
مما يليه واذا اتی بالتمر جالت يده - ”جب حضو ر قرس صلی اللہ علیہ و حلم کے سا ع کھانالایا جات تاي 
جاب سے تاول فرماۓ اور و سی لال ہیں أو أب كا با کر اد ر ا ر مومت“ () کن یك بھی 
تيال شيف بكلا مو ضورع قارو گیاے_ © 
(۳)........... علاه كيال کے كلام سے معلوم ہو جا سب ےک تا کھان ےکی صورت يبل دوس رک طرف سے 
كافك کنیا ہے کی کے سا قح ھکھان ےکی صورت يبل خلاف ادب ہے كال نے نیاو خطررت الس 
ر شی الد عنہ وال عد بی کوت بنایاے يكن اس پر حافظ بن جرد حمہ الہ نے ہے اكرات كيا کہ بيهال “ضور 
انر صل اللہ علیہ و 7 بھی حضرت الس ر شی ابق عد کے ہا ت ھکھانے میں شريك ےد 
۲( ہہ اام الک سے قول س ےک کو یش اپنے الى ان اور خدام کے سا ت ھکھاناکھار باجو او 
دو سرك طرف ےکھانا جا ے_(۸ ليوتلراان کے سا تقد ہے کف یىی وجہ سے ان كرا ىكاخطره بال ہو ا 
لين اکر غو رکیا جاۓ نو در حقیقت ان کور و اقوال مم کول اتتاف اور تقار ض تيبل ہا ری ہی 
پاٹ اپنی اپ کہ ددست میں ءا كتيبل سح جو خلاصہ ب جس آ تاس دوہ ہ ےک أكر دوس رک طرف 


0( جو تی ..(۴) وال ن فکر*....(۴) جا زی ٤۶‏ ۳ھ 


الاعار ا |٣‏ ص۳۴۰۵ حر يث ر ۹۰۵......(ے) 00" 7 .....[۸) وال کرم 


۔ شنھتن 
پا تھ بڑھانے سے دوسرے مسرا نکی ایا ہا ی کاواس خطرہ ہو یی مو اكعان ضا ہو ےکا غالب كان مولو 
٠‏ ایی اکر تادر ست یں خا طور بر جيل كان یک بی نو عی تکاہدءاسی ط راک دوس رک طرف ےکھا نے می ٠‏ 
کیک من فی کاخطرہ ہو باک كك صر یاد لال اجازت کے اخ کیا ےکی صو رت ن ہو تو بھی ای اکر نا ناج ئکز 
ے اکر کور و مفاسر خلس كول فد لام يبل آر باؤووسرى طرف ح بلا مقص درکھاناادب اور شا کی 
کے فلاف سے لین اکر ا اکر نے اکوگی مقر موجود ہے ما کھا کی انوا اقتا مك ہے اور این پت دكا جنر 
دصر طرق ف ے وای اک نے كول مريت أل د ۱ 


ال عد يهش ےکی واک تہ ہو ے ہیںء شلا: 
(۱)...........اس سے معلوم مول بو ن کے میت ادرا نكو آ داب کماےکاامتتا مک اپا ہے ۔ 
رس لمر ys‏ ا بھی بش ی 
صد ور کل ر ے ہو ےء كدت کے سا تھ تناۓ عال کے مطا بی ہو۔ 
06 ہ7 الل سے حضرت عر بن الى سلا ر ی اش ع ہکی فحضیلت بھی أب ٹیس آ کی ء ایک واس كل 
ریغ سے معلوم وال دو آپ صل اللہ ليو علم کے ہت یت رن چن ءووسزسة ال وج ےکہ ی 
بغار ىك روایت عل حطررت عمر بن الى سس لكا لفظ کی ے:فما زالت تلك طعمتى بعد ۔ ”اس ے بعر 
می راکھا کا نہ از پیش مکی ر با۔ “اال سح كال انار سن تکاا ند از ہو تاسج- 
(۴).........کھانے کے ش كال سے ا رک یکو سن کا عکم نہ ہو اور خلاف سنت كا )کر ر پاہو تقو ال کو سن تک 
نی ممردینامطاسب ہے۔ 
(٣(‏ سد عن حذیفة قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم ان الشيطان 
يستحل الطعام ان لا يذ كر اسم الله عليه ررواه مسلم) ۱ 
رت سی صرت هذ ايف ر ی اللہ عند سے دوا يمت سج كم ر سول اللہ ص٥لی‏ اللہ علیہ 
و لم نے اد شاد فرماپاکہ بے تك ککھانے ب ال کا کر نکر ن كله جہ سے شیطا نكما کو 


فف Ee‏ لك ات جن مر ۳ و 
ا نت امقدکانام نہ لياجاس تو شیطان کے ل ۓےکھانے پر اث ندا ہو نے او رکھانے میں تی 1 
ل ري ظ 


8 2 
(۳)-----وعن جابر قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: اذا دخل 
الرجل بيته فذكر الله عند دخوله وعند طعامه قال الشيطان: لا مبیت لكم 
ولاعشاءء واذا دخل ولم يذ كر الله عند دخوله قال الشيطان: ادر كتم المبيت 
واذا لم یذ كر الله عند طعامه قال: اد رکم المبيت والعشاء ‏ (رواه مسلم). 
rê,‏ ہی خضرت چا بر ر شی اللہ عند سے ردایت ہ کہ ر سول اللہ صلی اوہ علیہ و کم 
نے ار شاد فرمايا کہ جب آدئی اسن كيبل داخل ہوا > اور داشل ہو ہوۓ اور 
کھانے کے ونت الث دكانام لتا ے فق شيطان (اپنے سا تجبو کو )ابنا کہ تہارے لے ' 
(یہاں )نہ رات در ےکا جل ے اور تہ رات کا کھاٹا ے اور جب آدٹیگھ رجات ے اور 
جاتے مس ا انام یل لیت شیا نكا ےہ یں رات رٹ ےکی چک للك اور 
ج بکھانے کے و فت ائ کا مت لے کہا کہ ہیں ر ات رب ےکی مہ بھی م لک اور 
کھانا کی لگیا۔ ظ 


شين وجنات ےکھانے ےکا مطلب: - 
گز شت صد ييث می ایا تاک ا رکھانے پا کانملا جاے تذ شیطان اح اپنے لئ علال ب لتا سے 
بس سن کا مطلب بظاہر بی ناس کہ دو یکھانے مس ری ہو جات ہے ء اس ذ سے بكلث عد بی یس بھی شیا دان 
کےکھانے ہے ےکا دک سج ای طرح آ کے عد بیت تبسح يل کی آ ر با كل خیطان با بل اھ س ےکم اور تا 
سج »اك با بك صد بیث مہم حال م سکھان کھانے کے بعد اسے كر ےکا ىا کم ہے ء ان اعاد یٹ سے جو 
ل سج حاص ل ور باس وہ فو صرف اتا ےکہ !غير کہ اش کے ےکم کے يابا بل بات كما کے س كرام كرجا 
پا سے اس کہ ان دوفو لكا مول سے شی طا نا ات شائل موك رکھانے یس بے ب لقكابا عث بن جات ثيل - 
ابت “ل عد یٹ کے نقطہ کرس ہہ جاخ ےکی رد ت ےکہ جنا تک طرف ج دكها ف ين اوران 
يجب افیا ل کی نبس تک یگئی ے ا كا مطلب اورا کی تقیق تکیاے ؟ 
ال مس شار مین عد یٹ کے ملف اقوال ہیں اض حثرات نے بے فرایا کہ یہا ںکمائے نے 
کی شیاطی نکی طرف نت تی می کے اخقبار سے لال ہے بل حیطان کے بامیں پات سکیا ےک 
مطلب ہہ س کہ وو اناف ںکوپ یکر بای ہا کے سےکھانے بر آماد ہک جا ہے ينافال کے با بات سے 


۱ کھانے پر خوش ہو جا ہےءاکی رم اللدنہ يك وج سے شیطان کےکھانے بل شريك ہونے يا 


۸_| ۱ 
کے علال گن کا مطلب ہے س کہ وہ ا کیا ےکی بركت زائ لک د یتاے اور ےکر نے سے راو ز ئن 
شروي رك تکاواہں آجاناے۔ 
ین اک شار کن عد ی شك داكي س کہ ىہ اعد یٹ اپےنماہر ی مول ہیں ين شیاطین 6 لع 
کھاتے اور نے ہیں اس سل کے شیا ین کاکھاناو پیا تل کان کی ہے اور احاد یٹ لکھانے اور يخ یی 
کے الفا استحال ہو ۓ ہیں ٣ا‏ میس اپنے اہ رک مع سے ٹاک دوسرے مث یہنا ےکی رو رت ال 
ابت یہی شار من عد بیث نے دو میس اور ھی کی ہیں ليك لم جنات و شيا ین کےککھانے ہے 
کی صورت او كفي تکیا ہو کی ہے »کیا و انان لك طز ر حکھاتے اور ٹے ہیں یاا نک کیان بنا شض س وکنا ہو حا 
ہےء دوفوں ہی قول ہیں » دوسرے ‏ كه تام جنات وشیا م نکھاتے پت ہیں یا نکی نض ہیں اکر 
ہیں ہشن حف را تک اکہتایے سے کہ نمام جنات و شیا نکھاتے اور پٹ ہیں اور نض ن كها ےکہ ا نکی ملیف 
اا ہیں, حش بالكل ہو اک طرح ہوتے ہیں د ہکھاتے يت بھی نی اور کا وغیر و بھی نی كر سه اور 
بض میں الى ہیں جن حك ل كان يلود کاو تھا عل بہت سے حيو الى لو ازم امت ہیں يان عد ی سے ' 
ج بات بجھ ٹس آلى ہے وه صرف اتنس كدي ہکھاتے ادر يلت ہیں ءکھانے يع كل زی تفصيلات بر مل 
مو قوف یں ال لئ يبال ا ستفصبل عل چان ےکی ضرورت نہیں 
ری( -----وعن ابن عمر قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: اذا اكل 
احد کم فلياكل بيمينه واذا شرب فليشرب بيمينه ‏ (رواه مسلم) 
کب رر و ت ابن رر شی ال عنہ سے روايمت س کہ رسول القد سل اللہ علیہ 
وسلم نے فرك جب ت می سكول کھائے تاپ ديل اھ س کھائے اور 
عت نے انا میں ما تھ سے ہیے۔ 
٠‏ (ه) سد وغ فان قال رمو عسل غ وت کا 
بشماله ولا يشربن بها فان الشيطان ياكل بشماله ويشرب بها - (رواه مسلم) 
رجہ کی رسول ارثر صل اللہ علي وم نے ارشاد فرايا شل سح كول نص اپنے 
با بل پاتھ سے ركز نكاس اور بال پا ہے سے ب رگ نہ ہے ای كك ان ان 
اھ سے کماتااو ر اک سے ينبا >- 
NL‏ 0 کر ا 
یس ہا ھ سح كحاناء ینا خیطان کےا تشبه > «تشبه یا ل کےستبدب ہو ےک وج ممل سے ایک وج ے۔ 


8 
(4)-----وعن كعب بن مالك قال: كان رسول الله صلی الله عليه وسلم 
ياكل بثلالة اصابع و يلعق يده قبل ان يمسحها -(رواه مسلم) 


کے اع بن الك رك اشر عق تحارو ايت ےک و ر اشن ی 
ایٹر علي 7 تمن انگیوں ‏ ےکھان تقاول فرماتے تے اور اپنے پا کو يكت سے ييه 


یا کل وزج ف' می الل عد يهش كها ف کے دوادب به عن آد ہے ہیں + ايل ب ےک کھاا 
١‏ تن ابوس ےکھایاجائۓ : دوسرے میک ہکھانے سے فار رم دوكر بتو کو وو نے باصا فکر نے سے ييل 
لبو ںکو پاٹ لیا جاۓ ءائن دوفو ںکی ق ر ےتیل زيل میس دی ارک ے۔ 


کھانے بی نی اتكليال استعا لكل جل :- 

اس عد یت سے معلوم ہوا ہکھانے کے لے حضو ر اتر یں صلی اللہ علیہ و م تین ا تكليال استعال 
فر] .ست كء تین سے زياده كيال بلا ضر ور رت استتتا لکر نااگر جر جائز ے ءلناه یں مان خلاف ادب 
ضرور ہے اس لكك ایک فو مہ رح کلک ملا مت ہے دو سر سے اس سے تھے بھی بڑے بذ یں کے اور 
تیسرے ینہ میں بھی ای اکر نا بد تيز سی معلوم ہو جا ے۔ اتد اگ کا نے کی و عیت الى مول لق 
سنا لے کے لے تین انلیا ں تاکان ہوں فو جد تھی یی نچ ين اتکی ما باغلا ف ادب بھی تل ہے۔ ا کی 
لي سيك كاي نے ہری سے مرسلار دای کیا کہ حضو ردس سل لہ علیہ لياق 
لولس كن اول فر ے۵ 

آپکا تن بايا انگیوں ‏ ےکھانا لف حالات کے اختبار سے تھا 00 
سے سن لا پاک و تن قيال انتما ل فر نے ورت تان سح زياده- 1 

و ود رھت سھھ س ود 
كل تن ےکم اڈگلیاں استعا كنا بھی خلاف ادب سے طب الى نے خضرت این عباس ر صی الد عند سے 
روايت حابي ا ع نكن شر ملک عيدو 7 
0ھ ابن ا العظم وينهش اللحم ا 
ذلك عادة الا بالكف كلهما الخ - OLR)‏ 


حك ہو بور میں تناوال فرمار ہے تہ آپ نے مرک طرف م کر دمیکھااور فرمیا:لا تاكل باصبعین فانها 
اكلة الشيطان - ”دوانیوں سے م کھاہاسل ل كا ہے شیطان ےکا ےکا طروت سح“ ۷ 
ا ل کید جناي ہگ کہ اس نس گب رکاشا ہاو رکھانے سے لاي دای بر تھے انراز ۔ 


کھانے کے بعر ا يال جا نا:- 

اں اد بکی اسل وج تو وتی ے جو اكل حد یٹ یش صراح 00701 کے چو 
از گے و سے يل »بسكا ےک ا یں کے اثدر کت ہو لقيال پا ے !خی ان اجزا كود و الاي ماف 
کر ینا دک سے مرو كاذ د بيد ےء اس کے علاوہ بھی اس میں یں ہو کق ہیں, خلا شا تق على عياش نے 
تن يان ای ل ما ا الاق مات کے من كل جد ے یل رچ کے تررق اور 
تق رے, من حطرات نے ہہ وج کیان زاس کہ چا خر صا فک رن کی صورت ل جن ر وال 
و رہ عاك نر وا راب ان 


الليال چا کے کی حشرت :- 
اھ صا فکرنے سے بی لقيال چا ےار تیاب کے لے سے وجوب کے لے نيل 
تقل ستول كل ترویر. ...نض لوگوں نے ہے تكبا ےک کھانے کے بعد اگلیاں 

9 ای 2 َك ہے الیم اکام سے جس ے انان کال عد لاد سا رخا تو 
کہ ان لوكو کے درا حول اور عقلو کو ناز و ثنت نے خرا بكر دیا ے٢‏ اض ہو نے ہے یں سو چاک کیا نے کے 
ج اجزاء اٹ جار ہے ہیں مہ ا یکھان ےکا حصہ ہیں جو اق مز نے ےک ركهار ہے تھے ء زياد سے زیاد ہے 
لوگ كب کے ہی ںکہ جا کے لئ اليو كو ہو ضؤل کے اندر لاناڑےگاء ال سے زیادہ تو انلیا نكل 
کر ےو نت وات صا فکر نے کے ك کی انان منہ میس ال لیا ےء اس س کن بد تہ بجی وس 
یں کی کی( مالا ىہ كام اجا ىكوافول کے بعر وال وگوں کے ساح بھی ہو جا سے ) بدت حافظ ای جر 
رہ الد نے فر مایا ےک ہکھانے کے در ميان قيال چا ےکوناپند یرہ قرار دیا اکتا چ ا ےک ات 
دار يال دو ار مكحا سف میں داخ لکر ناڈ گی( 


() مع الزواتررجه / ص۲۸ وقال الھیٹمی: رواه الطبرانى وفيه ابن لهيعة وحديثه حسن وبقية رجاله رجال الصحیح۔ 
)۳( ا بار ؤ۹ / ۸ے ۵ 


ستھ:ن 
اگلیاں چا ےلب 0 
ال نے حر ت کحب بن جر ور تی اللہ عت ہکا يك عد یٹ رواي تك سے جس سے الكليان 
چا کا جیب بھی معلوم مو ل ہے ء وہ فر ست ہی كم می نے حضور ارس صلی الثد علیہ و سل مکو یکاک 
آپ تمن اگیوں سح كمانا اول فرت تم , تق اكلو لح اور سا تھے والى دو اگلیوں سے او رکھا نے کے بعر 
تبون اگلیوں کو اٹ ل اکر سے تہ يبل در ميان دای الگ ی چا ت ء برا کے سا تھ وای تی شباد تک 
انگ اور سب ہن یس الكوثهاد 0 
ری aT‏ ۱9٥۱ی‏ 
)1( چٹ اس عد ببيث سے معلوم ہو اک ہکھانے سے فارع ہو نے کے بعد پا تد وحمو نا ضر ورى يل يال 
یا فک ہا تھو ںک وک بیز سے لد کے لین بھی د ر ست ے اکر چا تھ دو لین تب بالخضوص جل کناٹ 
دالج کھاکر سو نے کاارادہہو۔' 
)۲( 082000 اننا نكو کت کا م ری ہونا اسب چہاں سے بی برک ما کل ہو نے كاامكان ہہ اس کے 
© 200 ال تا یکی موی سی نظ رآنے وای ق تك نا قد ری فب کر لی چاہے۔ الگیوں پر گے ہوے 
کھانے کے ابتزاءبظاہر موی نظ رآ تے ہیں ءا نکی بھی تر ردا یکا عم »اس مال مس بن بز رگول سے 
بہت زیادہاہتنام منقول ے, مخ الت راہ غالب وت خطرت مو لان قاری ري ر حم للد سے قول ىكلم وہ 
کا ےک 0 9 9 
کے رات بامر م 7 اور ضا لد ہوں- 
(۷( ----- عن جابر ان النبى صلی الله عليه وسلم امر بلعق الاصابع 
والصحفة وقال: انكم لا تدرون فى اية البركة ‏ (رواه مسلم) 
رص ہی خضرت جابر ر ی الد عند سے ر وای ےک حضور ات ی صلی اللہ علیہ 
و كلم نے ایو اور رکال یکو کا كم فر اودر ارشاد قر ہیں معلوم نی كر 
و .0 
قوله: ایة البركة» المضاف اليه محذوف اى اية اكلة او اية لقمة وفى صحيح مسلم 
ج4/ص 4 تكملة فتح الملهم ايه البركة اى اى طعامه كما وقع مصرحًا فى بعض روايات مسلم ۔ 
١‏ :البادئن* أ ٥+۹‏ .ُء رح٥‏ / ساس 


ہے ۰۲ ہے 


عا لود يرث ...... ایی صد یث س ےکا ےکا ایک خیاادب ہہ معلوم ہو اک ہکھانے سے فا 
ہونے کے بعد بر ت کو بھی اٹ نا ياست من یکھانے کے تھوڑے سے ابتزاءج بر تن میس بع گے بول 
ا ہیں بھی اکٹ اکر سل كا ليا جاب مقتصر ال كا ب یکھانے کے ابا ہکو بے قد کی اود ضيار سے يان ادر 
برك تكاحا ص لک نا >_اى با بک صد یٹ بر ۵۵ یں اا بع لزيد أل كرابي ےر و 
لیتاےء بر نتن ال کے لك دجاۓ مخف رس تك كرجا ہے ای جیما مون اس باب کی سب سے 1 کی عد یٹ 
يل کی آراے۔ 
ٗس ت س 00000 
تك ےک نبل تی ىہ عد یچ اس صو رر کے تلق سے جيل کھاناکھایا جا چکاے پر تن کے سا تد کے ہو ے 
جند اجزاء ہا ہیں ءاب اہر ےکہ كرا يل صاف نمی لك سكا وي اجا وس لكر :ايبول یس يب جا بل ك- 
۱ گر بر تن می سکھانا معت ہہ نقد ار بل باہو ا سے جو نیا لكر رکھااو ری دوسرے مصرف میں استتعا لکا ہا کت 
سے پا یکو ش کر ےکی صورت بیس مت بيار ہو ن ےکا خط رہ ے تو اس کے مل ہے عد بیت نیس ہے ء ای 
طر اگ رکھانے کے ہے ہو سے تمل ابام طبيت کے نا موافی ہیں شل کیا نے میس ينال زياد تی جو آخرمیں 
ايك رف بای لأس جو اس کے لئے نا مواق لوا صاف کر ےکی گی تر وت کن 
اس عد بی کا ایک شاچ ھکل كحا ےکوضیاح سے بجنا کی ہے اس ےک بر تن سے پیٹ و غير ویش 
کھانا کا لے ونت ا سكاخيال رکھاجا ےک اتتا یکھانا ہکا لاجاۓے ج كما جا ےکی فو ع ہو 
او یر وک کرد تفصييل ے ايك اور سوا یکاجھ اب بھی جد میس آگیاء دو کہ بر تن صا فك ےکا تم 
اور وہ ھی ہے کہ ہک کہ بر فی یل سني ہو ۓےکھانے کے اندر بركت سے بظاہر زياد ہدکھان كل 2 غيب سے 
عالاککہ زياد ہکھاناشر عابي یرہ کی ء ا ںکاج اب مکی ےکہ اوی ركهاجا کا كد ہے عد یٹ اس صورت مل 
سے جيل ہکھانا شم مو کا ہوء صرف تمولى سے ابتزاء پر تن میس گے مو سے رہ گے ہیں * اہر كل اكيس كمايا 
ارس كلل ند کن »اكد زیادومقدار می ںکھانا باہو اسے نو گر چہ ال می بھی رک اتال ہے کن 
دكت دو سر سے دت مل یادوسرے نص کے استھال میں بھی آ 0 
)۸( ----- عن ابن عباس ان النبى صلی الله عليه وسلم قال: اذا اكل 
احد کم فلا يمسح يده حتى يلعقها او يلعقها ‏ (متفق عليه) 
ر چھے ...... حطرلت یر الد ين عباس ر سی اللہ عنہ سے روایت ےک ضور اق ال 
حل اشعل و 00 900 E‏ 


Kaz 
اس ونكت تک دو لك ج بک کہ اسے پاٹ نہ هيا #ؤاد لے۔‎ 

۱ لشن عد یٹ ..... اک صد ييث می لکھانے کے بعد الكليال چا کے کے علادہ چٹ ان کا بھی ذكر 
ےد وسر ےھ سکوچوانااس وقت ے چیہ ہے یقن ہ کہ وواس می ں گن حوس نی كرك ابل باعش 
ہکرت ورت خیا لیک ےگا جاک انام یدیا شار وو تیر داجس تنكو بھی اس کے سا کے ت کاگ را 
تلق ہو شلا یر ی_ ۱ ۱ 

.)4( ست وعن جابر قال سمعت النبى عه يقول ان الشيطان یحضر 
احد کم غتد كل شئى من شانه حتی يحضره عند طعامه فاذا سقطت من احد کم 
اللقمة فليمط ماكان بها من اذى ثم لياكلها ولا يدعها للشيطان فاذا فرغ 
فليلعق اصابعه فانه لا یدری فى ای طعامه يكون البركة- (رواہ مسلم) ` 
رج ......حضرت چا بر ر ی اٹہ عند سے زواييت سے وه فرماسة ہی ںکہ بیس نے “ضور 
ار صل اللہ علیہ و 7 كوي فرماتے مو ے سناكم شیطان ماد ب ركام کے وقت موجود 
ہو تا سے تج ل انان کےکھانے کے وفت بھی اسان کے يإبل موجود ہو تا ہے لب اجب 
تم میں كى نض اق گر جاے لوال پر جونابیند ید ہچ زک کگئی ہے اسے دو رک نے 
اور اس ےکھانے اور اسے شيطان کے لے نہ يو اور ج بکھانے سے فارع مو تو ای 
انیاں بياث نے اس ل َك اح معلوم می ںکہ اس کےکھانے کےکوان سے حصہ میں 


ی جائی ے اس لے نان اکن اجا تا ےکہ ىہ بنرك ءاسين مو یکی طرف نو جم اور ا کی رضاد 
خوغتووی کیٹ کا وقت سے کان اسلام چ وک اییا دہیں سے جس کا تلق ہر شعبہ ز تدك کے ساجھ ا 
مو نکام لك خان مہ مو س کہ وه جز لحد ز تدك اور اپنے ہ رکا مکو قرب الى میس تر تی اذ ر يناما سے اس 
ات صرف عبادات بی میس نیس بل تام “جات ز ن گی یس بھی حییطانی اواء اور اس کے اشرات بد 

سے تقو ظط ريغ كا جتنا مک نایا ےی اصول اس عد یٹ کے اندر کیان صو ر ہے ۱ 


گر اہو لق اپ اک رکھانا:- 


اس اصول کے انطباق کے ے یہا ںکھان کو بطور مال وك ركياكيا .> اور اس شس حیطالی اثرات 


کے ٠۳‏ کچ 


سے تاق تکاایک ر تہ ہے تا کیا ىك جو اق گر جاۓ اسے صا فک کےکھالیاجاۓ ہے رز یکا ثرراور 
اہ تا یک تھی پر شک رکا مکی مظاہرد ہے جب شیطا نکا یک بذاوصف اکر ی ے: و گان الشَيْطَان رب 
فو ا۔اس لئ شك سک و ل انرا زک کے آ کے ايك بڑکی رکاوٹ لن چا ے۵ 
ہے ادب ال صورت یل سے جيل لقم يلك چک گرا ہو اکر لقم نايك تل گر الور نايك اس انداز 

سے .لے کے سات خلا مط وک کے اسے ان كن کال وکیا تز اے اٹاک رکا اتو ل سه اک کی تر 
ال کک با كلق ليان با ہچ ہو الق ہکھانے سے تحن آل ہے یاوہ تق کسی ياك ليان قال نفرت جز ے 
ما تم کیا کی و جر سے ا ےکن مکل معلوم ہو جامے ءا کے کھانے تن كل لول رن کل 

6-0 -----وعن اہی جحیفة رضى الله عنه قال: قال رسول الله صلی الله 

عليه وسلم: لآ اکل متكمًا ‏ (رواه البخارى) 

ر 56 حطرت ابو تفہ ر ی اشر عت سے روابیت س ےک ضور اق صلی اللہ علیہ 

وم ےار شاد فرمااکہ میس کیک لاك کھانا ثيل کیا _ 


حضو ر افر ی کے کیک کرت ہکھا کوج :- 

ال عد یٹ یش ضور انر س کے ا سے بار ہے میس می ار شاد فر مایا ےکہ می کیک زک رکھان نیل 
کھاتاءا كل وج کے حلسل میس ماف این جرد حم اللرنے ہے روابیت آل ف رمال س هكم ایک دفعہ تضور اق رس 
لگ کے ياس ايل فرشت آیاجو اس سے ييل آ پکی غد مت میس حاضر نیس ہوا تھا اس نے 1 ركبا الله 
تی یک ر ف سے آ پکوانخیاردیاجا تا کہ آپ عبد اور بی بن جا يل شی بوت کے سا تح سا تجح آپ پہ 
عبد بيت اور بن رک یکا غلبم ہو یپا شاہ اور نی بن ہا یں حضو ر اتر س َه نے جر تیل ای نکی طرف اس انراز 
سے ديعا جع اکہ آپ ان سے خو رہ طل بكر ر ے مولء بج رکیل نے اشمارے س ےکہاکہ وا اتا ر کے 
چنانچہ آپ نے ہن دی دالے نی س کو ود ىال کے بح بھی آپ نے کیک لكك رك د سکھا یا( 

من روایات س بي بھی آ جا ےک حضور ارس صلی اللہ علي و کم نے کیک کر ايك دف كمي .> 
کک سڈ اا ادال ب اب نے کک کر خی ا > ما کی 


() قال الحافظ: هذا مرسل او معضل وقد وصله النسائى من طريق الزبيدى عن الزهرى عن محمد بن عبد الله بن عباس 
قال: كان ابن عباس يحدث فذكر نحده - ربا پار یع۹ / انا ) 


وھ ۱ 
ایک م كل دوانیت مل آ تا کہ آپ ن كما ف کے دور ان کیک لگا نے والى ببین یکو جب نرک فرمایا اي 
کی فرایا: الهم انى عبدك ورسولك ^ 


ہے او تضور افر س پل کے سا کے اگ ے؟ 

زا مغلم جرال | تدر ى کل جا کے ے دورن : د لگانے كا باعث 
عبد یت و فوا مي حكاوو علي متام ے جد آ پکو عطاکیاگیاتھاء یز امن عد يدث مس “ضور اف س لگ نے صرف 
اپقاذات کے بارے يبل بیان فرمایا ےک میس تيك اکر ہیں کٹا ان امو ر کے یش نظ نض حطرات نے 
بے فرایا سب كلم ىہ ادب حضور اقرس صل اللہ علیہ وسملم کے سا تھ خا سے لیکن جح ىہ معلوم مو ما بكر 
اکر چہ حضور انر ی ینس خاص مقام عبد یت کا حم اداکر نے کے لے کیک لگانے ےک يذ فرماتے تے ده 
سی او رک ما سل نی ہو سن کان حضو یرس صلی اد علیہ و كلم کے لکی اتاج ایک امتی کے لئے 
بزات خو د سعادت سے یز کیک اک رکھانا فاسع کے خلاف ے اور توا کا عم امتیوں کے لئ بھی سے اس 
E‏ یرادرب تضوراقرس صلی الل مار صلم کے سا تھ ناص نہیں 00000 
کے ابن خی کے ر ضیف کے حا دای کے نو این می شب کم ےکی ےک 
وت با بل ہا تھ پر کیک کے سے شنح فرمایاے الب ہے ضرو مكها جا سکنا ىك اس اد بک جو اہمیت و اکید 
حور اتر س ای کے لے تھی وودوسرول کے ے نہیں ہوسکتی۔ 


اما ء کا مروف مع کیک لگانا بی ے کن مک الى جانب جک ری چ ہکا سہارالیناہ ابن الجوزی 

دی رہ نے یہاں عد یث یس بھی می شتت مراد ليا ہےء امام بالك حم ارڈ کی کلام سے بھی بی معلوم ہو جا 

ہے۔ !لین علامہ خطالى ر حم الد نے ا لک تر دی رک نے ہو سے ہے فرایا ےک يبال ا اء سے مراد ےز مین 

7- بھی جزيرا کی طر مج م كر بیٹھ جنا ل سے ہہ اندازہ پ کہ ليوات ہک کھانا چا بتا ہے ءال يل 

یر ت اك لکا شائبہ پیا جات ہے ال كي نالهنديدهسجءاس لئے آدرٹیکوکھانے کے لئے اس اتراذ سے 
بايا بے جس سے می کک ہے شف اق ا کے والاے۔ 

ین يه حضو ر ارس صلی الث علیہ وکلم کے كيك كرت کیا سے کید جر کے ححت جداعاد كز ری 


() ۶ا لباا.....(۴) لپا ؤ٤‏ ح۹/٠٣۵‏ 


ہیں ان سح والح طور بر معلوم ہو جا كر اس اد ب کا شام قلت طعام یں بللہ لو ات ے اور ظاہر ےک 
اء( كيك لگانا) نامع کے مان تب م وگ جيل ہلا ”کی م راد لیا جا عكر اس ادب کا شا قرت اکل ہو جا تو 
رو سرا ی مر ادلیا ہا عتا تھا ای ے یہاں يبلا معن بی ر ازع معلوم ہو جا ے_ 


تیک كل کہا ےک عم :- 

یہ بات لوا ےک کی ع ریا ضر ور تک وج سے کیک اک رکھانے می كول تر جع تال ءبلاعذر 
.اور بلاضر ور ت کیک اک ےکی عم ہےء اس ٹیل قا بل غور بات ىہ ےک خوو ضور اف ل صلی اللہ علیہ و کم 
اس ےگ ربز فرماتے تے اور ف صد یث کے مطا لل آپ نے امم کو بھی اس سے مع فرمایا سے دو رک 
طرف نل کاب و تا ن سے اريت آ نار بھی مر وك ہیں ن سے ا كاجو از معلوم ہو جات عطا فرماتے ہیں 
کہ تم کیک نك رکھالاکر سے سے <طررت الہ بن الولید ر ی الثر عنہ کے مر متۃائل لكر یں ايك و فور ایک با 
مہو اور بپاور شف تھا نس ”نار مر “کہا جات تھا تق و ایک خض راز کے برابر تھاء حر ت الم بن 
الوليد بھی سیف کن سينو ف اللہ (ا ش کی وار وا جس سے ايك لوار )ہے آي نے اسے و لام 
فار ب وک رکھانا وای اور ا کی لاشش کے سا تخد کیک اک رکھا جکھایاء حرست ير الہ بن عياال» عبید 3 سامالى 
اور ان سیر بیع سے کی کیک کاک ھکھانا نات ے۔ ۵© خضرت ایرام کی رحمہ اش فر کن ل ارو 
تا ن کیک لاک کھان ےکونا بین کر ے تھے کہ ال کے پیٹ بڑے نہ مو جا یں اس سے معلوم ہر جا سے 
کہ تيك كاك رکھانے بیس شی یکر اہت ہے + شرل یں _ ْ 

دو نول طر فک روایا تکوش کرت ہو ۓ نض حطرات نے فقو مہ فر مایا کہ کیک نہ لكا کا حم 
فور ارس صلی ال علیہ و كلم کے سا تہ صوص لان بيب ھکر چا ےک اس سے اتفاق یکر نا مکل ےء 
بنش حف رات نے سیا وجا دن کے عم لکوضرورت برجمو كياح کان حافظ اين چ ر رجہ الد فرمات میں 
کہ ان خا ركو ضر ورت پر عو لكر مکل ہے۔ ا اس لے ىہ ےکہ کیک كاك رکھانا جائز تو ے کان 
غلا ف اول ے م اد بكاتقتضائيق کہ کیک لگانے سے ہجاجائے۔ 


رات فور میں ے؟ 
اام زا ار حمہ القد نے فرمایا کہ ہے ادب ان جز دل کے بارس يل سے سم ہیں با قاع ہدکھانے کے 


(ا) ىہ تنام آخار مصنف این الى شیب ر۸ | م ۵ ۴٦۰۱٢‏ سے ے کے ...... (0!) حال بالا ......(۳) الا یر۹ / ۵٠٣۲‏ 


کے ے٭| بج 


طور ير پرکھایاجاتاےء دہز بل جيل با قاحعدہکھانا کین ھکر نکی كمايا جا تاء حت بمرت ىا نیس چبیااو رکھااجاج 
ے جیے دانے و یرہ ای طرں ان كرالك نل رکھانے مم كول رن نی چناج نرت لى 
کر م الشدوچہہ سے لی فک كي ککھانا منقول ے_ ۵© 


کھا نے کے وت نے 1 ین کیا ہو؟ 

انان ا قاض وت کر رن نی »ل اتنا كم کہ تيك کے سے 
بیاجاے اوا ع انخقيا رکی جا ءاجتما یکھانے يل زياده آدى ہو ےکی صو ر ت ل اس انراز سے ٹیٹھا جا ئے 
کہ دوسروں کے ل كناش لکل #1 ان امو رک ر مایت ر ھتہ ر ے جو بھی ہیی انك اميا رک لی جاۓے 
ورسث ےننس بز ركول نے کے ے جند طر بتو كاذك کیا ے شا دوفو كشو 2 5 نے یادیاں 
وا کی اکر کے با نبل يلال ير تيك ۔( ‏ اس کا مقصد بھی بطو ر مال چند ط یتو ںکی راجنمائ یکر نے ٹن 
کے مسفون یا ہا ط یتو ںکاان ٹیل ا تار یا نکر نا یں ے۔ 
ھادرےہاں بن لوگ چ وک یم رک کیا ےکور وه کھت ہیں بل نس او قات اس پر شد ید انکار بھی 
کیاجاتا ہ٤‏ یہ درست یں اس لكك عام میا اس میں خود 1 خضرت صلی اللہ علیہ وسلم بھی ٢‏ لق ارک 
(چ وک یما کر )باکر سے تھ مالک حضو راز س صلى الثد علیہ وس مكاايناار شاد : 

آکل كما ياكل العبد واجلس كما يجلس العید _!' ۱ 

تر جم ...... میں اريت تى كماما ہوں جب ايك بند ہدکھا جا اور بي بن وال جیے ايك بنده شتا - 

معلوم مو اک حضو ر ات ی صل اللہ عل و 0 دک مانا )كو كبر یت کے منائی ہیں راء 
ا یکی مز یر تار ای بات سے کی مول ےکآ رکو مض بغر زر کے يب ىك رأثل مو ر پاہو تو تفہ کے ہاں 
حروف لومک ےکلہ قرات کے لے بھی تقر کے اراز سے کے کان ایام ال خخ رح اک ایک رایت 
اور امام مج رحمہ ایکا قول ہے س ےک آ لق پالتی ہا رر بيتك(" اس سے بھی معلوم ہو اک ین کی ہے مال 
بد یت کے مناٹی یں ءال سک كما ف کے وقت اس انراز سے بین میس کچھ كول مرج معلوم نیس ہو جا 

ابت علا خطا لی ر حمہ ال نے الها مکی چو تفر فرمائی ہے ]لق يلق مار نااس کے خلاف ضر ور ے 
نیشن يهل عر کیا جا چا ىك يه بات تب درست ہو فی جيل اس حد ی کا فغاءتقلت اکل ہو جا جل مور 
مع ت وسر نیہ 
...)اوی على ال رای ص۰٢۲‏ 


)١(‏ دی احياء علوم الد بن حا اف السادةا 


ھا ۸ © 


قبل سے کت ہو ے اس طرع ٹن سے كر ہکرے توکو حر کی بات کس کان اس طرں کے 
والوں پرا ڈکارکرااان کے خ لکوخلاف ادب قراردینادرست یں ْ 

00110 -----عن قتادة عن ائسء قال: ما اكل النبى صلی الله عليه وسلم 

على خوان ولا فى سكرجة ولا خبز له مرقق قيل لقتادة: على ما ياكلون 

قال: على السفر ‏ (رواه البخارى) 

جر ...... حضرت اوور شی اوہ عدر حط ری الل ر صل الد عند سے د وای تکرتے 

ہی سک ضور ارس صلل اوہ علیہ و کم نے بھی خوان(مزا تيال ) م کھان فی سکھایاء دی 

بھی چول مول رکاہیوں ع كايا اور د بی آپ ب لے می یل پا کہ ڈرو 

ل اکا یاک د جزم يررك حل کھاتا عات ابول نے كبادست زر خواں رہ © 


خو ان ...تادر می زو یری پ کھانا رک ہک رکھایاجاۓے اک کھاتا وچا ہو ہا سے اور ہار بار جھلزانہ 
پڑےء ا یکو ع ری ز بان می ”مائدة“ كم ىكب دیا جاجا ےش او قات دونو ں لفظوں کے استعال سل فر قكيا 
. جاتا ےک اکر اس کے اوی ہکھازارکھاہواہو توا سے خوال نكب دیا چا تاسے او را رکھانانہ ہو مامد کہ دیا چاتاے۔ 

سكو به .....فاری ذبن سے عرلي م شل ہوا بای کال ن ہے دہ تم جس یل 
رک ذا لک من کیا جاۓےء عمو ]اس سے مر او يولم جو فی رکا بیاں اور بياليال مول میں 2 شس چناں 
وی هذا لک بی کی جا ل- 


)١(‏ اما الخوان فالمشهور فيه کسر المعجمة ويجوز ضمها وفيه لغة ثالشة اخوان بکسر الهمزة وسكون الخاء وسئل لعلب: 
هل يسمى الخوان لاه يتخون ما عليه اى يستقص؟ فقال: ما يبعد قال الجواليقى: والصحيح انه اعجمى معروف: 
ویجمع على اخونة فى القلة وخون مضموم الأول فى الكدرة وقال غيره: الخوان المائدة ما لم يكن عليها طعام۔ 

سكرجة بضم السين والكاف والراء الثقيلة بعد ها جيم مفتوحة ............ ونقل عن ابن مكى انه صوب فتح الراء 
وبهذا جزم التوربشتى لانه فارسى معرب والراء فى الاصل مفتوحة ولا حجة فى ذلك لان الاسم الاعجمى اذا نطقت به 
العرب لم تبقه على اصله غالبا ........... قال ابن مکی هى صحاف صغار يو كل فيها ومنها الكبير والصغير فالكبيرة تحمل 
قدرست اواق وقيل ما بين ثلثى اوقية الى اوقية- 

السفر جمع سفرة اصلها الطعام الذى يتخذه المسافر واكثر ما يصنع فى جلد فنقل اسم الطعام الى ما يوضع فيه كما 
سمیت الزاد راویة۔ ( ي#البارئرخ9 ]ص "!0 »بتغير و حذف) 


جا ٠۹‏ بئ 
مر قق ...... نزم اور گی رون جوا تھی طرں کے ہو ےآ نے امیر ے سے تارك هال ->- 

شض عد یٹ E‏ اس عد ہکا صل مقر تو حضور اق رس صلی اللہ علیہ و سل مكاز برو اعت 
اور آ پک ز ٹر یکی سا و كبا نکر تاور ہے بتلاتا س ےک حضو ر اق س صلی الثد علیہ وم ےکس ط ربز ترك 
کابیشنزحصہ قرو فا می سگزاراہاسی سللے میں اكل اوراس سے ببست عد یٹ أرق ے۔اس مو ضو رک لو ری 
۱ تفیل انثا ءال ركتاب ا ر قاق شس ع یہ یہاں اتقااشار كرد ینا مزاسب معلوم ہو جا ےک حضور اق رس صلی 
ْ الثد علیہ و سل مكاي فق ر اخقيارى تھاء اکر آپ چا ف بت زیاد مال ودولت سم کر شابات شال بان والى 
زت رگ ک یزار گے تھے آ پکواختیار دیاگیاتاکہ آ ب جاہیں لامد پہا کو آب کے ے سون بنادیاجاے يان 

آپ نے بے شار تو نك وجہ سے ب يب شل قبول نہیں ف رمال 


ان كرون کے استعال کر ے كل وج :- 

عد یٹ یش تین چچیزوں کے بارے مل فر ايكيا ےکتضور میٹ ےا جيل استعال تل فراياء ا یکی 
۱ افص وج تی کہ آپ نے ابي ےچ وک زرو قاعت اور سا دی وای زت ر ىكوكق عمتوں کے پیش تر 
اقتیار فرمالیا تا ای لے جو مال ودولت آ پکو ماتا اسے بھی جل ر ی بی اش کے رات میس لثاد ےکی عال 
امات لو می نكاد ہہ اس لئے ام کے اغا کی عمو كناش ہی نہیں ہی کی الہ شار ان عد یٹ نے 
خان اورک ج کے عدم استعا لکی نض وجو زک کی نل » خلا خو ان“( یرتا )کے استعال کر ےک ایک 
وجي بھی کک ی سب کہ ا کاخظاء باو قا ت گر ہو جا ےک ہکھانااو نکر لیا جاۓ حال ہار باد سر جمكاناد 
پڑے(اگر چ ہکھانااو ض اکر ن ےکا قت ر لق حا ص لكر نے میس جولت بھی ہو سا سے جیی اک قر یب امام رای 
کی عبارت سآ ) اور تضور یہ ےکھانے ہے کے انراز میں فوا صرح و عیر يتك خصو صى امام فرمیا 
بواتھااس ك آپ اہی جز سے مھ یگ روا فرماتے تھے تس عل نوا تح اور عير عت کے ان روكاشاض مو 

خوا کو استعالی کر ےک ایک بذ ىوج ىہ معلوم ہو لى ہ كدي از مانے میں عربوں میں مرو 
أبس تھااس لی سه و لت ر ستیاب بھی نیس ہو ما ہوگاء جنا نيه قر یر حہ اود أل فرماتے ہیں: 

هو شئى محدث فعلته الاعاجم وما كانت العرب لتمتهنها "© 2 . 

ت جم ...... می اليك خی چیز سے ے تھی لوگ استعا لکیاکرتے تہ عرب ابلك نہیں ت ےک 
ا ےاستھا ل کر تۓے۔ 
ےی می 


le 


ای طررح قرطى تسن یمر یکا تقو لی لکیاے:الاکل على الخوان فعل الملوك وعلى المتدیل 
فعل العجم وعلى السفرة فعل العرب وهو السنة۔ ”خان پرکھانابادشاہو كاطر ینہ ہے ہر دال ب رمان 
یو لكالو رسف ر و( پت ڑ ےو تیر وكاد ست خان )ب كنا ربو كار تہ ے اور سنت بھی بی ے “0 

کر ج( يو ركابيال )استعال كر ےک عا فظ ابلن رر حمہ القد نے ودر مل وجوو زک کی ہیں 
()........ایزمانے می مہ ع ربوا میں شی اور عر ورخ ہیں یں کو ہو لے میسر یں ہو تی یں _ 
)۲( ........... انی مان میں ایک ہی بڑے بر تن می مم لک رکھانے كار دانع تھاء يمو کے يحول بر تو ںا 
اتال اس کے فلاف تما- 
e (۳)‏ ہجوت کس للا ل و ان تا تھا امہ 
ھان مکر نے میں سسب لمت ہوء یہاں ات اکمایا تی یں جا جا تاک اح کہ نے کے لے مہ يايد تلك بز یں 
بک تھوڑی کی ب وک رک کرہاتھ کے جات _0) 

ان نوں پا تو ںکاحاصل کیاروا اور رورت د ہو >- 


کک ضور افر راتما ل نہک رنا:- 

اعاد یت شیل تعر و اشياء کے پارے مل آر ا ےک ضور ات ر یں ع نے ا ہیں استعال ہیں راء 
جز ابقل تان دل ار 1 خضرت پل نے اح استعال فيس فرمایااس کے نا چائتزہ 
کروی فلاف سنت ہو نےکافیصلہ كب ںکیاجاسکتابکہ ال سك لے اول لوي د ینای تاس هكم وكام اس زمانے میں 
روج تاياوه جز اس علا ے شس عام ہیا ال كيال ادزا نے مد تیاب گیا ام ال 
وقت مر ور ھاء اس کے باوجو حور اتر س مل نے اسے استتعال ی ضار تال فرايا تو وکسا ہا ےکک 1 ا 
کے اس رک کو کیا ےہاگر تک کک وج ہے یک اس ب كول شر گی قباحتۂپائی ہا ی ای قاحت ے 
مان ات نا جار ووی قلاف اول ىكبا جا ےک اکر اس ب کی شر گی تباحت كايا جانادا سح طور بر خابتن ہو تو 
کش 1 خضرت ایل کے تر كك وج سے اسح ناجائزکھروواور خلاف اولى وخیزہ نی كب حلت الا ان 
تكون دواعى استعماله متوفرة فیقال: انه لو كان مباحا لفعله النبى صلی الله عليه وسلم ولو مرة 
بيانا للجواز ۔ ا لكك آپ کے تر کک یک وجو نمو علق ہیں عشلا كول ایی وج ہو جو تضور اق س صلی الله 
۱ علیہ و م کے سا تخد ىخا ہو تبت آپ کیا بيازيا سن غنی لکھایااس وج ےکہ آپ بروفت وى کے 


)ایتا اض ٣ء‏ ۰...۳( ابا رک۹ / ص مسرم 


۔ سعھت(ت 
لے تار ر سے باو چ ڑآ پک سی طور يرابج نہ گت ہو جب اکہ اک با بکی صد یٹ نر ۱ سے معلوم مور | 
ےک حضو اتس مه كوأ كول جز بھی نہیں كلق تھی تو اے چھوڑ دی جے ليان اس میں عیب نہیں 
ٹا لج تھے میا ہو تاك آپ نے اسے ساد گی ءز ہد اعت تكد کی وج سے جوز امو کے آ پک چیا نہ 
کھاناءیاج کا آ ٹا بھی ضر جیا ۓ کے اسقعمال فرمانء| ى طر نکی ہے نار وج وہ و عق ہیں۔ 
اکرو ہچ حور اق س صلی اللہ علیہ و سم کے زا ف میس عام پائی یت الى گی توا سكاعم استعال 
سی ط رع کی اسل کے نا چا کر و خلاف او لی یا فلاف سنت ہو ےکی و عل تيل ءالب اس یز بر دوسرے 
دا كل شر عي كل رو شق میس غو رکیا جا ےگا اس سے شر لدت کے مقاصد میں كول مقصر ما سل ہو ریا 
ے لوه جز “تمن موی می ھکھانے کے بعد بات دعوتے مو سے اشنان (صاین ) استتعا لکر کا كر 
آ گے امام ڑا یکی عبارت میس آر باس )اور اکر اس می کون قال ذکر مفسد وش رعيه لام آر باج فو اس سے 
نت عکیاجاتۓگااور كران ده فول با قال يل كول بات یی پائی جارتى فذعام ہا ركام م وكا- 
تم نے جواو یر عر کیک کش یہ دک ہک رک حضور قرس صلی اٹہ علیہ و علم نے فلاں چ كواستتعال 
بي كيه اس ےکر وہ ہو سكا فص لكر د يناد رست یی اق ےرت مس ےک یہاں 
عفر الس ر ضی الث ع شل فرہار ے ہی ںکہ ضور اتر س صلی ال علیہ و کم نے بھی خوان ب کیان ني كما 
يكن این ماج يل سك قادوفر مات ہی ںکہ ہم حطر ت الس ر ی الث عد کے بال جات موا نکاخباز(روٹیاں 
بک کے دالا )کار وٹیاں رار باہو تاور آ پکاخو ان رکھاہواہو جا تیاس كما ف کے لے _ 9 
یہاں وو حطر ت ال سے خوا نکااستعال خایت ہو ر باج ای طرع يبال ححضرت ال ف مار سے 
ہی كل حضور اتس مل نے بھی يال یں تقاول فرمائیء اک با بکی صد یت نہر ۳ا میں حضرت کل 
را عن کے آپ ےکی بجنا ہوا امال تيبس رای ا أ کے بزوقك ا چ رت وا نے ۱ 
ادم تھے ءا یں بھی اس صورت حا لکا ضر ور م ہوک ای کے پاوچوو مرا یکی ايك روابیت ٹس س کہ 
رت ا کاو ب أت ل لمعه ل ل د ر کی اکر ج تھا( معلوم مو اک 
حضرت الم نے حضو ر ازز س عله کے ان جز ول سك مرم استعا لکو راف ول کن تج 
يبال امام غ رای ر حمہ ا کی ایک عبار تكا قباس نف یکر وہنا مفیر معلوم ہو جاء ہے اقتیا ارج 
طو بل ہے يكن انشاء ال بص رست كارا عدث م وگ ایام خرن الى رح وڈ نے يبيل فو نض ہز كوك قول أ یکی سے 
کہ ياد چ ڑ ہل خاییادشدہہیںء تضور اق رس صلی اللہ علیہ و کم کے زا نل میں تببس تل ء عير ييا 1غ 


(1) سنن این ماج سے ۴ ۴(.....۴) من البار یع۹ / ص٣۵۳‏ 


تی ۲ عبج 


ھا کی تمق اشنا ( صابن )اور يبيث کلک ركعاناء اال کے بعد فرماتے ہیں : ۱ 
. واعلم انا وان قلنا الاکل على السفرة اولی فلسنا نقول الاکل على 
المائدة منهى عنه نهى كراهة او تحريم اذ لم يثبت فيه نهى وما يقال: انه ابدع 
بعد رسول الله صلى الله عليه وسلم فليس كل ما ابدع منهيا بل المنهى بدعة 
تضاد سنة ابتة وتدفع امرا من الشرع مع بقاء علته بل الابداع قد يجب فى 
بعض الاحوال اذا تغيرت الاسباب وليس فى المائدة الارفع الطعام عن الارض 
لتيسير الاكل وامثال ذلك مما لا كراهة فيه والاربع التى جمعت فى انها 
مبدعة ليست متساوية بل الاشنان حسن لما فيه من النظافة والاشنان اتم فى 
التنظیف وكانوا لا يستعملونه لانه ربما كان لا يعتاد عندھم اولا يتيسرأ وكانوا 
مشغولین باموراهم من المبالغة فى النظافة فقد کانوا لا يغسلون اليد ايضا 
وكان مناد يلهم أخمص اقدامهم وذلك لا يمنع کون الغسل مستحبا واما 
المنخل فالمقصود منه تطييب الطعام وذلك مباح مالم ينته الى النغم المفرظ 
واما المائدة فتيسير للاكل وهو ايضا مباح ما لم ينته الى الكبر التعاظم۔ 
عبار تکا ھا لاي ے: 
ني خ ال سبك كرجه م نے ےکھاس کہ دست ر خان پپرکھانازیادہ مت ہے لیکن 
تمس نی سک کہ میز دشر ہج ہکھا کر دہ حر بی با یی ہے اس لئے اس سے ٹیم 
کرنا) یں نات ںہ باقی يج کہاجا تا ےک ا سکااستعال ضور پگ کے بعد شورع ہوا 
سے نہر خی ایپادشد وج نوع ہیں ہو ل بل ممنو لو ےکی بد عت ےجو سنت کے متا يله 
می ہو اودش ربدت میں ایت شر ہی مک ےکو ا کی علت کے باق ر سے ہو نے کے 
ہنی بز نض عالات بل اسياب کے بدل چا ےکا وجہ سے داجب کی ہو جالى ہے اور 
ماحدہ(میز یا تپائی )یٹس صرف اتناتق ہو تا ےک ہکھانے میس ولت کے لئ اس زین سے 
اون اکر لیا جات ہے ااسل ط رح کے اور فو اد ہو کے ہیں جن بي لكو كرابت ککیں۔ 
دہ چار باقن تن کے بارے ب کہ اگاس کہ دہ ی ہیں تہ سبكم ل براب س 
ہیں لله اشنا( صابن )نشین ہے اس ےک اس سے ا کی طررح نطافت ما سل ہو ہا 
ےا کہ بات دعو:افظطاف کیل یسب ہے اوراشتان مل نطافت مال ہو جال 


ہی ۳ 2 


ہے (کہ نالا کی طط رح ات جالى ہے )اور صحاب كرام اسے اس لئے استعوال ون 
شك ان کے بال ا كار وان تثبل تماياد ستياب تثبل مو تایاا نکی زياده اج ای ےکا ہوں 
کی طرف تھی جو نطات میں مرا لت ے اہم ےش او قات وہہ تھو كود ويا یکر ے 
2 (پا کی ان کے اں فراوالى أل ی )اور رض روری ضرورى صفائی حاص لکرن نكيل 
یس او قات ان کے يال کے انلوح تق روا لكاكام دے دسبية جے يكن (ا نكا خصو ص 
عالات واسبا ب كلاوج سے )ایا کہا تھ د عو نے کے اسخیاب کے مناق ال ے۔ 

جہاں يل پچ یک تحلق ے ا سكامقص رکھان ےکوا اد رذ يذينانا ے اور متصید 
جانزے بر طیہ بہت (یادہنازد تر ےکک نہ کے يات باق دبامیز وغیر وف ےکھانے میں 
ولت کے لے ہے اور چائز سے چیہ گب راو راک فو كمال ت تک نہ ينع“ ( 


پھر کیک کے ےکھانا:- 

كورى تتصييل ے ہے بھی معلوم م وکاک انض لوگ جو يجيا تر یکا سے سح كما ن ےک وکر وها 
قلاف سنت قرار دینے ہیں »يه درست بل ء ہے تب و تا جيل ا زمانے نبل اسل ماحول مس ہے زی مرو 
اور د ساب ہو تل ءاس کے پاوجود آپ ا ہیں اتال نہ فرت لہ اک کی وج سے با تخد د عون کا مو قح نہ 
ہو يجي ویر واستعا لكر لیا مقاصد شر يدت کے زياده قريب معلوم ہو جا ے ج سک تفیل مر رۓ ن۹م 
کے تمت ات دہونے کے مستا كفو سے معلوم ہ وی ان شاء الث اين اگ رکوئی نض حصول سحادت کے 
لئے ار عد یت پر لکرتے ہو سے بات کے سا تھ یکھان ےکا جا مك تاچ قوس جيم تھی مہا رک ہے 
يكن اس یادیر تک دلٰیازبانے 22 نس 


يركرى ےر - 

می كد کی پ رکھانے يشر عادو ا شكال ہو کے ہیں »ايك ےک كر کی ير بي ھک رکھانا کیک لكاك كما ےکی 
ایک کل نے کان کیک زاك رکھانے کے بارے میس ييل ر كيا چاچکا ےکہ به جاک ہے اکر چہ اال سے بجنا 
او ے ا ےک ATER‏ چا چک ان ےک لدج أن ھن ے سك دران 
اسےاستعال ی سکیا جا ایام ا زم اس يريك لگانے ے اضتزاز کن ضرورے۔ 


(۱) احياء علوم ال ین مرح الا تحاف خ۵ أل "اام 


گا i‏ تج 


دوس راانشکالل ىہ سپ کہ یہ خوالن پ کھان ےکی ایک شل ہے ء ا کا عم امام خزالی ر مہ القركل عبار لك 
سے معلوم مو كاير جام ہےء مہ كي كزد يكاج کہ اس صد بیث کے ر اوک ححضرت الس ر ی الثد عنہ نے بھی 
ا ےاستمال فر مایا سے یز مصنف اہن ای یہ يبل حت چا بر بن زیر سے کیا سکااستعال مرو یراے- 

اس پور تفيل ے ہے معلوم مواکہ می زک ی کے ہار ے میں اسل حلم بی کہ اس ب رکھانا جات 
اور مباحںے لیکن حضور مکل اور ىاب كرام کی موی عادت چوک فرش كول نز پناک ركها ےکی تھی اس 
لئے بتراور با عت بركت و سعادت می سك اک ندا س كان كاي جا سأيلا ناک کی وج سے می زہک ری بر 
بج یکھاناہڑ جاع توکو مضا قر تيل ءاس ط رع می زک کی ب رکھانے وا کو هو رو تتقید جانا بھی درست یں _ 

الب بن كابر نے ىہ فرمیا سك می کک پ کھانا کر چہ بذات خود مبارح سے يان نصا ری کے 
سا کر شب کی وجرے ناچائ ہوگا_ 

ہو سا ےک کیا زہانے راہ بات درست ہو لن ماس زمانے يل مر ریپ 0 
ل اتاعام ہو چا ےک اب یی قوم يإ ہب کے سا تھے خصو ص بال اس لئے نا فص خیال میں بجی آنا سے 
کہ ہمارے دور یں اسل عم لوٹ فآ كاج کہ او پر ةك رکیایاسے نت ا سکااستعال ہا ے اکر چ زياده اہ ٠‏ 
بی ےکہ فرش دست ر خان ركعاناكعايا جائے۔ اس با تک ای گم الات ضرت تھی م اللہ کے 
ایک وعظ کے در ذ بل اقتبا لح بھی مول ے: 

ہہ یں بتاک تیر قو مک چرچ زناجاتڑے يكلم ونا ہا ے سکو خصو صرت 

ہے دوس رک قوم کے سسا تر اور ملكو خصو حيرت کیں دوس رک قوم کے سا تخد و«جا: ب» 

مویڈ ےکر ی میں اننيازى کل تبش ری و کی خاص قو مکی وضع نہیں بھی جاتی اس 

لئے جا ہے اور ساب و تیر ول ایا زی کل باق ے اس لے نا جات ےء ا لك علا مت یہ 

کہ اکر دک ےکر بیع تکھلک جا ےکہ ىہ فذفلاں قو مكاطرز ے ثب ے ور کے 

نمی چاچ ساي و غیرد دک ھکر فو راد یکین وا نے اذ جن تل ہو ا ےکہ ہے فو یھو كاطرز 

ہے او رکر کی موت ے میں الما ن ک ددر کچ زو كوقيا ںکرلو ۵ 

ایک اورا تیا بلا حظہ ہو فرمایا: 

می زککرىی ب رکھان ےکی قباحت وکر امت ٹیل من منامات (علاتوں ) س تال 
ہو جا ہے ( نی ستل نقائل تور بن جانا ہے )کی وککمہ ان مقامات ٹس ہہ عام طور سے ھور 


(1) تقیققت ,ال و حاو ۱۴۳۴ء مطبوي ادار ہ تالیغات اش ر فيه ل 


ہو ييكا > اور عام ہو جا ف اور شہر کی وچہ سے شيم سے لكل جا كاك لو راعام نکیل 

ہوااس سك دل می بج كك کی ر “ق سے جب کک دل م ں كحك سے فو شي كاوج 

سے( بھی )ناچا ےگا۔ 

(۱۲)-----وعن انس رضى الله عنه قال ما اعلم النبى كت رای رغيفا 

مرققا حتى لحق بالله ولا رای شاة سميظا بعینه قط (رواه البخارى) 

جر :حر ریا رق اھ ع فر ےچ رين أ ماتا :سول اف صل 

اللہ علیہ وسلم نے بھی چیا د کی ہاں تلك آب اللہ تدا سے جال اورنہ ی آپ 

کیال سصی کی بحن کک ری د کی ل(کھانا نذ دو رك بات دی )۔ 

کو 7 سيط يا وط ا بكر یک کہاجانا سے ے فن )کر نے کے بعد بال تخ مج کر امار کے 
ہا یں پچ رکال سیت پکالیاجاۓ عم اسے بھاپ سے پیا جا تا تھاء عد بی ٹ کا مقصر الم جک رک ىكاعم جو ازیا 
ا سک كر امت ییا نکرن تيبل ے بک حضو ر اق س صلی الثد علیہ و سل مكاز برب نکرنا مقصودہے_ 

حافظ ان جر حص الث نے فرایا ےکمہ ان طر نکی جک ری میں وو رح سے ال بد ی پائی با 
ہے ایک اس ط رس ےک مو ایی اک کی کے چھو لے نك کے سا ت کیا ہا تھا اکر اس کے باہو سكا تار 
کیاجاتا نا کی تمت بڑھ الى »دو سرس اس ےک ہاگ رکھال اتا ركر يكاياجا ‏ ذکھال سی او ركام نیس استعال 
ہو تلق لین اس وج سے اس ط رح کن جرب یکوو سحت کے عالات میں نا چا تاو رکر وہ يي کہا ہا کا ہے 
ایا ی ہے ججیاکھان كول بے نانے کے لے ال پر مز یر ۶ چ ہکیاجائے۔ 

(1۳( -----عن سهل بن سعدء قال: ما رای رسول الله صلی الله عليه وسلم 

النقى من حين ابتعثه الله حتى قبضه الله وقال: ما رای رسول الله صلی الله عليه 

وسلم منخلا من حين ابدعئه الله حتى قبضه الله قيل كيف كنتم تاكلون 

الشعير غير منخول؟ قال: كنا نطحنه وننفخه فيطيرما طار وما بقى 

۱ 7 فاكلناه (رواه البخارى) 1 ۱ 

میک لمعمل ححخرت بل بن سعد رواييت ےک ضور عا نے اتی بعت سے 

ےک انا یک کببھی میرک رول یں د کی اورانہوں نے ق رما ل ر سول ادڈہ عه 

نے اس وقت ے ےکر جب اللہ تا لى نے آ پکومبحوت فرماا آ ٹا ہا ہے والی کش ہیں 

ھی یا نک کاش تال نے آ پک تین فزرالية ان کو اکاک آپ لوک ہے 


٦ 


جتن جو (کا 7ثا کی كما لنت سے انہوں نے فرمایاکہ ہم اسح يميت سك اور اس ير پیک وک 

مار ست تھے ء( مو ا موم )جو اڑن مو تا تھالڑ جاحاء با یکو بحمو لت او رکھا لیے _ 

النقى: اى خبز الدقيق الحوارى وهو النظيف الابیض ۔ 

منخلا: بضم الميم ما ينخل به الدقيق قال الكرمانى نخلت الدقيق اى غربلته قال 
الحافظ الاولى ان يقول اخرجت منه النخالة- 
_۔ شش نہ و فرب طس بھی ا 

د ھی ءال کوج ییا نکرتے ہوے حافظا ابن جر ر حل اللد فس ہی ںکہ کن ےک 1 أب نے لعش ے 

نل ھی ہو زاس طورپ یہ آپ نے تار قله سك ساتھ شا مکی طرف مغر فا تاکن ےک شام 
رومیوں کے مات تھااوردومیوں ںاہک چ زر کا فی مرو بل 

امام باد كاد حم الہ نے اس عد ی سے ہے کی ثا بت فرمایا ےک ہکھان كلا جزز يل واكك مار نے 
e‏ ےت ےھ ےت 
يبال جو کے آنے یس پچھ ومک مار ےکا كر سي ک کہا چا کت كر رو رت کے مو قح ير خوك مار نا جا 
سے صوص جل اس سے دوسر و كو فحن کن كاخطرون ہو۔ يهال کی ضر ورت شی اس لل آ ےکا وع 
مون حص ال کر ےک كول اور صورت ہیں ی _ 

22 ----- وعن ابی هريرة قال: ما عاب النبى صلی الله عليه وسلم 

طعامًا قطء ان اشتهاه اكله وان كرهه تر که- (متفق عليه) . 

رسو ضيه او ا وت حر رن ادر وى ا 

کا عیب نہیں الاك کی كود ل چان کھالیاءاگ رکھانا يندت ہو ات اس کھوڑدیا۔ 


کھان ےکی جز می کیب کال ےکا عم :- 
بے ر شر یہ کا 


وت ا ا رت یت کا لزا 
ظاہر > كم ناجاتڑے۔ 


)۲( م فی اکن ےکا مقر شض اتی طبیعت اور زج بیا نکر نای م وک ہہ جز طب طور پر جك بن 
ہیں ہا چہ ازج لین بل مقصد ای اکرنا مناسب ہیں» عمور ع نے بھی بض وانورول سک ےگوشت 
کے بارے یل ہے فرمایا ےک خم ہہ اها ثيل كا ليان ہے اس لے قمایاککہ آپ کے تناو ل نہ فرمان ےکی وج 
سے نض صحابہ نے سوا لکیاتھاک كياب تام ہے ؟ اس کے جو اب مس آپ نے فرمایاکنہ یہ کے :ايند ے۔ 

(۳).........کھان ےکی ڑکا يب اس اد از سے بیا نک تاک ال سے اکر اخ کی ند پر ہو شلا ےکہناک کیا نے 
ل نمك مر نک ہے یازیاد دہ کھ چاج زیادہ يك ہو اہے و خی اكول ص جل ےک آي قوییکہناکہ جل 
کپاہے یکلا ہو ا كر اس میں در یقت لا فوا نے کے سلیقہ بے اقترا كنا مقصود ہو ناج الى عالت میس بھی برا 
ضرورت عیب الك سے بنا جاہے خصو صا کہ تا رر نے وا ديالا نے وا ےکی ول شك یکا خطرہ ہو الب اکر وہ 
تن انا کان کی یت اوا ےا کان از کی بولا امول یت حال ركبو ےی نا 
دی می لکوئی حر نج نمل چ الى طر كنات کر نے والايالا سف والا تنص سين زی تر میت فو ثيش ے لیکن 
بحت اور قر خوائی کے طور پر اسے عیب سے کرد ینے ل كول حر أل ہے کہ اس سے دی ےک یکو مشش 
كسس عاك ط ری طاز مکو کک یکھانے و شير وك تيار اور ا کی خر داد ی نٹ ٹفش سے آل کرد ادر ست ہے۔ 


کھان ےکی آم یف:- 

شرك لگ ا عي وا ےکی ايك وی كاب لزع ق ان با تک 
70 و لن و اور لامر ےک ان ابت 
کوسوں دور تھے ء سبق وج ہ ےکہ شال تک یں سب كد آپ جس طر ھا ےکا عیب تيل نا لت تے ای 
رح ا سکی تر یف بھی أي ںکیاکرتے سے اس كك ہکان ےکی تع ای کر نا بھی جر کی علامت ال تہ 
اکر تقو دکھان تیا کر نے وا ےکی جو صل افزائی اوراء سکادل بڑھانا ہو توکو م رع ہیں بل ن ے۔ 

(١١)-----وعنه‏ ان رجلا كان ياكل اكلا كثيرا فاسلم فكان ياكل قلیلا 

فذكر ذالك للنبى صلى الله عليه وسلم فقال: ان المؤمن ياكل فى معى واحد 

والكافر ياكل فى سبعة امعاء» رواه البخارى وروی مسلم عن ابی موسلی وابن 

عمر المسند منه فقط وفى اخرى له عن ابی هريرة ان رسول الله صلی الله عليه 

وسلم ضافه ضيف وهو كافرافامر. رسول الله صلی الله عليه وسلم بشاة 

فحلبت فشرب حلابها ثم اخرى فشربه ثم اخرى فشربه حتى شرب حلاب 


2-3 ۱۸ ہے 


ظ 
مع فياه لياه اصبح فاسلمء فامر له رسول الله صلی الله عليه وسلم بشاة 
فحلبت فشرب حلابها ثم امر باخرى فلم يمستتمها فقال رسول الله صلی الله 
عليه وسلم المؤمن يشرب فى معى واحد والكافر يشرب فى سبعة امعاء۔ 
ار قر کت اور جرت ابوج موود ی الل عنہ سے روات سک ایک تخس تھاجھ( يد 
)بت زياد ه كاي كر مات كر جب مسلمران ہو ان وک کیا نے لگا جناي نی اکر م صل الد علیہ 
وم کے سان ا كاذك كي كي ف آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فر اياك یقت ہے كم 
مو من نو ایک آنت می کھا تا ے او رکا فر ات آضنوں مم سکھا تا ے۔ 

اا کم رحمہ ایند نے اس روای کو خضرت الو مو کی رسك ایق عت اور خضرت این 
ريق اللہ عنہ انف کیا ے جس میں ل(ی اتد کو ل بل ) حل آ خضرت عله 
3 ارشاد يكور ے لیکن مسلم رجہ اٹہ نے حضرت ابد ہر رو ر شی ایند عند سے ایک اور 
روابیت أت کی ہے ل بس لول سك (ایک دان )رسو لک یم عله کے ہاں ايك ہمان 
یج وکا تھا ر سو لكريم نپ نے اس کے لئ الیک ج ری دوہ ےکا كم دبا بلرى دوب یکی 
اورا کا فر نے ال دودھ کو لیا رآب عله 2 تل سے دوس کی ری روت یگئی وہای 
ووو کو كق گیا يبال ت کہ وه مات لكر نو لكا دودھ ٹ یگیا۔ ير جب تع مول أووه 
لدان م كيه ر سو ل کر یم ہے (اس وت بھی )اس کے لئے ای کک کدوک مم 
دياه كر ى دوت فی اور انس نے ا کادودھ فى ليا مر آپ نل نے دوس یکر ی دو ےکا 
عم دا( کھری دو كق) يان (اب )وها کال ر ادودح نہ فى سكا تور سول الث ایک نے فراا: 
مو نان ایک آنت مل پا ے او ركافرسات آجوں میں_ “ ٰ 
شرع سید یہ عد یث ان احاد يمث یل سے سے من ير مجر ین اور شار عن عد بيث نے طويل ٠‏ 
یں فرماکی ہیں. یہاں رو ری ضر ور ی ند شخب پاش عر ضکی ہا ہیں۔ 


نولو ں کی تیراو:- 

اس عد بث سے بظاہر ہے معلوم ہو جا ےک انلو ںک یکل نخد ادسات ے حافظ امن جج راور تق ی 
عیائض و یرہ نے اطبا کے اقوال بھی شل کے ہی کہ محر سمي یکل 1 متب سرات ہیں لیان اصل متصور 
نو ںکی تخد ادہیا نکر نا ں ے بللہ قصور صرف ب با نا ےک ہکا ف رکی خو راک مو صن ےک ناز دہ مول 


و < 
سے ءسما تکاعد دعر لى ز پان میں کش کش مث ثرت بنانے کے لے ى استعال ہو جار بنا >- 


عد یثکامطلب اور ایک اشقا لکاجاب:۔ 200 

ضور یہ نے جو فرمایاکنہ من ایک آنت مم لکھااے او رکا فر مات آ نل میں ء اس کے بای 
طور بر دو مطلب ہو حلت ہیں: ایک ےک مقصود اال اما نكو قلت اک کی تر غيب د ینا سے مت سيار خوری ۱ 
کافرو کو تازيب ديق ہے اس سل َك ان کے لے دنیدی مل کے علادہ يك بھی نیس ہے مو من لكا , 
لقصو صلى 1 تر تك ز ن دی سے ووکھانے بے ب یکو مقصودحیات مج ھکر ا سک یکثزت میں تا ال ہو جا 

دوس امطلب ہے ہو کات ےک حضو راق رس صلی الثر علیہ و لمکا مقر ام واقعه ينانا هك مم نكم 
کھان ےکا عا دک ہو تاج او رکا فراس کے متا سبك یں زياد كما کاءاسی مطلب کے مطا بی ہے اشكال ہو تا سے 
کہ تم بن او قات ديك ہی ںک ہی مم نکی خو راک کی کافر سے كال زياده ہو کی ہے۔ عد یٹ يل اور 
ماس اس مشاہ سے می ییک کی گل مد ءال کے جو اب می بہت کی با کی کی ہیں يان زيادعام 
ثم اور د کو كله وای یں حب ؤ یل ہیں: 

سب سے کل بات ہے سس كر ہاں صو و ابيا قاعد ہکلے بیا نکر نا يبل ے ہیں می اسشا ی ہو 
کے بللہ مقصر ایک کو ی او راک ےی داقعہ بیا نک نا كم اک و بشت ر ابيا تا ےک مم نکی خو را لكافر سے 
مض نازو كك بارا حي كن 0 

چرم وم نکی خو راک ج رکم مو ے قز ا سكا ل سب این اورايمالىكيقيات اور تو رایت دخیر ہ 
ہیںء ىہ زی ی زياده مو ںگیءامتاجی معن او ركاف رکا ناوت کی زیادددا يح بوگااورایمان جقتناکنرور ہوک 
انثاتى بسار خو ری اور قلت اك کا فر کم ہو جاحلا جا ےگا ءاسی ہار أو نض ححضرات حر شان نے لول بين 
کیا کہ عد بیٹ میس و صن سے راد مم یکا ل ہے حدم الا مت خطرت تھادکی رحم الد نے ای وچہ 
ب بين فرمائی سكا وک اللہ کے انار ہے تار س كل اس سے ذا .ع جسما یکم مو جال ے اور کر الظج كم 
ذا روعانی سک در سے شل نذا جا کے قا مقام مو جات ہے جنائيه د جال کے زہمانے مم جب 
ال ا یمان خت مكل عالت میس ہوں کے »عد یٹ می آ ا ہک تع و یلان کے کے نز اکاکام در ےگی۔ 

یھر اور یر ہہ ج کہاگ یاک ہکاف عمو رمو مان سے زیاد كان ساسكا ملى جات لی می ایک ی ہو ہا 
70 0 
برای موں لن ان شل سے ایک مو صن ہو دوس اکا رکا فرش قلت اكل کے دوسرےاسساب شلا معد ےکی 


ے2۴۲۰ 
كنزو ر ییا ا كاج گی بن و يمره موجودنہ ہو ای رم من می سکشزت اکل کے دوس رے اساب تنا ف رکا کے بڑا 
نالور محر عكار كل جاور تند رست ہوناو خی روکاغرسے زیادونہ مدل مو بات یم الا مت خطررت تھانوی 
رحمہ الد نے اپنے ایک وعظ ”مال اليل “یس بیان فر ا ہے ء ضرت سك اس وع کا تياس لق كينا نشاء 
الد پیر تكابا عت ب وكاء حت قرا کے ہیں : 
صوفیہ کیو تعات فو اس پر شابد عدرل ہی ںکہ وکر اٹہ ا نکی زا ين جاما ے اور 

زا سے جسمالىكاكام دياسي» مشاہ دہ كاك ال کر نے وا ےکی هذا جا کم ہو ہا 

سے لق كراش میں مشخول ہو نے سے ييل مل ترا کی تزا ی اس سے ا بکم ہو جا 

گن لپ تلك ال نکیا فا "تل بت لف ان ےگ ذاش كول اس ےکم 

کھا نوالا نہ مو گا بللہ مطلب صرف ے ےک خوواس كل غزاج ذكر ے يبل کی بعد 

اتخال بالذكر سك كم ہو ہا كل اور بجی جواب ے اس اشکا لکاجھ عد مٹ ب ہکیاگیا ےک 

المؤمن ياكل فی مها واحد والكافر ياكل فى سبعة امعاء عد يي ث6 2 جما ب ےکہ 

”لان ایک آنت می تھااے او رکا فر مات شال مم سکھا جا ہے۔ “جم لكاحا کل ىہ سے 

کہ ملا نکی خو را ککافر بول ءاس ب بض كواتكال جیما ےک جم فو ینس 

لانو کی خو را ککافروں سے زیادہدیکھے ل اب ہے ےکہ عد ی کا ہے مطلب 0 

کہ ہر سلما نک خو راکپ رکافر ےکم مون ے يكل مطلب ہے ےکہ ہ ركاف رطان ہو ہاے 

و سلام کے بعد اك خو راک ييل کٹ چا سے کی او رکف رك عالت یس وہ چت كماما تا 

ا نے کھاے کا ل وھ کر ا لدانت رنال دن 

باحق ہے کا رکھانے کے وت صرف پیٹ بی یں جرح بلا نیت کی جھ رجا سے اور 

لدان صرف پیٹ گر جا ےار ا لوال چک ہے سوال بيد موك تم نے عد بی کا مطلب لو . 

ایا یا نکیا کے كل كيلك ل یکا فر کے اسلا مکا نظ رکرنا پڈڑ ےگا فو یس جواب شل 

ر ضکر اہو کاک تم اسلا م لا نے وا لن ےکا فرك نار نكر کو فو سکیا امتوان اس ط رح ہو 

سارہ کہ تم د آد يمال تن دق کے ایک عالت کے ےلو ایک مسلمان ای کا يمر 

ا نکی خو را کک مواز نكرو ت يقي ملا نکوکافر ےکم خو راک پا کے اور مكو جوا میں 

اشکال ہوا >ء اکا 07 2 چ ھر ر الاح كر ايك تكن 

ماران ے دوس را کافر ے اور سان ک وراک جافرے زياده ہے پ ین واک 


کک ۲٢‏ ہے 


لدان تدر ست و ڑاناے او ركاف ركنرور سے یا مسلا ن کی دق ت کا فاقہ زدہ ہے او ركافر فاق . 
زوه تيبل يا ملمان تو ور کی خورا ککھار اس اور بجا فك كلر نم كر جاو ركافر ایپ ری 
خوراك بي ںکھارپابللہ كلك وج سے بهي کا فک كفابي تكرنا چا پتا ے الى اخلان 
عالت میں موازنہ تيبل ہو سلتا بک مواز ت کی صو ر ت دی ے جو میں نے او پر بيا نک یک مس 
قوت و کت و تع کا لمان مو ای ناه سز ون كان دا انت نون ات 
دوصرے ے زیادوفاقہ زدہونہ مول اوردو نول ايق خو راک کے مواق كمارح ہوں 0 


بر یث می واقیی لكا ؟ ۱ 

ور ضرت الور ر کی حد یٹ یش اس شف کا وق بھی کور سے جو ابا م کافرتے اكت 
وت یل سات کر لو ںکادودھ بی گے ا کے رن مسلمان ہو جانے کے بعر ایک بكر کی کادودے سای بی لیا 
يكن دوس رکیکادددھ لدان لي کے۔ ہہ واقع ہا سکاہے حافظابن تر نے زیاددد .تان ال طرف تلا کیا کہ 
ہے واقتعہ حطرت اه خفار كا کا ہے ابع الى شيب وغيره نے ا نکاداقتعہ خودا نکی ز بای روا تکیا ےن ها 
نیہ كيب وگوں ہے سا تيد وفر ب نکر تضور ادس ع کے اں حاضر مو ےآ خضرت عا نے سحا 
سے فرمایاکہ ہر ناا 32 کو جورم ہمان نے جا ء ان کے باق سا یو لكو كولم كول ات سا ع 
ےکی ے لیے جذ کے آوی ے١٠‏ ہیں حضور ارس مك ينا مہمان بتاک اپنے سا تخد نے بك وبال مات 
9 10 [ گے یھر [ [ز[| |[ کک کیا گے رام امن کہا 
کہ جس محص نے زیو ہک یکر حضو ر از س يكو بج وکا کیا ان لی اح بجوكار کے حخور قرس لے 
فراا:الياامت كوء ال نے اپنارز قکھایا چ ا کے دن ہے مسلمان ہو گے اور دوس ری كر یکا رود کی نہ لي 
کےء اس پر تو ارس الگ نے فريك مر من ایک آنت م ںکما ا او رکاف ر رات آثنؤول میں۔ 

ای سے لت کے واتعات حافظ ابن تجرر حم الد نے الوبص 3 غفا ری ر کی الث عتہ ءفضلی بن م 
الو رزو ان اور شا بن تال کے پارے میس بھی أقل سے 000 

050 -----وعنه قال» قال رسول اللہ صلی الله عليه وسلم: طعام الاثنين 

کافی الثلاثة وطعام الثلاثة كافى الاربعة۔ (متفق عليه) ۱ 

7ت سب شق متك الا ہر ہی سرت تح رت 


کا rr‏ تی 


راي دو آد ميد ںکاکھانا ت٠‏ نكوكالى ہو جااے اور تلا نكاكمانا چا رکوکاٹی مو جا تاے۔ 
658 20 وعن جابر رضى الله عنه قال: سمعت رسول الله صلی اللہ عليه 
وسلمء يقول: طعام الواحد يكفى الاثنين وطعام الائنین يكفى الاربعة 
وطعام الاربعة يكفى الثمانية ‏ (متفق عليه) 

ریت ہی حضرت پاب ر ی اللہ عنہ سے روایت ےک حضور ارس صلی الثر علیہ 
وخ رای )کہ ايك آد كا اناده آدمیو ںکوکائی ہو پاتا ے اور رو آومیو لكاكمانا پار ۱ 
كان ہو جااے اور ار آدمیو ںکاکھانا آش وكا ہو جام >- 

وت کٹ کر رت ناے: 


بر ا a‏ کا ےا تی 
اس لک عت لها ذا ایک ص ان و کے آدمیو ں کات اگمزازاہو سكت ےکہ 
۱ بوك مٹ ہا ے ء ای رب نس سکھانے ے دو آ ادق بر ۶ کے ہیں اس سے تین ياوا راگ زا رامو عتا ے اور 
کھان ےکی قل تکی صورمتں می كار سه بی ير اكتف اکر تا يج حطررت رر ی اٹہ عنہ نے بھی قط وانے سال 
ٹس یہ ارادہ تاج ر فيا تھاکہ شل ہر 7 1ئھە70 جع کے يال لو ری خو راک موجود ہے افراد ادك 
سے اكرول او ر آي نے فربایاکہ آ ادیاپ ےت اکر ولاک اون 0 


So 0‏ و و 
الفاظ ہے ل :كلوا جميعا ولا تفرقوا فان طعام الواحد یکٹٹی الاثنين ۔ وت 
م كعاوال کہ ايك 27 اکمانار رکال ہو جام ے_“ (© 

سز ےن رت كني : ويد الله 
على الجماعة۔!' 
۱ وت کر 5 ےہ ہِ0ەَە!"م" 
سے ال کہ عر یٹ راس معلوم مور راسج ل دو آدمیو ں کیا تن دكا ہو کتاے جب ا ےگ ی 
ا تی تپ ور جج 


E rr 5: 


پار خصو لک تن كاكحاناكان کا جيل دو سرک عد یٹ سے معلوم بد راس كه يار آدمیو كود وک کیان بھی 
کن ٢‏ ہا ےگ 

يان ۶ر کے ووولوان مزل عل كول تارش نظ رس 1س كاش ےک اول ل عد یک 
مقصد خاص تخر اداور مقر ا رکا جن كنا تنبل ہ ےک کت اکھاناسکتتے آدمیوں کے کے کان مو سا ے بار اصل 
نقصوو مواسات اورجه رو ىكل تیم ےک ہکھان تجوز امو ےکی صورت ئل بها اس هك چت آدى پیٹ 
ب رک كما بل اور بال بجو کے ر ہیں ا سکھانے میں زیادہ آد ميو كو شا لكر لياجاس کہ ہر ای کک كم ا زم 
ضرورت تیچ ری ہو جاۓ نیز جب وو خصو ںکاکھانا يار کے ےکن ہو کے نو ین کے لیے بط لن ادلی 
كال ہو سنا سب ای طررح جب ار آدميو كود وكاكماناكفابي تکر کا ے تو ۳+ 
روٹوں مد يول س حتا یک کی تار شض س 

ا ا وو فا ق 
زکر موجود ے مشلا این ماج ہک ايك عد بیث کے الفاظ ہیں : 

طعام الواحد يكفى الائنین وان طعام الائنین يكفى الثلاثة والاربعة وان طعام 
الاربعة يكفى الخمسة والسعة۔* ”ای كا كحاناد هكوكالى ہو جا ۓگااور يدوه الا تن یکواور 
چا دك كفا يي تك سکتا ہے اور چا رکاکھانا پاچ اورجر حخصس کے ےکن مو کے“ 

ای رح حخرت عبد الر تن ين الى برك متروف عد یی جن میں ضرت اب ویر ر ی ال عدر ۔ 
ک ےگھ ہمان آنے اور مجم ذو ںکوکھاد بر سے س ےکی وج سے صر اک رر ی اللد ع ہکی نار نح ىكاذ كر 
میس س ہک حور ارس صلی الہ علیہ و سلم نے فرایا تاک جس تن کے ياس دو خصو کاکھ نا ہو وہ ترسك 
3 الو اپنے سا تھ لے جا اور جم کے يال وا رکاکھان مو وما PINE‏ کو ھی سا تھ نے جا ج09 

ات ..... اس عا یت سے ہہ بھی معلوم ہوا ای نس سے با کی ت تھوڑاہو ا موی 
جج ہک مہمانوں کے سسا حت ٹپ یکر نے سے کیا سے نیس انس صن ےکلہ تھوڑکھانا بھی فا تدس الى نہیں 
اک راس سے پور یطر ری رگانہ بھی ہو وی در سج مس بوک شت يكم ورور موی 

(۱۸)-----وعن عائشة رضی الله عنها قالت : سمعت رسول الله عه یقول: 

التلبينة مجمة لفواد المريش تذهب ببعض الجزن - (معفق عليه(" 
() ا لار ىرجو / ۵ ۴(.....۵۳) حال سال ......(0) قوله: و بفتح ا والميم الٹقیلة اى مكان الاستراحة ورويت 
بضم الميم اى مريحة والجمام بکسر الجيم الرحة وجم الفرس ذهب اعیاؤہ۔ (مّالبارى ن۹ /ی۵۵۰) 


کیا ۲۱۳ 2 


7 ملي ضرت ما کشر الثم عنہا سے روات »ودف راق ہی لك ل نے سول الہ پگ 
كد فراسے ہو سے ناک تی مرا کے د كو سكون پا جاور ل فو كووو کرت ہے۔ 


تلپبن اور ال کے قوائر:- 

یہ ایک يي الى اس جو مو ”جو جو “کو کر ا کاپان جما نکر ت رک ہا تی كوا آب جو یکا 
ووسر اتام تل ینہ ہے ای میں حش اؤ قات شه یاود م یادونو ں کوشا لكر لياجانا ھاءاسے تلبيد اس لے كت 
ب کہ اس کا قوام اور نض او قات اکا ریک بھی ”لین “(دودھ ) جیما ہو تا ہے یہ مأك ہو ے ج کو 
521 پر جو شی د ےکر تا ر کیا چاتا تماء نض او قات خابت جو با آ کے کی ان ے بھی مار sx‏ ,ضس 
حطرات نے تليي ہکات جما ج وکا لي اليا > 

سکاو کے اسی با بکی عد یٹ برا میں الى سے طق لق چو حا بھی کر ”جیا صل 
یش ہر ین والی زا کہا جاجاے خصوصاج وحوح فگھوض ضكر کے فی جا ء نس شار مل نکی عبار ال سے 
معلوم ہو جا کہ پیر یے مو سے جو سے تیار مو جا تم لور ”الما ء بت چو سے ءاول ال کر میس غذ ايت اور 
ج کا زياده ہو تا تاور دو سر ے می اطا فت زیادہ ہو تی ی ۔ جس رح بيد کے بارے می سکہامگیاکنہ اس عل 
شبد ودود و تیر لض چ ری شا یکر ی الى تيل ءاس طررع صا میس بح یکی پاج تھا 

نوہ اماد یٹ بل قو رکرنے سے معلوم ہو جا ےک تبي اور حساء می لكل نیاوی فرق يال سے اس 
لئ ا ن طلا ق ايك دوسر ےکی جک ہو تار بتاہے چنانچہ اعاد بیث عل دونو کے ايك يت فا کر زكر کے گے 
ہیں ءاسی رح سند اتک اور این ماج یس حطر ت عاش شی الہ نہ کی فو صد یش ک ہک کی سے جس کے الفاظ 
ہے ٹؤں:علیکم بالبغیض النافع التلبينة يعنى الحساء۔! اس یں تلب کی تفر ا صا ےکی ے۔ 
قاری می حفرت عاق رص الثد غنها کے پار ےل جا ےکہ بحب ان کے نا ندان شس 
كول فو گی ہو جالى اور مہمان عور تمل ایی جل جا تمل فو آپ ال خانہ کے لے تلبيد تی ركروا تيل اور تید 
باکر اس کے او یر ہے تلييد. ذال د یں اور ال خا کو ال کے کھان ےکا عم و متيل اور فر تی كلم نے 
حضور اق رس صلی اللہ علیہ وک مکو ہے فرماتے و سے سنا کہ تلبیعہ مر پیش کے و لکو سلون چیا او ری 
7 0 کو زا لكر جاح( 


ظ 
ادي ابن ماج اورا کے ”واس جو عد ہے لف لک یگئی ہے اس بل تید اور ضا ءكوالبغيض النافع 
كب كياج مث اسک جز جوذا تقد کے اتپا ر سے م ريف لكوناييند مو لج يان اس کے ے فائندومند مول ے۔ 
ای باب كاعد یٹ فیراے يبل آر پا کہ 1 خضرت صلی اللہ علیہ و حلم سك رم سکس یکو بقار ہو 
جات تو تضور اق س صل الث علیہ و كلم اسے صاءپلات ےکا تم د اور یہ فرما كدير ل 5 
ثانا ار يجار کے وا کو صا کر جا ہے فو ادد لیکو کے ہیں کان بض شار من عد ييث س كما كر يبال 
مراد هعد هك ويروالا حصہ ہےء ا کی تائيه اس بات سے ہو لسك این الیم رحمہ الث نے ایک رواييت 


زک ریا ی ے جس میں فوا رک يبل بطل نكالفظ ے۵ 


ان فوائ رک وجہ شای ہے ماك ال سے غذ ايت اور توت تو کاٹ ما سل ہو جالى ‏ نان طبیعت اور 
ملا پر اوھ نی خا اہین یم ر اٹہ کے اس ےم دور ہو ن ےکی و چکگ سک ماورب شا سے مور 
یس نٹ رک پید امو لى اور ارت ر یز ےکور ہو جالى ے اور ہے فز ات ارت رمز کو تقو ی ديق ے۹ 

جییاکہ اديه ذک كي ا كيال لیر ملف طر قولس بتایا جات تھا > حالت عل كس م سے 
نس کے ل ےک ناطر یت مفید ہوگااو ر کی مقر ارس ا کااستعا لک تاا سے ہے تضیلات حد نمث نل 
ان کی ی كل إل کن ر ورا ا ن ےر ووو اعد کی جک کے 
ابت ج وکا تکببن زیادہ مفید ہو گا کی کے لے سے ہو سے ج کاو ری کے لے آذك مھا نک ہی کے 
لے زياده ج شش د ےک اور زياده اث كا کر استعا ل کر با بتر م وڳ کی کے لئے تھوڑے اٹ وال کسی کے 
لئ دود یا شبد و تیر ہک آھیزش کے سا تھھ مفید ہوک کی کے لئ اس کے مغیرہ ان تتام امو رکا فیصلہ 
ایک اہر لیب ت یکر کے 

لبت حافظ این تر رحمہ الد نے فرمایا کہ بظاہرم یش کے کے خا بت جوکاپای مفید ہو گا اس ےک 
)١(‏ ناد المعاد ر ۳ / عل )۴(.....٠٠٢‏ زرالوادی ۳ | ص ۱۰۲ 
(”) قال الحافظ فى فتح البارى ج١٠١‏ / ص47 ١‏ وينبغى ان يختلف الانتفاع بذلك بحسب اختلاف العادة فى البلاد ولعل 
اللائق بالمريض ماء الشعير اذا طبخ صحيحا 5 اذا طبخ مطحوثا۔ _ 


8 ”م یئ 


سے اکا اکا ہو جا ہے اور م عت زیادەہو له ٠‏ 

رف ما بر لغوى اور حر ثا شقن کے لے در رذ بل حوالہ چات ملا حظہ فر" 214 

() نان المرب ۱۳ ۶ ۳ ٠٣‏ ےا (۲) يم البارئ نأ گ٠‏ ۵۰ 
ج٠۱‏ / عل 164 (۳)زدالمارح ۳ / ص ۱۰٠١‏ 

معزي کی و اکرو شقن کے لے لاحظہ ہو: (ا) زادال ادج / ص ٠١١‏ طب نبد اور جد یدسا كس 
ا / ۵۹ - ٣ے‏ ازڈاکڑ الد خر نوی 

(۱۹) سپ > وعن انس ان خياطا دعا النبى صلی الله عليه وسلم لطعام 

صنعه فذهبت مع النبى صلی الله عليه وسلم فقرب خبز شعير ومر قافيه 

دباء وقديد فرایت النبى صلی الله عليه وسلم يتتبع الدبا من حوالى 

القصعة فلم ازل احب الدباء بعد يومئذ ‏ (متفق عليه ° ۱ 

رجہ کٹ حفر ری الس ر سی اللہ عند سے ردایت ہے (دفرماتے ہیں )ل ایک درزی 

نے ر سول الث ی کو ای کفکھانے بر بر جوکیاجھ اس نے ر سول الث لگ کے لئ تي ركيا 

تہ میس بھی بی اکر م عه کے سا تج گیاہ اس (می بان )نے حضور اقرس نٹ کی 

7 0 لو پا ای کے کے 

ےل نے رسول الث یک کو ريمال آپ بر تع سك كنارو لس كرو ؤعوثز صو کر 

تتاول فرمار ہے كال وج سے اس دك کے بعد ے ل كد وكوي دکر جارپاہوں- 


تضور ارال ماپ ھةک وکر ونر تھا:- 
اس عد یٹ میں حضور اقرس صلی الثر علیہ و کم ےد وکو يبر فر کا كر ہےء عد یت می لفظ 
ندباء“کاسے جس کے متو كدو کے ہیں ء من رویات میس ”دبا “کی جگ ”قرع کا لفط ےء ا کا مت بھی 


... (ا) الدياء بضم الدال المهملة وتشدید الموحدة ممدود ویجوز القصر حكاه القزاز وانكره القرطبى هو القرع وقيل خاص 
بالمستد ير منه ........... وهو الیقطین ايضا واحده دباة ودبة وكلام ابی عبيد الهروى يقتض ان الهمزة زائدة انه اخرجه فى 
”دبب“ واما الجوهرى فاخرجه فى المعتل على ان همزتة منقلبة وهو اشبه بالصواب لکن قال الزمخشرى لاندرى هى 
. منقلبةعن واو اوباء - ا ج۹ ست ۵۴ درا ابينالسانالعربي "!اص 008) ١‏ 
قديد هو اللحم المملوح المجفف فى الشمس ابيع تيرد +0 


گا ra‏ یئ 


ی ہے الہنہ یت حطرات ن کہا کے ”'دياء “ان کد وک وکہاجچاجاسے ج وگول ہو ء اس یکو رآ نكر حم اور انض 
اما یت میں ”قطن “ے بھی تی رکیاکیاے_( ۱ 

ابن الیم رہ ال دکی را ہے س ےک ”لین“ کا فط وی معن کے اختبار سے عام ہےء ىہ ربوز 
کی اور رصا اران يكبل وای ہر قي لكوتي كبس دیاجا تا ہے می بات مب رد و شرو 
انمه لفت ےکی ے_ O‏ 

گر یپوی کے تر ےا تر کرک میم ےم رارق 
ہے ججناني م احاد یٹ میں اسح ل لس علیہ السلا م کا دا قراردیاگیاے_ O‏ 


کرو ہے وائر:- 
يبال پر مد إن نے اس گج بات اور اطبا وک تحقیقات کے مطال کد و کے بہت ے فوا کر وکر کے 
ہیں »انان | تیم رہ ا ےجا کر فک فرمائۓ ہیں ان یش سے جد ایک ہے ہیں: 
00 ........ اک کا راج ٹر اور تڑے اس ل كم مارج والون کے كال سے زياده أفع من كول جز ہیں 
ہے ابد سر دعزرارجاور شی راج والوں کے لك انامز سب سه 
(۴)..........کمدو کے اوی كو تدا موا آنا لكا كر اسے تور وغير ول بھوناجاے ء آنا اجا رکراندر سے جو يإلى لكك 
4 تا 


i 5‏ جوشد تو قب كا و ) 
ال کے علادہاسے دما کے لے بھی مفید قرار دیاگیاے ء تر طيب و تقو یت دمل کے لے شم كروك 
امال قر اطبا کے بال ”حرو ف اور جر بهد ٠‏ 
بض جدید تر بات نے بھی اس کے فوا مد توش کی ء تفصيل کے ے ملا حظہہہو:طب نوی اور 
جد یدسا تنس رج ۷ / ص ٭ے ۱۲۸۷-۲ زڈاکٹر نال ر غر نوی 


واتر عر يرث و ا 


ES‏ ۲۸ ہج 


کو یش و سک شر 


ظ وراپنے سحا کے سا صن ساوک اور رم برح بھی مھ میں ٢‏ ےت 
کہ د عو کر ے والا تس تورات ری کت و آزار " 


جتےے ےت سی 
ار الك الك دستزخواں ہوں ایک وسر خا نكل بز دو سر ے دسح وال وال کے سا نے بی کر تاور ست 
نس ںار یر اك 1 احثاياد [اتأاجازنت ہو وال ل جج ىلول مرج نکھیں_ 

. (۴).... عربو ںکی اضل رواييت ىہ کی اور مت رر یت بھی بی سبك مز بان ہمان کے سسا تر 
کرام كل كك ال ل عر ورورضا ح سز كل وى ےک اگو رت 
شيك نہ ہونا بھی درست ہے۔ ہے بات اس عدبیث سے معلوم ہو رہی سے اس ےک ا بقار ىش اس 
عد بیث کے اندر ايك جگ ہے افظ می ؤں:فقدم اليه قصعة فيها ثريد قال: واقبل على عمله۔''' “وم 
کھانا آ پک خد مت میں می كر کے ای ےکام کے حك جل اكيا- اس مز بان حك جل جان ےکی یہ وج تھی ہو 
تی کہ ودكام ایمافو رى نو عی تکام وک اس کے لے اک و فت جانا ضر و رک ہواور ہے وج بھی مو ق ےک 
کھا ناکم 6و اور یز باك ىہ چابتا و رکہ تضوراقر صل الل علیہ و تلم زياده سے زیادہتقاول فرنا لال ء اب آت کے 
ماح فار نا ابا ہے e‏ یاد كرآب سے اجازت نےکر پا ت0 


فل لل حطر 9 ہت کہ جب میں نے د يلمك حضو ر ان ر یں 0 مم 5 
فرماتے اور ای کے لقتل تلا كر رس ہیں فو میس ان تقفو كواك كر کے آپ کے سا ب كر ن ےک کی 
اور خو داس میں سے نی ل كواحا تھا_فلما رایت ذلك جعلت القيه اليه ولا آكله_0©) 

دوسرے الل وچ ےک حط ری اس رح اد عت فرماتے می لك اس کے بعد مج كرو یی يندرا 
عالاککہ بی شد يان يش غير اتا ری معام ہو جا ے اس میس اتا ضر ور ی بھی ہیں لیکن جب عحب ت کا قلي 
صا ما رو ہ و 


ھن 
ہے و٤ف‏ ماتے ہی ںکہ ا یک د فهر نل خر ت الس ر ضی الد عند کے پا ےت ےئ 
اوري ار شاد ار ے ك: ' 
انك ھا ول لعي وبر لزاه قد اھ عليه رس ون 4 
7ر کت ت ےکتاپند سالج س ےک سول لفحل الث علي لم کے پر فر ے۔ 
) ۰) -----عن عمرو بن امية رضی الله عنه انه رای النبي صلی الله عليه 
وسلم يحتز من كدف شاة فى يده فدعى الى الصلاة فالقاها والسگین التى 
يحتز بها ثم قام فصلى ولم يتوضأً ‏ (مسفق علية) . 1 
مرجم کڈ 7رت گرو بن امير رق الد عت سے دواييت ےک ہا نبول نے ر سول الد 
۱ یکو یک اکہ آپ کر یک ایک دسق میس ےکا کا فک تاد فرمار سے ہیں ج وک 
اتھ میں ىء آ پکونماز کے ك بلای کیاد آي نے اس دس یکو میا ركه دیاادد اس يمرى 
کو بھی نس سے آ پکا ٹر ہے ےب رآپ ا اور نماز ھی لیکن ( نيو ضو خی ںکیا۔ 


كوشت تی ری ےکا فکرکھانا:- 
اس عد یت سے معلوم ہواکہ حطرت ارس صلی اللد علیہ و کم کو شت تچ ری سے کیا فک کر 
کھایا ہے مو بات اس با بك اعد می بساحن قیس ری فص لك يبلل عد مث سے بھی معلوم موك ءاسی باب 
کی عد یٹ برا۵ جو حرمت الو پر برو رذ الد عند سے مر دک سے میں ہہ آر پا ےک آ خضرت صلی اله علیہ 
و کم كوش تکوداوں سح مور کر تناو فر مااےء اس سے معلوم ہو اک دوفوں طر رلته جام يل 
داكا جا بك عد یت ہر ۵۳ جو خضرت عا ئش ری الد عنہا سے مروى ‏ می پا تو کے سا تر 
كوش ت کا فک رکھانے سے مع را یاو ہا سے ہو ںکاطر قد قر ار دیا گیا سے جو بظاہرز ب بث عد بیث کے 


فلاف ع ءاسن کے تعلق در غ ذ ہل با فیس ذ من بل ر كحو ىا ل : 


ابوداود اود امام تاق سے ہے بات ل کر دی ہے جيل زم بث عد یت شل سے ہم ری س ےکا فک رکھان ےکی 
اجات معلوم ہو ر ہی ہے۔ بغار اور سم نے رواي تك سے اس كات 2 موك 
(r)‏ 006 بدت عد بث عا كش ر ی الد عنہاکی نامير دو اود عد يثول سے ہو کی سے ان یش سے ايك و 


() جا نہ ىرج ۲ / ےباب ما جاء فى اکل الدبا۔ 


ححفرت ام مسلمہ ر ی الد عنہاکی عد یق سے حل طب الى نے وای کیا سے اور ا سکیا مون بھی صد ہت 
عا کت ر تی اللہ عنها کے تر یب قريب ہے الب اس میس رو یکوچ تو کے سات کان سے بھی فى مین 
بعد یٹ بھی عيف ے_ ۵ 

دوس رک عد بث خظرت صفوان بن امہ ر ی الد عت كلا ے کے ایام تر نم کی رحمہ الد دی رہ نے 
رات كرابت اتن ا انهسوا اللحم نهسا فانه اهنا وامر ا “كوش کو اڑل ے 
نور جک ركعاقء ال کہ ووزيادلذتكابا عش اور زیادوتو وار ہوجاے_“ 

سند ال عد بی کی ى ضعيف ہے کان تعدد طرق وج تن کے درج کک كا لی ہے۔ 

(۳۴).. ...ين صد مث صفوان می لكو شت كا فک رکھانے سے مانت نیس ہے صرف انول سے 
نو نک كما کی تر غيب ے اورو بھی لیت و نو ىفوا و ای ادف 

کور ہا مور کے یی تت ربو ری بح شكا ءا سل یہ انا ےک ہگوشت و یرہ تچ ری ےکا ٹک کہا 
كرابت جات ے الو تش فوا رس فق ار کک ےکی کے ترما جل وشت ان 
: طر كلا ہوا ہو اور داخول سے نون بل دقت مس وس تہ ہو لى ہوہ دوسرے لفظول میں داضوں سے نو كر 
کھانےکاامرار شاد کے اس میں شر گی ستل بیا نکر نا تو ہیں ہے( 


نگ کی مدل جركها ے سے وضو: 5 

اس عد یٹ سے ہے بھی معلوم بوكر اكب ىمل چ رکھاے سے وضو تسل وتا اس ےک 
1 خضرت صلی الث علیہ و کم نے پیم واوش تکھانے کے بعد جاز دو ضو کے اخ ری غاز يد ال ہے۔ 

ڑھگ -----وعن عائشة رضى الله عنها قالت: کان رسول الله صلی الله. 

عليه وسلم يحب الحلواء و العسل - (رواه اہخاری) 


() قال الهيشمى: رواه الطبرانى وفيه عباد بن كثير الٹقفی وهو ضعيف (مجمع الزوائد جه /ص )٤ ٠‏ وضعفه كذلك العراقی فى 
تخریج الاحيا ج 7/ص ه وذ كر العراقی حديث ابی هريرة فى النهى عن قطع الخبز وقال فيه نوح بن ابن مريم وهو کذاب ۔ 
(۲) ترمذی ج۲ أص 5» وقد ضعف هذا الحديث من اجل عبد الكريم بن ابی المخارق لکن رواه الطبرانی فى الكبير 
ج8/ص8 غ4 من وجوه اخرى ويراجع ايضا فتح البارى ج۹ /ص 47 © 

(۳) وقد حمل بعضهم حدیث عمرو بن امية على مالا يكون نضيجا جيدا لکن فيه جعل الحديث المتفق على صحته تابعا 
لحديث لم يبلغ درجة الصحة ومقيدا به ۰ ١‏ 


گا r‏ اعم 


7ر کی جرت ماک رذ اٹہ عنها سے روات حك حضور اتر یں صلی اللہ علیہ 
و سلم مڑنھی جز او رش كويند فرباتے ے۔ 


حضور اق رس یک کو عوداور شر يشر :- 

ال صد ہش ے معلوم مول حور ارس على اث علیہ و کم ”علو ی“ اور شب ركو بيد فرماتے_ 
”لوی“ اور ”لوا“ دونوں عرفا بان کے الفاظ ہیں ءان سے مراد محرو ف پکا مو اعلوم ى لیا جا تا سے اور بر . 
ی چیا بھی ىہ لفظ بو لدي جات ں۵ ) 

عدييث یس کی دونوں معان مراد لے جا کے ہیںء ہے ىكب کے ہی نل يبال ”اكلوى'“ اور 
کے7 ادر بھی جز ے يت حضور اق سل صلی الد علیہ و 2 اکوہر اق جز يمر تھی اس يبه سوال 
ذ من یل يبد امد كاك ال می فو شہد بھی وغل ہے اس کو ایک :كرك ن ےک یک یاضرورت ءا کاچ اب ہے 
سك شب دکو الک ذک كر کے یہ با تقصود کہ آ پکو اکر چہ جر متش چ زنر ی ايان شير خصوصیت کے 
سا تخد زياد ه ند تھااور یہ كك هكب کے ہی ں کہ ”الكلوى “ست مر اوتا رکیاہوااور ریا ہو الو ے- 

بض حضرات ؤب كباله عد یت یں تیا رکیاہواعلووم راد نيل سے اس ل ےک ابياعلوو تو ضور عه 
ند يعات لج يكن ہے را درست تل سے يلل زياده می معلوم ہو تا کہ ییہاں تيا رکیا ہو اعلوم 
تق مرادے ‏ علامہ خطالى رم الد فرها ست ہی ںکہ ”علو ی “كا لفط بو لای اس جز پر جاتاے کو خو و تیا کیاگیا 
ہوء فط ری طور بر کی چب ہے لفت بو لاتى ہیں جا يز ضور فط سے نيا رکیا ہو اعلوہ اول ف مانا بھی نابت سے 
شزا ضر ت عبد ال ین ملام کی اله عن سے روات سك ایک وف ضور چپ نے زر ت عفان ر صف اللہ 
عت ر يلها روه يز ل لذ أ عت لز رلا شن لجاب ہیں ضور عله نے (ے من یی ور 
ح ) فر )کہ او ی ماق امول نے او شق محال يمر آپ نے ایک دی سكول اوراس میں شير كل اور آنا 
ذال آي کے كلم يال کے ی اك جلائ یکن يهال يلك ووی کیہ حضور ةذ فیک کیو جناي 
ضور سپ نے بھی ا سے اول فيا عام شی ر حمہ اید نے ا عد بی کے راولوں 7 أ رارویاے۔_ ۳ 


(١)ھی‏ عند الاصمعی بالقصر تکتب بالياء وعند الفراء بالمد تکتب بالالف وقیل: تمد وتقصر قال الليث: الاکٹر على المد 
وهو كل حلو يوكل وقال الخطابى: لا يطلق اسم الحلوى الا على ما دخلته الصنعة وفى المخصص لابن سيدة: هى ما 
عولج من الطعام بحلاوة وقد تطلق على الفاكهة ‏ (ما پار ؤ۹ / ع هه) 

(r)‏ قال الھیٹمی: رواه الطبرانی فى الثلاثة ورجال الصغير والاوسط ثقات ‏ ( اروا رحد /۴ص۱م) 


٣‏ کچھ 
60 للستت عن جابر رضی الله عنه ان النبى عي سال اهله الادم: فقالوا: ما 
عندنا الاخل فدعا به فجعل ياكل به ويقول: نعم الادام الخل - (رواه مسلم)°“ 
مر کے رت جا بار صف الله عند سے رداایت ےک رسول الذد صلی الث علیہ و کم 
نے ايك دفعہ اپ ےگھروالوں سے سان طلب فر مایا مگ ردالول ن کہ اک تماد سه يال تو 
ضرف ىر رك ہے؛چناغچہ آپ نے وتق واااو رای کے سا تھ (روٹی )تناو فرمانے گے ۱ 
اور ہے ار شاد فرمانے كك س رک اماس أن ے۔ 


لم اسان ے:۔ ظ 
اس عد ی کی تق رت یل علامہ خطالى اور ت ی عیاض و تیر هسه فرمایا ىل عد ی ٹک مقصر رک 
کی فضيلت بيا نکر نا ال بک قاع تكن خیب دينا.ج ن اعت اور لذ یذ سال نكال جانا بھی ایت تیک تمت 
. سے يكن ا کی ایی طلب اور اس شی اليا انپ اک سک وج سے ابچھا اور لذ يذ سان نہ سك ےکی وج سے 
پان ہو جاۓ اور لت ہی علق سے نچ نہ اتر سے ہے مناسب نمی سے بل جع اکسا ےکھا نے ٢اگ‏ گار 
كنا ہو كول بھی جز سال نكاكام ده ديق سے سرك سے بھی سال نكاكام لیا چا سنا سے مین امام دوکر ہے 
اٹہ نے اس سے اتقات كياء ا نکی د اے ہے ےک حضو رات ی صلی الثد علیہ و مل مي مق رس رک كل تف ريف ٠‏ 
نانف ہے اس لك کی مل مکی بت روایتوں نل آجا سك ححضرت بابر ی اللہ عنہ فرماتے ہی لكر 
حضور ا س صلی افد علیہ و كلم سے ہہ مل سن ے کے بحد یل پییشہ س رک کو بہت ليش کر جار پا مول »الل سے 
معلوم ہو اک حفر ت جا برر ل اللہ عنہ ,ہر حال اس لکا مفقصدم رک کی تر یف تی بے تے۔ 
کن خرت جابر ر ی اد عنہ کے اس ار شاو کے تق ب کہا جا تا ےک تض صحاب ہک 
عاشتقانہ اداو لكا حصہ ہ کہ دہ ہے جسن ہو ےکہ حد یی کا اہ رک می مراد فیس ج» ظاہر صد یت بر 
پوری طررح عم لک یکو شن لکیاکرتے تہ "تج بی معلوم ہو جا ےک اسل مقصصد ت يبال قناع تکی 
تر خیب اور لات یں ا شاک سے شش كر نا خی سے نام ع رک کی فضیلت کی بج یل آ ر نی کہ آپ 
نے اسے اسان قرار دیاے_ 
۱ (۲۳)----- عن سعيد بن زید رضی الله عنه قال: قال النبى صلی اللہ عليه 


)١(‏ قال الطيبى: الادام اسم لما يؤتدم به ويصطبغ وحقيقته ما يوتدم به الطعام اى بصلح وھذایجیء لما يفعل به كثيرا 
کال ر کاب لما یرکب به والحرام لما يحرم به) : 


ع عم 


وسلم: الكماة من المن وماؤها شفاء للعين » متفق عليه وفى رواية لمسلم: 
من المن الذى انزل الله تعالى على موسى عليه السلام - 

ر جر ......حطرت سسعيد بن زیر ر ی اللہ عنہ سے ادایت س کہ ر سول الد صلی ا 
از م ا ی کن ست کے اود ]إلى کون جل کے قفارت ادر 
مل می ایک دواييت ٹس س کہ ہے اس من شل سے ہے >ے الثد تقال نے مو کی علیہ 
الام پراجاراتھا۔ 


کے 

کا ایک خود روات ۓ کے ازدو س کی o‏ 31 

شن ہے۔ علم اتات میس ا تی و EAE‏ كياجاتا ءال اک بے شر اقسام یں 

ری ج ےت ۱ : 

عد یت شر یف بل ا یکو نکہاگیاہےء صن کے دو ن ہو حلت ہیںء ایک ن س۱ ن کا ہو جا سے 
ضا اتی ان ا ےم بن و اطا ل شرل ل ہن ےہ 
دوسرے مخ اس کے ہیں وه صن جو الع تال نے وادگی جني یس بی اسر ان کو عطا ف ريا تھا جن كاذك ق کن 
کم تی کی اس آیت ل > :و انزلنا عليكم المن والسلوی۔اک عد یث میں ار نف خطرات نے 
مت بھی مراد ے ہیں ايان ماد یش نظ رمس مکی روات کے ہے افا هن المن الذی انزل الله على 
موسی عليه السلام سے ے بات ”ین ہو ہا ہ کہ يهال دوسرے ”ی ہی مراد ہیں ينان اکٹ شار مین 
عد بیث مکی معن ماد لكت ہیں۔ 

يمر جن رامت نے نی اس انیل وال من ماد لیا ہے ا نکاس میس بكنث جل ےک أب کے اس 
مین يل سے مو ےکاکیا مطلب ہے خطالی و خی رو نے ا لک تشر کہ سے مو كباس كم عد ی كاي 


)١(‏ قال ابن القيم : قال ابن الاعرابى: الكماة جمع واحده كمء وهذا خلاف قياس العربیةء فان ما بينه وبين واحده التاء 
فالواحد منه بالتاء واذا حذفت كان للجمع وهل هو جمع او اسم جمع على قولين مشهورين قالوا ولم يخرج عن هذا الا 
حرفان كماة وكمء وخباة وخب وقال غير ابن الاعرانی بل هى على القياس الكمأة للواحد والكمء للكثير وقال غير هما: 
الكمأة تكون واحدا وجمعا واحتج اصحاب القول الأول باتھم جمعوا كمأة على اكمؤ قلت: : وقد جاء الجمع على اكمؤ فى 
خدیث ابی هريرة عند الترمذى - (ز اد اللعاد رخ ۳/ ص۱۸۱) 


بک ٣م‏ لک 


متصید نیو ںک می راس من و سلو یکا حص تی چو نی اسر اتی یکو عطاکیاکیاتھابمہ يبان 'قصور بنكو 
الل کے کے ساتھ الدب دینا کہ یس من و سلو ی بی اس را کو عحنت و مشقت کے بخیر حا کل ہواتھاء 
ای رح مہ کی اٹہ تھا یک ايك الى نقنت ےک ا سكاف کے لئ انا نک رکون عحنت اور مقت ثيس 
كل يذل بلك خودروے۔ 
بض حطرات ن ےکہا کہ حد بی کا مظنب ہے س ےک وات یی بنی اسر انل کے من میس شال 
یت اہ ری الفاظذ ای تر 7 کے زياده تریب ہیں اور ہے بات عقلاً بعر کی یں ے اس لے 
عد ی ٹکواپے اہ رک ن سے ہا ےک بظاہر ضرورت نیس ہے ری ہے با تک انض روايات می آ تا ےک 
من یں شک لک یکول چ زی فو ہو سنا ےکہ من می کی چ یں شائل مول تر یں نی ہواو ری بھی 
1 پارے میس حضو ر اتد س صلی اللد علیہ وک مکومیہ بات ار شاد فرمان ےکی ضرورت اس لئے بھی 
یل 1 لك ر ب ات زم نکی چو کفکہاکرتے تك اور ایو چ ہے یتس لوگ اسع كعات ند کی ںکرتے ے_ 
ا 9ا E‏ ا 
بول مخررح ثم اور دودح يبداكد نے وال ہےء ب رنيال ا کا لیپ مفید قرار دیاگیاے ء خون بڑعائی ے٭ 
جد ید مشاہرات اور تر بات سے کی ا کا افاد یت وا لح مور تق ہے چنا نچ ورپ و ره کے ہو ٹلوں میں 


اس کاشار نبول 3 شول میں ہو جاہے ‏ اب اس خوداگانے کے طر لايجا دکر لئ گے ہیں اور ا کاو 
ا یکا روپار مو ”اب 


لین یہاں ہے پات یاد رک چا ےک ھی کے جس طر بہت سے فود ہیں ای طرح اس س 
بض ضرر اور نقصان کے هلو بھی ہیں نض او قات پیٹ ٹس خر الى اور اعصاب ب كنزو ر کپ راک کی ےء 
رسي اذا تك عا ئی مو ل ہے اس لے یہاں دو با تمل ذ من می ر ہنی چا پیش ايل کہ جییم اک يبل عر 
کیاکی اک تبك پیاسوں ہیں ہیں ,ان میں سے بض مفید ہیں اور بض مر ملا سفی ركب یکو مفید شا رکیا 
۱ گیا سے او رکالی يحترى والى ی (ججے ا طپ اور با ی زبان و نید پیٹ را کہا جات کت یت 
عد یش نل یکی تتام اقا مکو مع وسلو ی میں سے قرار وين مقصود يبل سه 

دوس ری بات ب کہ جو ہیں مفید ہیں ان میس ے حش الى بھی ہیں جو اكبل استعا کی انآ 
اقصان د ر ہیں اور دوس ری اشیاء کے سا تخد ماكر استعا کی حال فو فا کہ منر مو فی ہیں مشلا این | یم رح اللہ 
ویر دن لھا کہ ا كو ہکات وت اس کے سا ته صعت كوضرور شا لک نا چاہیےء یہ اس کے لے مک ہے۔ 

يرج جز كل بھی مفید ہو ا کو زیادہ متققد ار می استعا کر نا مضل او قات تصان دہ مو ےء ای 


يإ ۳۵ نج 


ررح مفید جز بض طبیجوں اور ماجوں کے لے مع ربھی ہوسکتی ے_ 
كب یکو نس كان يا ےک کھانی چا سے كل جز کے سا تخد كعالى پا سے او رکش مق ہار کیان 
چا ىہ سو الات اك ہیں جل ن كاجو اب اطباء کے ربات و مشاہ رات پر ججوث دياكيا > ايزا اک رکوئی خی 
کی راے کے بیز استعا لک جا ے اور اح كول شان ےکی میں کے مخھورے سے 
استها لكر نے کے باوجو دی تان كار جات ہے ی کاپ اس کے بي بک لی ےہا کی 
وج سے صد ی کی صداقت پ كول رف نی ں آ۔ 
يبال پرابن! خ رتا ےت اف کہاگ رمیا می نکاحصہ ہے جب اص انل پہ 
ایند تی یکی طرف ے ازل ہو کی شی اس سل ننتعدمان اور ضر كاي يبل وکہاں سے اء اس صو ر ت میں لو 
اك ٹر مض ہونا جا ہے تھاء ان | یم رح الد نے خودہی اس سوا یکا دق یل ے جاب دیاے E‏ 
ال یہ س کہ نض او قات ج بكو ل چ ڑ شروش روغ می آ ن ہے تووم سراپ تیر ی مون ے لین اس عام 
یش رت ے کے بعد ان كل اشیاء اور اسباب سے سمل واسط سه دسي سے دوز ا نکااث قو لكل ے اور 
لول اس میس ننس فتصانات بھی شائل ہو جات ہیں اور ن اسباب کے ا کی وج سے امك اشياء یں نتصانات 
پیل اہو تے ہیں ان شی سر فو ست بن ول کےمناواور ان سے سر زد ہو نے وال ادتقا ىك ع فرمانیاں ہیں _ ٠۵‏ 
بج یکاما یآ مول ے شفاے 22 ال صد بث مل دوس مرکا بات عي ار شاد فربا کی 
ےک ہتعھی کاپان اموس کے لے شفاے+اس عد ی تک نٹ رج یس بض حرا ت نے ے کہا کہ يبال 
كب سے مرا تھی سے لیا وال بل ہے ہگ تع کی بيد اك کا سب بے وال یبارش کا پل مراد سے 
ين عام شار مین عد یث نے اس نٹ رج کو الفاطظ صد یٹ سے بی قراردہنے ہو ے اس سے اتاق یی نکیا 
کیا بی ےک يبال شی کااپناالی ھی مراد سے اور ا یکو تحمس کے لے شا قراردینا مقصودرے۔ اگ کی 
زمانے تك اطباء کے تج بات اوران کے م ے ای کے امون کے لے مفید مو ےک تقد لق نیس ہو نی تو 
اس سے متا م وکر صد ی بیس دور ورا زک جاو ل لکار استہ اخقیا كر يناك ول يشر یدوطرزکگر أبس تاليا - 
نز بن تم ررحم اش نے چان یناور ان کے اسحا کی اور دوس رے شض قر یم اطیاء کے وا لے 
سے نك کیا کہ ا كايا ديه (آكلك وكعنا)ج كر ىك وجہ سے مو اس کے لے مفید ہے اوري بیدا یکو تی کر تا 
' او رگکھار جا ہے عل طور ير جب سے ته سمل ڈا نكري ںکر 1 گھوں مل ڈالا چا ے۳ 
تک یک ایک عد یت میں رت ابوج رمه ور من اللہ عت كااينا جر ہہ ذك کیا گیا س کہ ا نکی ايك 


(1) هنظ بد :واد" أل ۲ ۸ا امم ..(۶) لاحت بمو : نزاو لعا رج ٣‏ ص ۱۸۳ 


۱۳٣۷ کے‎ 


ای چت ر ی کی حط رت الو پر برو ر فى اللہ عنہ کے تحب کاپان چو کر بيه دن ا سک ٦‏ ھوں میس ڈالا ادم 
تر رست ہ وکیا ی طر كلام ووی ر حم الت نے اپنے زماضہ کے یح مشا ے و ایا ےکہ تی ان 
کے استعال سے ا نکی دنا لوٹ آئی _ ۷9 

جد یر مثيابر ارت اور جج بات سے کک ہے بات سان آئی ےک یش جا و وو 
ةين فى یک ص کے بای تا كلمو ںکی بض اع راض میں هغيد ہوا بی از تاس نہیں ہو مہو يق 
طر لت ملاع میس و ز پر بل یھی پر بی تش ادو ہے جیے اتا مع جن علامات کے ے اعا لكل حال ہیں 
ان جن سر میں پچکر آناء رو کی بر کن متم کام سے آگھوں پر بوچھ يذناء ایک کے دو أظر آنا يللي 
پٹ يج اناشا ل ہیں © 

امي فد كم وجديد بی تج بات د بھی ہو تے نب کی ا 22۸٦‏ اوسن 
سے نأك ال یں دود درا کی وی شك جائے الل ےک ايكرت مد تاجهل ايك چٹ رک اديت ضور 
ات ی صل اللہ علیہ و كلم بیان فرماتے ہیں٤‏ ايك عر سے کک اطبا يج تلم أل رضت كن 1 کار ۓ 
5 ت اور تقيقات سے کی ا یکی سهان نا بت ہو جالى ے اہن اعد یت ل ییا نکر دہ تمیق تکو اگ رآ رج اطباء 
اور سا نس دان ور ست صلم نہیں اق د لك لكر ليل ء مار ااعنتا دان کی اور س نی تخقتات 
کی وجہ سے تل بار حضور ات س صلی ال علیہ و کم کے مہا رک ار شا دک وج سے ے۔ 

-----)۲٤(‏ وعن عبد الله بن جعفر رضى الله عنه قال رايت رسول الله 

صلی الله عليه وسلم ياكل الرطب بالقثاء ‏ (متفق عليه) 

رم 0900 رت عبد الث ین فر ر ی الف عتہ فريس ہی ںکہ جل نے رسول الد 

صل اللہ علیہ ول مکو وکاک آپ وري ككزى کے سا تخاو ل فرارے تھے۔ 

کی او رورم اك کھا كار يقد ووس کی روات مس آجابت داك تاکن بن کے یت اور 
ايك اس ل ےا مر دوفوں نی هد میں جع ہو پا یں بل روايات عل ناي كور آپ 
جا عد ین یاو کی س ےر شن 

رو فول چو كواس ط رخ ملک رکھانے میس ایک فا توو ےک بورح رك 
اور زی مر د دوو کو کر نے سے اعت ال پیر امو جاتا- ) 
: ... (۴) تفیل ملاظہ ہوا طب وی اور جدید سسا كل جا | ص ٠٠-۴۹۰‏ از ڈاکٹر الم غزنوى 
(<) لبا یر۹ / ص ۵۳ ...... (0) اب ریت ص ۵۴۳ . 


irz 


دو انا دمي کہ #ور كل ا کی وج ے اص رک تيز ادر ہار ی ر ہو تا 
ہے ج بک کی یی مون ہے دو كلاذ سے ذا قد شل ہت ری پیر امول ہے اس سے معلوم ماک يه 
ضرورى نب نك انان اشياء کے تد ر فى ذا گے بی سے ستتفید ہو بک لف چز و ںکوملاکر ناذا کہ كور 
بھی حضور ات س صلی اللہ علیہ و كلم سے ثابت ے۔ 

ان دو ول جز ول كو نلا كر استعا لكر ف كا الیک فا تہ نضرت عا كش ر صی اٹہ عنہ سے بھی مر وی 
ہے دو فر ال ہی ںکہ می ری ر تق سے قبل عير وال د نکی خوائش ہو یک عي راک دزن بڑھ جا اور عل 
مول ہوں جلال» کے ببت ہکا کی کی نكو ذا دوہ ہوا آت رکار جج ےگگڑی او رجور بل مک ركبلا ىكم 
ع ل رعو ا 9 

۱ اک عد یٹ سے علاء ف اال بات بے بھی استد لا کیا كه ايك قت عل ملف انوا كما ذه 

کھانا جاتڑے۔ 

(ہ٢)‏ ----- عن جابر رضی الله عنه قال: کنا مع رسول اللہ صلی الله عليه 

وسلم بمرالظهران نجنی الكباث» فقال: عليكم بالأسود منه فإنه أطيب» 

فقيل: أكنت ترعى الغم؟ قال: نعمء وهل من نبى إلا رعاها ‏ (متفق عليه) 

تع رت هابر ر مک اللہ عند سے رو ایت ےک تم تضور اف رس م کے سا تيد 

مر اران( کہ کے قريب ایک جل )شل لو کے دانے تتبن ر ے تك , حضور ارال ع 

نے فرمایا: م ان ۳س كا سك دانو ل كو لو اس كك وہ زياده اتتك (اور لزيز) ہے ہیں 

۶ر یک ایا :کیا آب ريال چ کے حك ؟ ف آپ نے فرايا :بال او رک یکو گی ايبائى بھی 

سے لس جم ریاں تج ال ہوں۔ 

لبش تير بقار ی کے حش ول عل ”نورق للا راک “لی بیو کے چوں ےک یکئی سے لیکن 
راہ ہے كباث شمرالار اك کے ہیں مك پیل وكادر خت سک جڑ سے و مو اک بنائی ای ے ا کا 
بل چو دافو ںکی شكل شل ہو جا ہے ہے دانے سے پ کک سیاہ ہو جاتے ہیں٠‏ اس سے يكل اکر ا نک وکھایا ہا ے لو منہ 
فان E‏ ظ 

حضو رات زی صل اللہ علیہ کر ا کا E‏ چو اس ےک ووزیاد٭لز یز 
ہو تے ہیں نے اہ نے سوا لکیاک ليا آب يال پچ راتے رہے ہیں ال لن ےکہ ال ر کید کا" 5 


) ۱ لوداو ع۲ / ۹۸۹کاب الطب و البار ,ح۹ | ی ۳ء۵ 


2-3 ۱۸ جح 


ہوا مو ںکوزیادوہوجاے۔ قور از ر یں صل اللہ عليه و کم نے فرمایاکہ صرف شل نے ہی میں تام ایام 
نے ريال جرال ہیں۔ 


انمیاء کے بكريال تج ان میں رت :- 

الها ياء كرام تماصلا الام سے میاں جاو نے میں علا نے 4 تی ں ہیں فر یں ء م: 
20 کو ا امن استعر ارک ترق کے لئ غوت اور قط م نی تعلقات می کی بہت ام سے ضور اتر ی 
صلی الث علیہ و کم کے دل يل بی آنازدیرے يبل خلوركاداعيه بيد اکر دیا گیا تھا بر یاں جانا بھی خلوت 
کی الیک کل ے اس کہ چاو یکو سو رے ريال ل ےکر تنا ہو ا ے اور شام ڈ عد کا ماند ددانیں 
آ تا ے اس لے لوگوں کے مخاءلات اور زول سے ا سک اکوکی وارز اور تعلق ييل ر چتاء غوت کا ایک 
مر یت ايه ےکہ انان الگ تلك م وکر عبادت یس مصروف ہو جاے اک کے بھی اين فو اد ہیں اور دوسا 
بيد یہ ےکہ غو نکی شل ای ہ وک خلو کر نے وا كوي احا کک تہ م وک میں خلورت اخقتیار کے 
ہو ۓ مول بل ووو رکو عام فو عحیت کےکام او ركسب موش بیس مصرو ف کے ء اس طر لق میں بھ یکی فو اير 
یں »ريال :داسف سے دوس رک ثم کے فوا کد ہت ان ط ر بلق سے ما کل مو کے ہیں۔ 
)۳( مو ہر الد رکا ایک مرا بمو جا ے٤‏ اس جافور کے سا تھ رن سے اس کے اشرات کی انان س 
ھل ہوتے ول ء کر ی می متت مول ہے کمریاں داسف سے ہہ وصف انان میس بھی قل ہوسا ے۔ 
تن شار مین عد بیشن كلها کہ ارك جافور جن پر وار مو اا کا ہے کے جراذ سے انان می تی زر 
بڑائی بھی پیر اہو كق ہے ج بک کیا جچ انے می ہہ چ يل يبد ا ثيل ہو ی۔ 
(۳)........ حا کی ادع ر ادع یھر نے اورا جك کودنے والا جاور ے اس لے اس کے ربو كو قابو کنا صا 
مكل اوراعصاب شک نکام ہے۔اس طرررح سكام میس طبيعدت مس بلا ہٹ بهد اہن ےکاامکان ہو جا ےء 
دوس رك طر فی جافور ٹا زک ے اس لع ا کارا بھی نیس چا اء اس لے ريال چرانے سے ل برد 
باد ى اود شقنت و تیراو صا فک ت میت ٢و‏ لج جو تن راد د ات کےکام کے لے بہت ضرو رک ہیں۔ 


حضوراكم مدکی نواشح او راہ ہے انی :- 
اس عد یٹ سے ہہ بھی معلوم ہوک 1 خضرت صلی اذ علیہ و لم یاب کر اخ کے سای مل ع لكر 
اور بے ملف م وکر رہ اکر سے سے اور پر طرع کے مو ضورع پر صحابہ سے با کر کے ےء مصنوگی اور عرق 


1 
ع 
1 


مات وو قادت دد رر ے -ك- 

)050 -----وعن ابن عمرء قال: نهى رسول الله صلی الله عليه وسلم إن 

يقرن الرجل بين التمرتین حتى يستأذن أصحابه ‏ (متفق عليه) 

جر ......حضرت این رو شی افا عنہ سے روا يمت سنك یکر صلی اللہ علیہ و صلم 

نے اس جات سے مجح فرمایاک كول دی ود ورون لراك کر کے مھا يان ع 

ايسا بو لست اجازت لے نے۔ 

2 ...... ال یل بل بات لوي ےکہ حتى یستاذن اصحابه کے بارے ٹل اخلاف ےک 
ب م فور عد ی ٹک حصہ متت نكر حم صلی اٹہ علیہ و سل مكاار شاد يا ضرمت این رر ی الث تعالی 
عن اپا و ل ہےء اید بیث کے ايك ر اوک شع ہکواس میس تر دد م وكيا سج کہ به جملہ حطر ت این عر 
ر شی اللہ تا ل عت کا ے يا امول نے ٹہ یکر م صلی افد علیہ و کم سے مر فو نف کیا ے کان دوس ری 
روایات کے یی نظرحافظ اہن جرد حمہ الد نے سن الپا رک یل اسل با تكو کوک كي بل رسولی ٠‏ 
اللہ صل اللہ علیہ و کم سے ماغات سج ۹ ظ 

اب حد یی کا عا سل ہہ ہواکہ ۲ خضرت صلی الثر علیہ و کم نے فرمااکہ دو دو كور میں اکر 
خی ںکھانا چا بے او راك ایی اک نا مو ذاپنے سا تجو ل سے اجازت سل بی چا ےآ خضرت صلی الد علیہ 
سم نے جو قران ین ار سے مخ راا سک کد رت تيس مل ر ہو ںکی تو 
عم بحن بھی آ سان ہوگا-_ 


ران يك لتر جر كاده 0 


سے كر اك نز يلين وٹ رضن ل کت 
ادر ہے يك وقت دودو تكو ريل ذال ر اہ كويادوسرو كا تن بھی اپنے پیٹ مل ذال بايا بض او قات 
و #وديل دوسر ےکی کیت مول ہیں این کلیت مول بی نيس ہیں خلا ايك آدى ےکی مہمانوں کے 
ساعن لبور يل بل تو كينت فو مضي فك ہیں يتن میز با نکی ہیں اور ممانوں کے لك کش اباحت ے اور 
سب لواش ن کیا کا برابم تن دياس ليان ایک اود ريت می ڈال باج هلي اس 


(1) ال ار ى فى لطعم باب القران ات مح؛ / ص۹٣٣۳‏ 


MIAN: 


ادو صو لک ر پا ایک وج لي س>- 


۱ کاود دور ے یہ ےی اور شر ہک علاصت ہے شر وكا ن ہو سے کھا ےکا کبت زیادہ لا “اس لے بھی 
0-20 


ترا نک ٠‏ 
ابآ ےک قرا نکا م کیا سے تو نض روایات سے معلوم مو جا ےکہ ابت اء میں 1 خض ر ری صلی 
ال علیہ و ”لم نے قران ٹن ار مشقی د کور میں ماک رکھانے سے شمن ري تھا ليان جنب کیو روں می و سحت 
داك فق 1 خضرت صلی الف علیہ وسلم نے ا لكل اجازت دے دىء فذاس سے بظاہر معلوم مو جا ےک سایق 
كحم موم وکیا کن ہے حيقنت می رأ ال ہے بک عل کی وج سے تلمكا تم ہوا ہے عم میں تفيل بي 
ہ کہ ہے د یں گ کہ ا ود ول میں ووسرو ں کان متلق ہے یا دل »اراس میں ووسر و ںام متلق 
ہے نو دوس رو کی صراحثأيا دلالیۂ اجازت کے بخیر دو دو جور یں اکٹ یکھنا تا ہا سے لین اکر صراحة بال 
سا حبول ے اجازت نے لی جا ےک عل دودد اح و ريل هد عل ڈالنا چاہتا+ول آب کے اجات د 
ديل اور وہ صر اح اچازت دے د میں یا سراح لو اچازت ن ہو يكن د لال اچازت ہو ءد لا کا مطلب بہ ےک ہے 
یقن یا ن ذا لب م وک میں زیا جور سل ب یکھا جا و کا تو بال اٹل حقو ق برا جيل ہا یں کے تو ای صورت 
شل دود وور يل لاك رکھاناناائز نيش ہے :ا کو !ت حضرات نے لوال بھی تح کر دیاس ےک ہگ ربو رول 
کی قلت ہو قي انبر اجازت کے کھانا جاتن نیش ے او راگ کو رو لك قلت نہ ہو فو جر بر اجات کے کیان 
لجاز ہے لان اصل مار قلت او كثرت پر بل ہے بک اکل مارو لال اص رات اہازت پر ے کین ان 
جنات نے فلت اور ثرت پر كم اس لے اگایاکہ عام طور ير ج بک چ کی قلت مول ے و دوسرے 
با ی خوش نیس ہو تے اس بات يرك كول آ وی اپنے جن سے زیاددوصو كر ے لیکن ج ب می پچ کی قلت 
یں ہو یا بھی نا می متقد ارس ہو کی ہے ہر ای ککوپپید ےک نتفي مس ن ےکھالی ہے ات مل ہی جا ےک تو 
ام كول زياد ہکھانے و دوسروں پر ا كالول اٹ تيبل ہو جا 
1 ابوروا کے سا تم وسرو ںاج متحلق نہ ہوبادوسروں اح متلق قو تی لان صر ایر لال 
ا نکی امات موجود سے قدود و جو ديل يازياده جو ريل ملاک رکھانانا چائز بل ہے لیکن خلاف ادب سے ل 


کہ لقنا ہچ 


"١٦١ ٤‏ ا ا وار لين 
کے فلاف مول ہیں ان یس تھوڑے تھوڑے متمولى اع زا رک وج ےکا فی کیش مول سے يز اال صورت 
یش بہت اور اسل ليق س کہ الیک ايك ور منہ میس ذال لیا ناک كول عر ہو اکر چہ مول سا ہو مشلا ہیں 
جلد ی جاناے ل الى صو رت یس دود كور يل من یس ذال ربا تو بك كول تر کی بات یںے۔ 

ترا ن کا حم رول کے ساتھ خض نمی يلد ہریز سك اثر ر ہے م روو جتز کا یک اسیک داد مضہ 
مس اٹھاکر ڈالا جا ا سج اس میں بھی بی تتصبل ہو کیب تید س نے اس لئ کا جك لن چ زيل الى کی 
ہیں جن کا ایک ايل داشہ منہ میں تيل ڈالا ہا مشا بخ ہیں ء ف آپ کی ںکہ قران يكل نا جائتزے اس لے 
ایک ایک چنامنہ می ڈالاس کے ا سکی ضرورت نیش سج قران ہر یٹ ہو جا سے کی کہ آ كيل سف کر 
رہے ہیں اور دو یں الح ہیں قز نحا مر سك آپ نے بھی ان ی يني دسي ہیں اود آپ کے برابروا سه 
نے میا ات ا ييه د ہے ہیں اب دوفو لكا تق الل ميث پر ہےء آپ اپنے نی سے زا لی اس انداز سے 
كل یں ا ل ر کی و تک بر كار باج یک ركد لیس اس انداز 
كد آپ کے “كاب حص دو سر ےکی سیٹ ير جلا جا اور ا لك وج سے وو تنک ہو فو ہہ کی اس قران 
س دشل ہو جا كاج ممنوع سے اس کک دوفو كا تن ملق تاور آپ نے اپنے تن ے زائد لے لیا 
اس انداز ےک دوس ر لكر الى او رنحلیف ور ہی ے بال ابت اکر ا كوك الاو رتكلي فت ہو خلا بے کلف 
ما تھی ہے لقن ےک وتيف حوس يكسيو اناد للا ےکہ وک لکر بھی بيد چا د ین یی 
نیٹ کنیا فک لآتی سے تپ کول حرج یں سے ای طرتے ساك غير افقيارى غور الي ہو جا ےک 
ê‏ ےئ کر زی ات سان 
اناگ ركى آدئ یکا عم معت ب حعد سے تھی زیاددہو فقذاس کے لے بتري سل دودو میں لهب 

0م -----وعن عائشة (رضى الله عنها) ان النبى صلی الله عليه وسلم 

قال: لا يجوع اهل بيت عندهم التمر وفى رواية: قال: ياعائشة بيت لا تمر 

فيه جیا غ اهله قالها مرتين او ثلاثا - (رواه مسلم) 

مر کے رت عا کش ر شی اللہ تعالی عنيات د وات ےک ب یکر مم صلی اللہ علیہ 

و لم نے اد شاد فر کہ ایی كوا ل کو کے عش جو تق ےا ر موچور ہو 

اور ایک رایت ےکہ آپ نے فرمایاکہ ا عا كش ایاگرجس میں جورم نہ ہوں اس 

گفردالے بھو کے ہیں می بات آپ نے دوم جیا تمن مر حبہ فرمائی۔ 


کے ١۲‏ ہج 


تر ...... اس عد یٹ کے مطلب می بھی دجی دواحقال ہیں جد سرك وال عد یٹ عل تھےء پہلا 
الي سك ٦‏ خضرت کيا مقص ركورك رعاو رآ ری فک نا ےکہ یہ ات اہم یز ےکہ نلك ميل 
اور چ ڑ یں موجودہیں يكن جور ہوجو ر بال ے توي ھوک ا كرس اندر بچ وک موجو دے, ووسر امطلب 
اور یی ران ےک 1 خضرت صلی ارثر علیہ و مل ما متقصر تنا ع تك تر غیب دنا جك جیما جا سے اک يراكفا 
کر ہنا اہ بلاج انی غربت اور تک وسق کے تورات میں تلا بل ونا حاجنال زہانے می ا صل میس 
كبو عام تی ا سکوذرابلگی اور ستمولى یز مھا جات تھا آپ کے رہ ےکا متمد ہے س ےک كمع لگند مو یر ہ 
نبل سيا اود اتی یی كعا ف كل یں ہیں لیک ن کو رہ موجود ہیں فون مت سوچ وک جم بجو کے ہیں 
غریب ہیں ء تك دست میں بک ہے خیا لک وک اللہ تقال نے کو ریس بی دے دکی ہیں پیٹ گی رن أو بر حال 
001011017 ا زور ےد 

)۲۸( --۔-۔۔ وعن سعدء قال: مت رول اھ اه يقول: : من تصبح 

بسبع تمرات عجوة لم يضره ذلك اليوم سم ولا سحر ۔ (متفق عليه) 

ہے اح حور رت مي رت اشع نرت ون قن نل رمو ا ا 

وس مكو فرماتے مس سناكم جد آدى کی کے وقت سات ہو ہجو می كما نے فو اس دان 

ا كو كول زج رق نتصان نیس د ےگا ركو جاده بھی نقصان کیل د ےگا_ 

(۲۹) -----وعن عائشة (رضى الله عنها) ان رسول الله صلی الله عليه 

وسلم قال: إن فى عجوة العاليه شفاء وإنها ترياق اول البكرة- (رواه مسلم) 

رم جج خضرت ماشہ ر ی الذد نپا سے روابیت س ےک رسول الثد صلی اللہ علیہ 

وم نے فر یاک عالی ہک جو ا 


وك فضياءت :- 

ان دو عد يثول عل رسول الہ صلی اللہ علیہ و كلم نے جو کی فطيلت بیان فرمائی سے بج جو ری 
ایک اص نشم جو ل ےم ین منوره تيل بھی ہو لى کی اور اب بھی ہوکی ے لیکن مد ینہ کے علاو هاور ککوں میں 
بھی ہوکی ہے مھ ےکی بجو رگلت می ل کال سياه ہو کی سے اور و راگ لوک طرف ال مول ہےء ان عر يول 
بس مطلقا جو کی فضیلت تال يللد مر ہی ےکی ہجو کی فضیلت بیا نکرنا عفصورے۔ دوس ری روات می بوچ 
المالی کا لفظ ےء اگل كل ديد نم کے ووا ان کے الى وف تاجوم یع خوروسے أشي کی طرف 


کیا ۳ 2 


تھا کو ساف کہا چا ا تاو ر ووسر احص وہ تھاجو یر بيد مور و سے بلند کی طرف تمت عالي کہا جاما تمااور ا © 
طر فك نيال آ ہاو تحمل اور ان نبول کے بمو ےکو عوا کہا ہا تھاء نو مھ بین ہکاجو سافلہ تھاااس یل اص 
اتقات او ربھیتیال وغی رہ یں تحبل اور جو عالیۃ تھاڈ راس رسینر تھا اس سے معلوم ہو اک 1 خضرت صل اٹہ 
علیہ از اہو ید نے تج 
رز و وال ی کے اتررمولى ا ررد ُو ور 
اك فضيلت میں دو اتیں حضو راز س صل ال علیہ وسلرنے بیان فر ل : 
(0-........ ایک تو ےک ال کے اندر شقا سے شفاء مون نو مطلقابيان فرب کہ جحل دق ت كال پا اور ل 
تراد يل بھ یکھائی ہیں بال ابت حضور اقرس صلی الثر علیہ و صلم نے ىہ وضاحت تبس فر مالك کون ی 
پیا تی سے ضفاء سے او رس بہار ی كل طر لے سے استتها لکر نا اہ ا کو 1 تمض رست صلی اللہ علیہ و كلم 
نے كرس پر مھ وڑدیاے۔ 
(۳).......... وومم سے اھ سح ھن کے بارس میں وويا تيل ار شاد 
فر ل :ایک فو ےکہ زب رکاتیاق ے۔ دوس یا کہ زج ر کے لئے حط ماق مكاكام دی سے لکن تماق بو 
اال ونت ہے ج بك ا كو تع کھایاجاے ای طر ہے سے حفط انق مكاكام بھی تنب د كج يكم اسے 
6 کھایا جاۓ اور سا تك تخد اد س لکھایا جا با ری یہ با کہ سا تك تخد اد يل اور زر سکیا 
مزاسبت ے فو بظاہرہہ معلوم ہو جا ےک حضور قرس صل اللہ علیہ وسل مکو وی کے ور ييه اس می كول ا شیر 
تا گنی م گی ا سک بنیاد ر ٦‏ خضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ بات اد شاد فرمائی الببت ہر چ کی ار کے لئے 
1 ہیں ن کہ جو ہجو رک ہے تا رک ہے زجر کے لئے تیان سے اور زہر سے فو ر نے 
کے گے حفظ مان مكاكام ديق ے اس کے لے بھی جک ریس مول اورووش یں تر بے پر چو زی یی ہوں 
ایز ااک کی يل بر یہ اث حو د ہو فذدویاتواتاداور ایا نک یک یکی وج سے ہوگگاااس وج سے مول اس اث 
کے ےکور می دوش طدوہاں نیس يالك 
تی رک بات 1 فحضرت صلی الف علیہ و كلم نے یہ بين فرما کہ جآ دی ضس کے وقت سات عرد وہ 
رن كما ے نے اس دنع اس ب چاد وکااڑ نیس بہوگاء اال سے بظاہر قویچی معلوم ہو جا کہ ہے بات آي كو ٠‏ 
بذ یہ و کی جلائ گنی ہ دك جاده کے میاو اور جو ہجورم كول نخاص مناسبت موی الت ز ہر سے حا یکی 
كل بھی ايك وج ہو مت ہے دهي ےک ور شل طاقت بہت زیادہ ہو لی ے اور جب طاق آ ےگ قو م 
کی قات بد افعت بھی بڑھ جا ةك ءاكر قوت بد افعت يذه جا ۓےگی لآم کے لے زج ركامقابل آسمان م وگال - 


rr 


اس ے معلوم ہواکہ ز ہر سے جاتب کی و گاکہ دہز ہر رت ا شك ین سے عل ونت 
دافعت پیر امول ے اور اکر اس کے جم میں ودح قات مد افحت تھوڑی بيدا ہو گی سے یا يد ھی بہت 
تھوڑی می او جود رکھانے سے وو یھب کی ہے يان ی ہوا ال سے پر ك یکم سے پچ گر جر 
کھا لے تو لون ل ا 

( ۳( -----وعنهاء قالت: كان يأتى علينا الشهر مانوقد فيه ناراً إنما هو 

التمر والماءء إلا ان يؤتى باللحيم ‏ (متفق عليه) 

ر فی محضرت عائکشہ ر شی الثد عنہا ف رمال ںکہ ہم یر نل او قات لور الو را ہی 

گزر جا ھا ماس میس ہگ ٹیس جلاتے تھے باک صرف جاور پل ہوا الا يك كيل 

سے تھوڑا ساگوشت آہاے۔ 

و ...... شاو قات لور الور ا ہی گر جانا اک ہکھانے کے لم كول جز موجوو ثيل مول 
تھی صرف كور اود پان بے یزار اہو نا تھا ال بھی بھی ہر بے کے طور پر تھو ڑا سا یں س ےگوشت آ جانا تھا 
ای د نگھ ریش چو لہا یل کی نوبت آجالى ی ءگوشت پیا لت سے ے عل يكيل با چک ہو لکیہ ابق اء ہش 
لاون ے عو الات کی سے تھے :سو اس زا مس از وا مل ات کے لئ بھی تق تی کن جب 
گی عالات بتر ہو سے لا کے بعد آ ضرت صلی اہ علیہ و کم سا کا فق كاف مق ار میں اکھٹا :ےا 
لنت الب زواج معز رات مان فا ر د اور قرزا کر ل تحن ان ےد تك فول گید 
ان کے اپنےانقیار سے ہوئی کی ب یکر یم سل الہ علیہ و کم نيدن گی مس نہیں ڑا لت ے ۔ 

(۳۹)-----وعنهاء قالت: ماشبع آل محمد يومين من خبر بر إلا وأحدهما 

مر عكر 

ê‏ : رت عا كش صد یت ر ی اللہ عنم فاق ہی کہ مہ مل لوالو 
وا رض 
۱ مطلب ہے س کہ اول تكن مکی رول بيك بجركر طق نيش تھی دو راگ بھی مل بھی جاتی تی و بھی 
ایا نیس ہواتھاکہ دوون سس لگند مکی رول لى ہو اور پیٹ بكر کی ہو بل اکر ایک د ند مک رو یٹ 
ب رک ل کی کی ووو سر سے و نمجوروں يرت یگزا راک نا یڑ حا تماد 
(FY)‏ -----وعنهاء قالت: توفی رسول الله صلی الله عليه وسلم وما شبعنا 
من الاسودین ۔ (معفق عليه) 


ہے کک حضرت عا کش ر ی اللہ تعالی عنہا سے رایت كم رسول الث صلی الله 
علیہ و مل ما اس حال میس اننال ہو اک ہم نے جو راو رای سے وفيت كان رن 
تغليب - E E‏ یت کون 
کل ہو کی ےط اگ چ ركالا يل جو جا ليان عربول کے ہاں ايك اسلوب چت ے جو تغليب كت یں 
ین دو نزول کے لئ بض او قات الاك ت بو ےکی ضر ور ت مول لين دونو ںکوایک ب گم مس 
کر کے ایک می افظددووں کے کے بول دیا جانا ے يبت ماں او رباب نو ماں کے لها کا لفط ہو نا اچ اور 
باب کے لے ا بک و نا پا کے لبذ اجب مال اور با پکا زک کر نا ہو فق أب و أ مکنا چا کے یاو الد ووالد كينا 
ہے تھا ليان اس میس ذرا تطو لى مو ہا ے اس لے ما کو بھی باب ب یکی رب فر كر کے ابو ی کیہ 
دیا چات ےی دو نو ںکوداللد لی کہاجاتاے مالا كل والد بین ہے صرف وال رکا زر ے والد ہکا میں كوك 
والروكا شر نو والدقن آنا ہے۔ ای طر رت سور اور پا ند کے ے الك لفت بو لے جانے جا گی کر شس 
تر کن آسال سے لے دونو كو تر نكب دیاجاتا ہے ای طر ہے سے یہا کور اور یی کے ا 
الک لفظ بو لتا پا ہے تاور کے لے ت رکا لفظ ہو تا یا اسو وکا لفظ ہو تاور يإلى کے لے ما کا لفط ہو حا ”اسودو 
ا “مین "تغلب يأو ونو ںکواسود ين كب دیاگیا۔ ۱ 

ما گل حد بی کا ہے مدال ہار ا پیٹ جور اور یا سے بھی نہیں برجا تھا جور اور یال بھی پیٹ 
بر ےک مق ار بل موت ك- 

سوال 06 و نر 5 قل تی زمانے میں دتى ےکہ پٹ 
ور ےکی قدا كجور بھی ثيل للق یکن يد مور لباك كريد لے تھی نيان اتی قلت ثيس ھی 
کہ پیٹ بر نے کے ے تھی پان نہ سن كب ]ب دیاکہ ہعاد اجو او رياس پیٹ کس کر تھ؟ 


ER 0‏ 0 8+ بھی تفلیباک ىك ے۔ 
)۲( ...دور اچاب ےد گیا ىكم ل ادت گی لسوت قر رک پا اس صورت یں ہے تے 
ج بک معتد به مقار یں يك ھرکھایا پیا بھی ہو اور ہہ یگنت ھےکہ نال پیٹ يال يننا عر ہو تا سے ا اجب جور 
كه ےکو ننس علق کی نو انی بھی احتیاط سے پیا جا تناو رجور تحور ی علق تى قو إلى بھی تمو ڑا پیا جات تھا اس 
ےکا شیک کہ نہ کور سے پیٹ سے تھے ادن یی سے بيد کے ے۔ 

الفائا عد یٹ کے علق ایک وضاحث --- يهال پر ایک بح ہے کہ اس عد بیث کے 


کاو 


پارے میں صاحب مکوح نے ”فن علیہ “کہا ےکہ ہے حد بث بغار ی لور مس مكل ے ج بک بغار ی می ان 
فظوس کے سا ہے ہے عد یٹ موجود بل ہے بقار کی می خضرت ما کشر شی القد عن ہاکی صد بیٹ ہے يان ال 
میمت خلا ايل بل بخادى کے لفط ہے میں: توفى النبى صلی اللہ عليه وسلم حين 
شبعنا من الاسو دین ۔! ۱ 

وو ری جل بخارى کے لفط ل : توفى النبى صلی الله عليه وسلم وقد شبعنا من الأسودين ^ 

اس سے اوی بات بج ل آرت ےک 1 خضرت صلی اٹہ علیہ و سلمكاجدب انال ہو اسے اس و تت 
حم پبیٹ برك بوي ںکھانے اک گے تھے می با کہ تمل پیٹ و رک ركبو ريل بھی نيس لق تس ار کی یس 
موچور تيبل ے لو پچ رصاحب مكلوق نے فق علي ركيت ےکہے دیا؟ 

ا سکاجواب ہہ س کہ یہاں مکو کے دو ل ہیں بن ضفوں میں يبال فن عليه اور 'حض مون 
کی دو سلم ددرا زا کس اور سم لداعي ميث موو چ کنل ی ان 
لفظوس کے سا کے بھی ىہ عد یٹ ن کور سے نتن لفظوس کے سا تھے بخارى یس ہے 

شاش 3 00ر 

ے ”شبعنا“ اور ایک ں آ ت ے ”ما شبعنا “ان می سے کون سا سے و حافظ این جج رر حمہ الہ نے 

a e E اعيمنا 1ت رت‎ 

اس ل َك اک زر اوک اک طر لے سے روا تكرح ہیں ”ما شبہعنا“ کالفا صر ف ایک ر اوک الو 

ا اھ ری روات کے عن ای کے غلاوه وی ادر رای ی کات وت کن کا نی لك ا و 

روایت ہے جس شل شب ع كوخا بتكي اليا ے اور ا یکی مز بد تاميد اس بات سے مو ی س ےک ابت اء ل وای 

تجورو ںکی بھی قلت گی يان ع تبر کے بع دودو ںکی قلت م م وكق- چنا نہ بخار کی ایک ر دات > 
صحابہ فر ست ہی ںکہ جب تیر ہوا چم ن ےکہاکہ اب تم كبو کا کم پیٹ کرک رکھال اکر بل کے ۵ 

(r)‏ ----- وعن النعمان بن بشيرء قال: الستم فی طعام و شراب ما شئتم لقد 

ا عو رد و زرو ينل 

کچھ ...... حضرت تمان بن بر ر ی القد تخا عند سے روابيت ے اول نے فرمایا 
() کار ی فى امت باب مین اکل تی شع ۳/ ص۸۷ ..(۴) الغا ر ی فى الا ضس باب الر طب داقر ۸۰۳ AA:‏ 
خم تاب ارط بان ان معيو ای عزن حم 0 ی2ب مم 
(۵) !فار کی باب غر وچ خيبر تيل باب استل ا لی صلی اولہ علیہ سل على الل خی رخ ٠٠۹ / ٣‏ 


ک كيام ان چڑوں کےکھانے اور ہے کے اندر یں ہو میں ياست مو تار ےی ٠‏ 
یف ل لاعن اال کان کپ ل رن ین ےکی : 
ات جو ری ياست ےآ پ کے پی کم ریں۔ 
٠ ۳‏ دقل ١‏ چو رکی ناص ثم تھی جو ردی اور متمولى بھی الى ى مطلب ہے ےک 1 خض ر ری ض لی 
لد علیہ وک مکو پیٹ بھرنے کے کے موی کور میں بھی یں ملاک تی یں اور س آ مج اللہ تخا نے 
کھانے يي کے لے بت کہ دس رکھاہے جو چاخ م کھاتے مد اور جو پا سے و ہے ہو قاس ب اللہ تل یکا 
شر اداک رتا جا گۓے۔ ۱ 
صرت قاد یرہ اتہک گار ي۶ يفيت باق یں. 
2207 رولك فراوال ہو 7 ۱ 
يهال خضرت لجان بن ابر نے فرايا: لقد رایت نس یکم یں نے تہارے یکذ اس عالت س ٠‏ 
دریکھاہ او تمہارے ب یکیو ںکہا؟ ہے تیر افيا ركسع مخاطب کے ذ جن میس اس با تکی ایت ھائ کے لے 
کیہ جس تفلك می پا تک ر ہا ہوں اور یکی ہے عالت فك کر د پاہوں دوالك جستی ے جن سکو تم بھی ینای 
کھت ہو صرف بے نی كم ہم نے ا نکی صحبت انشا ہےہ ہار ے نی ہیں ٠‏ شی ا نکی اجا کہ جا »ان 
کے حالا لا کوٹ نر کنا چا لہ یں “كان کے مالا کوٹ نر رکنا بای ۱ 
)ئ( -----وعن أبى أيوبء قال : کان رسول الله صلی الله عليه وسلم إذا 
أتى بطعام أكل منه وبعث بفضله إلى وإنه بعث إلى یوما بقصعة لم يأكل 
. منها لأن فيها نوما فسألته: أحرام هوء قال: لاء ولکن أكرهه من أجل ريحه 
قال: فانی أكره ماکرھت ۔ (رواہ مسلم) ۲ 
تر یہ ...... منرت ابو ای ب افصار ىار کی الد تیال عنہ سے ردایت ے ووفرءاسة ہیں 
كا یکر کم صلی اللہ علیہ و سم کے ی ی ج ب کو یکھانا لاي جاحا فو آپ اس ٹس سے بل ےکی 
١ ٦‏ اورا کابچاہوامی ری طرف گن دیتے اور آپ نے ایک دن می رکی طرف ایک با 
۱ پیالہ تجا جحل عن سے آپ نے بك بھی کیا تیاس ےک اس کے اتر ر بسن تھا تو 
س نے تضور ارس صل اللہ عار وم سے سوا لكياكياي ترام ے آي نے فریاکہ 
ت کن پک كا بز لوح ايت ليث رق قرت اوت ارق 
۶ کی اک میس کی اس چ گنپ کر تامو ں لكو آي ناپپن دک ے یں د ' 


لاحات 
بی ال وق تکاواقعہ سج ج بک حضور انز س صلی اللہ علیہ و سم بجر تک کے سے سے م يذ لان 
ست او رآ پ نے حضرت ابو الوب انصا ری ر کی الد تحال عن کے مکان یس قیام فرمایا۔ خضرت ابو الوب 
انصارى کے مكاان کے دو ے تے ایک بك دالا اور ايك او پر والاء خضرت ابو الوب انصارى نے عر کی اک یا 
رسول الذي بات تو ہیں !تھی يل گن کہ تم ادير مدل اور آپ یچ مول ءال یش آ پک بے اولي حوس 
ہو ہےاس لے آپ اون والا حصہ لے لی اور ہم شيل نے میں رہ لیے ہیں آفضرت صلی اللہ علیہ و کم 
نے فريك کل می ر سك بھی يبك رب می سبلت ہے اور ھ سے سے جلك کے لئ لول 1س ہیں ان 
کے نل یتر ل کے اتد ری سے ء حط رت الو الو ب انصارىر کی ال تا لی عند نے ا سے قول رما 
لیا فیک > آپ یں یرد پت ہیں۔ 
ا ا 0000 : 

اس سے معلوم ہو اک أكر ایک طرف اد ب کا تفاضا ہو اور دوسرى رف راحت رسا ‏ یکاتقاضاہو تو 

راحت ر ای کارب اور مره يناجا سج ءادب فو می تاك حطرت ابو پوب انضارى يبك رت کن 
1 خضرت صل اللہ علیہ و مل مکی ر احت اس شس کیک امو الوب انصا کاو ير رسخ اور ٦‏ خضرت صلی اللہ علیہ 

و سے چاچ بد دن وا ی طر بلق سے قيام فرمایا۔ 

خضرت ابو الو ب انصارى ری الد تعالی عند او بر بہت زيادها عياط کے سا تد دست ےک ہیں ۱ 

مارى لیو مرکم تكاوج سے يالك اور چیک وج سے نك ر سول اللہ صلی الف علیہ و سل مکوانکلیف نہ ہو 
حطر ت ابو الب انصار کی فرماتے ہی ںکہ ایک د فد جيهت پ پا ىك گیا ظاہر ے کھت موی شب کی کی 
اب ہے خطرہ تھاکہ وويالى یچ 1 خضرت صلی اللہ علیہ و حلم پہ نی گان مار ےپ س رو یکاایک ىاف تمانو 
تم نے جلد ی سے وہ حاف اس الى پہ ڈال ديا تاك حاف سار ےا یکو چو س سل اور من كول قطره اکر نہ 
گر سے وه لاف سار ایا م وکیا م نے بی اف کے رات كارح كوار اکر لیا کن اس با تک وگو ارا ہکیاکہ 
خضرت صل اللہ علیہ و سلم پر يلكا ليك تھوڈاسا قطر بكر ے۔ جب ضور اتر س صنل اللہ علیہ و صلم 
کواندازہ ہواکہ اور ہو ےکی و ج سے ا نکی بيت كر ال سك ہم 1 خضرت صلی اود علیہ و کم سے 
ا ہے یی اور یہ بت زياد مشقت برداش تکرر ہے ہیں اس وجہ سے 1 ضرت صلی اللہ علیہ سلم 
نے حطر ت ابو الوب انصارىر ی اللہ تھا عدت ےکہاکہ آپ يك چ آجا يل ہما یہ جاتے ہیں 

اس طر لت سے تاد لكر ليا- 


ھا 

کھانابانے اور میا مو اوا کے کل وجوہ:- 

حطرت الو الوب انصارى ر شی اللہ عد کی بڑے بر تخ کے اندر حضور از س صلی اللہ علیہ و كلم 
کے ماتا ےکر جات 1 خضرت صلی ایل علیہ و حلم نے جتنا تخاو کر نا ہو حا تناو ل فرما لمت اور اور بال 
میا ہو خضرت ابو الوب الصا ر یر سی الد عند کے پا ی تامو اوائیں كل کیج تھے کیوں بجاے 
تھے ا یکی ايك او ہے وج ہو کق ےک خضرت ابو الوب اقصار ی ر سی الثد عنہ ساوت کی وچہ ے اور 
1 خضرت صلی اللہ علیہ و سم کے سا تح حب تک و جہ سے کے اتا ياده مول گ ےک ر سول الثر صلی اٹہ علیہ 
و سم سے م نہیں ہو جام وکا 

دوس كاوج ہہ سب ےکہ اکر ہمان پور اکھا اک یکر تو مکردے تو ميز بال نكوي ترود مو کا کے 

پت فیس ہما نکا يبيث كمايا ثبل بجھراہ مو سكنا سے ا یکو زیادہدکھان ےکا حا بدت مو کان بحب وہ ھب کر 
ےک تو میز با کو یفن ہو جا ےک اک ا لكواو رکھان ےکی ضر ور رت ہیں کی اکر اور ضر ورت موف او ہے 
جو بی اکر جیا سے ا ےکھا لیت فو میزبا نکی لی اورا ینان کے لے بھی اس طرح غ او قا یکر ليا 
جاتاسے یہ کیاد بک جات ے۔ 


سن اور پیا کا تم امت کے ك:- 

امن اور بياذ کے تم کے بارے عل اعاد یٹ ملف ہیں شا لع اماد ی شل آنا ےکہ 
خضرت صلی اللہ علیہ و سم نے ا سک وکھانے سے مع ف رمیا سے اور تل احاد یت میس آ تا ےکہ 1 خضرت 
صل اللہ علیہ و م ےکھان ےکیماجازت دی کان ہے فمایاککہ ن اور پیا زک یکر تاس اور شتير کے اندر د ]و 
الل سك كم بد دک وج سے دوسرے تم ينو كتليف مو کی اور سد یل آن ےکی صورت میں فرشتو كو 
ایذا ہو ىجان حتت جايد ر شی اشرع دك عد يهال سے انگل جر يأر ءاس عل يك بات میا نک 
تن نان سے نے ی ا قر می من وس ےی ایت کی نس مین 
یھ كاديال ویر ہ یں اور اس میں لمن ء پیاز بھی تھاء تو آپ صلی اللہ علیہ و کم نے رما :کہ یر سے سے 
کے قري بكوك وه كما ٹیش می نی كعاول گا اس کہ ”فان انا ى من لا تا بی“ یس ان لوگوں ست 
مناجبا تکر جا ہوں جن سے تم سکرتے اب حك مکیاے۔ وہ اماد یت میں خو كر نے سے جو بات گن 
ہے دوي سك ہن اور پیا زاکھانانا چا زنر وہ یں ے بل جات ےک یاکھانا بھی انز سے اور باہو اکان بھی 
با ے الہت اگ کی ا مایا ہو تج ب کک منہ یں بد بو موجود سے اس وت تک ماس يا مسد میس نیس آنا پات 


ےت ٥۵۰‏ چ ۱ 
بيك وق کیا از یا ن كنا چاسے ج بك ال کے بعد مہ میں جانے کاوقت نہ مو ياأكر جانا ہی ہو نی 
ل PEE‏ نکی جع زا لک کے چا بے اور اکن 
الى ط رع پا گیا ت پھر چ کہ ا کی ہبہ یی ہی ضحم ہو بال ے اس لے اس احقیاطکی ضرورت یں 
هب عم امت کے كه ظ ظ 


لن اور ییاز کے پارے کل ضور پل کا ممول:- 

اعاد ييث سے معلوم ہو تا ےک خود ضور اقرس صلی ایت علیہ و سکم باوجود از ہونے کے بياذ اور 
لن سے پر بین زک اکر سے تھے ا كوج بي یک 1 حضرت صلی اللہ علیہ وم کے يال ہروقت فر شتوك 
اورت ر نی تورك بت تب نکی اشن كان ےآ ب مع و لی سے وقت کے لم بھی اس 
با کو يشر یں کر ے کہ آپ کے مہ را سے مسبت 1آ خضرت 
صل اللہ عار ودسلمکاپیاز ین سے پ ہی كنا لک بد وک وجہ سے تاغاب رآ كاي يجي کے بياذ ادر 
امن سے تھایا بي کے مو پیازیا سن سے ها جم كولور ے طور ير ایا گیا ہو اود ال یش ا ىبد بو موچوو 
مو کن جس بياي ”نس کا یی طر ییک ا سکی 0 کوان کے رل ا ی 7 
بھی ييز نہیں فر سے تھ ناي ضرت ماک ر ی ال عاك صد یٹ س کہ رسول الہ سی اللہ علیہ و ) 
ےج آنخر یکھانا تاد فر ايااس کے انر لسن موجود تھا لیکن بظا ہر پک ہو اہوگا_ ۵ 

(۳۵)----وعن جابرء أن النبى صلی الله عليه وسلم قال: من اکل ثومًا أو 

بصلاًء فليعتزلنا أوقال: فليعتزل مسجدنا أو ليقعُد فى بيته وإن النبى صلی الله 

عليه وسلم أنى بقدر فيه خضرات من بقولء فوجد لها ريحًاء فقال: قربوها 

إلى بعض اصحابهء وقال: كلء فإنى اناجی من لا تناجى ‏ (متفق عليه) 

a,‏ ت ريت وابز و كك اھ ےر ای ےک فى ترك صا ظفل 

وم نار شاد فرمایاکہ ج آ دی نی ہیا كما ساح چا كم دہ ہم سے انگ ر ہے یا 

لول فرمایاککہ جما ری مد سے الگ ر سيا لول فريك وهاسي نكيل بیٹمار ہے اور ی 

کر م صلی ایل علیہ و کم کے پا س ایک تیال یگئی چس یی ان تر كار يول عل سے جازہ 

رات یو ہے 


١ 0‏ )ابو واوو الا شم“ باب فى اكل الثوم ۲ / ص۱۸ 


کا اها ئ 
071 0پ یا ی را كر سك را بان کے ر ا 
اور اس سمالي سے کہاکہ ا ےکھا نے اس ل كل میس ارب ل وكول سے رگوش یکر ا 
مول ن سے تم مناجات کی کر تے۔ 
(5)-----وعن المقدام بن معدى کرب؛ 0+02۳ ۱ 
قال: كيلوا طعامكم يبارك لكم فيه (رواه البخارى) 
رم ملل حطرت مقدام بین معد يأرب پ یکر مکی اله علیہ وسلم سے ردایت 
رت ینک أب مکل یہد سکم نے شدفر اک پکھاے دی يرون 
ناپ لیاکر و ہیں اس می برک ت دی جا ةكد 


کھاناناپ تو لک پاو: - 
وال یہ س ےک ج وکو یکھا ناد ٹیر 7ت پکریاتو لک پیا وا عل بركت موك ٦‏ نش 
۱ 7 0000 
فرت عا کش ر شی انفد عنها فرمائی ہی لك جب ب یکر یم لى النقد علیہ و سل م کا انال ہوا فق ہار ك میس 
تھوڑے سے جو موجود تھے بل کی دن تک اح يكال ری ان يلل ادق برکت مول ثم فيس ہو ر ے ے 
يان ايك دن میں نے | نمال نا لهاو یھت ہی كم ےتا داج حب م لكياا سك مرکت مت رک 
اور ای کک دہ دان میں وو ت ہو گئ۔ 2 
ال ست موم داگ کیل سے يكت نت جل ہیطع کے اود کی اث وات باب 
مز ات مس انار الثر تیال ٦‏ بل کے ل إظامر دوفو ل با تمل ايك دو سر کے غلا ف ہیں ۔ 
اس کے جو اب میں نض جر إن نے أو كبا کہ یہا نكيل سے مراد ركاذ یاکھانے کے وق کا 
كل نے الغ ند ريه سن ےکی ےک کین کر ےپ کن 
کے تو معلوم جا ۓگی اور زا عکاخطرہ نہیں ہوگا EB LER PLE.‏ 
8ھ یف 0 
لیت و بي اندازے سے لے لے ہیں و تادز نکی بفیاد یر موی ين وزن خی سکیا یئ ہو کی كيلك بنياد ر 
(ا)عن عائشة قالت توفى رسول الله صلی الله عليه وسلم وما فى بيتى من شی يأكله ذو كيد الاشطر شعير فى رف لی فاكلت 
منه حتى ظال على فكلته ففننى ( کا ار لتاب الجہادباب نفقد نراء الى صل الث علیہ “لم بحد فان ا ی ے سوسم ) 


يإ کیل ںکیا نو يہ خلاف شر یھت ہے۔ الہ اکر اشارے سے تع ہوگی کہ گند مكالم رآ پکو فر 
ل جیا ہوں اس ب كول رک بات نیس سے کن اکر تي وز نک بنیاد پہ مل سك اتن جز لتا ہوں یا 
ات پاول “ہیس جیا ہوں جب اس سے لت گے فو و لايانايا ثبل ے وذ ىہ خلاف شر لت ے اور ظاہر ےک 
جب تع ہی خلاف شر يدت م گنی تو ای ئل برك تکہاں سے آم ےک ت وکھانے یا کے کے وف کی لکر نام راد 
أبس ے يلل خر ید نے کے وف تك لک نایاوز نکر نام راد ہے الي يتش ربدت کے مطائن ہو جا ےکی ۔ 

يكن ىہ وجي مج رمال بتيد ے بات وه معلوم مول ج ہارے جع بز كول نے ار شاد ف راق 
ےو ےک اسل تل كي ل کر ادوطط ر اہو اے : ۱ 
().......... ای كك كنا سکھان ےکی مقر ار معلو مکر نے کے لے جوا یوق ت آپ تيا ركر تالور چا سے ہیں۔ 
(۳( وٹ دوس راوز انيكب کر اا لکھانےکاجو بے بجا مو اے اک یہ بد چ کہ چیےکتفار کیا سب » پہلا 
کیل باع بركت سے شی جد آپ پان جات ل »جد کال ر ے ہیں ا سکی مقر ار معلو مکر نے کے ہے آي 
دزن و تر ہک ر سے ہیں تو یہ باعث بركت ے الل سل كم ہے ام]ظا مکی و مل سے اس می کی فوائند م سل 
ہو تے میں ء ایک ی کہ كرآب اندازے س كريل کے تو ہو کاک ہکھانے وال تجوز مول آي زیادہ 
باس کھاناضا لع ہو جا ۓگااور ہے بھی ہو کنا ےک ہکھانے وال زیادہ موں اور آي تو ڑا کلاس تس بک 
یٹ نیل کر ےکا بے ا تنائی مو جا ۓگیا۔ 

ای طر سيل سے ار آپ نا پک یا تو لكر نش ہیا لے اندازے سے کال ر سے ہیں و آپ یہ 
ب دس مول سك میں نے خلا آنا تو ڑا کیا ےا پال تھوڑے ر کے ہیں لان یقت میں 
زیادہ خر کر كك ہیں نو جب ثم ہو جا ےگا ےآ پکو ہے اتساس ہو كاك میس نے و تھوڑے تھوڑے 
:ل تھے خت كيت مہو کے کسی ن وکر کی طلا م بر شی کر میں کے يكبل کی آنے دانے پر شی كر ن 
ع کن جب آن أ یکین بے وان ضحم ل ال نك کا این ايزا اا اٹ لزنت ون 
ا کاو زن ا کی لكرناي الیک انتظا مك بات سے اس لئ اس میں ی رکٹ سے ايان جو چیہ بجا ہوا سے خا 
آپ نے ايك كلو ٹا كال ليايا جتنا کالنا تھا كال میا کان اب ہہ دک ر سے ہیں یی كنا يا ہوا سے ہے د یھنا 
خلاف توكل ے اس ے اس میں بے بركق ہو تق ے۔ 

)۳۷( ----- وعن أبى أمامة أن النبى صلی الله عليه وسلم كان إذا رفع 

مائدته قال: الحمدُ لله حمداً كثيراً ا٘طیبًا مباركاً فيه غیرَ مُكفى ولا مُوَدٌع ولا 

مُستغنى عنه ربّنا- (رواه البخارى) 


کک م جس 


ر چمے ...... خضرت ابو اماما ر ی اللہ ععنہ سے رواييت کہ گر مم جا کا جب 
دست خان انمايا ہا فو آي ہے فرراة: الحمد لله حمدا كثيرا طیبا مبا رگا فيه غير 
مكفى ولا مودع ولا مستغنى عنه ربدا ۔ک تام تھی الث کے ے میں بہت 
زیادہآخر بل عياكيز ربل ,ای تق لل جس میں بركت د یکی ہو بس پر اکنفان کیاکی 
مو اور سکی طل بکو چھو ڑا گیا ہو اور جن سے استتقزاءنہ بر گیا ہو اے ہعارے رب۔ 


لف غير اور ربنا کا۶ اب:- 

يهال پر اس دعاك وج اع اب میس مد تین سكاف بی چوڑی تی ںکی ہیں لیکن قر ی بات ير 
بد حت کہ بیہاں ”خر“ پر دواع راب قل کے کے ہیں رن بھی اور نصب بھی ای طر بے سے ”نبا اس میں 
بھی دو اعر اب مشهور ہیں ایک رفح اور ایک نصب۔اگررہاکومر فو بيس قوز ياده ہبتر ہہ ےک غ رکو بھی 
ر فو پڑھاجاۓے اس صو رت میس آسا نک کیب ہے سك رتا متداء مخ اورغیر مکفی ولا مودع ولا 
مستغنى عنهء ىہ شر مقد م ہے اب مطلب ہہ ہو كاك بماد ارب اليا بس سے اکنقاء کی كي کیا کو 
كول او ركان تمل ہو جا ن دہ تو دوسروں کے كال ہو جا سے دوسرے اس کے كال ثبل ہو ہے اس 
ل کہ ا سيکودوسرو ںکی ضرورت ل ہے اور ہما ر ارب ایباسے مج سکی طل بكو ہم نے يووا ال ے۔ 
کسی بھی وت ا لک طل بکواور ا ىك ر ضاکی طل بكو نیس يجوش کے اور ہمارارب ایا ہے جس سے تم 
بھی می نہیں ہو کے تام تھ یی ای رب کے ے ہیں۔ 
۱ دو سر اقول زیادہ ود اور داري کہ ت رکو آپ منصوب ر تيس فو اس صورت میں ب حال ہوک 

می سے مال ہے اسم لک اال ہیں: 

()........... ایک احالی ىہ کہ ہے حال سے مر سے فو مع وکاک ایی عر شس پر اكتتفاء خی كي اكيا ملك ابيا 
یں ےکہ اب لو ہم نے جح کرک اسك وكا بجھ ليا بل آ تنه بھی ع کر ے ہیں کے اور ایی جر تج كل 
طل بکو بچھوڑا نی کیا بآ تہ بھی ہم اش سے ج کی فو مق کے طالب ہیں اور ایی جد جس سے تم اذ 
آ پک و ی نہیں ببھتے۔ 
()............ دوسر اا حال ہے س ےک ہے حال ہو لفظ ”الد “سے اس صصورت میں وتى می ہ وكا جو رين الو متتراء 
00420۶ ال صورت میں تھی ي مارے ادساف الہ تال سك تھے اب کی ب 21 
او صاف اللہ تقال کے مول گے_ 


8 ہ۵۸ تج 


e (r)‏ تی رااخال مہ کہ ىہ حال سے لفظ نطعام “سح اگمر چہ طعام ييل ب كور كال سے مین انيه 
مقامیہ سے جد یں آدبا ےکی وکل ہکھاناکھانے کے بعد ہے دعاء يدق جار بی ےہ فو مطلب ہے كم ای 
کھانے ب تم اکنا أ کرت كم او رکی تيل ضرورت ال ہے بده ضر دت سے اور تم ا کی طل بکو 
بجو ڑ نے دا لے نیس میں بک الد تھا ٹی سے مر ید کے طالب ہی سک جنے اب اقل فر مایا1 مد بھی انا فض 
فر انیس کے اور اسآ پکو ہم ا سکھانے سے ی میں کھت بل الل کی اس تمت کے حا کے ہیں۔ 
يي ساد وا ی و فت ے ج بک غير نصوب ہو فو اس صورت میں رہ کو بھی منصوب بذ دل فو بتر م كاد 
ہے صو بکیول ے اس می سب سے آسمائن بات بيد ےک ہے منصوبب على النداء ے دق منادى ہو ےکی 
و رت حوب "مار با انے جار ےرب 

(۳۸)-----وعن أنسء قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: إل الله 

تعالى ليرضى عن العبد أن يأكل الأ كلة فيحمده عليهاء أو يشرب الشربة 

فيحمده عليها ‏ (رواه مسلم) 0 5 

وسنذكر حديثى عائشة وأبى هريرة: ما شبع آل محمد» وخرج 

النبى صلی الله عليه وسلم من الدنيا فى ناب فضل الفقراء إن شاء الله تعالى - 

6 سی حر ری اس ر تی الث تتام نہ سے روات ےک ر سول الثد صل اق علیہ 

وم نے غرم کہ اللہ تتا لى اپنے بند سح اس با تكاوج سے راع مو جات ہی ںکہ دہ 

كول یک دف ہک اکھا کھا ا ہے پا لتق ہکھاتا ے اور اس ب اللہ تیا یکی تع ري کر تا ہے اليك 

مرح كول جز يندا اور ال پر اد تحال یک تع ري فک اے: 

أن يأكل الاكله تمزه کے يسك ساتھ ہو لوا سكا میتی سے ايك د فیک کیان 

اوراگر ”کل“ ہہ کے مضہ کے سا تیم فو ا کا مت ب وليل لق _ 

(۳۹)-----عن أبى أيوبء قال: کنا عند النبى صلی الله عليه وسلم فقرب 

طعام فلم أر طعامًا كان أعظم بركة منه أولّ ما أكلناء ولا أقلّ بركة فى آخرہء 

قلنا: يا رسول الله! كيف هذا؟ قال: إا ذكرنا اسم الله عليه حين أكلناء ثمّ قعد 

من أكل ولم يسم الله فاكل معه الشطان ‏ (رواہ فى شرح السنه) 

کر جم ...... حطرت الو الوب انصارىر می الد عند سے ر وات ہے دہ فراسة ہی كم ١‏ 

بج ىكريم صلی اش ی: و سلم يس ل کاپ کے قري کی اکا فی ا ةلل 


چا ےم 2ی 

کھانا ایا یں دماج اس سے زياده ب کت دالا ہو ال وت ج بکہ تم نے شرو شرو 
س سکھابااورنہ تى اسل ےکم کت دا کول یکھانادبیکھاء اس کے آخ میں فو ہم نے عر 
کیا ياد سول ال اب كيج مو گیا؟ او آپ نے فر ايك تم نے جس وش تکھاناش رو عکیاتھا ہم 
نے اس ب الث دكانام ليا تھا پھر ایا و کر بن كيال ن ‏ ےکھایا لوز الث رکا نام بل ليا نویس 
کے سا تھے شيطان ک یکھان ےل کگیا۔ 

(.4)-----وعن عائشةہ قالت: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: إذا 
أكل أحد كم فنسى أن یذ کر الله على طعامهء فليقل: بسم الله أوّله و آخره - 
(رواہ الترطى و أبو داؤد) 0 

7 او حر درش ane‏ 
علیہ و كلم نے اد شاد فرمایاکہ جب تم علس كول آد یکھا کھائے اور ا كما سف پر ال کا 
نام لين بجو ل جا نواس ےس تح الله اوّله وآخرہ۔ 


ا کے دزمان کی وعا: چ 

ارا ےر ول انام لاد و RE‏ کے در ميان شال کم ناا گیا 
اب ال و فت الث ہکات م سل لدنايا سج اوران الفاظ یش يناوا ے: :ببسم الله اوله وآخرہ۔ 

اول و آخر دسح مرادي سك می اس کے تام اجنزاء ير الت دکانام لتا ہو لی وواجتذاءجو .کے جا كه ْ 
يل ان بر بھی اور جو اجزاہکھیائے امیس بحل ان کہ بھی ا كان دہ یہ وکاک جو اہتزاءا بکھانے ہیں ان س 
بھی بركت آ جا ےکی اور جو اجا کھاسے جا كك ہیں ا نکی بے برق بھی دور ہو جا هكد 

(41)-----وعن أمية بن مخشىء قال: کان رجل یاکل فلم يسم حتى لم 

وہ سی 6ٹ فلمًا رفعها إلى فيه قال: جھ فرط 

فضحك النبى صلی الله غليه وسلم ٹم قال: ما زال الشيطان يأكل معهء فلمًا 

ذكر اسم الله استقاء ما فی بطنه - (رواه ابو داؤد) 
۸ر جم ہج ححخرتامیہ بجع ی ر ی الثد عب سے رایت ےک ایک أد یکھا اکھار نا 
تالور ال نے الث کا نام یں ليا بہال ک کہ اس ک كما سف بس سے ايك لقم باق کیا 
مرجب اس نے اپ ت ےکواہۓ من کی طرف انمايا وکہا:بسم الله اوله وآخره اوی 


بك ہم 2 


کر یم صل ا علیہ ملم سكاس جرف كل يان اس شس کے سا تج ھکھا تار ہے جب 

اس نے ال کا نام لیا اليه نے اس بر 1 .“ھ0 

ل 50 ت ےکر ن کا مطلب مرک تتا جمد لك اکر شیطان کےکھانے سے مراد حقيتاس 
کپاکھانا سے لو تےکر نے سے مراد بھی حقيتا ‏ ےکر ام وكااور ال شيطان کےکھانے سے مراد ے بركت زائل 
کر نا ت کر نے سے راد یہ وكا جو کت ان نے بدن لى کی وووابل اك - 

(4۲( -----وعن أبى سعيد الخدرىء قال: كان رسول اللہ صلی الله عليه 

وسلم إذا فرغ من طعامه قال: الحمد لله الذى أطعمنا وسقانا وجعلنا 

مسلمین - (رواه الترمذى وأبو داؤد وابن ماجه) 

7ھ 000 حر ت ابو سعید خد کر کی اللہ عند سے ردایت کہ ئ یکرم صل اله 

علیہ 7 عي اع ارت سے فار ہوۓ ولول ہاے:الحمد لله الذى اطعمنا 

وسقانا وجعلنا من المسلمین ۔ 

اف ...... جس میں اصل فو انث تھا یکا کر اد اکنا ے کھانے اور ہے رکب كل ا لكا مو تح سے 
کنا ا لز سا ته اسلا مكا بھی ذك كر دیا ای طرف اشار مک نے کے کہ انر تخا ىك جو جسالى 
لتيل ہیں ہے بھی بہت یوی یں ين سير تر ين اللہ تھا کی ر وای تمتو اسلام اور ايمان و خر دان 
سے کی ز یاد ہام اور ان سے کی زیادہ قال کر ہیں۔ 

(۳٤)-----وعن‏ أبى هريرة» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: 

الطاعم الشاكر كالصائم الصابر ‏ (رواه الترمذى وابن ماجه والدارمى عن 

سان ن شاو انيه ۱ 

و 000 ترت الو ہر ود شی اللہ عند سے د و ایت س ےکہ یکر كم عه نے ار شاد 

فزناا ا کر اکن نے وا و ر 0 009 رن ب 

2 کے مطلب ہے س کہ ایک آدى روزہ ركتس تو ظاہر سے روزے میں صي رك یکنا بڑے 
كا كور وذ سعكا واب بھی سن كااور دوس را آدى روزہ ہیں رکھتابکلہ سار اد نکھاتا يتا ین جو چو بھی 
كانا اس پر اللہ تاك کر اد اکر جاح لو ريخت یں ہے خض عبات 0 ھ9 
من الف تخا یکی نظ بیس ثاب کے اندر یہ ال روز ودار رح ےکہ روز ودار صب رکا اب حاص لكر رياح 
اور شگ رکا ای طر رحد وول براير مو گے _ : 


> ما 


ووسر امطلب ہہ ہو سنا ےک نس اجر میس دوفول ش ريك ہیں اس بات مم دونوں شري می كم 
اج ےگا لی نک یکوزیادو ٹل ےگا یک وكيا بر ابي كال سے بن کر نا لصوو کہیں۔ 

(ر٤٤)‏ -----وعن أبى أيوبء قال: كان رسول الله صلی الله عليه وسلم إذا 

أكل أوشرب قال: الحمد لله الذى أطعم وسقیء وسوَّغهء وجعل له 

مخرجا ‏ (رواه أبو داؤد) 

قم حي ا ا ون الث قلع اين تضور ترس سی الد 

علیہ و كلم جب ب کھاتے با ہے فو لول فرہاےۓ: الحمدُ لله الذى أطعم وسقىء 

وسوّغهء وجعل له مرج ل تام تر یں ال اشر کے لئے ہیں من لاي اور 

يلايااود ات خو وار نايا اوراس کے لے لكل كار است بتایا۔ 

جد جز بھی انا نکھا اور ينبا د یھن ب ل لک ربا ےکہ ہے ایک قت ے لیکن در <قيقت اس میس دو 
تيل ہیں :ایک نت ب ےک كا فيا يك چ آ ہا سے عق سے یچچ ات ی ے اکر خاو اتر علق میں 
بس جاۓ با کوٹ كل یس جیٹس ہا ےی ا کی فاد نالل کے اندر چلا ہا سے موی ساقطرو بھی يل جا 
انان کے لے وبال جن جاتا ہے۔ اللہ تا کی بت بڑئی اھت کہ اس نے علق کے اندر الي نظام جناي موا 
کہ اناف مم خود فص ہک جا ےک کون سی چ زک وکر لے کے جانا ہے وبال ماس کی نال بھی ے اورا 
دوس ر کی نالیاں بھی ہیں لین ج بکھات بے ہیں توو ہچ ر انی ال جلا ی بای سے اور وبال ست کھا نے اور 
ےکی تما ہے کے کے ایی ھل ے باون کے ے اس طبظ ےد بای 
بہت بذ نت ے اور يمر ا کا فضلا ر کی کل میس پینٹاپ اور پا نا ےکی صو ر ت مل با سالى نا ت ہو جانا ے 
اش کی دوس ری باک نقنت ے ٢یا‏ لى د ہاے مک ناگر خدانخواست يبشا ند ہو جا تو آ دی یکی بان چ تن بان 
> ءاى طط رق سےکھار ا ےمان فضاا رت تكلنا مشكل ہو جاۓ ےآ وی کے ے بس تک کاا ھٹک ثح 

(٤٤)-۔۔-۔-وعن‏ سلمانء قال: قرأت فى التوراة أن بركة الطعام الوضوء 

بعده فذكرتٌ ذلك للنبى صلی الله عليه وسلم فقال رسول الله صلى الله عليه 

وسلم: بركة الطعام الوضوء قبله والوضوء بعده - (رواه الترمذى وأبو داؤد) 

کھج ...... حضرت لمان فار ی ر ی الد عدر فرماتے ہیں الم سل ورات ل , مها 

ک کا ےکی ب رت اس کے بعد منہ ہاھ دھوناے تو میں نے تضور مه له کے سیا با ںا 

زک کیا وآ پ نے فرمایاک ہکھان ےکا ب رت اس سے يك با تح د مو نا ہے اور ای کے بعد 


کے ۵۸ا ہج 

)٥٤(‏ ----- وعن ابن عباسء أن النبى ي خرج من الخلاءء فقدم إليه 

طعامء فقالوا: ألا نأتيك بوضوء قال: إنما أمرت بالوضوء إذا قمت إلى الصلاة ۔ 

(رواه الترمذی وأبو داؤد والنسائى ورواه ابن ماجة» عن ابی هریره) 

رت می ضرت ابلن عباال سے دو ایت سب ےکہ ن یکر یم صل امل للد علیہ و كلم میت 

الفلاء سے کے آپ کے سان ےکھان شی كياكيا تو حابم نے عر كيال كيام آي کے 

سے وغ وکیا د لامیں آب کے فريك و ضوكا كم صرف اس وت ر گیا جب | 

کہ یش نماز كنك ھکھڑاہوں۔ 

و کر يبال دو کل ہیں لام ہکھانے سے پگ اھ دخو س ےکاہے اور دو رامل كعا له 
کے نع تہ دسا 


کھا نے سے سے با تج دلو نا: 
ہے ے ممف فا رفا ھت 
يب اھ عونا سنت ہیں چنا نيه اام ملك اود الام شاف سے اس طرش کیا گیا سج ءا رح امام تر نی 
نے سفیان ور یں قول ق کیا٣‏ ۔ دوکھانے سے ييل باتجد د و كو ناير کک ر الول 
جك ہرکھانے سے يي اھ دجو کھانے کے آداب میس سے ہے۔ 
پل قول وانوں کے د لای ..... ا نکی ایک و ليل حر ت این عباس ر ی اللہ ع کی ہے 
زيشت ا نے ار ملک رت رت ات دا حرف لا تابن نے 
عم کیاکہ ہم و ضوكايالى ل یں ؟ 1 خضرت صلی افد علیہ و کم نے فرمایاکہ جع و ض وکا عم صرف اس 
صورت ٹیل دیاگیاے ج بکہ یں نماز کے ك جےکھٹراہوں ھا نے کے و تت شك وضوکا تم نیس دیاگیا۔ 
فاو حطرات کے ںکہ وضو کے دو ہن مو گے ہیں :ايك لغوى مع اور ايك شر ی کن لغوى نتن کے 
اباد سے وضو پا تھے وعو ےک کت ہیں لبا یہاں معلوم مو اک رسول الثر صلی الثر علیہ و کم نے وضو 
یں فرمايا ]شی با تد میس دع ے يلل لبخيرب| تح دعو نے کے آپ سن کھانا اول فرمایا۔ 
دوعر و“ 7 دوس رگا بات ہے کچ ہی ںک کسی یز کے سنت یا تب يا آداب میں سے 
ہونے کے لے د م لك ضرورت ے او رکھانے سے ييل پات دھوناولیل ی سے نابت نیں اس ل کے 


کے ۵۹ جج 

اس میں صر ف خضرت سلما فار کی کی صد بیث ‏ كل می نے رات میں ہے پڑھاکھان ےکا ركنتي سكم 
کھانے کے بعد تخد دو لئے جنیں, سول الذد صلی الث علیہ و حلم نے فرمایاکہ نی بل کھان ےکا رت ہے 
ےکہ اس سے پیل بھی پا تھ دجو ۓ جامیں اور اس کے بعد بھی۔ ہہ عد یت سنأ ی نیس ہے اس ل ےک 
اس کے ایک راو ”ٹیس بن رب “ل ان بر مد ن نے ررك ہے اور انیس ضيف قرار دیا جب یہ 
عد يدث ضعي ف ہو لے تو معلوم ہوا کیا نے سے کیل ہاتھ عونا لل سے ها بت نہیں اورجو جز وليل شر ی 
سے مایت نہ ہو ا كو سذت یا تحب امنا بھی در ست يل اس ل ےکا کے سے يبه با تح دوس ےکو سنت با 
مج بکہنا بھی ویک کھیں۔ ۱ 

دوسره ثول والوں Ta‏ کے چو حرا کے ہی ںک ہکھانے سے بل پا تد عون 
آداب شل سے ہے ء ا نکی ایک و يبل خضرت سلمان فار کی ر ی الذد عن ہک به عد یٹ سے اس يبل 1 خضرت 
صل اٹہ علیہ و کم نے فرما امہ بر کة الطعام الوضوء قبله والوضوء بعدہ 9 ک ہکھا ےک ب رکٹ ہے 
س کہ اس سے پیل بھی باتک د حو کے ہا بل اور اس کے بعد بھی ا کے دجو ۓ جا للد 

ال ری یہ با تکہ یہ عد بیٹ سند اضف ہے لوا کاچ اب يس كه اال عد بی پر شی بن ر کی 
وت افرش اا ے اود ین من ز و ی عر عن د شيك ادرا ے کن سير ن نے 
ا كو ضعيف قرار تثبل ديابلل نض نے تون ىكل ے۔ 

جس لد تن قرت جل لل وفعلا فراع CES OE‏ 
وجہ سے ضعيف قرار تيال ديابللء ماف یکو ر یک وج سے ضعيف قرار دیا ے اور جو راو عادل ہو کن اس 
کی حفظااوریادداشت می لکی ہو اك عد یی سن ہو لى ہے لبذ اي تلن ہے اور جن ط رح صد بیت قال 
اتد لال مو ل ای طر عد ی ن بھی قابل اتد لال مول هد ٠‏ 

ای طررح اس عد بيث اور ال مون کی ناعير دوس رک بہت مارک اعاديهث سے مولا ے۔ ب 
اعاد ی تاکر چہ ضیف ہیں لين مو ئی طور بر ححضرت سلراان فار کی اس عد بیث کے لے مو بد ضرورہیں_۔ 
0( عشلا ضرت الس راوشد ع کی حد یت ےک رسو ال صلی اللہ علیہ وم نے ارشاد فیا من ٠‏ 
احب ان یکٹر خير بيته فليتوضاً اذا حضر غداءه واذا رفع 0" تی جآ دی ہہ چا کہ اس کے 
كحرش ف کرت سے بد جاے ال دوقت ا کو چس کہ جب ا کاھانا لیا اے ال وقت كك دہ تھ 
د عو ے اور جب ا کاکھانااٹھایادیاجاۓ اس وفت کی تد دص 


(1) مشكاةالمصا نت لتاب الاطعر. لقصل ان | + «سا برح م..... 00 سنن ابن ماجه فى الاطعمه باب الوضوء عندالطعام  /‏ م عم 


پیا ۰ر 


اس عد ی کو این ماجہ نے ای سفن یش اور تاق و غيره نے روا کیا ے ای کی سند ابد نی 
ے بل آ کے کی ر وا یں ضوف یی کر سے ہیں ان س سے اک کی سند یں ضیف ہیں چند الیک ہیں ن کی 
سند قا بل قبوال ے لیکن ردروا تبقل اس لے شی یکر سے ہی لك ان سے اتر لا ل کر مقصوو جم 5 
ارلا وام 00 ورب 


0 سم و‎ SS 

ک ہکھانے سے ييل با تے دعو ناث كودو کر جا ہے او كما سف کے بعد با ہم صمو نايهار یی جنول 
کودو رک جا ہے 

کن مع ہو کے ہیں يجار ايا جنول ہے عد یٹ این قد امہ نے ای میں كرك سے کان اس 
ک یکوگی سند وکر ھی كل 
(۳).....کنزالعمال میس طبر الى ہو الے سے خطرت ماک کی عد بیث ےک رسول الثم پل نے فرمایا: 

الوضوء قبل الطعام حسنة وبعد الطعام حسنتان .° 

کھانے سے ييل ا تھ و عونا ایک بی ہے او رکھانے کے بعد بت نادو شال ہیں۔ 
)...كنز لال میں طبر انی کے جوانے سے حضرت اہن عبا كا عد یث سب ےک رسول الله صلی القد علیہ 
وم نے پرایاکہ الوضوء قبل الطعام وبعده ينفى الفقر وهو من سنن المرسلین ۳ . 
. (۵)..... حفرت الس ر شی اللہ ع کی ایک روای کنزالعمال میس سے جس کے الفاظ ہے ل :سعة الرزقہ 
وردع سنة الشيطن الوضوء قبلالطعام وبعدہ 7 

کہ رز قکی وسعت اور شيطان کے طر ل كودو رکر كاذر لي کھانے سے يل او رکھانے کے بعد 
با کے دج اڑاے۔ 
.....)٦(‏ ان ماجہ اور تبك شحب ال یمان یش حطرت ابن رر ی ایند عن كل ایک عد ی ےک ايك« فص 
بال کے ایک تا لاب کے پا سےگگزرے فو ہم براوراست تالا بکو منہ لاک لی يت گے ہے بھی عر بول 
کے بال الیک طر یقہ عدا تجا سكوك رع كت ہیں۔ 1 کے باب الاش ب می اکا حلم ان شاء اشر آ جات ےگا وتم 
0 لا بن قد ام کاب الولیمہ فصل فى آد اب الطحام / ضص۴۱۱:خ ٠١‏ 
٣ (‏ )ڑا كناب امعد الفضل الا ول ف داب الال / س ”ا لتر ۵احد ی ت م ٦۹ے‏ ۰٣و۹۱‏ ے۰٣٣‏ 


انیا)١(۔‎ ۔انیا)١(‎ 


٦ ۱‏ 
رع کے طور بر پانی نے گے تور سول او صلى اللہ علیہ و كلم نے فرمایا: 

۱ لا تكرعوا ولكن اغسلوا ايديكم ٹم اشربوا فيها فانه ليس اناء اطیب من اليد 7" 

تر جہ....... براوراست مش لاک پا نہ جو بللہ اہن ا تحو كود وو پھر اچ پاتتھوں کے اند رپا یہ 
اس کک ہاتھوں سے زیادہپاکیزہ برت کو اور ہیں _ 

تو اگ رگاس و رہ یں ے پیالہ یں سے فو با تخد اما ناص پال ے يبال د بت ايل فو تضور 
کک نے اہن پا تھوں سے انی ٹ کا عم فرمیااور برادراست مضہ لاک يإلى يك ست شح فر مایادردہ سر ے ے 
فريك یاف ين سے يبد با تد دعولدوجہ ال لكاي سج كبا تول کے پار سے می ١ال‏ ے لہ ابران س 
ظا فت ت مو وہ صاف تر سن ہو اگر بر تن کے اتد ري إلى ينامو ی يإفى ماتھو کون کک من میں نہیں 
جانا تا لین اس صو رمت عل بد بك پان ہا قھوںل کے سا تھ فى د ے ہو يال با تحب كوي كك منہ ٹس جا گا 
اس -ك آي نے فرمایا: ہا تھو ںکود عو لین چا ے اور بجی وج ہکھانے کے اندر بھی يا جا سے ج بک پا ہے 
کے سا تج کھھا ےکا ذو ہکھانا با تجو كوك کر منہ میں چا ےگ ور آ1 می یہ ما تھے صمو ۓےکھان اکھائۓے تو 
مین ے ہک با کے صافتہ مول اوران امنا نع أن راورن فيان عق ک اروا او خر قرف 
اور ای اکھانا ہو گاج صفائی دالا نیل ہو ليذ ااال عد مث سے جات پٹ سے پل با تھ د عونا بت مو را سے 
ای طر حکھانے سے يبلك بھی اھ و وتا ہت مود پاے۔ 

ر کک با ری انالد E‏ ر 0 ت ۱ 
(ے) - الل کے علاذ ہا کی تائید ایک اور عد یث سے ہو تی ے چو سند کے اقبار سے بالكل ج Û‏ 
ےکہ سول اللہ صلی اللہ علیہ و کم نے اد شاد في جب تم مس س كول س وکر اھ او رہ ضسو ہو خی کر نے 
کے توا کو پا س ےک با تجو كو بر اور ا ست يال شل ہڈا کے بل ہایس ڈالے سے پیل ا نیس وسو رای 
یش 11ل( شار مین عد بیث نے ا یک دوو ٹیس بيان فر می ہیں : 

ایک وج نوہ ےکہ الل ز مانے می اسعنچاء الما کار وات بت ثم تی اس كل با یکی قلت بہت ہو لی 
شی اس لے زیو وتر ڈصیلوں سے امت کیا ہا تھااور رات کے وقت ہب سوتے چھ لو نكم بر يبيد آ جات تھا 
ٹس میس اس خیاست کے بی كا ركان ہو ما تھاجو ڈ می کی و ہہ کم فو ہ وكق نيدن بالكل زاغل نیش ہو گی اور 
9 ریت ال رات مع الوب يوي آد یکا پا جد بھی ناياك ب وكيا موا 
(۲)مٹکاڈالسا موہ وو اس 5 


55 ۳٦ا‏ ج 


احا صل ہے ےک اس خلق طہارت کے ساتھ ے۔ . 
رت ھت ہتس ای 

کا تعلق نہیں بللہ نطاوت کے ساتھ بھی سے اگرچہ استتياء بالا ک کیا موا مو تی کی والى جل عل پا تہ كلكا 
امرکان نہ بھی موجنب كوب امكان و ضر ور س کہ را کو تھے ای بول ب ہککتار باہو جو اکر چ نا پک نیش نین 
نقرف بھی 1 ات نکی بول پر ہا تیر گل ہو , بخلن میں را یکو خاش کر تاد ہا ہو ءسوتے دقت ناک میں 

الكليال ڈاتار اہو ز ہیں :اک 7 کین کن خلاف نظطافت ہیں جب ای طرں کا باج ھک پالی یل پر اورا ست 

ڈالو گے تزوووالى بھی نظيف ل رس كلض اس اتال ےک كول فلاف نطافت جز ب تيد يرل كك ہ گی آي 

ندعو ےکا عم فر مایا نش يكبل با تح د ولو بجر بین یس ڈالوجھس میں سے تم نے وض ھکرناہے مال نہ جب وضو 

رن ہے فو اس میں پان زیاد ہت باہر استعال ہو نا ہے اندر تثبل ج بک کھانے اور ہے عل جو يك ہو جا سے وه سم 
کے اندر جات ہے۔جب عم ے ہاہرامتعال ہو نے وا سك يال شس نظا ف تکااتقااہتمام ہے توج چ انان کے مہ 

یش اور پیٹ ٹل جا E‏ يدت سے مارت میں نظا فت كاكننااءتمام م وگ ا ل كااندازه آي خود لگا کے 

ہیں۔ تو جب وبال خلاف نظطافت کے اخا لك وجہ سے پات دو ےکا عم ے فو يهال بھی خلاف نظافت کے 

اتا ل کی وج ے پات دعون ےکا عم م وكاس کہ آدى دان برک مصروفیت میں لف مکہوں پر ہا تھ کا 
رتا ےی وا بی زک کے لگا جاے جو ا تن صاف س ہوک ی الل کے علاوها ين نیم کے کی يسيتتصول پر 
ات مان شس میں یدن ویر وميا جم کے کی مس وا ےتا ا کہ ضر اے 
تو صرف بين كنرك فی بک نار لک بهار کیاکی یا کی کے برا م 2 کوک بال گے۔ ہو سكا ے ای 
پاھ سے ال نے اپنے ناک کے اندر صفائ یکی ہو ای اھ سے ای اتکی سے ال ن کان مس خار کی مومس 
پا ھ اس نے سر کے بالوال میں بالو ںکو ھی فک رن كيل وال بول دي سار یک سا رک چ ر يل ای ہیں جن کو 
انا نکی فطرت اپنے انه رگوار بي کر نی اس لے ب حلم و گی اک اکر چہ پا تھو ںک وکوئی خلاف نطافت چ ےکی 
مول نظ ہیں آ ری کن خلاف نظا هن تکااشتال قوی ضر ور ہوجو و ہے اہر اش لدت جس نطافت اور تم ا یکا 
تقاض اکر تی ے ا كانقتفاي س ےک ہکھانے سے ثبل پات دجو لئ چا ںہ ىہ عد یت ےکہ مم عکواٹھو و 
بر تن نب تھ ڈالے سے أجل باد دن ولو »ال علس كا تقاضاي س ےک کھانے سے يله بھی با تيد وعو کے بال - 


کھانے سے يل با تير دتو نا اھ حر ی یں :- 
الب اس سے ہہ بات جيه یس 7گ یک ہکھانے سے يبيل پا تخد د ونار تخي کی نیش کہ ہر ال 


r 8‏ اج 


ا تھے وعو لن مطلوب ہوں پا تجو ںکی ظا ف کا لین ی ہو رنہ اییہا ادب ے چو ور قیقت ايك نا عل 
كاوج سے سے وي كم امكان موجود کہ پاتھو كول نامنا سب چ ےکی ہوء اکا تقاضاي س کہ أكر . 
ا تھو ںکی ناف ت کا لین ہو تز يرب تجو ںکو وعو کی ضرورت يل ہ وی - اس صذرت میں پا تد وون 
کھانے کے آداب میں سے یں ہوگا شلا ا تھوڑی در يبل تو و ضوكر کے یاچ تس لكر حك آیاے ظ 
اور ہے یقن سبك اس عر صہ ںی امک زيما تم ہیں :ای صورت يبل اھ د عون کی ضرورت 
یں چنا چ علامہ قر ٹیر حمہ اللد نے اي تیم کے اندر سور واع ا کی تی ریس امام باک لكاب قول قل 
کیاہے۔ عام طور پر ايام مال ککا سی قول نف لکیاجاجاے دہ تھے دعو کو ناليش رکر ے تھے , ليان ورس 
٠‏ نےلماممان کک قول لق لکیا کہ اک ا تد صاف سخھراہے قذ اس کے د عو ےکوامام مالک تانر ھت ے 


کی وہ رحب با تھو ل کی ظا یکا يقن سے و پھر تو سرت ہت 


كال قوی اور میور معلوم مو لى ہے_( 
يي قول والول کے دلائل کے جو اب ف 
يبلا اب 55 تورك هن مار ض د ا سن تر أل ھن 
ایک فو كه اكيا سك الل د یت یل وضو سے م رادو ضوء لفو ی ہیں بللہ وضوم شر گی مراد ےک وك آپ 
نے لول فرمایاکہ سض ار خرن قت و ا جديا عن ا سک کی ا سے 
وضو تل پا تھ و حون بل ہو جابلہ باقاعد وش گی وضو ہو جاہے إبذ اال عد یت سے وضو ش رہ ىكل تی ہوردی 
ےو ضو لغوى سق اھ وعو ےکی لف يبل ہو رت لیک نکر تھوڑاسا غو كر ل فو بارال سے وضو او یکی 
بھی أنى ہورہی سے مراداکرچہ وضوشرى ے لیکن وضو غو یکی بھی نف ہو یی ےکی ھک اکر تجوز ی وي کے ١‏ 
لے مان بھی بی کہ انہوں نے وضو ش ی کے لے پان لا کاکہاہو تب بھی ات بات دا ےک 1 فضرت 
صلی اللہ علیہ و كلم کے پا لانے سے مع فربایاتھا۔ باج رعق ہ کہ لاياتى نیش سگیاجب پان ایی نی كياقو 
اس کا مطلب ہہ س کہ آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے پا تھے بھی نی دجو ے لبذ ابی جو اب انتا موو نہیں ے۔ 
دو امواب مسب لبد دوس اج اب ہہ سب هكم پا کے دجو اکھانے کے آداب يل سے ہے كول 
واج بات یا سنن م كده نبل سے ثيل اور 1 خضرت صلی الثر علیہ و کم اس طرح کے آداب میں زیادہ ملف . 
یں فرماتے تھے اور دوس را کہ او قات بیان جو از کے لے اس ج كو چھوڑنا بھی جات ےہ آي ال ادب 
۱ )ليا لا كام الق رآ ن لتر تی سور #اعرافءب 8 آعِتيلبَيِىَ آدَمْ خُذُوْا زِبْنْمَکُمْ (1) تحت المسئله السادسة رخ / ۱۹۲ 
المكتبه العربية القاهرة 


بے 76 ہچ 


کو رک فرماد يا كر تے سے لبذ ااس سے ہے مات تيبل ہو اہ تھے دجو اکھانے کے آداب يل سے تی کیں۔ 

دو سق د عل کا جو اب ...... ا کا دوس را اتد لال اس سے تاک حضرت سلمان فار ی والى 
عد یت تف ے لوا یکا جو اب بمو كيال ہے عد بیث یف کی ہلل صن سے اور يمر ا کی سای اور بہت 
ماد کی اعاد یٹ سے و رای ہے۔ اب کتک 9 ہم ےکن کی سے اس سے ایک اور چ زکاجو اب بھی مد كيادد کہ 
چو حرا تک ہی ںکہ ہا کے د عون داب میس سے میں ابول نے ٹن صاب کے آخار سے بھی اتد لا کیا 
سے شا این الى شی نے اپنی ”عمف “میں حضرتت ع رکا نف لکیا ےک ححضرت عم رخور ضا حا بدت 1 
فار م وکر ۓ ءکھاا ٹین کی کیاکی نے ع رخ کیاکہ ا ت دسف کے کے يل لال ؟ لو ضرت تمر نے فرمیا 
کیہ مل نے استنیابامی پا ہے س ےکیااو رکھاناد ای با تخد ےکھاو لكالل کے ہا تيع وو ےکی ضر ورت ہیں ا 

اک طرحححفرت این سحو ونی الد عنہ کے سان بھی اسی مر کا واقعہ ٹیل آیاک ری آد یک وکھانے 
کے کہ کیہ ای كبا س توا کی پیا پکر کے آیامطلب كه ہا تد د عو نے ہیں فو حضرت این مسحو 
نے نایم نے يشاب اچاب تھ ب قث كيدي چان ال شب ی نے رایت کی ہے( ا سکاجو اب 
بی ےک حر ت این حو واو ر خضرت عم ری اد کنیا ئے ہے اس وج س كبك یہال ما کے کے صاف بو ےکا 
ین تمان ياده سے زیادہ بات اسیا کی ے فوا ستتهاء کے لئے بايالا تخد انتا ل کیا سے اور دايال ہاتجھ صاف ے٠‏ 
اس لے فراي/ك. د عون کی ضرورت یں ہے۔ بلک اکر و كر يل فوا بل دواٹروں سے ہے بھی معلوم مو جا سے 
کہ ہہ صحاب یں ہر حا كما کے سے يبيل اتھ وو ےکا ضور ضر ور ایا احا تھا بھی قو سوال بيد ہوا گر اس 
زمانے میں تت وو ےک ضور يى نیس تھا يبال سوال بی يبد ات ہو تالت ان اثرول سے ب بات ضر ورثا بت 
ہو ے کہ اہ اک رام ای ر کے آذاب مل زیادہ کلف اور ق ےکم لن ارت ےت 


کھانے کے بعد پا تہ رعو ےک گم :- 

کھانے کے بعد ا تخد دو اك اعاد بيش سے ثایت سے ان یس سے ببح عد ييل او بتتصل ميل کے شعن 
ین ربك یں شل حطر رت لان فارى رض ال تل عد حد یٹک ہکھان ےک کک یس کاک سے 
پل بھی تھے دتو سے ہا یں اور بعد یس واد 
)١(‏ مصنف ابن ابی شيبه فى الاطعمه فی الرجل یخرج من المخرج فياكل قبل ان یتوضاً ج٥/ص ٤١۸‏ ايضاً شعب الایمان 
للبيهقى الفصل الرابع ج٥‏ /ص ٦٦۹‏ 
(۲) معنف ای الیش / ۵:۵۵۸ 


وج ۱٦۵‏ ہج 


اس ع رب ا کی تاد یں جو روليات جم نے كرك ہیں ان مس سے بھی انض کے اند رکھانے سے 
پیل “ل پا تد دوست کا كر سے اور بعد می بھی ءال کے علاوه يك اور رو اتی کی ہیں جن س كما کے 
بعد ہا تج دحو ےکی تار مول ے۔ ثلا الى یل ل اج رآ گے چ کر حط ری الو ہر مور ص ابش تال عد 
كاعد ی آرت ےک ر سول ال صلی انث علیہ و سلم نے فر اياك 

من بات وفى يده غمر لم يغسله فاصابه شی فلا يلومن الانفسه - 

کہ یں آ وی نے اس عالت میں را تار کہ اس کے اھ می كول امتا سب چ كول جنال کی 
بول تی اور اس نے اس جنال كود ويا ہیں اس وج سے املك کو کی نتصاان ک٣‏ یا تی کی يكنا یکی وج 
س كاجز کاٹ ليا و وہ ا سے آ كوت لام کر ے۔ ن جو ا كيف مُق ے ہے ا یکی انی شیک 
:ته ہے اسے جات تال جنال وانے با تھو كودع وکر سو اہ یہاں پچکنائی سے د و نے کا حم اس لے دياك 
اکر جلنا ل دو ےکا ہیں فو نتصا نکاخطر و رام کوسوتے وقت بھی نتصا نکاخطر و لم نکی در جہ یل 
نتصا نکاخطر:جاگنے مو سے بھی ےک کھااکھانے کے اہتزاء پا تج كو بھی للك ہو سے تے جلنا ل ء مر یہ نمك ۱ 
ویر واوراسی پا تہ سے 1 حول میں خار كل نے آعگھوں میس تلیف ہو جا ےگ دشر ویر م 

ادام بخار کی ر حم الد ن فكتّاب الا طم ل المضمضتبعد الاطعام (© باب تا مکیا سے اور اس 
یس حضرت سو یر بین مان ر ی اٹہ عت کی عد مث ذك ركلا ہے۔ اس سے معلوم ہو تاس ےک ہکھا نے کے 
بح رک یکر می پا سے نے جب من کے اند رکھانے کے ابتزاء گے مو سے ہیں ج ھک كما سكا صلل كل سے 
اور پا کے ف كما ےکا صل کل بھی یں اح صا فک بطر ان او لى مطلوب ہوگا۔ بنض احاد یٹ ے 
معلوم ہو جا کہ دود ھ ين کے بح دكل ضرو رکر بی چا ےآ پ صل اود علیہ و كلم نے دودھ ہے کے 
بع رکی فرمائی اور ہے فرمایا: ان له دسماک کی ٹس نے اس كك كم دود میس چنا ہٹ ہو فى ے اور وہ 
پچمنائہٹ منہ کے اندر با ےگی۔ 

ای ط رج ابین بان می خضرت ابو پر سور شی الل عن رك رواييت س کہ ايك انضارى نے نی 
کر یم صلی اللہ علیہ و سل مکی و کو تکیء جب آپ صلی اٹہ علیہ و سل مکھا ہکھا کے اور با تد بھی د عو لئے و آپ 
صل ارہ علیہ و سلم نے ايك دعا یڑ کی ج کان بیو عاہے ءروابيت میں یہ الفاط ہیں : 

فلما طعم وغسل يده قال: الحمد لله الذى اطعم من الطعام وسقى من الشراب 
وکسی من العرى وهدى من الضلالة وبصر من العمى وفضل على كثير ممن خلق تفضیلا 
00 #القار تاب وضم أص ۸۷ئ٣‏ -- ۱ 


الحمد لل رب العلمين :© 

يبال دی كان اكها ف کے بعد پا تھے وون ص راح ثارت ےء ا کو مام نے بھی انیج گے اندر 
روا کیا ےار اے جج می شر ط سم قرارویاے اورذ کی نے بھی مام کے اس ٹیہ مل مواقت تك ے۔ 

کنزلعمال می ان ع کی کے جوانے سے حضرت ابین عمرر شی الث عت کی لیک عد یش ہے جس سك 1 
الفاظي دل :اذا اکل احد کم طعاما فليغسل يده من وضر اللحم ۔ کہ جب تم یش سےکوگ یآ دی 
کی کی لے اس چا ےک أدشت کی 0لا ہے اپے ا تھو کو نے نت لين حول سح کوش کی 
يكنا ىكوزائ لکروے_ 

سر ناو ا ا aE O‏ ےم 
ما تاکر سے ت کہ اپنے تجو ںک وکر بو کے سا تہ صا فکر لیے ے_ ) 

ای طر لے سے ال شن یت ی داك ضور جن نے نو 2ا ھۓ 
يع انیو ںکو پاٹ ینا ا سج اس میں کی پا تحال کے لو ین ےکا زک سے دتو ےکا کر یں 
().......... لك ایگ چو اب ہہ کہ د تون نتنب مطلوب سے ج بک يإلى مہیا ہو دبال ناک طور پر جب سهد 
می بف ك رکھا کھاتے أو وبال ظا ر ےک قرجب مس يالى مبیا میس ہو جا تی ای لے ا عو كوي چنا ھی ےڑا تماد 
(r)‏ یم دوسرے مقصودہاتھوں سے با فى ویر و سے صا فک ہا ہے ا ںکاکائل طر یق ىہ کہ با تھ دو لئے 
باس لین لى ابم قصوو تو لیے یا کی او رکپٹڑے و خی رہ سے صا فکر الغ می حا صل ہو احا ےہ قصووی صل 
كس كادف طر یقہ ہے اور ای در جہ يه ےک پا نحو كود تلن جا ے۔ آ كل ایک ناص مم کے نو پیج حلت ہیں ۱ 
جت نکو 06 189ا Wet‏ کے ہیں ۔ان سے ال ہا تھ صا فکر لے جائیں تو كنال اتر انی ےہ تہ ب لكل صاف ہو 
جاتے ہیں اور ہوائی جتباذ و غير و شس نض او قات ہے ذراپڑے سائز کے فو لی ےکی کل میس موس ہیںء فو آاااس سے 
ملت پر کی ہو جالى ہے پا ل ؟ تو اہر معلوم ہو ا س ےکر تکا جو مقصوداوزعنی ہے ووا صل ہو جات ۓےگا يك نعلت 
کے ظاہر بك لکر لت پا یک خا يبلت فول ہے اس برلت سے محر نار ےکی - :كل ایک درج شل عا مكبر ے 
سے ل مھ لیا یکا ے توا کول پا ےکس نس میس با قد صا فکر نے والا مواد اموا تو بطر ان اوی اس 
02 ختاداہو جا گی لیکن سض گی تلا ری كل بر بھی کل ہو جا لوي زیادہ ر تکاباعدے۔ ٠‏ 
)١(‏ صحيح ابن حبان فى الاطعمه باب آداب الاکل بعنوان ذکرما لحمد العبد ربه جل و علا بعد غسله يده من الغمر من 
طعام اكله/ ص 75 : ج/ دار الكتب العلميه بيروت لبان۔ 
7 یھ 


2-3 ےا کے 


(41)-----وعن ابن عباس » عن النبى صلى الله عليه وسلم: أنه أنى بقصعة 
من ثريد فقال: کُلوا من جوانبهاء ولا تأكلوا من وسطهاء فإن البركة تنزل 
فى وسطها ‏ رواه الترمذى وابن ماجه والدارمى وقال الترمذى: هذا حديث 
حسن صحيح وفى رواية أبى داؤد قال: : إذا أكل أحدكم طعاما فلا یاکل من 
أعلى الصحفةء ولكن يأكل من أسفلهاء فإن البر كة تنزل من أعلاها ‏ 
ر تحر ...... خط رربت این عباعل ر کی اللہ عد سے روا يمت سن كل یکر يم صلی ال علیہ 
و حلم کے يال شري دكا ايك بڑا بر تن لایاگیاء تو آپ صلی الث علیہ و سم نے فرمایاکہ اس کے 
ا راف يبل ے كا اور ابل کے درمیان یل سے نہ كما اال کہ ب کت اس کے 
در ميان میں نازل مون ے اور الود او وک ایک روات یں ےک 1 خضرت صلی اللہ علیہ 
وم نے فرمایا: جب تم نسح كول ر یکھا کھاے تو وہ بر تن کے او پر وال جے می 
درمیان بی ست ہکھاۓ بلک اال کے ل نے مين اس کے اطراف يل سے ا 
2 ےک بركت در میا وا سل حص یش ناز ول ے۔ ۱ 
)توم عیدال بن عمروه قال: طاريئ وول لضان اله ليه 
وسلم يأكل متکتاً قط.ولا يطأعقبه رجلان ‏ (رواه ابوداؤد) 
1 2 ہی حطرت عبد ار من عرو ر ی الذد عند سے روات ے وه فرماتے ہی كم 
رسول اوہ ص٥لی‏ اللہ علیہ و سل مكو بھی بھی کیک لک رکھاتے ہو سے نیس داكي اور نہ ہی 
أب کے نشان کے ندم بد آدى عت تے۔ ۱ 
يل اک رکھان ےکی پٹ ذ يت ےگ ری ے دوس ری بات ہے آل ” 'ولايطا عقب ر جلان کہ آپ 
بج يه عنم سار ری الحو نري 
آپ صلی اللہ علیہ و تلم ت لے يلتك و غير ل روانہ ہوتے ته فز قا فك اور کر کے 1 بس ع تلم 
لوگ آپ فى الث علیہ وسلم کے یکچ بی بل آپ مل اله علیہ رس عام طورپ چچ بے کور 
دی وکا خال بھی رکا قد آدئی آپ کے کے نہیں لے ۔ ۱ 
۱ ین زیادہ مطل بی ےک أ خضرت صل الہ علیہ و سل مکی قوع یا نکر قود ےک آپ 
وہ 11-9 تی ےکہ ہرد تت جب بھ کہیں 
٠‏ ادسج مول لا کچ وکر خادم ویر وساتھ سا تد ہوں۔ آي صل اللہ علیہ کسی کے 


پچ IA‏ تچ 


إل آپ صل اللہ علیہ و ملم ا کے لے سے حلت ے۔ باد شا ہوں اور سر داروں کے بال اس طر کی 
نزو ں کج اعتمام ہو تابوه آپ صل اللہ علیہ و م ہاں میں تناد 


ر جلا خش کا عق الريك و :د 

يبال حشنیہکاصیضہ لا سے ہیں ا كا مطلب ہے س كد ايك آدى لبور نخادم سك آي صل اللہ علي و کم 
ے يكت ہو جا قال کے من نی خی لك ايك آد یک مب رعال ضرورت مو كق > اور ظاہر سك جب 
ایک سا ت حل كا ذو تھوڑ اما چیہ کر ہی ج کا 

)٤۹(‏ -----وعن عبد الله بن الحارث بن جزء قال: أتى رسول الله صلی الله 

عليه وسلم بخبز ولحم وهو فى المسجدء فأكل وأكلنا معه ثم قام فصلى» 

وصلینا معه ولم نزد على أن مسحسنا أيدينا بالحصباء ‏ (رواه ابن ماجه) 

Rs: 7‏ طرت عبدالڈ بن الحارث بن بء سے رواييت سكم رسول اللہ صلی ال 

علیہ وسم کے ياس دو او رگوشت لاي كياش حال عل آپ مس یس تے و آپ نے 

اسے تناول فر میا ف م نے بھی آپ مگ کے سات ےکی بر نب یکر مم صلی اللہ علیہ و ملم 

اس اور آپ نے نماز بڑھائی اور ہم نے بھی آپ صل اٹہ علیہ و کم کے ساتھ خم نی 

اور م نے اس سے زیادہ کی ںکیاکہ اپ پا تھو ںک وکگکربیوں کے سا ھ د نچ لالد 


اگ مدل رکا نے سے وضو اع :۔ 
اس سے یہ بات ذ جه عل آ کہ اكير کی ہو کیچ کھانے سے و ضوء نہیں نوف 


سبد می سکھا اکھان کا گم :- 
دوسر امتلہ مہ می لکھا کھا فك تح مکیا ہے ؟ اس ل ےک حضور اکرم صکی الذر علیہ و لم نے کر 
کے اند رکھاناتتاول فرمایااس یں مسلا ہے س کہ مف کے لئ شتير مم ںکھاناکھانا جا ے۔ 


TT 2. ا‎ 


سے مد میں وا غل ی یکھا اکھانے کے لے ہو جا سے یہ ناچا ے الدت اکر مسج میس عبادت و یرہ کے ےکی 
سے مشلا مازء ذكرء تلاوت وغی رہ کے لے يكن انفا او با لكو یکھان ےکی جز أكق ا سک اکھانا ہا تر سے لين اس 
شرط کے سا ت کہ مس کی علو بی ثکاخطرونہ مو مکی اس کے تراب و نے کان يشر نہ ہو۔ 
(۵۰)---۔-۔وعن أبى هريرة» قال: أتى رسول الله صلی الله عليه وسلم بلحمء 
فرفع إليه الذرا ع و كانت وتعجبه فهس منها ‏ (رواه الترمذى وابن ماجه) 
رجہ کی حر ت الو ر بور “كل الد عند سے د وا يمت ےک ر سول اند صلی اللہ علیہ 
وم کے پا كوشت لا گیا فآ پکی طرف دق بسا ی یکوت آ پکود عق ند ی 
آپ نے اس سے ورج وی خک ركمايا- 
(5ه) ----- وعن عائشةء قال: قال رسول اللہ صلی الله عليه وسلم: لا 
تقطعوا اللحم بالسكينء فإنه من صنع الأعاجم وانهسوةهُ فإنه اهنأ وأمرأ  ٠‏ 
(رواه أبو داؤد والبيهقى فى شعب الإيمان وقالا: ليس هو بالقوى) 
رم میم رت ماش ر ی اٹہ عنها ست دوابيت ہ ےک ر سول اللہ صلی اللہ علیہ و صلم 
نے فرما اک كوش کو چا تو کے سا تم نہکاٹواس ل کہ ہے مول کے طر لے ل سے سے 
اوراے نور جک رکھاواس لے :کہ يہ زیادەلذ تکاباعث ے اورزياده کا بیرے۔ ۱ 
(oY)‏ -----وعن أم المنذرء قالت: دخل على رسول اللہ صلی الله عليه 
وسلم ومعه على ولنا دوال معلقة» فجعل رسول الله صلی الله عليه وسلم 
یاکل وعلی معه يأ کل» فقال رسول الله صلی الله عليه وسلم لعلی: مه یاعلی! 
فإنك ناقة قالت: فجعلت لهم سلقاً وشعيراًء فقال النبى صلی الله عليه وسلم: 
ياعلى! من هذا فأصب فإنه أوفق لك (رواه أحمد والترمذى وابن ماجه) 
رہ کے حض رت ام المنر سے رواييت ہے وہ فرمالی ہی كم کور ا 
وسلم میرے بال تشر یف لاۓ آي کے سا تي حضرت على ری اللہ عدر بھی تے اور 
ہمارے بال يه خو سن کے ہو ۓے ے تو یکر م صل الث علیہ وک مکھانے گے ححضرت على 
بھی سا ت رکھوانے گے ر سوال اٹہ صلی اوہ علیہ و کم نے فرایا کہ اس على ارک بلاس لئے 
کہ تم یما کے سے سے الك مو حطرت ام منذر فر ال ہی ںکہ ٹس نے چچقندر اور جو جار 
کے وآ پ نے فرمایا:اے على !اس شل سے ے لواش ل ےک یہ ہار زياد موافی ے۔ 


<٭+ےا 


قرغ ...]تي قبت سے مت ہے :فا کا یی ایی مالل جن میس ری او 


آ مو يان بهار ىح اتا اہو مث يجار ی تو زا الب جب یں ےکوی زگ آ خر باق مول بل 


ياد ىك عالت عل ير بيب کی ضرورت ہو فى ے ای : کروی مھ كاي یز شردرت ہو ٹیہ ےک ہیں 
يار دوپارونہ لوٹ 1 ے۔ لآ حضرت على ر سی اللہ عنہ نقاجہ کی عالت يل تھے آ پک بجارى والح نیل 5 

ےک کون کی يجار ىا ول بور يل اس کے موان نہ یں اس لك آپ ل وري یکھوانے سے نح قرمادیا 
ابت جب دوس رك جز آل نلق چقئ ر اور جو کا بمو فو آي نے ححضرت ‏ لی ری اللہ عن ہک وکیا ےکا تم ر مء 


۱ الت ترام رات پر تب قد رت 


علا سے “بتر ہو تاے۔ 

(ه)-----وعن أنسء قال: كان رسول الله صلی الله عليه وسلم يعجبه 

الثفلٌ ‏ (رواہ الترمذى والبيهقى فى شعب الايمان) ٠‏ 

مر 3 حفرت :اسر ی اہ نہ سے روایت سكم مول ال صلی الہ علیہ و 7 

اك رن پر د 

انف کت أ لکھانے کے الل ج ےکرک ہیں جو ين ناس اورعام طوری بر تن کے نما تح لك 
جانا ے خاص طور پر اول وغیرہ میں ہت ےک رن پیند ہو كل وج یہ بیان فرماکی ‏ کہ أ پک 
قاع اور قناعت اس کاباعث ش یک ہکھان ےکا ینیچ کا لگا ہواحصہ عام طور ب وكشي الور متمولى ھا چاتاے اور ٠‏ 
لاگ اسے صاف کی خی کرت بللا د عكر يتيك دسي ہیں فآ پ ا یکو شو سے تول فرماتے جے۔ 

دوسری و ج یہ پوت سے اور با ہرمعلوم بھی بی ہو تا کہ آ پک دك مجن لذ يذ ہو ن ےکی وجہ سے پیٹ ری ۔ 

(84)-----وعن نبیشةء عن رسول الله صلی الله عليه وسلمء قال: من 

أكل فى قصعة فلحسها استغفرت له القصعة ‏ (رواه احمد والترمذدى وابن 

ماجه والدارمی وقال الترمذى: هذا حديث غريب) 

رم تک a‏ ل ا 

نے فر مایا:چھ آو یکسی رن ب سکھانکھائۓ اور اسے پاٹ نے نی صا کر وح و وہ 

بر تن اس کے لے استتغفا ركر جاے۔ 

(٥٥)-ے--۔وعن‏ أبى هريرة» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: من 

بات وفى يده غمر لم يغسله فأصابه شی فلا يلو من إلا نفسه ‏ (رواه 


رے ہے € 
الترمذى وأبو داؤد وابن ماجه) 
مر کت حط رت ابو ہر بیو رک اللہ عت سے دواييت س کہ رسول الد یک نے ارشاد 
ريك جد آدى ال حال يل را تكزاد ےکہ اسل کے پ تیر یس چکزاہٹ جے اس نے عورا 
نہ ہو ال وج سے اس كول جز نیف باھار ے فو وا ۓآ بد یکو ا مر کرے۔ 


مطلب ہے ےکہ ج وتکلیف ر انتيرق طور ی آہاے واس صر رک تاچ ا اور ہے سو چنا چا كم 


اجروٹذاب لےگااور در جات بلند بمو کے ليان جو یف ال سن بے تح 


ہے نذا نکی فآ نا ھی بات تيمل یہ آدى کے لیے باعش عاراور قابل مر مت ے۔ 


(685)-----وعن ابن عباسء قال: كان أحب الطعام إلى رسول الله صلی 
الله عليه وسلم الشريد من الخبز والٹرید من الحیس ‏ (رواه أبو داؤد) 

رس E‏ خضرت ابلن عا ر سی الد عند سے روات ےک دہ فرماتے ہی كر نی 
کر صلی اللہ علیہ وسل مک وکھافوں یں سے سب سے زیادہ ینہ رو کا رت 
۱ و یر وكا ید تایا علو ے ےکا ير 


ٹرید من الخبز:- 
و سے وو لوعن را وضو کرک 
طر بيتس كلاد سيك ہا تل ءال زمانے می عام طور ير پک بھی لیا جا تھا۔ 


ٹرید من ١‏ - 
لز ینا لین سيم مقن يسكور يل :یق او گی ویر دبلاک ا کا طخو ب سا تا کر لیاجا ما فاٹس طررح 


ر وٹ کی چو ر كابناسة ہیں الى طر یقہ سے كورو ف روك چو ری بای جا توا وار يد ا 


یس کچ ہیں۔ 
(۷) ----- وعن أبى أسيد الأنصارىء قال: قال رسول الله عل کلوا 
الزیت وادهنوا به فإنه من شجرة مباركة ‏ (رواه الترمذى وابن ماجه والدارمی) 
تر جم ...... حضرت الو اسیید ر سی الد عت افضارى فر ست ہی كش یکر يم صلی رٹ علیہ 
و كلم سن فرمایاکہ زیو نکا تل کھانے میں استمال کر واور ال كو عم ير کی لاوا ی ےک 
ہے باب کت در خت عل سے ے۔ 


زيول کے کیل کے ثوائر:- 
يوان کے تی ل کاایک فا ئده نوہ کہ اس در خ تکو رآ نکر مم س جر مبار ککہاگیاے ايزا 
اس در خت پر گے والا پیل بھی با بركت م وگااور اس يكل سے کے والا تمل بھی با رکت م وگا اس کے علاوہ 


فقال: أعندك شى قلت: لا إلا خبز یابس وخل فقال: هاتى ما أقفر بيت من 

أدم فيه خل ‏ (رواه الترمذىء وقال: هذا حديث حسن غريب) 

7ت ول حر ت ام إلى ری اللہ عنہاے روابييت سے وه فر راف ہی ںکہ یکر يم صلی 

ال علیہ و كلم میرے بال ت ریف لاست آپ نے فرمایاک کیا ہار ےا كول جز ے 

ین کھانے کے لے میس ن كب اكول یز بال صرف خكل رول اورسك ے و آپ نے 

فرمایا نی نے ایاگ مان سے الى تيبس مھا جا تاجن کے اندرس رکہ موچودہو۔ 

)64( ----- وعن يوسف بن عبد الله بن سلامءقال: رأيت النبى صلی الله 

عليه وسلم أخذ كسرة من خبز الشعيرء فوضع عليها تمرةء فقال: هذه إدام 

هذه وأكل ‏ (رواه أبو داؤد) 

رج ل خضرت عبد الد بن ملام ر ی اللہ عذد سے ر و ایت ے وه فرراسة ہی كم 

يل نے رسول اللہ صلی انفد علیہ و سل مکو د ماک آپ نے جوک رو یکا ای ککھڑ اليا اوراس 

یور کی اور فر اياي ا كاسسالان سے اوراس تقاول فرمایا۔ 

شض کت يبال مار ے ساعن مكلوق کے نہ میں وعن یوسف بن عبدالله ابن سلام قال 
ے لیکن م معلوم ہو تا ےک لول نے :عن یوسف بن عبد الله ابن سلام عن ابي هک لو سف 
بن عبد اللہ کن لام اپنے الد سے مك عير ال جن ملاع سے روایعت 1 0 و 
علیہ و کم نے ج کی رول لى اور اس ب رجور رك اور راک ہے ا یکا ال سے ہے مطلب کی ںک كور واقا 
سان سے یالت یل ا سکوادا م کہا جا تا ے بک تا ع کی تر خیب و بنا صو و ہے :گر سان عل جاۓ لو رك 
اکر نہ لے تاكول بھی ہز مل جاۓ کی کول اور نز ای کے سا تخد آد یکوروٹ كما فى ياج كبو رکو بھی 
بطور سان استعال کیا اکتا ے اكرول میں اعت موہورہو_ 

(:6)-----وعن سعدء قال: مرضت مرضاً أتانى النبى عه يعودُنى فوضع 


) يده بين ثديى حتی وجدت بردها على فؤادی وقال: إنك رجل مفؤود أئت 

الحارث من كلدة أخا ثقيف فإنّه رجلٌ يعطبب» فليأخذ سبع تمرات من عجوة 

المدينةء فليجأهن بنو اهنْء ثم ليلدك بهن (رواه أبو داؤد) 

2 ججح ......حضرت مد ر لی الث عنہ فرمات ہی ںکہ ن یکر بح صلی اٹہ علیہ و سلم میرے 

إل میرک يار بی کے کے تخریف لاۓے تو آپ نے اينارست میا رک میرے دو 

ييتافؤل کے در ميان رکھا يبال تککہ ل نے ا ل ا وم کے باتكل 

ٹنرک اپنادل یش مو سك لآب نے فر قمابیے نض ہو ےد کی يعاد > 

تم عارث بن كلد ہ کے يال جاو جك جن تيف يل سے ہیں اس كك ووابييا تنس ےک 

جو ط بکاکا مک جا ہے اسے هاس ےکہ دہع تی ےکا نی مات ات رن ل 

ےا کن الى می کوک ےگ کی کے ر ےک کے 

شن تک دوائی استعا لكر نے کے دو طر ےل ع بوں مس حك ے ایک طریقہ تاک يكل کے 
ذر سك دوائی اندرداخ لکی جائی شی ا یکو سحو کے نل اور دوس را کہ منہ کے رامت سے ووالٌ اندر داش کی 
والى ی اسے لمدورکتے ےا سکی می تيبل انشاء ال كناب الطب میس آ ےکی فو یہاں حر رت سعد ر تی 
ال عنہ يجار ہو ع 1 خضرت مه نے ان کے حلت پر اھ رکھااد ر ہے فربایاکہ تمل و لکی خرف ے۔ 


نے پر ہا تد رک کی وجوم:- 
نے پر تق مكل لئ رکھاہ ا یکی ووو بل ہو سکتی ہیں: 
جل و چہ ..... مات آپ نے نے يب تج رکما کت ينها ذه کے لے ۔ 
دوسریوجہ ع 0 7 كر لور لول لاله 


ب مه O‏ 


ھت ےکی بجوو رك لفيارت :- 

خضرت صلی الل علیہ وسلم نے ان کے ك علا ے دي كي اك مھ سين كل سات جوم ور يل لے 
أواور ا ميل ايف يول سی تکوٹ لواور انی كا تيل ءال سے انشا اٹہ رك ہو چاو سك اس سے معلوم 
مو کہ ید ہی ےکی بو كور میں و کی بض ام ر اکا ططاح موجود سے اب بال ری ہہ با تک کون ست اھر انل 


ب5 ےا ہچ 


کا علاج موجود سے ا سک یتفعیبل ىكيم صلی اللہ علیہ وسلم نے ر ہہ یہ يجوش وک ہےہ یہاں ايك او رنوال 
ان میں بيد امو سکتاے: 

سوال - ىؤل پان کن خر وول 
اط ربت بھی تاد یا لبو میت ا یی سکو ٹاہ لزاب طبيب کے پا يب ےک یکیاضرورت ف 

جات - 

وش ا ا نکی ایک وہ فی بو عق د ےک اف بش بض امراش میں مفید مق یں 
يك کسی بار شک وچ ےکی ناص ص کے لے وود وال مغر يش بول امہ عر ہوک سے اور ا کا 
فیصلہ طبیب ن یکر سکتا سے وو ملیف لكا حانج اور ا یکی مجم ی عالت دک کر ہے فيصل ہک تا ےک اس مر ض 
یش ا كوي دوا جو عام طور پر امل طرررح کے مر يضو كودق جا چ ديف واس کن زس يا 
الش علیہ و كلم ذا طبييب کے پاس تھا 

وو سرك اوج ...... دوس کوج یے ہو گت کہ بيد منوره کے ايك كور فروش نے مك بتایاتھا 
ك.د ہی ےکی چو وکی ج تل بها سک وکو بہت مكل ہچ آسا نكام نل ہے بل ا کان س طر يقد اكول 
تايا تاک ا کو يب كر مكررنايا .سخ اورپ گر کر مکوغما پا ہے وار وا قفن ايباتق ے تو يرا سكا مطلب ہے 
و اک ا لک وکو شار اي کاکام نس بل 6 طر لے س ےکوۓ کے لئ خاض مہات کی ضرورت ے اور 
ایک ہار ت عام طور بر اطبا ہکوہ و ی سے اس لئ 1 خضرت ی نے ان کو میب کے يال تياء وا اشم۔ 

(59 رات وعن عائشة» أن النبى صلی الله عليه وسلم كان يأكل البطیخ 

بالرطب رواه الترمذى وزاد أبو داؤد: ويقول: يكسر حر هذا ببردٍ هذاء 

وبَردُ هذا بحر هذا وقال الترمذى: هذا حديتٌ حسن غريب ۔ 

رجح ...... حضرت عا لش رعذ اللہ نپا سے رواييت ب کہ ب یکر بح صل اللہ علیہ کم 

ربوز ہے #ور کے ساح دكي کے تھے اور ابوداتدك رواييت علي اضاف. کی ےکہ 

ایک کر یاک كت دور ہو جات ےکی اورا سك متكا سک ىكرى.- 

تح ...... يهال پر شار مان عد یٹ نل ايك بٹ جل ہے دو کہ تار كن یس بولا جا تاے: 
OE 0‏ ليك مم تر بوز ج لكوع رپ می وخ اخ ض کہا جا سا ے۔ : 
)22 5-7 دو ران ا كاخز بو زوت ںکو فى می می اصف رکچ ہین۔ 

بح رات ےکماکہ يهال پر ناخ یی بو مراد او رید ال ر 


د 


کک ۵ےا ہج 


الہ علیہ و كلم نے ہے فرماا ےک ہجو رک یکر ی کی ط ینرک سے ذائل ہو جانی > اور میک یکر ی جو رکی 
گمربی سے زائل ہو جات ل اور تا یھ کے انقبار سے تات دز موتا ےہ خربوزہ تاثير کے انقبار سے مرا ْ 
ثيل یلک کر م ہو جاے۔ 

اکٹ شار جب نك رائے ہے ے اور گی سبك يهال راصف ريت خر بوز ہم راد ہے۔ ا سك ايك 
وچ یہ سكم عربول کے بال ربوز نيادهبلياى بل جات تاه زیادو تر خر بون پیا چا تقاال ے جب i‏ 
لفظ إو لا چا جا ھاو ای سے موا ربوز ونی مر اد لیا چات تقال لے يبال ب ت بوزدتى مرادلياجا ةك 

دوسرا قرینہ ہے سكم نالك ایک روایت شل ہے الفاظ آتے ول : كان یجمع بین الرطب 
والخرسز۔ خر بذ مه حال خر بوزے: یک وک ہیں تر بو كو خر بز فی كبا جا تہ اسل لك رارع بی ہ کہ یہاں 
خر بوز تی راد سب بال د باب اشکا لكر خر بوذ تو ثير کے اقبار سكم ہما سے فو آي صل ابر عار و۳ 
A‏ تر کت 

پیا اسب ...... لكا ايك جواب فو ہے دیل گیا سكم خر يوز ہار چ گرم مو جا ے يكن ا سكل 
وڑہ E‏ دسل مقاسيك میں ہے تن اے_۔ 

دوہ راج اب کے ورای ور الوق رم ا ےکر يبال ارت اور 

برودت سے مراد اش رکی ارت اود بر ودت كيل يللد شی تر ارت اور برودت م راد سے ئن و ر بی جو تک 
مال زیادہ و لى سے اس لئ یہ کی طور يكم حوس مون ہے اور خر پوزے می ج كل مٹھا کم ہو کی ہے 
اس لے تی طوري يها ںکجو دك کی ھ ار تکو خر بوزے کے ور بی جک مکرنا مقصورے تا یر کے اپار سے 
ارت اور برودت مراد أل جا یکو آپ ہے ك ىب کے ہی نكل كور کےا م ین یز مول > 
ج بکہ تر وز ہ کے ذا ل بیس اس طررعك تنيز تثبل بمو ككل اس میس ٹیٹھ کم ہو ا ےکور کے اتکی 
تيز یکو ترارت ے تمي ركي كياج اور ا کو خر بوزے کے ذر لك معت لکر نا نقصور_ج, جلیہاکہ يل بھی 
ی کا کی زس شن زر كك عسل ی تيز ہو لو 
عام طور يرا كو ہار نے کے لے اس کے سا ت کوکی جز لال جا ل ے۔ 

(6)-----وعن أنسء قال: أتى النبى صلی الله عليه وسلم بتمر عتیقء 

فجعل يفتشه ويخرج السوس منه- (رواه أبو داؤد) 

7ر 0 حطرت الل رض اللہ عنہ سے ردابیت ‏ چک ب یکر یم ملک کے يس الى 

كدي لاک ق آپ انی كوك له اوراس سل کے ہا لے کے 


4T 

شض .کور جب ال ہو جالى ہے اواس ل باري ککیٹراا ند رك جاتب كك جا تا سے تاس لے 
معلوم ہواکہ ایی کو راگ کیان ہو وکھو کر ای کے اتر س كيرا نكا ل کر پھر اس ےکھانا چا کے 

(6)-----وعن ابن عمرء قال: أتى النبى صلی الله عليه وسلم بجبنة فی 

تبوك» فدعا بالسكين» فسمى وقطع ‏ (رواه ابو داؤد) 

رج ...... رت ابن رر شی ال عنہ سے رواييت سك نکر مم مل کے يال روہ 

توک کے مو تع يريخ ركاليك كلذ ايكيا ة آي نے حا قوستل يلور الث ركانام لاور اس ےکا ۔ 

(54)-----وعن سلمانء قال: سئل رسول الله صلی الله عليه وسلم عن 

السُمن والجُبن والفراءء فقال: الحلال ماأحَلٌ الله فى کتابہء والحرام ماحر | 

الله فى كتابه» وما سكت عنه فهو مما عفا عنه ‏ (رواه ابن ماجه هدر مذی 

وقال: هذا حديث غريبٌ وموقوف على الأصح) 

ر جم ..... نط رمت سسلرالن فار یر لی اوہ عنہ سے رواييت كد رسول اللہ صلى الد 

علیہ و کم سے سوا لک یکی کی اور تیر اور مار و حش لتق لكا کے بارے میس قو آي 

صلی انفد علیہ و كلم نے راک حلاال دہ جز يل ہیں جل نكوالث تھا لی نے ای تاب میں حال 

کہ دیااور مر ام و جز يل ہیں کو اش تقالى نے اي یکناب شس حرا مکیانے اور ن کے 

بارے کل تاب اللہ خا مول سے ومان بز ول یل سے سے ہیں معا ف كر ذیاگیاے- 

وت E‏ اک راف 206 زیر کے ما دب 
قال صورت میں اک کی ہار وی ی ل کے ہوگاادر دوس تقال يسك يف سه" عورم ر( 
کے سا تخد ہواس سور ت میں ہے فروکی کے مو کی بس کا مق وین ہے۔ 

(ہ٦(‏ ------وعن ابن عمرء قال: 5-0 

وددثُ انّ عندی خبزة بیضاء من بٰوٌّة سمراء ملبقة بسمن ولبن فقام رجلُ 

من القوم فاتخذه. فجاء به» فقال . فى أى شی كان هذا؟ قال: فى عكة ضب 

قال: أرفعه ‏ ررواه أبو داؤد وابن ماجه وقال أبو داؤد: هذا حديثٌ مبكر) 

عير ر ماين رر ی ا سے کے روات اد ی لر سل الت مان م 

ارش ٠١‏ درا ای خو ال س کہ مير سياس مفید رت کی رول مو وک كترم 
1 ا حك كل اود نشین كن و ا نل ول علس ایک 


53 ےےا کچ 


دی الور الل نے ا طر كا رول تارك اد رآ پ کے پس ےکآ آي صلی الل 

علیہ و کم نے ار شاد فر ےک یکس بیز عل تاذ اس ن كه اكوك کیش أو آي صلی 

الث علیہ وم نے قرا کہ اس االو 

2 کا عل ضبءكى چاو رک یکھال و تیر و سے عام طور ایک بھی کی بنا کے جھے جس سے 
1101-7-0 تی کو صلا سے 
رام ال عل اکر چ اختلاف ے لن اتتؤابات ےرہ ےک ضور صلی اللہ علیہ و سل مکوپپند ثيش ىد 
یال تحضر صل ال علیہ کم نے فو غاب رفكلل رك روف لل بلسي تدكا مول 
ہواور سفي أرقن كنم اسل کے ساتم صفمت میا نکی ہے عراس گند ی رك وال اليباركك جل بل 
کک ق رسای موجود ہو کہ عام لود ہگن كارك ہو ت ہے٤‏ ناک سارك اود وك سیکا نک ا ے 
ا می ےکی رو لاور روف کیاکی 
Pa :‏ تل د یکی ہو من ير انها مكل روف ا کی حضور صلی اللہ علیہ و آلو سلم نے 
خو اٹ کی او رکوئی آدى اس طر نکی ر ونی تيا رك کے بھی لے کیا کان جب آ پک پت يلاك ج لكل ے یہ 
پراٹھا تا دک کیا و هدك ب یش تھا قو آي صل ایل علیہ و سلم ذ ا یک وکھانے سے انا دکر دیاادر اے 


کھان ےکآ پکادل یں چا ۔ 
991ھ ٠“‏ 


نض حطرات نے اس عد ی ٹکو ضعيف قرار ديا سج چنا مہ امام لبود ادر حم اللہ نے بھی اس عد ی ٹکو 
مك قرار ويا مگ رکا یہاں اصطلا ی ن مراد بل سس كد ايك سیف راو تہ راولوں کے مالف 
روا کر جا ہو بأل مر سے مرادیے س کہ عدبیٹ اور قاببل استد لال ہیں ے اور بض مر شین نے اس 
عد ی ٹکو قائل اتد لال مھا ےکم از كم صن ضرورے_ ٠‏ 

لبت ینف ححفرات نے می کے اختبار سے ال عد ی کور كر دياس وواس وج ےک 1 خضرت 
صلی الث علیہ وس مكا عت او رصم وا ےکھانو کی خوا كل فرمانا آپ کے رر کے خلاف بجو آي صلی الله 
علیہ و مكو ل جانا تھاوہ تال فرا نے تھے كما ف بس نہ عیب بي نکر تے اورت ا کی خو ہیا نکرتے ت ء 
انس ےک ہکھانے پٹ ہکا طرف آ پک توج تنس یآ پ کااس طرنییے سے خو اکر اظاہ رآ پک : 
ال عادت کے غلاف تھااوردوسرے اس خو اہ شک و آپ صل اللہ علیہ و ملم نے لس میس دوس رے اكول کے 


EK‏ ےا ہچ 


ساحن نظاہر فرمایاجو در حقیقت ایک نم مكاسوال بن جانا ہے مہ آپ کے عادت مہا کہ کے خلاف تھا اس لے 
ہے عد ييث جج معلوم تيال ہو تی_ 
لیکن اس بفياد یر اس عد بی کور کر ٹاو رست تيل اس لک ےکہ عام طور پ آي صلی الث علي ہکی عاات 
٠‏ اکر چہ اج ےکھانو ںکی توا کر ن ہیں ی لين بج يعوا رآ صلى اش علیہ و كلم نے بیان جو از کے لے اي 
خاش كااظهها رکردیا ہو توودا ل عام عادت کے خلاف کییں- ۱ 
قر تی سوا لک بات ذو اقح سوا لک نا چان دلا ہو چا کے ص راح موي ا کی بات نیل سے کن 
وان کش ہواور حول بالكل بے کلف بووہاں اٹ یکول ینہ یرہز ظام مک دک جا ےکہ کے پر 
ہے اس می كول ر نکی بات ٹنیس ہے جناني. آگے باب الضيافه میس واقعہ آ ےک اک رسول اذه صلى القد علیہ 
وک می انضارى کے بارع ب تشر یف لے گے اور آپ کن ان سے یہ فرمایاکہ تحمل بس كلا ایی 
كبو رکطا وج آد ھی بی اور وی کی مول مول ے نو وک ان کے سا تد بے کاش تھی اس لے وبال اکر 
انی یندید ہچ ظا رک د کہ تي كعانا چا سے ہیں نو ہو کنا ےکہ یہاں پر بھی جن لوگوں کے سان خومش 
رر ا لا ا ا ان شبك بون 
ال عد یٹ سے ایک اور بھی بات معلوم موك بھی ايا بھی ہو ج کہ الد تخالل كاين تیک 
ینز ول سے معاملہ ہو جا کہ ا نکی خو ا کو لو را نی کیا ہا تا اور الد تتا کے جو :ايند ید ولوگ ہو ے میں 
ا نکی خو اش لور ہو جا ل ہے اس كك ان کے ك آرت یں يه بھی نیس ہوگاء اس حك انہوں نے جو 
تھوڑا بت ا اکا مکی ہو تاے ا كابد لہ دنياتق ٹل دے دیا ہا تا ے يكن جو اید کے کیک بند ے و تے ہیں ان 
کے لئے اکل آخرت سے اس دنال مض او قات ا نکی خواشيل پو ری نمی ہو یں چنانچہ ملا على قاری 
رم اش نے اک عد یٹ کے ذ يل يبل ايك وات كلما ے_ 
واقعہ ...... ایک دفعہ آسمان ےکی کام کے ل كول فرشت اتزر ہاتھااور ووس افرش كو یکا مکر 
کے ابل ار تھاء راست عل ملا قات موی اس نے لو چھا: ت كيت 2-1 ے ؟ اس نے ل اک تمك لكام کے 
2-14 ؟ ایک نے جاک کے اس مقصر کے ے کیہ جا یہ فلاں مر نے کے قريب سے اس کے دل میں 
چک کی خوائش بيد امول ہے اور نك كم دی گی اک اال كمه تریب جو تالاب سے اس عل جل بي کر 
دول کہ ا کی خو ا لو رى ہو جاے اور ال کی طر ف ا لكا كول حاب بال ر ہے+د نيال اسے مل جائے 
جو يه لتا ہے دو سرس نے تتايا: نك اس لے كيب كيال فلاں الث دكا تیک بنده سے ال کے دل میں دود کا 
شوق بيد اممذاسج اور ای نے ودع موا بھی لیا سے اور کے كم د گیا کہ 0 رر 


چا وے! حم 


دول ناكم ا کی خو ال لور ینہ مو او رخات میں اس کے ك ذ خی ہین جا ہے _| 
(٦٦)-----وعن‏ على رضى الله عنه» قال: نهى رسول الله صلی الله عليه 
وسلم عن أكل الثوم إلا مطبوخاً ‏ (رواه الترمذى وأبو داؤد) 
رج مس حضرت على ر ی الف عند سے روات کہ شی 
نکھانے سے مع رماي كر کہ وكامو امو 
(۷٦)----۔وعن‏ أبى زيادء قال: نات غانشة عن الس فالت: إن آخر 
طعام أكله رسول الله 4 عه طعامٌ فيه بضل ‏ (رواه أبو داؤد) 
ر جم ...... حطررت ابوذزياد سے ردایت سے وه فرءاسة ہی كر خضرت عاش ر ی القد 
عنها.ح پیاز کے بار ے میں سوا كي اكيا ف آپ نے فرمایاکہ خر یکھااجورسول اش صلی ٠‏ 
الث علیہ و کم ےکھایادداہاکھاا تھا مل مل پیا زتھا۔ 
(۸٦)-----وعن‏ ابنى بسر السلَمیّینء قالا: دخلّ علينا رسول الله ۳ 
فقَدّ منا ربدا وتمراً و كان يحب الزبد والتمر - (رواه أبو داؤد) 
رجتم ...... حفرت علیہ بن بم ری اور صرت يد الثذر بین بس کی ر اللہ تیال 
کنبا سے دواييت ہے وه فرماتے ہی ںکہ ر سول ایٹر صلی اٹہ علیہ و حلم ہمارے بال تخر بف 
لاس تو ہم نے کپ کے سان کن او رور يثك اور آ فضرت صلی اود علیہ 7 
صن او رکو ركو يش رالا کے ے۔ 

0( ----- وعن عكراش بن ذؤیبء قال: أتينا بجفنة کثيرَۃ الثريدٍ 
والوذرِء فخبطتٌ بيدى فى نواحيها وأكلّ رسول الله صلی الله عليه وسلم من 
بين يديهء فقبض بيده اليسرى على يدى اليمنى ثم قال: ياعكراش! کل من 
موضع واحدء فإلّه طعام واحدٌ ثم أتينا بطبق فيه ألوان التمر» فجعلت آكل من 
بين یدیء وجالت يد رسول الله صلی الله عليه وسلم فى الطبق» فقال: 
ياعكراش! كل من حيث شئتء فإنّه غير لون واحد ثم أتينا بماءٍ فغسل 
رسول الله صلی الله عليه وسلم يديه ومسح ببلل کفیه وجهه وذراعَيهِ ورأسّهء 
وقال: ياعكراش! هذا الوضوء مما غيرت النار ‏ (رواه الترمذى) 


E ۸۰ 53 


شر بج ...... حضری عراش بن ذو یب سے ی الث رنہ سے ادایت ہے دہ فرماتے ہی ںکہ 

تار ے بال ایک بڑا بر تن ایلیا ل مس بہت ريد او رگوش تکی بو شیا لكل یس اس کے 

اطراف می سے اپنے ہاج ھکومار نے کاو ر رسول الث ع ا ہے ہا سے سے تناول فرمانے 

ار اماي | ا کے سا تخد مر ے دا تيل پا تق رکو يكذ ليا اور فرا: اے 

عراش !ایک بی چ س ےکھاا ی ل َك سار اكعاناايك ہے تمر ہار ے پا ايك طباقی لایا 

كيال میں لقف مک جوري لتحيل میس اسبية سان سےکھانے لک اور ر سول الثر عه 

کا تھ اس طباق بل كحو متار ہا آپ عله نے فر مایا :اے حراش ! جتبال سے چام ھکھا اال 

کہ ہے اينم نیس ہے ء جر ماد ےپ ا پان لا کی ل رسول الث نگ نے ا دونوں ٠‏ 

حو ںکو رعو او رای یلیو كل ترکی کے سا اچ سے اور ات یکلا يد ل كواور اپنے سر 

وپ ھا اور ف رماي كه اے حر اش !ہے و ضو ہے اس جز سح جس سک و آل نے تیر ب لکردیاہو۔ 

ا 2 كمد لج كرا جو اصطا ىو ضوےومواچجب یں ے بللہ مہ تر دس لين یکائی سے_ 

سيل تق پیل هكزر چکاکہ سان سےکھانایااد ر او صر ےکھازا ا كايا حم ہے۔ 

اک عد یٹ سے حر ت کر اش رض اللہ عن کی اطا عت كل بجھ یل آر یہ ےکہ جب ایک مر ج 
ن یکر یم صلی اللہ علیہ و سم نے شید کے باد سے بل ہے رای کہ سان سےکھا اال کے بحر جب دوس رکم کا 
کھاا ایا تو بھی ححضرت تکرش سين سان س ےکھاتے ر ہے اکر جد ر سول ادڈہ صلی الذد علیہ و سلم اھر ادھر سے 
کھار سے تے کین چوک آ خضرت صلى الثر علیہ و حلم نے ييل اھر فرماديا تاک اپنے سان سح كحاة تور سول 
اٹہ صلی اللہ علیہ و حلم كوا حر ا وط رس ےکھا سے دک كر نبول نے اور ادر ےکھانا شر دع تب كيايها یک 
کہ خضرت صل الث علیہ و کم نے خووا نی ںکہاکہ جہہاں سے چام دكحاايك فو اطا عت شعار ىك نك نو بی 
تم دياس سول اوڈہ صلی قد علیہ و کم ےہ باقی خضرت صلی الث علیہ و کم ادر ادر س كمارح ہیں قو 
ہوسا ےکآ پکی خصوصیت ہو يأك ول اور وچ ہو حك نو وت یکر اکا کے عم دہاگیاہے۔ 


ایک نوحیت کےکھان ےکو اٹ سا کھانا:- 

دوسررااس سے ایک اور ستل بجھ می آیادویہ س کہ ایک تى جل س ےکھانا ج بک ہکھان ایک ہی 
نو عی تکام وکھانے کے آداب میں سے ے اور آپ سل الد علي و كلم نے می ادب بیان فرمادیاے اور اھر 
ادر سےکھانا ایند يده >- آپ صلی اللد علیہ و كلم نے یہ بات بیان فرمائیء اس بي تیا كر کے حطر 


53 ۱۸۱ جج 


لراش ن جو رکا بھی میں عم تچ راکہ یک بی طرف سح كحانا اہ اکر چہ قف مک جور بی ہووں۔ 

اہر ےکہ اپینے سان سے كعانا كول نا چات فو یں خواصضرت عراش ر ی الد عند ا سے سان سے 
کھار ے ہیں فو شر ع]اس می ل كول حرج ہیں تھ نو حضرت علا كو بظاہر ٹوک ےکیء ستل تناكل ضرورت 
محسوس تنبل مول اہج ی ليان ج کہ حضرت عراشل ر ضی الد عت کہ رہے ت ےک سان سے ت کیان 
جا ىہ ااب ہے ان کے ذ بن یس ستل غلط ھا ہو اتا اس لے رسول ارڈ صلی ارہ علیہ و سکم نے ستل چان 
ضرورى چھاء اس سے معلوم ہو اک ہاگ ایام جو غر عأنايند يردت ہو کر ووت م كول آدى اس ےکر وہ مھ را 
ہو و اسے ا کاجواز تادیتا چان ہے فیس سو چنا چا کہ اکر ہے ا لكام سے ني كلو نكن م كول ررح نیس 
ہے مہ کیک ےکہ ا کم سے نكت میں کک كول حر کی بات نیس سے کان يمنال شرعأاال سے هنا 

وجي تر نک بات ے۔ ظ 

ظ (١۷)-----وعن‏ عائشة» قالت: كان رسول الله صلی الله عليه وسلم إذا 

أخدّ أهلّه الوعك أمر بالحساءٍ فصّنعء ثم أمرهم فحسوا منه» و كان يقول: إِنّه 

ليرتو فؤاد الحزینء ویٔسرو عن فؤاد السقيم كما تسرو إحدا كن الوَسَح 

بالماءِ عن وجھھا ۔ (رواه الترمذى» وقال: هذا حديثٌ حسنْ صحيح) 

رم للم خضرت ما کش ری اللہ عنہا سے روات ہے وهف راق ہی ںکہ رسول یوک 

عادت مہا رکہ وك جب آپ کے گھردالو ںکو جار ہو تا آپ ھ مروینان ےکا گم و نے 

لوه تیا کیاجا تا بآ پا نبال عم دسيية نو وہای یش سے ہے اور ن یکر م ع رات 

تک ہے لين آ وی سے و لك مضیو کر تاور يهار کے باع نک صا فکر ماج جاک تم 

لت كول ۶ور ت انی کے سات اپ جرس کے ميل بي لکوصا فک ر ے۔ 

تر ...... اس حد یٹ نمل حا ہک ہک ہے صا کے ہیں اس چ کو ج ےگھون كمون کر کے پیا 
جا حسا بحسو کا ن ےکی چ رکو تھوڑا تھوڑاکر کے ينا لن جز بل ای ہوئی ہی ںکہ كود 
گھوخ شك کے پیا اتا سے جبیراکہ چا اور سوب ویر ہگ لاک نزو ںکوائس طررح يع کو رلى یں حو کے 
إل حا کن سے جھوڑ یی تجوز یکر کے پیا جانے دای نز یہاں اس سے ممرادبظاہ بيد ے سکاذکر ييل 
او رکا یی جوكاد ليسي جدكايالى ٹس کے اندر شب اور دودے وی رہ لا لیاجاجاے اور من دفع ور يل 
۱ ()عن عانشه قالت سمعت رسول اله صلی ال عليه وسلم يقول البینة مجمة لفواد المريض الحديث مشكاة المصابيح 
کتاب الاطعمة الفصل الاول۔ رع لاض ملاسم ۱ 


ا ۱۸۳۲ آعم 


بھی لای جالى ہیں اس کہ يها لج حماء کے فوائرييان کے جار ہے ہیں ىہ تقر ييأوى ے جو يد ہے کے 
گزر كل ني تو معلوم م واک یہاں صاء سے مرا تبیہ ہے بیہاں دو فا کد ے بیان سے گے ہیں : 


حاء کے قوائر:- 5 

پا فا ترم سی ای ھا و وی ےکن سے ملین ری كول ویر جاتاے اور ہے پاٹ 
يد أ یگرب ك التلبينة مجمة لفوائد المريض تذهب ببعض الحزن 92 ل اع ید ے 
پا رکا ول مضبوط ہو ا ےچب ول مضبوط موك فو أ ما مق بل کر نا بھی آسان م وگ چنا خی خضرت ما کش ر می 
اقل قي حورا تعد کی ی إن ان جل مز لزان قن بن ی ا " 
ھر ی تك نے کے سے جو ہمان آسے ہو ہوتے تے ووو ابل جات حك تو خضرت ماک ر ی اشر عنها م 
دمت کہ جب تيا دكيا جا دو نیا کیاجا تاور س بكو ہے ےکا عم دی پاتا کہ اکا مز ال ہو جائے۔ 

دوسراقا ترم ...روس راف ااال مد فل پان ا د روو قؤاد اث 
کہ م کے فا دكؤي صا کر تا ہے۔ يهال فاد كيام راد ہے ؟ قو شش نے فو اد سے مراد ہاں دل لیا ہے اور 
ا ا لودو رک ناے ء اس صو رت میں اس جم هكاونى مطلب ب وكاجو ھل جج ےکا تھا گیا 
جملہ ا کی کید لین بض شا رحن کہا ےک يها 80 
کو ری زبان میں نض او قات فوا دكب دسب ہیں وای صو رت شل ايك نيافا تدك ا لكادوسرافا کد ہے 
ے لوان ےا نما نكا محر دصاف ہو جا تاےء محر وكاتتقي. ہو سے“ 

(8/) دوعن ابی هريرة,اقال: قال رسرل ال ا الفجرة من الجن 

وفيها شفاءُ من التتم والكمأةٌ من المن وماؤها شفاءً للعين ‏ (رواه العرمذی) 

تر می رت الو ہرس تر ی اللہ عند سے روابیت ےک ن یکر بم صلی الد علیہ 

وم نے فريك کو جور جت میس سے سے اود اس می زہرسے شقا ے اور حبق من 

ل سے ہے اورا کاپان 1 مول کے ے شفاء ے۔ 

شع کی ع مات ضارا مدق ان طر کو ور کے کے ص اق سے بات 
ہو یکی ہے لبت یہاں ايك نی بات ب كود کے بارے نل آ کی ہے دهي سبكم بشت ل سے ہے اس کا 
کیا مطلب سے ؟ ) 


العجوه من الجنة كا مطلي:- 
ملل يي لتلا م ی کے ون ا 
رض ون ين ےن بر کی سن کرام انج ما حول کا نے اکا کش 
سے ہے۔ ضر ت آوم اور خضرت حو اجب آسمان سے اتلد ہیں فان کے سا ہہ رعالل جت کے يك بے 
بھی اتر نے مج بن نے مت سے سی اپنے اد پر لبیٹ کے ےجب وه كه ہو كك کے ب بَدَتَ ات 
رانا ون ھتاہ لهاي ورد الْجَنّة © و از - یار 
٠‏ کوئی کچل نت سے آگیاہواوراسی ط رح ا كل نسل آ کے یڈ ےکی مو 


(V۲)‏ -----عن المغيرة بن شعبةء قال: ضفت مع رسول الله صلی الله عليه 

وسلم ذات ليلةء فأمر بجنب فشُوی, ثم أخذ الشّفرة فجعل يحُرٌ لی بها منهء 

فجاء بلال يؤذنه بالصلاةء فألقى الشفرةء فقال: ماله تربت يداه قال: وكان , 

شاربه وفاء فقال لى: أقصه على سواك أو قصه على سواك ‏ (رواه الترمذى) 

رہ میم حضرت چ رہ بن شعبہ سے روایت ے وه فرماتے ہی للم می رسول القد 

صلی اللد علیہ و كلم کے سسا تخد ایک رات ہمان واف آپ نے ایک دسق کے بار ے می 

عم دبا اسے بجو كياج ر آپ نے کی ری لی اور اس کے سا تر کے اس وق یش سس كاك 

کا کر یغ گے پھر حخرت يلال ر سی ایٹہ عر آ پکو نما زكل اطلا کر نے کے لئے 

سك ت آپ صل اللد علیہ و كلم نے اس جر یکو ركد دیااور فريك اس بلا لک کی گیا 

ءا کے ہاتھ ناک میں میں _ حضرت مغیرہ بن شعبہ فرماتے ہیں :ا نکی ن می رہ 

بن شع کی مو جل بد ی ہو تل و 1 خضرت صل اود علیہ و کم نے جھ سے قر ايأ 

میں تمببارى مو جو أو واک رك ھک کاٹ وتاموں_ 

ےہ وت اس میس 1 خضرت صلی اللد علیہ و حلم نے حضرت ہلال ر ی اد عدر کے باد می ہے 
فرایاے: ماله تریت یداہ - اس ل تر بت بیدراواہۓ لغوى صعنی کے اعتبار سے و بد دعاس کہ اس کے پا کے 
نک میں ليس ين بي ناک میں لے لیکن عام طور ير اورت کرب عمل ہے ملم پر وھا کے ے استتیال 


٣ ركورع نم‎ ٣٢ سور الا عرا فآیت ر‎ )١( 


3 ۸۲ تح 


نیس ہو تابللہ ييار کے طور بر استعال ہو جا ہے حطضرت لال ر ی الد حنہ نماك اطلار کے ك 21 © ب 
كول ری بات نہیں ےک ۲ خضرت صلی الف علیہ و لم نے خط رست يلال ر خی الث عند کے امل ط رز کل پر 
انکہارنا ند ی ر کیا کہ مال تر بت يداه كه ا لک وکیا كيال تم انك نا سے ٹیش ہکھا اکھار ہے تے در ميان سل 
اس نے اکر نما زی با کر وک تو بات اسل مم ہے سك ناز کے وت می ابھ گنی اش کی _ ونت تناه 
حطرت یلال ر ی الٹہ عنہ نے احقیاط کے طور پر آ پکو اطلاع دک چو کہ مناسب ہہ تھاکہ آ پکو جب تھانا 
کھاتے دگ لیا ہے توا ظا رک لیت ء جب آ پکھانے سے فارغ مو جاتے ير آي كو نما زکا کے ہے آخ میں 
مو بجو کی بات ہے ا اسل ان شاء الث آس ےکاب الل با ل آ جا ےگا 

(۷۳)-----وعن حذيفة» قال: كنا إذا حضر نامع النبی صلی الله عليه وسلم 

لم نضع أيدينا حتى يبدأ رسول الله صلی الله عليه وسلم فیضع يدهء وإنًا 

حضرنا معه مرةً طعاماء فجاءت جارية كأنها تدفع» فذهبت لتضع يدها فى 

الطعامء فأخذ رسول الله صلی الله عليه وسلم بيدهاء ثم جاء أعرابى كأئّما 

يدفع» فأخذه بيده فقال رسول الله صلی الله عليه وسلم: إن الشيطان يستحل 

الطعام أن لايذ كر اسم الله عليه وأنّه جاء بهذه الجارية ليستحل بهاء فأحذت 

ھا فجاء بهذا الأعرابى ليستحل به فأخذت بيده والذى نفسى بيده» إن 

يده فى يدى مع يدها زاد فى رواية: ثم ذكر اسم الله وأكل ‏ (رواہ مسلم) 

رچ سے حطرت عذ يفم رع اللد عند سے ددایت ہے وه فرماتے ہی ںکہ جب تم 

ر سول ایٹہ صلی اللہ علیہ و صلم کے سا جح ھک ککھانے می ش ريك ہو نے تھے نو اپنے پا تھ 

كاسن میں نہیں ڈا لے تے یہاں کک کہ رسول اوڈہ صلی الف علیہ و سم ابتف ا فر اور 

یم خضرت صلی اللہ علیہ و ملم کے سا تخ الیک مر حب ہکھانے می ش ريل تے تذایک لڑکی 

آئی (یا ایک باندی 81 )ایی اتا تھا جیہانہ ات د کا دیا جار ہا ہے (بذى تعزى سے باق 

مول آل )اور وہ آ سك يق حال دواپنابا تجح ھکھانے میس ڈانےء فور سول الث جو نے اس 

کا تھ بك لیاء يمر ایک بده آيا جیماکہ اح دمک دیا جار پاے فو آ خضرت عله نے اسک 

اتھ بھی بلك ليلد رسول اللہ صلى الد علیہ و حلم نے قرم کہ خيطا نكما فكو حلال بجنت 

ہے اس وج س ےکہ الى يال تقال ىكانام بل لي كيالو وداش لذ ىك لكر آيا> کہ 

اس کے ذر سل سے وہ ا ل ۓےکھانا علا لكر نے تو يل نے ا كارا تحر يك لياء ير وہ اس 


5 ۱۸۵ اعم 


بد وکا ےکر آيا تك وہای کے ذ ر لیے سح كما كوحل اال به سلء تو یس نے اس لكاب تير 
بھی يكذ ليا اود م ہے اس ذا تك جس کے تت شل می رک جان > کہ بے تك اکا 
اھ ن شیطا ن کا ہا میرے ہا تد ٹس ے اس باندکی کے بات کے ساتھ اور ايك 
روایت ل سك پچ رآ ضرت صل ال عرو لم نے الث دکاناملیااو رکھاناش رو كر دیا۔ 
2 کے ایک فی حد یٹ سے ابت لحاس کا ادب معلوم ہو کہاگ رھانے کے موق ير 
لی بذااور محر أرق موجؤد مو الل اجر ام یس موجود ہو وج بک بتك دہکھانار 2 تکرے الوت تک 
او ںکو کی کیا بل سن ۱ 
جرت عيفد رض الدع فر 2 ہی كا كرتم رسو ال صلی اللہ علیہ کت ت کھانے میس 
شيك + لت تھے تج ب کی ضر صلی اللہ علیہ وس مکھان ےک طرف بات ٹنیس بڑہاتے حك تم بھی 
ات بال بڑھاتے تھے لیکن يجو لک لی ہے ا كوك زا کی شر ين یی ن تو ای 
ساكول طر سك آوا بکی فر يس تی ای ط رح رسول ال صل اث علیہ وسلم سے يل کھا شون 
کرت چا ليان خرو تقال و ه كنار ورك ری کے الذ رکا نام لئے خی جن سےکھانے یں بے بک بيد امو پا 
اور شیطا ن کا كما ف کے اندر آجاجا- ا یکورسول اللہ صلی ارہ علیہ و کم نے اس بات سے تی كيل ا یکو 
شیطان ےک آيا سب ہے بھی ہو سکم کہ رع لن ےک آیاہو ن خحیطان نے ان کے دل یں داعيم پیر اکیا ہو 
يهال ب آس كلو ربخي رمم این کےکھاناش وکر کاو ہے بھی ہو کا هكم یطا نکی رف ا نکو لان ےکی 
نبست باز اکر د یگئی ہ کہ ان کے اس طررح آنے ب شيطان خوش ہو اس ےک اک ہے ند سة لأسا کے 
ساد الث دکانام ےک رکھاناش ور كر سنت فذاس میں می اكول حصا ند ہو تا اب ہے انام لے ای شر 2 
کر کے توج بج کول اور ال کا نام تيال كال ونت کیک كاذ كح كها كام و قع ل ہا ےگ ٠‏ 
آخرمیں بل ے کی والذى نفسى بيده ان يده فى يدى مع يدها يهال دور وامقل 
إل بض رواتتول شل ہے مع يدهما تن شی ہکی شیر ا كول لشكال ياس لكك 1 خضت صلی 
الثد علیہ و كلم نے اس بد وكاب تد بھی ڑا تاور اس لش یکاہ تہ بھی يكرا تھااس لے حشر کی یر مون جا ء 
پوھد ری ہم ال 
بھی ہو سکتا ہے لیکن ہار نے سان جو کہ ہے اس مس ہہ لفاس :هع يدها داحد مم فک یر ے ل 
جرس پاتھ یش خیطا ن کاب تھ ہے ال لڑکی کے پا تھ کے سسا تح ای پر بظام ہے اشكال ہو تا ےک آ خر 5 
صل اللہ علیہ 211 ڑا امش بانر یکا بھی اور يدوك كان لح ید ہما ہو چا ے۔ 


پت یہہ 2 


ال کاجواب یہ ےکہ اک ریہ روایت بو پھر یکیں دك ہو ککتا ےک 1 فضرت یی 
علیہ و كلم نے با ند یکو ایک با تھ سے يكذ ہو بظاہرالیماای سے اور ب وکاپ تج دوس ےہا تھ سے يابو اور سل ۱ 
اھ سے با ند یکا با تھے ب ا تایا کی کا تح بپ اھا ہا ت سے شیطا ن کاب تج يامو تاکر چہ بر وکا ات کی 
کب کی دبا م شیا کا تھ چا تھ دو کے بت یں کی عرف لك 
كبا سے اس لے مع یدھاکہ دياكيا- 

70و03 ----- وعن عاعشة» أن رسول اللہ صلی الله عليه وسلم أراد أن 

يشترى غلاماًء فألقى بين يديه تمراً فأكل الغلامء فأكثرء فقال رسول الله 

صلی الله عليه وسلم: إن كثرة الأكل شوم وأمر برده ‏ (رواه البيهقى فی 

شعب الايمان) 
رج کٹ حضرت عا كش ر ی اللہ عنہ سے رایت سكم رسول اللہ صلی الد علیہ 

و سم نے اسیک غلام خ یر ےکاا راو وكيا تو آي صل الثد علیہ و كلم نے اس کے ساح ييه 

کو میں ركه ديل لوال لام نے وه كوي كعا ل اور خو بکھامیں فو ر سول الث صلی لہ 

علي و کم نے فرمایاکہ زياد هكعانا ست ہے اور اس غلا مكووابب لكر ےکا حم دےدیا۔ 

لط کرت ہے مطلب تيب سکہ غلام خر بد گے تے او كثرت اکل اا کا عیب تنا توآ پ صلی الل 
علیہ وم نے خيار عی بك و چہ سے واب کیا ے بللہ مطلب بي ےکہ آپ صلی الث علیہ و حلم نے ري بل 
الہ ريد ذكاارثأدمكيا تالور ا یکو يكن کے لے ء جا نے کے لئے سے پاک بلايا تخا اود جا كاطر يقد ہے 
اتا ركيا ل اس کے ساس ےکھانا ركد دیا ای زا ہکا كان برل ہی شی ا 
ال سن بہت زیاد مکھائیں ت ۲ مخض ررح صلی الل علیہ وکلم سبج کے کے يه كثرت اک کاعادکی ہے اور جد زیادہ 
کھان كاعادى ہو جا وول یکا ما خی ہو جا۔ اس لئ 1 خضرت صلی اللہ علیہ و کم نے اسح واب كر ن ےکا 
كم دے ديد زياد كاذ سے مر ادیے س کہ اعت الل سے ذيادهكعان قا نل طر کی جہامت وا لے آر یکو 
كعانايا يك ال نے اس سے زياد ہکھایا۔ 

)¥( -----وعن أنس بن مالكء قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: 

سید إدامكم الملح ۔ (رواه ابن ماجه) 

رجہ 7 ردت الل ی اللہ عنم سے روایت ہے دہ فر ے ہی كه ر سول اللہ صلی 

الل علیہ وع نے فر ايأ كم ہار ےکھانو كاسردار نمك ے۔ 


K&S‏ ے۱۸ جج 


تو EOS ees‏ آئڑ سے کہ ہار ےکھانو لكاس وار دثيااور آخرت يل اکوشت ے 
۱ او رض می ںکوشت کے سا تد چاو لكا بھی ذکر ے كنز الال یل كت كال اعاد بیت ہیں جن ملكو شت كو 
اکا ردا رک گیا 90 ج بکہ یہاں نم كك دكا ےکا دا رکناکیاے و اکر یہ عد یٹ کن و أو پھر 
جواب ہہ وکاک كوش تکاس ر دار ہو ناور نم کاس دار ہو نالک الک اعقبار سے ے۔ 
كوش تكاس ردار وتاي ا کی ایت وخ رہ کے افقار سے ہے اور نم ككاس دار ہونا اصطارح طعام 
کے اختبار سے ہے یا تقاعت کے انتبار سے ےک اکر نمك رول بھی عل جاۓ فو تناعت شعار 7 
بھی بڑاکھانا سه 0 ۱ 
۱ (۷۰)-۔۔۔۔وعنء قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: إذا وضع 
الطعام فاخلعوا نعالكم فاته أروح لا قدامكم ۔ 
رجتم ...... بکرم صلی اللہ علیہ و کم نے فر بيك ج بکعاتا رکھاجاتے وچو کے اعا ر ليا 
کر وای كك تہارے فر مول کے لے ہے زیادور اح تکاباعث ے- 
22 می جوتے اتاد ےکا ج تم دیا ہے وہ اس کہ بتر ہے س کہ آد یکھانااعلیینان سے 
كما اور آرام کے سا تر ٹیک کھاے اکر جوتے سیت بک رکھات كفو اہر کہ ٹین يبل وا ینان 
اور کون تل ہوگا_ ۱ 
)۷۷)۔---۔وعن أسماء بنت أبى بکر: أنّها كانت إذا أتيت بثريد أمرت 
به فغطى حتى تذهب فورة دخانه» وتقول: إنى سمعت رسول الله صلی الله 
عليه وسلم يقول: هو أعظم للبركة رواهما الدرمی ۔ 
رر کی صضرت اسماء یقت الى یر ر شی اٹہ عت سے ردایت کہ ان کے با جنپ 
يد لایا جات فو آپ ر ی الد عنهااال کے باد میس کم ميق و اسے ڈھانپ دی چاتا 
يبال کہ اا یکی بھا پک شرت م ہو جالى اود ہے رہ كم بیس نے ر سول اولہ صلی 
الث علیہ و سل مکوبہ فرماتے مو سے سنا کہ ہے زياده رک تكايا ععث ے۔ ' 
كرو ......نث یکھانےکواتا شت اك يراك الك جو شد ید بھاپ ہے دہ شت ہو جا كي زياد هركت 
کا باعث ہے الل عد ی کا ہے مطلب تيل سج كل كعانا من اکھانا چا سے بلدء بہت س كما ف ات ہیں چو 
کھاۓ یکر م جاتے ہیں اور تنك یکر م للع ہیں۔ يهال مرادي س ےک ہکھانے کے ات سف کے وفت ا لكا 


KS‏ ۱۸۸ تچ 


ابال ہو تا ہیا بت زياد مکی ہو ےوہ ت ہو جا چنانجہ افظ ل : حتی تذهب فوره دخانه ‏ 
ہے بھی نی كبك ا کی عاب تم ہو جا بلک كباله ا کی بعا پکی شرت م مو ہاے ممن اکر 
پاپ مو جو د ے ان بت زیادہ بعاپ نیش سے توا سکاکھانا بھی بركت ٹیں قل تکاباعث ل ے۔ 
(۷۸)-----وعن نبیشة قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: من 
أكل فى قصعة ثٌ لحسهاء تقول له القصعة: أعتقك الله من النّار كنا 
أعتقتنى من الشيطان رواه رزین ۔ 
رج تع ضرت عبیضہ ر شی اللہ عنہ سے روايمت ےک رسول الثد صلی اللہ علیہ و تلم 
نے فريك ج آد یکی برت کے اند رکھانکھاتا سے يمرا صا فک دتا ے نذوہ بر ت 
اال کے ياد کاس ےک الد تقال مال ددزرخغ سے آزا رگرے چیہ اک فو نے تك 
شيطان ے بايا >- 


)۱( ٹپ ری ر قال لن ول ان ملل ان مان ا 
يؤمن بالله واليوم الآخر فليكرم ضيفه ومن كان یؤمن بالله واليوم الآخر فلا یؤذ 
جاره ومن كان يؤمن بالله واليوم الآخر فليقل خيراً أو ليصمت وفى رواية: بدل 
الجار: ومن كان يؤمن بالله واليوم الآخر فليصل رحمه ‏ (متفق عليه) 

7مھ کی ظرت الو ہر مقار شی الد عند سے روابیت سب هكم سول اند صلی اللہ عليه 
و سمل نے رایرک ج آ دی اللہ اور آ۶ ت کے دن يرايمان ركنا ہو وا یکو چا کہ اپے 
ما نکااکرا مك اور جآ وی اٹہ اور آ۶ ت کے دن پرا یمان رھت ہو قات واس کہ 
ا سے يذو کی كو اذا نہ يبيام اور جو آدى الہ اور آخرت کے دن ب ایھان رکتا ہو اسے 
چا کہ اہی بات کی کر خا مو شل ر ے اور یک روات يبل پڈڑوس کے جاب تمل 
ہ کہ اور جو آدى الد اور آ۶ ت کے دن يرايمان رکتا ہے تو اسے واس کہ وہ ا سے ر شد 
داری اوچوڑے(صدر تی الاد 

إفة -----وعن أبى شريح الكعبىء أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال: 
من كان يؤمن بالله واليوم الآخر فليكرم ضيفهء جائزته يوم وليلةء والضيافة 
ثلاثة أيام» فما بعد ذلك فهو صدقةء ولا يحل له أن يثوى عنده حتى 
يحرجه ‏ (متفق عليه) 

ر مس صرت اش رج كلعبى ری الث عد سے ردایت ےک ت یکر یم لی 
الث علیہ و كلم نے فرمایاکہ جو تنس اناو رآخزت کے دن بایان رکتا ہو اح پاک 
دہ اہین ما ن کا کہا کے ا کا خصو صی اكرام ایک دان اور ایک رات موم ے اور 
غنياافت تن دن ہو نے دوجو اس کے بعد ہو جاے ووصد قہ ہو تا ے اور ہمان کے ے ہے 
بائ خی ہ کہ وهال کے پا راد ہے يهال کک ا كو گی اور حر نمی ڈال د سه 

. ()-----وعن عقبة بن عامرء قال: قلت للنبی صلی الله عليه وسلم: إّك 


ا ۹۰| 

تبعشنا فننزل بقوم لا يقرونناء فما ترى؟ فقال لنا: إن نزلتم بقوم فأمروا لكم 
ہما ينبغى للضيف فاقبلواء فان لم يفعلوا فخذوا منهم حقّ الضيف الذى ينبغى 
لهم (معفق عليه) ظ 

رجہ ٰ: می مطرت عقر بن ا رر ی اٹہ عند سے روات ے دہ فرماتے ہی ںکہ يل 
نے ني كيم صلی اٹہ علیہ و سبلم سے عر کاک آپ ہیں کیج ہیں اور تم کی قوم کے 
يال يقالت ہیں يان ده مارك مبمانی خی ںکرتے, وآ ب كاكيا گم سے ؟1 ضرت 
صل اشر علیہ و کم نے ہم سے فر يكل اکر لى قوم سك يال يدالو اور وہ تيل وه جز 
ديل جد ہما نکودیے کے من سب سے فو تم ا كو قبو کر لو اور اکر وہ ہا ری انید 
کرس نو مان سے مہما نكاده تن نے حلت ہوجو ايك ہمان کے مناسب ہے۔ 


ال باب شل سب سے يبلا ستل ہے قال ذكر سكم ضیافت کا عم مکیاے ؟ 


نيان تكاك:- 


و یر کاک ہب ے۔ ۱ 

ایام اکر ر مہ ال ...... ام ات کے نز ديك ال بدو ير ضیا فت و اجب ے اور ائل فرك بر غیافت 
واجب نیل ن جل وگ آ ہاولوں می ياقصبات میس ياش رول ليا مش ديهها قال مل رچ ہیں ان پر غیانت 
واجب ہیں ے اور چول وگ رور وراز كلو عل ر ے ل ان بر ضیات واجب ے۔ 

خفيةاوراكثرفقهاء..... كن حت دراك فتا رکا ہب ب ہک اصل کے اقارے 7 
ضيافت واجب یں ے بل مكارم اخلاق شش سے ے اور زیاددے زیادەاے 0 کے نل الب أكر 
كو ین ضطر ہو تا سکی ضیافت واجب ےئ كول ايض ہمان بن جائۓ شل کے پا كعاذ کے لے يه 
موجور یں او ربل اور ےبھی ا سک وکھا نے کے ك اھ لن ےکا لمكا ت ہو اور وہ شر یر بمو ككاغكار ے أو 
2 انیات كرناواجب ے الب رط رک ضياذت واجب یں ہے الت اکر آذ والذا ىسك اورال 
21 سے کے سك ای سے مبھ یکھانا شی نکر نا یر نے در ہب ےکا ل ہو ےکی وج سے تقال مھ موم سے۔ 

بظاہر ہے معلوم ہو تاس کہ امام ام کے قو كا م کل بھی ببق ےکیو كر تور نے فر کیا ے 


و ود 
مطر ور فی معن كا مط رک ضا فت واجدب اور تیر مخط کی تیر و اجب اور امام ات نے فر قکیاے الل برو 
اور ال تر یکا اس فر کی وج جك بظاہر بجی سب کہ شرو میں عام طور بر د نظ یں ہو اکر ا كو 
کی ن ہی ںکھات ےکا لكان ہو جا ہے با ہیں سے رید کا سے جیے آ نكل ہو كل وغیرہ ہوتے ہیں با 
E‏ ات رت رن کت ا e‏ قري یل عام طور بر لوگ عضر 
ہوتے ہیں لپ اہو ر اور امام اح کے نہ ہب می ل كول اص فرق جيل رباد ثاب بنيادى قول دوتق ہو یئ :ايك 
ب کیہ يات داجب ے ہے لبیٹ امن سعد و تر ہک آل ہے ادر د راکہ ضیافت داجب ل ےکر سر کے 
اوري اک فقهاءك ول ے۔ 

0.۶9۰0 :و حرا ت ليع ہی ںکہ ضیا فت اجب سے ا نکی و ليل حضرت 
عقبہ :ان عاعر ر سی الد تا عنہ والى عد ی ہے جو اس باب ٹیل تر سے تبر يد آرہی کہ انہوں نے 
خضرت صل اللہ علیہ وسلم سے عر کاک آپ نمل کے ہیں او کسی توم کے يإ ہم پڑاوڈالے ہیں 
کن وار ی ہا کر نے و ضرت ت صل الث علیہ و کم نے فيك اك زو میں خود مجان سه 
ديل ج مہما نكاد ی عات پھر نو ھیک ے اور اکر وہ تہارک مان نہک یں فو یمر مهما نکاجھ ہن نا ے ووان 
سے کت لے لوذ یرد سای صورت میس ہو سا ہے چ بکہ ان بے مان یکر داهب ہو ای رح 
اسل ال مل عر ت قرام بن مع درب شی اھ تال دك حد یٹ ےک نكر يم سبل ابثر عليه 
نے ار شاد فرمایا: 

ایما مسلم ضاف قوما فاصبح الضيف محرومًا کان حقاً على كل مسلم نصره حتى 
يأخذله بقراه من ماله وزرعه ‏ (رواه الدارمى وابوداؤد) 

ال کا حاصلل ہہ ےکہ یکر یم صلی اٹہ علیہ و کم نے رای زک ہر ایا لدان ج کسی قو مك ہمان بے 
من دبال پر دہ جردم دس لی دہ اس پچ ہکھانے کے لے نه ويل قوب لدان بر اجب ےک وواس مہا نکی 
بد دك سه اور انس می ز بان سے ا کی ما یکر داۓ ءا سے بظاہ ہے محلوم ہو جا ےکر غیاقت واتب ے۔ 
0 رک وکل ...کہ رک ديل ب سنك عام اعاد یٹ کاسیاقی 2 خی الراك جس سے 
بظا ہے معلوم بمو تا ىكم ضیافت واجب کیل بللہ مکار م اخلاق ل سے ے۔ 

جو اپ ...... عقبہ جن عام اور قد ام ین محد مجر ب ر ی اید تساك عد یو ںک کی رح سے 
مہو رکی طرف سے جاب وی اگیاے ملا انل نے ہے جو اب یاک ہمان کے باد سے میں یہ کہ اکیاس ےک 
حشی یاخذلہ بقسراہکہ دہ اپ ہمان کے بد لے مم لے سکتا ہے تو یہاں لہ سے مر ادا کی عمزت 


2 ۲ تج 


مت ہے فی با ىل وہ اس بل او فوس بر جل نے اح رول کن یس 

پا می اس پر تقی كس اور ا سک برا یکالوگوں کے ہا ذک کر ےء اس سے مال یدام راد ال ے۔ 
يكن ہے تو جیہ انا گی بعید ے اور خود عد بیث کے الفاظ ا لك ترو ی دكا ر ے ہیں ای ےکہ دار ىو غیر مکی 
روایتں کے اٹل جو الفصل الثالى یس آرہے ہیں وہ ہے ں: شی ياخذله بقراه من ماله وزرعہء نے 
الفاظ صا لاس لوجي ہک دی رک ر ے ہیں۔ 

دوس راجواب ہہ دياكيا ‏ ىك یہ صد یں ابنذ اۓ اسلام بر گول ہیںء ابت د اسع اسلام ل ضیافت 
واب گی بحد ثبل بي وجوب مور ہ گیا یہ جو اب الام لحاوى رحمہ الث یر ہے افيا رکیاہے کان بظاہر 
ہیں معلوم ہو اس کاک ہے قول رأدالااغتيا کر اہی ہد تو کی تی رکا عجاسة یو ںکہنا چا کہ یہاں گم 
کی عل مر ہدنک وجہ سے تلم مر تفع گیل " 

دو زی دل ہیں ایک رأس كول عم مو موكيا سورع ہو ےکا ناضا ہو تا هكد اب وهم 
کسی کی عالت میس لاگو بل ہو اور وو سے انتهاء الحكم بانتهاء العلة ےک کول ماس وچ ے 
رق دلي اك لت مرح گنی قوسل صورت عمل وم گم پمیشہ پیش کے لے خت يش ہو بک سی ظ 
مر نکی عالت اكردوباروييد اہو جاۓ تووم م بھی لوٹ 1 ےگا 

اك عثال بقع کے دن كا نسل ہے ابتد اے اعلام یش واججب تا بعد عل ہے وجو ب بالق مال ر 
يكن یہ وجب شخب نا نل ج بللہ انتھاء اللحكم بانتهاء العلة ہے ن اترام يل جو بھی کے تس لكو 
وجب ققرار د )گیا تماد الیک نما عل کی وجہ سے خھاکہ لمانو لکو اپ ےکا مكار خودکرنے پڑت کے اور 
٠‏ سے زیادہ كال ہوتے ے اور جو ہو تے ے وه مو ]اون کے ہوتے تھے موئے مو ے ك» ینہ بت زیادہ 
حا تیاور مد نبو یک يمت زياد هاو أبن ار کے دان جح زیادہ جو جانا تما سیا گی پا شن کر 
ينك دج سے ایک دوسر ےک شد يد تيف ہو قی ی او 1 خض رست صلی اللہ علیہ و كلم نے اليف سے 
بچانے کے لے فراياکہ جب بمعہ يذ عن ہو نو شس لكر کے آي کرو لین جب مسلمانوں کے حالات ذرااتتك 
ہو ےکا مكاج کے لئ تلام بھی لے گے اوراس طر نکی صورت حال باقی نہر ہی و وجو ب شت م وکیا یہ نا 
بل ےا رت کایں اك مطلب یہ وكاب جع ہکا سل ل واجسب نیس ہوا لن یقت یک یہ 
ب يبل يلل انتھاء الحکم بانتھاء الع سے إبزااب جاک رای طرع کے عالات 00-۷ 7 
تذہاں يروت تم لوث آ ےگااور جحعہ کے دن کا کل واجب ہوگا۔ 

ای طرسيلتة سے اکر امام ھا دی رحمة الث رکا ىہ قول سے والا افيا رکر بھی لی وت کت 


تھا عم 


ات لہ ل چ ما رت کی وو نا قطنت کر ی ارو نت ی ای ا ےم لذ 
مان نر ہو اکر تے تھے ء اس لے مہمانی على الاطلاق واج بكر یکی يكن جب حا لات انت ہو گے خو شهالى 
آ کی قذ اب زیادو تر لوگ مخطر نہیں ہوتے تھے اس ے ممالیکاوجوب شت كر و یکی لیکن اس وجہ سے نير 
عم بالكل م م وکیا بک اس وجہ سےکہ عل با ترم ا بھی علت اضطرار مو جو وموك 
020111 

تراج واب E‏ تی راجواب ہہ دياكيا ےکہ ىہ صد ينيل متنطرير گول ہیں اور مل جو بات شی 
ا كاعا سل بھی می ھا تی نط کی ضیافت واجب ے اورا اک رکوئی تنص مر ریا ضیافت تی كر مکھانے کے 
۳۳90ی 029 
ےا ا کک اجات کے فريك لے نے۔ 


بتبراحاز نت جز ليث کی صورت میں ضا نکا عم :- 
` ہاں الہتہ اس صورت می اس می اختلاف ہو ا ےکہ بعد می ا سکامضمان واجب موكايا بال 

حم اور و رکا نم ہب کت اشطرار کے وت اس کے لئے يخي اجاز تکھانا ہا ے کن 
بعد می جب اضطرور م ہو جا ےگا اور اس کے پا كنا موك قو اس برا كل مان واجب موك إلا کہ 
باب اپنے بے کے بال ٹس سے ا لک اجات کے اق ہکھائے۔ باپ اکر نے کے مال میس سے المت افطرار 
ل ا سک اجازت کے إخير ے نے توا کا مان وال پر واجب ڑل ہو تا_ 

امام ات مہ اش 5006 ام اج ر حم اکا ول ی ےک مقر کسی بھی صورت مس مان اجب 
نہیں ہوم بہر حال اس بات پر اتفال موكيا نط ر کے لئ اس ونت ا مال کک اجات کے بت راونا جا تڑے۔ 

چوتھاج اب ل ی عد يل عاطیلن ةير گول ہیں وول رگ ز3 دخیرہ یلین ہا ے ے نز اہر 
سج كا كك و حاف پٹی ہک بھی ضر ورت ہو کی گی ابنذ ائے اسلام می میت امال میں و سحت ہیں ہو تی تی 
ال لئ ا کا سر خر بی ت الال سے ینا مکل تہ اس ك1 خضرت صلی اللہ علیہ وم ےی عم دے 
رکھا تمہ جن جن قال کے يل جا مین ک3 بل فو ان كأنفق از خیچ ان کے ذمہ ‏ ےکھاناد خی ان 
قا ی کے ذمہ > توچ وکر آ تحضر صل الث علیہ و کم ف لازم قراردے دی تھا اس لے ان 7 اجب گیا ۱ 
اوران عا لان کے لے ان سے ز مر و سق لین بھی چائز موكيا کن بعد مل جب بیت امال کے اتر رو سحت ی 
ہوک اوران مال اکوزاد رامیت الما ل سے سخ ۓل کیا ہابت عم شت ہوکیا۔ 


گا ۹٣‏ تج 


ادال جاب مم سب سے بتر اود يجداب ہے معلوم ہو جا کہ ہے یں ذمیو ں کا 
گول ہیں ء بج سے کے ياب میں یہ بات بعد گزدچی ےک خضرت ت صلى الد علیہ و کم اور حضرت عرو فيل : 
نے پھلوگوں پر جب بی مقر کیا زان کے بای شبك ودر م ودنام سا لان شال تھے يبك فور زيل 
شال یں اور اس کے سا ت سا تھ ىہ بات بھی شای قل ہارے لوگ جمارے کر ہا جمار ے عا ین اس 
ملا ے بی 1 بل کے فا نکی سمال بھی ہار ےڈ وک ہے ما ج كايا قاعده حص شی اور اس کے 
بدسسك میں جو سالانہ ہزم تماش میس فيفك جالى شی مشلا اکر سالانہ پار ہدرم لیے ہیں تو جن بي انی 
واج بک ای ج ان سے بار ەدر ہ مکی يجا دل در ہم لے جاتے کے با ايك د ينار لیا جات تاج بكم وبال 
تفحیل لز چا بی عد یٹ الل طرح کے يول پر مول ہے فو جد كل ہا ان کے جز بے کے اندر 
قال اس لئ ان ا نک ادال لام ست فو از وها ال دی ای دسق بھی ان ے لیا اکن 
بر حال مور کے ن دیک ان اماد یٹ ے ضاف کاو ج ب خابت کال ہو ح إلا ےک وو ضیف ہو_١‏ 


چا ہکا ن اور ای يل و ہحت:- 

دوس رک بات بی ےک آ خضرت سی اللہ علیہ وم نے نياف ت کا زک کے ہو ے فرمیا: 

جائزتة يوم وليلة والضيافة ثلثة ايام - 

اس میں جائز "شف ے ماز کو ز ےک مث كز رنا ہے جائز قاج یز ا صلل ب كما ےکی ای 
قدا رک کہا اتا ے جد ایک من زل سے دوس ری من زل ک کان ہو ہا ے بای یکی ا كن مقر ار جو ايك مرل سے 
ووسر ی منزرل تك کان ہو جاۓ ن جس کے ذر لت سے سف رکیا جا کے سفر می سگزار اکیا جا کے۔ بعد م 
جار ہکااطلات اس نز پر ہو نے اج رک ہما نکو رفصت ہوتے وقت زا راہ کے لور پر دے دی جال > 7 
رات مم سکھانے نكا نظام مو جا ءا كو جائزہ کی کے ہیں اور جیز ہ کی کچ ہیں چناخیہ حضو ر اکر م 
صلی اللہ علیہ و کم نے اپنے اتال سے پیل جو و تيل فر يال ان ل سے الیک بات مہ کی یک اجيزوا 
الوفد بنحو ماكنتٌ اجیزھم ۔کہ جس ط رع میس وف ركوجائزةياجيز ودیاکر جا تھا م ىا کو جائزۃیاجیزہ 
دک ۔ااس کے بعد جات ےکااطلاقی مطلاعمزاز واكرام ير ہو نے اکاک اعزازواكرام کے طور پ رس یک وکوا جزز 
د ےدک جا لوو چا ئکزہ سے اس کہ ہما نکوجھ جا توفت دیاجا تا تھا ابی ڑا سکوضرورت کے یش نظر 
دیاجچاتا تور “ىحض اع اذو اكرام کے طور پر اسے یھ نہ دے ديا جا ما تھا پھر ای سے ای مث یکو و سحت 
() فض اليارى على الا لتاب الار ب اكرام الضييف رخ" /ص ١۹۰‏ 


9 ۵و تج 
مول اور شع راکو قصيده رد ھ ےکا وج سے باد شاہوں اور دكا مکی طرف ے جو عط عن تھا کو جائ هباجا 
3 ری بھی انت ےکام ب جد انعام كاكودياجات ہے ا کو ا ہکا جانے لجنا کل مرفي ين ش 
اة تكااطلا ل زياده ۶ انعام ير ہو تا س>- 
عدييث مل جالاه سے ھراد...... عد یش جچہاں جام ےکیا مراد ہے اس شس دوا تال ہو کے ہیں: 


ہما نلو سف می ںکھانے کے ےو یا:۔ 


ایک اال ےہ کہ جما نأو رخصت مو ست و فت سف ل پئ كما کے لے بر زادراودے دیاجائۓ۔ 


بماك كما ان كلفكرع:- 
دوسرااحتال ہے س ےکم ہمان کے اعرا واكرام کے طور پر ال کے جےکھانے بی کل کیا جات عام 
مو لک اکھانااس کے سان تہ رکھاجاے۔ يبال دو نول درست لا نج کہ دوفوں جز ںی سمال 
آداب بی شائل یں كاذك ایک دن سبمان کے ل كان شل انی حثیت کے مطابق کل فک نا بھی انی 
کے داب میں شا ی ہے اکر وہ لیے ر پر حجار زس فور ات ےک اماتا ےد ینا کی ای کے آداب میں شال جد 
نض حعفرات ن هاس ےکہ “ہمان دو طر کے ہو کے ہیںء نض کہ نے وال ہو ست ہیں انض 
جل ری جل جانے وا لج کہ ر کے والے ہیں ان کے لے جائزو سے مرا دکھانے میس مل کر نا ىكم اکر دہ 
۱ تن دن شار > ايك د نک ا زم اسے نيا ي. لکل کھا اکھلایا ہا ے با دود ثول میں عام مو لک اکھانا 
كلاديا جاۓ اور جو مہمان ہر نے والا میں ے آے ی مل جار ماے ٹوا کے ك چا ہے س كرات 
راح ع شسکھانے کے لے دے دیاخائے او راک رلى مان ل وو فول ب تل ج کر دی پا كلم كير ے والا 
ہمان اس کے لے ایک دن کےکھانے میں بھی مکل فک لہا ہا ے اور جب وہ جائے لاسا تھھ دے دا چا ےل 
ہے اود کیا می بات ہے۔ ایک سوال شار کن صد بث نے يهال اهايا وھ كم ظ 


عد بیث میں من دن مراد ہیں یاچار دن ؟ 

: خضرت سل الل علیہ وس بف فرمایا :جائزتة يوم وليلة والضيافة ئلنةايام  ٠‏ 
کہ ضافت جن دن ے اور جاتز؟ مك پر تكل فکھانا ایک دن ے» و ؤي ضات ے أن رن : 

جا سوا سل دن کے علاوه ہیں یا کوشا لكر کے ہیں گر اس کے علادہ مول تيار دن ین ہا یں گے 


پا ٦م‏ تج 


او اکر ا كو علا كر ہوں تو كل الوب رو اكه ير 
تق تق وشن عب 


بین دن کے بح رانا صد ت ے: ب 
1 خضرت صلی الد علیہ ٰٰٰٰٰٰٔ “ٗ ۶۰۰ء۶۹۷ 
ہو اہے وج ھا كلا ياجار پا دوصد تہ ہے وہ صد ق کول ے ؟ 


مراك رق" لوي كلايا جاربا یادیا جار سے ا کی وو صور تمل ہو کت ہیں: ایک 
مورت ب ےکہ آپ کے ا کو دسي اکا نے سے ا لكلا جات روا صو و تيبل بل اال کے سا ہے عحب ت کا ' 
اظہار اور ا سکااعزاز واکرام صو ے جنائيه بدي ٹس کی بات ہو لی سكم ہمہ جن ںکودیا جانا سے اس کے 
سا تخد جب تک وج سے ديا جات ے ا لکوحاججت منعد مب ھکر کیل ديا جا تا اکر چہ وف نفس عاجت مند ہو بھی 
سی لین دی ےکا غشا اس کے سا تر يبت اور ال ںکااعزاز و اک رام کر تامو تا سے ن كم ا کاعاجتت مئر ہو نااور 
جوصد تہ ہو ا سے و م کی ماج تك بفياد ب ہو جاسے۔ تاب ا ین دن مز پان جو اس ےکلا ر پاے وويظامر دل 
کی خو شی سے اور محبت کے سات كلاد بال لے ضیافت پر ےکی شيل سے سے يان تین دن کے بعد 
میزبان تک ہوا شورع ہو جا ےگا اب وه عرزت افزائی کے طور يريا الل کے سا تیر حبت کے طور پر نہیں 
كلاس كايا اس كلاد پا کہ ہے یہاں کہ رامو اے اکر ا كو تبث كلا كا قو بج وكاعر جا ےگا اس لے 
کھلاناتی پڑےگا۔ اس لے ا کی مقامیت صد سے کے سا کے زیادہ ہے ہے با کہ كر نب یکر مم صکی افد علیہ 
ول می ز بان اور ہما نکویک بات اپاخ ہیں۔ 


مز با ن کو مک ہین ون کے بی ری ول تک كر ے:- 
۱ نیز با نكوي مچھانا متقصور ےک اگ مكو ہمان ڈ یٹ بان جا ء تن دن ے زیادہ تھی بڑارے اور 
ا كما ناكلا :ابی پر بسي توو كو تک کی ں کر نا چا ے٢‏ ای كك ج بی كار ے مو حب تکیاوجہ سے یں 
كلاد ہے ضیافت تال ہے نوک اذك صد قہ ضر ور ےو تیک مو فك جا ا کی خليال اور خیب یکر نے ٠‏ 
گی جاۓ ہے سو کو کیہ صد ق کر ر پا ہوں اج وناب سل - ۱ 
دوس کی بات ہما ن لوعارد لانا عو و س کہ يل ےم ياد تکھار ہے ے اور اب صد ق كل رو شيا ںکھا 
.یر موا لے اب ذاش مگمرواور یہاں سے رخصت ہو جال اس ے قرا :فما بعد ذالك فهو صدقة۔ 


ےو 2 


تو ای بی ور قیقت ایک قل ہمان کے ك ہے اور ايك میزبان کے لج اس کے بعد حضو ر 
اتر ی صلی اللہ علیہ کم نے فرایا: ولا يحل له ان یٹوی و ےر تی 
جائز یں ےکہ دوا تید یر ہر ےک ا کو رج میں ڈال دے۔ ۶ 6 کے دو کن ہیں 
تج کا می - 
(1) گی می مت اکر (۴ مکنا میس بت اکر ند 
گناہ بی بت ار نے سے مراد ےس کہ دواپنے ما نک ايها تيد کاو یمر کے ساح غيب تك ےگ اس 
کے سات فو اس پان نہ کے لیا نآ کے بتك اسے برا ھلا کیے نذا ع تک اسے وبال نیس م نايا سبك ہا 
ضیاف تكو تن دن تحص رکیاے:اا سک اصل علت مہ س ےک یاد مد نهر نے سے یز با کی او ركنا ل بنا 
ہو جا كال لے جن دن سے زیادہ کر نا ماسب نمی کن اکر ہے عللت موجودنہ ہواور یہ نشین موك مر ے 
ذياده ہر نے سے میزبا نکو گی یں موك اور گناہ بتلا ہوگا توزیادہ ہر نے میں بھی تررح بل 
)2 -----وعن أبى هريرةً» قال: حرج رسو ل الله صلی الله عليه وسلم دات 
يوم أو ليلة» فإذا هو بأبى بكر وعمر فقال: ما أخرجكما من بيوتكما هذه 
الساعةء قال: الجوع قال: وأنا والذى نفسى بيده لأخرّ جَنى الذى 
أخرجكماء قومواء فقاموا معه فأتى رجلاً من الأنصارء فإذا هو ليس فى بیتۂء 
فلما رأته المرأةٌ قالث: مرحبا وأهلاً فقال لها رسول الله صلی الله عليه 
وسلم: أينَ فلان؟ قالت: ذهبّ يستعذبٌ لنا من الماءٍ إذ جاءً الأنصارى فنظروٌ 
إلى رسول الله صلی الله عليه وسلم وصاحبيهء ثم قال: الحمد للهء ماأحدٌ الیومَ 
أكرم أضيافًا منى قال: فانطلّقَ فجاء هم يعاق فيه بسر سس سس فقال: 
كلوا من هذهء وأخدً المدية» فقال له رسول الله صلی الله عليه وسلم: : اك 
والحلوبٌء فذبح لهمء فأكلوا من الشاةٍ ومن ذلك العذق» وشربواء فلما أن 
شبعُوا ورووا قال رسول الله صلی الله عليه وسلم لأبى بكر وعمر: والذى. 
نفسى بيده لَتسألْنّ عن هذا النعيم يوم القيامةء أخرجكم من بیوتِکم الجوعء 
وی و سو العو روا سو ودكر حديت ای سو 
كان رجل من الأنصار فى باب الوليمة- 

رم ...... رت الو ہر یور ی الث عند سے ر وات ے كم رسو این عي ايك دن 


53 ۹۸ا اخ 


الیک را گے بابر لكك فو آپ نے ا چانک ضرت اب وبکر و رر ی الث تخالى کپ کو 
يلعا آپ ٹل نے فرما اہ اسل وشت ہیں ہار ےگھروں كل چ نے کا لا ان 
دونوں نے عر کیا بھ رک نے۔ تو 1 خضرت ما نے فرب کے نتم سے اس ذا کی 
جس کے قضہ بیس میرک چان ہے کے کیاکی جز س كرح كلاس جس چ ل ”ہیں 
ذكالا- انوا چنا دہ آپ کے ساتھ الك و خضرت تچ انسار م سے ایک مس 
کے يال آےےہ فق وه انضارى اسي نكل موجوو تيبل كء وجب ا نکی يوك نے 
1 خضرت ماپ کو وکیا ناس ن كبا خش آي ید موء ر سول الث زی _ذ رہ اک فلاں 
02 بال ہے ؟ لوال نے بای کہ دہہمارے لے ٹھاپاٹی لي كيا .> ءاسن ٹیس ووافصا رگ 
گے انهول نے 1 خضرت یھ اور آپ 2 دوتوں سا تیو ں کی طرف دیما وکھا: 
الحمد لله آج يج سح زياده مز ممہمافوں والا كول "ثيل (اور لوگوں کے پاس بھی 
مہمان آۓ بمول گے مان عت اوت ہمان مر پا 1 ہی ںی کے يالل ہیں 
آۓے) رت الو ہر بره فرماتے ہی لك وهانضارى گے اور ان کے پا ايك خو شه لا 
جس عل بق لو رك بور بھی یں كل اور كبو ريل بھی تھیں اوري عر كيل 
اس میس س كماء او خود اال نے تمر پا ل رسول اللہ عه نے اس سے فرمایالہ م 
روده دين وال لرى ے يجنا( رودم دی وال بر می وم کر ال ٹل نہار ا 
نقصان زیادہ ہوگا) جنا نيه ال انصارى نے ان کے لے مار یذ کی تو اغہوں نے کر یک 
كوش تکھپااور اس خو ہے میں سے جوري یکی یں اور پان پیا جب سیر ہو گے اور سیر اب 
ہو سك فو ر سول اللہ عه نے حضرت ا ور اور حضرت عر رض ال هما كب م 
ہے الل ذا تک جس کے تند میس می ركاجان ہے قيامت کے دن تم سے ال ھت کے 
پارے میس بھی سوا لکیا جا ۓ گا ہیں تنهار ےگھروں سے بم وک نے ال تام م 
مرو ںکوواپیں نیس لوٹے یہاں مج كك ىہ نت ہیں م سل م وك 


عد ثل بیان کر روات سے ستتهط ادكام:- 
(ا) ضور عل وین ی الثر كنها کے عالات اور مز ارج يول کہا تیت 5-5 
فور ارس صلی الثد علیہ و حلم اور ضرت ال وبکر اور حطر رر ی الد تخا ى عنها کے عالات شل بہت زیادہ 


گا ۹۹ حم 
يأدانييت ہو تی ا عالات یک تی ر سے سے جح سک وجہ سے جس وت نب یکر مم صلی اد علیہ و سلم ب ر کک 

كار ہو ے الى وت حطر ت ال وکرو رر ی الث تخا لم خنہا و ککاشکار ہو ے اور عززارج بھی ایک ججیما تھا 
1 خضرت صلی الثد علیہ و حلم بھی بج و کک وجہ سے ياج ر كل کے اور ضرت اب وبکر وعمرر ی اللہ تال عنہا 
بھی بمو کک وج كر باب رف لآ ے وگویا ایک جیا رک عل ر کے ہو سے تھے۔ 

(:) مشكل ل ایتا ےکی صو ر ت ل لہ ج تک شرو كولكل ہا سے 5 
اکر و یکی مشكل عل جتلا ہو الى ضرورتكاشكار ہو تذ اکر جد اس اسباب نظرت آر ہے مول ی اساب کے 
نا نظرنہآرے ہوں لین ی حر کک کن مو اتن م کک ات پاوں ضر ور ہار لیے چائتیں۔ حطر ت ا وبکر 
و خضرت رر سی اللہ تھا لی هما کے سامش ہیک بھی یں تیک کیا لگا ؟كبال سے سل ؟ ليان بجر حا كم 
سے كل پڑے ءگھری لآ رام سے وی تيك ر ہے اور اش تقال ےکو گی كول بر و بس یکر بی وا 

(۳) ما ,حت کے وفت كلف احباب کے يا كما ف ينث سك لے جانا 0 
ال عد مغ ےے بھی معلوم ہواکے ضرورت اور حاجت وغيره کے موق هده 9 و 
اپنے بے کلف احباب کے يال چلاجاۓ اس بعل ک یکو رر کی بات تال 


نے یہ ستل بھی لكالا س کہ اکر خی ےکا فدہ مو نکی عو رت سے پا تک نا بھی چائے سے او رسی 
عورت کے لے مہ بھی چا ت ےک لى ہمان ویر هکوم وکی عدم موجو وك یں ای گم کے ادر 
برا اور ينها _( 

(۵) مبما یکا ایک لطیف ادرب ...... اس عد یٹ سے ممیز با یکا ایک با لطیف ارب 
كت میس آر باس اور اسل اتصار ی صا كل داتال اور یھ دار ىا بج یس آل سے وو ےک ال میں تو 
یر كاذك کےکھلا لی تھی لیکن اس عل ظا ہر كيك شاي وف ت لك جانا تھااس لے انہوں نے 
فور ی طور پر جو یز ٹین کی جا كق ی بی کرد ىلودو ںکاخو شہ می یکر وی اک تجوز ا بهت ير 
کھاناش رو ں كر ديل اس ے ہے معلوم مواکہ ہمان کے 1س بی ال کے سامش تھوڑی بہت چز 
یڑ کرد ی جاۓ اص لکھانا بعد میس آجا ہہ کی ایک ا ھی بات ے بشر طيل وہای جز ہو جس 
کے بح دکھا كما :ا مشكل ہو جا ہے _ ٢‏ 


() 8الفان شر مک اما باب الضيقة تخت صد عش الاب ر۸7 /| ص "+ ا.... (0) رااان 


.وم 


E o E 
اا کان آماکہ يزيا نکد چا کہ ده ما نکی آھ پر ہنیز پان سے کی خو شی کااظما رک ے گل‎ 
عن طبار ای نے لکن زان نت وی فالقبا کر ےکا ت تعلقات مس بھی اسکام پبیراہوگاہ‎ 
ہما نکادل کی زیاد خوش ہو جا كالور ہمان اتا كلم تم اسل کے پا اک راس يبوج ال‎ 
بلك مار ےآ ن ےکی وجہ سے خوش ہواے_‎ 
e (ے) جما نکاکھانے نے کے سلس میں میز با نکو مشور وو یا‎ 
۱ بھی معلوم ہا اگ کوئی مہات میزبا کو ہمان کے حل م كول مشو رود سهد ]يج زتها کرواور‎ 
یہ نز يار كرو اس عل یکو رركا بات تال جب )کہ حضو ر اوس صلی الثر علیہ و كلم نے مشو رودي‎ 
البعارعط نك 00 لز عزن ووو دحك وال رفون د ترقا بك راس فل تبارى‎ 
الى بھی جات ۓگ اور دود کاسلسلہ بھی جند ہو جا ۓےگااس لے بجر کہ الى ركاذ نكر وجآ‎ 
روہ رت‎ 
مھت نک اد اکم ن...... 1غ رک بات ےک الث جل شل اجو بھی فقت مولا فر یں جلي‎ )۸( 
بھی نقت عطافر نمی اس بالق تال یکا شك اد اک نا جا ہے چیہ اک ب یکر مم صل اللہ علیہ و کم نے تو جردلا کے‎ 
یھو ت مکس عالت می لگ سے کل سے اور ا بکس عالت يبل وال جارس ہو ؛ صر ف یہ تبث پک ہکھاکر جا‎ 
ر ہے ہو بلك جما كمال جار سے مو توارشہ تال یکی ای تھ بر شك اد اکنا چا اس ےک قيامت کے دن سوال‎ 
مول می ری اس نھ تک اکیاش گر اراک(‎ 
(ھ)-----عن المقدام بن معدى كربء سمع النبى صلی الله عليه وسلم‎ . 
يقول: ایُما مسلم ضاف قوماًء فاصبح الضيفٌ محروماًء کان حقاً على کل‎ 
مسلم نصرة حتی يأخدٌ له بقراه من ماله وزرعه- (رواه الدارمى و أبو داؤد)‎ 
وفى رواية له: أيُما رجل ضاف قومًا فلم يقروهء كان له أن يُعقبهم‎ 
۰ 3 بمثل قراہ۔‎ 
رت ا حطر ت مق رام بن مع ير ب ر شی اللہ تقال عند سے دو ایت ےک انہوں‎ 
نے نب یکر بح صلی اث علیہ وک مکوىہ فر ست مو ہے ستاك ہر ایا مسلمان ج وی قو كا ہمان‎ 
سب بر وہ مان محرو م سے لا ہر سان ب کیم رک داجب ہے یہاں کفکہ الكو‎ 


(١)الرقانہال....۔(٣)‏ با 


0 


ا یکی سمال س ےکر زے دس اس کے بال اور اسك کان مس سے اور ابود ادك ايك 

روایت مج ہے س کہ ہر ايا ص ج گی قو مك ہمان بن يمر وو ا کی مان كرس تو 

اس کے لئ یہ جام وگنہ ١‏ أل بد لددےاپتی مہا یکی شل کے سا تخد 

اس دوس كا رواب تكا مطلب ہے س کہ ضیافت بل ا کا جقنا قن با تماده لى اور طر یق سے لے 
هي ہو کا ہے نے ے۔ 


مسل اظ :- 

رو e e‏ 
ہے لاح ن ےکی كح نکو از دی رش دارا اح ادرو اين لی کے کن ون تق و كن کے ا کی 
كول جز ل جالى ہے جس کے دسي سے س ا سک اماز تیاس کے عم کے ببخيراينا ن و صو لک جانہوں, تو 
آیامیرے ے اس ط رح سے مق و صو لکر نا چات ے یا يبل ا کو سی فیا ظف ربا قكا ميل ہے ہی كر 
لگ رکوئ یآ دی اپنا تيال تا سکاکیا تم ے۔ 
٠‏ مالک ہکان ہسب.......الک ہکان ہب یہ ےک اس صورت مس بھی ا سکیل انا تن لوج نز ل 

شا فع کا نم ہہب ...... حطرات شاف کان ہب ہے س کہ اس کے لے مطلقاينا تن يناجا ے 
پا دہ جز ال کے کی میس میں سے ہو با یر کی بیس سے بو ل میں ہو ےکا مطلب ہے س کہ بل 
نےاس سے راد دوہی لا تھا كيبل جار ہاتھاال جیب سے بفراد رو ب ےک گیا يل نے يل سے اٹھالیااور 
کا أي اضق نون ارايت اكد قر IESE‏ 
کے گیا اود وبال سے جب وال آيإنق اي یگھری دبال ب بھول آیا ن سکی تمت تقر ایی رار )1٠٠١(‏ 
دوي گی مس نے و کک اال اود يي سے کیا تق یہ غير جنل عل سے ہے۔ تؤشافي کے دی ہن 
جنل یں مل رباموياغي رٹنس سے دونوں صور ول مل اينا قن و صو لكر جا ->- 

نف کا نز ہب کت رت ل 
e‏ کی 


لا تخن من خانك ۔ ےت 0 
() اماز گر خا ۱ 


۵۸ /٢ الا سلام ت مھ لقي انظ كناب الا قضیت باب قفیی ہن‎ ١ 


دہ میں تن نبل دے دبا خیان کر رہہ تم ا یکی اجازت کے افر ے رس ہو و م ان کے 
سا تھ خيائ کرد ہے ہوہ اخيانت کے بد نے شس خيان تک نا جا / أثال ے۔ ظ 

چو اب...... مہو رک طرف سے ا سکاج اب ب دیاجاتا کہ اپا ”قن يناي خيانت كال ے اپ ا 
لا تخن من 5 ك کے اشر وال بال موا 

ال عر بثك مطلب ہے کہ فرض یی کہ ا نے مي راث رار (* 1١‏ ر وہے امیا بعد عل وم کے ل 
گیا کن مل ب كبن مو ںکہ اسل نے می اہترار »1 روپ چا تھا لب اوه چو ر سے اور چو رك چو ر یکر تك 
ہے۔ اب اکر مير ےم تھ ٹیل ا کاچ رار ١١٭ا‏ )ر ویے چڑہتاے لعل نے لتاہوں ہے یناہ ہر حال خیانت سے 
الو چ س ےک اک نے رهسا خا تك ان ین ین حدما ا و کن 

جواز والوں کے ولائل ...... چو حطرات سک ہی ں کہ اين تن هنا چائز ہے ا نكا استد لال ايك ت 


ال عد یٹ ے 
يبل کیل تن فا نز وک بات ہو یاذمیو ںکی بات ہو۔ (ججیاکہ يمل تفيل ے 
راب مال مان تاک ا کو مھا سے او کر ھک یں ديت 3 یسے ہو کنا سے پان ے 
سل علوم ہواکہ انا لیا چاڑہے۔ 
دوسری د مل می دوس ااستد لال ضطرت ہندروزو چاو سفیان ر سی الد عند کے وات سے ے 
کہ ابول نے 1 خضرت صلی الڈر علیہ و لم سے سوا لکیاتھ کہ ایوسفیان بل او قات یی خر چہ نیس دتتے 
کچ وس یکرت ہیںء کیا نکی اہاز رت کے خی ان کے مال یں سے نے کے ہیں ؟ تو 1 خضرت صلی الثر علیہ 
وم نے فرایا: خذى ما يكفيك وولدك بالمعروف۔ : 
کہ قاع سے اور عرف کے مطابقی جو ہار ے لئ اور ہار یاو لاد کے كال ہو سکتا ہے وہ تم ان 
کی اجازت کے یر نے کے ہو ن فت ہار اح ہے اکر وو خود جل د ے لو م چو ری کے لفق نے كق مو 
لبد نیہ ان عد یو لكو چس مجن کے سا تھ ا کر ے ہی لكبو لك جب غلاف جن امسلل ہو جا 
.ے لو وہاں در حقیقت ما لک ال کے بر لے یی تاد لم ور باہو تا ےک اسل يل فو اس کے ذ سے مر سه رار 
روپ داجب یں لن امل ہنراد روپ کے بد لے می ل ال سک یکی ڑی نے ربا بمو ل » تصرف اپناح ليا ہیں 
ہے يلل ما لكاءال کے بد لے یس اد ل ہے وجب ما ل کابال کے پد لہ یس تاد ل مو تاس سل اجازت ضرورى 
ہے اد یہاں اجازات ںی کئال لئ يهال لیا ہار یں _ 
فی ہکاامص٥ل‏ مہب فو می ےکہ في تجن لسع لونا چئز ثبل مین متاخز ين نے فسادزما نکی وج 


2 ۲.۰۳ اتح 


ے او رجور قضا کی وچ سے ن قاضوں کے تیر عادل مو ےکی وجح ق اس وج تك ان کے ؤر لير 
سے کن ہا س كنا مشكل ہے۔ فی شافعیہ کے نہ مب پر دیاس ےک صنل تق عل سے ينا بھی جا کے اور نر 
جنل میں سے بھی ینا ہا ۶ے الت اس يل اتی اعقیاط ضر ور مون چا کہ جب فير مل عل سے لیس کے تو 
اس عل قبت بہرحال فال پڑ ےک ےتا پڑےگاک ہگھڑی تقر يا تك سے 3 قدت للانے میں بہت 
اقیاط سےکام لیا اہن ءایما نیش ہو نا چا كا دو رار ٠7*00‏ كر ہے او رآ پ وی نى فى طور پر 
ب خيا لكر فی ںکہ ہے رارك ے اور ہے ھی كر بترار (٭٠٠۱)‏ کے بد نے میں يك پار ۰7٭ا ) یڑ ی مل 
كنبل تمت لگانے شل ديانت دا رک کے سا تخ پور ی اعقيا اکر لی پا ے اکر داق ان قبت غ٠‏ لوہ چز 
نے لیے مم كول تررح نبال 

(6)---+-وعن أبى الأحوص الجْشّمىء عن أبيهء قال: قلت: يا رسول الها 

أرأيتَ إن مررثٌ برجل فلم نی ولم يضفنى ثم مرّبى بعد ذلك» أأقرِيه ام _ 

أجزيهِ قال: بل اقرهٍ ‏ (رواه الترمذى) 

رم ..... حطرت الو الاو می کی اپنے وال سے دواي ت کے ہی ںکہ يل نے 

عر كيايا رسول اللد ص٥لی‏ اٹہ علیہ و سلم آپ جنلا یئ أكر کی آدى کے يال سے 

گگمزروں اور وخ جج کیا نے کے لے بھی نہ د اور این ہمان بھی نہ بنا ے پھر وہ خض اس 

کے بعد می ر سے پا س كز ر ے فیس ا كل مہا كرو ليإ كو بد لہ دوں۔ ( شش اس 

۱ کی ہمان ہکروں )3 آي صلی اللہ علیہ و کم نے فرمایاکہ بكلا كل پیا یکر وب : 

(۷)-----وعن انس أو غيره أن رسول الله صلی الله عليه وسلم استأذن 

على سعدِ بن عبادة فقال: السلام عيلكم ورحمة الله فقال سعد: وعليكم 

السلام ورحمة اللء ولم يُسمع النبىّ صلی الله عليه وسلم حتى سلم ثلاثاء 

ورد عليه سعد ثلانًاء ولم يُسمعه؛ فرجعٌ النبى صلى الله عليه وسلم فاتبعه 

سعدء فقال: يا رسول الها بأبى أنتَ وأمیء ماسلّمتَ تسليمةً إلا ھی باذنی:: 

ولقد رددت عليكَ ولم أسمعكء أحببتٌ أن أستكثرٌ من سلامِك ومن 

البركةء ثم دخلوا البیتٌء فقرب له زبيباء فأكلّ نبى الله صلی اللهعليه 

وسلمء فلما فرع قال: أكلّ طعامّكم الأ برازٌ» وصلّت عليكم الملائكةء 

وأفطر عندكم الصائمون رواه فى شرح السنة - 


چ سس حضرت الل ر شی اللہ تال عند سے روات ےک حضور اق ی صلی اللہ 
علیہ و کم نے حر ت سعد بن عبادور شی اللہ تا لم عت سے استتيذ ا نکیااو رکہا السلا م عليكم 
ورم الشدہ تو ححخرت سعد ر ی القد تھا عند ن ےکہا: و عليكم السلا م ورجرة الثر يكن حضور 
اتر س صلی اللہ علیہ حلم كو سسنوايا ہیں یہاں کی یک حضور صلی الث علیہ و کم نے تین 
مجني سلا مکیااور حرمت سعد نے بھی نبال مر حبہ سلا مکاجو اب دیااور آپ صل اللہ علیہ 
وکوا یں نٹ یکر مم صلی ایق علیہ و کم دہاں سے ریف لئے ء رت سر 
آپ کے بتك جك آے اور عر لكيايار سول الد امیرےماں باپ آپ پر قربان موں 
ہپ نے تی مر حہ بھی سلا مكياده مي رس ےکانوں ل ہجار اسے اور ل بے ایک 
سلا مكاجداب بھی دیاے میک نآ پکو سفوایا ہیں( ین هته آواز ے جو اب دیاش ہے 
پاتا تاکہ مل آ پکاسلام اور آ پک ب ہک ززياده عاص لكرول_ يجري لو كك میں 
وال بے ورت تبغر نت کپ کے کے کن چ ل ال نے می صل اع 
وم ےا كعاياجب فار ہو ے تولوں فرمیا: 

اكل طعامكم الابرار وصلت عليكم الملائكه وافطر عند كم الصائمون ‏ 

7ر EL A‏ ليا تلو وار a E‏ نے 
ر م تک ری اور تمہارے ال ر وز «دارافظا ركر بل 
22 506 ب یکر کم صلی اللہ علیہ و ملم نے تین مر ين سلا مكياء حرسي سعد نے أكر چہ سلا مکا ظ 
جواب ديا يان اتی ہت آوازسےکہ ب یکر یم صلی اللہ علیہ و لم سن نیش کے اور قاع ور س کہ تن مر مہ 
استيذ ان کے بعد وال آجانا چا سے اس ے حضرت اتس صلی اللہ علیہ و حلم دائیں تشر یف لاےء جب 
1 خضرت صلی الثد علیہ و كلم واب ہو ۓ فو ححضرت مر ر شی الث تخالل عند آپ کے يك با گے ہو ےآ تے 
دوبار ہآ پک اپ گے كت »بي رتل ,ياك سل سف آي كاسلام سن بھی لیا تیاور جو اب کی دی تھا لن 
قصر أ آبستر آہتہ آواز سح جو اب دیاتھاکہ آ پکو ۓ نی اور اسك وج ىہ بیان فر یک آ پک اللا م 
بكم ور مد اش كينا مير سه لے سلا مت یکا کی باعث ہے اور آ يكاب دعا می سے لے برك ت كاذر ليد »لآ 
ل نے سو یاک تخل ایک مرحم آ پک ني دمام ل خی كل پا سج بل بار بار حاص لکن چان ای لے 
س نے آہستہ جواب ديا کہ آپ دواد سلا ملز ہیں حض رت سعد رح اٹہ تخا عن کا ہے جو اب بڑامہارک 
الین بطاہریوں معلوم ہو ناب واللہ ا کہ ا کو غلبه حال ير جو ل کر نا پا در ال قاع ےک شض 


عا ۵ عي 


ف کہ خود كت اس لکر كل اط کسی بڑ ےکو مشتقنتء تيا طار ل والنا كول يشر يرهباءت تبلل 
ےء اد بک بات یں ے کان ححضرت سعد رك الث تخا ى عنہ يراءل وفت ايل حال تکاخلبہ تما- 


غلب الت 

غلب عا لکا مطلب ہے ہو تا كم ایک يبلوذ من می اتا چات ے اور اک طرف لو ج اتی زیادہ ہو 
ای ہ کہ دوسرے پھلوک طرف ذ تكن چاتای ثبل يهال دو زیی تل ایک ئی صل ا علیہ و کموک دا 
اور ركنت حاص لک نام بھی پیت یرہ کل ہے اور ووس رک چ ر سول اٹہ صلی اللہ علیہ و کمک ر احت ر سای اور 
آ پکوا ظا ر ت ہکرواناہے ال سے بھی زیادہا ہم یز يكن بظاہ ر حت سعد ر ی الث تا لی عنہ نے حضور 
سک ب الفاظط نے اوآ پک ذجہ يبل کی طرف ا ن زیادہ م وک کہ دوس یبا تک 


o‏ ےد 7 رفك 
عليكم الملائكه وافطر عند كم الصائمون- 

ارات دعاء اخيار يا نشاء ......ن تن تعد ہیں »ان تن جملوس شل ایک اخال لوي ےک ہے 
ابا ہ۷ اب ر سول اللہ صل اللہ لیے و کم کا تر د بنا وسو فصر در ست تااس ل جےکہ مطلب یہ ہو کاک بارا 
کھانا تیک لوگوں ےکھایا ے اور وا قن ضور صلی الد علیہ و کم سے با كر تی کون ہو کا سے کان عام 
وگوں کے لے اخبار كيت موان اپنے بار ے ٹل بتا اک م تيك لوگ ہیں تم نے آ پکاکھا ا کھایا سے و ا یکو 
ای پر کو ل کیا ہا تاب ہک كن دا لن ےکا ہہ مطلب نی سکہ ایو فت تیک لوگوں نے تخہاراکھا كعايا. کل 
کن نکااظہار سے او رسک ےکا مظلبے س کہ تم یک لوكو ںکورکھاکھلاتے ر ے ہو “یں تمہارے باد كه 
۱ .ہیں صن تن می ے۔ 
يكن زوه بتري معلوم ہو ما ےک ان ت۶ یں جلو ںکوانتااور دعا یر مو لکیا ا جا ۓگ از نی ىہ 
ظ تل دعاك نیت سے طن جا لك تہاراکھانا تيك ل و كا نل اس میں دد پا تل ٢‏ . 
: ()..........یک فو ےک تاد س كمسل تنام افراد تيك بن جا نل تو تيك لوگ بار اکھا کھار ہے نل - 
)...دور ا ےک ہار ے تعلقات زیادہ تيك لوگوں سے ہو كي و كل جس ط ررح کے لوکوں کے سا د 
۱ ات پت ہی ایلرک لاگ مان نے یں ورای طر کے لگ اکاک کے یں یں 


وکا ۲٠٢‏ بج 


يك صحبت عيب ہو ایت ل وگوں کے سا تخد تخاتقات نيب مول اور فرشت ہار ےے دعاۓ رمت لزن 
اور روزودار تمہارے بال روز اقطا ركر يل ال ٹل ھی دو پاتیں نش الك وي لم “مس اور بار ےھر 
والون کو وب تروڑےر نکی تونق بودو را كم دوم عرورودارول کو افیظا کر انے 1 وید 

(۸)-----وعن أبى سعيدء عن النبى صلی الله عليه وسلم قال: كَل المؤمن 

ومقَلُ الإيمان كمل الفرس فى آخيّته یجول ثم يرجع إلى آخيّيهء وإ 

المؤمنّ ببهو لم يرجع إلى الایمانء فاطعموا طعامكم الأتقياءء وأولوا 

معروفكم المؤمنينَ ‏ (رواه البيهقى فى شعب الايمان وأبو نعيم فى الحلية) 

ر جر ...... خرت الو سعيد ر شی الد عنہ سے روات سك بكر يم صل اود علیہ 

و كلم نے فر ينمو سل نکی شال اور ایما نکی عثال ا سکھوڑ ےکی رع ہے جو اي یکنڈی 

کے اتر بند ھا ہوا ہو ہو ہگوہتا ہے پھر پٹ یکت ىكل طرف لوٹ تا ے اور مو نین ھی 

بجول جانا ہے پھر ایما نکی طرف لوٹ آ تا ے لپن انم اپناکھانا شق لوكو ںیک وکا اور اين 

صن سل وک ابيا والو ںکو عط اکر و_ 

اس عد یٹ میں ييل تو حضو ر صلی اللہ علیہ وسلم نے مو م نکی مثال مچھائی ےء موس نکی عالت 
ایک شال ے جا > کہ لے ز ن کے اند رکنڈ ی گا ڑ ی مو ہو او رکو ڑ ےکور ی کے سا کے پاٹ کروم 
راس میس باند دی جائے وکو ڑ ااال سے دور کی چلا جا ےکک وکر ر ی بالكل مو فى ہیں يلل بج کے 
يان زیادددور فیس جاسلتاء ایک نای عد کک دور جا كا بل لل بی کی ےک معن ای ککھوڑاے اور 
ايها نكنرى ےم ومن کی سے بداعمالیو كاشكار ہو پاتا ہے اور ايمان کے تقاضوں سے دور كل پاتا ے 
يان ايك نای ع كك جاتنا > اتلد ہیں اک وہ رك چات ے اور ايهال ھا ضو ںکی طرف وال لوٹ ۹ 
ہے اس بر تفر كس ہو تر سول الث صلی الثد علیہ و کم نے دو با ٹن بیان فر سبل : 
(۱)..........ایک تو كنم ايناكهانا لق لوكو ںکوکھلا و_ 
(٢)‏ ...ياك والوال کے سيا تم حر سل و كرود 

يبال سد ال یہ ہ كذ اس با تکا مل بات سے ر با اور تل قکیاے کی ھک آپ صلی الث علیہ و 5 
نے فاء در ميان میس استمال ف رايس مشنی ان دوبان كو کیل بات برع رتب فرمارے ہیں۔ ' 

4 واب ..... وراصل ل بات کا ور عا رن أولوا معروفكم 
المؤمنین ۔کہ امان والول کے سا ہے اجماير چا وکر وء اس ككلم ا مو کے ار ےش ہہ خيال يهامو سا 0 


ےکہ اس کے اعمال توليك yT‏ یں اف2 ور 
۱ صلم ےرا صن سرک کیل اس ےرل مس اییان ونان ے :دومن ہے لزدہاییان کے سا تم بد ھا 
ہواے١ا‏ اکچ ا يمانت ؤرادور ٹا ہو اے جن ایک نا عل حد تک دور جا ےکا لات زياده ننیں جا گا۔ 

خضرت کل نے ف۷ : آطعموا طعامكم الأسقیاء ۔کہ اپ اکھانا شق ل وگو كلاق بی بات 
ایک اور عد یٹ بل ان غظوں کے سا تھ آل ىك لا یائُلی طعامکم إلا سی © کہ تار کین ی 
آریی اکھائے۔ لہ بہال ہے بك پل اک کا لوكا نادو طر سے ہو تاے: ”عفر 


کے پت 0 کید كات ئوہ اكلدو«اية 7 مم لكحانا ييا > اور مو سکس سے لجو 
كنا آپ ا ےکھلار ہے ہی ںگھربیس وہای سے اچچھا ہت یکھاتا ہو لیا نآ پک چ وکر اس کے سا تلق ہے اور 
محبت ہے الك آپ ا یک د عو کے ہیں۔ 

عاج تك وج سے جوک یک وکیا کھلانا ے اس میں تی اور یر ضف کو فرق نیس ہو جا بللہ ہر 
عاججت من دکاکھلانا ياس بل اکر جات ہن رکا فر مو توا یکی بر دک نا یکا راب ہے۔ يبال بات ا کیا نے 
0,07 ک ےکھلایا جا تا كا بطور حت كفانا صر ف کیک اور شق لوكو ںک وکھلا نا پا سے 
کی وک ای سے ال کے سیا ۶ کر تلق مز يريط عر کر بر ےل وگو كواس طر_لته سےکھانا ھا کے أو ان ے 
سا تھے تمہار ا تلق بڑ ےک نؤس کے بر_ءاثرات ت گی يرم رتب ہو کے ہیں۔ 

گی -----عن عبد الله بن بُسرء قال: كان للنبى صلی الله عليه وسلم قصعةء 

يحملها أربعة رجالء يقال لها: الغرّاءء فلمًا أأضحًوا وسجدو الضحىء أتى 

بتلكَ القصعة وقد ثرد فيهاء فالتفوا عليهاء فلمًا كثرواء جثا رسول الله صلی 

لله عليه وسلم فقال أعرابى: ماهذه الجلسَةٌ؟ فقال النبى صلی الله عليه 

وسلم: إن ال جعلنى عبداً كريماًء ولم يجعلنى جبّاراً عنيداً ثم قال: کلُوا من 

جوانبھاء ودّعوا ذِروتها يبارك فیھا۔(رواہ أبو داؤد) 

رج سی حت يد الف بن بس رر سی الث عشہ سے روابیت كم رسول الثر صل الد 

علیہ وك مكاليك بذاير تن تھا شے يار آ دی اٹماتے تھے اسے غا کہا جات تھا جب پاشت . 
رع سستھ سس 


= ۲۰۸ تج 


کاو فت بوااور پاش تک نماز بذع لى تاس یر كو لاباكيااال حال می کہ اس یس شر يبنا 
تم یاتھہ سحا ر ضوان اللہ هما این اس کے ار وكرد جح ہو كك جب تخد ار یل زیادہ ہو 
گے و رسول ا صلی الہ علیہ و سل مگھٹنوں کے مل به کے تويك بدو كبا یٹم کیسا؟ 
توئ یکر يم صل اث علیہ و سم نے فر اياك اڈ تال نے مك وا کر نے والا اور دوسروں 
ی رعا تکر نے والا بند وبنایاے اور کے مكبر او مل تيل بنايايج آي نے فرمایاکنہ ال 
کے اطراف میس سح كماو اور اس کے در ميان میں جو او نوالا حص ہے اسح يوز ووو 
بعد می لکھانااس حك ٹیل بركت ناز لک جا ےگی۔ ۱ 
عا سل يہ باك اسل بڑے پر خی کے ار كرو صا ہکرام ر ی اللہ تا لم کا کے مو سككء يبد تو نی 
کر کم اودر صاب ہکرام ر ضوان اث کم اتی كح لكر بيك سے لیکن ج بکھانے والو کی تخر ادزیادہ ہو 
و ٦‏ فضرت یلا سك رثول کے بل بيط کے اک ووسرول کے كيال بيد اہو جائے۔ 
توا پر ایک بد وکو اشکال ہو اك بڑے لوك فو اس طر الت سے تال باکر ے کے 13 خضرت صلی 
ال علیہ و م نے اسل پر فر )کہ الد تھا لی نے مج کر مھ منیا سے شی متو سرح اور دوس رو لك روا یہ تک نے والا 
ہیا سے یر نیش ینایک دوس رو لک ر عایت تو كرول- 
ب عد یٹ اس باب يلل اس لے لا سے ہی ںکہ ضیافت میں بھی عام طور ہے اا تی کھاناہو تا ہے اور اس ۱ 
عد ييث سے بھی اک بيئك کیا كاليك ادب بج میس آ کے اکر تد ادل آدى زيادهمو ہا بل يهل ٹیش : 
ہوے ے آدمیو ںکوچا ےک بعد ٹل 1 سه لان کے س ےکنا راکرد یں اور تھو ڑا کر ہا ک7 
(1)-----وعن وحشى بن حرب» عن أبيه» عن جڈّہ: أن أصحابٌ رسولٌ 
الله صلی الله عليه وسلم قالوا: يا رسول الله! نا نأل ولا نشبغ قال فلعدكم __ 
تفترقون قالوا: نعم قال: فاجتمعُوا على طعامكمء واذكروا اسم الله يبارك 
لكم فيه (رواه الترمذى) 
7ر کے حطرت و ی بین ب ر على القد عند اپنے باپ سے وہ ا داداے روات 
کرت ہی ںکہ رسول او یلگ سے صاب كرام نے عرض كياياد سول القد :ت مکھاتے ثيل ۶ 
و نیش ہوتےء فل آپ نے فراي: اید تم الگ ال كعات ہوء فو حار ر ضوان ایق م 
ان نے ع رت کیا دی بالق آپ صل اللہ علیہ وم سف یاک اپ ےکھانے بي مہو 
ہا )کر ہاور الثكانام لے یکر و ہیں ا كما ف ٹیل مركت دی جات ةكد 


TT 
ادو ر سے ہو سکتا ےہ ایک ب کہ ايك نی چکگ بثك رکھار سے ہوں لیکن بر تن الك انك‎ 
لے جع ہو ن ےکا دی در چ ے اور دوس راہ ےکر بر تی بھی ایک ماكر ناريا طیعت پگ الو غير ہکا خطرہ‎ ٗ 
نہ ہو تو یہہ ہون ےکا ای ددج ہے۔ تيح ہوک رکھوانے می ايك کت ہے بھی ہو کی ہےل(زو الد اعلم )كل اكه‎ 
کھانے ب شسکھانا ضا یں مو جا بل كم كاذ وال كازائد حص زياد ہکھانے واد کے کام آچاتا ج اور ہے‎ 
مقصید اس صورت بل بھی حا صلل ہو کا ے ج بک ہکھانا الیک بڑے پر تن می ہو اور لوک تيمو نے برتتوں‎ 
بی يقزر ضرورت كا لک کھار ے مول‎ 
(0-----عن ابی عسیب» قال: حرج رسول الله صلی الله عليه وسلم‎ 
ليلآء فمرّبى فدعانی» فخرجثٌ إلیه» ثم مرّبأبى بكر فدعاه فخرج إليهء ثم مر‎ 
بعمر فدعاه فخرجّ إليهء فانطلق حتى دحل حائطاً لبعض الأنصارء فقال‎ 
لصاحب الحائط: أطعمنا بُسراً فجاء بعذق» فوضعہء فأكلّ رسول الله صلی‎ 
الله عليه وسلم وأصحابهء ثم دعا بماء باردٍء فشرب فقال: لَعْسألَنْ عن هذا‎ 
النعيم يوم القيامة قال: فأخذ عمر العذق فضرب به الأ رض حتى تناثرَالیٔسر‎ 
قِبَلَ رسول الله صلی الله عليه وسلمء ثمُ قال: يارسول الله! إا لمسؤولوت‎ 
عن هذا يوم القيامة؟ قال: نعمء إلا من ثلاث: خرقة لف بها الرجلُ عورتہء أو‎ 
كسرةٍ سڈ بها جَوعَته» أو حجر يتدخَلُ فيه من الحر والثّرّ  (رواه أحمد‎ ٠ 
) والبيهقى فى شعب الايمان مرسلاً‎ 
ر جر ...... حضرت الو سیب ر شی اللہ عنہ سے واييت ےک ر سول انر صلى الثر علیہ‎ 
و سم ایک رات لكك اود می ےپ کس ےککزرے قو کے بلالیا تو یس تك لک رآ خض ررح صلی‎ 
الہ علیہ و مکی طر کیا پچ رحخرت الو حر ر سی الث عنہ کے پا س زر ےا يل ہلا‎ 
يا نوہ بھی لگ کر آپ صل اود علیہ ول مکی طرف 1ت ير حضرت عم رر ص الد عدر‎ 
کے پا ےگمزرے وا س بھی بلا لیا تو وہ بھی نگ لكر آي صلی الث علیہ وم کے يإ‎ 
نك ھان تق ی شري کے بن عن وال هو سے اوک وا کے اباك مین‎ 
گی او رک جو ری یکلا جنا وليك خو شہ نےکر آ ہے اور ا سے 1 خضرت صلی الثر عليه‎ 
وم کے سان رک ديا تن یکر یح صلی اٹہ علیہ و سلم او رآ کے سا تجبول ن ےکھایاءچمر‎ 
خضرت صلی اللہ علیہ و حلم نے متا يإلى مكو الور اسے پیا جر فرمایاکنہ اس فقت کے‎ 


باس ل قیامت کے دن تم سے ضرور سوا لکیاجا ےگا۔ تو رواي کر نے وا ےکچ 
ہی سکہ خضرت رر کی اللہ عر نے الل خو ے کوز شن بماد ایہا لک ککہ تین وک 
الہ صلی اٹہ علیہ وس مکی طرف کک رگیں پھر جرت رر ی الث عنہ نے عر كيا: ا 
رسول الاک یاقیاصت کے دن تم سے اس کے ہار سے میں بھی سوال ہوگا؟ فو آي صلی اڈ 
علیہ و سم نے فرماا:گی ہال ٠‏ سودائے تن جنول کے ء ای ککپڑ اليا كلاس ہے اوی 
ست کو يجيا سل یار ونی کااییا کڈ ا یں سے آ دم اپنی بم وک مھا ےی ایی يمو فى رش 
جس میں آد یک ری اور سروک وج نحل جائے- 
اک طر جع کاد اتد پل حت ابوہر يزور شی الف ع کی صد بیث نل پھ یگزر چک > ءامل ير ينث 
پچ س کہ دونوں رواچوں شل ایک بی وات ہے یا الگ الك ہے۔ خضرت ابو ہ بہت ر خی اٹہ ع ہکا 
رایت شل جس انار ىكاواقد. ہے ا نکانام ابو الثم سے اس روایت میس بھی ابوا م ادات ہے یا 
كول اور ے» ی معلوم جو جا ےکہ یہ داقعہ الگ ے اورووداقعہ انگ ےکی وک دونو لكانياق الگ الگ 
ہے اوردونوں م سکئی فرق ہیں: 
0 ای ا ملا بی روایت میں ہے تھاکہ خضرت ال وبکر اور رت رر ی اٹہ ما خو د اہی نےگھروں سے 
کک ہو سے تھے اوراس میں ىہ ےکہ نب یکر مم صلی او علیہ و لم نے ا ال بلایاے۔ 
e MM)‏ وبال دہ انصار کی خود تی ملا میک ایق ام ل اسك وی گیء یہاں پر بر او ر است این ا کی مل 
اس پا وا ل ے ما قات و گی ے۔ 
(۳)..........فوروہا کور کیا ےکا بھی نکر تیاو رج ربیااگوش کیا کا بھی کان یہاں ضر ورو ںی 
زک ہے اس لئ بظاہ ر ہے معلوم ہو جا ےکہ ہے داقعہ اس سے الگ ہے اس وا تھے ےکی بات بے میں 1 نبل - 


مریث ے متبط و 

مقت E‏ یں سوال م وك ...... ضور اتر س صل يله نے فراياك تم نے جم 
جو ری کھائی ہیں اور پا لپیا ے اس فقت کے باد میں بھی تم سے سوال ہوگا شی ايك قو سوال مو کاک ہے 
نھن پا طر لے سے جاص کی یاناجائزطر لے سے اور ووسر ے ہہ سوال م وکاک اکا شكر اداکیایا ٹیں۔ اس 
يرت رر کی الد عنہ نے وو خوش انیا اكز من يمار الور لو جا اک كيااال کے ہار ے يال ھی سوال ہوگا_ 
)١(‏ وجا مسال الى *: لاام کک جا اء الطحام والش راب ۱١‏ / ص۵٣۳‏ 


53 اا جح 

حطرت رر صلی اللہ عن ہکا اس خو ش کو ز شن بر اس طر ںار تایا تو شرت خو فك وجح تاک 
الى لذ تتا لى کے ساحن مو لين تکاخوف انناو اكه اپنے آ پک ابو ل کی ركه کے یا ی طر کن رتك 
وجہ سے تھاکہ حضرت رر سی الف عن کو جرت مو یک ہے ظاہر ”موی کی جتزز ہے اس کے بار ے میس بھی 
سوال ہ وگ 1 خضرت صلی اذ علیہ و سکم کے جوا بکاحا سال مہ ےکہ جل نت می ںی در ہے میں بھی 
تل ذکا معن ایا جا ہے اس کے بارے میں سوال ہوگاہاں الد وہ متش جن می حاجت لور یکر نے کے علاوه 
كول اور ”کی تمل ينا جانا اس سے صرف عاجت ی لو رک ہو کی ے خلا يك كيرا ل اتا کہ اس سے سز 
چپ جاےءااس یں ز يمنت وي ره اكول يبلو تنبل سيا كما ےکی ای تقد اد ے اور ای فو عیت كر اال 
سے صرف لوک ی كول لز ت ویر وااس سے ما سل نمی ہو قی یا اش اتی متمولى کہ اس سے 
رقف ر دک او ركر ی سے تی ےکاکام لیا اتا ے او ر گی مک ہو لی نیس هليج كل انسا نکی بہت ہی 
بذیادکی ضر ور ٹیں ہیں اس ے زار جو کی ملا چا وہ تھوڑ ان کیوں نہ ہو ای کے پار ے بل يمت کے دن 
سوال ہوگا جس تاملا نموا ہو گور 7 21 ولا ال سے ک0 


بات تھی ہیں 7لا ت ن 08 رت ككل جا أو 0 

کی بات تل ہے ا لے ٹ یکر لالط لير وسلرنے يهال ان سے يكبا اما مس ا کہ بحل ا راہ 
ہے اک دشت ے جب دوصرے يك ایکا خطرہتہ مو اور یہال أطعِمْنا سرا کی كار مقصد بھی ہو سا ےک 

صرف 7 ھا پا ا 201 کر ار نکر اد رکھانے کا ہنرو لست كر 


یس آل مو قير 2 1010 انتا دک ےکا پا" E‏ 
اا الیمانہ م کہ دو تیا رک لے بعد بیسآ پکھانے سے اا ركرديل- 
(۲( -----وعن ابن عمرء قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم : إذا 
وضعت المائدة فلا يقوم رجل حتى ترفع المائدة ولا يرفع يده وإن شبع حتی 
يفرغ القوم وليعذر فإن ذلك يخجل جليسه» فيقبض يده» وعسى أن يكون 
له فى الطعام حاجة ‏ (رواه ابن ماجه والبيهقى فی شعب الايمان) 
رم سج رت ابن رر ی الہ عند سے دوایت سكم رسول الث سی الہ علیہ 
(۳) شر ای تاب ال طف باب لضي ف الفصل اثالث ح۸ / وا 


يجا عام عي 
وم سف فرما کہ جب دست خوالن رکھاجاے ‏ كول آدىن اسك يبا لت کک دست خواان 
اٹھا لیا جاۓ او کول آد یکھانے سے اپنا ہا تح بھی بے نہ ہڑاۓ اکر جد وه سير جو يكا ہو 
ہا لک ککہ سار لوگ فار رع ہو جا نبل اور اسے ات كر معز ر یکر نے اس کے 
ہے بات اس کے تم نش كوش مئر ہک ےگ اور وو اپنا ا تر يكت بنا لے گا عالاكل ہو ع 
كات ک یکھان ےکی عاجت ہو۔ 
ال صد یٹ ل دو آداب بیان فر ما ہیں : 


وسترخوان انٹھانے سے لے اٹھزا:- 

پہلاادپ ہے یا نکیاے: فلا یقوم رجل حتی يرفع المائدة ۔ک کول آ وی اس وف ت تک داك 
يهال ککہ دست خان اٹھالیا .> - (یائمدہ)اصل می لکھان ےکی میز یا تپائ یکو کے ہیں نان بظاہر یہاں پر 
مطلتار ہر خرانم اا ے اور دست شو ان سے مر ادد رم خان ب رکھا ہو اکھانااور بر 7 ل - 

را وك میا مس رح اد سك يهال دو نت ہو کے ہیں: 
9 ا ايك نو عي یکہ رکھا ہو اکھاناادر بر نتن و تیر وم رادي فو مطلب ہے مو اک جب کک بر نہ اٹھا ك 
ہا نبل اس وت تك دست خان سے نمی انھٹا چا سجن اس لكك ا کی بر ناو رکھانا ساح رکھا ہو اے اور 
آ دی دبال سے اھ جاتاے فو ححا ف سے اعر ات لک ایک صو رت بے اور ہے مناسب نیش سے يكن می ال 
ونت ےک كول حاجت یاعز رنہ مو اگ کو عذر ہو مشلا كعانايا بر تن انٹھانے وال ادنر سے انها بل کے اور 
ا یک وکو ج سے جلد کی ہے تو ييل اٹھ جانے عل ک یکول تررح نیش ہے اس کہ ی ر جنامہ آداب یں 
سے ے اور آداب شل مول عوا رخ شک وچ ے ب كني نبي د امو مال ے۔ 

ظاہر ہہ معلوم ہو جا ے (وایٹہ ام )کہ بن اٹھانے یاکھانااٹھانے سے م رادیے س کہ برت اٹم کا 
ملل شورع ہو جاےء لود ے بر تن اٹھاۓ جانامراد یں جب بر تن ييل جانا رو مو گے فو ا کا امنا 
اعرا كل صورت تيبل بذلا 
(۴).......... رح ماد وكادوسر امت یکھانے سے فار ہو ناسے چان کچ فار ىك ایک عد یٹ سے كلوة ے 
مز تم ۵ رے: 

أن النبى صلی الله عليه وسلم کان اذا رفع مائدتة قال الحمد لله حمداً كثيراً- 

يبال د نه تددس مراد هكحا سف سے فار ہونا۔ چنا نچ امام بخارى ر حم ابد نے اسل عد یٹ ير 


يڪ ۲۱٢۳‏ جب 


بی تمہ قا کیا کہ باب ها بقول اذا فرغ من طعامه 00 ای طر سبلت سے اس زس بحت خضرت گر 
شی الد عنر والى عد یٹ يبل وار فسا دسح مرا دکھانے سے فار موتا ہو کنا ہے قذاب مطلب ہہ مكالم 
جب کک پاق لا ککھانے ے فارغ یں ہوتے اس دق تم کول آ ری نہ اك نہ ا ےک وج ونی مول جو 
` گے اد بک وچ ہ كه بال لوگ اب یکھانے سے فار نیس ہو ے بل ہکھار ے ہیں نہ يكيل ی ال جات سے 


پچ 


بين فريك اکر یھ لوگ اجا یکعا کھار ے مول ايك آدى ييل سير ہو چکا ہو حاص طور ير میز بان تاس 
کے لے مناسب ہے سي كم ووذ وسرول کے فارغ ہو نے تك تھوڑا ٹھوڑ اکر کےمکھا تار ہے اور اپنا ہا تج دنج 
اس كك اکر اس نے ایتا تيو سج لیااور قار ہو كدي گیا لود وسر ےل رگ ككل كك شايد تمزيادة 
کھار ہے ہیں يا تال ساس ہو کہ اکر ت مکھاتے در ہے فو ہعارے بارے میں بر عش وكا كا ہے زياد ہکھار ہے ہیں 
اورا کوچ سے دوکھانے سے اھ كت لال کے مال اکلہ دو کاس ےک ا نکا جيف( کی کک اہو ۔ اس ری سے 
معلوم ہو کہ ججبال پر ے بات ن پاگی ان ہو شش دوس ش رکا کاکسی شر من كل یاند امت میس تل ہو ن ےکاخطرہ 
تہ ہو لا کھانے والو لکی تخد اد بہت زیادہ ہے ایک آدى فارغ ہوا سے لکن باق كثرا ک كمارح ہیں قو اجر 
کہ بال سو تال حك اکر ایک فار موكيا فو بمارى ط ررح کے کھانے وال ا کی بت سار ہیں 
اح شر مندگی تل مو کی فز اس صورت میس کیہ مث جانے عل كول حر جک بات تثبل سے اور اکر 
شر من ہک یککاامکان ہے لی نکی دجہ سے ا کے نار ا مشلا تسیر ہ وکیا ےک تھوڑے لک کھان ےکی 
نئل بھی یں ے نے پھر ا کو چا کہ وہر انا مر تتکردے مشلا ياب د ےک میرامعدہ تيل ہیں 
ہے اس لے می كما یی سلتايا ل پیل لكا ہکا تاس لے ا بکھا بل سا اس لے بیس ہہ کیا مول جب الک 
موز ر کر ےگا تو دوس راہ لشن شر مندہ ال ہوگا۔ 

(9)-----وعن جعفر بن محمّدء عن أبيدء قال: کان رسول الله عه 

إذا اکل مع قوم كان آخرّهم أكلاً (رواه البيهقى فی شعب الايمان مرسلاً) 

ر جحمہ ...کرم صلی ای علیہ و کم جب بك لوكول کے سا کھاتے تے تو آپ 

صلی الث علیہ و كلم ان يبل سے آخر م سکھانے وانے جو تھے۔ 

اس کے دو مطلب مو حلت ں: و 
0( الا یکتاب الا مہ باب ایق لازاف رر من عام ۲ /ص۸۲۰ 


کا rr‏ نے 


E‏ وسلمتے دورول ل 
كوا تي مکیااو رکھلایا پر خو دکھایا۔ 

(r)‏ رفزاء کے سا تر أ خ رم کفکھاتے رما کر ووسر امطاب بے ہو کا کہ جب 
دوسرول کے سا تخ ركان كاله لح لو آنخ رھ ککھاتے رج تھے کہ أن تر # کے لوج سے 
دوسرے بھی شر مع وکر مات داعال - 

)۱٤(‏ -----وعن أسماء بنتِ يزيدء قالت: أتى النبى صلی الله عليه وسلم 

بطعام فعرّض عليناء فقلنا: لا نشتهيه قال: لا تجتمعن جوعا 

وكذبًا ‏ (رواه ابن ماجه) 

ر میم حط رت اسم بنت يزيد ر ی اللد عنية سح روایت ے وه فرال ہی ںکہ نا 

کر یم کی الد علیہ و حلم کے پس ای ککھانا لا گیا تو آپ نے میں بھ یکم یئ کیا قو م 
سن كبك تمن ںکھان ےکی خانم نیں ے فو ب یکر مم صلی اث علیہ و کم نے فر اا بک 
اور وٹ کو کرو 
ظ دو نمتصان مول کے ایک دنياكا نتصان اور ايك آخر ت كاء دنياكا أتصان فو ہہ كر حقيقت میں 
بھو لكل ہو کی تی اور بھ وکح ان ےکا مو قع مل ر ہا تھا لیکن اس سے فاکدہ تثبل اشھایاء آخر ت کا نتصان ہے ے 
کہ جحو ث بو لا سے ج ھک گنا اکا م ہے_ 

اس عد ی كاي مطلب نبل ن ىہ ضرورى شيب سکہ واقعانہوں نے بوث بولا ہو اور آي صلی 
ال علیہ وم تی طور پ ہنا ات ہو ںکہ تم عجھوٹ بول رتی ہو بل فرمان کا مقیر ے ےک اکر وا قت 
بكوك کی مو لب برايها ث لکنا اہ ےکہ لا نشتهي کیو لك اال بل ب وک کی ب ترا ر سكل اور اس 
کے سا تج خر كا كناه بھی ہوگا۔ 

----)١١(‏ وعن عمرربن الخطابء قال: قال رسول اللہ صلی الله عليه 

وسلم: كلوا جميعًا ولا َفرٌفُواء فانٌ البرک مع الجماعة- (رواه ابن ماجه) 

ر جم ...... حطرت ربن خطاب ر ی الث عد سے دوايت ےک رسول اشر ”لياش - 

علیہ و كلم نے فر کہ تم اكت ےکا کرد اود الك الك م وکر كعاياكر واس سک کے بركت ٠‏ 


جماعت کے ساتھ مو ل ے۔ م 0م 


م 


(5١)-----وعن‏ أبى هريرة» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: من 
الس أن يخر الرجلُ مع ضيف إلى باب الدّار- (رواه ابن ماجه) 
ورواه البيهقى فى شعب الايمان عنه وعن ابن عباس وقال: فى 
إسنادہ ضعف ۔ 
جم ......ححفرت ابو ہر مور شی اللد عت سے روات ےک رسول او کے فرايا 
کہ سفت می سے ہ کہ آ دیاس “ہمان کے سات دك مل دروا[ تك جائے۔ 
(۱۷)----۔وعن ابن عبّاس» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: الخيرٌ 
أسرعٌ إلى البيتٍ الذى يكل فيه من الشفرة إلى سنام البعير ۔ (رواه ابن ماجه) 
رم کڈ جردت ابن عپا ی ر سی اد عت سے رد ابیت هك رسول الث ر صلی ایق علیہ 
و كلم نے فرایاککہ ھلائی ا سگھرکی طرف جس میں نے تچ ری سے کی جلدی 
ہا ے جاو فک ىكبا نک طرف د ”ق ے۔ 
مطلب ی کہ ع بول شی او فک ا ماس لے جب اوذ کیا جاتا 
تاو سب سے يبد ا سک كوبا نكا كوش یکا فک رکھایا جام ھاء تو تمر او ن فک یکو ہا نکی طرف بہت 
جلدی سے پان ی۔ 15 خضرت صل الث علیہ و کم نے فر ايك جس تی زی کے سا تخد يمرك اون فکی 
کہا نکی طرف ال ہے اس سے زیادہ زی کے سا تيد رت اور تر ا سگ رک طرف ہا سے مج كم 
مم كعاناكحايا جات ے ل تمل میں ہہیا نکھاتے ہیں »وج ےکھایا و رگ رم جا ہے بیہای راد ہے جس 
بس مہما كعات ہیں الدت الفاظ عد یف کے مو مک وجہ سے استطا عت و حیثیت کے مط لل الل خاد ير 
فرائ یکو بھی اس میں وا لکا ہا کے 
60 -----عن الفُجَيح العامرىء أنه أتى النبى صلی الله عليه وسلمء فقال: 
١ ٠‏ مايحل لا من الميتة؟ قال: ماطعامُکم قُلنا: بق ونصطّبحٌ قال أبو نعيم: 
فسّره لی عُقبةٌُ: قد عُدرَةٌ وقدّحٌ عشيّةٌ قال: ذاك وأبى الجوع فاحل لهمُ 
الميتة على هذه الحال ‏ (رواه ابو داؤد) 
مرج ...... حر ت شی عام رک ری ابق عند سے روایت س ےکہ اک رم صلی ال علیہ 7 
ومک دعت ل مار ہوۓ او رکہاکہ مار ے لے مردار يل ےکتتاعلال ہے ؟ لو 
آپ نے فرمایاکہ تہاراکھا کیا ے نوانبول نے ۶ر کیاکہ ت کے وقت رودص نے 


ےا ہرم 2 


ہیں اور شا مکو بھی ء ابو تم کچ ہی ںکہ عد يثك اوی عقب نے ا سکی تی رکرتے ہے 
کہاکہ ایک پیالہ ت ے ونت اور ایک پیالہ شام کے ونت قو آپ نے فرمایاکہ میرے پاپ 
کے و پھ وک بء ب رآپ نے اس عالت يران کے لے مردا رکو علال قراردیا۔ 


خی ال یکم بر اشكال او رھ اے:۔ 

اس عد یٹ ل ہے سوال پیداہو جا ےک 1 خضرت صلی الث علیہ و کم نے فرمیا: ذاك وأبى الجوع 
کہ میرے با پک عم یہ تو پھوک ہے مہ غير ا کی تش مکھائی ے مالک تیر ال کی س مکھانا ہا يبل سےء 
ال کے دوجو اب د ے کے ہیں: 
(1)......... ہا مان ےک بات م وی جب خی ال رکش مکھان ےکی تر مت نازل ثيل ہو گی تھی 
0 مت تت مکھاادوط رح سے ہو جا سے کی نت مکھائی ہا ے متم ہہ کے اتترام اور ا كل فی مکی و 
اور یر وال کے بال حاو ةلك مکھالی ای نے صر فكلا مکی حاكيد کے لئے اور اس میں متم ہہ مقصور 
یں ہو ما چناخچہ نض عرب شع راء نے اپ با انی بو ہہ کے و کی مکھائی ہے اس طر ہل سے بن 
شعراء نے چغ ل خوروں کے با پکی شح مکھائی ہے نے اہر ے ہہ ا سک حتلم مقصود نہیں ہو تی بكر یس 
ادقات صر فكلا مکی کید کے لے شم كوا جا سے اور ”تم باك حتلم متقصود نیس ہو تی خی الیل کی تم 
کھاتج ا چائزاور ام ہے وودر نقيقت کی نم ہے دوس ری م ركان ترام یں ےکر چ خلاف اول 
ج لیکن 1 خضرت من او قات بیان ج از کے لئے خلاف او از کاب بھی رای کے ے۔ 

يبال پر دو طر نکی ردانتتیل ہیںء یہاں مکو کی روایت کے لفط ہیں : ۱ ۱ 

ما يحل لنا من السيتة کہ می كتاطال ہے ج بك ط را یک ایک روات ل ے:ما يحل لنا 
ایت ةك کون ى نز ار ے لے می کو جلا لكر ديق من مي رکھا ہکس الت مم چات ے۔ دوس ری 
روابیت پر کو ئی اشکال کیو ںکہ سوا کہ می کس عالت میس ہا کے اس کے جواب میں 1 خضرت ع 
ےکی فراياك تہارک عالت چ كل ب وک وای ہے اس ك باه كك می علال سے میتی عالت چن عل 
مي علال ے۔ لوج اب سوال بير من موري من مار ےل 7 دداييت پر اشکال وارد ہو ا >- 

اشکال ...... يهال سوال اور جو اب شل مطابقت تبش اس ےک سوال ہے نمی کہ می رك ب کیان 
علال ہے لہ سوال ہے س ےکہ جب میت كعانا حال ہو ہا سے اكت اكعايا جا کا ےہ مقت ھار کے باد میں سوال 
ہے۔ج بکہ جواب می اس چ ڑ اكول زک میں »جاب ٹس آپ نے ل مال تہارک مال تکیاے ‏ آپ 


53 ےا۲٢۲‏ اي 


صل الد علي و gi‏ فان بمو کک عالت سے اس لے می كعاناحلاال سے تو سوال مق ار کے پارے میں 
ہے اور چو اب انل عاات کے پار سے ل س ىكم جن عالت میں می كعانا حلا ل ہو تا ے لو سوال اور جو اب ايك 
دو سرس کے سا تر مطابقت بل ر کے _ 

چو اپ ...... ا لكا جاب ہہ سبك یہاں مطابقات سج اس ےک 1 خضرت صلی اوش علیہ و سم ٠‏ 
نے ج بات فر فى اس كاعا صل ےس کہ بجو كك الت میس می رکھانا چا نز ہے فو مد کے علال ہو ےکی علرت 
ب وک ہے اس لئ نہ بھی بج میس آ یاک ان قد ار م شسکھایا جا کا ب کہ ننس سے بھورک مث جا اس 
سے زیاد ہکھاتا مائ کی کیو ںکہ جب بک وک م گی نوچو از مین کی علت شتم موی عل تك علمت کی باق - 
ری اور جب عل نر تی لوعلت کین رہی۔ 

)۲( ----- وعن أبى واقد اللیٹیء أن رجلاً قال: يا رسول الله! إلا نكونُ 

بأرض فتصيبًنا بها المخمصّةٌء فمتى يحل لنا الميتة؟ قال: مالم تصطبحوا 

وتغتبقوا أو تحتفوا بها بقلأء فشاتکم بها فعناه: إذا لم تجدوا صَبوحاً أو 

غبوقاً ولم تجدوا بقلَةُ تأكلوتها حلّت لكم الميتةٌ ‏ (رواه الدارمی) 

2.7 کی حرمت ابد وا لتق ر ی اللہ تخا عند سے روات ےکہ ايك ی نے 

عرض کیایار سول اللہ !ہم اسک ز ۲ن یس ہو ست ہی ںکہ وبال تسبل شد ير بج وک لا ن ہوک ی 

سے میحد ہمارے ل َكب لال وگ تو آپ صلی اود علیہ و کم نے فرمایاکہ جب تک تم 

کی کے وق تك خو راک دودح نہ پاویاشام کے وق ت کا دودھ نہ ياويا م اسل ز مجن عل ہز 

کھانے کے لے نہ پوت يرتم اس می كولاز م پا کے ہو۔ر اوى نے ال کا مثو ییا نکرتے 

۸ے ےکا 7 ب تم می کادودھ درپ ایشا مکیادودھ د يةاور 7 ۴ ىا جز 4 كاشياة كم 1 

ا پک وکھا ولو تمہارے _كميع علال مو چا ےگا۔ ١‏ 

یہاں 4 تلن يزو ںکاذکر سج کہ ثم اصطباں نہ پا ی 27 کے ونت يش کے ك دودھ دپ کہ 
لباق شياو شام کے وق کادود شیا 

تیسرے افا مک زک کیا سے لشفا کے امل مخ پار چ نے کے ہیں یہاں مراد ےک كول ل ٗیا 
تنا کی اکا نے نے E‏ علیہ ال لان لحكل جز دي 5 تہارے 
كمي رکھانا علا ل مو چا ۓےگاء اب ہاں بر دو كد ہیں : 

يبلا ست :می ركب علال ہو جا ے 7 کے اونب تو 


TIA 2‏ ہج 


اضطراراور جا لیت ص میں می كعانا علا لل ہو جا ے ملك ای عالت كم ش كما ےکی صور ت می چان 
کے جا ےکا خط رو ہو بض بچھوک ے می رکھاناعلال یس ہو حا يلل شر ير بھ وک ہو نے می کھانا علا ل ہو تا 
ے جج بک نض حطرات کے نز ويل نض بھ و ككل و جہ سے می كعانا علال مو جا تاس جج بک كول اور 
20ے اساتے ) 

ووسر اسيل ...میتی مقر ار شش علال ے۶٥‏ اط 

جب مین كعانا علا ل ہو جاۓ فكت اكعايا ہا کا ے_ 

حن کا رہب می بض سر رم کی مقدارکھاا جا سکس ے شی اتن مقد ار یی لك جس سے 


ایک ےک اتناکھایاجا ےک جس سے جان جاح کان کوک نم ہے سب کے نزدیک چا مڑدے۔ 

دوسرا کہ ات اکھایا چا ۓکہ جن سے ھوک بھی مث جا لین ب وک سے نات کھایا ہاے٭ 
اال کے جوازوعر م جواز مل اخلافے- 

تی را ےک نف ب وک اسح زائ دکھایاجاے ہے سب کے زديك چا کے( 

حنضي اور ھٹور ید بل ...... اق رآ نکر می مکی آ یت ے: 

ن اعفن محمصَة كير ااب لا فلاو عليه 

ال آیت یں عالت اخطرار اور ماص یل می كو علال قرار وكيا ے علو م ہو ال مید سك لال 
ہو ےکی علت بھی اط رار اوراص سے دش شر ير باك ے جب بجو كك شر مخ موی اور ز نكل نچ ےکا امکان 
یی رام وكيا لو اب اضطرارت ربا 2 رك عالت شرت جب علت مید رك عل ری می بھی علال تہ ر ےگا۔ 


(ا) المغنى لابن قدامه كتاب الصيد والذبائحء ۱۷۳۹ مسئلة رومن اضطر الى الميتة» فلا ياكل منها الاما یومن معه الموت) 
ج17 :ص .۳۳٣‏ (القاهره) ايضاً اوجز المسالك الى موطا امام مالك كتاب الصيد ماجاء فیمن يططر الى الميتة ج٩‏ /ص ۱۹١۰‏ 
(”) تكمله فتح الملهم كتاب الصيد والذبائح مسأله قدر مايباح للمضطر ج٣‏ /ص ٠ ٤‏ ايضاً بذل المجهود كتاب الاطعمه 
باب فى من اضطر الى المية ج٤‏ /|ص ۳۲۹٣‏ 

(۳) المغنى لابن قدامه كتاب الصيد والذبائح ۱۷۳۹ مساله (ومن اضطر الى الميتة فلا ياكل منها الاما يومن معه الموت 
ج٣‏ /ص . 7" القاهره) 1 

(۴) سورةالم اندي ٦‏ آ یت نا ركورع برا 


8 و” عم 


خن ل دعل ا بطرت تعاس رك رضت اللہ عت والى عد ہے سے اس لن 
کرت ہی ںکہ 1 خضرت صل اللہ علیہ و حلم نے اع سے ل اک تبي لكواناكتاتاب انہوں ےکہاکہ دود ےکا ْ 
ایک پیالہ کوادرایک پالہ شا مکو آ پ نے فراياك ہے تو ب و کک عالت ہے وآب نے ان کے لے می كو 
طال قرار دے دیا۔ یہاں د یل کہ اک ایک پیالہ شا مکوادر ایک پیالہ کول جائے وای سے سد رم و ہو 
جااے ن اتی خت بھوک لاح تيبل جو فك مرن كاخطره مو ابت ف ابمل برک موق ے۔ لوانت 
معلوم ہوک جس ط رع سد رمق کے كمي كعانا ہاگ ہے ای طر ید جورع کے حك بھی جا ے می 
بوک مانے کے لے لباه ٣‏ ۱ 
و اب...... فی رك طرف سے ا کا جاب یہ ےک يهال مہ جكب كيا ےکہ ایک پیالہ سج کواور 
ایک بال شا مکواس سے ہہ راد بل سب کہ پر پآ د یکو ایک بيالء کو ادر ايك پیالہ شا مکو تا ے بل مراد 
يسك ور ی قوم اورپ رے َي ہکو ایک پیالہ اور ایک شام وتاب ظامر کہ ہر ایک آد یکو جنر 
کوش بی آتے ہوں کے اورا گی سے سداد م قل مقدا رکھھانے اض ورت مل آ موی 
دو اواب :وس اجواب ہے ےک خض ,اللي ےکا کہ سرجورع سك کیا اور 
مقار كما كاجو از اس صورت ٹیل سے کہ جب ىہ ارا ر اور لوک محر موان ايك آدح د کان ہو بل 
طول عرص تک ہے ورت حال علق ر ہے اور طول عر سے کک جب ہے صورت حال علق رہ ےگ اس من 
شض سید رم كل مقدا رکھاکر جند لت ھکھاکر چان نیس بال پاک یکیو ںکہ جب سلسل اتا تمو ڑکیا ےگا تو 
مزال قل تکاشکار ہو جا كااور یڑ کی یڈ ی يعاريال ال پر تملہ آور مولن گی لوال صورت می موت نیا 
ی ء اوا صورت می ںکہ جب اص یا بجا كك عالت طو يأل ہو باس تو حير ساكو جر تقر 7ع نی ںی یا 
کہیں نظرسے ني لزرى لیکن قواع ہکا تاضائجی سك نید کے بال بھی اس صورت میں هقر ارش خکھانانا ہار“ 
ہو جانا چا کیو ںکہ اسل قصوو تو جان بیان ے تاکر جنر لٹ کیا نے يراكنقاءكيا و جان تثبل نج کے کی ليزه 
كول اتلاف تيل ہاور ہے صد بہت کی اس اضطرار باہو ایر کول کہ كاعر ص طویل ہو 


(0-----عن أنس»ء قال: کان رسول الله صلى الله عليه وسلم يتنفس فى 
الراب ثلاثاً متفق عليه وزادٌ مسلم فى رواية ويقول: نه أروّى وأبرَ أو أمرًا ‏ 


ا حر رت ال ر سی اللہ عند سے دواعت سك یکر مم مان ےک جز س 


تن م رجز ساس لیے ے ہے فو بغار ی اور مل مکی رواييت ے اور مل مکی رواييت می ہے 
زاگ افظ بھی ست ني نك 1 خضرت نھ ہے فرماتے تک تین دفعہ ساس یناسر ا یکی 
زياد یکا با عث یہار کے زیادہ كفو ظا ررکھے والااور زیادہ م ہو نے کاباعث ے۔ 


-----وعن ابن عبّاسء قال: نهى رسول الله صلی الله عليه وسلم عن 


الشرب من فى السقاءِ ۔ (متفق علية) 


موی خضرت ابن عباس ر ی الد عنہ سے واييت ےک نچ یکر يم صلی اللہ علیہ 


وم نے مع فرمااے یز ے سے مد لكر ہے سے۔ 


بے :-وعن أبى سعيد الخدرىء قال: نهى رسول اللہ صلی الله عليه 


وسلم عن اختناث الأسقية زادّ فى رواية: واخیناٹھا: أن يقلبٌ رأسها ثم 
یشرب منه- (متفق عليه) 


> و ضرت الو سعید د گی ر شی انفد تال عند سے د داییت سكل یکر مم صل 
الث علیہ و کم نے مع فر راي یرو كا مضل مو كريالى يبك سح اور ايك روايت يل ےکہ 


اختناٹ ب جك ا كاعد موڑاجاۓ پر ال سے پیاجائے- 


-----وعن انس عن النبى صلی الله عليه وسلمء أنه نهى أن يشربٌ 


الرَّجلُ قائمًا - (رواه مسلم) 


90-290 خضرت الس ر ی الد تعالی عنہ سے رایت سكل ب یکر مم صلی اللہ علیہ 


كا سم تج 


وم نے ع فرمایااس بات س ےک كول آد یکی ڑے مو كيال پے۔ 
(6)----- وعن أبى هريرة» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: لا 
يشربَنٌ أحدٌ منكم قائماًء فمن نسى منكم فليستقى ‏ (رواہ مسلم) 
ر جم ...... حطررت الو پر بور ی اللہ عند سے روات كر ب یکریم صل الث عليه 
وم نے فر اياك تل سح كوك ہوک رپا نہ پیے او رجو بجول جا ( يدن بجو لكر 
ھٹا ہوک پا لے اسے چا الع ظ 
(٦)---۔-۔وعن‏ ابن عبّاسء قال: أتيثٌ النبى صلی الله عليه وسلم بدلو من 
ماءِ زمزم» فشربٌ وهو قائم ‏ (متفق عليه) 

حر رت ابن عباس ر ی اٹہ تحال عند سے روات سك وه فر مات ہی كم س 
ئ یکر مم صل الد علیہ و سلم کے پا زم کے پا یکاایک ڈول ےکر آیاتذ آپ نے اسے 
کیڑ ےکھٹرے بی نوش فرمالیا۔ ظ 
2ذ رت ون على یر وو آله على سب سر کات 
الاس فى رَحبة الكوفة» حتى حضرت صلاةٌ العصرء ثم أتى بماءِء فشرب 
وغْسل وجهه ويديهء وذکر راسّه ورجليهء ثم قام فشربٌ فضله وهوّّقائم, ٹم 
قال: إن أناساً يكرّهون الشربٌ قائماًء وإنّ النبى صلی الله عليه وسلم صنع 
مثلّ ما صنعثٌ ‏ (رواه البخاری) 
رم کے رت رض لل قال سويت وت وو 
بذ پچ رکونے کے رحب مین ( م مجر کے قر یب می دان يبل )ل وگو كل ضرورت کے 
بك گے هالت یک عم ری نما ذكاوفتت كياج ر آپ کے يال بال لا گیا آپ نے 
اس سل سے پیااور ا سے جرس اور بإ تجو ںکو عو یااور راوى نے سر اور یاو لكا تق ذك کیا 
ب۶ آپ نے وض وكيا ی ركتس ہو او رکز كرس میا ہوا انی بی لي يمر آپ نے 
فرب اکہ يك لد گکھڑے ہ ھکر پا وٹین دکرتے ہیں حال کہم یکر صل الہ علیہ 
و كلم نے ایا کیا جعیباکہ س کیا ( نكت م كربهاتما)- 
(۸)-----وعن جابرء أن النبى صلی الله عليه وسلم دخلّ على رجل من 
الأنصارء ومعّه صاحبٌ له» فسلَمَ فرد الرّجِلُ وهوّ يحول الماءَ فى حائط» 


۲٣٢٢ ©‏ تج 

فقال النبى صلی الله عليه وسلم: إن كان عندك ماءً باك فى شنَة وإِلّا كرعنا؟ 

افقال: عندى ماءً بات فى شنء فانطلق إلى العریشِ فسكبٌ فى قدّح ماءء ثم 

حلب عليه من داجنء فشربَ النبى صلی الله عليه وسلم ثم أعاد فشرب 

الوّجِلُ الذى جاء معه ‏ (رواه البخارى) 

و می خضرت جاب ر ی الد تیال عنہ سے روات سك نك ركم صل اللہ علیہ 

: لم نے انار شل سے ایک ص کے سےا مالک ہپ کے اھ أك کے 

سا تھی بھی تہ آپ نے سلام کیا اور انس مخض نے جواب دیاااس حال بي لکہ دہ با ل 

پک پیٹ ر تھا تو یکر و سل اہ علیہ و کم ے فرما اگ تھہارے پا ابيايال ہوجو رات 

۸ اسن كيز یں رہاہو وكرت ہم منہ كاكرف بل سے قاس ص ےکا 

جر ےا اییاپائی موود > کہ وو رات گجمر پر انے کی ے میں رباج تووہ ٹف يبر 

کی طرف فگیاادر اس نے ايك بها ل کے اتد ريال الا ناسل پر ای کگھ ری كر كادوده 

کال تو یکر مم صل الث علیہ براوش نے یا 

وآ خضرت صلی الث علیہ و حلم کے سسا تر آ ما 

CE SS 
ہو نے ہیں اس لئ اس ميال نر ھن ال ی ہو جاجاے نال طور پر رات گج رپ انے ليزه کے اندرر سے قو‎ 
اس سے پا زیادوٹٹ اہو جاج ےآ خضرت صلی ال علیہ و ”لم محر إفى يدايا سے ے اس لے آي کیا‎ 
علیہ صلم نے فرمایاکہ اکر اس طر کاپان موجود ہو چو رات كر يران یتر ے میں رامو او راگ ایباپالی ہیں‎ 
سے تو مک رای لی لی گے۔ ظ‎ 


كارع كا معن اور اہ كات :- 

رکا متت ہے مو تا س کہ پا یک تہ ریا تال و نرہ بهم دبا مو یا با الاب و نرہ ہے تو اس سے براه 
داست من اک ای ل لیا جاۓ ا کوک ع کے ول( 

بض احاد یٹ سے معلوم ہو جا س ےک آ ضرت صلی اللہ علیہ وم ےا طرر يال نے سے مت 
فبااے چنا ہکھانے سے يبل ات وو نے کے متحلق يبر د ييل وک کی میں ان میں بھی اھ عد یں الک 


() شرع مان الھر و نل الاف یں باب١‏ تن رجه / ص ۹۳م 


rrr سا‎ 

آل حل جتن میں 1 خضرت صل اللہ علیہ و کم نے فرمایاتھا لا تک رعوا۔ ۱ 

اس کے علادہ كك اور بھی عد نبل ہیں ن سے معلوم ہو جا کہ اس ری سے يإلى نیس بدا جاہۓے 
يان یہاں باكر چ 1 خضرت کل نے اس ط رر پانی خی پیااس کک یر ےکی يكو لممیاتھا لیکن 
آپ نے اس ط رپا پیٹ کار اد ضرور ظاہر فر ہیا اگ ریز ےکاپان نہ متا نو بطو رک کے إلى ےج ۔ اس لئے 
بظاہ ہے عد یث می ن اکر دای حد بیٹ کے فلاف ےا یش کی طر لے سے یری ائیے: 
()........... مشلا نف نے كبا ےک اگ کو چو الاب ویر ومو قذ اس می لكر مایا پیٹ اکر وهس كيو ںکہ 
اس یش احاب شائل ہو جا ےگا تودوسررو ےل وگو ںکوو ونی استعال کے سگھ نآ ےکی لین اکر بدالاب 
بویا ہنا مايال مد ال عل چوک ہہ وج خی پائی چان اس لے اس می لک ما ين سكول رن شب 
(۴)......... .کم پان بے سے تک ےکا و جیہ س کہ جب اس طر لق سے مضہ کاک بای بیاجا ےگا نماعص 
طور پر زياده تقد ادش لوگ منہ لاك پا بين کے توبات مان میا خر اب ہو جا گا خر اب ہونے سے عرااے 
وت ا وله از عر رک ف ل كل ب اورت ھی عم کرت ۱ 
یس ہہ علت تيس پاگی بای اس لے آي صل الث علیہ دع لل نياب ارک نی یاو ن يت آل بلا 
آپ صمل اد علیہ وسلمکالعاب تدوسرول کے لے با قث ب ہکرت تاس لئے آحضرت صلی اللہ علیہ وسلم 
کے ين پردوسروں کے ہے ےکوقیاس أب ںکیا جاسکا۔ 
(۳)............ تیر ی بک 1 حضرت ماپ کا اکر پا ی یٹ كااراده هامر رر نامیا ن جواز ب گول ے۔ 
(م( ے چ #وج: ایک یا زی عل ال عكر كس یھی نہیں لن رقاب معلوم ہو جا ےک 
00000 وم ےا چ ہر سے فى را ے کین ی 
تج بجی نیس ہے بلك خلاف لاب موس ےکا وجہ سے ے۔ 

07 RR ٤ 

دوس ىجري ہو لق ےک دبكتت میس بھی احجها يي كناش ل كك اس طرح سے فو انود ال نا ہے 
یں سی سك قلاف ہے اد ال ط رس کے آداب جن ل دوس رو لك یکا خر يل ہو حال جه ایت 
کہ علي کے خلاف ے ان میس موی ازا رک وج ے گنی اتش بيدا مد جا ے اور خضرت ٣‏ 70 
و كلم اور سار کا بھی بی طروت تقض او قات متمولى ازا رکو چ سے الي آدا بكو يجوز دا رن جج 
9 یک00۰ ۷" عل اس موق با ل عابت 


ےم 


ع ال ووس ل 


8 لی ات 


یں ہو کی جو مايال يبت سے مدل ءاس لے 1 خضرت صلی اود علیہ و سم نے اول تو ایا پانی موا چو 
اغ كيز ے میں رات کرد با ہو ين اکر ابيايا لحن 0 آ خضرت صل الد علیہ و 2 دای بت ہو كيال 
می سے پا تا بے پان قاب رف معياركا حت بل تھا تتا حضو ر صلی اللہ علی وسلم يا سے حك ليان يمر بھی 
كار مو سکتا تھا لی نکر چلو میں بجركر ہے نوا ى ھنٹرک او رکم مد انی بل دكرى کے مو م میں اکر ایک 
برح سے دوسرے پر ت می ڈائیش تو ای سے بھی ا کی ین كك مو ہا ہے اور یہاں فو ہت کی ای یکی 
بھی مدان لئے 1 خضرت صلی الث علیہ سم جس طر کا حت إلى نٹ ےکا ارادہ فربار ہے تے اس شكال 
کی ات ہو تی :اس لے آتضرت صل افرع کم سے راکش ےک ککوجھتھوڑی یرت جب قرو 
رنہ کے لئے براوراست منہ لكاكريالى سبي کاادادہ ظا رف مایا اد كلم د ' 

(۹( -----وعن أم سلمةء أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال: الذى 

يشرب فى اني الفضة الما جر جرٌ فی بطبه نارَ جهتم متفق عليه وفى رواية 

لمسلم: إن الذى يكل ويشربٌ فى آنِيّةِ الفصّۃة والذّهب- 

تھ جم ....... حضرت ام کے ادایت سبكم سول الث صلی ال علیہ وسلم نے فا 

عي تی کے بدت لپا پا > دا سے پیٹ ٹل ووزئ كل اك اٹڑیاتاے اور 

ق لریرولوں کے بر كاذك ے۔ 

(۱۰)-----وعن حذیفةء قال : سمعت رسول الله صلی الله عليه وسلم يقولٌ: 

لا تلبّسوا الحريرٌ ولا الدّيباج» ولا تشربوا فى آنية الھب والفضَّةء ولا تأكلوا 

فى حافھاء فإنها لهم فى الدنیا وهى لكم فى الآخرة ‏ (معفق عليه) 

مر م حضرت ع فد ر سی اللہ عند سے دوایت سے وه فرماتے ہی لكر يل نے 

رسول اہ صلی الث علیہ و مل مکوفرماتے مو سے سناکہ ر م اودد يبتكا كيراش يان اور سو نے 

اور چا ٹڈ ی کے پر تقول مین چو اورا نکی پیاییدں م کہا بھی تل اس کے ہے سونااور 

جا ند ی ونیا نكافرول کے لئ ہیں اور تمہارے لئے آخرت ممں۔ 1 

(0-----وعن انس قال: لبت لرسول الله صلی الله عليه وسلم شا 

داجن» وشِيبٌ لبها بماءِ منّ البئر التی فی دار أنسء فأعطِىَ رسول الله صلى 

الله عليه وسلم القدّحء فشربٌ وعلى يساره أبوبكرء » وعن يمينه أعرابىء فقال 

عمر: أعط أبابكر يا رسول الله! فأعطى الأعرابىٌ الذى عن يمينهء ثم قال: 


2 


الأيمن فالا يمنْ وفى رواية: الأيَمنونَ الأيمّنونء ألا فيَمَنْوا ‏ (معفق عليه) 
ر - حضرت انس ری الثد تال عند سے رواييت سے وه فرماتے ہی كم رسول الد 
صلی انل علیہ و کم کے ك ای كع ريل بكر ىكادود م نکال گیا اور اس دود كوا كوي کے 
إل کے سا تھ ملا یاگیاجو ححفرت امس رض الث توالی عند ک كك ييل تھ تو حضو ری ان علیہ 
وک مکوووپالہ د گی خضرت صلی ال علیہ و کم نے اسے پیاا وفتت آ پک بال جاب 
خضرت ال ھکر اور دا ہیں جاب یک بدو تھا خط رست عر شی اللہ تخا ى عند نے عون ضکیاکدیا 
ر سول ای راہ بی نبو ابوك كودع وی فق آ خضرت صلی ارٹر علیہ و لم نے اس اع را یکو 
د ےاج آ پک دا یں ماب تھا پچ ر آپ ے مایا:الایمن فالايمن "تی یقدم الايمن 
فالایم نك دال جاب وا کو مقر مکیا ہا ےگا یھر اس سے دا يل ہاب وا ےکو۔ 
جناي بی ست ےک كول چ اکر شی مكرلى ہواور ا ختقا ق یکول اور و ہی کے اندر ت ہا 
ہو اڑا كل تی کا آغازدامیں طرف ےکر تایا ہے۔ یہاں 1 خضرت صلی انفد علیہ و سلم نے اتنا تام رمیا 
کہ خضرت اب وبآ پک با يل جانب تھ اور دا يل جانب ایک بده تايان آپ نے دا يل جان بک ر مایت 
رگ کے ے فضیل تکو نظ راند ا زکر ویاور يجام اپیالہ اس اع ال کودے دیا- 
(1)-----وعن سهل بن سعدہ قال: اتىّ النبئ صلی الله عليه وسلم 
بقدحء فشربٌ منه وعن يمينه غلام أصغرٌ القومء والأشياخ عن يساره فقال: 
٠‏ يا غلام! أتأدّنُ أن أعطيّه الأشياخ؟ فقال: ماكنتٌ لأوثرٌ بفضلٍ منك أخداً يا 
رسول الله! فأعطاه إِيَاهُ (منفق عليه) 
وحديث أبى قتادةً سنذكر فی باب المعجزات إن شاء الله تعالى - 
ر ...حزن کل بن سعد ر ى اللہ تحال عند سے ل یتک رسول اللہ صلی 
ال علیہ و م کے يال ایک پیا لا یاگیا وآ پ نے ای مس سے بياس حال شلك آ پک 
دای جاتب ایک لڑکاتھاج کہ ان لوگوں یل سے سب سے موا تم اور بڑکی عم ر کے لوگ 
آ پک با نبل ہاب تے ف آپ نے فر ہیا کہ ا لا هكيا تو اچاز ت دياك شس مہ ہا 
ہو ابی ر کے ادكو كود دول تاس كيال اليا بل ہو ل آي صل ایند علیہ 
و کے ہو ئے کے بارے یں 001 کوتر يدو ديار سو لالش آي صل ابثر علیہ 


وم نے دہ یہو ااسے دےدیا۔ 


Gi ۲۱۲ کا‎ 


جس لڑ کے کا ذکر ے اس سے عراد حضرت عبد الث بن عا ہیں۔ ا اس وقت نور لك اور 
آپ ٹل کی دانیں جانب تيك تے اور بال جانب خضرت ال وار اور دور سے ڑگ عم ر کے حضرات موجوو 
تھے تر تیب کے اط سے فو حضرت عبد اٹہ بن عباس كا کن مقر م تھا مان ححضرت اب وبکر و غر ویا دوصرے 
حطرات کے يدق ر کے ہونےکانقاضاىہ تال ان کے اترام یس ہے ا سے ل سے د ست دار ہو ہا یں چان 
خضرت لگ نے حضرت این عا کو بی مور موی کہ ہن ہار اتا ے لین بڑوں کے اترام می ايناتن 
چھوڑدوتذحضرت این بال نے فر )كر توبات حل چ کی جک مو تی ایا ددھ لول سوم رتب ان کے 
اترام میں دست روار ہو چا کان معام يهال شش پک چ رکا نیش ہے بل آ پک برك ت کا معا ے» ہے 
آپ کے مد كل ہو کی جز ےا رآ پک پگ ہو گی جز ہے اس مر نکی رکت میں ايثار يي لك رسكنا 

(1۳( -----عن ابن عمرء قال: كنا ناکل على عھدِ رسول الله صلی الله 

عليه وسلم ونحن نمشى ونشربٌ ونحن قیام - (رواه الترمذى وابن ماجه 

والدارمى وقال الترمذى: هذا حديتٌ حسن صحیح غریب) . ۱ 

رع 7 خضرت ابلن رر فى اٹہ تال عند سے د دات س کہ وو فرت لكل تم 

يسول اثد صلی الد علیہ و كلم کے زمانے میس اس حال شکھایاکرتے کہ تم جل ر سے 

ہوتے سك اور تم اس عال یش بی ياك سة کہ مكب ہوتے تھے۔ 

(94)-----وعن عمرو بن شعيبء عن أبيه» عن جدّہء قال: رأيتُ رسول _ 

اله صلی الله عليه وسلم يشرب قائمًا وقاعدا - (رواه الترمذی) 

۱ 7ر کت خر رو بن شعیب سے روات ہے وہ این والد ے اور ومان کے دارا 

سے دوايي تكس ہیں دو فرماتے ہی ںکہ میں نے ر سول او صلی اللہ علیہ و سل مک وكيس مو 

کر لے بمو سے کی دیحاو شی کر ىد ظ 

(١١)-----وعن‏ ابن عباس رضى الله عنھماء قال: نهى رسول الله صلی الله 

عليه وسلم أن يعنمُس فى الإناءء أَويْهْخٌ فيه (رواه أبو داؤد وابن ماجه) 

رجہ کی خضرت این عبااس ر شی اٹہ عنہ سے رواييت ےکہ نب یکر م مل نے اس 

اھ ا اا ایا عن ار ی ےب 

0050 -----وعن.قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم : لا تشربوا 


rra 5 


واجدا كشرب البعيرء ولكن اشرّبوا مٹی وثلاك» وسموا إذا أنتم شربتم» 
واحمدوا إذا أنتم رفعتم ‏ (رواه الترمذی) 1 
رجهم ...... حطرت ابن عباس ر ضی الث تا عنہ سے د وات سكم ر سول الثر صلق الد 
علیہ وسلم نے اد شاد فربایاککہ ايك مالس می مت پو جیی اکہ اونث نتا سے بللہ دويا تین 
مرح پواور جب تم يخ کو تواللکانام نےاواورجب تپ یکر فار ہو اواو ا کی چ رکرو 
)۱۷( -----وعن أبى سعيد الخدرىء أنّ النبىّ صلی الله عليه وسلم نهى 
عن التفخ فى الشراب فقال رجلٌ: القَذاةَ أراها فی الإناء قال: أهرقها قال: 
فإنى لا أروى من نفس واحدٍ قال: فأبنٍ القدّح عن فِيكَء ثمّ تنفُس ‏ (رواه 
الترمذى والدرمى) 
رم ...... رن الوسعير خد ری شال تیال عنہ سے روات نےکر ولا عه 
ےک جز یش يموي مارنے سے شيع فربايا اك آوی كيال بض او قات يل بر تی 
یں ت رتا مول ( یں پالی وغیر ویش جکا مو ہے ا سكوبئا سه کے ے يجوف ارف يدل 
)تق آي نے فرماااا كو بہاوو ( متك تھوڑاسا پالی انيل دو تو جو تھا یر تیر را دو بھی 
كرجا ع )اال تن كيال ايك رانس میں سي راب ہیں ہو ج(اس لئ کے سنس یندم 
ے) ف9پ نے فرمایا/ہ بر نکومنہ سے ال کر یکرو ھر ساس ليأكرو- ْ 
(14)-----وعن قال: نهى رسول الله صلی الله عليه وسلم عن الشُربٍ من 
اروشاع وأن یفخ فی الشراب ۔ (رواه أبو داؤد) 
مر جک حضرت الوسعير خد ر ی ری اللہ تما ی عندح روات کہ ىم عله 
نے پیا ل ےک ون مو بكس يبن سے نع فرمایاادر پٹ ہک جزل چوک مار نے سے۔ 
2س فلن ترك ب چان آي نے پیال ہک نول مول چک ے من کر 
يت اد 


تك ٹون ہی چک سے من اھکر کی مامح تك وجوه: ہے 
ا کی دوو مل ہو کق ہیں: ۱ 
(۱)........... یک نوم كم جہاں سے پیالہٹو ٹاہ اے وہاں سے اکر یں گے فو خطره کہ وبال بر ہونٹف لو ری 


ےا ہ۲۲۱ اع 


ل 121110111110 20 کی0 لس ویر 00ع 
(۴)........ اور دوس کوچ ہے ہ کہ جتبال سے پال ٹوا ہوا وبال عام طور بل یل ییا ری کے اجزاء 
مت كوجرا او رت EE iE‏ سے سس یا 
قافت کے بھی فلاف ہے اور اس می يهار یکا بھی اتال ے O‏ 

(۱۹)-----وعن کبشهء قالت: دخلّ علىّ رسول الله صلی الله عليه وسلم 

فشرِب من فى قربةٍ معلقةٍ قأئماًء فقمثُ إلى فيها فقطعثه ‏ (رواہ الترمذى 

وابن ماجه وقال الترمذى: : هذا حدیثٌ حسن غريبٌ صحیح) ۱ 

تر رج .حطر تكبو ر ی اللہ تا ى عنباف بای ہی لك رسول اللہ صلی ایل علیہ و سم 

خی رے پان تر یف لا نے آپ صل ال علیہ و مم تے رين کے ہے کے کے تہ 

سن كنس م وکر پان پیا تو بل اس لیے کے مد كل طرف ای اور اسے کاٹ لیا۔ 

۱ (چہاں سے 1 خضرت صلی اللہ ليو حلم نے بها تم بال سے ”کی ےکا من كات لیا-) 


یز كا مد کا سن کی وجوم:- 
ا کی دو یں ہو کق ہیں: 
)0( .......... یک فو ےک جرال صوصل اوھ علیہ O‏ 0 باس کی اور کے ونتف 
أبس أله پا ےے اس میس اس جز اال اور نے از ہے اس ےکا ٹکرک لیا ا" 
(r)‏ ھت کے ےجا ٹ کر رک یاک امن زک خض رح صلی الہ علیہ وسلم کے لب سارک کے 
> سے یں آ پک اعاب مبارک کی لکا ہو اے اس لے ب کت پیر ام گئی سے یی تو ضام بھی ہو سا ےء 
كم بھی ہو سنا ے يتن کے بعد یکنا بھی پٹ تا سے لین ےکا رت کے طور ہے یر ےی کی كفو تار ےکا 
).م ----- وعن الزهرى» عن عروةًء عن عائشةء قالت: كان أحبٌ 
الراب إلى رسول الله صلی الله عليه وسلم الحلوٌ الباردُ ‏ (رواه الترمذى» 
وقال: والصحيحٌ ماروى عن الزهرىء عن النبى صلی الله عليه وسلم مرسلاً) 
شر جم ...... حضرت ما کش ر ی اٹہ تخا لى عنپار وای یکر کی ہی ںکہ ن یکر بم سل اللہ علیہ 
بر ہکا 


کا وعم i‏ 


00510 -----وعن ابن عبّاس» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: إذا 
أكلّ أحدُكم طعامًا فلیقُل: اللَهُمّ بارك لنافيه وأطعمنا خيراً منه وإذا سُقی لبنا 
2 فلیقُل: اللهُمّ بارك لنا فيهء وزدنا منهء فإنّه لیس شی يُجزى من الطعام 
والشراب إلا اللبِنُ (رواه الترمذى وأبو داؤد) 
مت می الا 
نے فريك جب تم میں ےکوئی شی سکھائے قولیوں کے : 
الهم بارك لنا فيه أطعمنا خيرا منه 
کہ اے اٹہ یس اس عل ی رک عطا ریا اور تيبل اس سے بت رکھھانے کے لے عطا 
را ادر جب دودھ پچ لول کھ: 
. الهم بارك لنا فيه وزدنا منه- 
اے اش ! عمجل اسل میں ی رک عطا فر ہے اور الى ل اضافم عطافرءاسي اال 
ككل كول جزايى لس کہ جدکھانے اوري کے قا مقام موسواةدوده كد 20 
چوکمہ دود مکی افاد يت يبت زیادہ سے اس ےآ پ صل الثد علیہ و كلم نے مہ دعا بل فرہا كل اس 
سے بتر عطافرءاسي كبو ںکہ اس سے ابت رکوگی تيبل يللي دعافرمال:”زونامتر “# 
١‏ (77)-----وعن عائشةء قالت: کان انی مق لاوسلا اعسات 
له الماء منّ السقيا قیل: هى عين بينها وبين المديئة يومان - (رواہ أبو داؤد) ` 
ہر جم ...... حفرت عا لہ ر شی ایر عنها سے روات ےکہ وه قران ہی ںکہ یکر مم 
صلی او علیہ و کم کے لئے ستیاچشمہ سے ٹٹھاپالی لیا جات ت کہ گیا کہ ب ايا چشے تھا 
كا کے در مان اور ييه کے در مان ددود نکی مسافت گی ۔ 


ٹر ے اور اعگے ال لك ابمت:۔ 

۲ خضرت صلی اللہ علیہ 00 
نبل ف ماتے ست بلل كيف ما اتفق جو ماكر پیر گیا ا كعالي لكر بيش دآ تو بي سکھایا۔ باق اس ش ل كول 
عیب یا نکر نابہ پک معمول تبي تھااورکسی بخاص م کےکھانے کے ل كول خاص ملف اور اتنا مکرنا 
کہ فلاں زی منی جا ہے بامہیا مون چا ہے ہے حضور صلی اوہ علیہ ول مکی عادت مہا رک نیس کی الب يال کے 


پارے يل آي كل عادت اور مول را قف تاك إلى کے بارے می سپ نے خصو صی اتنام فرایاھ ید 
منورہ کے اندر تيال کے يب ھکنویں موجودتھ لیکن مر ین منوروسے تقر یاود نکی مسافت پر ایک چ تھا 
جس کانام سقیاتھاا کاپان ھن الور زياده بتر تیاور حکیات بھی اس ع كم تكاس لے آپ ہے کے لے پانی 
دبال سے مكو لے ء اس سے اع پا یک امیت كج آ نی ےک آ خضرت صلی الد علیہ و صلم نے بال اشیاء ل 
كول نا اجتمام تمل ف مایا کن يال کے باد بعل کپ نے اوتمام فرمیا۔ 

(Y۳)‏ -----عن ابن عمَرَء أنّ النبى صلی الله عليه وسلم قال: مُن شربٌ فى 

إناء ذهب أو فضةء أوإناء فيه شى من ذلك فأنما يُجَر جرّفى بطیه نار جنهم ۔ 

(رواه الدار قطنی) 

7 ململ نطرت این رر ی الہ عنہ سے د وات كم ای کر مم حا نے ار شار 

ہیاک جد آدئی سو نے یاچا ند كا کے ب تن شل يني يالب بر تن ٹل ہے ننس می سونے یا 


چم 


5 نر ی شت کوٹ چز مول وو ہا سے پیٹ كا رر مم 77 اگ ڈال اج 
اال با کا عد بیث کے ت ججمہ کے بعد چن سائل ذكر کے جات ہیں : 


بی و بر هيدل سال س لھا:- 
سب سے می عد یٹ میں ححفرت الس ر ی الد تدای عنہ فر مات ہی لك یکر مم صلی اد علیہ و کم 
یی کی جز یش تین مرحبہ مالس لیے سے ج بکہ دوسری عد یت میں خوو حضور اکر م صلی اثر علیہ و ملم نے 
س فى الا نا ءیا شی الات دے مع فرمایالشنی بر تی کے اتر ساس لف سے با پچ کک مار نے سے مح فر مایا شلا 
رت اہین عيال ر شی اٹہ عن رك عد بمث ے: نهى رسول الله صلی الله عليه وسلم ان يتنفس فی 
الاناء أو ينفخ فيه - 

نو بظاہر دونوں عد يثول میں تار ل ے بن حطرات نے اس تخار کو دو ركر نے 3 لی 
چو ڈی تق بی کی ہیں لین آسمان ىی بات یہ کہ 1 خضرت صلی الث علیہ و سم نے جو منع فرمایاسے دہ بر تن 
کے اتر انس ین سے فرمااے۔ بر تن کے ار سان لی کا مطلب ہے سن هكد يهنا ؤب كر دے ليان بت نكو 
منہ سے انگ ن کر سے اود اك عالت میں ساس نے نے١‏ یہ فو يشر يده ہیں ے لیکن خود 1 خضرت صلی اللہ 
علیہ وس مکاجھ مول تماد س فى الاناءك ہیں ے ہک س فى الشرا بکا لانن رخن و 


۲۱٢۱۴ 83 


مت تے بر تن مہ سے ہٹ اکر لبذاي عد يشال کے خلاف بل ہے حر یی 
سای رع ھی بقل ازس ےنا ۱ 

آ خضرت کے جب مع فر يكل بن کے اندر چک نہ ماد کی جائے فیک ص ن کہا س 
ایک ساس سے سیر اب نیس ہو اسن کے يعن کے دور ان ساس لايك تا ے اور جب سال س لو ںگا تو بر تن یس 
م کی بواجا ۓےگی فو 1 خضرت صلی اللد علیہ و صلم نے فريك ساٹ یی کا طروت ہے نیش ےکہ رت کو مضہ 
کے سا تيد رسكتت ہو ے سنس لیا چا سے بک ط ريق کہ فابن القدح عن فيك لافس ا ال لا 

سے اک کرو پھر الس لو 1 ححضرت صلی اٹہ علیہ و سل مکی عات مہا رکہ بھی بچی یک آپ تین اس میس 
ين ل اور آپ نے اپنی قل عد بیث کے زرك بھی ا یکا تم دياس اور اس کے فواترييان فر ہیں چنا 
قرتالأ نکی عد یٹ يل ]خضرت لیا لي وسلمنے اس کے 7 ںا نییان قرا کے ہیں: 
0 ا تن الس میں يي سے پیاس زیادہ چاچ جرب ل اکر ای ك كلاس ایک ہی 
ساس میں لى لیا جا تاس سے اتن بياس نہیں مق جننی اس صو رت مس چھتی ہے ج بک پالی واتتاتى بها 
جا لین تو ڑا تو ڑ اکر کے ورعيان عل ناش ےکچاج 
(۴).......... دوس راف نکدہ ینار یی سے حفائظت ہے اس ےک کیک ميال غغث غ ٹک کے جد عاجا ل اس 
تجو غر ہک کاخ رہ بھی سے اور يار کیک کے 
49 9 سير قا سی تی ضر ان سبك اا 
ہاے فو مضل او قات معد ے پر پوچھ بن چات ے اور م “بل ہو تا ج بک تھوڑا تجوز ا ذالا جاے و معدہ 
سای قب لكر ينا اور دوسا اک كرد مان عل انس نہ لياجا ع توج وک اس سے بياس جلد ی بيس “مق 
الك ييا يجحا کی ناآ دی ین زی دہف جاتاے اور ھض او قات مع کے لح نياده ىجان > 
اوراس سے پر شی یکاخ روہے۔ لیا نكر ساس نےکر پیٹ ےکچ كل الس بها لبأ سالب ہا سے اس ے 
تاپ تسد کے اندر كل وکا سے زيب نیس يئة كبر “كاك کی خر ل ہے۔ 


حضور َه كت ہا نسوں میں إلى نت ل :- 
آحضرت صل اللہ عير و لمكت نول ل بعت ال شل روليات کے اند ريك تار سا 


(۱) مر الات شر رةمدكاةا لص اق باب الاش ب الفصلالاول ج۸ / ص دالا 
(۴) میا ۶ا لصا تاب الا طم باب الاش ب الفصل الثالى رح م / صا ٣‏ 


rrr 9‏ تی 


عد یٹ ئل یہ آیاے: یعضفس فی الشراب ثللاشا کہ آفضرت یلکن ےکی جز عل من مرح سای 
بين ےج بک “مل اماد یٹ آ تا مرتین أوفلاشاك دو مرحي ہا ی لیے تا من میی۔ 


ا تی 
ھن ال کک ليا لور ن عد يول یں دوم رحب كاذ كر تا ہے اس سے مرادي کہ ہے کے ووران ساس لیت 
تھے جب پان تن حصول يمل پیا جا ےک تلا کہ ہے کے در مان دو ساس میں کے ,ا سک تیر اسا س 
دولیناہی ہے اس ل کہ وه تل شرب کے فال کے -ك سے وكرن تو امت تک تاد اس لے بنض 
راولوں نے ا كو كر خی ںکیااپز ادوفو ںتمموں کے اتر ري تار ض نہیں ے۵ 
0 كان کون اا عار کک ے ول کی ےرا ای ن مو من 
ہی تے لیکن دو حصموں مس بھی لي کیاکرتے تھ۔ ا کی تید حضور کی قوی حدیث سے مول ہے۔ 
حضرت ابن عباس ر سی الثد ع کی مر یت الفصل ٹا میس موجور ےک 1 خضرت ملل نے فرریا: لا 
تشربوا واحد اكشرب البعير ولكن اشربوا مشنى وٹلٹ ۔کہ ایک دفعہ يبل تہ یو پک دو اور ن مر حير 
ٹس بو الل عد بی کابظاہر مطلب می بغت کہ ایک دفعہ يننا خلاف ادب سے يكن دو مر حب يليا بھی در ست 
ہے اور مجن مر حیہ ينا ادر ست ہے۔آپ نے دوم رجي ہکا كرك ليا ج اور تان مر تب کا كر كم یکیا سے اليا 
1 خضرت عاك تل کے بارے میں جو عد نيل ہیں ان جس بھی يب كهاجا 16 آپ بھی بھی دومح 
ٹم پیے تھے اور بھی ین مرح شش 
ا نہوں میس سی کا كم مسب ین سما سول میں يبنا آداب شی سے سے اور سب سے 

بت رطریقہ وو ےکہ خضرت صلی ال علیہ و للم نے اس کے فوا ندييان فرماۓ ہیں۔ 

دوسا سول میں کے .زاین عن ينف کے كرح او اا قزق 
الى اود خلاف ادب کی تبش ہے اس کہ أ الیک مرجب ين سے سج چ کہ ايك مانس می سکیک دمل 
ٹن EEG E ER‏ 00 
تشربوا واحداكشرب البعير- 
() م الفاح شرن مضفاۃ الماع باب الاش فصل الاول ۸گ *", ابيا او جز المسالك الى موطا الام الك اخ فى الشراب 
۱ ۲۷۹ءابینا مار کاب الاشر ہاب ای کن اس لال ارد باب الشرب خسان او لاڈ ۱۰| م ے ۹ے ے 


r۳۳ ہے‎ 


کہ او فکی طرر]ايك دفعہ إلى غٹ خث نہ چ صاواودي بات دوم رج يك عل نی پائی جال ی لبزاده 
م تہ يهزالبخ رکراہت کے جاتڑے۔ 

اک و2 بی ےکا کم ...لی ایک مرجب ييل فض حبسي لن خلاف ادگ اور اف 
اب ہے ایک وان ل ۓےکہ آ خضرت صلی الہ علیہ و سلم نے جو جن مرخ رع کے فوا بیائن فغرماۓ مل وه 
الل شس ما کل نی ہوتے دودووفعہ پیے مج کسی ت رما کل ہو جاتے ہیں ادر ان دفعہ ين ٹل يود سے طور 
9 تب و وم نے ا واو شك رح پا ہار دیا۔اں 
سے معلوم مواکہ ىہ بی تر بھی میں ے بلك تز بی ے اس ےک اس کیک دوو يس جتن میں آل ہیں : 
۱ ایک نو ےکہ ووی فا لسسع ززم د ہے گا دسا ےکہ تیب کے خلاف اوران 
دوفو لکاتقاضا ‏ کہ ہی ترد موبلا بجی مو 
.ہت تلك ے زياده مرت می يبغ کا حم ...... تن سے ید مر خلاچا عاضوں: پیا 

سا نسوں می پیٹ ےکا حم بظاہر یہ معلوم ہو جا ہک نے اسن وا امإو راع عن ی لص مکی کرات بی 

نہیں ہے يله سن کاڈ اب بابر اال ئل مل جا كاك وککہ جب چا با ما نسوں ٹس ہے ےکا واس می تین 
انس بھی آ گے اور ٦‏ خضرت صلی او علیہ و لم نے تین اکر كي تین ے زات رک أفى ثبي كد 

دوسرے ركم ضور یی نے تین انو ں کا کم چند فان دکی وجہ سے ديا سح اور یز فوائن یتس طرح 
ین سا نسوں میں ما سل وت ہیں ای طررح تین سا نسوں سے زیادہ می س بھی حا صل مو کے ہیں بک اط ران اول 
ما کل وت ہیں ٠اس‏ لے من سے زيادهسا نسول شل لي نے اوہ مرف ہ ےک غلاف سنت كيل بل يظاجر سنت ير 
کے کاڈ اب مل جا گا ٹن شرو باب وت ہیں جوز ياود سسا سول عل پیے جات ہیں چھ گرم چرس 
مولى میں ا نکی تو ر بات ہی کد ہے جلت جاۓ و یرہ يكن دوسرے منرے شر بات بھی یے سوڈ ےکی 
برل و تیر دیا ای طرر کے بجع اور شر بات مہ بھی بظاہ رك سا نسول شش ين جات ہیں فؤوه خلاف سنت نیل 
ہے اور زی رح اتر بض احاد يهش سے مون سے ج نکی سن رک نک مول نیس لاي عد ييل مج اروا تداو ركتز 
مدال میں ہیں نج نکاخلاصہ ہہ ےکہ “ضور عو نے فر ايك پا یکو تھوڑا تھوڑاکر کے چوس چو سکر پو 


أن کے اندر موتك مار ن ےکا گم :- 
ضرت دل الث علیہ دس نے بر کے تدراو خا طور پاچ کے اندد 2 
( )كنز الال اليب الال فى الشر؛ ب انسل الاو لن آداب الراب ت۵ا / م ۲۹۰ 


سے من فرما ا کی دوه ل مو كق ہیں : 

ون دجم کے کہ بر تن کے اندر ھوک مار ےگااور دیا ہو کا ےکی اور نے کی پت ہو اور 
ا كوي ہو ۓےگھ نآ ےکیو لك يدك مار سف سے من كاب لهاب بھی جلا جا كا ت یکا مكرنا سل سے 
دو م ےکوگھ نآ ے پند یرہ نیس ےی وج الل صو رت بل پا ہا ے جب کہ اک بر ت کی اور نے 
بیز 

دوس ری وچ کت ود ےکہ اکر خود کی يبنا ے تنب بھی نفاست کے خلاف سے اس ل ےک اس نیل 
لونک مار ےگا قو ظاہر س کہ یھ لعاب کے بھی ایتا ہا یں کے اکر چ لهاب انا عی سے کان خب بھی ايك 
مرجب مہ سے كا لكر دوباره هنم س ڈالتا نفاست کے خلاف ہے اگ ر لآ مہہ مقد ار مل لحاپ ے اور وہ 
دوباده هن اله ے لوه ظافت کے لاف ے لان اس صورت میں نظاففت کے خلاف فو یں الت نات 
غلاف صرور ہے۔ يبل وج شید ے ينبت دور کوج حك کیو کے دوس ری وچ میں دوس رول وتاي فك 
خطرہ بل اس سے معلوم ہو اکہ جہا کک تو تفاس کا محال ہے اس ےکی بھی رورت اور عذ رك وج سے 
تر ککیاجا کت ےکیو لك ال م کے آداب موی عوار کی وچ سے موز دي جات ہیں ہا ل تک 
يبل وج ہکا تلق ے اس تقر بر سے معلوم ہو اک جہاں ووسر و كو كن آل موی خطرہ مو وہاں ير وکر اہ موك 
کن جہاں دوس ر ےک رکآ ےکاخط ردت ہودہال پر کرات تيل وکیا کیا ایک صو رت ؤي ہو ق ے 
کہ پٹ کا نز نی اس نے ہ ےکی اور نے نیس نی تو يبل وج کراہ کی اس میس نیس پائی ہا لا 
کراہت موی رہ جا کی الى طررع اکر لقن ےکہ دوس را خض اس کے اعاب یا ا کی يكل سے تن 
سوس یں کر كا صورت بی کی كرابت تيبل ر ےکی ناض طور پر جب مہ انداز ہم وک ووا یکو 
انك باغث ف رتكاو كرابت بالكل ت ہو جا ۓگا۔ 


يال بد مك سة وفك يويك ما رتا:- 

۱ اس سے ایک ستل بج یس لياو كر بض لوگ ب سكت يلك عام طور پر يبن کے لك باتھ بذعم 

ک پا و خر پر د مکیاجا اہ ہہ تاا نے اس لغ 1 خضرت صل اللد علیہ و سم نے نذا یا ےک جزل 

ویک ارنے سے يح فرمااسے ہد مک نے والا ظاہر سے اس یس يوك ك مار ناس ا كاجو اب ہے م وگیاکہ ہے ٹا 
جا ن اشراب جۂ اس ۳۰۴۴ءا یۃا بز ىلك الى مد طامام لک اش ااشراب رح ۱۳ / س ۲۷۳ ینغ 

الباد ی کاب الا بد باب الشر ب کمن او لاش ع٠٠‏ ص ےے 


کیا ۳۵ 2 


ال صورت ٹیل سے ج بكم دوس راا سک برا ھے یہاں فدہ يكت کے لے ایی اکر اتا سے اپ اال میں علت 
نیس پائی پان اور ا سکی والح دلي تاب ازات می اس طرحع سے واقعات آل ےکن 
خضرت صلی اللہ علیہ و سلمنے متحددواقعات پ پالی ںای كما کی ججزز ٹس اينا لعاب مہا دک ڈالا ظاہر 
سب كه لهاب ڈالنا یھ وتک مار نے سے بھی اشد ے کن چ ھکل ہآ پکولقین تھاکہ صحابہ رضى اش “نم آي کے 
لحا بکوبا رت بک ہیں بل اس مو قح پر ا كل رت بھی اہر مول سے ء حاب تكاس یس فاده تھی 
لئے آپ صلی اللہ علیہ و کم نے اس می لحاب للك يي كول حرج ہیں جما ای صورت حا كم جب 
لاب ذلك می كول تررح ینس ے و یھ ویک مار نے میں بط ان او ى كول م رح یں ہوگا_ اس سے معلوم ہوا 
کہ يك مارنا بذات شود ممنورع ثبل بل لحا بک کی نکی وجہ سے ممنو ہے۔ 


آحضرت يذه نے یز هك مد زكاكريالى نے سے منع فر اا شلا ححضرت ابلن عراس ر ضی اد تی 
عن رک لق علیہ صد ی ے: نهى رسول الله صلی الله عليه وسلم عن الشراب من فى السقاء۔ 

ای طررح حت او سید خد ر کر ی اللہ حن ہک عد یٹ ج کہ شف علیہ صد یث سے أکی بغار ی اور 
حفن یرول الله صلی الله عليه وسلم عن اختناث الاسقيته- 

۱ اختناث الاست ےکا مطلب ہے ے ب[ ميرح ع داوف و رز سعد ا کیا اء اياعام طور 
بالل دفت ہو تا ہے ج بک ”یدز ین پر رکھاہو امو ا كانه كر سید سماو اڑا ی سے مضه اک پان يا مشكل 
و ہے اس لے إلى يعن کے لے ال کا مضہ اپ ا بكر لياجاتا. او رهن او کی طر کر نے کے ل تھوڑا 
موڑنا پڑتا سے املكو اختتاث الاسقی ہکہا جانا ہے اس سے بھی آفضرت صلی اش علیہ و حلم نے شنح فرمایا۔ 
عسل کہ آپ صلی اللہ علیہ و کم نے مین ےکو مضہ کیا فی نے سے مت فر مایا چا سے اس کے من ہکو موز 
سه يانه موث نايد وول صور تل ہیں کان خض اماد ث بظاہ راس کے خلاف ہیں ان سے “نکی ےکومنہ 
كيال بن ےکاجواز معلوم ہو جاے ملا حطر کو مکی مر ہہت ا لفل الثالى میس موجود ےکہ 1 خضرت صلی 

اللہ علیہ و كلم ان ےگ مت ريف لا اور ان کے ككح بال یز و لکا ہوا تھا فو 1 خضرت صلی اللہ علیہ و صلم 

ان اک ےکم ڑے ہوک مضہ لاک پء ہاں دبا تل من کی ہیں : 

يبك یہ بات بج لا لکہ احاد یٹ یس مكيزا كو مد اکر ہے سے کی کیا سے دبال نیک علسندیا 
عد کیا ال کے بعد روليات میں تخار كو ص لک لی حل # ۱ ۱ 


۲۲ 


ک ا چ 
62 کے كيز # كمد اکر پٹ کی انع تک کی دجوہ ہیں خلا ہو سكا بهل مکگیزے کے اند ركو 
رت رسال جز موجود ہو مشلا كول زجر یز موجو وج وككر ىليا بر تن نل كا لک بیاجاۓ لوه جز مو 
گی فو نظ رآ جا ےک لین اکر براوراست مشگینز كود لكك ينيك فذدہ یز سيد ى هد بل جا ےکی اور ہو کک 
س ےکہ يال کے يباك وجہ سے و« جل می سے اق ے نے تر جاے٤ء‏ ا کی وج سح كول نقتصان ہو بل حش 
روایات سے معلوم ہو جا کہ ایماداقہ یی مھ کہ جد اسان پ ياش طر نک كول جز اس طر کی کے 
ello‏ 
(r)‏ ...... ہو سکم سے اس یر ے سے کی اور نے بھی پبنا ہو او ہے عد کہ ہی ےگا اس کے من کالعاب ا ال 
ع سو ل r N‏ ۔ چائ نض رولیات 
یں اس وچ کی بھی تقر ےک شرت صل ل علیہ سلکمنے ا سے مت کرتے ہوے ا فان 
ذالك پعن هک منہ اکر رخ سے احا بك وجہ سے میٹ ےکامنہ پدبودار مو سک سي(" 
(۳)......... ہو سنا کے ميزه بذ مو اور دواد یر لكا موا مو ا سکو من لاک بای پیے گا تذ بای کے دياك وج 
سے يال علق مس گنس جا ےگاا در ایدو غير ولک جا ے گیا ساس م كو يفيه اہو جا ےگی ۹۳ 
(r)‏ ا ہے بھی ہو سا ےک مکی كو منہ لكا ےکی صو ر ت مم يلال کے ہو ضؤل سے ابو ہکیاجا 
8 0707 اترو يكل 
(۵) اما بیز يكام ار مو ڑکر پا ے اس یس اضافٰ قا حت ہیر ےکہ الل طر ہل سے ”یز ےکو بار 
يار موس كا کا منہ جل ٹوٹ جان ےکاخطرہ ے ال سے ضا ہو جا ےک 09 

کل نار ...... اب 1 ہے عل تار شک طر فک ايك تو 1 خضرت صلی ایل علیہ و کم نے 
اس سے مع فربایاددوس ری طرف یر كومد لاک پان پیا۔ 
)۱( اٹ ا لکاایک جواب قذي ےک !تش حف رات نے توح اور ہبڈ ےکی ےکا فرقی بيا نکیا ےک 
سے سے نيياكوك لحيل لاش ناد در ےجب کہ 
د ك | 


وت سسجت 


لق یئات 


)۳( تسم E‏ تز بی ہے خر 1 خضرت صلی اللد علیہ و کم نے بیان جو از کے ۱ 

ايكيا 

(۴)......... ت رکو چ یے ہو كق بك اصل میس ہ یکر یم صلی اللہ علیہ و کم کی ک ےگھ گے ہو سے سے اور 

وبال بر تن موجود نیش تیاو رگھروالول سے ب كبن كه بر تن اا5 ی سے ان کے جرخ میس تا ہو ےکا خط رہ تھا 
یوین ا زا نے من مخز نکی راق کن بول اکر کے از رول کش وهو كل مرک 

كه بر تن مذجوددی نہ ہوا موجود تو ہو کان مصروف ہو اس لئآ خضرت صلی الث علیہ و کم نے یز بان 
۱ کون کرک بجا منہ لكك پان إلى لیا۔ ( ہے عر لک چا ہو ںکے آداب کے معاملہ میں مول اعزا رک ۰ 
وجہ سے كال دمعت ہو جال ے- ۱ 


ظز ےکومشہ لگا ككرت 1 ر 

۱ کشخ رات ے ووو ازات خرن انا 1آ خضرت صلی اللہ علیہ و کم نے اس سے 
أى فرمائی > اور أ کے اندر اسل ہہ ےک رامت ر کی ہو می ہے باتی جہاں جک حور صلی اللہ علیہ و 7 
کے خود منہ اکر ہے ےک تق ہے ا می خحموعی کال ہوجو ر ےک ہآ تحضر ت صل ا علیہ و سل مکی 
خصو ميت ہو لین یب ہک کرو ری نین کرو وی ے۔ 


3 مک یک وج ہ: 5 

ایک فو ےک خو و خضرت صلی اللہ علیہ ومس کر پل در فصوصی تگال ذرا بجی ے 
الى يروا كول بل موجود ل ہے اور احکام کے اندراصل مرم تحصو میت د 

دوسرے ال وج ےکہ ہے نی د کیم اور نقضان سے باذ کے لے ہے اور ادب کے شيل 
سے ہے اور اس طر کی بی عام طور پر بی نیس مول يللم تن یی ہو ہے لبذاي بھی حنزبجی ہے۔ 

فا ہ...... لبت اتی بات بین مم كن چا کہ اس بھی نی یک بای ج بات ذک کی ہیں ت 
جبال ير ان ل سح زیادد وجو می جالى ہیں وبال ی تميق ہو نے کے پاوچوو نينتا اشر بو كل اور ی وج ہکم ۱ 
»دل بل جائی کا تی نى کے اندر ید تخقف موق جل جا ےکی خلا بو کنا ے مز و مو نامو أو | تو . 
ہے ےت کت 


FFA Ss‏ اي 


کو آرت محسوس ہو كاخطر كم جویانہ ہو تایک وج او ركم م كق- نے تاف عالا تكاوج سے ان پا جره 
می کی بھی ہو تی ے اور زیادتی بھی ہو كلق »ال کے اعقبار سے فو فى جن یی ے لیکن ی وجووزياده 
مون جل با ںگی ٹیا تی بی اشد ون يل جا گی۔ 


ہرز کے استعال يبل اتی م :- 

اغتناث الاسقير دال صد یث سے ايل بات اور معلوم ہی ے دهي 10 سیت کواستمال ار ش اطاط . 
متها سن بھی شش ری آداب ٹل سے ءاب ےڈ عن انداز ےکی چ ركواستتال ہی كرنايا سج جس سے 
و« جز جلد ی خر اب ہو جاۓء ے اعت گی ے چ زکواستعال نی ںکر ناچا سے بأل م رجز الدج وهاي تی ہوا ہے انراز 
اورا یا سے استعا لک تایا کہ دہ جلد خر اب نہ ہواو راگ کسی او رکی ہے وال شل ریداعقیا طکی ضرورت ے۔ 

اث الاسقیہ وال صد یٹ سے ايل بات ہے بھی مھ میں آکی کے مل ہگزر اكلم بر کے اندر 
وف از يف ماقت کی ی لحت عق از ےا نو لجاب کے ابتزاء اس میں غير مو 
رت سے لہ بابل کے اکر چہ بہت موی ہوں, يكن بض لوكو ںکی طبيجمت پر اس سے بھ یکر انی مول 
سے اود ہا پر ھی ایک وج ىہ کہ مکی ےک واک لحا ب ل گیا نے دو سر كو نفرت آ كل ال سے 
ایک توب معلوم م واک ایاکام نمی لک ناچاے جن سے دوس ر ےکو رک ھکر ا یکی طبيدت ےکر ا زر سهد 


کی کے جو کو ےک طویحت نہ ما ے وي خلاف سنت نبل : - 

فی ان ہت ےا نا کا کت 
ہیں ليان بض کی طبع الى بھی ہوتی ہی کہ جن کے ےکی کا جو نالور اموا ينا مشكل ہو جاے ,تچ( 
ل وگ انس رار کو پرااور نا ند یرہ كت ول اوري ككفت ہیں: سور المؤمن شفا :کہ مو م٠ن‏ کے تھوئے میں 
تو شقاء مولى ے_() إبذاجر ای ککو چا كم دہ دو سر ےکا عونا پیے اور جو نہ پی سلتا ہو اس کے پار سے شل 
ت ہی ںکہ ىہ خلاف سق تکا مک د باس لان اس ط ر رع کے اجكام سے معلوم ہو تاس کہ اک بات ل سے 
بلاک یکی طبحت اہی م وک ا كوك یکی ز بان يا لهاب گل کی وجہ سے يال اكاسا نس لین ليت ب بوچھ 
موس ہو تا ے توشر بجت نے خوداس مار جک ر عا تکی ے تو معلوم مواک ہے زارح برا نیس بأل غیر 
اتتا ری معام ہو اے ء اید تال سف ل وكول کے ع راج تف بنائے موس ہیں۔ : 


(۱) الور عد یت کے ہہ بات کل ے۔ 


کھڑے ہوک رن ےکا عم :- 


ہے کے و را مود کر از تن 
: أ وارد مول سمشلا ححفرت الس ر على الد عت كعد بی ثكم کر صل الہ علیہ و کم نے اس بات ے مع 
رمیا ےک كول آد یکی ڑاہ وکر ے۵ الل طررح ضرت ابو ہر بوور تی الذد عن ہکی ر وای کم شر یف کے 
حوالہ ےک ہآ خضرت صلی اللہ علیہ و كلم نے فرمایاکہ ثيل كول آد یکھڑڑے م وکر دہ يعي اگ رکون ایا 
کر ے توا کو چا کہ وہ ےکر ے_ O‏ ہے دو عد ثيل فى برد لال تک کی ہیں ج بك دوس ری بہت سارك 
اماد بيش كت م وکر پیٹ ےکاجو از معلوم ہو جا ے۔ 
().......... ملا بغار ی اور مل مکی روات سبك يبل یکر مم صلی اٹہ علیہ و کم کے پاس زع مکاڈول لے 
كن آپ صل اط علیہ و سلمنےکھڑے ہ وکر بی( 
(۲)......... حضرت على ر ی القع كاعد بی کہ ابول كوف کے اندر سب کے ساعن و ضو ےکی اور بحا 
دايا كرس م وکر پیااور ہے فرمایاکہ نگ پن هلا ےک لو ککھڑڑے م وکر ينض كو برا كك ہیں فذا نکی ترد یر 
کے لے میں ن كر م وکر پیاے اور می نے حضو ر اق س صلی اف علیہ و آلہ و سل مكو بھی ای طرحکر ےہ 
دریکھاہے۔ اگ ہف بفار یکی ردایت ے اور مسنعد ات رک روات ےک نضرت على ر على الثد عد نے ف بيك 
نے ضور ارس سی ا ےہ | آلو سل مكو بي ھکر ہے ہو سے کی دياس او كط ہوک ييل ہو سے 
بھی یکا ے_(۵) 
EA (۳)‏ 0ص 1+0+4 
عل و سم کے زمانہ بی سکھٹڑے م وک کھالیاکرتے سنت او ركتس وکر فى لياكر ے ے7 
(06.-... 1 حط رت عمرو ين عيب گن ابی كن جد ہک عد حوتالفل الال یکی دو سرک صد یٹ سے دہ فراے 
وک مین نوراق ی لال علیہ الد اكز کر ہے موا ھا اد لدبي 
ہوۓ ھی 77 لط 
(۵) 0056 ر ی ا 08 
تر یف ل ۓ ”یرہ لڑکا مو ا تاف اك م وکر پیا ہے احاد بی کھٹرے وکر ين کے جو از ب دلا الت 
ری تن اعاد یٹ کے اش فیاز فیک وکس ررح وو نکیا جا کے این کے لئ خی ین نے اف را کے 
() كس كناب الاشري باب ل اشرب |٣27‏ ۳ھ:.۔(۳اینا۔۔۔(۳) خر ی تاب الام ب باپ اشر ب تا ما ٣‏ / ص۸۳۹ 
(۳) اینا.....(۵)-- 3ا لسا باب الاش الفص ل ان رح ص ال “۸(...۳ے۸۰)ایناً io J&L‏ 


1 
1 
5 
7 


اخیار کے سل -0© 

یح ا ...نض نے تر کا راستہ اميا ریا ىكم ان بل سے نل 
ایا تكو تن روايات بے يد جا اکر تر يكار امت نتيا رکیاجائے نوجو از وای احاد ی ر ا ہیں اور ہی 
۳ سیپ ۱ 

اعلا یٹ جوا زک 222022 3 اک تا وچ ےل ول فا ا از 
ہیں دوسرے الل وج سح كم جو ازوالی اعاد یٹ کت کے اتہر ے بھی زیادہ وى نل مکی وج سك امام 
بغار ی ت یک یکو گی عد یٹ بقار ئش ریف میس یش لا ے ج بک چوا زک دو عد سيل لا ہیں ایک حفر ت این 
عي با »دور بی فضرت ت گار ی اللہ عنہ دا معد قات 

عل تاش رن 7 و N‏ 
والى احاد یٹ مور نيل اور جو از وا ى احاد بیث تار ہیں ابت او کے م وکر پان جام تھا يكن بعد بل چائز 
مركي ليان 2 ٹیا اراس اس و قت افقتا رکا اتا ےج بک حخلف اماد یت میس تلق مکن نہ ہو اکر اف 
اعد یٹ یس تلق کن ہو قز بتر بی ہو جاہے ان عل تق دی جا ےا سے ہاں پر جاے لمات یج کے 
قو قل ارو زاون رز ے۔ ۱ 

عل نعاض بط زگ یق کے وي خا لوي ازور کے 
ارا ے تر کی نین لہ لاف الاب قو ےکی رت نے شع اا یک ے ب ازمعلوم وخ ےر 
اعاد یٹ ی والى اعاد یٹ کے لاف نی كبو لك ی وای اماد بی کا ما صل ہے س هك ہے خلاف ادب ے اور' 
ج جز خلاف ادب مول ل وول نض چا ہو لی ے البت اتی بات ضرور سك كت ب وکر يننكل احاد مث 
کاٹ زیادہہیں۔ ليو كبنا يا سب ےکہ 1 خضرت صلی الث علیہ وم نے ياصحاب سكت م وکر پیا ايك اتن 
وچ كد فى نفس ہا بیان جو از کے لے ای اکیاد سے اس وج كم آداب س مول اعزار لوچ 
سے وسعمت ہو لی ے اور آداب کے اختيا ر کر ےکا امام ت وكيا جانا سے يان ان می کلف سكام یں لبا 
جاتالپداجہاں پا سای یھکر پا کن مو وبال بی ھکر کی بین اہے جہاں بی ھکر يديا کان نہ ہو وبا كرس م وکر 
پا بھی در ست سے خلا حر تکبشہ - كك ربل مکی ولد ہو اھ تو بر تن منوانے میں بھ ىمرو الو لكو اريف 
تھی اور مکی اتا ےھر بن امو ات کر وو غير مکو لے ؛ مر اسے نے ر کھت ء بجر یٹ کر رحن ال میں را 
9 لار کاب ال شرب باب ااشرب كما ٠١‏ / ایتا مالقا کاب الاش ہہ باب الشرب تاا 1" گرمص ۱۹۳ بے رشید ہے 
1 اکتان )ءا یناو جزالمسالكالى مو طالمام مالک باب فشر ب الر بل وجو تام رع ١ / ۱١‏ "(اداروجاليفات اثر یہ ) 


کے ۲٢٢‏ ہے 


لف تنا چ وک کش ہے ادب تنا اس کے خضرت صلی اٹہ علیہ و تلم نے اس کے لك زیادہ مل فک 
ضرورت نہ ی سب سے کچ بین ی كاراءت ير ے۔ 

اس کے علاو ٹفل حطرات نے ہہ كك كبا ےک كت م وکر پینایہ وضو کے سني ہو نے پل اورم ٠‏ 
زم کے سا تح خا سے اس لم ےک حضور صلی الثد علیہ و کم نے م مکاپا كرس م وکر پیا کان ہے بات على 
الاطلاق در ست معلوم ہیں ہو نی اس كم جوا کی احاد ی كان سار کی ہیں اور س بكوم زم اور وضو کے 
سني ہو پالی کے سا تخد خا کر مكل ہے ووس ر سے ی ہک حرمت على ر سی القر عد نے اکر چہ و ضمو کا برا 
مايال كت م وکر پیاتھا کا نیہ اس سے مام كال تھاکہ جو لوگ ہر عم کے پا یک دك م وکر ينانا نر 
کی نت حضرت على ر سی القد عنہ ا نکی تردی رک تا ياست ہیں اتد ان بات ر ور کہ عام يال ترس ہو 
کر بیناخلاف ادب ضرور سے لیکن زم زم ياو ضوكابجا ہو اکیڑے م وکر يبنا غلاف ادب کی ألمي ال دد ول 
کی خصومیتے۔ 

حرا ےی 0 ص ص۶ 9 0 00 
ید ویر کو بک ءج بک باق پان كس م وکر ییا 


خلاف‌اابے۔ 


:2 بک کم 1 وے۔۔-۔ 

خضرت الو ہر سور ی الد عنہ كاعد یئل آیاے: فمن نسى منکم فليسقى لوہ تےکر نے 
چا كياب بض حف رات سف ہکہاکہ مرا لی ہے وجو لی غہیں_ 9 

بظاہر معلوم ہو جا کہ ےکر ےکا فا دہ مہ موک کہ تند ووه بمو ےکا تثبل يلل جب ایک مر جيم 
بجو لک ركع م كيال پیااور اے ےکر ناپ گیا وآ تد اسےیاد ر ےگا گار تےکر نا معا یہ بر گول ے 
نی عادت کے معا کی وک ايك مال چان ہو تا سے اور ایک عادا تکا مهال ہو جا ےک کا مول 
سے یچ ےکی ضرورت ہو کی سے لان آدى بجول جاجاے اور اراد كرجا ےکہ آ تند وياد ركبو ںگااور پک مول 
جانا يا نض چروں ک ےکر ن ےکی ضرورت موف ے ن ج بك ےکامو تع ہو جا سے ذ آ دی بھول جات سے 
او رکو شش کے پاوجودہر مو تع برا سے بات ياد تيبل آل تو صوفیاء ا كان طر يقد اخقیا کر ے ہی ںکہ بجو لے پر 
كول ای سز امقر كرس ہیں کیو جہ سے آمنده آد یکیاد ہے۔ یہ انا نکی فطرت ےک ل ير آد یکو 
(1) لبا اكاب الاش ب ياب اشرب #تمارج*الرض 58 


E rrr عا‎ 


كول مشقت اال يك لل ے دهج زآد یکیاد ر ہتقی ےو یہاں جب آدى فيص ہک ےگاکہ جويالى پاتا سکو ے 
كنا پڑ ےکی نووواسے بحر مل یاد ر > كااو رك بوكر وم بل یک ۔ لوي ام ابی سے اباب کی وج 
أل ا مق 1د یں سے ع ا کے رو تن ا ل کے ےت تک نے 
کک و ج ہے ےکہ ف تف تو تب نیس کین عاد تک تب د بی کے ے ا سکا عم دیاگکیا۔ 
اہنت تت حطرات نے مہ ک یکہاے اور ا نکی بات کی قوی سبكم اس روابیت میس اصل میں را وی 
سے اختضار م وكيا ےک جو بجو لكر ایی اک سے فو وہ ےکر دےءاصل میس روابیت اس ط ر لے سے یں اور اس 
يبل ام رکا صخ نی تھابلہ مسن د اج کی ددایت لولس كم ج آد یکھڑزے م وکر پنیا ے ا سک وار يد ال جاے 
کہ اس مم كيا اتن فووہ ب ےکردےء رمطلب کی كم ےکر در يا بلك كرات قاحث نظ رآ ہاے 
لووواے برداشت کر کے اور ےکر نے پر مجبور ہو جا اور ا یکی ضاحت ایک اور عد یت سل لول آل 
ےک تضور لے اس طر حکسی شن سکوفر ماک ہکیاخم یپ کر و گ ےک تمہادے سا تھ لمي يقال نے 
کہ اکہ اح و س يشر خی كرو ل ابلك ظاہر ہہ ہ ےک اکم یگ اس کے سات يي لگ جائے تو شابداس کے لئے 
برداش یکر نا مشكل ہو جاۓ+شاید تے ہو جا فو اس طر بے سے جب تم ہے ہت ہار ےسا ھ ححیطان 
تيا بی سے بھ یکنا فرق صرف اتناك بل نظ رآ انی ہے خیطان نظ ریس آحاليز ١‏ سل رواييت 
عل ام ماص یں قال رای لے اس رکیاور افق کے ہے كل اذى فى سی E E‏ 


سونااور جا ندگی کے بول شن کہا سن نكا 7 : 
سے ےت نت 
ہد و نے ہیں ایا اور نز کے ہو تے ہیں لیکن ا نکی لاہ ری مب مل طور بر سو نیاجا تر ی ےر ھاو امو تا 
ے قو ايك پر تن مج سکھانااور يبنا الا تھا ناجائ: ہے مردوں کے ك بھی اور عور وں کے ے بھی ال اکر 
كول پر تن بذیادی طور پر کسی اوجن ماعو خلا تقل »جا سن :لو ہے یاک اور ہکا ہے لیکن ال شل کی چک يه 
کچھ سونا يأك پا ند یکی ہو سے نواس لوانا جنر ہب رئافض ض ہیں گے_ 


وس ہے او تك :- 
7 اش پا ھک لام ان ام اھ ب درلا اک ایک ديحي سكل ال 


وی وشل کت ب سا 


ہے rrr‏ 
ٹس بھی بنا جائز ہے۔ امام ابو حفيفم رحمہ اللہ تا یکاخ ہب ہے سك اکر تو ہو نے با ند کی دای چک بر موف 
گے ہو تا اکپ کردا سے اک لہ پاب ادج سے من گن ان 
یو تل ے۵ 


ام اک اود ام شای ر 0007" 
()...........امام ماک اور امام شاف و غيره نے حر ت ام سل ر شی الد تخا ى عنباكى عد یت سے امتقد لا کیا 
سك یکر م صلی اثر علیہ و كلم نے ار شاد قرا الذى يشرب فى آنیة الفضة إنما يُجَرْجِرٌ فى بطنه 
نار EE‏ لت 3 
اتد لال ہم کرو ر ہے ال ل كم اس یس چا نکی کے برت میس يعن سے عک ایا ہے اور يا ند یکا بر تن 
ح بکہلا تا ج بک مل ورپ چا ند یکا ویک اما کا اہک ای كمل طور رپا دی ہو برت سی 
ادر كاب بدا لکن اک آدھ چ ثبل جا نٹیکاجوڑہ خیرہلگا ہو اے فو ا کو عرف اور اور ے میس 
يا ند ی کاب تی نی لکہاجااءاس لے اس سے اتر لال درست ال ے۔ 
(۲)........... دوس کی عل ,اللي افو نے حت اہن رر تی اٹہ ع ہک عد بیت د کی جو ائس باب کے 
آم میں ے جس ں وار ی نے روا کیا کہ ب یکر مم صل اللہ علیہ و سلم نے فرایا: من شرب فی 
إناء ذهب اوفضة او إناء فيه شى ذلك فانما یجرجر فى بطنه نار جهنم" . 

اس یش تن چ زو كاذك ہہ تن چززوں يرو یا ہے سو نے کے بر تن عل يي ياندىا کے برق 
ٹس يي یا اريت بر تی عل پیے نس میں سونايا پا ندى شال ہو ہے الفا صر اط نا مفضض اور إناء نر ہب پر 
دلال کر نے ہیں عل جس پر سو نایا چا ند یلگا ہو اے۔ 

لن ہہ عدبیث سند أ فی ال ل کہ اال عد ی کے ايك داد زکریا جن ابرائیم اب والد: 

ابرائیم سے روابی تکرتے ہیں اور زکریاخود بھی بول ہیں اور ان کے والم بھی بول ہیں ا سك سند میں دو 
راو بول ہیںءاس لئ ہے عد بیث قال اتر لال یں ے الدت مو قوفأس رواييت خابت ے * ۾ ان وو رت ت 
ابی ر مسب مکی کہ دما ی رب کے نی میں تین ار ےت 
۱ وس حوْمیہ بی 
(۳) اعلاء اسر کاب الحظر والاباحة باب الشرب من الاناء المفضض او المضبب ج۷ /ص ۷۲۹۷ 


grrr 8 


ولال نہ سم نی کی ایک و ممل تےحخرت ام عطي ر ی اللہ تال عنباکی عدييث سے کے 
۱ برای نے کم او مہا مل رای تکیا ہے ج ںکا خلاصہ ہے سبك آ خضرت صلی الف علیہ و كلم نے ابد ايل 
شش الان سے مع فر اويا لت بر تن میں پا ند یک تار و خر ہلگانے سے منع فر مایا تھا لکن بعد میس کن 
ا علیہ و كلم نے ا لک اجازت دے ری ۵ 

عد ی کی سند براعتزائل - 
e ()‏ اال عد ی شك سند پر ياشكا لكياكيا ہکہ اس ٹیش ایک داوى بول ہےء ا سکاجواب ہے ےک 
اس ںاہک راو مہو لے اور آپ نے ں سے اتد لا کیا تتا ای ل دو ر اوی تجول تك لبذاي عد یٹ 
اک نبت یہر حال قوی ہے لز اا کو اس پر يبوك 
e (۲)‏ دوس رک ول فاری وی وی صرت ال ر شی اث تل ع رک صد یٹ سے کاخلاصہے 
ےکہ ححضرت الس رصن اللہ عند کے پا ايك پیالہ تھا جل کے باد میس ان پوں نے بنلایاکہ مج نے اس 
ييا سك کے اندر یکر یم صلی افد علیہ ول مكو ملف تمك جز بی يلال ہیں دہ پال ٹد گیا تھا تو ا سکوجوڑ نے 
کے لے اس مس چا ند کی تارمیں ا یکی یں _ 

اب یہاں دو اتال ہیں :الیک اخال ب سب کہ یہ چا ند یکی جار میں آآفحضرت صلی انث علیہ و لم کے 
ذا سف ہی میں اکا یکئی میں جناي نض روايات سے اريت بی معلوم ہو جا سے ہے تو وا طور بهار لئے 
نت سكيد ل كم صد یٹ م فو ہ یاو ر اکر دوس اا شال لی کہ 1 خضرت صلی ال علیہ و لم کے اتال کے 
بعد یہ پیا ٹڈ ت گیا تھا اور اس می ہے جار میں لگا یگئیں تس جب بھی ہے لیک صعال یکا نل ضرور ے اس لئے 
ہار گے جو ے۔ 

سوال ...الب ہہ سوال پیر اہو اک حضرت الس ر ی اللہ تال ع کی را اس کے جوا زکی 
معلوم مو تق ے لین اس کے برت حضرت این عم رر ی اث تال عن کی راس عدم جواز ے أوجب 

سا کی قف آراء ہیں لوحف نے حطر ری الس ر ی اوہ تیال ع دك را ےکو کیوں ری 

جواب :وج ہز ن۰ بیِںبلئاەەلۂژ[ہاد2_۲ رہہ 
0 مت تر کی ایک وج قو س کہ ا كل انير خضرت ام ععطیہ ی الد تخالل عنہاکی عد مث 
سے ورای ے۔ 


ا 02 


2 ro كا‎ 


یس فى طور بر سونااور پا تر یلگا ہواہو تو سو نے اور پا تر ىكابر تن ی كبلاجا_ ( 

اہو غر مضور(عباسی خليفه ہو سے ہیں )کی کی میس بک علا تيك ہو ے سنن ءامام ابد زيف رح الله 
بھی موجور حك وبال پر بی پٹ جلك اناء تع ل عدم اليا م سے تامام ابو عفیفہ حم الد نے فرما کہ 
یش ہے سل بعد میس بتاو لكا ييل نك ايك اود ستل تجاوده ےکہ ايك آدى نے چا ند یکی الكو شی یہی نلاپ ر سے 
کہ چا ند ىك اگوی عرد کے لے ہا سج او روه چاو ےن تاج »لكا چاو سے باينا جام ہے یا بال لوي 
سوال نکر سمارے حضرات نما موش ہوک ےک اس سے يل مس ےکاج واب والح م وكيك بر حال ا كا جلو 
عل سے انی بنا از ہے مہ يافى ال چا ند یکول كك آر ہے ہو نٹ اس چا ند یکو کی للك د سے اور دو سراي 
کہ پاتھ بفيادى طور پر پا ند یکا ثبل ابد اس کے اندر چات کی موجودے فو بی صورت مال إناء نض میں 
ہوتی ساس لج حفرت الس رض ال تعالی ع کی را ةكوت بد ىك3 ے_ ۶ 

لدت يهال علامہ نلف راحم عخثا یر حمہ الث نے ایک بات پ تبیہ فرمالی ودس س کہ بمارى فق ہک یکول 
یش عام طور پر ستل یو كاجو انمو جا ہ ےک جن پر تن مس انر کی ہہو گی ے اس میس بھی يبنا جاک سے اور 
جل میس وتا ہو اے اس میس بھی پدنا چک ے کان امام ابو حفیضہ رحمہ الد سے چو روات قول ے وہ صرف 
پائ دک کے بارے بل ےکہ جس بر ن میں چا ند ی کی مول ے ا کو جاک رار دیا ہے بظاہر ہے معلوم ہوا 
کہ إعد کے ماق نے غو كو بھی اس پر تیا كر لیا ے لان حضرت عتا رحمہ الث فرماتے می کہ ہے 
قيال بظاہردرست معلوم یں ہو ااس لكب ضر ور کی کی كم جہاں چا ند ی جام ہو وبال سونا کی جات ہو 
ا ےک چا ندى کے اندر ہو ےکی بنسبت زیر ہگن تش ے خلا یک منقا لکی ص سیک مرد کے ك چا ند یکی 
و ھی ینتا ہا کے کن ون ےکی امكو کسی بھی الت می کسی بھی مق امل ینتا ہا یں سے اس لئے 
ال خاش نظ رضرورے_( 


کھڑے ب وکرکھات ‏ ےکا 3-3 

کھڑے ہوکر ین کالہ کیا ی نکھڑے ہوک رکھان کیا عم سے زاس می كول ص تاور جا 
عد یٹ ذ نظرسے نمی كزرى الہ سج مسلم عل ایک روایت حضرت الم ہنی اللہ تی ع تاد وى الث تعالی 
(۱) اعا ءاسن کناب اھر ول باح باب الش رب مین الاجا لمغضص اوالمضبب رخ ے۱ / ص ۲۹۹ 
(۴)اعلاء! س نكتاب الكش روا لاباحة باب الاکل والشر ب ف اولى الذ ہب والفضا رح ء۱  /‏ ۲۹۹ 
(۳)اعلاءا لم ناب اظمر ولا بات باب اشر ب مین لاا لمغضض او امضیب رع ےا ص٣۰‏ 


2 ۲۱۷ جج 


عند سے ہے مث أن کے شار د اد تق اد تا لی عنہ سے لد چھاگیاک كت ہوک رکھان كاكيا عم ے بک سے 
ہوک پٹ ےکی صد ی كاذك رکیااور انٹول نے فما اک كته م وک رکھانا نواس سے ببھی اشر ے۳ گویاانہوں 
۱ نیت EN STI REE‏ 
كنس ہوک رکھانے سے اط ربق اول ٹچی موک لی نكت ہ وکر ہے سے ٹچ عبار الع سے خابت سے اور ۱ 
كنس ہوک رکھانے سے کی د لالت الت سے ابت سے ا كار جر ولال کے اقيار سح ذرا زود تاے۔ ۱ 
ر حال اک سے بيغا بت ہو كر نل طر حکھڑے ہوکر يدنار وه سح اک ط ر لے ےکم ے ہہک ركنا کی کر وو 
سے کن جس طر كت م وکر ہے سے ہی تز کی ہے کی خلاف ادب ہون ےکی وج سے ہے اک رح 
کم سے ہوک رکھانا بھی خلاف ادب ہے کان بذات خودچائزاور ماج سے اکونا اتی ترام نيب كهاجاسنا- 
تاش کی البتر عضرت این رر صی الد عن ہک عد یٹ بظاہ راس کے خلاف ے الل می کا ے 
کہ ہم حضور مه کے زمانے میس حلت يمر بج یکھالیاککرتے تھے وجب جل رت ےکھاتے تے ناكو ہو 
۱ کر بط بت او كما ةمول کے ءا ل کہ جل كان يكت 8 وک رککھانے سے بھی لاد جہ ہے۔ 
عل نحاش 0 
.)0( یں ات لے تا لكاايك جواب فی نے یہ دياس کہ بی عد یٹ آخرى لله يمول س کہ وییے وبي كر ش 
كا ت لیکن آنخریلقہ منہ می ڈا لکل دية تھے اورو جلے ہو ےکھاے جھے۔ 
(۴).. :لسرا تاس ہی ہے اود یہ تیادہ کی معلوم ہو جا س کہ اصل مب کھان ےکی زی دو طر کی 
ہولی ہیں ایک ووم ہیں میں پا قاع ہکھانے کے طور پکھایا اتا ہے جیراکہ رو ف ےہ حاو ل ہیں کے ناش , 
ددجي رکاکھانادغیر داو دوس کیا دہ یز ہو لی سے جےکیف مات یکھایا جا تا ہے ؛ جب الى پ ےکھا لے پان جباليا 
وره وره أو كرفت صل جل ےک - ۶و" قعدوطور ب رکھایاچاتا 
ہے لن پت ٹا بادام بیان :سونف ای طرساك ج زی يبل ہیں ا ن کا عم نیس ءا نك جل )رت 
کھانے بل راجت يمل سے اور محخرت اہن رر شی القد تی عت کی صد بی دوس رک مکی جز ول پر مول 
ے لبذ اکوکی اشکا لک بات سهد 


لغ اعت ا لك ضرورت:- 
يبال پر ایک بات اور بے ست جو حضرت على ر ی اللہ عذ کی عد یش سے د عل آل كم 
+( 3 سم كناب الاش بہ باب فى الشراب تام رح ۷/ س سالا 


ظ 
كنس م وکر يناك جد ہا تاور باج سے لان خلاف ادب ضر ور سے ان یہاں ححضرت على ر ی الثم تی عنہ ۱ 
نے بڑے اجتمام س ےکم ڑے م وکر پیاا ود سب کے ساتے پیاءخلاف ادب چ کا تنا ا تما كرس كلا كيار ورت 
> ء تو بات اصل می ہے سج کہ لوگ اس مک کو انی صد سے اها ےلگ گے تھے ملل تمہ ےک فى نق ` 
جا غلا ف ادوب سے لان لوگ ا کو نا جچائز کے لک گے ے _ ی اس بی اليش يدك سے الل سے زیادہ 
کیک یک کے تے ناك نديد کے لئ حطررت على ر سی الث تحال عنہ نے ملا كت ب كر یکر وکیا اس 
سے معلوم وال اك ركو لكام خلاف ادب ہو واس سے بناجا بخ ليل ناك کسی باحو ليا معاشر ے میں ا كوا 
سے نياددنا يشد يده جماجا د گے جقنادہ سے فو اس عالت یل اس ير ذكا رک تا يا سے مشت زاء اور علا کو چا سے 
کہا پہ انگ د كيل نباك سے اکا رک اکان ہو فو پان سے الا رک مس اور اکر يان سے انار اکان ہو فو گل 
سے بھی اکا رکزے حال معت زل سيل لوگوں کے ذ بن میں آٴجاۓ ء جل طر ےے سے لاف اد بكار “كاب 
ایند يده سج اک طررح خلاف اد ب کا مکو حل نا جام ب يلور عد سے باد ينال کی زيادهنالينر یرہ | 
سے اس لئ اک يك لوگ لاف اد بکا مک ر سے ہوں تو جس رم كام ذا بل اصلاح سے اسل رح اکر یھ 
اوگ کی مل ہکو اہی عد سے بار ے بمول فو اس سے بھی زیادہ قائل اصلا ںکام ے۔ 


PA وچ‎ 


يز اور كان ۵:- 

ذال دیاجاۓ اورا نکااثرپالٰی کے اندر نگ لآ ےا یک نی جج کہہے ہیں اور نت و اكه سے ہیں۔ 
ین نان دوفوں کے در ميان ہے فر قکیا ےک نیز اس دق ہلا جا ے جب ا کو پکالیا جا اور 

تع دہ ہو ماج جن سکو پیا یانہ جاۓ کان دو فو لك اطلااق یک دوسرے پ كثرت سے ہو جار بتاے۔ 
(١)‏ -----عن أنسء قال: لقد سَّقِيتٌُ رسول الله صلی الله عليه وسلم بِقَدَ 
حى هذا الشرابٌ كلّه: العسَلّء واللَبیدء والماءء واللبنَ ۔ (رواه مسلم) 
و کڈ رت ال رط اللہ تنا ىعد فرت و ل نے سنوی ا صل ا 
علیہ و آل وس مکواپن اس بها سل نے م مکی نٹ ےکی چ زی يال ل شبد کی نیز بھیء 
إلى کی اور دود کی ر 
(۲)-----وعن عائشةء قالت: كتا ننبدُ لرسول الله صلی الله عليه وسلم فى 
سقاء يوكأ اعلاهء وله عزلاء» ننبذہ عُدوةٌ فيشربه عشاءَء وننبده عشاءً 
فيشربّه عُدوةٌ (رواه مسلم) 

رہ ا TT‏ 

ولہ وسلم کے لك ایی یر ے میں نی ہت کرت تھے جس کے اوی ڈ کن زكاويا جات تھا 
اور ا ںکامنہ تھا ہم اس مس خی ہزات تھے ت کے وقت۔ فو 1 خضرت صلی ایل علیہ ول 
و سم اس شام تك فى لیاکرتے سك اور تم اس شس شام کے وفت نیہ ينات و آپ اسے 
کک نی اکر تے 2 

(۱) حا ال و لل ہیر ی فصل الو ن سان باب الز ال ح۲/ص۵۸۰,این نہ نمل النورن کک باب ن ح۵ | ص ۵۳۸ 


۲۲۰| 


م ----- وعن ابن عبّاسء قال: كات رسول الله عه يبد له أولّ اللیلء 
فيشربه إذا أصبح يومّه ذلكء واللیلة التى تجئء والغدّء والليلة الأخرىء والغذ 

إلى العصرء فان بقی شی سقاه الخادمء أوأمربه فصب - (رواه مسلم) 

رم مس ححقرت این عباس ر ی اللہ تال عند سے روات ےک رسول الث سی 

الث علیہ و علم کے لے رات کے شر ور مم خی نايا جات ت آپ اس دن جب موق تو 

اح لی لیت اور اس کے بعد جو رات نی اس میس بھی پی ليت اور اگل دن بھی يعنت اوراس 

کے بعد والی رات یل بھی يي اور اس کے اگ دن عص رکک کی يلت رج اگ کول جز 

پر بھی بے ہا نخادم کو لاد یت یا اس کے بارے میل گے نوا سے کر ادیاجاتا_ 

اکر جح کے دن شا مکونی ينان کے لك ليزي جوري و خی ر وؤا ىكس و آي مغ ے 
دكت کو بھی سے کے اور فت یا شام کو بھی بے سے اود اذا رک ہے رج تت اور یر کے دن عم رک اس میں 
سے ين دست تھے اکر تو م ہو ہاج و یک ے اگر تیسرے دن عص ر کے بعد بھی بے بع جات تو یا تو ا ےکی 
ناد مک پلا ےت یا اس ےکر ان ےکا عم د ے دسيية ج بک اس میں نش آچکاہو مایا نش آن ےکا ن خا لب مو تاور 
ناد مکوپلاتے ج بکہ انس ل ت ‏ ےکا تو ی اخال نہ ہو ۔ 

يبال ایک سوال فو یہ پیدا ہو تا ےکہ ىہ عد بی بظاہر نی عد یت کے خلاف ےکیو ںکہ ححضرت 
عاش ر ی الث تی عنها ف مار ہی ہی نك اك کو خی بنانے کے لے إلى میس جور می وغیر وؤالى ہا تو شام 
کک آپ اح وش فرما ل او راک ر ا تکوڈالی جالى یں اوا گے دن کک اح نوش فرما لیت مث زياده سح 
زیادہایک دن استھال فرماتے ج بک خط رت اہن عياش ر کی اللہ تخالل عت كلا صد بیث سے معلوم ہور پا ےک 
آپ من دن تک اے استھال فرما لگن تھے ا ںکاجواب ہے کہ ہے دونوں عر یں منلف مو ہوں کے 
پارے میں ہیں۔ حطررت ماش ر فى اللہ تخا عنياك عدي گی کے موم کے باد میں ہے مگ می کے 
موسم بل چو ر ںو خی ذلك کے بعد جماك د تیر ہ جل ی بيد اہو ال کی اور ےکا امکان بھی جل ری ہو تا 
ے ای سك آي صلی الثر علیہ وکام حم ونت میں اسے خت فرما لے تھے اس کے بعد اسے نیس يعت ے اور 
خمردیوں کے موسم جل و ركاش فى می وراد سے آ تا ہے اس میس چ اک دخ رہ کی د بے بهد امول ے 
اور ل کااشمال بھی د سے يبد امو تا هاس لے ر دی کے م وحم میں تر ےون عم رک تو آپ صل ال 
علیہ و سلم لي لیے ے مین اس کے بعد اکر پل جات تانق سياد مکو پلا د سے ے۔ 

سوال ے پید اہو جا ےکہ جو ججز وکوین ننس ہے اسح اپ تاد مکوکیوں پلاتے تھے مہ اس اصول 


2 ٣۵۰ ا‎ 


کے فلاف سك ملا نک چا كه دوس رول کے ے بھی ونی بين دک ےج اپے لئ يش دک جا ےء ان یکا 
ایک جواب لوي س ےکہ غاد مکوال صورت یٹ بلا سن تھے ج بک اس یس ن ےکا اال ہو ج تھا ليان هبتكم 
یکر یم صلی اللہ علیہ وس مکی ہے صو میت تك آپ نے کے موی اتال سے بھی کے اور ام رس 
کہ اس معالے میس اصتی آ پک طرں یں ہو کے الك ك کے اشال سے شل جزت آپ چناپ ے' 
2 كول ضورق ل چک ایک ام کے لے بج اس سے بجناشرورى ہداس لئ ایی صوررت مس 
آ پ کی او رکویلاد ین تھ۔ 

دوس اج اب ہہ سك جو نز خوداستعال كر لى مو وود وس رول د ينا مطلقانا يشريه نیل ے بک اس 
و او رتو امھت ا اس شارت ل 27 اوت دوراب كن ار 
دوسر ووه جز دےر پاہے اضاعت مال سے تك کے ےک لل شد و كل خوداسے استمال تی لوك 
1 گاء اب اکر دوسر كو نیس ديا و وہ یز ضا ہو جا كل اس صورت میس ووسر كود بين كول رح 
نہیں ككل متصوددوسر ےکی تحقیر نمی بل ما لکو ضا ہو سے سے بجنا ہے يهال بھی ايك بی سكم 
عص کک تارج ته لیکن عص ر کے بعد شود نیس پاچ ے رور ی بلك بروفنت 7د ىك بيعت 
ج شکی نز کے یٹ ےکا تل ہوا AS‏ ووو ان یا ےگ ا E‏ 
0 7 -ص 0 خود بھی کی دل کے ام کہ پڑے 
پڑے راب ہو جا ۓگ E aL,‏ 

(٤)‏ سس وعن جابرء قال: كان يبد لرسول الله صلی اللہ عليه وسلم فی 

سِقائهء فإذا لم یجدوا سقاء نبد له فى تور من حجارة- (رواہ مسلم) 

مر کے جخرت جا برر ی الک تحال عند سے روات ےک رسول الد صلی اللہ علیہ 

و سم کے لئ ايك یر ے میں خی بت ماتا تادر جب یر نو يت ے تپ صلی 

ال علیہ كلم کے لئ پچھروں کے ايك بر تن میس نمی نایا جا تا تماد 

ره “00 وعن ابن عمر: ال رسول الله صلی الله عليه وسلم نهى عن الذَّباءِ 

والعَنَعم ء والمزفتِء والنقيرء وأمرَ أن يبد فى أسقية الأدّم (رواه مسلم) 

مہ ...... حطررت ابلن عرس روات كم رسول الثر الگ نے شع فرب کرو کے 

سے ۶ 09۰-2 7 0 

ہنا ہدئے بے اورپ نے تكم دیک چھڑے کے ميرول یس نیز ااا ے_ 


r 
بُریدةء أنَ رسول الله صلی الله عليه وسلم قال: نهيتكم عن‎ نعو-----)٩(‎ 
الظروفء فان ظرفاً لا بل سشيئاً ولا يُحرّمُهه وكل مُسکر حرامٌء وفى‎ 
رواية: قال: نهيتكم عن الأشربة إلا فى ظروف الأُدّمء فاشربوا فی كلّ وعاء‎ 
3 غير أن لا تشربوا مُسكراً  (رواہ مسلم)‎ 
رم مس خط ردت بر یہر سی اللہ تخالل عنہ سے روابيت ےک ر سول اللہ صل اللہ علیہ‎ 
وم سن اد شادفرمایاکہ یش نے ہیں اص برتوں سے مت کیا تھا لیا ن كول بت کسی جز‎ 
“ کوعلال نی ںکر جاور نہ اسے ۶ا مكرجا سب اور جر نش آور یز ترام سے اور ايك روایت‎ 
ليث ميري كا چنزوں سے کیا تاوا سے ان کے جو‎ IEE ات ا‎ 
كيت کے برجوں میں ہو يكن اب برب ت میں لى لاک رو ايان نش آو رچ زد پاکرو۔‎ 
پار بر توں سے ب یکر م یک نے أ فررالٌءي أى آپ نے ان سے اس لے فررال كان کے‎ 
ادر ٹیر ہناۓ جا ےکی صورت میں جل ر ی نش پیر امو کاخطردے اور وهو فت ابيا تال شرا بك م مت ی‎ 
ی نازل ول شی اس نے شرا بك قباحت اور ن ےکی برل ذ جنول ل بے طور بر بٹھی نيس تاس لے‎ 
سب ل وگ ال مھا ےے بی اعقیاط کے عادى نیس ے الك آپ نے سد لذ ر اوہ یہ فرماد اک ان بر جو کے‎ 
ادر خی بنايا تان جا »اسل قباحت برتوں کے اندر نہیں کی با اصل متصود نے سے ر وکنا تهاب بجی‎ 
:كلم ا کاڈ ر له بن کے تے اس ك آپ نے ان برتتول سے بھی شنح فرماديا يان جب شراب اور ت ےکی‎ 
قباحتذبنوں می ا گے کے يت ایل نور لون ےپ و یدام وگ یک نڅ ے مهال مل وواطياط‎ 
كام لال کے توآ پ نے فرایا: برتنوں کے اندر بذات خود قباحت تيبل ہے جوف کیا تنا وہس نے نکی‎ 
- وج سے من اكيت يذ ا ان بر تو ںکو بے کیک استعا لكاو ليان نے سے ری ےک کوش لک روہ ایا رک وک نش‎ 
نے سے يمد يبد اے استتعا یک رلو‎ 


سر ؤر لجر 3 صول:- 

انس سے دوب تل بج س آنل ایک فو ےک بض كام فى فقس جا کڈ ہوتے ہیں ايل ن اکر و کی تاا ۶رک 
ذد یہ جن ر ہے ہوں توان سے کر ديا پاتا سج جم كوس د ؤر بی كما جانا سج اور ہے شر بج ت اليك تل باب 
کہ اليبأكام ج کی اجا کار یہ جنر پاہے اس سے کر دیا جانا »يه اک و قت ہو ےج بک اس جاع 
00 نا ار تاب الاش ہہ باب خیس الفى سیر ليه لم الاو عير وافظر وف بعد اتی ,ع۱۰ | گے ٣‏ 


:5 ۵۳ں 


کا مك وچ سے ناجائ كام کے نزح بكاوا رح امکان مول اكثرو بسر ايباتك ہو تام کہ جد اوی ہے جا کا مکر سا 
گادواس نا ائزکام شل بھی بتلا ہو ھی جات ۓےگاتذاسی صورت جس صرف اس ناجائ كام سے بی يح تثب سکیا جا 
پلک ا لكاذر له نے وال جا كامح کی کر وی جا تاے۔ 

دوسرکی بات ہہ كد نل الس اادد یضر رت ن نے 
ج بک واققا ا کی ضرورت ہو کان جہاں ا کی ضر ورت نہ ہو وبال سد الل ریہ شع کی لک نا جا ء 
جہاں اسل پر مفاسد کے تر ت بکاامکان فو ہو کن ہے امكان ہت زياددت ہو تود پال ب ےکہاجا ا ےک اس مفضردے 
سے بی ہے فی كها باس اك اال کے ذر ل سے پچ نی ہہ ہا تکام وکر لو کان اس جام دكام يرال ناچائ کا 
ترب ہو سنا سے اس سے :ینک یکو سس كرو جیی )کہ تمض ررح صلی اللہ علیہ و سم نے بیہاں فرمایاکہ بعد ٹش 
آپ نے ہے فرمایاکہاگکرچہ ان بر تو كاوج سے نشہ بيد امو ےکاامک ن ہے ہے بر تن کار بير جن سکتے ہیں 
پر بھی تم ان بر حو ںکواستعا لكر کے ہو لان لے سے می ےک یکو تن كرو 

(۷)-----عن أبى مالك الأشعرىء أله سمِع رسول الله عه یقول: لَیشریَنٌ 

ناس من امّتى الخمرّء يسمونها بغیرِ اسمها ‏ (رواه أبو داؤد وابن ماجه) ‏ . 

ر جص ...... حطرت ابو ماک اشع رئاح روابیت کہ رسول اللہ عن نے فرراي كم 

میرک امت یل سے يك ا وگ شر اب ييل کے يان ا لكانام و ےر 

(۸)-----عن عبد الله بن أبى أوفى» قال: نهى رسول الله ع عن لبي 

الجر الأخضر قلتٌ: أنشربٌ فى الأبيض؟ قال: لا (رواه البخارى) 

7 5086 حضرت عبد ال ابن الى اولأست روات ےک رسول اللہ عه نے سين کے 

کے یز سے فر مایا یش ن ےکہاکیاہم سفيد کے اندر فى ليأكريل ف آي نے فرمایاک يل 

ضور ایل نے یی و فراي/ك سن گے کے اند رجو نبيز يننا وون پیب اصل مقصور ٢‏ 9 
رو كن کے ے حكن تا سل پر روخ نکیاگیا ہو لل إن کت ا ا Sil‏ 
زمانے میں رو كن مین رن ككاكيا جات تھااس لئ آي نے سن حك ےکا ذکر فرمادیا۔ حضرت عب الثد بن الى اون 
ر ی اللہ تال ع کو ہہ شبہ داکہ شای رہ ر رت کک قید اح از کے اس لے کے راک کی اور رت کار وغ نکیا 
مو اہو تاس میں نی يننا ہا ے٤‏ آب نے فرمایاکہ اور رگو ںکا بھی کی عم کہ ہے قيدوافق ہے اح ڑازی 
شل جیاکہ يحل عر کی اک بي تم ابتداہ ل تھابعر میں مضورخ مو كياب عم یہ ہک می کی برتن کے 
اندر نبي ہنا کے ہیں اإدت ہے اعقياءا رو د کیا کہ شرن آسے۔ 


ان ممصصففحت 


(9)-----عن جابرء قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: إذا کان جنح 
الليل أو أمسيئم فكقُوا صبيانكم» فان الشيطان ينعشرٌ حینئذِ. فإذا ذهب ساعة 
منّ الیل فخلوهُم وأغلقوا الأبوابَ وأذكروا اسم الء فإن الشيطان لا یفتخ 
باب مُغْلَقاًء وأو کواقربکم واذكروا اسم اللء وَخمِروا آنيتكم واذكروا اسم 
للء ولوأن تعرضوا عايه شيئاًء وأطفئوا مصابيحكم ‏ (متفق عليه) 

وفى رواية للبخارىء قال: خمروا الآنية» وأوكوا الأسقيةء وأجيفوا 
الأبوابٌء واكفتوا صبياتكم عندًا المساءء فان للج انتشارا وخطفةء وأطفئوا 
المصابیح عندالرقادِء فان الفُوَيِسقَةٌ ربما اجترّتٍ الفتيلّةَ فأحرقت أهلّ البيتِ ۔ 

وفى رواية لمسلمء قال: غَطوا الاناءء وأوكوا السقاءء وأغلقوا 
الأبوابء وأطفئوا ارا فان الشيطان لا يحل سقاءًء ولا يفتج باباء ولا 
يكشِفٌ إناءً فان لم يجد أحدُ كم إلا أن يعرض على إنائه عوداً ویذ کر اسم الله 
فلیفعَلء فان الفُويسقة تضرم على أهل البیتِ بيتهم ۔ 

وفى رواية لەء قال: لا ترسلوا فواشيكم وصبياتكم إذا غابتِ 
السّمسُ حتى تذهبٌ فحمةٌ العشاءء فان الشيطان يبعت إذا غابتِ الشمس 
حتى تذهبٌ فحمة العشاء۔ 

وفى رواية لهء قال: عطوا إلإناءَء وأو كوا السقاءًء فان فى السّمةٍ ليلة 

بنزل فيها وَباءٌ لایٔمر باناء لیس عليه غطاءٌ أوسقاء ليس عليه و کا٤‏ إلا نز 

فيه من ذلك الوباء - 
رج ...... ضرت جابرر ی اللہ تخ الى عنہ سے روات سكم رسول اللہ عه نے فر ایا 
کہ جب رات کاب ائی حص موي الول رما اک جب شا مکاوقت مو توا ۓ بیو کو باہ رجا نے 


| Or 


سے ر وک ل اکر واس ل کہ اس ونت شیطان كيل جات ہیں اور جب راتک ای کگھڑی 
جل جاۓ نے بیو ں کو چھوڑ دو تن نکش باب رجا فك اجات دےدداوردروازے بن دکر لیا 
کر واو انش كانام لے لیا کر وای لكك شيطان بند درواز ےکو نيب ںکھو اور ا ہے یی ول 
کوڈشکن گا اکر داور اش رکانام نے ليأكرواورا سين بر تتو ل كوؤسان لم کرواور اٹ رکانام لے 
لاک وار چہ تم ان پر چوڑائی کے ل تاكول چ ر ركحواور اين چا بکھادیاکردہء ہے تو بخارى 
رٹل کی رومت ودی الكت وت قل 7 اپ نے ل الہ بتو لكوذعائي ديا 
كرو اور يزو كو ڈشکن لگاد کرو اور دروازے ین دک دیل کرو اور اسن چو ںکوشام 2 
وت روک ل اکرو ای کہ جنات کے لے پھیانا اور اچنا موا ے اور سو وق 
چاو ںکو پچھاد کرو ال ل ےک يمون سا رارلى انور (چو ,!) مضل او قات مت کو متا سے 
او رروالوں او جلادچاے اور سل گیاردایت ٹل ہے ل ار فرراياك بر تن ڑڈحاپ دیا 
کرواور یر ول ےڈ عن اد اکرو اور دروزات بثر کر دیاکرواور تراغ ھا دی اکر وا لج 
کہ خیطا نکی مز ےکوکھو لا یں ہے اور نہ بی بند دروا ےک وکوا سے اورت بی ڈ کے 
يوه بر تی سے يده اتا .ءال ع كول آد یکول چیا سوا کہ اپنے بر تن 
پر چوڑائی کے بل ايك لک ڑ ی ركد # اور ای ير الث رکا نام لے نے توو مابات یکرے اس لے 
کہ چو اض او قا گھ ردالوں می تك مکو جلاد تتا ے اور سل مکی ایک روات میس ىہ بھی 
ےک ات نے فريك جب سو رج غر وب ہو جاع لاسي تيد ںکواور اپنے چو پا لک باہر 
نہ کے د اکر و ہا یک کے حعقاء کے وف تك تار بی جل ہا ے اس ےک خييطانو لكو یی 
اتا سے ج كه سودرخ غر وب ہو تا ہے يها لت كك اول شبك جار کی گی جا اور ایک 
رواعت س آپ نے فرباياكم رو ںکوڑھاپ دي كرو ور کیو كو كن ڈگ اکر واس ۱ 
ےک سال کے اندر یک رات ای ہو کی ےک جس می ایک وہاء ال ےک وو 
ب سے بھ یز رن ے جس پر حكن نہ ہو الى ارب یز ے پس ےگزرنی ہے جس پر 
کن نہ ہو تا ی وبا کچھ حص اس میس ضرورنازل ہو اے۔ ۱ 


رو بن سس کے بعد كول اور جاور و ںکو باہر ہکا نل ےکی حیقیت:- 
اس عد بث ل رات دجو ا ييل معي و یت 


| ۵ 


کہ جب سور غر وب ہو جاۓ و اچ بول اور چاو ںکوگھرے باہرنہ تكله وو ا سكل وجہ بھی حضور اق ر ی 

صلى الث علیہ و کم نے بیان فرماد کہ اس وقت عام طور پر شیطان ييل ہو ے ہوتے ہیں ل“ دووقت ایا ے 
حل میں شيطالى ا ات نالب ہو تے ہیں ابا ی جديا كرح بابر كلل کے تو وہ بھی خيطالى ا ا تكو 
قو كرس کےء باہر کے کا مكب کک ہے اس میں عد یٹ بل ات بات کہ اذا ذهبت ساعة من 
اللی لک اول شب مس فو انیس کے سے ر وکا جاۓ کان جب را تكا ايك حص ہگزر ها تو پچ ر ا نبل باہر 
نکی اجات دى جاسکتی ے اود اتی لکامصد ا یکیاے کتناو قت مر اد ہے :ا یکیو ضاحت دوس ری روات 
سے ہوئی ے جس میں 1 خضرت صلی الثد علیہ و سلم نے فر ايل کی تہب من العشاء يبال تت کے العام 
ثم ہو جا سخ اصل می کے ہیں عشاء کے وقت کک جو را تک جار کی مول ے ھن را کی ایتا 
تار بی جو خروب شف کک تق ء غر وب فقس ےکر ضف شب کک جو را تك تار بی ہو تی ے اس ۱ 
کو گے رکھاچاتا > نوف ااطلاق اس جار يكاب ہو تا ےج خروب شف بک ہو نے نواس ے معلوم ہوا 

کہ يول اور مو ییو ںکوگکھرے د لکل ےکا عم غر وب شف کک ے, خروب ن کے بع كرا نک گے باہر 
کک ےک اجازت د ےوک جا ے تاس مم لكو رک بات نہیں 


رات او رگ شور راز جات 

کت دوصراادب یہ بیان فرمایاککہ دا تکوسوتے وتک دروازے بن دک ل اکر واوردروازے بن رک ےو تت 
ال کانام بھی لے ل اکر وای بل دو فا کے ہیں ءايك فا کد ہاو ہے س کہ ببہت ساد کی نقصانات سح انان 
جات ہےءرات کے ونت چو ر و تیر آسالى سے وا غل أل ہو کے ای ط ر ج درواز وكا م وکات سكياس 
ثم کے جانو رك مل آ کے ہیں جب دروازوبند موك ذو مك مل بل آنل کے »دوسرافا ئدهي س ےک ب ی 
اور مخنوى نمتصانات سے کی یا ہو تا ج اور ود ےک اياك رات کے وت شحیطالی اثرات سے كفو ول ہو 
ہے۔ کین موم احاد يم سے ہے معلوم مو جا کہ يبلا فا توتو مطلتۃا حا صل ہو کنا ے يكن دوس راذا ند وب 
عسل ہو گاج بك در داز وین دککرتے وفك الث ركانام سل لیا جائے- ۱ 


متو ںکوڑھا ےک گم :- 
تراادب بيان قرا كم رار أو سو وت 07 ++ کی 


لکن کاو كر واس میں ک یکی فوا کد ہیں ايك فاده قي س ےک اگر بر ت كل ہو ے بول کے پا میٹ وكا ہوا 


ہو گا اور ایت کے وق کون نقصا ن دہ اور ز ہر چ ای رر بد اثرات اس میں ڈال کن ے۔ وو ۱ 
فا ئدهي س کہ اکر برت ككل مو سے بول کے فان میں رات کے وقت شیطافی اثرات بھی لی ہو کے ہیں 
يان جب | نال ڈھانپ لیا جا ےک تز وہ بر تن خحیطالی ا ات سے #فوظظ ہو جا ےگا کن بظاہر ہے فا کدہ تنب 
حعاصل ہو گاج بکہ الث دکانام بھی کے لیا جا ےگا اکر الل كانام نہ لیا جاح فو یر ہے فا تہ عا سل بل م وگ ای 
فد کے حصول کے لئ حضور ازز س صل اولد علیہ و سلم نے فرمااک اکر بر تن ڈہایپئے کے ے ای یکو 
ینہ لے جس سے لور ابر أن ڈھاناجا کے ودوس راط یت یہ کہ بش نكوانث دکانام ےکر او ند اکر وواک ایا 
بھی 0107 کو یککڑی ونیم لجر ال ير رک دواو را پر ال کانام لے دو_ 
يبال سوال ىہ بجيام تا ےکہ کیو خی سے دہ بر تن یو ری ر پر ہکات فیس اس لے جو ى 
فتصانات ہیں ان سے متاك ثبل ہوگاء کی طور ير اکر ان مم كول یز مل موك فو وهال میس يشتى جا ےکی جو 
ةد كاده شیطالی ا ات سے م وگاور شيطالى اشرات سے ہیاک صل مل پر جن ك حا کی و ج سے نی بل 
اس سے میڈ تال کانام إن كوج سے ہے۔ الب اس بر کک کی وير ور کھ ےک یکیا ضر ورت سے شض الث دكانام 
دنا ی کان ہو ناچا یئ ءا كاجو اب ہہ ےکہ “نض ححفرات ن کہا ےک اسل میس نوجو خيطان سے فا ظت 
مول دہ اللہ کے ا مکی وجہ سے بوك لیکن اس ب ےکک یار رکھی ہو گی موك تو ا یکو رک ھکر شیطان دو ر سے 
دک ےکر ی يتيان سف اكه اس بر ت پر ال کا نام لیا ہو اے اس لی وہای کے قريب بھی ہیں #1 كا و للرى 
رکھناگ یا شیطان کے ے ایل علامت 07 
دو سر اجواب ہہ ےکر اسل یی جو خبيطافى اثرات سے حفاظت ہ وگ وه تو الث دکانام لکش كوج سے ہو 
گی لین اللہ تھاٹی نے اید ناکود ار الا ساب بنايا ہے اس كج كام بظاہر اسباب سے با لا تر مو سن ہیں اور کش 
تی بک تک و ج سے ہبوت ہیں ان می بھی اسیا بکا کیت کی در سج میں لوث ضرور ہو تا سے ۔کام ہو تا 
رض برکت کے نیج یس ے ليان الس ب کت نی ہو لى بک ابا بک اس میں تھوڑی می کر بھی 
ہوئی سے ا کی کی مشالیس بثك جا کق ہیں خلا ححضرت مق او ر ی از تال عن کی ىہ عد ييث کہ مل 
1 خضرت صل الد علیہ و کم کے ہاں الیک مرجي مان کے طور پر رامو ا تماق آي نے یی ب بم درکھاتھا 
کہ مر ی کادودے کال لاک واور ا ۓ ج كاد ودح فی لی اکر داور مير خ ككادود م ركه لیا کر و جب يبل ر ا کو 
آ کرو ںگا قل ليا كر وگاہ ایک ون 1 تحضر ری صلی اوقہ علیہ وس مکود ہے ہ وگئی فو صرت مقر او نے سو اک ال 
خضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی کے ہاں مہمان ہوں کے اس ل كران بق كب لكعاليا موكاي سورج كر 


( الا یکناب الانشر به باب شر باللین ج *؛ لص ۵۹ ینا لار کاب الا تی ان باب قان ال بوا ب ب یل رج اص ہے 


آي کے شت كاجو دودح رکھاہواتقمادہ بی اھکر فى لیا تھوڑی دی بعر تضور اق رس صلی الث علیہ و صلم بھی 
قث ريف لے آے اور آپ سل اللہ علیہ و سلم نے دودح انگ خضرت مقد ا کے ہی ںکے میرے قوياول له 
سے ز ین کل یاب پت چلاکہ 1 خضرت صلی اذ علیہ و کم نے کی کک يبد بي ل كحاي جب حضرت مقر ار 
نے لوک بات تال 3 1 خضرت صلی الذد علیہ و حلم نے نار شک یکا اهار نہ فر راي بر مص لك طرف تن ربيف 
سل گے اور نماز يذ ى اور اس کے بعد آي صلی الثر علیہ و سلم مر یکی طرف کے تو خلاف مول اور خلاف 
عادت کر کا کے تن دودح سے بجر ہوۓ تے فو آي صلی الثر علیہ و کم نے ا كدودح ذكالا اور اے 
تقاول فربایا۔ ن یہاں ديك اصل مس دودح ملا ہے دعاك برکت سےء اصل میں فو یہ ال برکت سے لان 
كت لول بھی تو ہو کت کی یا ماب اٹہ دلول بھی ہو کک تك سید ھا آ پ کے پا كول دود کا پیالہ 
تع جاتاء آپ کے سان رکھا ہو اہو جا مین اليا یں ہوا كام شض اڈ کی نصرت سے ہوا سے لیکن تتھوڑاسما 
اسیا بکا کی اس یس لوث ب ہک آ پکواش ھک کر ی کے يال جانا پڈاءمیک کی کیادودھ ذكالنايذاد 

1 خضرت صلی الث علیہ و حلم ایک دفعہ سفر میں تھے پانی تم م وکیا ہار سے فنا سے وا ل ير يشان ہیں 
تو آپ سل اللہ علیہ و سلم نے ايك دو صم تيد كو عم دیاک ہیں سے پان ڈھوط کر لاک ڈھو نے کے ك2 
كل نانيك عور رت یتر سے میں يلل كج کر ابی او ی بر لادکر نے جار ہی تھی اس سح كيك تمل تھوڑاسرا 
لاد سه دوا عو رت نے الگا کر دیا يي عور تک کر فقأ ركر کے ئ یکر یم صلی اللہ علیہ و لم کیک ان نے 
133-21 خضرت صلی انث علیہ و سكم نے اس یر ے میں سے تھوڑاسا يل الا اود اس عل برك کی دما 
فر ما الل کے بعد یہ فيكم اس سے اپ برتقن دغیرہ جلو قو جاب ر خی اود تحال “نم نے اس می سے 
اپنے بن بھی جھرنے ردک د بے اور اسن یر سه بھی ھرنے شر و کر د سے و ضوو يرو کک کیا 
ین یرو اکا و ییاتی ر بابك ایےا تک رب نهاك اس بس يال يبهد سے زاگ ہے فو ىہ جو يال کے اندر ب رت 
اہر ہو گی ہے خلاف عادت ے لکن اس میں اسبا بك تھوڑاسماواسطہ رور کیایے بھی فو ہو سلا تفال و سے 
ی کہیں سے پانی كل حا برکت نو وی بھی ہو كلق تھی لن ایی ہوا نیس ے بلمہ ابق اء عمل تھوڑاسا بال 
ڈو نڈناپڑاے يمرا میں ید برکت مکی ر | 

عد یبے کے مو ع پ پا یکی قلت موی تو ضر رت صلی او علیہ و کم نے فرم کہ تھو ڑا بہت اف اکر 
کی کے پا ہو تو ےآ سے تو ہت تھوڑاساپالی كيز ول کے اندر سے ملااور امل میں حضور صلی ال علیہ و صلم 
نے اپنی افلیاں الل تو صاب نے ديعا آ پک البو سے پان کل ربا تھا تو سیا ہے وضو ویر ہبج یکی 
(ا) مشكاةالمصانتخ باب فى | سج ارت لفصل زر ول رج« /ض ٣٣ن‏ 


2j ۲۸۸ 5 ۱‏ 
۱ تام بر تن بھی کر اور اہ كيز # وغی رو بھی مر ے0 

یہاں ہے قو الك طرف سے نصرت اورب داور معاملہ ا یاب سے بالات ے يكن یھ نہ یھ اسیا بکا 
و غل اس میں بھی آگیایوں بھی ہو سک تاکہ ابا پک الليول سے پا كل ٦ج‏ لان ايها نیس ہو الہ به 
إل حو اكيااس ل آي نے اپنی افیاں ڈالیش نبل يس پھر اس سے ال كل آیا تق ریہ دارالاسباب سے ال 
یس اکٹرو بشت ر اليا ہو تا کہ ج وكام اسباب سے بالات موس ہیں اور ای کی نصرت اور یدرد کے طور ير ہو تے 
یں انل کک کی کی در سج یش اسیا ب کاو غل ہو ےار چ بہت موی سا ہھ۔ یہاں بھی می صورت 
حال س ےک للذى رک كوج سے جو شيط الى اثرات تے ان سے طہارت بماك وو تو کش ارش کے نا مکی رت 
سے ہی لیکن اس میس اسیا بک بھی تھوڑاساد غل ہے ۔کائل در سكاس فو مہ تھاک کال طور بر بر یکو 
عاتب ليا ہا لین اك اتا ثيل ہو سكن فو آپ نے فر ايك بن م سے لکن ےاج اکر لاور ال تا یکانام لے 

لوہ باد ال میس جو یھ تماد تم نے کر یا بال الث کے نا کا کت ب ہاے گی اس حت ايك اور سوا یکا 

1 جواب کی موكيا 

سوال ......سوال يسك 1 تررح صل اللد علیہ و 2000 كوي رکرو )کرو 
اورا كا وجي بیان فرمال کہ خیطا ن کید در داز ےک تمي كحو لناء سوال یہ پیر اممو حا ےکہ خحیطان کے 
لئے ىہ رو ری و لك دردازے سے تق 1 وو اوی ے بھی 1سا سے 

واب 2 وا کاجو اب یہ ےک ال میس ىہ تی تل دردازے کے بند ہو ےکا بل لل 
بن ھکر ے و فت اللدکانام لی کا یہ »الث ركانام ےکر ر واز وین دہکیاجا ا ے تو خيطان ا سگھرییس و اقل تيبل 
وو E‏ جات سیت فو E‏ 
يهلا گے ے کی ر رک دی جات ءاب ا نیہ شطانو کا کنا ےراہ کے نامك م رک سے ہو الو پھر دروازه 
بن کر نے کر نے س كي فرق پڑا۔ ا کاجو اب دیس کہ ددواز وین دک نا بهار ے ہیس میں ے اور اپنے الكل 
ص دک انان نے سب انخقیا رك ليااورالثّهكانام ے ليا فاب آکے الث کے نا مکی بركت اج رم وك(" 

تمہ رکو جد را تكوب تنو ںکوڈھا گے اور تيز وں بر ڈ کن لگان ےکی ہے ےکہ 1 خض ررح صلی ال 
علیہ و كلم نے رابک سال گر بیس ایک ر ن رات ے اس مج ل كول دباءنازل موف سے او رجو بھی بر تی 
را تک كحلا مو اہ جا ہے اس می اس وبا ءكا بج ضيب ا آ جا تا ہے ء اب ہے دا کون سی ے ٢‏ خضرت صلى اللہ 


: 1ھک الس باب ار NERE roa‏ تو ات تج 1ل 


(۶)او جنا مس ائکالی مو طامام الک جا من اجاء ‏ لطعام والشراب رت |٣‏ ص ۲۹٢‏ 


5 ۲۵۹ ہج 


علیہ ا تین یں فربائیاکرقورات معن مول راس سحن رات مس بن ماپ لمت 
الى قی راتڑں کے اندر دباء سے دكن کے لے بر تن ذا ئ ےکی ضرورت يس بھی لين پ وک رات غير مصحین 
ہے اس لے ہررات یں مہ اال سك ہے وبا فدات ہو اس ك آپ نے فرميك ہے روزا ہکا مول بنا رک 
را تکویر تی ونیم مات پو کرو 0 ظ ظ 
اب ا با اسائحنمداا نکیل سك يعاس جج بے می كول ای رات خی ںآ کی جس میں اس طر نکی 
كال وبا نازل ہوٹی ہو وس کاخواب ہے س کہ عر م کم علم عر مكو زم کال جو چ ہمارے رسب اور 
ماپ ہے میس تثبل آل تؤاال سے ہہ لازم ہیں 111 ہم نی طور بر فیصل ہک لی كي ے دی نیس ؛ آخخراس 
وت کے بہت سارے اکشافات اب ہیں جد جع سے ينه عرص يبه انا نکو معلوم ہیں حت ين جس 
وشت جز ل انا نکو معلوم ہیں یں اس وقت وہ موجود شی لیکن تمل پید تيل جلا تھا چھھ عر صہ يمك 
ا ری ےکا یکو پنۃ نیس تھالنا نآ نس بکو پت ے۔ ا یکا مطلب ہے خی كه اس و فت ام رجہ نميل تماقو 
معلوم ہواکہ ایا مو كتاج کہ ايك جز ہمارے مشاہرے اور ر ے میں نہ آل ہو ليان اس کے ياوجوو موجوو 
ہو آ خضرت صلی الث علیہ وم نے جوكل فریادیاے ادرف فق کن ہے اس لے ا كوءاتناضرورى ہے۔ 
جد تماد بي بیان فريك سو کے وفك ج رارع ھادی اک دہج ا بچھانے سے م رادي کہ آگ بچھادیا 
کرو اس ےک نگ کے جہاں فو امد ل وہیں نقصانات بھی ہیں ملا آپ صلی الد علیہ و ملم نے بور شال 
کے بان فرما کہ ہو سكن ےکہ جو پآ ےو ہے بھی سول چ کو جل ر یک تا سه .سو ثرو ںکواور سو کی د ساكول 
کواور جا کی ہی عام طور بر سوت کی بتی مول مدل ےاورا س می ينال ى گی ہو تی ہو تی ے وس کے ك 
ا لو گے يبك دےگاء ہا کے مو :ايها کن ہے بل جا گے 
دس ایباداقعہ نٹ بھی آي ليان ہے ہو ے اتتا رور ےک فور طوز پرانسا نک ہی جل جاجاے او ر لگ 
7 220ب ےل 57 کی کل دادر رت ھ0۶۷" قابويانا 
ای وہ او تين اا د کا ہداس حك آي نے فراياج ايا آل اول ل جر 0 
9 0 0 کا اق 
كول بھی یز ا کو بجی اکر سو میں ای سے ہے بھی معلوم واک روشق کے ووذر الع ج ہگ ے نیس جل بل 
تل و ره سے جلت ہیں فو اس میں چوکلہ اس طررح کے نقصانا تک اال نیس ے اس لے اس کے جت ہے 
یں آ كا لور ال اد بک بفياد يدي بچھانا ضرو کی کش ہے بال الہ بہت سار کی صور قوں يل رات کے 


5-5 


(۱) او جزالمسالك الى مد طا ہام مالک جاح باجام العام والشراب ج١۱‏ | ص۹۰٣ ٠ ٠‏ 


٣‏ تہج 


وقت اس طر نکی یو كا جنار بنافضول خر تی می داش ہو تاچ ا یکو ج سے ورو تادر بات سهد 
(۲( سد وعنه قال: جاءً أبو حُميد رجلٌ من الأنصار من الُقیع باناء من 
لبن إلى النبى صلی الله عليه وسلم ء فقال النبى صلی الله عليه وسلم: ألا 
حمُرته ولو أن تعرض عليه عودا۔ (معفق عليه) 
رجہ 77 او مید انضار نیک بر ت ن یکر مم صلی اللہ علیہ وم کے پا ی ےک۷ کے 
تو یکر یم صلی اللہ علیہ و کم نے اياك تم نے اسے ساني كيولى ن لیا اک چہ ای بر 
چوڑائی کے ب لكو ل للزى بی رکھ لیت 
الل عذ یٹ سے معلوم ہو اک اگ رکھانے پٹ كلكو ل بز ایک جل سے دوس رق مہ پر نے کے جا ہو 

وو ل نبال نے جا ياج بلك ا ڈھات کر لے جانا اہ 
0 -----وعن ابن عمرء عن النبى صلی الله عليه وسلمء قال لا تتركوا 
انار فى بيوتكم حينَ تنامون ‏ (متفق عليه) 
جمس ......حضرت این رر ی ال عنہ سے وات سكل ب یکر جم صل الثد علیہ و کم 
نے فرماپاکہ تما ےگھریوں کے اندر سوتے وف تآن ککونہ چو ڑاکر و 
(٤)-----وعن‏ أبى موسىء قال: احترق بيت بالمدينة على أهله من اللیلِء 
فَحْدَّتٌ بشأنه النبى صلی الله عليه وسلمء قال: إن هذه الثَارٌ إنما 000 
لكمء فاذا نمتم فأطفئوها عنكم ‏ (متفق عليه) 
می < حطرت ابو مو کی اشع ر یر ی اللہ عند سے د واييت س کہ مد سے يبل رات 
ےت ا کر ودن لقان کے کپ نی یک ری عن ل م صل 
الث ند علیہ و مکو ايكيا ف آپ نے فرمایاکہ ہے لل ت با و تہارک د تن ے ليذ اجب تم سونے ۱ 
وتوا کو ییاد كرو 
(ه) -----عن جابرء قال: سمعتٌ النبىّ صلی الله عليه وسلم يقول: إذا 
سمعتم نباح الکلاب ونهيق الحميرٍ من اليل فتعوّذوا باللہ من الشيطان 
الرجیمء فإنهنّ يرينَ ما لا تروت وأقلوا الخروجّ إذا هدات الأرجْلء فاد الله 
عزٌوجلٌ يبْث من خلقه فى ليلته مايشاء وأجيفوا الأبوابّء واذكروا اسم الله 
عليه» فا الشيطان لا يُفتح باب إذا اجيف ودُكر اسم الله عليه وغَطوا 


۲٢۷ 


الجرَارء وأكفثوا الآنية» وأو كوا التِربٌ رواه فى شرح السنة۔ 

ر جج ...... حطرت جابر ر ی الثد تخالل عنہ قرا نے ی ںکہ ٹس نے حول اللد صلق ار 

علیہ و كلم كوي فرماتے مو سے سناكم را کو جب ت مککتوں کے بمو نکی او رگمدعوں کے 

جن نان ےکی آواز سنو فو الث کی شيطان مر دود سے پناہاگواس كك ہے اور ایک جزو ںکو 

ديك ہیں جتن كو تم یں يبت اور جب يال رک ہا ہیں ( فی چان پچ نا رك ہا سے )و 

كنا )کر دو ای کہ اللہ بل لال رات بعل انی كلوق میس ے سکو پا ے ہیں يبلا 

دتے ہیں اوردروازے بن رکر لياكرواود اس پر الث دكانام لے نيا لر و ای کہ خیطا ن کی 

دروا كد می ںکھولا ج بک ا كوي کر دی گیا د اور اس پر تکام لے لیاگیا ہو اور 

مكو لکوڈھانپ د كر واور بر تو كوا تزه كرد ] رواو ظز ن عن لگا کرو_ 

رتو ںکواو ترس كر ن ےکا عم اس صور ت یش ہے ج بکہ ا کے بايث کے -ل كول جز موجور 
نہ ہو ای عد یٹ میں 1 خضرت صلی الثر علیہ و حلم نے فرمایاکہ حب مكل کے و کک كى يلدت کے" 
جنہنان ےکی آواز سنو و شیطان سے يناماو اعو ذ باللہ من الشيطان الرجيم يذء لوا لك وج آپ نے 
بے بیان فرہا یہ ان ججاف رو كوا سی ججز يل نظ رآ فى ہیں جو ہیں نظ ر ہیں آ یں رطا را کا مطل بي ےکہ 
كدعا شیطا نک دک ھکر جنہناتا .> ای طر سكا شیطا نكو دک کر بج وکنا ے فو کے کے بمو کے او ركر سے کے 
چنہنا ےکا مطلب ہہ مو اکہ ال وفت ہاں پر شيطان موجود ے اور ہیں ضرورت س کہ تم ال کے رے 
اثرات سے #فونار ہیں اس ے آي صلی ال علیہ و ”لم نے قرایاکہ اعوذ بالله من الشيطان الرجيم ڑھ 
ل کر و۔ فو اس سے معلوم ہو اک گر حا خبطا نکد كر جنہناجا ہے ای طر كنا خبطا کو دک كر بج وکا ے تو 
جب 1 خضرت صلی الد علیہ و حلم نے فرمادیانذ وا بيات ے ابد عد ی کاہے مطلب تبث سک ہگ دحا جب 
بھی جنہنا جا ہے مو دہ شیطا کو دک ھکر جنہنا تا ہے بللہ یہ ال کے بجو کے يا جنهنا سف كا الیک سبب ہے اس کے 
خلاوداور اسیاب کی ہو کک ہیں شل اناس لے بھوکک دا ےک كول نی ض اس کے در وا ے کے ياس 
آكيا ےیاا ی لے ب ومک د پا ےکہ اس کے گے يل كول اکتا نا ےی کے ےک کر نے 
کے اور اسباب بھی ہو تے ہیں کن الیک سبب جب ر حال خیطاا نکود ینا ہے۔ قذاب ج بکناب و تک رما سے یا 
گدھا ہناد پاے فل اذ كاي اشمال ضرور ہ کہ دہ شیطا نکو دک ہک ای اکر دجاس ك آپ نے فر اياك 
ا وذ بالثد يذه لياكروء اكد شیطان ہو فذ اس کے برے اشثرات سے مو ظا ہو چا کے اور اکر شیطان نہ بھی ہو تو 
وذ يالش يد ھن ےکا نتصا كول یں ل ` 


2) 
1 


رات تمل ل وجوبات:- ۱ 
7آ خضرت صل اللہ علیہ و سم نے رات كاذك کیا كا رات کے وقت ج بگد ے کے جنبنا ےکا 
ْ کے کے بجو كنك آواز سنوقوا و باش پڑھو فو عم رات کے ساتجد خا نیس ہے يكب بات یا آپ نے 
ال ے فرمائ کہ کے زیادہ تر رات یکو بجو کے ہیں او ركد سے بھی را تكو زياده مننينات ہیں و یکو اول تو 
پک کر جن کی کی کی میں ی ےناورک ادن کو 
نض او قات ا کی طرف توج یں جالى يان رات کے سنائے می اک رکا یھو کے فو يع بل جات سء ای 
ریت سےگمدہاجنہناۓ توا كارع تل جاتاے۔ ۱ 
E‏ 9۶ 
كدح کے جنہنانے کے مو کے ہیں جبلہ رات کے وفقت ہنہنانے میس شيطالى اش ا کا امکان زياده م گا اس 
لئ آي صلی اللہ علیہ و کم نے را تكاو فت خصو یت سے کر فرمایا۔ 
وع ابن عبّاسء قال: جاءت فأرةٌ تجر الفتيلةء فألقتها بین يدى 
رسول الله صلی الله عليه وسلم على الخمرة التى كان قاعداً عليهاء فأحرقت 
ممنها مِثلّ موضع الدّرهم فقال: إذا نمتم فأطفئوا سُرّجکمء فان الشيطا يدل 
مل هذه على هذاء فيحرقكم (رواه أبو داؤد) 
ریت کت صضرت ابن عپا ی ر ی الد تحال عند م روک كد انہوں نے فرمايأكم 
ایک جد مایا ایک چپ (فار کے دوفوں می ہوتے ہیں عق اک متا ہو الایااور اسے ن یک مم 
صل اللہ علیہ و کم کے سا اس چٹائی پر يتيك دیاجس ب 1 خضرت صلی اذ علیہ و کم 
تيك ہو سے تے اور اس شل ے ايك در ب مکی مقر ار حص جلاديا او خضرت صل اللہ علیہ 
ومغ زک جب تم سونے لو ڑا ۓ رانو كو بچھاد کرو اس ل کے خیطان ای 
ررح کے بان وال ط ررح کےکا مك د جنمائ یک تا اور ہیں جلا یتاے۔ 


ای کا کی ان کے کی ا نای دک کی انی نك اع کت ےد هع دنہ لك بار 
یس بھی احاد یٹ ذ كرك جا لك ءگویا عنوان صرف لبا کا ے لان مقصید لہا اور ز نت ے۔ اپ از نت 
کی صورفوں کے احكام کی بیا نکر میں گے مشلا زلودات کے باد مم لكر مرد کے لے ص۶ "0 
ہے او رکون ساود ست نہیں ملا اگوی اور عورت سك کون سسا لور در سمت سے او رکون سسا نیس »ای 
لين سے بالال کے احكام کی ییا نکرنیی م کیو ںکہ ا نکا تعلق بھی ز یت کے سسا تخد ےہ ای طرررح 
تصاد بر کے احكام بھی بیان کے جا نبل كبو لك وہ بھی نس او قات ز ينث کے لے اعت رك جالى ہیں۔ 
لجان لزان او نت روفن ےا ر وض ادیک( کی گا 

اعاد یت کات جح کر کے سے يمل يك اصولى با تو لكا من شی رکمناضرور بی ے۔ 


يال 0 ی سل ےب ری ؟. 

سیت ماق او ل ترمد نان نان اش ان مل قوى ملل ہے یادئی 
ستل ہے۔اس می بغ لوگ کچ ہی ںکہ لاس دی طلم بل ہے :با كاين کے تی ھکوئی تلق ہیں د 
اہن الل ہویا بالو كل كول شكل ہویاز ین تك اور صور تی مول ان میں چا ناجا تدك بث یل بل يذاجاجاء 
به انا نکا ایک هذ ہبی یا وی ستل کہ عسل ر كار م ور و ایحا ی علا ے یس عاج ال طرركالزان 
ين لی جج بکہ دوس انقطہ نظري سج كه لبا نمالھتا یک ديفى صمل ہے۔ لبذ اکس طرركالباس يننا > 
اور ن ر لياس ہیں يبنا ہے دن سے فص کر واس گے۔ ليان سل حقیقت وونوں انال کے 
ورمیان ےل حقیقت یہ ےک لياس ناس تہ ی و ٹا فی سيل بھی تنش ہے اور لیس د ئی مایا کی 
نيس ے بأ حقيقت ٹین ین سباي كبن لہا دمن کے س ت كول تخلق نس رخ لص تب سی و اق 
ستل ے ہے بھی غلط ے۔ ا -ل كر جب ہم تر آن وعد ہ کو رک ہیں فو تمل لياس سے “خلق واج 
پرایات اور تخلمات ن ہیں۔ ق رآ نکر مم نے بھی لبا یکا زک ركيا اور لبال کے مقاصد وکر فرراة ہیں:- 
ينی آدَمَ قَذ اَنْزَلََا عَلَيْكُم لباسًا يُوَارِى سَوئیحم وریشا۔ (الآی) ^ 

ب یکر یم سل اللد علیہ وک مکی احاد یٹ بھی لباس کے لق بے شار ہیں٠‏ ہت سے لہا س الك ےج 
٠‏ () سور الا عرا فآ ت ر ۵ ٣‏ رکو نم ٢‏ 


ئ یکر کم صلی اللہ علیہ وسل مکی بشت کے وذنت موچ داور عرب میں مرو سے لیکن حضو اق رس صلی اد علیہ 
وم نے ان سے مع فرمادیاسال کے طور ير رور مم بھی باون ل اکر ے سے لان تضور اق رس صلی اوہ علیہ 
وم نے ردو كور م يبن سے مزع فرمادیاہ مرو سوت بھی بین ليا كرست سے لين حضور اق رس صلی القد علیہ 
و کم نے مردو ںکوسونا يا دی یہ سے مع فرمادیا صرف خا مقدار یں چا ند یکی ان و ش یکی اجات دی۔ 
عر بو لكاعام لپا کی ازار اور رداء تماق الیک چادد ا پر ایک چادر یت »ينك والى ادر يق کی عام طور بر ٹنوں 
سے ین كك جاتی ی اورا كا رکا باعث تت سے فى بدا اور تلت کے اظہار کے لے عام طوري کی 
ولت یچ رکھی جالى تدب ایک دوا تھا لین نكر صلی اذ علیہ و کم نے اس سے من فمادیاادر بھی 
کی لبا ی ہیں ياليا سک یکئی صور ٹیس ہیں جو مرو یں یاز یم تکی صو رتيل مرو تين لین ن یکر بح سل ارہ 
علیہ و كلم سف ان سے مع فرمادیا۔اکر یہ خض تین می ياثا فق ستل ہو جا نون یکر یم صلی الد علیہ و صلم ماک ہے 
لو ۶ بو ںکا رم درو اع ہے السك اذ رکم درواجع کے معلا بن لیا ی بای جو فار ییو كار م و ردان سے وہ 
اپنے د م و رواج کے مطالق لبال يليل ء شام کے لوگ ليذ رم و رواخ کے مطالق لياش ندل اکر ہے 
شر یع تکامتلہ نہ ہو جاور لاس ديف متلہ نہ ہو جا تو یکر يم صلی الد عليه محلم ان لباسول سے مع نہ فرماتے جو 
الل مانے می عرب کے اندر عور ے۔ اپا كبن لياس حض ايك ته می اور افق ستل ے دی نكاس 
کے سا ت ےکوی تاق تيل ب بات غلط ے یکلہ دی نكل تغلمرات لہا س سے متعلق بھی موجو وہیں_ 

دو سرك طرف یہ بتاک بيه اک ط رب نا ص د فى ستل سے نمل رع نماز اور عبادات نا لض و یی 
مال ول كم ان ٹس ب یات تک او مل طریۃ ہکمل شر او ش لکی تب نکر دی ہے لا سکی بھی ای 
مورت حال ے ب كبنا بھی در ست تالاصلل بات ىہ ےک شر لع تکام ار عبادت کے بارس میں اور 
ہے اود امور عادت کے پارے می اور ے۔ عاد تک مش ج وكام نض عبات بج ےکر کی کے جاتے بل جو 
عبادت یں بھی اناده ک یکر ما ہہ نماز دای بڑہتا ے نس نے عباد تک ری ہو کی سے ها سر بکور اضی 
کر نے کے لے بد نی ہویالوکو ںکودکھانے کے لے أي نكرل عبات ہو می ے۔ کین لبا ی ہ رآ دی يبنا سے 
پاے اس نے عباد تک رک ہو یا کرک مو ءکھانا جرد ىا لمانا مسلمان ہو يلكا فر ا کے ہاں عباد تک تضور 
ہو یانہ ہو د ہنا ہنا ہر آ وی اخقیا رک تا سے چا سے وه عباد کر جا ہو یا کر تا ہو ء ہہ امور عات ہیں ہج کو فقماء 
افعال حي کے ہیں۔ فقباء نے افعا لك دو ميل ہیا نک ہیں : افعال حير » افعال شر ع امور عادت کے 
الک نان کر بجت كا اند از اور ے اور ا مور پاد ت میں اند از اد ہےء عبادت می شر يد تكاطر يقد س ےک دہ 
د ادك کی شی کر اک اریت کا ےا :ایک نے شوہ هروس 


ایک لے شدوطر یق سج زکو8کا ایک سل شد وط تہ ہے اس سے أكر یش کے قوسي عباوت سج طر ريق سے 
ادا ثبل و د لین عادت مس ہے بھی ی سکہ شر چت بالكل آزاد چو ڑو ےک جو مض كروي ETE‏ 
ہر بات يبل جو ی نينا کر وی جا بل جذوى امو رجي کو تی نکر دیاگیاہو مشلا کھاناا مور عادت یل سے سے 
اب ی بھی نی كد شر یھت ےکہہ دیاہ کہ جو مر مض یکھا كول پابندی نی جس طرع چام دکھاواوریے کی ر 
نی سک کھان کی چھونی يمون با یں ےکر دی ہو ل صرف فلاں فلاں جانو رگوش کیا کے ہو لا - 
عاك ا كوش تکھا کے مو يمر مر كاكو شت کی ےکھانا سے بجو نکرہ شور ہہ بناکرہ روش كر کے ایا اور 
مر یت سے اوراس میس مر ڈالنی ہے یا يل ڈالنی اکر ڈالنی ہے بك کی یا تيز نماز مس تو ونی ته ولى 
شش نے روزن کن يهان لن نین يكلم مبان اراز ے ےک بک وق کیا تاذ کی ساكل دک 
کہ د ہے اود اس کے بعد آذاد يجوز ديا كما سف کے بار ے می كاك ب حال ہے اور ہہ ترام سے كترم علال 
ہے نین اس کمانکا طروت شين خی كياا کو آ پک پیند پیا حم دد وا پہسچھوڑدیا۔ 

بجی ماله لاس کے بارے میں س کہ ہے بھی خی كل لپا ی کے پارے نمی كول م بی نہ م وک 
دين کے سا تخد ا سکاکوئی تاق ہی نیس اور ہے بھی بي سک لہا یکی نیک ناص شكل اور وروی متخي نکر کے ہے 
کہ دی ہ كا کی اسلا یبال ہے اود ہر ای ککو می ننا یڈ ےگا اس سے ہہ فک کوک اور لہا نیس ينا جا سکا۔ 
. بللہ یہاں پر بھی يبك اصول ہیں خلا ےک وہ لپا سات ہو وه لہا س مب رکا باعش تہ بت و ر وو غير واور پچ 
زی ماگل بھی ہیں خلا مر ور شم نہ ميل اور لی يا شلوار وغیر ہ ول سے نے نہ ہو ویر ہو غر کے 
اصول اور جنر جو ی مسا ل میا نكر کے شر لجت نے آزاد چو ڑ واک ان اصولول اور ان جثر جزوى مسا کی 
ایند کہ ل ہے۔ ا نک ایند کے وس ای علا سے کے رم وروا کے مطا بق ياب ييند کے مطالق جو 
ليا تم بین لد گے دو شر یع تک نظ میس درست ہے بق وج سك مسلمائن د نیا کے بر خط عل ينك اور ان 
علا قال کے لوگوں نے اسلام تقو کیا يان جہاں جتبال اسلا م بین سب علا قو کال با يكال بال آپ 
بر صخر میں دک فیس بيبا کا لپا کی اود ط ر رکا ے اور بر صخر ل پاکستان يبل اور طر کال ےکا تد وتان ٹس 
اور مر کاٹ كك یجاب اور سر صد کے لہا میس آ يكو فرق نظ رآ كاك يبال شلوار در میالی موك زیادہ 
کھلی تبس موك اور وہاں شلوا رکا می ہو گی و خی دو تیر اور یگ دليش می حل جا بل نووا کا لپا کی اور سے 
دول اور بیان نظ رآ ۓگ اور بر صغیر سے لگ كرآب ثيل اور لے جل افریقہ عل عله ہا افر 
ماک میں مسلمافوں کا لپا اور ےہ عرب مالك می اور ہے انيثا اود لا شاك طرف له با تو 
دبال اور مپاس ہے۔ لمان اور اعلام دنا کے ملف خطوں میس نے اور ہر چگ بر مسلماتو کا لہا ی الك الك 


۲٦۶ 53‏ ہج 


نو عی تکاے اوري صورت حا لآ جک نی ار اموجی سے يل أرق ہے صرلال سے يل آری ے او نی 
اس صورت مال برعلا ءکی ط ر ف اھا كي ا كياجو اس با کی و مل ےک لباك كول باص شكل شر بت 
نے ین تبي لكل بللہ اصول اور جنر سكل ہیں۔ ان اصولول اور مساك لك يابند یکر نے کے بح دآ زاو يجوز ديا 
كياج رعلا يل اس کے رم درواج کے معان ل وگوں نے لياس پہنااور جو يبك سے ليا ل جلا آرباتها موب 
ا ىكواختيا رکر یا۔ الدتہ اسل میں جد زم غلا ف شر لت تحمل ا نکو ال ديااور تھوڑابہت رووبد یکر دیا۔ لپ ا 
بنك لباس خالعت ايك تهذ می اور رم ورواركا سل سج دی نکواس می كول و غل نیس د يناجا سج ہے ىا 
قلط سے اور هناك ہے الم دی لہ سے نسل رب نماز ايك دٹی ستل سے ہے کی درست بس بللہ 
تقیقت یہ ہ ےکہ ایک صد تک ہے ایک دی سل ے جہاں ش ربدت سكول اصول یا نکر د كول مل بيان 
کر دیااور چہاں شر يجت ناموش ہو چا تو پھر اک تحلق تہارک ند کے سات ہے بای علا ےکی تفہ يبه 
اقات کے سا کر ے۔ ۱ 
لوي رنیم اکن سوک ہے جتہال د بین بد ايت ديا ب وبال ر مو 
روا نكيل ريل کے کک اس کونظرانداز و يننا مول ہو جات گا اس سے آ کے ابی مڑی۔ 
اب وک کی بات یہ سك وو اصول یا لہس کے متحلی مسائ لکیا ہیں ؟ جہاں مک مسائ لما تعلق 
ہے فو ہاں جہاں عد يشل ہیس 1 دبال دبال مایا ته ییا نکر ے عل انبل کے الت موی اصول جو 
ایک رو ںکی حيثييت ر کے ہیں جو تر اتام اعد یٹ م بل جال چ اماد ٹکو جن ے پیل ان ياد 
اصولو كاذ ہن بل ركه لیناض رو رک ے۔ 1 


4 اصو ل:- ۱ ۱ 
ليل سار ہو سی ليا كسب سے يبلا اصول ہے سج کہ دہ سات ہو سکن مكو چپ نے دالا ہو 
چاچ رآ نک مم ٹل 1تاج: یی آدَمَ قد لتا عَلَيْكُم لِياسًا يُوَارِئ سَوئیکم وَرِيْشا© 
کہ اے بی آدم تم نے ہار ے لے لباك بيد اکیاجھ ہا ری ييا ےکی جكبو ل کو چا ے۔سوء ت 
کات جمہ ہچ پان ےکی جيل اور تمہارے لئے ز ہن تکاباعث ہے ءا سکبیت میں لہا ی کے دو مقصد بیان کے ہیں : 
لبا لكا يبلا اور سب سے اتم مقصید بد نكو پچھپاناے اپ اجو لہا ی اس مقصید يلور اتر ےگاوہاسلای 
لاس ے اور جو لباس اس مقر ملو رات اتر ےوواسلای لاس يكبلا کت _ 


(1) سور ۃ الا را فآ ی تب م۵ ۲ ركورع ۲ 


وكا ے٣٣‏ تج 


بد نکوچچھپانے میں بج رکف در سج نل + بدان کے بل حك اريس ہیں ج نکو چان ضروری ے او رر 
یں چچھپا ےگا ا رک ےکا كتبكار مو كا لا نیہ کے نز ديك ناف سے ےک ركو کک مر دكاستر سے :اس 
كويجعيانا ضر و رک سے اور اکر ہیں چا كال وگوں کے ہے اہ مر ےگا وکھکار موك اس رب ور تکا 
بھی سیرے جک آفصیل فقہاء نے فربائی ىكم آزاد حور تكاستر اور سج اور با ٹر یکا ستر اور ہہ ای 
طررح عور تکاس ر خر رم کے سام اور ہے اور جرم کے ماس اور ہے اال کی ارتا 
ےکک مق ہے س كر بے حت اريس ہج نکوپچھپاناشر مارو ر کے اور اکر ا نكو تيبل چا ےکا کن گار مو 
كاب صے عرد کے ےکم ہیں اور عورت کے لے زياده کہ ستر جم لكا يناو ادب ے ال طور ير عورت 
فلیظہ اس کے بارے می یہا لكك آتاہ کہ تنهال ل بھی بغي رض رور کی کے سان کل لتا ا۶ر سج ءال 
كك نب یکر یم عن نے فرما اک اک وبا ل كول انان موجوو تيل وک ا زکم فر شح لو موجو و ہیں ان سے حياء 
سم اور یں تو اللہ تعالی ده بی رے یں الد تیال سے جا ءکا تقاضا ل !تیر ضرورت 
کے آدى تھا عل بھی بے لہا ہو لشقی ورت فل کو تلاپ ر کر ے۔ہ ہے تو الثم تناق ليا کی حال عل 
بھی د کچھ ر ے ہیں مین وود نال تی یرف سے ہے دو بے حال کل ہے او رگم رائس نے اي تركو ظاہر 
کیا تی صرف اللہ تھا یکی طرف سے یھنا فیس موبلا كت کے ے آپ نول كاب کے ہی نك اسك 
مرف سے دکھانا بھی ہے صرف یہ کل سب كه الل دک ر ہے ہیں يكلم دکھا گید ہے ہے بے میا یکا بات 
> اس لے فريك بلاضر ورت اپناستز ہا یس بھی کو کیو كي الث تال سے جیا کا تقاضاے۔ 
بک ابی ہیں ج نکچ کہ اگرچ شر اضر درک يس ین مروت کاھاضا کہ عام الات 
عل ا نکو کی پاتا پا سج إلا یہک كول بے نیپ مول ہو ضا پیٹ سے اب آ د یکر عر اتا رک صرف بنيان 
يك كباج رجاس باج تماد سے ظاہر جك ايها في كنا ایک كو ہین کیا صر ف اک شی یباندھ رو 
ناف سے کر كت ےکک آل ہو ياج پھر جار سج ميا لس میں بھی جائےء دوس رك جلوول ير کی جا قو ظاہر 
ہے اجها نب سککامردت کے فلاف ہے۔اس لے ایک ديك ا نكو يان ضرورى ے إلا یک كول سي كلف 
كا مدت و نؤ وبال اور بات ہے۔ ايك چگ للبہ ہے ہیں وبا لکپڑے بھی وو سف پڑت ہیں کربت اجا رکر 
کپٹڑے دحو دس ہیں یا صفائی ےےل میں ہیں اجج ب کک مہ سارا تمل پو را مل مو تاا ی وف تک کر بد اجار 
كر جر بھی ر ہے ہیں فو ا سک کنیا ہے جہاں عر 8اس مر کل يمرن حی بک بات تھی اتی ہے وہای اس 
سے سے وھد وہ اين 


چھاناضر ورك ہے وہا لکسی در سج بی شر يدت بھی چان ےکا تاض اک کی ے۔ 
یھ حت اريت مو تے ہیں جن نکو چم اناد ب کا تقاضا مو ما ے مشلا س ركو يجعيانا خا طور بر نماز کے وقت 
س کو چپا کیو لك ناز کے وقت انا نكو مل لپا ی کے اندر ہو نا پا سے اس ل كم الہ تھا یکا ار شا ے: 
خذوا زيستكم عند كل مسجد“ اذ نت تب ن ے چ پک آوئى مل لياس کے ار ہو۔ اس لئے 
نما کے وقت انا نكا لاس كمل مونا ياست اس کے اند رکو یک یں مول جاہے۔ بر حال یہ تفصيلات 
فتہاء نے اي جکہ ب بيا نکر دک ل کین ےکا قد ہے ىك لبا لكلو لمن مقصر اور يبلا اصول ہے سكم ووساتر 
ولك مہ مات ہو ناو ”وب کے درج یں ے او ری چک مات واا ياب کے ورج یل ے۔ ۱ 
تنم کے لبا ںا لے میں جو ایا صو ل ب لود سه بل ات ے اس وجح وو فلاف شر یع تکہلائیں گے_ 
لہا كبو نا ہو ےکی و چ سے اتر ہو ا 
(-.......-.وه لباك جد يحون ہو ےکی و چ سے مات خی عشلا يك يت مو ل جس مس دح ران گی سے 
اور ضفیہ کے فز ديك م ردک ران بھی ستر میں وال ہے قور لبا کی سات كل اس وج ےک ہے کچھ و ٹا ہے مہ 
ماس اس اصول کے نہ ہو سك وج في راسلا ی ے۔ 
)۳( ےت دو سر اوہ لاک جو يتلا ہو ن ےکی وجہ سے يسائر ہہ تم چیا كأكام تہ د »اتنا ياريك لبا 
پہنا ہو ا کہ اس يل سے م صاف طور پر تق رآ ر باج فور یبال نہ مو نے کے باب سے اس کے مہ کی غير 
اسلائى لپا ی ہے اس میس ير دودر سج ہیں الیک در جہ ان تصو ں کا ے جن نکو پچھانا ض رو رى سج جیی اک مره 
کے لے ناف سے کک تل اس کے عم میس کن ہے باق ے کے کم ںای کن یں سے بس ع کو 


یکھال اور دكت نظ تال آنی بل نکی بلس نے الكل نا از بل ىہ اس تك بات سے جس کو ینا 
ضر ور ی ے اور ہہ حك جیہاکہ يبل نے عر كيال مرد کے سم کھوڑے ہیں اور عورت کے لے زیاذہ ہیں 


(ا) سور الا عرا فآیت مسرا سو ركورع ٢‏ 


ہا ۹م ع 


یں جديا كه ار ہا كر میوں میں تش لہا ی اريت ہوتے ہی ںکہ اس میں بازدوغیر ہ نظ رآتے ہیں۔ جتے 
صے بیان ہو ی ے اننا سم فو نظ یں آ اور بال نظ رآ تا ہے ليان بہرعال آد یکی کے ساعن بالك یکر مد 
اتارک چلاہاے لو ٹس روہ باجا تا اس ط ریہ تال جما جات اس لئ رطا را كل كناش 

يل ان پا سنال دج مس تق الود دودر ساس ساوت کے 
عارش موا 

وو لياال جو چت ہو سف كل وج ے سارن ہو ا 
(۳).......... تی رالاس ج چست ہو ےکی وج سے ير سار ہو ء اس میں مرو کے لے کم نیہ س ےک أكر 
متو ر اخضاءاور صو عل ا عضاء پر لہا اننا تك م رک تع کے اس تح کی <كاييت مو ری ہو ء حکا بی تکا کن 
US‏ ری ور EL I‏ نقرآپو رضم یی 
تم رکتاہے۔ نای طور را جیا کے ساسشت »نا مرم کے ماسے ہنا حر آل ہے بظاہ رلو رشحم ای نے ایا موا 
ہے ا کاچ رہ کی چیا ہو اے کن لہا ی اننا چست يبنا ہو ا ےکہ حم کے اخضاء ناص طور يجت نکی طرف ٠‏ 
طجتکامیلان ہو تا سےا نكا جمامت دا ہو ری ہو تہ گور کااسلای لياس یں ہوگا۔ شر يمت ا کو 
اس رع کے لباك اجازت نمی ديق خاص طور پا کی کے سات سک كو كبق سے میس نے پد کیا ہوا 
ہے با تھ مھ چیہ ہو ہیں بال کک ج ہے ہیں رہم يتداس لیکن جو جز نی مول سے ودای 
ست س کہ سن کی وا طور یر نظ رآ أدبا اور پیٹ ىوا لطر وو هاده بھی واس طور 
يدل دس يل ی کن لای لاہ 

لبا کا يبلا اصول ہہ مدال سا مو :لباسا يُوَارِى سَوْ تنكم وریشا۔ اور غير ہار تمن طریقوں 
حبنت e‏ ل ےھ ری یت بس تھے حر ۱ 
ES‏ كال ایک بات كيال جا توو لہا شر يعت کے مطالق قال ر ےگا 


وو راا صول:- ) 

لبا كل با کٹ ز ہت ہو ...... لبا یکاد وس راا صول ہے كم وهباعث ز يعنت ہوہ قرآ نکر بم 
میں الى اصو لکو ييل اصول کے سا ت بيا نکیا ے اس لے ا لکو يبال اس کے سا ہے ذک کیا جاربا فرمیا: 
لباسًا یواری سوئتکم وریشا۔'' اس سے معلوم مو اک لبا لكا ایک مقصر ز بیعت کی ےک لياس مین 


(ا) سور الا عر ا فآیت ر ۵ ل رکو رمم 


عا ہے٣‏ تج 


لاجم اکنا ے اکر بخ ر لبا کے ہو آ دم ای نمی كنا تسد ری 
578 ہہ ہہ" ادق الل كر ہن بن نے ملا فرح ر کر ین وي فين 
گر اا ماھت سی نم اود باج رد پا لول و جیپ کیا کان ہجوز ما امن 
كياب الگر با جب قذي لاس قائل ترک ے اس لئے ےگ انی عن رف من زیت کاواد ل ورج مر ا فا 
ھی کی پایاگیا۔ 

ر تاکز ت مطلوب مو نے میں تیش .ریہ ئل سے پو ھک لان مین 
زین ت کاکیادر جہ ے۔ زیت مطلواب ے یا رک ز ینت مظلوب ے فو اس يبل إظطاب رنصوص میں ہے تارش 
نظ رآ ر اے اس ل ےک نض نصوص ے پت چنا ےکہ لباال میں ز بیعت مطلوب ے جیہاکہ ہے آی تک 
لبا كاايل مقصر ن تہارےسو۔' ت س چا ےکی جکہو ںکو چم جاے اور دوس راقص ہے س كل یقت 
كايا عث ے۔ ای طرررح ضور اقل صلی اللہ علیہ و كلم نے ایک عد یت می فرمایا كم ان الله تعالى 
جمیل يحب الجمال الحدیث 2 

حضور اف رس یی نے ايل رجہ مب رکی نمت بیان فرمائی اس پر ایک آدى نے سوا یکی کہ با 
رسول الث آد ىكادل ياتا كال كر ایگ ہوں اورا كاجو ا اسم ہو أو ] ل a‏ 
زی کن يلل الت تحال ور بل شن ادرال کو ند فرماتے بل اش مر ایک آوى تضور انز ں سل الث 
علیہ و سل مکی نفد ممت يبل حاضر ہوااور اسل نے اہ گیا لال پہنا ہو اتھ تو حضو ر اق س صلی ابد علیہ و كلم نے 
ريك ہا ے پا يت ال ہے ؟ ی کہا مكاءال ے درام ددنانی کی ہیں ريال بھی نل اوتف 
بھی ہیں جو یھ اس ز مان كل ءالدارى کے لوازرات حك ان کے باد ے مم کہ اک مر ے پااس موجود ہیں- تو 
حضور اقوس صلی اٹہ علیہ و كلم نے نراک جب الث تال اين سیا بندے پر انا ھت نال فرماتے ہیں تو وو 
ياست می ںکہ الد تھا یک ق کاش اس پر اہر بھی مو دی یس بھی ہد کہ القد تائ نے ا لوي 
دس ركه اج اللہ تحال نے آ پک بہت ين دیاے ليان ديعن می مو کلت ےک كزكال ے اور ا کی ايل سے 
مز دور یکر کے آدبا ہے مہ بات الف تخا یکوین بال ہے۔خو و حضو ر اق س صلی افد علیہ و لم نے لت را 
ز ت کے لے اغتيار فرماۓ ہیں ہنخ سآ پکوزیادوبپند ے آي ضر سز ان نک ج۶ 
)١(‏ مشكاةا صا لتاب الاداب پاب الغضب والَلير رج ولگ رض سو م 

(۴) سنن الى داؤ ناب اللي باب فى لقان و فى ل لشب رح ۲ / ص ٣٢۷‏ 
(۳) کے مسل ماب الا باب فض لبس الوب اکر , رخص ۱۹۳۴ 


0 


ra‏ بج 


ای طرں تل میں آ تا كر آ پکو سفید لہا پیند تھا9 ے مض لباس آ پک من ے زیادہ 
پند تك جو پند كال وجا ےکہ اہر وواعك لكت تے نا ضكر وو کے لئے حضور اق رس صل الثد علیہ 
وم زیت اتقیار فرماتے تھے چنانچہ امام بخارئ نے ایک تقل ياب قا م کیا ے: باب من تجمل 
للوفود(؟ کہ وفر لے کے ك آرے مول لوآ وی جمال اور ز ینت اغتیا ركد اور اس باب شل ہے عد یٹ 
ٹپ یک یکہ حضرت رر خی الث تحال عند نے حضور قرس صلی اللہ علیہ وسلم سے ما یاکہ فلا ںآ وی بہت اچھا 
جب ار ہاے آپ ا کو یر حت حال وفود جب لے کے لئے آي اكيب و آپ ا کو يكين لی اکر میں تضور 
اتر س صل ابش علیہ و کم نے ا کو یراتو ثيل اس ےک وود کا قاور ر سم مرد سك ك علال ہیں _ 
بر حال اس ے ہہ ضرور معلوم ہو اک 1 خضرت صلی اللہ علیہ و مھ کے ر ایح تاک دفو کے لے مهل سی 
باس رکھاکرتے تھے ۔ائس طر کی بہت کی احاد بیث اس باب میس بھی سا لكل جن ے معلوم ہو جا کہ 
لبا ل کے اتررز بیع مطلوب ے۔ 

0ص 08" افو خرن آل ہے جناغيه اس ياب یں صف 
سرد حاير احاد مث 1 سيك خلا حت لامر ی اللہ على عند سے روایت ےک رسول الع صل للد 
علیہ وم نے قرا 

الا تسمعون الا تسمعون ان البذاذة من الايمان ان البذاذة من الایمان - (رواه 
ابوداؤد)20 ک تم حلت تثب سکہ بزاذ نتن سادك ابمان یں سے سے ن سا دی ايم نکاتقاضا ہے۔ اک ط رح 
رسول الثر صل انث علیہ و سکم نے فر اياك جد سا وال لياش چو ڈ د ے حالاكله واس پر قاور تايان مض 
فو ضع کی وچ سے امن نے جال والا لياش موث دیاء عر ت والا لياس يمو ديا ایند تحال سکو عمز تکاجوڑا 

يبنا بل سل : کساہ اللہ حلة الک ر امة © اس ل ز ت وال لبا كو لكر کی فضيلت ان ف رای 

حا ارا لقا يع ا ل سن لاي عق و ارال ارك ليقت اي 
يتنك یات ہے ےکہ ان فصو ص كوك ب کیا ہاسے۔ 

مش اک رز یت مطلوب ے فول ج ر کک اکر سا گی مطلوب ے ت كل م دک اکر ز ہت مطلوب 
ے تكن صو ر تڑں میں گر سارك مطلوب ے وکن صور قؤل میس ہے بات بیہال تقائل ور ے_ 
0( کچ النفار ىاب اللباس باب الفا ب )لح ض رح م / ص۸۷۷ ینا ناب لا باب نارين" 21 
(۴) بغار یک تاب الاداب ياب من مل للوفوو رج ۲/ ص۸۹۸ 
(۳)مف السا قکتاب تپ س ا فصل ان رح ع / ہے ٣...(٣)ایہا‏ 


#8 L4 ¥ 

زاة (سادك ) کا ێ:- 

اس سے پلیہ بنیا دک بات ىہ ذ جن بل رکش اکا یا اللو تيد لدت 
نات ی ایک آدى ميلا یلار جنا نظا ف كا متام نی رکتا بد ن او رکپڑڑو ںکوصاف سخ را نیس رکتا ہے 
مادكل نیس بل گند ای ہے۔ باذ سے ہہ مراد نیل ہے لله يذاذة سے مرادي سك صاف رار تاے ٠‏ 
ینز نت اور آ ران کااجتمام خی ںکر جا_اصل بات یہ ےک نہ فو مطلقاز یت مطلوب ے اور تہ بی مطاقا 
اذ ة لله ز بیعت کی لن عالات میں نر موم ے اور نف الات بی گور ے اور ای طر بلق سے با بھی 
نس حا لاست کیل مر موم ے اور نض عالات میس مود 


زيشت نم موم ہو ےکی صورتیں:- 


ز ینت ايا رک نابہت پر اے۔ 

(۴)...........کوکی آدى کل کر کے اس اند از سے ز یت اقتا كر تا سج كم اس شی بہت زیاد ہا شاک 
ہو جاجاے اور مقاصد سے تھی وور ی اور غفلت ہو چا ے لور بھی مطلوب ہیں ز ینت نے مطلوب سے 
من امام ز ینت اورز منت میں اناك مطلوب ں۔ چنا نيد جہاں احاد یٹ می ہے آ نا ےکہ اث کو 
دوست كنا یا کے سر کے باون شر یکر کے بھی جافے :با و خی و حرس جو قل جو نے بے 
دبال اعاد نی عل ہے ھی جج ےکہ سول الثد صلی ال علیہ ولو کم نے بے بھی فر يح یکر نے میں 
بھی بھی ناظہ ک یکر يناما کے ۔ ۳ 5 : 

ا قل ان قن مر کو شع قوف مار 
ہے ہرد در ومنٹ کے بعد ٹا یکر اپے آ كود رس کر تا ے او یز ینت نیس يله ز يهنت مس اشہاک اور 
تق ےب مطلوب نی بأل بر موم سے نا طور پر مرد کے لے فو کسی بھی طرعدرستٰ كاد 
(۴).......کوئی اي كته ال سے بو كر ز ینکر جا ے نتن تی .الى حیثیت ے ان سے بڑ ھکر ز نت 
اقتا رکر تا ے فو مہ بھی پند يده تيل اس ےک ہے نت دف اسراف کے اندر وال ہو چاجاے اور دو سراي 
کہ اس سے ابی حيثيت سے زیادہ اہ رکر ا قصور ہو جاے اور ہہ كيش يده کیل ے۔ 

ال کے پوس ٹوس عالات میں ز يعنت مود ہو لی ے۔ 


(۱) آ کے ياب التر ثيل میں حط رمت عبد ارش بن مففلر ضی اہ توالی ع رک عد عث آ ر ی ب :نهى رسول الله ع عن الترجل إلا غبا۔ 


grr گا‎ 


. گا و رہ وہ 
قن تھا یک نمت کے اظمار سے ےر انا ٦‏ 


ظ (.........کوئی آدئ قن تو یکی فقت کے انار کے لے ز نت اتا رک تا ہے اوري جات عدیٹوں کے اد 


اندر آل سب كه اش تال یہ چا لكر جب دہ دس پر انعا م كريل قایس بر الل کی تحت کاڈ ْ 


ر7 ے۵ ال تھا کی فقس کے فر سرافل ے: :اما بنعمت ربك فحدث ۔(۴ ل اشرقال -- 


ل نت کان ردنا ن ا کی ر ان کے ع ےن رن لنت کے أرق 


' کے ل سے ی بن جك ا کو ال قال نے ىہ قت خطاظربائی ے۔ فرض کی اپ ےک یکو ایک 


بت مکی پچ د ےد کاک ير بہت بڑااا نک دیاادردہ ہر ایک آدى کے ساےے ظا رک جا پھر دبا سب لم 
فلال آدى نے بك پر احا نکیاے۔ لو زيان سے ب نبي ابعل میں ا نک پک ا شل رگزار ہوں ليان 
ال ے احا و لام می ورفریس تاجاتن ج>_اى رح الشد تھی نے جو تمت عطاك ے 
ا كو ظا رکر با کی تھ کا شک ہے اور جیماکہ می نے ع رت كيك زک یکر بھی ذ ان سے ہو جا سے ۱ 
او ربھی ل سے اشر تیال نے ا ھی مائی حییت عطا فلب قاس کے متا سب لباس بنا ا کی 
مت کاانھارےءاس میں شر بھی تیت ہو عق سے تاکر اس ه نيرت ے ز منت اتارک جا ہے لوپ 
ر ز بیع مطلوب اور لصوو 
(۳(... 0 اد سی AL‏ 
زر ز ینت الل لے انتا رک ماي ماک ہلوگ يح فقي ربچ كر حاجت من كج کر کد ی ےکا تام نہ رک رىی 
رکا اس سے اس لے تا ےک مر ڈیا باس می طور ی كتيل سوال نہ بن جا سل : 
كام المت حر ت تقالو یں سف ري جانے گے او رکپڑڑے ہو ندوانے ين ہو سے تھے اور لی 
ل جارے ے جہاں بے بڑے ریسا سے سا ماک رن تھا۔ فو خضرت نے فرمایاک ہکوئی جو مر شی مھ ےکی 
فرق پڑ ےگا ءگھروالوں ن ےکہاکہ اك آپ اپچھالباس با نکر ہا یں کے فق جن کے ہاں آي جا چا ننکوہے 
کر نيس مو ىك حر تكويك وہنا چان ء اکر ديل گے تو نض اهار بت کے طور ير ديل کے اور اکر ال 
رکا لبا یی نکر جا نبل کے قو ہو سكت ےک لوک ب بي ںکہ مال عالات درست ال عا لوج سے 
دد سے ےکی زیادہ لگ مكيل سل فو ضرت نے اس با تک يسنم فرمیا جنا يه وبال اسيم لياس يبز کر گے بر مال 
مقصر مقصر ے فرق پڑچاتاے۔ 
(!) سنن اداو رتا باک باب ف لقان ون لال ب رج 7ص ع )۴(....٣۰‏ سور ةاضق بيت نر۱١‏ 


تطییب تلم کے لے ز نت اغقيا کر نا 7 
)۳( ہے ایک آوی اتا لياس يناس مطیب قلب کم کے لے اس لے يبنا سے کہ دوسرے 
سلا نكا دل خوش ہو نل کسی نے اھا لپا ی بد ے یس دے دی کرو الوال نے ات كيرا سلاد سے با کی 
دسے۔ا بار ہے ل پت تا نکی ول شی موك اوراكر پت سے نوا نكادل خوش ہگ توا ہے تی ی کارل 
خو شکرنے سك کہ جک ب احا لبا وک ھکر وہ خوش بہوں کے ا کو ا چا كه كا نواس مققصر کے لئ اکر 
کو ز نت اظيا کر جاه لوي بھی موده 

اس کے بر تمل باذة لور سادگی نہ مطلقا يز موم ے اورت مطلقا مور ہے بك ينض حالات یس يذ موم 
ہوی اور تمض حالات میں مود سهد 


زازق (سا 1 صو م موه کی ضو ل ات 

)0( رکز بیت کلک وج ے i.‏ كول آ وی ےک ز یت کش كلك وچ كرح 
ےب الد تعالی نے بببت یھ دیا ے ا نجوس اتناس ےکہ ا سے اور کی ر کر ےکا صلہ کل سے اور کے 
را ےکہ یش نے سادك اتی رك کے بو اکا لکیاے يكن ہے سادگی مطلوب کیں ہے۔ ش 

)+( ا م وج سه کر كول آدى ز بین تكو يج وجا سے اور بظاہر اوی 
نيا كر جاے کان ا سکاغغاء حل سستی ہے يتيده خر کر ےکا صل فو ے يكبن تی کاماراہوااییا ےک . 
کی دن کک یڑ ےی ت بل یی ن ین مل 
اس کامفخاء کش سق او ركائل ہے۔ مہ مادگ شرا مطلوب تيس سے اس ےک سق شر ماز موم سے :ان 
الله تعالى یلوم على العجز "© کہ اللہ تعالی ی کا اور عاج ىكونايشد فرماتے ہیں اور و خوش ہو ے 
یں ہو شیا ر اد ر حط بے 

)شرفو آ دی سا کی اخقیا کر ےگ صت شی کی و ج ہے هرات یکھڈیا ہے اہر ہے بے 
كز ینت بھی مطلوب اور مور میں ے_ 


زا دی تو ل ضور ن 
0 کسر بض عالات میں سا گی اتتا رک جا ے اس ل ےک ا سكل نظ ایی مقصد ير اس طرح کی ہو گی 


(1) سنن الى دلو لتاب النقمناء ياب ال جل “كلض على حقد ع۲ / ص ۵۵ا 


کچ ۵ے ہچ 


کہ اسیا بز ینت کی طرف ا لکوت جہ ہی نی ہہ کی ءاش کی ياد ٹس ایا نہک ہے علم می ایام نہک 
۱ اس جم طرف جع لل يولي نس بهت _ 


وپ لوب سس ا آیاے: و تحت 20 9 وش ۱ 
کی وچ سے مال اور ون تکال اس مچھوڑخ سے اتیاق اس کو تیا مت کے دن عز ت كالبل يبنا بل ك- 
ما کل ب کہ ز ہیقت انا ركد نے یاساد کی اخا رکر نے مم ل كول موی فیس سکیا جا سکس بک اخ س 
اور حال کی وج سے عم برل جاتا ہے۔ لع عالات میس بض آدمیوں کے لئ ايك بز مطلوب ہو تی سے 
ین دی جزدوسرول کے لے دوسرے عالات ل مطلوب نیس ہو ل يكل بض او قات نر موم مول ے۔ ا 
7ت خلاصہ.....اب کک لاس کے ھان دواصول معلوم ہد کی ہیں :ہلا اصول جم تق ست يجين 
دوس الصو لز ینت اس سے تیر ااصول خود ہو د کیج میں آگیااور وا گی سج 


تنسرااصول :- ظ 
ارك کے لبال کے اندر سادك بھی شر امطاب ہے یہ سماد ی بحت ال ككل پار دوسا 
اور تیم ااصول متعا رض نظ رآر ہے تے_ 


جو تااصول:- 
ظااٹ کر اوري اصول بھی انی سے مم جلنا ےنات بھی ش ريدت مس مطلوب ے اور اتی 
مطلوب ےک حضو راز س صلی اللہ علیہ و يبال تک فريك اہی مرول کے بابر کے حصو كو بھی 
صا فكيا كرو -”" جب گھروں کے سائے والا حصہ باہر والا حص صا فکرنا مطلوب سے اس مل نظافت 
مطلوب ہے تك مك اندر ظا ت اط ربق او لى مطلوب م وگ اور ج بك عل نطات مطلوب ے قو لياس میں 
ليلدك رجحب لبس کے انر رات مطلوب سے جيل رق ول طاو ب بوک 


طبار ت اور نظظافت :- 
يتبال ياد ر کے طبارت اور نظا فت دہ الگ الك جز يل * ہار ت کا مع کہ تم یاپپروں یہ 


()مككا ا لما اتاب ال لان رح م / ص ہے ۳ ...(۴) چائ فى الواب الاداب باب ماجاء ق النظا فہ رع ۲ / ع ١‏ 


کوئی یاک نزت ہو اور خطاف ت کا معنی ‏ ےک كول ایک نز نہ ہوجو نمراق کے خلاف کی جا ہو اکر چ وہ 

۱ پک ہو مشلا كر دوغبار ی ہوگی ہے گر دو غبار یاک جز س ے کان صفائی اور سج رای کے غلاف ہے 
كول پر سال نگر اہو ا سے کان پھر ک یکپٹڑے جب مل ثيل سے بیوں دی ملنگو كل طر پھر را ہے مہ سان 
تاك تيش لین مرائی کے غلاف ہے۔اڑسی چ زو كوزائ لکر جو ق راک ی کے خلاف موي نظاافت ے 

اور ثظافت بھی موب ہے۔ اب شر یھت نے عم ديا ے کہ لیس دن نك ارك ایک مرحي اخ كان 
واجب ہے اور اتر ہے ےکہ كف یس یایند رہ دن عل ایک مر کاٹ نل ء اک طررح نسم سل حض حصوں 
کے پا کا ےک تم دیق یہ عم نظطافت کے ك ے اس ل ےکہ اکن خو كو تبي سکیا ےگا نون خنوں کے اثر 
یل جم جات ۓگ اکر بخلو وغیرہ کے بال صاف تی کر ےگا تو ان مج لگن دی بجر جا ےگی۔ اکی طرح 
قرآن ياك ل 1ت ے:وَاذِ ہتلی إِبْرَاهِهمَ رَبْهُ بگلت مه -” اور اش تعالى نے حطرت _ 


١ 0‏ اقم علیہ اسلا مكاجن د كرات کے ذر بی ان لی دكن اال کے ذر ہی اتان لیا؟ ان میں سے بض 


احكاماتك ابض روایات شل تخيلا ذكر آیاے اور ان نل سے مضل احكامات ابل ہیں ج نكو شي یکر يم لى اده 
عليه صلم دن سفن الف کہا ے نشی فطرت کے طر يقد غطرة کے ط ريقو ںکا مطلب ان شاء اللہ باب 
ال ڑ ھل عل عد یث آ ےگ اس کے تحت بیا نکیا جا كا- سفن الفط رق عل يا خضرت ابراتيم علیہ السلا مکو 
د ہے جانے وال اکم می ل الب رام بھی شائل سے ین ایی جهو كود عونا چہاں شل عام طور پر زیادہ 
بم چا ہے اور جب تک اجتمام وبال ے می لکوت الا چاۓ نہیں کن _ جاک اگیوں کے در میا نکی 
يلون کے نے اجنو نك جل كحله کے ہی کی بلا ا کی جيل جا بك ہشن س بک کے اور 
اتتام سے وبال سے کل کو کال جاۓ فو ہیں گنان س بكو و ہو نے اور اتتام سے صا فکر کو 
حضور صل اللہ علیہ و ا سفن الفط رق سلس رار دیااور ہہ ان حصو کی اجام شل سے ہیں جن نکیا حضرت 
ابرائیم علیہ اللا مکو خی طور پر حم دیاگیااور جن بر خضرت ابر ایم علیہ العلا م نے بو رالو داع لكر کے 
دکھایاادر ا لك وج سے وہ اتان ش لکامیاب مو ہے۔ 

کہ ایک اہم اسلا سنت خت کر نا ے اورت میں چو تس میا نکی كك يل باب ات 2 
كان نل سے اہم كلت خطافت سے لین اکر تہ نی کیا جا ےگا کھال کے اند کن ری اور ی پیل جع 
ہو جاۓگاء صغائی اہتمام سے نمی موك ءا كما کو اجار نے کے بعد صفائی سای سے ہو جاسة كي جنر 
یں عرض ہیں جن سے پ کب تو مع ع ور بی یت 


)١(‏ سور ابق رآ پت راآی تب م۱۲۳ 


ظ 
کہ فظافت بذاذة تن سا کی کے ماف تبثيل ہے اس لكك سا دگ یکا مق ترک ز نت ہے ترک فظافت نين 
ات مطلوب ہے ہاں ال بض تنحم ص عالات می فظادنت کے اس حم سے اشام ہو سک کہ ان یں 
آدى يي نیف بھی ر ہے تب بھی ا سک وکال مھا جا مشلا ايك د کسی ای مقصر مل تاشر یرانک 
دناسي کہ اسے پت تی یں چات اکہ مر ےکپٹڑے حي ہو کے ہیں یا مہرے شم ب كول اس عر کی چ گی 
»ل ہے اكوا كا احا می نیس ہو اہن متقصد می ایہائن ہے فو یہ برا ٹیس ہے ججی اکہ الام مر کے 
بارے شل آنا کہ دوپڑ ھن ےکک مل اريت نہک دست ت کہ ا نک کہ ہک كيس تب رب لک دانے يق 
ےک ہک۷ کپٹڑے تبد ب کر وا لت وکر لبت ورت ہک یکی و كز جاتے ا نکو خيال ضہ مو تاکہ عل نےھکپڑے 
2 رن ہیں۔ لیکن ىہ ستی او رکا یکی وج دس نيش قراو قن علم شل اینااضماک ہو تھاکہ اث ل یادی- 
تین ز ہت تھاک ہکپڑے بھی تپ دب لك نے ہیںہ فو مہ برا تيل اوداك حار ایک عد بعش سے موقا کہ ٠‏ 
حضور اق رس صلی ال علیہ و کم نے فريك ایک دفت ایی ناک آد یک بت رين ز ند 00+27 
نو ےکہ آوی تھوڑی ى ريال ےک ری غاد و یرہ مل رہ پڑے آبادى سے الك تحلك ہو جا دبال ب 
عبد تک جار ہے او كيال کے دودح ب كزاراهكر جار ہے حطی ياتنه الیسقسیسن ”© يهال ت ککہ ای 
عالت یل ا کو مورت جاع اور ووسر اوہ تل مو گاج سار سه اق یکو شفط عكر کے (جن نعلقا کو 
مر کرم چائتز ہے )اور آبادى کے حيفرول سح تك كر ايخ آ پک جباد کے -ك وق کر ے اور پر 
وت دہ ا كام سل لار ہے۔ ال آد ىاو صف بیا نکرتے ہو ے تضور اتر س صلی اٹہ علیہ و سلم نے فرمایا: 
أشعث رأسه مغبرة قدماه "سر کے بال ب اند وہیں اوريال غبار آلود هلي غپار آلورا ہیی كن 
کہ سال »اابتنام سي سق يالب ہے دو اہ ہے يله ال دج ےکہ داكا شی اس رح لا" 
ہوا ےکہ ال رف اسح زیادہ وج نیس م کٹ یا اسے سر زياد ہک نے بے ہیں۔ اس لوجت لا 
اما مک رتا ھی ہے تنب بھی ياول غبار آلود ہو جاتے ہیں اور سر کے إل پھر جاتے نبل اس طرح بض 
صوفياء کے بارے میں حا سك وه بھی لن او قات اس طر ہے سے ر سے تھے زياده صفائ یکا کی امام - 
ھی ںکرتۓ تھ و وہ بھی در حقيقت ای فو عي تک بات وکی۔ اع حال تکاان بر تلب ويا يكين ,صل مسنون 
طر یت بہر مال بی ے اور شر عا مطلوب مکی ہے عام لو كول کے لے عام حالاات ب لك دو ظا فت اور ترا 
کی اتنا مکی ۔ ۱ کس ۱ 
© مس تاب لاد ب ل درا جا سو سز :ص امم 
(۴) کی اد یکتابالہادبابال ردےنالفرونٰ تل انش رعا | م ۰۴م | 


ا چواں اصول:- 

۱ ا راف ے جنا کٹ EE‏ اق مم 
تر کر نجہاں نہد تا كول فا کہ ہو ہآ کے مقصر خر کر ناا ی سے معلوم ہواکہ ارا فکا مثو زیادہ ترج 
کن یں با فضول خر چک نا ہن لوگ زیادہ خر کر ن ےکواسرا کے ہیں عالا كد یہ بات نمی بك فضول ريج 
کر ناراف ہے۔ ال ااگر دا یک دو پیہ خر كرجا اور وہ بے مقصر سے فو دامر اف می وال ے اکر وو لاحو 
وي خر کر جا سے لین بامقعبد ے فؤوو اسراف عل وال نیل ہے۔ اب لبا شل اہر ہے ايك عد تک ز بت 
بھی انقیا ركرنا متقصودے اور اسراف ممنوع ے لیکن ىہ نیم کر :انی مكلك کون کی صو ر ت ز نت کے اندر 
دغل ہے او رکون کی اسراف می نواس میں ایک موث کی بات 3 جن شل تل دو کہ آدى انی حثیت کے اندر 
رچے ہو اور ۶ ف کے اناد رسج ہو جو خر كر جا سے وواسراف نی ہو جا من لای يران ہشیت کا آدى 
مو رأ جتنا ۶ كيك ماسجا كران زر كرجا تو وواسراف میں داخل نل ہے۔ اس سے معلوم ہو کہ اس را فک محال 
ال حیثیت کے لف ہونے سے کی بدل جا تا ےکی کے معاش رف مقام ور ست کے بد لے سے بھی بل جااے۔ 
ایک آدٹی روزانہکپٹڑے بد تا ے او كيرا بھی ا كا مامه جاسے او ركلف کی ہو گی سے است کی مول سے لیکن ہو کن 
کہا کے أن نط ۴0000 ال لبا ی يبن مول ءال کے تیار 
۱ کو ا E‏ آد یک حثي تک ہے پا كامقام ومر ت ہک ہے ادر وکام بہت کلف 

كد ےکر جا ہے اپنی حیثیت سے زا مد خر کر ےکر جا ہے وال کے ے دہ يكام اسراف ہوگا۔ 

دم المت خضرت تمانو ی نے ايك اصول بیان فرایإ ے وواصول بنيادى طور بر خضرت نے مکان 
و غير ميرك نے کے بارے میں فرمایا سے کین بر حال ا لكااطلاق لبا پر بھی مو سنا ہے۔ 

0 - صرت نے ف ريال مکان شس ببلاد د چ ہہ س ےک راق مقددہ نی 
رورت لو رک مو جائۓ٤ء‏ سر پا ےکو کہ مل جاۓ كر اور سر دک سے 200 جاۓ ہے درج یار 
ضرورت ہے اس کے خم را مکار كار تال لبذ ابي موم 0 
دو را درچہ ہاش ہب ووسرادرج أسائ کا ےک صرف ضرورت قى لو ری نکی بل 
آ رئش اور مولت بھی ل رت ہے مشلا مكان مس اے کی لوا لپیا راخت کے اور اسباب ہیاک لے ہے 
اتش ساو راش بھی برى نیس الث تالی اک کس یکو ہی وا کور احت کے سا تخد یر هناها جخ- 

ا ا تمرك جز ذاو اكش ےک مكان دب می اہی 
گے تو بصورت کے مشلا كان ينا کش ہو کن اس میں اسه سی وغی رہ کی لوال تو سانش بھی ہو ی ركو 


5 ۹ے ۲ جج 


رون کیا ظاہر ےک راش بھی ہ گی ىہ ول جز ب در مت ہیں۔ 

جو تھا ان 5 اص خ ‏ ال جد شی زم ے اور وہ نمال ےکہ خر کر ےکا مقصد 
ا 

تقر یىی بات لال کے اند كى جا ق سپ کہ ایک یہ س کہ ضرودت پو رک ہو جاه م هب 
جائے اور دوس راي ہ کہ وول پاش با بوت مو سر دلول لكر مك پناس او كر میوں مل يلكي يبنا > 
اور تیر ایے س کہ و ليا اچھا بك كام لیکن ىہ مقصد یں ےک لوگ خخ يك جھییں۔ کر چو شی بات کی 
کہ فاکش مقصودے تو مہ ٹیک یں جاک ہی جن چیزوں میں ےکی پر خر عكر تاے قو یہ امراف نیس 
ے بغر طیلہ وه يق حیثیت کے مطابق خر کر ے۔ اکر چو تے مقصر کے لے خر كرا سے وي اصراف سے 
کن يجمرب یکہاں اسراف ہو اا رکہاں اس راف نیس موا جتزوى محاملات می یم کر چات مشكل ہے اس کے 
لے بات وضروری ‏ ےکآ دب یکاخ داپتاد یی م اننا ونه ہو سل سے بی رت حال ہو او راکرد ہنی اصیرت نیس 
سخ آ پک کی بسرت دالے کے جو ال كرد هاور اپے عالاات اس کے ساس رك کر فيص کر وائے_ 


جم | صو ل: 5 

7207 تبر والا لبا ...... بھی لياس مل اہم اصول ہے اوردویہ س کہ گر دالا لاس د ہو كبر 
پزات خو انچ ا نم موم اور الث کو انچا ی ييند ےہ تو تبروا د كام بھی اللہ تخا كن ايند إلى طررح كبر 
وال لياس کی اللہ تنا یکو نلبد ہے۔ جنيك ماس اییے ہیں جن سے حضور ازس صلی الث علیہ وسلم نے 
ححضس کی رک وج سے مع فرمایا سے شلا نت صلی امن مل ےلگ ماشو کون سے بے 
کر نے سے مع فر مایا سج اسیا ل انزارا یک وکیے ہیں اور ا کی ایک بک وج مر ىك عام طور ير اس زمانے 
يل ايها برك وج سےکیاجاتاتھا۔ چنانجہ عد یل سل الفاظ آتے ہٍں: من جر ثوبه خیلاء لم ینظر اللہ اليه 
یوم القيامة © کہ جو آدى کب رک و جہ سے باكرا ماكر جا ے اللہ تخا یکی نظ رعل دو تیا مت کے دن اننا تقر 
ہو کک اللہ تحال ا سکی طرف نظ بھی نہیں فرب یں کے من رر مت تس فربانھیں کے مجن ا یکو ای 
نظروستكراديل كور کی کی عد یں آپ بعس کے تن سے پ بلج لهاك كب ركالبال ينديده لد 

كب رالاس دوط رکا ہو تا ہے ايك وولپاس جس کے يتن ےکا خا دی كبري ل كبر ييل دل میں 
پیر اہو كا ے اور دل می موجود كبر نے ہے تقاض اکیاکہ ایا لپا ی بن اكه دوسرول کے او پر کی اتی برن ری 

800 مل ملاب الاب اک پاب تی جرالٹو ب خيلاء رخ" س ۱۹۳ ۱ 


8 ۲۸۰ بت 


جما کب رکا مق ہوتا ہے اين آ پکو بدا جنا لبا بين دت ب كنا سك عل بڑا مول اور اپ نوا 
دوسرول ب اب رک یکر لعا ١‏ 
دوس رالاس كلب روه سكل گر پار یں ہوااور ييه سے ول میں موچوو کر نے اس لباق کے 
يجنا تفاضا فی سکیا يكن لباس ينث کے بعد خطره سك میرے اندر كبر بيد ادجاس گا اکر ہے ب لبال سل 
بو ں گا نو این أب لو رك حت لك جاو لكاءدوسرو لكو تقر كفن لک جات یں کاو بھی لياس كير بل وغ 
ہے انس سے مگ بپچنا چاہے۔ ا ب یھ لبال تو ایے ہی ںکہ ج نکو بالتحيي رت “ضور اتر س صل الل علي 
م کم نے ككبركا باس قراردیاہے ل سبال ازارو تیر ہا سے ہر حا مس بنا اہ اور اس کے عاو كوان ْ 
الپاس گی رکا ے او رکون سا کنل ہے ب رآدى کے عالات کے بدح ك سے شتف ہو ناج ایک 1 آر یوی 
إل برل نحت تفرد نوق لياس کے کا أدى يل نخاص لہا کے 
کیو جہ سے کر پیداہونےکاخط رہ ے اوردوسرے میں اس کے بيد اہو سف كاخطرء یں وہ رآ وب یکا حم كنف 
كا اك معاطات شل ر ہے ٤و‏ تا س کہ اپنے بارے مل اطاط کے يبل وکو اخقا رکرے اور دوصرول سك ٠ ٠‏ 
بار يبل تسن شن کے پو 35 


سا ثؤال اصول:- ١‏ 0 ظ 
ترک بال شرت کی ایک اور اصول جداى سے نا جا ہے دوي س کہ لباک شرت سے 
ےآ کناچا سے ایال پا ج سک دجہ سيا لؤشهرت مول ہو س کا مقصد شر ری اص لکنا ہوا سے پچناجاء ' 
فرق ب سل ييل اصول کا تع قکبر کے سا تی تاور اس اصول کا تحلق حب جاه کے ساتھ ہے۔ 1ك 
عد یٹ نشل 41 حضور اس صلی اللہ علیہ و کم نے فريك جد آ دی شہر کا لياس پا سے اٹہ تعالی 
ا یکو قیامت کے دن ذلت كالباس يبال سك :من لبس لوب شهرة فى الدنیا البسسة الله لوب 
مذلة یوم القيامة ‏ (ا یر )© شرت کا لپا ی دو طرح سے سا سے بھی قو لياس بہت اع لور اوها ہونے 
كاوج سے ٹوب شهرت ہو جا ہے آدى او تھا لبا ی ینتا کہ می ری شیرت مواور ل زياده ساد یکا لاس 
بھی شہرت میں داخل ہو جا جا ےکہ آدى کلف سادگی اخقیا رکر جا اور مقتصر ا لكاي کہ لوگ تك 
بدك ھی اور ساد یکی وجہ سے لگ می رک عز یکر ری یال وگ می رک سا دگ دي کر مہرے میقد ہوں 
اور یھ نر وثياز اور بد ایا تا كفا من ےلگ جا 50 ع گیا ٹوب شر 1 أله 


۱ LS ESL 


ظ 
7 رک اتنام ز ت مطلوب ہے نہ 7 كز بيشت :- 

ہاں ایک بات اورذ جن نل كال دو ےکہ يكبل ستل زیت کا آیاتھاز منت مويابذاذة اال کے پارے 
عل صرت تمانو نے ایک گیب بات بیان فرمائی ہے دہ ہے س کہ بہت ساد سے ال اللہ نے سا زک یکو اخقیار 
رای ےا سک مطلب نرک اہتمام ز ت ن کہ متام رکز بیعتء محمد یہ كد ز ون تكاا ترام تيبل 
کرت لیک نالك بير تنام کے ہوگئی اوی سے :یچ کی ک یکو نشل خی كرست ترک ز ین تکااہترام مطلوب 
کل کیو لك اسل ب سك ایک مم كاين اع مقاصد پر اظ رر بصن ی پا ے ت ا سکوز يعنت افقيار 
رن ےک یکو ششک رک چاسبے اودش بی تر کک رن ےک یکو ش کر فی چا بض او قات اتام تک ز ینت بھی 
شر کی طرف فی ہو جاجاہے اس لے ہے مطلوب ني 


آھواں‌اصول:۔ ٠‏ 
کبولت والا لیا ...... ایک اصول لبا كان سب کہ ليل می ولت ہو جو ات والا لياس 
بھی ایک در چ می مطلوب ہے اوز ا کی ناميه اس بات سے مول سك یکر مم صلى اٹہ علیہ وم نے 
أي كو ينه فر میا ہے ہیک الفصل الثا یکی بل عد مث شل آر ہے۔اس زہانے عل تی س کان نی مولى 


كالح تقر اسار حم جه جات تھا بے عربو لكا مو 


ضور بی کو أي بر ہو ےک وجوم:- 

حور صل اللہ علیہ وک مکو ٹیس يند ہو ےک کی دجھدیں: ٠‏ 
(ا)............ ایک وجي س کہ اس شل ست ر اور “م زياد كينا بضبت از ار اور ردام سك 
9 .......... وم ركاب كم ا شی مت پا کے 0 کو لت زیاددے۔ آدى اڑاراور ردام کے سا تج بھی سز ھی 
کے يان اس میس آر یکوذرامشقت اال دل ہر وتک خیالل کنا ڈت ے ج بک قيش میں !ہو لی 
تر مار تا چوک فی ييند ہون ےکا ایک دچ یے تھی ہ كه ال شل ولت ہے قؤائل سے معلوم ہوک 
لہا ی می سہوات بھ کسی در ہے میس مطلوب ہے اکر چ اتی مطلوب نيس جتن ييل اصول مطلوب ہیں 


| اہماضول:- 


يبال ایک بات اود جن میں ركب بتكام اريت ہیں جو حضو ر اق س مل نے بھی إجوار کے 


ےا rr‏ ت 


ہیں مین اس کے باوجو و ا سکی مطلو بیت زياده ے۔ آ خضرت عه ےکم اس -ك کے کہ ذیاد کر کا 
مو لح بال بلا وسال مهيا یں ہو ے اور مطلوبیت اس لے زياده سك 1 خضرت عا ے قول سے اسك 
مطلوب ہونا بے میں آنا سے نا 1 خضرت مکی ز نر یکو اکر ويل تو زیادہ سے ے کہ آپ نے زیادہۃ 
ڈعیلوں کے سا تیر استتبا ءكيا الى کے سا تیر استتجا مکنا شا ہکم لے اور ات بات سل شه کہ صحابہ یس سے 
اکٹرڈعمیلوں کے سا تيد ا سقتهاءكر سے تك الى کے سا تھے استت ار کیا پاتا تھاء تمل رياد ؤحميلول کے سا تھے اتنا 
مرن کا تہ لین اس کے پاوجودپانی کے سا تھے ست کرم ال ہے انل ہو ن ےکی ايك وج ہے سے کہ 
آ خضرت الله سے تقولا اسک فضیلت ابت سے اور قول فضیلت نہ بھی ہو تی تب بھی اك مطلو بيرت اس 
سك زیادہ سك عور ش بعت اس سے زیادہ ما کل ہو جا ے۔ شر لیت كا مطلوب نطاقت ےء ڑعمیلو ل کا 
یع متقصور ل ہے اور صفائی اور فاضت زیاد ہا اء با لماء س مول ے لبذ امو كنا کہ ای لكام حضور 
ارس عا کے ذا سن می لك م کیاکی مو بع دل زیادوردا گیا ہو اايجادتى بعد عل ہو اہو لیکن چ وکر مقصور 
شر یعت اس سے نز يادو ھا صل ہو رپا ے اس لے ا كل مطلو بیت زياد هم ویچ وک اس زمانے یس مہ تيل تھا 
اس لے آپ نے شي ںکیا یا مکیا۔ بچی معامل. تي كا 1 حضرت ہلگ نے قيش یی سے ليان ہو سکنا سے 
کوئی بی کے کہ آپ نے تيص كيب سے ازار اور رداءزیادہ يب نے ليان اس کے باوجوو تی سکی مطلو ہیی 
زیاد و ےکم اس لے ينك یکم ہ وی مطلو يبت اس لے زیاد+ ےک لہا کے متقاصد اس سے زیاو وع صل 
تے میں ستر بھی اس میں زیاددےءز يعنت بھی تال زیاددے اور مولت بھی اس میں زیاددے۔ 


لوار ر یکی سیت ادا گی سقیت زیاددے: 2 

بی معاءل شلوا رکاے کہ ضور اتر س تھے زیاد ور بات گے شلوار پنیا نا اک حط رات 
ريك کات ت کک 
نیت شلوار کے تيت بول نی كبر سی کہ ڈعمیلوں کے سا ھ امي ءكر سخ میس زیارہ فضياات ے سبت بال 
کے سا ته اميا كر نے کے اس لكك ايك تو حضور ار س موی کو شلوا رکا پپند فرماناخا بت ے اور شناد خر یدنا 
ھی ثابت سج او ظاہر جب خر دی موك یی کی موك لین یہر مال بی ہک تج فيل ہے۔ ئی بھی ہو 
کین بھی عار اور ووسر ےہ ےک شلوا ر سے لباک کے مقاصد زیادولو رے ہو تے ہیں سیت لی سے کیہ انس یش 
تر بھی زیادود ےکہ ہواسے ادر ادھر ہو ےکاخطرہ نیس ہے اور سو لت کی زیادد ےکہ ایک مرجب یی كر 
س رہہ ہج , 0 


حضور اق رس صلی اللہ علیہ آل وسم نے گی زیادہباند می سے ايان اس کے پاوجود شای یہ لئ لا 
اتلك سد می شلوا ريد کر ے۔ 


وال اصول:- 

تشبه والا لپا ...... لبا سکاایک اہم اصول ىہ س کہ اس یس تشبہ تہ ہو سك اليم لبا لات مو 
جس کے فرع آو یی کار توم جبيها جن جا اور ربكن یش مہ گ کہ ہے فلا قوم سے تلق رکتاے۔ 
تشبه کی لبا کا ایک اہم اصول ءال میں دوفوں یہلو ہی کہ ايك ل وكول کے سا تخد تشبه مطلوب ے۔_ 
انبیاءہ اء کے سا تخد لپا اور ز نت يبل قشبہ اقتا رکر نا صو ر _ء انبياء کے سا تیر خصو صا ضور اه ال 
صلی اوند علیہ و كلم کے سا تير ى مشا بت زياد هكد ےگا اتتا تی ييند يده ے اور دوس را يلوي ےن له 
وگول کے سا ت تشب نے موم سے كفا کے سا تھ تشبه زياده باج ء فساق اور اد کے سا تج اس سے كم برا 
سے ونير« غير ہاور اک طرر تشب يل تمض اور نز ہیں خلا ردول کے لے ور قال کے سا تمر تشبه 
اور کور ل کے لے مر دول کے سا د تشبہ نم موم ہے۔ بہر عالتشبہ “یغ لج تكاايك اہم اصول ے 
اود ال کے پارے میں خضرت ابن رر سی الثد تخا عن كل صد یٹ شمو ر ے جآ کے آراق ےک حضور 
اتر س صل اللہ علیہ و سلم نے اراد فرایا: من تشبه بقوم فهو منهم ۔ا کہ ج ٢ر‏ کسی قو مکی مشا ہت 
اختیا رک تا ے فوووا ی میں سے اجا كااوراى طم رح حضو ر اق س صل اٹہ علیہ و “مكار شاد :لیس 
هنا من تشبه بغیر نا -(© کہ جمارے فير کے سا ہے تشبہ انا رک ےوہ ہم یل سے نہیں سج 

نكل نض لوگ ہے غاب کر کوش کر نے می ںکہ تشبہ اسلا م كا سيل یں ے ری 
ے تشبه ہو بھی جاۓ لوال ےکی لمکا فرق شيل پڑتا۔ اي لوگ اس طر حکی احاد یت ب يب کلام 
کرت ہیں لا ضرمت این رر ی الث تخا لم عن كل اس صد بی ت کی سند بر اترا کی گیا س کہ اال کے ایک 
راوگی یں حساك بح عطيم ود ال صد بی كور وای کر ر ے ہیں ابو یب سے اور حساك :ان عطي ہکا الو زيب سے 
ماع خابت تل ہے اس لئ ىہ عد یٹ سند أ ہج یس ہے يللد اس مس انقطا پیا جا تاہے۔ ا كاجو اب ہہ ہے 
کہ ادلا ےکنا ہی خی سب كم صان بن عطي الإو یب سے سار خابت یش ہے يلل محد شین ن ےکا کہ ان 
کا سعا ہت ے۔ 
() جارح 2ن تاب الاستيذ ان باب ماجاءث کر لجسي اشار 5الیر السلا م ح۲/ ص۹۹ 


دوس ری بات ہے س کہ ىہ عد یث خضرت این رر ی القد تخا عنہ سے تى مروى ثبل ے بن اور 
بھی تعد کا ہہ سے مر وک ہے ملا خضرت هذ ايف حط رت ابو ہ موہ خضرت الس ر ی الد تال ہم سے بھی 
بك عد مشروای ككل ےا نکی عر ثيل جعت ابن رر سی الد تخا ع ہک عد بیث کے لے می یں ۔ 

سب سے بلک بات مہ ےکہ اکر ال عد یٹ ے بالكل قطع نظ ربح یکر ليل جس میں ہیں: من تشبه 
بقوم فهو منھم کے لف ہیں جب بھی تشبه کالہ دوس بی وا اور نا قال اذكار صو س ے غابت سے لا 
ق رآ نکر شش 1ج :لا ت ر کنوا الى الذين ظلموا فتمسکم العار 22 کہ تم تا موك طرف میلان 
تیار کر دک اس کے تت میس ہیں مکی ہاگ کی بڑ ےگی۔ یہاں نا مول سے م رادكافر فاق اجر 
ساس کے سار ہیں ت تلا مو ںکی طرف میلان سے کی کی گیا کہ ا نکی طرف بی میلان بھی نہ 
رھواور تشب كاءا صل ہے س کہ آدى بم کل ف لی جیما بن ہک یکو كرجا ے مہ چا ہنا سے مس فال جیا 
لکوں اب تلاپ ر سے جب ہے چا ےگاکہ شل فلاں لوكو نك طررع نظ رآول فو یہ تب یی ہوگاج بك دل کے 
ندرا نکی طرف بی میلان ہو انرا نکی طرف ميلان کے آ دی ب یکو شش خی کر ےکک شل ان جیما 
نظ رول جن کے سا تج آدى تشبه انقیا رک جا ہے ا نکی طرف شی میلان بھی ہو تا ے بے لوكو نكل 
طرف میلان سے كديا ا لكا لا زی تقاضايٍ س کہ ان کے سا تح تشبه بھی منورع اور اعتكك لوگوں 
گی طرف چ وک ميلان مطلوب ہے اس لئ ان کے سات تشبه بھی مطلوب موكال 0000 

ای طررع یکر مم صلی اللہ علیہ و صلم ےک یکا مول سے حل تشب کی وج سے شنح را شلا رم 
اننام د کے لئے تاکز ہے ایک تو بزات خودنا چائز ہے اس کے علادوایک وج حضور اق رس صلی اولہ علیہ و صلم 
نے سے بھی بیان فرا یک :انما يلبس الحریر فى الدنیا من لا خلاق له فى الاخرة -(© کہ رش وہ 
آ دی بناج جس کا آخرت می كول حصہ نیل ن کافرو لکالیاس ہے اس لے میں نیس پبننا چاینے۔ 

ای طررح1 گے مکل ی میں عد یٹ آ ری س کہ حضور اق رس صلی الثد علیہ و صلم نے دس چچیزوں 
سے أن فراياان شس ے ایک نزي گی کہ :ان يجعل الرجل فى اسفل ثيابه حریرا مثل الاعاجم 
او یجعل على منكبيه حريرا مثل الاعاجم-(© كر آدى سين كل کے بك نے مس ر “م ذال جیا 
کہ كل يتن جو لگاتے ہیں یا آدى اپ ےکندعوں پر ریشم کا کے جیا کی بق جوسی لگاتے ہیں تو اش 
مر بی سے رم کے سے اس لے مع ملاک ىہ یو لاط ريق ہے۔ 
RRO E‏ 
(۴) مذكاةا مسا تتاب لاس اكفف لان ٣[‏ 201 


اک طرح حضور اقرس صلی الثر علیہ وسلم نے ایک عد یث میں ڈاڑھی رک اور مو ہیں يمول 
رن کا كم بيان مایا ہے۔ ا ا لک ایک وج فو مہ س کہ ے بذات خود مطلوب ہے لان امن کے سا تھ 
سا تیم بض احاد یٹ ٹیس ہے الفاطا کی ست ہی سک :نالفو لمش رکیین( کہ مش ركد نکی مذ لف کرو مش رکین 
سے الف تكر نے کے لئے ان کے سا تم تشبه سے نك کے ےڈا ژ گی رنہ اور مو میں بچھوٹ یکر ن ےکا 
تم فرمایا اس سے بھی معلوم ہواکہ تشبه سے پچنامطلوب هد 

ای طر کی آدى کے بال سفید ہو گے نوكا ل رگوں کے علاوه باق رتكول سے ناا :ب يان 
بض مو قهول بر حضو ر ؤس صل الثد علیہ و حلم نے اجتمام کے سا تخ بالو كور ےکا عم فر اياج اورا یکی 
وج بیان فرمال یکر يبود کے سا تھ مشا ہے سے بیو( ج كل نہ رسک ےکی والت عل يبو دلول کے سا ت 
تشبه ہو ربا تااس لے آپ نے بالو كور گن کا عم دياحالاكل. زات خودبالو کار گنا اجب نیس تھا۔ اس 
سے بھی معلوم ہواکہ يبود کے سا تمر تشبه ے بجنا مطلوب ے_ حضو را ی َه نے عا شور مکار وزو رکھنا 
۴ شرو ]كيين آ پکو پت چ لاک ال دن يبود كلا روز رک ہیں 3 آي نے فر كر الر تد مسال زندہ 
ربا ل صرف دی محر میاروزہ بل ركحو كابلا اس کے سا کے ایک روزواور طاو ل كا کہ يبود کے سا تھ 
تشبه وی یہ چند الیل ہیں وکر تہ ذ خر وحد یٹ شس اکر غو رکیاجاے نے بے شار مث اميل اور ٹل جا لكل 
جن سے معلوم ہو جا ہے ہک ہت سار ےکا مو لكا گم و گیا اور بہت سار ےکاموں سے کاگیاے۔ 

مض ال دجہ ےکہ اس ے تشبه لازم آر ہا ہے لبذزااكر “ان تشبه يقوم والى عد ی ٹکو يا أكل نظر 
اندازجھ یکر ويل تنب بھی بد ےل كول کے سا تخد تشب كا مض راور زه موم مو الور اعت ل وگوں کے سا تج تشبه 
كا مود مطلوب موتا اور بھی بہت ساد ااعاد یث سے ابت ے۔ ا لكا كار تثب سکیا ہا سانا اور ہے عد یٹ کی 
آ کے آرتى ےک رسول اللہ صلی الث علیہ و کم نے قرایا:لعن النبى صلی الله عليه وسلم المخنیٹن من 


0 الرجال والمترجلات من الدساء 0 کہ اللہ تخا يك لحنت ہو ان عور تل پر جو مردوں جیا ےکی 


کو لک الى ہیں اور اللہ تحال یکی لحنت ہو ان مردوں برجو خث نے ہیں ين عور قال کے سات مشا ہت 
اغتیا ركس ہیں اس ے بھی معلوم ہواکہ تشب ه كاسلام می ایک ددج سهد ۔ 
پھر جو جحخرات شب کی بالكل یکر ناچاجے ہیں دوعام طور پ اس بات سے بھی سہارا لیے ہیں جس 
( لمات تال باب امل الال ع | ۸۰ ۴(....۲) مشكة الا تاب لس باب اتر جل لفصل او رل ج۲ / ص٣۳۸‏ 
(۳) النخار ىكتاب لفيا باب النضاب ج٢‏ /ص۵ء۸....(م) ك سل تاب الصوم ياب صوم لوم عا شوراء رع | ص وه ۳ 
(۵) :ا۶ا صا تاب لا اس باب الت جل شل الول ج ۲ | ص۴۸۰ اینا سج بخار تاب لا اس باب 1ہیں پاقساءا )ص ۳ے ۸ 


۱ 

پر پل کنفنگو ہو بكو ےک اصل می لہا اور شكل وصور ت كول دی ستل نمی مہ تو کش ایک تہ یب اور 
افتکا ستل ے_ تضور اتر س صلی اللہ علی و مم نے ناض يال اس وجہ سے يبك آپ عر بول کے امدر 
مبحوث ہو ۓ اور عر إو كالبل سبل تمااور اکر بالفرض آپ اورپ کے اندر حو ت موت فو آ پ كا لياس 
لور پکی طرخ ہو تااو رار آپ ہندوستان ل مبحوث ہو نے فو آي كا لہا س ہندوستانیول جديا ہو تاي لبا 
أو آپ نے ای و جہ سے انيار فرمایاکہ ہے لیا ی آپ کے زمانہ ٹس مر وع تھا۔ بیس يبيل عر کم چکا ہو كم 
ايل عد تک ہے بات در صت بھی ے لیکن سو فى صد ور ست تيبل يل لياس کے تخلق شر بوت کے ب احكام 
مو جود ہیں يبل لباس کے ”تاق بيلص جا ماک شر بجعت ا لک اجات د يق ہے یا یں اکر شر بجعت ا سکی 
اجازت کیل ديق ف اس سے پچناضروریی ہے۔ اب ہہ دی ستل بھی ے ض تيز سی اور قاق مت نہیں 
ہےء جم لباك شر يدت نے اجازت دے دايا شر لنت اس کے بار ے میس ناموش سے اس سے 1ك ۱ 
قب یبد قاف تکامملہ ے ا كوم اظ رر کے مو ےجو يا مو لہا ی انختيا رکرو _ 


شرت میس ظام رک ابیت :- 

نس او قات ب ےکہاجا تا ہ کہ لاجس كيا فرق ڑا ہے آد ىكابا أن كيل ہو نا پا سے جب ات ہیں 
ا E a‏ یت و اف ا کون 
تل نت نال سف كباله تلا رکو انيار ل ہو تار لكااققيار ہو جا ہے ۔ کا كي بے سکیا ہو جا سے 
د لكالا ہو نا چا ہے فى طرع نض لوك کچ ہی ںکہ اجر كول فرق ہیں بحاصل بان ے مین يه 
ات بالكل لط سے شر بيت نل جس طرع پان مطلوب ہے اس طرح ‏ اہر بھی مطلوب سے اور بان بھی 
اس وت تک تفوظا ہو تا ے ج بک ككلم ظاہر نيل ہواب آد یکا یہ حم اہر ہے او رر و باشن ے۔ 

آدکی کی کہ میرے نمك ضرورت نی اس کر دو قو ظاہر سے اس طر ینہ کے مل كول 
بھی تيار ٹیس مو كاحالاكل. مکو تم ک یکر ديا جا روح فو جر بھی بال ر ےکی دہ فوختم بس ہو کی بن قو 
ثم أل ہوا ظاہر عیشت ہو اہے۔ آب ے مک کول ز ی کے لکن آپ كير # يجا د تآ پکو 
غص ہآ ےکا عالاکک اہ رکو نقصان نچا بان كو فو ہے یں ہوا نو جس ط رع ب ن مطلوب ہو سے الى 
رح اہر بھی مطلوب ہو تا اور جن ر شر لدت کے نض ا كام با لان کے سا تھے متعلق ہو تے ہیں ای 
مر بہت سماد سے ا ام ظاہر کے سا تيد بھی متحلق ہو ے ہیں اصل مقصود عم شر یکو راک ناسے ہ نہ ظاہر 
مطلوب ے ت اشن مطلوب سے الل مطلوب اليد اور رسو کا عم لور اکر نا ہے۔ لب اکر وہ تلم پاشن سے 


یا ے۲۸ جج 

ملق ے نوو بال ان مطلوب ےار عم اہر سے متحلق سے اہر مطلوب ہے اب ییہکہناکہ اہ رک كول 
حيرت نیل یہ بات درست نین اس ل كم یہ بات يكل سے غاب تک جاجگی ‏ ےکلہ ش ردت کے يه احم 
لاس اورز یت سے بھی متعلق نل اوري احكام ظاہر سے بی تلق رت ہیں۔ 

سا ت مولاناا ظا ال وی ر حم الث تخا یکا ایک مقو لہ ے وو فرمایاکرتے تھے کہ ان لوكو نكا 
بھی جیب مال کہ جب ضور ازز س صلی الث ديس سلم نے عم دیک لوار كنول سے نے مہ ہو من 
گے ہو نے ياست ال وت ذ اس م كاف اق آڑانے گ ہک کیا ہرک يتدج کے ی ليت وکیا فرق يذا کے 
52ب نے ےکر نے کے لے تار نہیں 
. ہوۓ لان جب اکر يزو ن كبا كك بن كر وے اور تر يبن ی ۔ اگ كول مولوى ے پارو شلوار 
تواست او ےکر نے لوه قا بل ناق سے کا ناک اتک یز ےکی كت بھی ےکر يدل ہد ھی ران بھی کی 
كلل تاس م كول قباح کا بات تال ے۔ جہاں ش بیع تک کو ستل آے وبال ظاہ رك كول حيرت 
ہیں سے لین جہاں فیش نكا سمل 2-1 قؤورال ہے کی کہ اک فشن ول مس ہوا چاےے اہر میس نہ ہونے 
ح ليا فرق پڑ تاے۔ 


50 تشبه کون ےھ 

يبال ال بات نك كاي كم الام نے جس تشبه سے كياب و ہکون ساتشبه سے اک 
ےک نی بم غير مسلموں کے سا ھ مشا بہت ہر ای كك بول ے اور ہے بات انض كت بھی ہی ںکہ آي 
وكيز کہ تشب ناچا ے حالاكك ہکا فر بھی ہو ائی جتماذ شس سف كر ے ہیں ء آپ بھی موان باذ بش سفر 
کر لیے ہیںء دو بھی بریالیء تور مہ و تیر مچ زب سکھاتے ہیں آپ کی یہ جز سکھاتے إل ءوده یکر ےک ھن ا 
کر نے کے لئ اے۔ سی استعا لک ے ہیں آي بھی استعا ل کے ہیں تؤكافرول وا ےکم نے مو کے اور ہے 
مارے کے سار ےکام ابیاد مھ یکا فرول کے کے ہو سے ہیں » جہا زا کبیا رکیا مو اسه ہے مار گا چنب ا نک 
ایا دکی مول ہیں۔ آپ كيت می نك ہم كافرول کے ہا تہ مشا ہت انيار کی ںکریں کے مال اتک آي 
مشا بہت اتتا رک ر سے ہیں بای جک نکی ضر درت ےک کون ساذشبه 26 

ان ب سب سے ی تو اع قریب کے علاء ل سے دو ترات ن ےکی ے: ایک کم الات 
صرت توانوی رصہ الله نے حیات امین میں مخ ر کشو فر ا ے لیک ن کان جام ے اور دور ے کم 
الاسلام قاری مھ طیب صاحب رجہ او دی ایک سخ لكتاب ہے اتش فی الاسلام کے نام سے جو کل 


اسلا تی یب وتان کے نام سے مييق ہے۔ اس می ححضرت نے تشبه کے سيل كاف تغصيل ےش کی 
ہے او راس یل ہہ بث کی يحي کیا ےک کون ساقشبہ نور ے او رکون اق ر نو ے۔ 
ان دو نو ں حش تک سار ی بح ٹکاخلاصہ ہے س ےک مشا بہت ابر اء تن طررح کے کاموں میں مول > 
ر اختیار ی امور س مشا حبست ...... ایک ف راغا ری امور بحل مشاہ ج كافرو لكل 
بھی رو میں ہیں اور بہار کی دوہ کے ان کے جرح کے درمیان شش ناک ہے ماده جر کے 
درمیان غل کی مک ہے ان کے ھی دات ہیں ہمارے کی دات ہیں و یر ہو غم رہ ب كل بالكل غير 
نيار یا مور ہیں فط ریا مور ہیں ان ٹس انان مكلف نیس ہے اس لئ اس کے سا تيد تح شر یک کوت تلق 
ی یں ے۔ 
اختیار ی امور جو غير اغتار ىكل طررح ہیں ان مل تشبہ ۰ ور ے وو امور 
ہیں جو اتقیا ری ہیں ن اسن اضتیار س ےک ے ہیں کان غير اققیار یک طر ہیں ای كم ہم ان سے 6 
أل عت عي بھ وک کے ندکھانا پیا ی کے نو ببباا در تک جاۓ فو سوناءاب جب كعات ہیں فذاپے اخقیار 
سےکھاتے ہیں »اراد ہک - ےکھاتے ہیں ب ف خی کہ تیر اخقیار ی طور پر منہمٹش کے جل جات نل » ين ہیں 
اپنے نيا سے يع ہیں »سوس ہیں تو انیم رض سے ليث جات ہیں لان اس کے باوجو دای مق یں يه 
یر اخقیار بی بھی ہی نك اکر مکھانے سے بپچناچاہیں ف تيبل نج کے بر مال زنك بهاذ کے ل ےکھاناڑتا 
ہے ہار ہم ين سے بچناچاہیں فو نبال بج سے۔ ب رانا نک کیت انان کا مک نات ہیں لبذ اان میں بھی 
تشبه اكول سل ں_ ظ 
اضار ىاهور عل تشبة وب مز ے وكام جو مل طور بر اتيارى ہیں شلا ناص انا زک 
اہ لہا ی پاتتا مارک بیو ری سے يكن ناص مکالباس ہے جبورى نین ہے اخقیار کی ہے یاخاص انداز سے 
کھانایا ماع اند از سے سم مک يناوث بنانا خا اتد از کے يال و خی وو یر ہمہ امور اخخسیار یہ ںا کل تشبه کا 
سیل امور انیارے شش سے سے اور امور انيار دو طررح کت ہیں ایک وه مک نكا ن عيادات سے ے اور 
اوو ن ات ا ےک قوم کے اندر ووكام عباوت کی ھکر تيبل کے جات بک 
عام عادت ب ھکر کے جات ہیں۔ 
عبادات شتلق ا مور انيار ہے ل تق شبہ ...... ہج نک مو ں کا تلق عرادات کے سا تير . 
ہے ان یش تشبه حرام تشب کا مع از خو ر یکا قوم کے سما تر مشا بہت اختیا ركنا سح ہے کی ںکہ غير 
. انيار ی طور یران کے ماب ہو گے ہیں بل ازخودان جیب اکا مكرناي اکر عبادت کے اندر سے فو رام ے نشی چو ۔ 


2 ۹ 


كام وہ لور عبات حك كر سل ہیں وت كام اک ط بیقہ سے اکر تم كر يل کے وہ حرام م وکا جیسے زنار با تر نایا گل 
یس صلیب لككاناوه ليب ایک د تیاو یکام بج ھکر یں کے يللد اپنے دی نكا ليك حص كج ھکر لكات ہیں۔ 
“نض او قات ہے تشب هاف تک بھی ج جانا سے خلا 90 آتھٰھشں 1 ا ادل ٹک 
قداص رف الث كوجاننا ہے + ول يل حر موجود ہے عقيده تيك ہے لین اس کے پاوجود بہت سے علماء نے بت 
کو حجد کہ ن ےک وکف تراد دیا ہے اہ کی اجكام می اسل ي ہکف رکا تم لكاديل كب رحا امور عبات مل تشبہ 
رام ہے بأل مض او قار كف رك بھی عم جا جاے۔ 

مارت علق امور اغقیار يہ ل تشبہ جج ہا ں تك امور ماوت کا تخلق ے ج وكام 
لور عاد ت کے چاتے ہیں ا نکی دو صور تس ہیں ایک ےکہ ووكا مك قو مکاشار بن کے ہوں لىكافر 
قوم کے سا تھ اس طور بر ناض ہو كلك ہو لك اك رکو دوس راب ہکا م كر لود يكن ولا سك كي فلاں توم 
سے تعلق رکا سے ضا مرو خصو ص اترا سے دصو فى با ند عے ہیں جہاں ہن ور ے ہیں دبال ب دول دک ھکر 
بی کے ہی ںکہ یہ مندو ہیں چا ے دو عیسائی ہوںء مسلمان مول ياك ول اور مون کان رک ھکر یہ من ہو تا ےک 
ہہ ہنروے_ لو خصو صل اتا زکی دص فى اس اند از سے ہندووں کے سا ھ ناس م اك كر وک وال ا کو 
من و صو ر ر ے ہیں مہ ا نکاشعار ہن گیا انا ی ان از سے الن کے سلا مكر ےکا طم يقد ہو تا ءا تحر جوز ' 
كرست جی اكول لف كت ہیں عام طور ير اس طر عو كر ےکا میا جما جا كاك ہے ند ے ہہ مند ون 
والاكا مک ر اے۔ ہہ وا مور ہیں جو کی ت مكاشعار بن سيك ہوں دوسرے دواصور ہیں جو اك كاذر وماك شعار 
یں سبتة ان کے سا تھے اس کھیں۔ ۱ 

كاف ر قوم کے شحار ٹل تشبة۔ 2 جو چیزیںک یکا فر قو مكاشعار بن یکی مول اکر ج دولطور 
خر بی امر کے مکی کرت بللہ عاد ت کے طور کر تے ہیں تب تل الن شل تشب کم دہ تر بل ے۔ 

كافر وم کے تیر شعار شس تشب ...... ج كام کا قوم كاشعار نیس ہیں ان شل تشبه 
اکر چ نا چائز ثبل ے ف نفس مہا سے لین يمر بھی اکر دوکام تشب ه كل نیت سے کے ہا ہیں نا چائز ہوں کے 
اور أكر !تیر تشبه کی یت سے کے جا ل کے و جات مول کے الدت اتی بات ضرور ےک ال کا ادل 
مسلرانوں کے يال مو جود سے فو یھر ان کے ریت ہکو اتا رکر نا خلاف اوٹی ضر ور ے مسلرانو ںکو اپا تپال 
انا رکرناجایے- 

غلا صم ..... ابا وین ہیں ل : 

)١(‏ خی اقتا ری امور (0) غير اخقیار یک طرع۔(۴) اخختيا ری امور 


وگ ۹۰ کچ 


يهل ووا مور کے ساد م شر یک أخلق نہیں ے:لا يكلف الله نفسا الا وسعها_ الب اخور 
انيري کے سسا تخد عم شی متعلقی ہے قوامور افتیار ہے مل تشبه د ط رکا ہومگیایک عبادات مل ووسر ا 
عادات ل پارات ل تشبه ترام بأل پت دفو موج كف ريو تا ے اور عادات بیس ىہ دکجیں ک ےک کی 
اص قو مكاشعار ہنا یا ثيل اگ رکسی اص قو مکاشعارے وکرو تی ہے ارال سی ا تو کاشاد 
یں ہے اہ تشبھ كا نينت ےکر تا سج توچ كله ا لک نیت يه ےک فلاں قو مکی طر كلو اس لئے 
خر کی ا چا قت کی نون کک تل ےڈ 
ان کے طر یی کو اخقیا رک نا غلا ف اول ے۔ 

ان ام اکا مکاخلاصہ اور ما لب کہ جو تشبہ نا جات سے ا سک دو صور ٹیش ہیں یک امور ديدي 
ن امور عبادت ٹل تشبه رت ین نا قوم کے شعار مل تشبه ایک یں ترام ے اور ايك کر وہ 
2 بھی ہے اور دونول ثريب ثريب ٹیں۔ 


تشبه كا تم عالات کے بد لے سے برل بھی سکتاے: - 

ات کی مزع ل زل ۱ 
بھی سنا ہے اس كك ہو ستاك ای كام ایک زمانہ می ببطور عبات ک ےکی جات ہو لن دوسرے زمانے 
س اس قوم کے اندر ا یکی عباوت والى عقیقت شم مو جا اور ودايك عام دن كام کے طور ہک سف نك 
ہا می اہو کنا کہ ای كام یک زمانے می سکسی قو مكاشعار ہوکسی قوم کے سسا تیر خصو س ہو ليان دوصرے 
زمانے می دان کے سا تد صوص نہر ہے بللہ اور بھی تو می لک رن ےکک چا بل وکام ہنرو کی عیساگی بھی 
کھت ہیں ء يبو دی یکرتے یں ء وى چھ یکرت ہیں ء بد مت وال کچھ یکر ے ہیں ملف تو موں وا لے 
کے يلي بھی ہو سنا کہ ای ککام آ کسی قوم کے سا تھ ا نیس ا کا شعار نی البزاووتشبه 
متو میں داخل بل لیا نک لکوو کی کے سا تھ ال ہو جاے أو تشبه ممنورع عل داش ہو جا ےگا 

تشبه كا تم وت اور عالات کے بد لے سے بھی برل جا تا ہے ء علاتے کے بد لے سے بھی برل سکم 
ہے ایک علاقہ ال ناض ی كودع ھکر مہ شيم پڑ تاس کہ فلال كول يبل سے سے مان دوس ر سے علا ے ل 
ایا ال كناف يبل چگ تشبه نور ہوگااور دوس رک جک تتشبه نوع یں ہوگابللہ دوس رى جل تشبه إياتى 
كيب گان لئ فا عبت ممازے ساكل نین لفت فی نل بو وین کے ما تم مشابه تك دجت ےکم 
۱ (۱) سور ابقر ایت قب ر۴۸۹ ركورع تر ايارم فر ٣‏ 


عا ۲۹۲۱ خ 


نا جات سے يكن عاد بالج كل يبود لول کے سا تھ تشبہ أل پا جا اس لے ماد بال جائڑے۔ 

“بت سمارےکام ایی ہو کے ہی لك ايك علاقہ شل مہو وی ثرت ياس جاتے ہیں اور ہو دی دہکام 
کرت بھی ہیں ونال اک ےکا م کر میں گے قو ھکر یہ 6 الجر كاك شاید یہ کی انیس میں سے سے لیکن 
دوس اعطاق اليا ےک چہاں یکی کو بود و اتی نمی یی نفب کہ و مكب ہیں اورا نکی عادات 
اوراطوارز ن دگ یکیسے ہو کے میں »وبال پر ہے تشبہ سيبل م وگاب ہوک ہکا مکرتے ے فو فقہاء نے ان کے 
تشبه كوج ست كديا يان دوسرے زاف می انہوں نے وكام چو ڑ د کے اذ اب تشبه ٹہ رہایاویکام 
دور ے لوكول نے اظيا رك ليا بود لول کے سا تخد ال نہ ربا تاب گی تشبه كس ر ے »كر فق کی 
كتابول میس دعتي فآ پکوا سك بے شا قال می سکی۔ 

حدم الا مت حضرت تھان وی رہ الثد نے حش مواعظ میں تشبه کا مخ بیان فرايا ےکہ تشبہ کا 
کے ےک ہکس یکو وک ھکر یہ لكا يہ فلال قوم ٹل سے ہے پھر نحضرت نے فا کہ وقیت کے بد لے سے 
عم بھی بدل اتا ے اور خضرت نے ا لكل مال می كر ىك بیان ف رمال ےک ونت مار ےہاں می کر ی 
عام فیس ہو تی ی بللہ انگریزوں کے سات اص ھی پان تھی لیکن حطر ت نے فريك ہے مار ے ذا ف 
یس اب عام ہو گنی ے اور اكريذول کے علادہ ہندواور مسلمان بھی بلثرت استتعا لكر نے گے ہیں۔ اس لے 
ظاہر اب اس نل تشبہ نید ,بدت حط رت فرت ہی ںکہ ہمارے زمانے بیس ال ج كلم بہت عام نیل سے 
اس لئ بج كلك ى رور ر ق ےکہ شايد ير تشب متو میں واقل ہو حر تكلس ات اضر ور 
معلوم ہو اک اکر بہت عام ہو جاے تو یمر ہے کیک بھی باق تيال دج کی اصل بات جو سجمانا عابتا مول وه 
امول ہ کہ تشب کا عم وقت کے بد لے سے برل جچاتا ہے ا لكاداروياركى قوم کے سا تخد خا مو نے یا 
عیادت بک نے بر ے۔ 

ا کی ایک اور شال ہے س کہ حافظ اءلن رر حمہ الد نے ایک عد یٹ کے تخت ہے بحت بيرق ہے 
کہ ایک عد ينث سے بظاہ ہے ا ملا جاور نخس ل وگول نے ہے مچھا ےک حضو ر از س صلى او علیہ کم نے 
طیلہان يب ہے ہہ طیلمان خا مک ايك چادد مو نے جو عام طور يرس کے اوی بھی ہو تی تی اور باقی تم 
کے ادي بھی ہو تی ی اس پر ىہ اکا لیکیاگیا ہک ر سول اللہ صلى اللہ علیہ و کم نے اسح ببو دلو ل كالياس ا 
۶ا دیا ج لا آپ نے فرماپاککہ دجا ل کی ترد ىا تر باراد يبود ىكيل کے اور ان ير طیالسہ ہو ں گی ن 
طیلان ہو ںگیء ا ںکویہودیو كالبل قراردیاے۔ فو حضو ر اق ریس صلی ال علیہ و کم نے ہکس يبن لیااس 
(اضطرت تن کی عاد کا ب فاط فك عد یٹ مراك قث رجام كز رك جل ظ 


کاجواب حا فظ ای رر حمہ اللہ نے ىہ دیا كل و قت وق تک بات مول ہے ایک نا و قت میں ہے ہو لا 
ےکہ یہ يبود لوال کے سسا تھ مال ہو جاے امل زمانے مس ا كا نا متو ہو گار عشبه ہو گا لان اس 
وت حور اق ی سل اللد علیہ وسملم کے زمانے یں يبود لوال کے سا تیر خا نمی ہ گی اسل لے اس زاك 
یس ا لك يبنا ممنورع ہیں مو اور ا یکی جاتر ٹس حافظ این جج رد مہ الہ نے ایک اور بات می کی ےک 
طبقات ابن سعد ر حمہ امیس ایک روابیت ےک حضو ر اق ی صلی الذد علیہ و حلم سے طيلداان کے بار ے شل 
بو ایا آپ نے فرءيا: هذا ثوب لا یزدی شکرہ۔' کہ ہہ ایی اک ڑا ےک ا سک شک ادا نی کیا جا کت 
اس سے بظاہر ہہ معلوم بمو جا ےکلہ طیلمان متو نہیں حال كله دوس ری ييل حضور افر صلی انفد علیہ و تلم 
الکو يبود لوك علا مت تراز دے دس ہیں۔ ا كاج اب ىہ س کہ ایک ءا ف يبل ا نکی علا مت م وکی اور 
6 1 زہانے بی تشب کی وج ے 
ممنوع وگااور جن زمانے یں ا نکی علامت ہیں ہوک اس زمانے بیس ىہ متو نیش ے مر مال ىہ اضول 
ل شد ہس کہ تشب کا موقت کے بد لے سے برل بھی کتاے۔ 

7 کف فی ےا وكاو نك ور ےکی عازن 
کرو ری بننا سے عبادت کے E E U‏ اب مات E‏ 
اه س وال ےی یں 


می ری ب رکھان کا 3 5 
ایک سل می زک ر کی پ كنا نكا ناا عم یہ ےک ہے نفس جاک سے ا کو عر فی یں اکر كت 
نإل اور ایام خزالی دحم اللہ نے اس کے عبار ہو ےکی تقر کی سے لتاب الا طم میں تفصبیل سے 
سا تجھ انس پر بت ہو چی ے_(۳ 
لگن جار ےش اکا بر نے تشبه کی وج سے اح نوع قرار دیا سے حطر لوی ر حل ار کے 
777 11017 قشبہ یں رای ےک یکا وم 
کے سا تخد ناص بل د بابک ایک ٹین الا قوائى عادت بل کی ے۔ تقر یام نھ مب ہر قوم کے لوك ا کو 
يكشت استعا لکر نے گے ہیں اس ے اب تشبہ بر قرار یں ر پااپ الياحنةاصيل. الا کم لوث ٦ے‏ كا بدت ہے 
یس کت ما ہر می 


ںا 


۲١۳ : 

لونک م 

ای طرں یون ے ا سکو کی انض حضرات نے تشبه كل وج سے نا چائز قرار دياس ليان بماد سه 

زمانے میں ىہ بات گل نظر ہے اس ل كير کی ل ىكافر قو مكاشعار اور ان کے سا تہ خصوص یں رتى 
ین يلون میں یھ مامد اي میں ج نکیادجہ سے ہہ نديد اس أل ہے۔ 


يلون میں مماسہر:- 

اك مات ےل تس او قات ہے بہت تک ہو لی ے اور ای تک مول ےک اعضاء مکی کا یت 
مو ے یا نک جم سوس ہو جاے اور بض حالات می اليا بھی ہو کنا ے نال طور يركز مہ جام یہنا واه 
ہو توا عونا مستتوروك بھی حا یت ہو يكن اکر بتلون كل ككل ہو تو اس مس ہے مقرو ٹنیس م وگااور ووسر هقز واس 
می بي سج ہک مكو يتعيانا شلا رافو ل كو جعياناي فو ضر در کی ہے رانوں کے در ميان خلا ءکو چھ پان اکر چ ضرورى نیل 
سرع كيد ںکہ يہ مت یں اس کہ ست رانا نك كم ہو ناس خلاء ال ہو حا لیکن پچھر بھی كيت جك گر 
اسای تخليرا کو رتل فو اسلاى تخليرات کے راج سے معلوم ہو تا ےک کال حياءكا تقاضاي س كر جب 
لوگوں کے ساعن جا میں مے کی کا حول نہ ہو قوري خلاء بھی پر ہو نا پا سے ماكر کی ير مول ہو تاس میں سسارا 
ست ركور ہو پاتا سي اکر شلوارو یرہ یی مول ہو فق ہمارے پا لاک مشر لہاسوں میس اور اسلا می کوں کے لپاسوں 
کے اندر ان تصول کرت یا فی یاجیہ الو رکو اس طر نکی جز موی ے اور تون می مام طور بر ج کہ اد پر 
شر ت و یرہ مو فى ساس اس غلا كول جز تيبل ہو کی اس خلا اکا ہو اکر چ گناہ يبل ے» فلاف شر لنت 
نہیں ے يان بكنثيت جو کی اسلا ی هفارخ سے معلوم ہو جا ےکہ ہے لبا کال حياء کے عنالى ے پچ وکل اس میس 
بض خرابیاں ضرور ہیں ال لے ہے يشر یدہلباس نیس > ين ہمارے دور می اس میس تشب نی پایا جاتااس 
كي لاس جمارمےزیانے ‏ لک یکاخ رقوم کے سا تج بخاص يل دي ايلك ونيا کے رلک ادر علا تے یس بين جانا 
ہے اور ہر نم ہب سے تلق كت ول لوگ يعن ہیں اور وہ وگ بھی ييف ہیں ج نکاکسی نر ہب ے تلق نہیں 
× ابر ال مل تشبه یں ےاس لئ ا سکو با كل حرام او کر وہ کی قرار یں د کے لین يك ز کر ره 
مفاس كل وجہ سے ايك ایند يده لبال ضرورے خا کر اکر وہ ست اور بہت تك ہو لوووزياده قائل ا طزازے۔ 


باجام اور چون يل فرقل:- 
اس سے ايك فرق جيه میس آيااور تمض لوكو كوي اغكال ہو جانا کہ ياجام اور چون شی اتی 


۲ 


ھا rr‏ € 
ذات کے اعقبار ےکوی فرق یں سے اس اننا فرق سك لون عام طور پر مو ےکپ ےکی بق ے اور 
پاجامہ ع ديف کا ما سے ورت او ركو خاص فرق ہیں ے۔ 
م70 بكم جب ياجام بناجا وال کے اوی کر ند يرو يبنا ہا تاج عام ور پر 
رانوں پر کی آجاتا سے ج بک بتلون کے اندر ہے بات ثبل مولي یک فرق ہے »ايك ۶ ب دوست ایک 
دفعہ تانے گ ہک می پٹ وتان سکیا تو دہاں يل نے بہت ساد علا كو چون نے ہو ے وھاش کہا 


۱ کہ ہو کا ہے انہوں نے پاجامہ پہنا ہو آپ نے ا كويتلون بج لیا یہ اط ھی بھی ہو ستی ے۔ 


يتأؤان کے اندر ايك قباحت ہے ىس کہ ج راسلا ئی کک کا اپٹااپٹا لبا ں سے جيب پاکتانی لہا ی شلوار 

يش ہے ع بو ں کا پا یک ليل ہے دسر سے بھی اسطائی كول کے اپے اچ لال ہیں اچ اس لیا كو 
چو ڑکر ایک ا نی لہا کو ینتا بین يده ال - 

2 كل وه ی خاص قو مکا شعاد یں سے اس لے تشبه E E‏ 
ہےء ا لبا ل كيان نك ركو یا اس نے اپے ليا كواننا بتر ہیں جما جتنادوسر كو بتر مھا ے اس ےکنا 
وأ سك کے يكن ناليش يرو ضر ور ے لپن ا ل لبا لات ينال ->- 

راس شل خیت سے گی فرق يذجاتا .هك جو عار تہ ہو اکر و«تشبه كا نیت سے يبنا > لو نا چان 
ہے اود اكر تشبه کیا نیت سے "بل به 1 ناپ چان ہے۔ اگ كول اس لئ ینا ىكم اس میں اھر يول جیما بن 
5 ین انی کے ووز دور مها ةاور اکر وی می يبنا کہ ہمارے ہا ں لاگ يسن ہیں يال طق ے 
لگ يتن ہیں ی ای بے ے تلق رک وانے لوگ بكثرت ممن ہیں۔ ال طور پر لوف کے او قات شس 
بم ت می ہا ے اس لے ہے بھی يكن لیا سے تزا ی سے كم لف ہو جا ےگا۔ 


صا کالپ ال ہو نے نہ مو نے سے کی فرق ڑا : 5 

تشبه ٹل ايك اور جز ے بھی فرق بڑچاتاے اوروہ یہاں ب پر مگ بعك او رود کہ مض علا قال 
یش اليا ہو جا ےکہ سی اد تيك لوگ اس لبس سے یت میں خلا لون دغیر و سے کے ہیں جاک 
ہمارے تر علا قال شيل اليه ہو جا ے قؤوبال اس سے پناال لے بھی زياد و ممح م وکاک ہے صا کلاس ہیں 
> اود آد یکو چا کہ اپنے آ پکو اء کے زياده قر بكر اور و ٹیا سے حش خل سے بھی ہو کے 
ہیں جہاں صصلماء بھی ہے لاس بكثرت کن موں تو وبال الكل حیفیت اود ہو ہا سے گی علا تے کے ہر لے سے 
عم می فرق پہاے۔ 


2 
te 
> 
کل‎ 


الیک مر 

اک طر بے سے ناكا سل سج ءال يبل ايك بات فو وی ے جو چون و تیر ہش سے اس حل كم 
نیاو ی طور پر ےلو ا سے سو ٹکاحصہ سج كم چون اس سے او کوٹ پاش رٹ و تیر اور اس کے او ينال باند ی 
و ہے جد تم کا ہے وی ٹاک یکا بھی موتا چا کو لك اک سو ٹفکاہے حص ہے ہآ نكل اس یں تشبه 
یں ريالب تل دير وج کی بنا یر اس سے بنا ضر ور ی ے مکی کم ناكا بھی م وکا ی سے بھی يجناءا بت 
جن تشب ه كاوج ے وم کین 

ایک عار لوج سے دوسرے ہل و کے اپار سے ہے ستل قال تور ےوہ ےک ہکہاجا تا ےک اا 
ور تقیقت صلی بک علا مت ے اور اک حیٹیت سے بی چان ےء اس صورت می بعادت کے ا مور سے کل 
کر بظاہ ر عبات کے امور وال ہو جانا ہے۔ اگ ہے بات ثابت مو جر وا قق نقائل فور يكن دک کی بات ىہ 
سك نال کے بارے میں بات شا بت بھی ہے يا یں نض حط رات سے تم نے لو بچھا بھی سے اور كن بول 
کی طرف مر اجحت ک یکی سے لیا نکیں اس بات کا وت في عل ساك ٹا کی ايها د لور امت صلیب کے 
ہے۔دہ تین سال پل ايك صاحب ن ےکی اذم كلو پیڈیا بك ص فوٹو سي فکرواکرد سے کے ان کے اندر 
ال کے باد یس پو ری یبمل ہے یش نے بڑے امام سے ان سے لے او رھ اکر ڑ ھے اس میں مالكل 
جار نت کہ فلاں ذءا سف میں مہ بذ ہو تی ی اور قلان زمانے میس ھون ہو تی ی اتتا سا مز ہو جا تھا ليان يه 
بات ا يل كتيل ہیں کہ ہے طور علاصت صلیب بھی جا ہے۔ ایک دفعہ ایک طالب علم نے اپے با 
2 لدت تاياي تقر ییا۹ کے لک يب کک بات ےکہ ايك انکر نکی ر الہ 0101ا ez Reader's‏ 
ہے یہ بہت مشور رسالہ سے اس یں ایک مون شا ہوا تاجن میں ہے خاب کیا گیا ت اک نالل صل ل 
اکر یو لك ییاد ی تال بلك رکو ںکی ییاد ہے اور يل نے ان سح كها کہ وہ ر سال کے لكر وين لان اس 
نے لاک بل ديالور ل خود بھی لاش کر ماس لے تی طور يرال کے بار میس یھ نيب کہا ہا ککتا۔ 

یہ بھی ہو کک ے اور بيد از قيال نی سکہ ا کی ايجاد ال حيرت سے ہوگی م وک جل رج تكو لكو 
كا ے ونت بب لیا جا ا ہے اس ط ر یکو جز ہواور بعد یس ٹیش نکی صو ر ت اتا رک گی ہاور ٹیشن نے لے 
ججولى مول بي یکی مہ بتي داز قياس تلد لین ہر حال اس کے بارے می كول وت نی ملا اگ کس یکو ل فو تمل 
بھی مل كر دے تاک مسلا پر از سر نو غو رکر سالب بج رحال شبد تك ضرودت سے او راگ ایکا جوت مل بھی 
جا ےکہ ال کا یبا بطور علا مرت صلیب کے ہے نو بھی ايك پپبلواور بھی تا غور ہو سنا دو ےک اکر جر اسك 
ايجاداال حیٹیت سے مول سے لین بہرعا لآ کل مال ال حیثیت سے نیش ہیی جال اور مو ]نال ينوا ل کے 


٢ 


ا۲۹٢‎ 


ضور میں بھی نہیں ہو کہ میں صلی بک علا مت باندھ ربا و ل بی وج ےک جو صلی بكو ے ہیں وہ حال 
اثر ھت ہیں اورجو صلی بکو فی مات ببددئیء مندوء کی یادولوگ جو صلی بکوتکیاما تیاس سے ےکی نج بک 
یں مات وہ بھی نال باند لت ہیں اکر ا کیا یہار اال حیثیت سے ہو کی ہو جب بھی ىہ حيرت بال فیس رہی۔ 

ا ی ادا ر یٹ رت هو کان كثرت استعا لک وجہ سے ا لک حقیت برل جاے و تم 
بھی بدل جا كا كرت مرا اتدازه ‏ تین ليل س ےک بہت سماد ےکھانے ا ایے ہی ںکہ اکر ان کے د 
شن ناک یں کے نواس کے بی کو یکفریہ اش کیہ بات ہو مشلا علو وپ رک ے ا کا تار اکر حلا كرس تو ہو 
ےل انكس ترون بات ما ارتل كل اتد کاب نکی اع E‏ 
ا لكاي حیٹیت نی می وج س کہ عام لوگ فال باند عة ہیں کان ان کے ياد یا جب نم بی لیا ی یس موس 
ہیں اور نہ تبى ر سوم اد اکر نے کے -ك کت ہیں تا یوقت ا نکی ٹاگی یں ہو لى يلل عام طور یال الیک بڑاجہہ 
وا سبي الث ہو جا سج اور انس کے سا تيد گے میس ز بر کے سا تیر صلب لای م لى ايك صاح بک 
تمہ میں دست ہیں دہ ایی دفعہ لے فو ابی کے پار ے میس با کر سے تے او ربس ر سے ےک علمءہھاراسا ر 
نی دتنے ہم فلاں يلد سے ا یکو مک نا جات ہیں توو لى آدی کے وانے س کے گے :ای کہ اک 
آپ كيك ا کی شف کے لے ا ن کج پ راا 911090 ال ر ہتا ےا یکو خ زک دمیں۔ و ,کے 
کہ میں نے خط كلها تھا۔ یس ن ےکہا:ا لكا جاب آیا ہے ۔ كي گے :جوا بک آپ چھوڑ يل يبيد نی سکیا 
داب آیاہوگا۔ مه رحا پظاہریوں معلوم ہو جا کہ جو اب ا نکی راس کے خلاف ہوگا۔ شمر اس میں تق میں 
پڑن ےکی ضرورت کیل اورنہ بی شر لدت اتن تق کا ملف بنا ے۔ اہر کی طور پرجھ بات مھ يل آ لی ے 
دسق سپ ہک کل اس می كول ال ط رک بات نی پائی جائ ظاہ رہہ تشبه شس وا غل تيل سے اورا کی 
وج سے ا یکو ترام قرار یل دیا چا سکتاء بال ینس طرع باق وٹ سے پچنا بتر سے اس سے يجنا بھی بتر سے 
اص طور بر ہمارے علا کے ماتا ےک یہ صلواءكا لياس تيل جما جاجاء ہی مٹیا بھی موك . 

بض لوگ یہ بك كت ہی ںکہ اكبلى مال صلی بک ملا مت نیش الہ الل کے سا تد بو (0۱۷۸۷ )ہو تی 
ہے جو نال کے اوپہ باند گی جالى ے کان بي بات بھی ماع کل سے جب کک دا طور بر خاب تت ہو جا الل 
وق تم یکم لا شكل ہے۔ اب مک جو شی نا فص عل آي دسق ہے :ورحم الله امرأ نبهنى على الخطاً۔ 


مسا كل بانابڑی نا زکذمدار گی ے:- 


دن در یقت ابات سے سل دی یا نکر تا چا سك جو سے جب آدى سل بتانے کے لے ڑا سے 


TE‏ ظ 
تو وور قیقت الث تھا یکی ت ما یک ر ہاو تا ہے وہای بات کی لک ر باہو تااس لے متلہ ينا ف وال ير يبلك 
بوک م وار یوار ومو تی ےکی مرا مکو علا كينا سل طر لے سے فاط ے اتی غل ے بکمہ ا سے زیاد مقاط 
ےکی حلا لکو حرا م کین کی حرا مکو علا كباش لے برا كر جب ا کو علا کہا تو ا یکو اٹ رك طرف 
مفسو ب کیا ے ال تومت با تد ھاے اس طر رخس اکر علا لكو ترا مكبباتنب کی اد کی ط ر ف ایک قلط بات 
کی نبت م وكق اس ےک بات پر عم شر کی ذكانا ف كاد ينا ستل جتنا بل ص راط یہ كى رر ہے۔ 
نلوگ ہے کے ہی كر تم ایک طر فک ہو جا بل کے جس چ میس تھوڑاسا تر ود نظ رآیاا کو 
نا جات كه دیااعقیاط ای یش ےک ا كونا جام کہ ديا جا دہ مک ہی کہ پچ وک تم نا جات کہ دس ہیں 
لوگو کرای سے تک ر سے ہیں اس لے ہم رمیا مہ ہیں اکر چائ ہیں کے فو ہو سنا ىك فى فس وہنا 
ہو لوگ و وکا مكريل کے نے ہم سماخو م وگ کان اکر بے د زک ہ وک رکا مکنا ہا دكت جل جانمیں کے چ 
مواخزم بال موك یاد رھیئے ہے بت بذك فاط ىا سے :لاتحرموا طيبت ما احل الله لكم مق الین 
کا تر علو ی ر حم اللہ ايك بڑے بذ رگ ہیں ا نکو نام مشو ىكبا جانا ے اس ےک مولاناروم رحمہ اش نے 
شو یکین ہوۓ آخر میس چھوڑ وی تھی اور ےکہاکہ بعد كول اور ا یکو بور اکر ےکا مفقق ابی کش 
کا ند عل وی رحمہ الد نے لور اکیاء بش در چ کے علما مہ اء یس سے ہیں ان کے آ او اجداد شش سے مولا 
شرف گان ویر ج اللہ ہیں ىہ ما بدا ككيم ساککوٹی کے دور کے ہیں ایک دفعہ ملا عبرا كليم يكلو ان کے 
ای آے اود ی ےکہاکہ يل نے ایک سال ےک جر مت كما آپ بھی اس پرد تن اکر دی اکہ انس بير 
اجمارع ہو جاے ء فو خضرت نے فرمایاکہ یل فو ا سكو حرام تيل جتن ابلا مبارح بختنا ہوں اور ا یکی کی و اطليل 
بھی زک رکییں, تولا عبد ا كليم ر مہ الد ن کہ اکا آپ ا کو مہاں کے ہیں فو جم رآپ یر ے سان حقہ 
ليك بھی دکھامیں فوا ہوں سن باكر جد مہا ہے لان کے شی طور بر اس سے ترت ے۔ ینس جزل نی 
نض بائذ ہو لى ہیں لین ”بی طور بر یکی ہیں كتيل اس لئ میں نیس پیا جا تا علا کا قو ل کان ہو جات تمل 
ضروری تيال ہو جا بلا جب عالم سك دیاکہ جام ے لكان ے۔ کن وہ بھی مجر حال ملا تك اور لاك 
تر یف ہے : ”لال آن پاش ركم جپنہ شوو“ ای ےکہاکہ تول کے ہا تھے اکر مل بھی مقرون ہو جاۓ لو 
بت ہے عالاککہ ہہ اصول یات کے بارے نل ہے مباعات کے بارے می تيبل لت ایک عالم ایک ملكو 
مہا ںک پا سے کین وہ مل شی كرجا كولم بے عمل خی ںکیں کے تو حضرت نے ايك طالب مکو بای جو ۱ 
حقہپی سنا تھا اہ یک وکہاکہ یر سے سا نے حقہ ىك دکھاء حقد لكر دکھیا و آپ نے ملا عبرا كليم ےکپ اک 
لی ہ وگئی, مل نہیں ہوا تقر ے نہ وگ يلل اين عم سے بادایا ہے می مو لان بڑے در چ کے اولياء كل سے 


5 ۲۹۸ ام 


یں ان کے بڑے جيب و خر یب اقغات آسة ہیں۔ ای ك كران کے يال آيإاورا مولس بیج ےکی میا سلعا لز 
انہوں نے ا كو نظراندا زکر واک عمال ضرورت تيبل پھر وہ خو دکیمیاکے ؤر لت سے سو سف كل ايك اٹ بنا 
کر لایاا کو ل کر وى ف رکائی ر پتا تھاء ا ہوں كيال یر کچد کے ریف یکو وب رو رت ہو گی 
اکال لو ںگاکائی عر سے کے بحر آی انو د یکاک ونى فقي رانہ شان ے اور سو کہ شايروه شت موكق ہو وکہاکہ اور 
لادوں توان ہوں كبك وبال اکر دمو جبال رکی ی وبال جاكر دیکھا توا یٹ و بے تی رکھی مول تھی و 
ال ن ےکہاکہ آپ نے ندر خی لک اس ونت ان کے پت میس ڈسیا تی سنهاء سکم ر ہے تك فو آپ نے وہ 
ڈصیلہ ز ن پ مار اتو وہ موتا ب گیا ركهك. م سوناج کر ناچاہیں فو لول یکر کے بين _ حضور افر س صلی اللہ 
علیہ و سل مکو بیکش کی کی ت یک يها سونايناديل وآ پک ايك شان آپ کے بض فلا موس میں بھی گئی سے 
نوي الل شان کے او لياء ل سے تے اور بش در سج کے علماء ٹس سے حك ایک بات اض ول نے اس و فت ملا 
عبد كيم سے ہہ بھ کی کی جو کے رخ کر ف ہے فر اياك چھکلہ حقہ يبي می الا عام ہے اس لك وں اس 
ک2ا قراد ينا رم م سج اد بيهر عام د یک بات نیش يله جیہاکہ ‏ نے آ پکو با رک يه “ل ددج 
1 شق اوري بیز كاد ہیں اور جب ل نے أو ركيا لا یکی تاد عد یش ے ھی کی ہے ایک عد یش ا 
سك القدكل نظ ريل سب سے ذا بر موہ آ دی سب هک كول جز ام تہ مو لین اال کے ہار يار لو جف كل وج 
سے رام ہو جاے۔ 

یی 0 
کی كلت ب بھی یک رمت ازل د موچاے۔ ٠‏ 

حضوراق رس صلی اللہ علیہ و کم نے اس کے بارے مس قرا اعظم المسلمين جرمًا من سال 
عن شىء لم یحرم فحرم من أجل مسألته ۔ عالاککہ يهال اکر ركم موك تو اق تر م وی حضور 
اتر س ص٥‏ اہ علیہ و كلم جب رام قراردیں کے فوووا قا حرام مو کی لیکن ا یکا سرب ب کو بھی جرم م 
قراد وي كي اودر جب نبوت ثم ہو يكل ہےء عات وخر مت نے ہو کے ہیں »ايك چز می اتلاء عام سے لوگ 
بكرت اس میں جتلاء ہیں اور حل ایا طکی وجہ سے يا امل وجہ س ےک لوگ شع بی مولو یکہیں ا كو ترام 
قرادد سر ے ہیں و بے كيس بترم م یں ہوگا؟ ایت اء جس ان با رگ کک یکلام می جر م یمک لوا كك بوا 
جيب لگا نین جب نو رکیا تو وا قتا بات جد عل آ گی اور ا کاالیک من ہے ےک اکر دي نکوا تنا جنت بناديل گے 
كول بھی دین کے تریب نیو ںآ ےگا رہ شس جو حقیقاپ بند يال ہیں ختیاں ہیں دہ یی ر ہی ںگیءدین‌:ام 
(۱) غار ی ابا تاب الا ختسام باب كر نكرو سوال ح۱۳ / ص۲۷٣‏ 


3 ۲۹۹ اخ 


ہے اللہ اور رسو کی خاطر اتيس اٹھان كا ين مجن اپنے اد کی دجہ سے برت زک ترا مکرتے جد 
يا بل ہہ اچھاطرزشل تيبلا دوفوں طررز ل فاط ہی نك ایک ہے ہے ےکر لیاکہ چا قراردیناے اور ایل كم . 
ار ا نے كلل وت لاع تق رت ل وا زد ی ی نضا 
EEE SN AE‏ 
روس ری کی میں بتلا ہو ج ہے ا سکو عمو ]نیش یکا احماس نیس ہو تاج بکہ دبن نا اپنے ر قان کا 
م یں يكل اصولوں پر ےکا نام ہے اوران اصولول پر چلنا لی صر اطي علا ے_ 

یس ہے ۶ر کر رپا یاک مہ بتانا بی تا زک ذم دار ی سے جس طر کی چ زکا حرام ہونا و مل 
ش کی سے نابت سے فو ا لکی م مت بتانا ضرو ری ہے ای طرر ع ارک یکو کی چ ہکا جو از ويل ش ی سے 
معلوم ہو ر ہے اورا کوج از پ لور اشر صد ر ے ودش ر عآپابند ےک اکر مل جنا تز جاتو با ئے۔ 

ار سد أللذ د يهم ٹاچا ئ قرار دييا ہے تو الک بات ے يان سد ذد یی ہکی کی ایک عد موی سے مض 
اپنے اتاو کی وج سے یا جل اس مل ےک ہکہیں لوگ مك ڈعیلاڈھالا مولو یہی ل اگ راس حك و ہک جاح تو 
یا گی بات نیس اور یش نے پل امام ابو حفیضہ ر حمہ اد دکی مال كرك کیک تش نبيزول کے پارے شل 
سيت گل مس اتی ایا رک ای کگھونٹف يعن كوتيار تس لان فی دين میں اتی اعقیاطاکہ فرمارے ہی كلم 
پا رگید نيا لابج بك در جج ھک کہا جا ےکہ ان كو تر ا كه ديل جنب بھی ا کو رام نمی كبو كانتب بھی 
ملا لہ قکہو نكا كيو كمسل ا ےگ رکا ثبل الث اود اس کے رسو لکا ےدک لکا ے۔ہاں ىہ مو سنا كم 
ای ککوو یل کے اعتپار سے ش رح صد داور طم ر ہو جب حال جل بات پر شر صد رمو ونيا تی پا ے۔ 


جا 


كناب اللباس 


---------الفصل الاؤل4 تج 


00 -----عن أنسء قال: كان أحبٌ الثياب إلى النبى صلی الله عليه وسلم 

أن يلبسها الجبره ‏ (معفق عليه) 

رھ و رت الس ر ی اللہ عنہ سے د وات سك نكر یم صلی قد علیہ و سل مکی 

نظ ریش سب سے زیادہمحبو بمباس ”لكا يابفنا آ پک يشر تاو تمر و تھا۔ 

حر وتنب کے وزان ب سے نیقی عا کا رواو با ہکا یہ می نکی ناص مض مکی پار جع ل ی اص کا 
کیٹراہو جا ھا ا سکوازاراور رداء کے طور ہر بھی استعا كيا جات تالور یکر بھی استنعا لكيا ماتا تھا ٹفش و ذكار 
دا کیڑراہو جا تیاور لن روایات سے معلوم ہو تا ےکہ اس پر دار يال ہو لى تل ہے كن كا تر بي كيرا مچھا 
جات تھا۔ کن و ہے بی اس زمانے میس شيشا کی صنحت بیس مور تھاوہا ل كرابت اانا تھا اور دبال جن 
لو كو سب سے ابھا جما جام تھااان یش سے ایک حمر و کی تھا۔ حمر و کے بارے می كبا اتا ےک يه اسل 
میں تر سے مشتقی سے ت رکا می ے می نکر نا جناي قرآ نکر يم نل الل جد کے بارے می كبا جا تا ہے: 
فهم فى رزضة یحبرون ۔ ہہ تھی چ وک ز ینت والا با ہہو جا ے اس لے ا یکو صر مہا جات ے۔ انس 
عد یت سے معلوم وال ن یکر مم صلی الد علیہ و سل مکو سب سے زیادہ ليشد تھا علاء نے اس کے يش ہو ن ےکی 
نلف وج ہیا نکی ہیں۔ 

حر مشر ہو سل وجوه 2 


اسل مث کے مطابق معلوم نیں ہوکی۔ بض حطرات کے اس ط ر کی تشر کہ ےکا خشاء _ظاہر ہے کہ 
ذ جن می ايكيا ےکہ ن یکر مم صل الثد علیہ و حلم چ كل زپ اور ترک د نيا کا ی تھے اس لآ پکوااس 
س كول وا۔طہ نیس مو ا تاک کون ساکیٹ ايت می ا اتا ہے او رکون سا ایا یں تا اس طر كا لذ ہے 
یش بھی پک كول واسطہ نمی مو تا تاك کون ساکھانالذ یذ ے او رکون سا خی ر لذ يذ لين حضور از س صلی 
ایند علیہ و كلم کے زار کو ای طرئ جنا خلاف تفیقت ہے مہ كرك ےک كما ف ين ل آ پکواشجاک 


نیش تاور آي لزت کے زیادوطالب تل کہ نہ لے ف آدى ب يثان ہو جا يان بر عال لذت کے 
اعتیار ے آپ کے بال يشر این دك جد بن ی گی اور ہے با تکئی اعاد بث سے معلوم ہو تی ے۔ اک طر لق 
سے آپ نے لن لکھانو ںکو لز یڈ ینان ےک یکو شش بم یکی مشلا حد یت شل آ تا ہک آي سف لل یک جور 
کے سا تجھ ملاک رکھایاا کی ایک وج مذ ا قد نل اعت ال یی اکر نا ےک کک ی بك بل موفى سے ووا کی نہیں 
گی او رجور کی ہو تی ے ليان ا سکی مٹیا كال تی مون ے جآ دب یکو حش او قات ابی ہیں لقوق 
لیف يكرا كزر سے آپ نے دونو ںکو ملا لیا ی سے ذا كقد میں اعت ال يبد اہ گیا آپ نے ذا کہ ايها 
بنانے کے لے جن کو م رکب بک ركعايا سح بيس نض لوک نض مٹھائوں کے سا تخد مک يار ه لاك كما 
ہیں اس سے ذا تہ مزاسب ہو چا جاے ہہ مقصود ہیں جع کہ ہن وال صو فول نے یہ ما پیر اکر دیا ےک 
قرب م اش مم كا لکا تقاضایے ےکہ آد یکو لذ يذاور غير لذ یڑکااتیاز بای ددرے۔ 1 


جماليالى ذو ڈیم مکر ناشرءا مطلو ب كيل :- 
کی معالمہ لہا كا ےکہ مہ او تيك ےک لمباس میں ز يمنت حك اندر اجتمام بل مو ناچا ےے اور خود 
بھی حضور اقرش صلی الثد علیہ و کم زیادوز ین تکااجتمام تيبل فرماتے تنه ال میس زیادوا شاک نیس تھا کن 
بی با تك آپ کے زديك بالكل فرق تيبل تواکہ ىہ چ زخو بصورت ے اور ہہ خو بصورت كيبل ے اور آپ 
کے بال الا لم ذوق نیل تھایہ بات تال ے۔ آدى کے اندر سے خو !صو رن اور یر خو بصور یکااتیازدی تم 
و جاےء الا لی ذوق اک میں نہر ہے ہہ نز اج لگ داق ہے مہ بد کلک ری ہے اس یک تلن ہو کال 
قرب م ال کا تفاضا تال ے۔ ای لے 1 خضرت صلی اوڈہ علیہ وسل مكو نض لياس خو بصو ر فى کے اتقبار سے 
بھی يند ے اور يهال آپ نے صر کو بيش فرمایا۔ بظاہر اس کے شد يده ہو ن ےکی وج ا سکاا ھا لکنا سے 7 
کی ز تدك میں دوفوں مالس لق ہیں ایک طرف فو انچائی اد لباس کی آ پکیز دی عل ا ہے۔ جنا جند 
عزن چو ڑکر کے عزی تا جاے ا ےت 
پو ند گے و سے اور الیک مو ٹا تبه بند ذكالا اور فر راي تضور ار س صلی اللہ علیہ و کمک اال انی د كرون 
يل ہو اتھا 1ری وت عل آپ نے ی کے پنے ہو سے سے اور ہے کی آ تاس كد آپ نے بردہ يان رکھا 
تھا۔ ردهي اوہ مکی ادر ہو اکر کی کی اور عمو ںای ہو لى کی اسی لے حضور اتر ی صلی اث علیہ و کم کے 
از قن ہار ے شرام یں ہے اف پور ہے الى على ذاکے ہے کی آپ نے بكتزرت چیب ادو لبان لانن 
لے اخقیار فرمایا اور وه موا او ن کا ہو جا تما اور ای سے صوفياء نے اون لياس كو اخقیار فررايا يكن ہر مال 


ےا 
0 


و ھا 

۰ آ خضرت صلی الل علیہ و سل مكار دا کی ممول نيس تهابلا و فول تى مثالیش للق ہیں_ اس سے 7 تحت صلی 
الف علیہ و کم ہے تاا چا ثكم بزات خو و کیا لپا شنا صو و ے نہ بزات تو دا لاس مطلوب ےک 
کو بھی مطلوب بتالعزابہ میک تال 


آ پک وکون سال با زیادپپند تھا:- 

انز عو ميد د ف ی ی ت و ا ہے 
کہ آ پکو صر ۃ پئ تھااو رکیل ہے آرپا کہ أ پکو یں زیادہ يب راركتل يه آدپا کہ 
لہا ی زیاد يش تماء فو بظابري عد شيل ایک دوسرے کے معا رش ہیں 

کل تعاس ...... ا كاجد اب ہے ےکہ پہند ی رگ ہے ایک ار اضاف ہے ايك انقباد سے ايك جز 
زياد جند سول ہے دو سر سے انقبار سے دوس رکچ یاد ند مدل ہے باوٹ کے اقبار سے دك و 
لح زياد پٹ تھی اور ركف دار لياس میں حر 3 :أ پکوسب سے زياده ين موك اور ایک اتتبار ےآ يكو سفيد 
لال زیادہ نتاک ىہ کی ایک 6 ے۔ حور ارس صل اللہ علیہ وسلم نے فريك ال تال سے جب 
يرول میں للا قا کرو نو بھی فر لبال یں ملا قا تكرواور جب تر وں عل الث تال ے ملا قا کرو و بھی 
سفید لبإلل می کر ون كفن بھی سفيد مون پا ہے ملف اتبار ات ےآ پکومہ سار کی چب ند تل 

)۲( -----وعن المغيرة يخ شعبة: أن النبىّ صلی الله عليه وسلم لبس جه 

روميّة ضیْقَة الكمُين ‏ (معفق عليه) 

ٹر جم ...... حت مھ رہ بن شعبہ ر ی الذد تتا م عند سے ردایت ےک 1 خضرت 

صل اٹہ علیہ و سم نے ايك روك جب يبناج کہ تک یں والا تھا۔ 

ہے در یقت ایک گی عد ی کتبا ی سے ہے روہ تج وک کاو اتد س ےک حخرت مخ رہ بین شی ر طن 
الد تت الى عنہ فر ست ہی ںکہ ايك م رجنير حضور از س صلی الذر علیہ و سلم جم کے ونت قضاۓ عاجت کے لے 
کے نو میں آپ کے سا تھ تھا آپ نے ایک دوق جب بن رکھا تھا آپ فضا عاجت سے قار ہو گے ليان 
کان د بویا جےکہ قھذاے ماج کان دور پاک کر نے تھے ء قضاۓ عاجت سے قارع ہو نے کے بعد یں 
وضو مکاپالنیٰ ل ےکر عاضر ہواہ آي نے وضو فر اي يكن و ضو فرماتے وت اس چ ےکی یو ںکواو یر جز مان مكل 
تفال كك وو تس بہت تيك یں لآب نے اپنی حو كوبازه کے نك ذكال ليالودال طر ہے 

ہے باز وکو وبا ور اس کے بعد جب دوبار بین لیااو ر آپ نے موز ين ہو تھے ء و آي نے ان موزوں 

/ 


ظ 
پر فرمابااد رآ پ وال وبال تش ريف لا ئے جہاں ذا الا تھا۔ صما كرام نے يك ديرا نظا ركيا يان جب ديعا 
کہ وت تيك ہور باس فو حت عبدالر تن بن عو ف ر ی الث تان عن كوارامت کے لے آ- ےکر ویاوو نماز 
پڑھارے كه وہ یک ركعت يدها كك سے دوس رک ركعت میں حضور اق صلی اد علیہ وسلم شال و ئے۔ 
ححفرت عبرال ہن بین خوف ر ی اوڈہ تعالی عنہ نے تضور اق رس صلی القد علیہ و سل کوک ہک ہے بنا پاپ کن 
آپ صلی اللہ علیہ و سم نے ہاتھ سے شار فر .ثيل ای جک ےی ر ہو۔ حضور اقل صلی اٹہ علیہ و کم نے 
حر عبر الر من بن عوف ر سی الد تھا ع کی اقنتراء شش نماز ڈگ اور سلام یمر نے کے بحر جو رکحت رہ 
کی تق ا كو راف مایاور سیا کرام کے اس لكل ین فرمائ یکہ نما زکاد قت نک ور ہاتھامی راا تار ہیں 
کیا بک خود نما نکی یکر وی اس میں جو حص کاب لاس کے ملق سے دہ صرف اتا ے ينا یہاں صاحب 
كوج ن نف كيال :ان النبى صلی الله عليه وسلم لیس جبّة روميّة ضيقة الکمین ۔کہ آي سل الث 
علیہ و كلم نے ایساجبہ ہنا کہ ر وی تھا ر وی مو ےکا مطلب ہہ تاك رو مکابنا ہو اسلا ہو اہو ت7 
اس زمانے میں رو مكا دارا لاطت طنط تھا سکو بي نطيد کہا جا تءاب اس شم ركان م اول 
> ا سک تفع لکاب القن میس ان شاء اڈ سس كل شا ما علا تہ بھی ر وی لطت کے مات تقالو رآ 
كل سوريا حم سکو شا م کچ ہیں ار دن اور کین کے سارے علا ے شام کے انر ری کے جاتے هي سمادے 
عا ے سلطنت روميت بن زتطيدي کے با تحت تھے »روم کے علا ےک بی مول چ كو بھی رو کہ دیا جات تھا 
اور شام کے علا ےو یر وك بی مول چ رکو کی ر و کہ دیا جا تاتھا یہاں دونوں اخمال یں اصصل م رک زکابنا ہوا 
ہو ے بھی ہو کت ے اور ے بھی ہو کت ےکہ شا مکابنائہواہو اين عم می كول فرق تال پڑ جا اس لكك شام 
بھی اس دق تکافرو لكا لكك توااور ہز ینہ م ىكافرو ںکاعلا قہ تھا 1 خضرت صلی الذد علیہ و صلم نے روگ جيه 
يبنا ہو اتھااور ہہ جب تيك استمیول والا تماد 


عد رخ سے مستي[ مسا وت 
ال عد ی ے لاس کے “تلق للع مستل معلوم ہو ئے_ 


(۱) کنا ری مصنومات استتعا کر ن ےکا گم :- 
ہلا ستل ہے معلوم ہوا ہکفارکی بتی مو فی چ رکااستعال چات ے ہہ جب کا فرو لكابنا ہو اتھا لن اکا فمرول 
كاينامو كيرا يبنا بھی چا ے بش یل کول او رش گی مال ٭ مشل لقن مواد و ہکپٹرانایاک ہے د تیر دوخ رولو 


ہے الک بات سے مان فى نق کافرول کے مک ککایاکا فر وں کے پا تخ دكاينا ہو اہو ا سکااستعال جا > 


(کغار کے طرز ير بناوٹ و الى مصنو ما کا گم :- 

سر اسل یہ مع يبان ضور ار س صلی اٹہ علیہ و سکم نے جو لیا ی پہنا مو ا تھا صر ف ہے 
تب ل ا سکامواداو كي كاف من ککابناہد اتہک سلا ہا بھی وبا ںکا تاور الب کی كد بناوٹف ھی ای 
کے طرز بر ہ وگ اس کے باوجو و ضور اق رس صلی اٹہ علیہ و حلم نے ان كو يبان لیا اس سے معطو م ہو اک اکر 
کی لبا سکی یناو ٹکافروں کے طر ز پر ہو لیا ایکا فر قوم کے مما تخد ناس نہ ہو بللہ اور جج یکی لوگ ميف 
مول تحت ہے جب ۶ ۶ ب نل لیا جات تا ۶ ب بھی یمن ہوں کے , مش رك بھی کین مول کے , مسلران بھی نے 
ہوں کے اس لے حضو ر ار ی سی انفد علیہ و کم نے بھی اسے يان لیا محلو م مو اک اگ رسکی كل مناوت 
كافرول کے انراز ہو ليان اس مل تشبه ۵۳ کی رتوم 
کے سا تھے خصو ص مھا اجا ہو فو ملمانوں کے لح کی ال كا يننا انا سے اس طر ےکی بات آ کے کی 
آرہی ےک حضور اتر س صل اللہ علیہ و حلم نے یک دف سردالی: جب يبنا مك ہکس ری کے ظرز بر بناہو اتھایا 
کس رکی کے علا ےکابناہہو اتھا۔ 


( )نک انول والاليال:- 
یاک وان كل ا و ل نے تك آستتتول والا ج يبنا ہوا تھا و معلوم ہوا 
کہ تيك سيول وال لیا مس مرو کے لج فى نض چا ے مرو کے ےک قید اس نك کک ورت کے لے 
غير محرم کے ساحن چائ تال اسل لكك اس کے تم مکی ایت ہو ل ہے۔ 
عام روایات سے معلوم ہو ما ےک حور ار یں صلی نقد علیہ و کم اور عام صحا بكرا مکی 1 عي 
كل دی یں واد ت تین يمول تن ازج ب از ی کی تن نبول بن بت كل 7 تین این 
1 2001 
صل اللہ علیہ و کم نے شيك تمو ں والا ج ال سك پناک آ پکو ہہ یہ لام كال طر ع ہو تاس ےک اک آدى 
ود انی مر شی سے لبال سلواۓے اس می تو انی بين اور نا ند ٠١‏ ر اپنے ذ ہش کا خيال رکتا سے اور ر کناچا ہے 
او راگ بدي ل مات بيت سلا دس بسااہ قات ویمائی ببنايذ جا اس ےک ى اس می تيد _لى كين ہیں 
ہو ليا بہت مشکل مو ہے۔ یہاں بھی حضور اتدل صلی اق علیہ و کک کوپ سے شس ما وكاس حك آپ نے 


5 


ین لیا ہوگااور مہ بج نکر آپ نے ہے بھی بتادیاکہ ای ط ر کا لبا ی يبنا ہا تاکر جد بتري س ےک لبا 
زیاد هكلاش ہ وک اصراف می وال ہو اور نہ بہت زیادہ چت اور تک م وک حم کے سا تخ ملا ہو اہو لين اکر 
و 1 نيل تک ہو جا ےج رت 
و كوي جواز تانے کے لے آ پنےا طر کا لا ی يبن لیا تھا۔ 


حضور ایا ی لہا کون پاتا ای کے نون ہو ےکی ملا ممت ال :- 

اس ے بے اصول بھی معلوم ہواکہ ضور ات س صلی الثد علیہ و کم ےکوی مباس ين لیا تو اس سے 
ہہ لاز م بل 111 وہ سنت بھی ب گی وک نہ ےکنا كاك کا رو لكابنام اكير اوكا فرول کے ملک می سلا 
ہو اكيز الور چت لبا بھی سنت سے مالا کک اليياك ول بھی تبث ل كبناء ا كو سنت نکی ںکہاجاۓ كابلا ال کے 
عن ہو نے ہو ے کے 2 یہ کی رو رک کہ آي نے ا ںکااجتمام اور قصبد بھی فرمایا ہو اسلو مشر فرایا 
ہو اور اک وکمز ت ب بن هلبا اکم سفن عادي شل داشل مد جا گا کان جب تک به Ea‏ 
ا کو سنن عاد ل ے بھی غار ہی ںکر کے _ 

ہہ لط تھی بہت کثزت سے لوگو ںکو ہو ای سل حضور از س صلى انفد علیہ و كلم کے عراس كا 

ری کین آگیاکہ فلاں مو شب آپ نے اسل ط رکا عماس پہنا ہو اھا کہ دیاکہ ہے رنگ سقت ے دومروں 
TT‏ لل 0 7[ ١‏ 
خضرت صلی اللد علیہ و کم نے می رك كا متام نیس فر ایاج بھی يهنا ہے وہای لے پناک كيف اق 
آ پکوم لگیا۔اس ط راک زو بش رآ کے لہا بھی اس ط رک فو حیت کے ہی لك مكيف اتن ب آي 
کو سل و بيت نى بین لئ ا نكاكولى خاص اترام جيل فر ملاس لئ ا نکو سنت تيل قرار وی چا سکتا۔ 

(۴۳)----- وعن أبى بُردَ٤ٌء‏ قال: أخرّجت إلينا عائشةٌ كساءً ملبّداً وَإِزَارًا. 

غليظاًء فقالت: فيض روځ رسول الله عه فى هذين (مصفق عليه) 

تر جم ...... خضرت او جرع قر کی اللہ تھا ع دكت ہی كل نخرت عا كذ مارے 

ساحن ایک پو دگگی مول چادد اور ایک مو تہ بند ٹکالا لور فر اياك ٹ یکر يم سل اللہ علیہ 

9 مل مکی دور اناد وکیڑوں شش تل ہوئی_ 

60 ----- وعن عائشةء قالت: كان فراش رسول الله صلی الله عليه وسلم 

الذى ینام عليه أَدٌماًء حَسْوَهٌ ليفٌ ‏ (متفق عليه) 


ےھ 
ترجہ ...... رت ما کش ر ی اود عنہا ف ريال ہی ںکہ 1 خضرت صلی اٹہ علیہ کمک 

مت جس پآ پآرام فرماتے تھے يم لمكا تھا جس سکی جرال درك جما لكل کی _ 

© ----- وعنھاء قالت: كان وسادُ رسول الله صلی الله عليه وسلم الذى 

يعكى عليه من ادم حشْوهُ ليف (رواه مسلم) 

حم مس حر ما ر ا عذال ںکہ فو ردس صل وف لی سل 

کیہ جس ب آلب کیہ لگاتے تھ ده جز ےکا تا مك ھرائ جو رکی جمالك تھی۔ 

وسادہ کا گی تی وساده عرف ز پان بی دو ن میں استھال ہو جا سے و ساد ہکا ایک ن وہ گے 
پیک کان جالى ہے اسوتے و قت ر کے يثك رکھاجاتاہے۔ ۱ 

”و ساد کاو ورا یگداس جن سکو اکر اس پر دٹاجا تا ے یہاں دونوں متت استمال ہو ے ہیں ء 
ایک ب كه آ پکا کے نز ےک تاور اس بل ورك چیا بجر ہو گی ی رول الوق اور جز نہیں شی اور 
دوس راہ تال آ كا یچ بھانے دالاگمدادہ کی چم ےک تھاادر اس ٹیس روک و خی رہ کے بجا ورك مال 
کی برا ان دفول عد یں سے دو پا تل جيه ل حل د 


سر بنانا | ورا كا ستتعرال :- : 

بی بات ب کہ بستز ينانا اور اکا اتتا کر نان یکر بحم صلی اونہ علیہ و حل مکی نادت مہا رک یک 
آپ کا ستز تھا آپ نے ا سکواستھا لكي وکر تہ سوس فكو فو دیز ین بر بھی سو كت من سز بر سو کات 
نے آر ا مکی تین آ جا ۓگیء نین یس سو لت ہو آ را مکی ند آجاۓے ہے ىلق درج عل مطلوب د 


مت میس تكلن کی بججا سا دی اختیا ركرنا:- 

اس سے ہہ بھی مھ میس آیاکہ سول اود صلی اللہ علیہ و صلم نے بستز میس زیادہ ملف ہیں فر ميكل 
سمادگی اختیار فرما یک كدت کے اندر بجاۓ رول و رہ جھرنے حك ( رول س كدازيادو زم ہو ءانا 0 
702 جعال خر ی۔ مطلب ہے كل جیما ملا آي نے استعا لک لیء زیاد ہا ھا سر عل جات لو ہے 
بھی ال کی فضت ے شر جانا جائز نہیں اين حضور ارس صلى اذ علیہ و کم نے بہت اتلك مس كا اتام ہیں 
فرلا جیما ل وبيا تيار فر اليا خی كل بستر مل دبا او رعسی در چ میس آرا مکی نيدل رنتى ہے لیکن تقو 
اور تضوف کا مس ا کو بھی چو ڑ ر ےک تيال میس فو مجابد کر و ل كاء مشقنت اماو لكالور ہے بھی نی ل 


94 ے۳۲۴3 


آرام جیکواپنا تصووا کی يناليك ال کے لے ب رونت ياي تل رہے ہی ںک کی طر ہے سے ندم سے نرم سر 
ل جاے۔ ہے انداز بھی اخقیار میں فرمایا بک اختد ا ىكل راد اخقتیار فرمائی سبو لت لگئی تو ا ھا سے و رنہ زیادہ 
ولت کے طالب نہ ۓ۔ 


لبال اورکھانے پیے د تیر یس یاد ہوا ت کی یا سے ساك اور جیا شی کی کلم :- 
پل ایاریۓ فل ق رج آئی سبك مباس تر او رکھانے ہے و یرہ شل سا دکی اور جناكثى 
اضار ون يدناك ماج نہ نو زیادو دک ماق بھی شر عأببشد يده نہیں ے 00-0 
کوآرام 2 نايا سج وات بجيال چا لیکن گے عد يقال عل 4-1 کاک حضور ارس صلی ٹر عر 
ارچ بس یں ری پے ہت وسم ہیں 
زیادوار فاه ئ زیاد ثم اور ہو لت سے مع فرمایاکرتۓے تھے۔ 
یم المت حظرت قافو مر الوفات نل تھے او رسکی توں سے مس اسہال يكل ر ے جے 
آپ ہا ےپ ںکہ اسہال ايك دن میں بھی آو یکو ت کر رین ہیں اور يك فتول سے تمل ر سے تے اور مر 
بھی اى (۸۰)سال کے يك يل ی تو جو ضع اور تات ہہ وك ال ك1 ب اندازه لگا کے ہیںء آي ایک 
دای کر لي و سے ےکی نے عر کیاکہ حفر تگداد کرد یی تاک نرم ہو جائے الم آ پک 
تحلیف ہو ر تی ہ کی فو حرست نے فر مایا بل ا سکی ضرورت یی اور يجري فر ايام از وت رز 
مون يكن | مضنا ا قل ودين رو وو ريد ور را 
بات یاک م سے طبیعت میں ممدر ہو پاتا ے و هكواره نی ہو ی کن تا زک بد ن یں ہو لکہ جب تک سات 
امھ ای فوم نموا لوقك تک نین ہآ ے_ 
)3 ----- وعنهاء قالت: ضر ہر یو ہی سے 
قائل لأبى بكر: هذا رسول الله عر مُقبلاً سْ2قعاً۔ (رواه البخارى) 
تر جم ...... حقرت مائ ر ی ال تال عنہا فال ہی كد ای ا ا کہ ہم اگم 
ٹس دوپپپ رک یگ ری کے اندر ٹیٹھے ہو سے کہ ايك كن وال نے حضرت ا ویر ر ی 
ل تا عنس كباكي رسول الہ مال علیہ سم اس حال می تخر یف لاچ ہیں 
کہ آپ نے رکواوڑھاہواے۔ ٦‏ 
90" و فصل ے 


بے ١۰۸‏ ہج 


مان فراي ج اور ہہ با کہ ہم دو پر کے وقت اسيك مطل ته ىك ركم صلی الثد علیہ و حلم تش ريف لا ےج 
رت سے پل ےکی بات ے اس موت بر ضور اتر ی عا نے حمر ابوك كباك اللہ تقال نے بے 
جر تك اجات د ےدک ہے اس لے یس نے جرت كارادوكر لیا سے أو تر ت ابو برف عر كيا:”"صحبة 
یا رسول الله “کہ بل تھی آپ کے ہا تھ جاناجا جنا مو ل اوري عر کاک م نے اس مقصر کے لے ونان 
بھی ني رکر رھی ہیں ان میں سح ایک او شی عضو راس صلى الہ علي وسل مکی خر مت اف شل مث اور 
ایک خو و حت رت ال وج نے لك ل اور ان بل حضرت اساء بنت ال كر اوز دوس رے مع اب وعيال کے ذه 
كنا يان كادياء آ گے تيبل سے مر تکاواقعہ سبد يهال چوک مقصور ابنذ اگ ی حص تاس لئے صرف ا یکو 
07 ممقتماکاافندے۔ محضوراقرس صلی اللہ علیہ و کم جب ت لش ليف لام لو پنے سراوڑھاہوا 
تاس مل ےک ےکر یکا مو کم تالور دو یہ رکادقت تھا او راس علا کے کک ہک مک یگ کی بہت شد یر ہو کی ےآ 
كل ساد افول نے انا ےکک ی اس راو رگد نكو عام کر کٹا سے او بچی اعا مک ے۔ ۱ 

)۷( -----وعن جابرء أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال له: فراش 

للرّجُلٍ وفراش لأمرأتهء والثالثُ للضَيفٍء والرابع للشيطان ۔ (رواه مسلم) 

جمس ...... ضرت جار ری الث تال عند سے رایت ےک حضور ارس سل الد 

علیہ كلم نے ان سے ف ماناک ایک بس رآ ی کے لے موكيا اود ايك ستاك بی گی کے 

ے م كيالو ر تراس ہمان کے ك م ویاو ر جد تماشيطان کے ك ہو جا ے۔ 

اس حد بی ثكابظامر ما ل ب تنا ےکہ آد یگ میس تین بسر ركع سنا اور تین سے زامد خیطالی 
تر ہوگا۔ رطان بستراس لے قرار واک دواس راف میں وا غل ہے اوراس راف در حقیتقت شيطا نکاکام >- 

إن الْمْبَذْرِيِنَ كانوآ إخوّات السَّيَاضِين ‏ و گا الشَّيْطَان لِرَبَهِ كفُورًا ‏ 


ینغ مین تافر دنو مان ما وز تک ین انوارع بیا نکر نا مقصوورے:- 
تین بستزوں کے وکر ے تی ن کا حر و تصوو شی ںکہ صرف تین بسر ركه کت ہیں اس سے زیادہ تر 
نہیں رك حلت ب اصل مقصر یہ ےک ہگ رکے اندر نتر اور ساو سامان رورت کے مطالق رکھنا جا سبك 
ضرورت سے امد کیل ركحنايا سج اس لكك ضرورت ے زا کد تاس زاف ہوگاادر اسراف کے سا تر ۔ 
اس کا متتصر فراش اور وکھاوا بھی ہو جا تكب ر بھی مقصودہو جاے اس لے وود رست نہیں تین کے عرد سے 
در تقیقت تین مکی ضر ور تيل ہیا نکر ن مقصودرہے, تین افراد ہیا نکر نا لقصو تيبل بللہ ضرور کی تین 


نكا ٣۰۹‏ ا 


وا مان کر مقصودہے اور پر نوع کے اند رکیافراد ہو کے ہیں_ 
کر یئ رٹ 2 0 سن 
بی ےت ےت 
قاحت نہیں يا تعدو بست اس لے كت پڑت ہی لك #نض او قات ايك کے دععونے میس وف ت لك جا تا > 
فى دی میں وود رع د كات دس می دوس رااستعال ہو جا ۓگااس ے دو مو گے ف كول حر کی بات تيبل 
ر مال ضرورت کی اک و یت یر ےک أدق ای رور تالت و رک ہو- 
دوس ریگ مکی ضرورت -- دوس رک شرو رت یہ س كد اپے الى و عیا ل کی ضر ورت لو ری 
موا یکو ”فراش لإمرته“فراياك اپٹی یوک کے لے ہے غك اق ہیی کے لے قبست ہو سنا > اين 
ون للك اهز يش ]ل نك لعز ننه سلف کر ید کے کہ اين الل وعيال کے گے 
سر موا اب اہر ےکہ اال وعيال زیادہ ہیں ل سترو ںکی عق ار کی زیادہہ وك اوراكر ا وعيال تھوڑے 
ہیں تو بسترو ںکی مقر ار بھی تھوڑی موكىء ہے مطلب أ ںکہ ابل وعيال کے لئ صرف ايك عرو بسر مو 
مقصر ضر و رر تك نو یت جیا نکر نا سے تخد ادبیا نکر نا بال 
تس ریا مکی ضرورت کٹ EE LER‏ 
الكو بست و ینا ڈ ا سج ا بی کے ہا كم مہمافو لكا مكان ہو جا او ری کے بال زیادہمہمانو ںکاامکان ہو جا 
ہے بیک وفت زياده ہمان ع2 ہیں اال کے اعتبار سے رورت کی وجہ سے حرا کا فرق پٹ جاۓگا۔ 
ضرور تك ایک فو عیت یہ ےکہ ہمان 1 گے ہیں يان بيك وق کے مہمان آ کے ہیں اس میس تحر ار لیف 
ق ہے۔ ایک آد یکا مہمان ص دیس كم ىكل نا ہے اس کے لے ایک مست کی کان ہے اور دوسرے 
کے ياس بکثرت م مان آست ہیں اور ايك وت ب لک كي ہمان آتے ہیں واس کے لے زیادہ بسترو ںکی 
ضرورت ہ وگی مشلا بک زت دس دس ہمان بھی آ کے ہیں اگ راس نے مہمانوں کے ے دس (٭۱) یر رہ(۱۵) 
بست بار سك ہیں وو کی الثالث للضيف ل اندر وا ل ٰے۔ ١‏ 


كريلوسايان کے .لئے ضرورتك کے ور جات :- 
ا ںکوعز یہ شق رک کے لو اب گت ہی لك ضر ورت کے دودر سے ہیں: 
(ا)............ایک وجو وور ورت کی ووسر جوا ںو شی زمر استحال نال - 
)٣(‏ ہا ووس ری متو قح ضر ورت حن جو کی بار استعال میس آجاتا ے كرجه اس وت اسقعال می ہیں 


ظ 

روز مرواستتھال یں یں 1- وو فو ںآ مو ںکی ضرورت کے لك بس كيل ہیں موجودوضرورت کے ےار 
متو تع ضرورت کے لے بھی او رجو مسترت اب استعائل جو رہ ے اور تھی آ یر واستحال ہو ےکی اميد ہے بي 
خيطالى بتر ے اس ےک بے یال اسراف میں وا قل ےو وو ماک قصوو کہ بهار هك بل ات استہیں۔ 

ہے ستل صرف بس رکا تبي لگ کے سارے سامان کے بارے یل کہ ای چس جو روز مره 
استعال میں آل ہیں وہ بھی ی اور و ججز يل جو بھی بار استعال می آل ہیں ا نکاوجود بھی مھ میس نکیا 
يك نكيل وی ہی سا مان تبكر رکا ے ج بھی بھی اتال می نیس آ ات زیادہ رن ہی کہ ا نک بھی 
ضرورت نیس بلي مناسب نیل اس سے پچنا چان او رگ کے اندر فضول سامان اکا ہی کر نا جا جد 


شوم کو بیو ىا کے سا تجھ سوناجا تۓ بالك :- 

ال عفرا نے اس صد یت کے جت ہہ ستل بر اسيك عر وكوايق بیو گی کے سا تد سونا چا ےا 
ایک بسر بر سونا جا ہے۔ نل احاد یٹ سے معلوم ہو جا ےکہ ا تم سونا یا ے اور حضور اتر ی صلی الہ علیہ 
و تلمكا شل ميق تھا يان اس عد یت سے معلوم ہو رپا ےکہ مرد کے ے الك ستر ہواور عورت کے لئے الك 
بسر ہو ینف حضرات نے اس سے اتد لا کیا ےکہ الك سونا بتر ے الك الك سونال نض جائز سے مان 
یقت یہ سب کہ دو متلہ ايف لہ بر یہاں اس عد بی کا ا مسد کے سات كول تلق نیس ہے “كني مد یٹ 
نہ بق سج كد اكت س واود ن ےی ہ ےک الگ ایک سد ہلل صر في "بق سل كرش مرد کے ے الك 
مت ہو اور تيد کے لك الك بست ہو ہاگ می و چ سے الك سو ٹاڈ جاۓ خلا يهار ىكل وج سيا خصو ص ایام 
یش خطره موك میس شر ییایند یکا لحاط نیس رکھ سكو کا اس لئ الک سو جا نوا سک کیش ہے۔ بات ل 
ناولاو خی او کیا سب پلک لگ مله ہے عالات اور شای کے پر لے سے بد لمکا سے اس لے 
كول خی بات وی طور بر سب پر لاگو نی کی جا لق 

)۸( -----وعن أبى هريرة» أن رسول الله صلی الله عليه وسلم قال: لاينظر 

الله يومَ القیامة إلى من جو إزارَةُ بطرأً- (معفق عليه) 

7تس کت ح e‏ ل 

کم نے ارشاد فر اک اٹہ تالی قامت کے دن اس تنك طرف نر بھی نہیں ۱ 

فال کے جو اپنی للك كبرق وج س ےکی _ 

گی مطلب س کہ ج بآدئی يله ا کی لك شور وی ما ی کک e‏ 


) 

کی چا جو خض کیرک وچ سے اپ تكو غير ہک کسی اٹ تالی ا یکی طرف وكا کے بھی نہیں لانن 
ا کی طرف نظررحعتہ نظر عنایت تال فر كيل کے و سے نو اللہ تعالی یر ہیں ديك ہیں نے ہیںء 
جا ہیں يبال رنہ فرمان ےکا مطلب ہہ ےک ا یکی طرف دعیان بھی تيبل فر نبل کے ا کو قا ئل 
اتقات نیس یں کے اللہ تھا لی اس سے اتی نا ند يكل اور افر کا ہار فر یں حك 

00 بده وعن ابن عمر ان النبى صلی الله عليه وسلم قال: من جر ثوبه 

خيلاء لم ينظر الله إليه يوم القيامة ‏ (متفق عليه) ظ 

52 می حضرت ابلن رر ی اللہ عند سے روابیت ےک حور افر س صلی اللہ علیہ 

و كلم نے اد شاد فر نياك جو اپ ےکپڑ كو كلب رکی و ج سے لاک ے الث تھی قا مت کے 

دن ا سکی طرف نظ بھی نہیں فر بل ك- 

(۱۰)-----وعن» قال: رسول الله عله بيسما رجُلٌ جر إزارَةُ مِنَ الحيَلاءٍ 

خسف به, فهو يتجلجل فى الأرض إلى يوم القیامة۔ (رواه البخارى) 

ر خضرت ابن رر ی الث تخا عت سے رایت ےک ر سول الث هذ 

ار شاد فمایاکہ اس عالت ش لك ایک آدى ايفى پاد ركو گب رکی وجہ سے اہو اجار با تقال 

اسے ز مین ٹیل رعشاو ا كياب وہ قا مت کے دنک ز مین بال و صنتار ےگا 

611 ----- وعن أبى هريرة» قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم: 

ماأَسفل من الكعبين من الازارِ فى النار ۔ (رواه البخاری) 

ر يتس ...... خضرت الو ہر ہہ ر شی اٹہ تتا ل عند سے د وات كم رسول الد صل اللہ 

علیہ و کم ےار شاد فر يال لگ یکاجو حصہ مول سے ينك موده دوز رع ل مو 

ال حص ووز شل نود کل ن ےا وجب و من ااال ردق کے 
یک نے دالا کی دو زر ل ہوگا۔ ان جنر اعاد بیث ٹیل اسیا لار اور جر از ار کے پار ے یں کت و كيد يل 
يان فر ا یں ہیں اس سمو نک یھ یں 1 کے الفصلالثالى او رافص ل الثالث میں بھی آم لك 


اسپال اور جک ن :- 
: اسا لکا ن ل کر تاور ”جرک حن کیا _ 
اسبال از ا رکا مطلب ...... ا مطلب یہ ےک كيرا اتنا لديا م وک ز ین ب رکشت ہوا چلا 


ہے ۳۱٣۳۲‏ ہے 


جاے۔ اسپالی ہر لہا کے اندر ہو سکنا سے لیو خيره کے سا تھ خا یں ے چائ آل قر تع آم ے 
گ یکہ اسيال عام میں بھی ہو تا ے بت عراس جتنا عمو کی عرف یم ہو جا سے اس سے ذا عمامہ باد ناس 
ل ےک تش عا قال میس بدا عمامہ بان دحتا رک بات لبها جات ہے یا آ سن ی مول ہے اس سے ب یکرنا 
ج بک ا ںکوظ رک بات جما ہاے۔ تی يا جبر وال سے ہے دوہ بھی اال می وا غل ے ای طراگمر 
عل ته بل پا شیامہ ء ینف شلوار مول سے ہے ہوں ہے بھی اسيال یس وا غل ہے۔ اسر لک نھوم بذاعام ے٠‏ 
ین زیادو تر عد يال می لت دی :کے اسا لک وکر ۹ ے کنا سبال ازا راا ارہ چ یئ باند ھن وال عادر 
كت ہیں نین يهال اسبال سے مراد روچ سے جم دع کوچ پانے کے لے بی جا واج دہ لگ اور 
تہ بن موی شلو اراو رپا جام و شير و بمو سب اس میں وا ل یں ۔ 

اسپالازا رکا عم ...... كل اسيال ازاد پر شد یرو عيد يل بيا نک ای ہیں اس لئ اتی بات لے 
شد ود ےکہ نی الہ اسپال اور تا طور اسیا لازا ر تاچا ۶ر ے۔ 


اسہال ازا رک صو تمل :- 
لین ملق جانزہے اض صو ر فال میں اس می آفصیبل ہے ےک اا نکی تین صو ر تيل ہیں: 

1 صصورت...... يبل صورت يس ىك آ وی بالقضر گی رک و چ سے اسیا لكر لج شلواریا 
یں سے جےکرجاے۔ 

دوسرکی مورت 500 دوس رک صو رت يم ےک بالقد اسپال ازا كرجا ے يكن ا سکاخشاء گر 
خی لکیاورو چ ےکر تاے۔ 

تسر صور رثك ...... ت رک موا ت یہ کہ إثير قصد کے چ ہو جا اور ہے مو ااال وقت 
۴ تا ے ج بک کپ ےکاسائزاس انداز سے ايا ركياجا ےک وں سے ہے نہ ہو ليان ازار بندڈ ميلا مو نے 
ا ےو نا گا کی و 

بل صور رتكأ 35 ۶ی 7 و ےرا ارہد 

3 ...... تھی ری صورت بالا تاق جاء > ال ےک ج وکام بذ رقصر کے ہو 


يساق صور رت كا 
وشا نور كلت 

دو رک صورت كل اخلاف 0000 دوس رک صو رت کے پارے بل اختلاف سے می پالتصد 
کیا ليان ا كانشا تطبر تال سے ہے جام ہے بانا اداس ین دو قول ہیں : 


بع rr‏ بی 


0( ہت ایک تو لیے کہ ہے ک یک وہ تر بجی سے شی نا جا گے جنانجد علامہ این رر حم اللہ تی كار 
الہاری شی ای طرف ركان ے۵ 0000 ظ 

09 کا دو را آل یہ كي یکر وو تليق سے مق اکر گب کی وج سے تل وکر وہ تز بی سے چنا 
اام ووی ر حمہ الف تخا ىذ ب كباس کہ امام ا ڈیر حمہ او تال نے اسك فص مکی ہے اور خو دوو یکی ابی 
را بھی بی معلوم ہو کی ہے حنطير ل سے این ملک اور ملا ی قاری ر حمہ الثد تحال خر ہک ر اہے بھی 
بی ہے۔ اور اوی عا یرہ میں بھی عي کک گیا کہ اکر بي تبر کے ہو نو گھروہ تی ےکروہ 


هن الخیلا ءک تی ےکہ گب رک وچس ےکر ے لن ىہ حرا كلت ہی ںکہ ىہ تید اڑا زی یں بک دا تی ہے 
نی ایا ہو ایی گب رکو ج سے ہے مہ قيد تخ لك زی شناعت یا نکر نے کے لے زک كن سے ق ھن یاک 
ل ج: ولا ہوا فلکم عَلی الْبعَآءٍ ِن رذن محصما ۔ک اکر ہا ری بانديال ياك دام ىكااراده 
بون وس بدكاد اي بور كرو ماكر ودياك وای يد ناچاق مول پچھر ا نکو بجو ركرناكناس> ۱ 
اود كر ودياك دا یت پاق بمول نے چھرا كوب دكار ىاب کیو رک ناچا ے يمراد بل يلل دونوں صور تول ل 
ہاج یہاں ان ارذ تحصن اک تیر احڑا زی نی يكل وای کیو ںکہ عام اک اوا ی وت ہو جاے جب 
کہ دہ اک دا کر ہناچا تق مول یہ قيد اکرش لکی مير شناعت متصودہ کہ اپ باخدایوں سے ز بر وق بدکاری 
کر وار ہے ہیں ب دکا رک بات خود برکاباتدے اورز يردق ک یکر وار ے ہیں وا کی رالد وی ہگ اس 
طرح هن الخیلاءک قي رار جد اعاد یٹ مل سے کان يہ قید اڑا زی يبل بک وای ے۔ 

يمل قول والو ںکی دوس دسل ...جو نطرات اسپال از ا رکو مطلقاكر وه ر کی رار نے 
ہیں ياس وہ گب کی و ج سے ہو ياف رکب ر سك ان خط رات كا استد لال يول بھی ہو کاس هك یہاں در یقت 
دو طر عکی و عيد يل یں ایک وعير ما أسفل من الكعبين من الازار ففى النار س کہ ازا رکا چو صہ 
کول سے ينك ہوگاوہ جوم یس ہوگاء ےو ید الى س كم عام لود اس کے سسا تيد كب رمش ”خيلاء “كل قير کر 
یں کی سے اور دوس راو عيد””لاينظر الله اليه يوم القيامة'ك اٹہ تیا الى طرف قیامت کے ون 
وکین گے بھی یس ءا وع سے سا تمر اکا مات غن خلا كل کے لق کی کیو یر ول 
دید ہے ابن ایک صد یت شل ب ويد بي نک گئی سے کان اس میں گب رک قید ال ہے دہ عد یٹ يه ب کہ 


۔ قفقات 

فور ارس صل اوہ علیہ و كلم نے اد شاد فرمایاکہ تین عم کے لوگ اه گیں: لا ينظر الله إليهم يوم 
القيامة ولا يزكيهم ولهم عذابٌ أليم کہ تیا مت کے دن الد تال ا نکی طرف نظ ر نہیں فر یں کے 
اورا نکی تزه 7 نیش دی کے اوران کے ےد روت اک عز اب موكا- يبلاده شس جواحسان جن ےکامادی 
ان ال واج نس سے لو وال تن سے ات اور تب دو ص ٠‏ 'السل 
إزراه “ےچ الى لگ ویر ہک وال سے بی ےک ےگاء ال شل وعيد تو ےک اللہ تیا اس پر نظ ر ین 
فر بل کے کین اس میس كلب رک تیر تمل حاجم اکرو بشت احاد یت نل جال ہے دوس ركاه کید سے وبال خيلا ہک 
قير نی گی رک قير ضر ور مو جور ے۔ 

اس یتید يد كباج کاس کہ دوم ركادعيد ال صورت شش ہے ج بک آدى اسبال گی رکو چہ سے 
کرے کن کی و عیددونوں صور قال میں ہے کر کے سا تحر مو الخ كبر کے لكامطلب یہ ماک بغیر 
كبر کے ہو فو كك یکناہ ے اس سل كلم ففى الدا رکید عید ے او راگ ر كب رك وج سے ہو او ای سے بھی بڑاگناہ 
ا ففى النا ر کی وعير کے سا تم لاينظر الله اليه يوم القيامة گی وعيد تھی ے۔ ا 
سے معلوم ہو اک گناہ دوتوں صو ر تول میس ہے چاے كبر کے سا تجھ ہو یا بی كبر کے ہو ہاں بغر قصد و 


ارارے کے ہو چاۓ ووہمعاف ے۔ 


تر وہ خر بھی كال ے بل ےکر وہ تن نی سے وو حضرات ال وبکر صر ان ر شی الد عنہ کے واقتعہ سے اد لال 
کے ہیں جو احاد ييث یں آتا ے لو بیس بھی آ ئےگاہ بخاد یکی عد ی آربی سے کہ حضرت ابو كار 
صان ر ی اللہ تیا عن نے عرف کیازیار سول اللہ صلی الف علیہ و کم یری کی تقول سے بك ہو پا سے 
ولا کہ یش جر وت ا کا خيال رکھوں اور ا یکو او پر رکھوں اور اہر ےکہ جر وت او یکرت ر ہن مکل 
ہے اس لے بے خيال يل بے ف بھی میس نے ہو ہا ہے ۔کہاجا تا جك خضرت ال وبکر صر ان ر شی ارش تی 
عن رکا پیٹ بڈاتھاا لک وجح او کرت بھی تے لوووط عل کر ہے ہو ہا قي وج مو کول اوروج ہو 
ہر حال حطرت اب وبکر صلی ر شی الد تخا م عند نے ای ىہ حالت حور اتر س صلی اللہ علیہ وسل مکی ضمت 
مس ملك أو آي نے فررايا: إنك لست من يصنعه خیلاء كم تم ان لوگوں میں ے يبل جو گب ری 

0 اجون ن 

2 کو مس رات کی ولد ١‏ 


ع8 ماكر 
دعل قلات تن يلد 2 9 0 رع وغ لسن اتن نولب قل د لها 
عت ہی کہ ہے عد یٹ ال صصورت کے باد ل سے ج بک فير ارارک ور بك مو جا كبو كل <طرت 
صر لق البرر تنه قا لل 2۴ ارارق ود ست سر0 ۶ موا سن تھ داور رادج 
سے با کے باد می ہے عد بیث کی ہے۔ ۱ 
کے قول والوںکی ددسي وليل ...کرات تزيني کے 02 ی 07 
کہ عم ایک کہ اسيال ازار تا اڈ ہے اوراس كم عل دو طر راك عد شش ہیں ایک وه جن میس خیلا کی 
تیر ے نأ عد یں مقید ہیں او رووس رکوہ یں ن میس ”خيلاء “ين تكب رك تیر نہیں ے شی يفيل مطلق 
ہیں اور جب ایک می عم مج دوادو سے زياده فصو ص آ ہا ہیں ان میں ے مض مطلق ہوں اور بحض مقر . 
مون تو مطل کو مقي بر گو كيا احا سے ين جو ملق سے اس مس بھی دہ قيد مو ظط ہو تی ے للبز اجن نصوص 
یں ایال ازا پر و عید سے کان جب ری قید نیس پاٹ كان میس بھی ىہ تیر مو طط موی جس سے معلوم ہو کہ 
به سار کہ عيد يل چاے فى النارکی و گید ہیا لم ينظر الله اليه فى يوم القيامة کیو عید ہو ىہ اوقت ہیں 
ج بک كبر ہواگر تبرت ہو قوس و ير ال جد 9 
. امال ازا رکی حرمت معلول بلعل ے .... اکر يت بمو تنام روايات به ادر مل 
کے تام يول ب ترك جائے ابر بات جب آل چک (واد اعم )كه اسال ااا چ تالوپ 
يكن اك تمت معلول ہے عل تک و جہ سے نا از سے ضام تھ دی نیس ہے۔ 0 
اھ تخي رق ...... وہکام جو شر بیع کا عم ہوتے ہیں لیکن ا نکی علت معلوم نہیں ہو کسی مل نز 
ا نكادار ودار کیل مو جالب ےکا مو ںکوامر تعبد لكي ہیںءاسبال ازا رکا منورع ہو نامر تر ی کین ے بآ 
ستاك د چ سے ممنوع سے ہہ عم معلول بلعۃ ہے اس ےک یلا کا عم ہے جیا دک لور پ ادات کے 
یل سے ے عبادات کے اج گڑے اودمازات 2 يل ے جو احكام موس ہیں دہ عام طور بر 
معلول بالعلة موت ہیں اورامر تخبرى يال ہوتے_ ١‏ 


اسپال از ای نو مو ےک عل كا :- 

ووعلت گبر ہے اور اعاد یٹ یل كلب رك قید ا سکشثزت سے آرت کہ ہے کے بخمر پار كار نميل 
ب کہ مانت کی رکی عل کی وجہ سے ہے اود ایک عد بی می ا کی تم رتا ہے حافظ ابن تج نے ات بن 
مع کے حوائے سے ایک عد یت لکی كا ن یکر ا صل الثر علیہ و سم نے ار شاد فرايا:إياك وج الإزار 


ټک ٣٣‏ اح 


فان جر الإزار من المخيلة 2ک اسپالل از ار سے پچ اس كك اسيال ازار گب رك و جہ سے و جا ہے يهان 
ان کا اف سے ہہ اسلو ب بتار پا ےکہ اسیا از ا رک علت کر جد 

ای طر لت سے حضرت صد ان اکر ر ی ایٹہ تی عت ہکا محاللہ ے اس کے باد مس لے قول 
والال نے اکر چہ ب كبس دياس كي اس صو رت کے بار ے ٹیل ہے جن بکہ خی راد ادکی طور ير ین ہو جاح اور 
اور واقت ہہ بات ددست ےک سوال الى عالت کے پارے یں ے اس ل کہ ححضرت صر ا نکی رر خی ال 
تیال عند قصد اورارارے سے ہے أ كر ے تے بک ایر قصد اور ارا کے نے ہو جانا تھا۔ يان حضور 
اتر ی ص٥لی‏ الثر علیہ و لمكا مل :إنك لست ممن يصدعه خيلاء ‏ اس سے مض اس صور تک عم بج 
ہیں تيبل آر ہہ سوال اکر چہ اس خا صورت کے با میں ے کن فقہا ءکااصول ے: العبرة لعموم 
اللفظ لا لخصوص المورد ۔ک نأض کے لفظو كود يكصاجاتا ےکہ ان كيا بے ل آیا۔ -- 
1 حضور اکر م صلی او علیہ و سم کے ہے الفائظ ہین ج وک كبر سك وچہ أي ںکرتے اس لئے تمهاد سه 
لے ىہ چائزہے۔ ضور از س صلی الد علیہ و صلم نے ا سکیا وجي بیان تمل فر مالك یراد ادے کے مو چاتا 
ہے يللد يه وج بيان فرمائ یک کی رک وج ے نی كرت اس سے بھی معلوم ہو اك اس ع مکی علت گر سے 
اور صر ان اکب کے ے چائز مو ےکی وج گج رنہ ہو ناے اور ہے سے شد و ےکہ ج بکسی تع کی علت محلو م ہو 
جا وا مع مکامرار طردأاور عکماحلت ير ہو تا ے مث جہاں علمت پا جاح عم بھی ہوگااور جہاں عات نہ 
الجا وہاں عم بھی نیس ہوگا۔ ا لكا تقاضاي ےک ہکراہت تريس تب وک ج بک مب ركوج سے ہو 
اور جبال مب رک وجہ سے نہ بووپال کر ابہت ييه کیل ہو گی جہاں علت ہے وہاں 3 بھی ہے اور جبال عات 
بال ے وہاں عم بھی نبال ہے اور یہ بات تنام عد یں کے بارے میس ہ وی چاے ان می گب رک تیر ہویانہ 
وال لكك عل کا مت ےکی ہر ہر تس میں صرح ہو ناض ر ور نی مو تا ليان نعلت اک سك اک کے 
باس شی ہے فیصل ہکم کہ ہہ يال ای سے یا نیس يال الى کل ہے ليذ اچہاں ليقن ہ کہ یہاں اسپال ازاد تبر 
یی وجہ سے نی ہو را سک وکر و شر بھی قرار تمل ديل کے ہلا تیر ار اوی طور پر مو ربا آدى سكياس 
انراز سے سلواي هال کول ے اوپر رع لیکن ير ارادى طور بر ازار بندیا گی دخیر وڈ حل کر ہے ہو جاتے 
ہیں فو نی بات س کہ ا كشا تر یں ے اکر بر ہو جن شر وع ہی سے ا حاب سے سلوا انی چ 
6 عرف سے ہہ لقین ہو جا ےک اسل كا غا كبر نہیں ہو جا۔ بڑے يش سكين طبیعت کے اور بڑے 
من تلح ثم کے لوگ کی سن کر لبت ہیں اوو ہاں ب كين كني اش س ےک كر امت کی نیس سے کان 


0 اپار تاب اللباس ياب صن ج ٹوب من افیلاء رخ / عا" 


:8 اس لع 


عام الات يبل مان طور پر اپنے بار ے مل بي ركهنا كل میس گی رکی وجہ سے اليا ی کر تاب مشكل ہو تا سج 
اپ بارے می ےکہناکہ میرے اندر تكب ر نیس سے ہے رات خود گر سے اور يد اخطرناك و عو کی سے او راگ ہے 
تو ںکپتاکہ مج بر سے بی اور نای مول کن ےکنا کہ فلا لكام عل نے كلب رك و چ سے نين کیا ہے 
دو کی اک چہ يحل دعوے ججیاخط ناک نہیں ے لين ہن الات میں یہ د عل مبالقہ آميز ہو كنا سے اس 
لئ ایا کا تقاضابرى س ےکآ دیا کے شل می اس کے سا تج ےکر وہ تر بی والا وا رر 
۱ لبت ججبال اس می کشر ت لاء و وبال ووس رول پر تت كحم لكف می احا کرک ها ے۔ 
: ر مال فقہامکادوس راقو لک رامت تر ےہ رکا ے اور بہت سے حنفیہ نے ا کو اظيا رکیاے۔ یہ اس 
ےک رامو یکلہ بهار بض علا ول میں خصو صا صو ہہ سر جد اور بلو چتتان يل بڑے بڑمے علما ءک و آپ 
و یں کے ےک ا نکی شلوار نول سے یچ موی ے اود ان جس بڑے د بین اور صا م کے افراو کن 
ہوتے ہیں اور بظاہر ان کے پارے میں کین مشكل ی کہ وہ مب كل وج سے الي اک سے ہیں اب ان رات 
پر ہم موب فق اد ی کہ وه یکر امت ری کے م رکب ہیں مہ بظاہر مزاسب معلوم كيل ہو تا 
تی تک دكار ف اياج جا ےک گر اور في رشب رس بکرتے ہیں اور ين ےکر کوگی رک بات ٹنیس 
ی جا كس نے نی ھک مدل ياس نے یچ ني ںک یکس ىوفرق معلوم نہیں ہو ا کی خاص نشانی نس 
اب تو تھے تہ 
ٹل اس نے گب رک وج ے نہ کیا ہو ا کی صورت مس آ ری دوسرول کے باد ل كنت فقت لكا الب 
اے گل میں اعقیا اکرےء ابا تمل ایمار کے ججی اک ككروه تر موا ے لين دورول کے پارے شل ۱ 
كرابت تیہیہ والا قول بھی پر رر کے ویم کل ب كر حر عم تك علمت كبر ہوا اعا یت سے داع سے 
اورجب ع مکی علت معلوم ہو جا .> فو رار تم علت ہی ہو لی سے يان آدى اپ بار ے یل بجی سو كر مو 
کاس کہ يرس ا كا مکا شا تطبر ہو اور بے این گی رکااحساس تہ ہو اور دوعر سے کے باد میم یہ سے 
کہ ا كاتا کب ربل ہکایک و لے بی اس نے 0 
(؟1)---- وعن جابر قال تھی رسول الله صلی الله عليه وسلم أن يأكلٌ 
الرجلُ بشماله» أو يمشى فى نعل واحدةٍء وأن يشتمل الصّماءً أو يحتبىّ فى 
ثوب واحدٍ كاشفاً عن فرجه ‏ (رواه مسلم) 
ور جسیم خضرت چا بر ی اللہ تال عنہ سے روابیت ےک رسول اللہ صلی اللہ علیہ 
و مم نے اس بات سے من فرما كم آ دی اپ با بل با تجھ سح كما ةيأ ليك بی جو ے یں 


جل اور اس بات سے مع فرمایاکہ آ و یکپ كوا ناوي کل طور یلیٹ لے بابک ہی 
` کے میں ” اععبام “کر ےا حال می كم ا كل شر ماد اہر مو ری مو 
او ان ل | ض 
9 پمک یی اتھ سے کا ے پگ دائیں تھ كلمن ان تل مک فی لتاب 
ار طم كز ربكل ے_ 
)۳( اور ووم اير كبر آ دی الیک می ج ے می جل ایک يلال شل جد تا ہے اور ایک شل كل اس سے 
ا فا ار کے خلاف ديك ل ب اتا چ ادر جل عل دقت بھی ہو چ اس سے معلوم 
وت تر نی ےت 
(r)‏ ات .اور تر ے مہ آلب نے ل تال الصتما سے شيع فرمای۔ 
ارال الصا ےکی عب آفییر ...... اشترل لصم رک عتا تفي ريلك كق ہیں ہب سے 
محروف LS SE‏ 
مشکل ہو جا ۓ اس سے اس لے شع فرمایاکہ اس صو ررب میں ایک فو نماز وغير و يهنا مشكل ہو جا گا اکر 
ڑکا غاز کے بو رےآدا بك ر مایت نی كر حك ملا ب تھو كوكافول کے بر ابر لا کے دابيا كر 
کے كاد وساي ےک آد یکو تش او قات جلد ی می تر ال و دالو انال يدك 
ات آپ وی ئک ا 


ا ا ل و ا 
ہو سے ستر سك کل ےکا خطرہ ہو جا سے جديا كه دبيها فال می کر نے ہیں اکر چہ وواشتزمال الصا عبس داخل نہیں 
لین اس کے قريب قريب سك ی کاای کفکنار بات کر س ےکرتے اوی ہکواٹھا بت ہی لكر اس طر رخاو پر اشا 
ليالس ر کچھ حص ظاہر وکیا توو متا جات ہے اگ اتا يل اٹھای تو دونا جائز دل ہے۔ 

يي ل 


ظ و 3-53 
ابا رکا مق حو مح ما رکر بیٹھنا “ل اس طر لقح بیع ناک 1د یک در ت داو اسار 


۹ 


ھا لول سکع پا 

0 ا E N‏ 
کت ب اراھ ےکن ان رکف ور غر ان کون لا عل 
ایا ہو تا تقال ایک یدک سار ی تی ہیی بال ی اسی سے اوي ركادعز تيا تالور اى سے نا كيل عق یں 
اس لئ ب ہے بن کی ضر ورت محسوس نبب ںکی جائی ی یہ ف كيك ےکہ ستر تيد يليا يكن اک عالت 
يك كل ایک أي یی مول ہے ايك بباساجب پہنا ہو اے اکر احتسباءً ی كا فو خطرو ےکہ سز ظاہرہو 
جا انس گے ایس سے ع قربالات 

)1۳( ----- وعن عُمرٍ وأنس وابن الزبیرء وأبى أمامة رضی الله عنهم 

أجمعين عن النبى صلی الله عليه وسلم قال: من لبس الحریرَ فى الدنیاء لم 

يلبسة فى الآخرة ‏ (متفق عليه) 

جم ::::.. حطر ت عرز اماي زب اور امہ رصق الثد تقال “ملت روات ے 

ات یکر یم صلی اند علیہ وم نے اداد فرماي/ كم جو آدى دنيا عل ر سم ين گا ود ات 

خر نشین وین لكان 


مردو ليك دنا يل ر مم ینتا آخرت ٹیل ر مم سے حرو یکاذر له ے:- 

آخرت میں یں بان کے كاكا ايك مطلب ير ےکہ وه جنت جل کی جا ےکا اور ہے ال صورت 
یش م دكا جك صر فر شم يفنا تی نہ ہو بل اس کے سا ت كول ای یز بھی شائل ہو ار ےکنا نکی و 
سے آدى دا الام سے اريت ہو جا ناس خلا ر مکو طال جد لیا چاے و نر دو غير وال اند از سے علال 
کہ نوب تکف ريك تق ما - 

دوس را مطل بي ےکہ آخرت عل ر عم تيال بان کے کسی ابنذ اء جنت میس داشل تيبل موكااور ا 
اہر ہہ مطلب ران كه ابق اءوا سے ر لم يبنا تعیب نی م دكا بل و تیا جو ر م يبنا کنا کاار ا کا 
اك مزا لتق بويك بإ ال تیال م شل سے ای اور وچ سے ماف فرمادیی تاور بات ے۔ 

تیر امطلب یہ س ےک ہاگ جنت یل هلا مك یکی تو بجنت كى بال متيس تو نعییب ہو جا بلك يان ر م 
والى ھت ا سے تال له كلد ۱ 

(٤۱)-----وعن‏ ابن عمرء قال: قال رسول الله صلی الله عليه وسلم إنما 


وك .سم آعم 
يَلبَس الحریرٌ فى الدنيا مُن لاخلاق له فى الآخرة ‏ (متفق عليه) 
رجہ ع خرت ابن رر شی اللہ تال عند سے روابیت س ےکہ ر سول اللہ صلی اللہ 
علیہ 0+0۳0( ر مم دو لوگ يمن ہیں جنک فی ثل- 
(شكافريت یں) 
()۱١(‏ --۔۔۔ وعن حذيفةء قال: نان سرت ای عليه نل ان 
نشربٌ فى آنية الفضّةٍ والذهب وأن نأكلّ فيها: وعن لبس الحرير والديباج» 
وأن نجس عليه (متفق عليه) 
7ر کت حطرت زیڈ سے روات ىك رسول الثر عه نے یں ال بات سے 
را )کہ ہم حا ند اور سو نے کے بر توں میں يدل اوري كم كم ان بر ول کے انذ رکھاشینی 
اور آپ نے مع فرايار م اور دای کے ينه سے اور اال بات س ےک رمب یں 
€5 -----وعن على رضى الله عنه قال: أهديت لرسول الله صلی الله عليه 
وسلم حُلَةٌ سِيّرَاءُ فبعث بها إلیٗ فلبستهاء فعرّفتٌ الغضّبٌ فى وجھہء فقال: 
إنى لم أبعث بها إليك لِتَلبَسَهاء إنما بِعَثتُ بها إليك لِتُتققھا مرا بين 
النساء ۔ (معفق عليه) 
رچ لمي حضرت على ری الث تال عد سے روابیت سكم رسول الثم سپ کو ایک 
یھ می اکا اوور ونرب ا ا 
نے حضور اق رس ينه کے جو # عل نار فى کے آغار وس کے و آي نے فرايا 
کہ ہہ جوڑائٹش نے آ پک طرف اس ے كيبل كبيجا تاک تم خود يي لوبلل يل نے مہ ال 
لئ تقال ماس ےکا فک ابی عور تون کے در ميان اوش حفيال :اک شی مکررو۔ 

(۱۷)-----وعن عمّر رضى الله عنه أن النبى صلی الله عليه وسلم نهى عن 
لبس الحرير إلا هكذاء ورفع رسول الله صلی الله عليه وسلم إصبَعَيه: 
الوسطى والسَبَابةٌ وضمهما- (متفق عليه) 

وفى رواية لمسلم: أنه خطبّ بالجابية» فقال: نهى رسول الله صلی 
الله عليه وسلم عن لبس الحرير إلا مَوضعٌ اصبَعَین أوثلاث أو أربع ۔ 
رجہ می .. قرت رر صل الث عنہ سے ادایت کہ ئ یکرم صل اذ علیہ و صلم نے 


۱ )0( 20 3-5 کی رر و میں جناي نر 


grr کا‎ 


ريثم ين سے مع فر کر تاور سول اللد صلی اٹہ علیہ و سم نے بي بات فرت مو سے 
انی دو انیو ںکواو بر اٹھایالشنی در ميان وا انگ یکواور شهادت والى انگ یکواور ان دونو كو 
لایاادر الیک روایت یں ےک خطرنت رر ی اللہ تالی عد نے جاہیہ مق شام کے ایک 
شر س خطبہ دیااور اس یں ہے فر با اہ ر سول اللہ صلی اٹہ علیہ و کم ےر م بی سے 2 
را گرد ھک تددو ايوس کے برب وی نا کے برا ر ی چاراگیوں کے پر بر ہو۔ 


ر 
گ9 رش ينا مم کا BA El‏ 
ہی ہیں لن ریشم کا حم میں مجھلیاجائے۔ 
ریم کے عم س سلف سے ٹین قول قول ہیں: 
این عير عبراش بج زی ر اور تش سوا سح بھی مب منقول ہے اور ان میس سے ن برک 3 
کر ۱ 
)¥( کر نر ھت مھ سیت ۱ 
ک ڑکیا ےہا تی سيا ال صورت يل ےکہ ج بکہ کبیا فر کے طور پر ييف بذات خود مرد ی ہے 
نور یں دج چنا ترت عیدا مین بن وف ظا کی راے معلوم مول اور کیش سلف 
سے یہ بات قول ے مصنف عبر ال زافق شل کہ ایک مر ني كيار معن بن وف نے رم ین رکھ تھا و 
حط ردت رر ی اللہ عنہ نے ايل من کیا تو حت عبر ار مین بن عوف ر شی الث عد نے عضت مو بال ١‏ 
اکر اپ میری مان لی و آپ بھی مي ری طر بین ليل ءال سے معلوم ہواکہ مردوں کے ل ےکر وہ تم بی 
ہیں بجعت ے ہہ دو فون قول تقر پار وک م« جه ہیں۔ 
(۳)......... بعد کے فقہا کا قق ريال برانقاق- ےکر یم اور قال کے ے جات سے مر و لے ۶م 


سے ابا سس سے خوف؟ کو قولہو دوہ 


یشک يقت 


یہاں وو ےکا ےت ےت تج كك 


rrr 5i‏ أعم 


7 نا جا ڑے 2 سے مرادکیاے۔ ہمارے بال تل او قات ہر خر یڑ ےیہر مکی سل کور سی 
كذ اكب دیاجاتا ہے لن شر ما ۶ بریارششم سے مراددور ثم ہے ج خاص م کے کیٹڑے کے منہ سے نا سے 
ایک بخاص كيرا مو تا سے جو زیادہ تر ش مو ھا ا ہے ا کی بمیاد یا خو راك می ہو لى ے اور بحب دہ ناض ر 
کو تق جا جا ہے اس کے منہ سے ايك ا ل مكالعاب كناش رورع جو جا ہے اور وہای لعا بکواپنے اد پر 
يفنا شورع كر دتا ے اور اک لعاب سے ری سے جن جاتے یں اور وہ خود ای کے اتد رگم فک مر چاتا 
ہے۔انما نکور م دسي کے لے ووايق جان کی قريا نکر دتا ے ایک عد یر ا تنس دانع نے تايالم جب 
ا لكا اعاب کا ےکا وت آ ا ہے قز ييه اپنے ببي ثكوغلا لت سے كمل طور ير صا فکر ليا ا کے بعر 
.ب كام شرو رك تاج اور اس کے اويد الیک خول مین جاجا سج خوداس میس مر جاجاسے جاک انا نكو بالكل 
صاف تمرك جز ےہ اس کے او پر وال ریش سے دحال و تیر ویناک ہکپڑراہایا جا تاے اور بانرم اور شتی 

كيرا مھا احا ہے اور خو ل انگ ہو جا سے ا كواطياء مو ]ادويات ٹیل استعا لکرتے ہیں ا سے اير کہا ہا 
ہے اگ ر آپ نے اير م یھنا و وآ پ می بھی دوائا كك يجا ب لك اننا ير مم دنے دذوہدیدرےگاءووخول 
سے بول کے ان کے او پر سح ر م کے دي كواتار لیا جا تا ہے يكن یھ یھ اد پر رہ جانا ہے اس سح آ يو 
معلوم ہو چا ےکک ر مکیا ہو جاے۔ 


ر 2 گی اقرام:- 

فقہامنے ر نٹ یکپٹڑ ےکی من اقام کی ہیں: ۱ 
(1).......... ی نم جر میکس لانن ولمس رم :کپ ےکا جات اور بانہ ر مکاہو ا سکو حر ممصم کک كيت ہیں۔ 
(r)‏ سا وو گی مم سے ہک ےکا ا أو نی اور جز” کے کن بانار کے نے کو ہر یش ری 
کچ ہیں اور بات ےک وم کپ ہیں وس د کک اور چ ڑکا ے اور کان ےر کا ے۔ 
(r)‏ کت تی ری م ال کے بتكل س ےکہ تانار مکاہے اور بات کی اور چ کاے۔ 

ان یش سے می د یں نا جائز ہیں نا لص ر شم مو تزدہ بھی مردوں کے لے نا چائ ہے او راک پار ثم 
كا اور تاک کی اور چ کاے تو بھی نا انز سے يل ناك جا نار کا ے اور پان می اور چ کا فوا لكابببننام ردوں 
کے لے چاتز سے ن ووس كا بجماتى یش جا ےگا فقہاء کے ہا کپٹرےکادارو داد بانے پہ سے جس چ 
کاانا ہو ال چ کا کپڑرا ھا ھاس كيذ اکر بانار مكاج كيار ما ہے اس لیے ا كاييبننان جا او اکر يا 
کاو چ کا سے ملسو تكاج لوا کا ہنا اتوہ سو كيرا کچھاجا ےگا اے ا کا انار لشمکاہو۔ 


092 ےت - ۱ 

ین 1ہ جکل دو ستل ہیں ایک ےک کیٹا نے کے بل اناز ل مو سن ہی لكل ان می جانا اور اتا 
یں ہو تا اس انداز سے بے جاتے ہیں تج وی بے جاتے ہیں اکٹ نیا یں اور مو زر کی جيل اس انداز 
سے بن جالى ہی ںکہ اکر ایک طرف سے آپ دحال نالتا رو عکر میں فذوہادڑہتا علا جا ۓگااس میں جانے 
پان كالول ضور بی نہیں ہو جاتو اس می كيت فیصل کر میں کے اور دوس راسمل ہے ےک کر نكل نض او قات 
کے اور پان کا فرق نیس مو تا تنا ى ای دسا کا ہو جا ے اور پانا E E‏ ےک ما 
سے وق کی چک كلجال ہیں اس مھ سی تھی شا یکر لیا اتا ہے اور اس مس بض اوقات 
ا ون بھی شا لک لیا جا تاسے يبال مہ تمي كر ا کی اور کاو امسق اور ج زایا الہ دحا منلویڑےء 
ای کا جانا اور ایک بانا۔ ف اال صورت یں ہہ فیصل كي ےکر ی لكا ب كيرا م كا ہے یا بل ہے ان دوثول 
صور قل میں تاس اور بانے ير دار ہیں رکھاجاسکاان س اکخریت الب پر ار مواج جز با لی صد 
سے اعد ہو شر عاكيراا یکا ھا جا گالپ افر کی کہ نا لون بھی ے اور ر م بھی ہے اکر نا لون زیادہ 
اور ر سم كم كيرا لوا نكا "باجا كا یکو پنتا اج اورا نمور سر ےتور 2 
كيرا جما جا ےگا ا كا يبفناتا جا :مو - 


عز رک وج ے غردوں کے كر مم ييبننا:- 

مردوں کے لے اکر چہ دم ناجاء: ے يان عذ رک وجح پیل ہک اجازت ہےء اس پر تقر اتاق 
ہے معز رکئی ہو کے ہیں عشلا مي كول نمارش وخ روا یک ےکہ اا کاعلارر لثم پنے اض نی ہوسکتایلاس زمانے 
یس اڑا کے اندر ر م پہنا جات تھا۔ اس لكك الاق ورا صل تکواروں سے ہو لی تی اور ر م جد كل بہت نرم 
ہو جا سالك جب اس ب نوا رکی وھا ری ہے و سیبھی سم کے اندر جا ےک بجا کل جا ہے اور آوی 
وا ری وچہ سے ز گی نی ہوم تو رم گار سے نجل اكاكام دبا ہے۔ لبزاعذر لا خاش و تیر یڑا کے اندر 
رم ینتا ھا گے اور خود عد بی میں بھی ا کا زک آر ہے ہک گے ای صل میں حط ری الس زی اد تا لی عنہ 
کی عد یٹ آر ی ےک حضو ر انر س يِه نے حطر ت ز ہےر ی الد تال اعتے اور خط رت عير الر تمن بن كوف 
رض الد نا یع کور مین کی اجازت دک اس لئے ےک ان کے مھ ری وزارت ی 

ایک روات يل آ آنا كم ان کے مم رج میں تحمل ان سے ہیا کے ك حضور ادال سالگ نے 
نہیں ری مکی فیس ین ےکی اجازت وى تو معلوم واک ع رک وجح مرد کے ےر م يبنا جانڑے۔ 


کے تار ینتا جامڑے: - 

(ا مہ اث اور صا نکانز ہب) ...ات خلا اور صا م یکانم ب ہے سب كم عذ رکا 
۱ ور ا 00١‏ ار ریم ای مو كابنار مکاہد اکچ 
تا تایاور جز كا بمو ۱ 

امام الو طييقم ر حم اش کا نم ہپ کے اام ابو عيفد رہ اللد کے نزدیک حرم حض ل سن 
يلس ركم ینتا چائز نیش عذ رک وجہ سے اجات صرف اس ر میٹ کپٹڑ کی ہے نم کا بار مک تی کی 
اور كا تهاك ایی ای ڑ اعام عالت میس پنیا جا ئز نیش تھا لان عذ رك وجہ سے چائڑے۔ 

ال خلاظ دز ها کنل کٹ اہ ملاظ اور صا “مك ہے کے ہی کہ مجن عد يول ٹش 

رک وچ سے رخصت آل ہے ان کو قبي نی کہ فلا مكار م بن عت ہو اور فلاں عم کا ل 
بین سک اہن اجب عز ر جا بت مو گیا توج مكار م جام وگ ۱ 

امام ابو يقر درجم اشک دام :امام الو یف ر حم الد فرماتے ہی ںکہ امل کے اعتبار 
سے حر کے لے ريم حرام تھاءماں ضردر تک وج سے اهازت د ىق جاور عر دے:”الشر وري 
يتقدر بقدر الضر وک ج وكام ضرور تک وج ےکیا اتا ے وویقدر ضرور کیا اتا ے اور ضرورت 
تھوڑے سے پو ری ہو کق ے لبذ ازیادہکی اجات یں ہوگیء تھوڑے سے م رادیے ےک فکاصرف بانا 
ا کے جانا ال جب اس سے ضر ور ت پو ری ہی تون لس ر سم يننا ہار تثبل 

نا راسو عراف ]بن ال فی اعد ت ا لکپڑے سے پور ینہ مو شل 
کپڑے كايانا حل ر ما ہے اتا کی اور ہکاے واس سك لك نال ر م يمنا بھی جازم وگااک طرر عفر 
وا كو نالل رم وملا ے لیکن وور تج كيرا ال مل ج كاص رف انار میم ماس واس کے لك بھی تس 
ر م پہمنا جام ہوگااس س كد امام ابو حفیفہ رحمہ الہ نے معو رکو نا لص ر م سے اس لك مت كيا تاکہ اس 
کے بير ضر ور ت لو ری ہو جالّ شی کان جب اس کے بغر ضرورت لو رنہ ہو ذ امام صاحب کے نزدیک 
بھی مرکو خا لل ر مک مکی اچازت موك 


غير یکپٹڑے کے ماشہ و رويد رم لانا: کا ےن 
كيزا ثم کا ہو ین انس پر عاشیہ ابيا لثمك كل موق ہیں لمرو کے لئ اقیر مزر کے جات 
سے مشلا آ تین س كناد پر كم اا دان کے کٹا ے مر م لگا لیایاگر يبان پر ر م لكالياء رشک ی 


ع 


e‏ ات 


هيار وی سے پیادوہ ہو رو زئاس سی ا ڑے۔ 


قر نے و ر ےت 99 
9 علیہ و آل و كلم سن ر م یل سے “نح فر ایا سوا ال سكم دو دویا تین با پار انگیوں 
2 برابر ہو المج ایک روایت میں دو اليو لكا بھی ذكر س کہ تضور اتر ی صلی اللہ علیہ و آل و کم نے 
9 الل کی طرف اخار كر کے فرمایاکہ اتما ہو نس میں وواکیو ںکا کر ے۔اں 
مس جد كله يدوك ی تبسن ہے اور دوس ری رواجوں عل چا رکا کر ے ادر زیادد سے تیادہ چا ركاف آرم ے 
الل لے ار تک اہازت ے پار ست زيادوك اجازت نیس ہے۔ آکے اسماء بنت ال يرك عد یت بھی ری 
سے اس میں خضرت اسا, بعت ای کر نے حضور ارس صلی القد علیہ و آل و کم کے ایک تی کی كيفيت مان 
رما ہے اس شل ہے بھی آحاس ےک ”لھا مبدة دیباج کہ اس يديا كاك یبان لگا ہواتھااورد یبا کی ر سم 
کی ايك عم ہے ادر ای ط رح ڈرمنا:”فرجیھا مكفو فين بالدیبا ج “ا ںکیکشاوگیوں پر رش مک ىكناريا ل کی 
بول تحصن اس سے بھی معلوم ہو اکر ر مکی یکی نس ےک اتتا چان سے اور بجی بہت سار کی احاد یٹ سے ا کا 
جاز ھابت ے۔ ۱ ۳0 
تار ...... یتر روليات سے بقاري معلوم ہو تا ہ کہ جس طر رم يبنا يك ني 
ای طرع رسیم م کا حاشیہ بای بھی نویک نہیں شا کوچ کے صفیہ سرد ح سا کے آخر میں حطرت عران ہین 
کیان ر ی اللہ تعالی عن ہکی الیک عد یٹ ہے اس میں ب لفطا بھی آتے ہی ںکہ حضور ارس صلی اللہ علیہ و لے 
تلم سف فیا :لا ألبس القميص المکفف بالحریر ۔ک می الى ليش نہیں يبن جل پر ریش مکاحاشیہ لگا ۱ 
ہو اہو ال سے اگگی عد بیث ۱ظرت الور یجا کی ے ا٣‏ ت يہ فر ست ہی ںکہ حضور اتر س صل اللہ علیہ و آل 
و سم نے دس تی دل سے يح فرمایاان دس )1١(‏ چول ٹس سے ایک ہے کی هل أن يجعل الرجل فی 
أسفل ثيابه حریر امشل الأعاجم ۔کہ آدى اپ كيم کے کے سے میس يبو ںکی طر حر م کے اور 
ہے كال کے اندر ے: أن يجعل على منكبيه حرير امشل الأعاجم ۔کہ آذ اي ےکن رعوں پر تھیوں 
کی طر رمعم انی ر مکی يثيال لك ل اس سے بظاہر محلو م مو جا ےک رش مكل پٹ اور حاشیہ چائ یں ۔ 


E بس‎ Bs 


0۷00007 کن 
ہیں الل سك وود ازع ہو لك اور ے مر جو ہو ںگی۔ 

اال کے علاوہ جرت عمران بن سان ری الد تا لی عنہ وال عد بی يل آپ نے يتنه سے مزع نہیں 
ريبكل ىہ فريك عمل ایی فيض بال پیت بان دراي ےک نے نياج قانع ا لناب | کول 
شر ديل گے۔ 

ضرت الو اڑول عد یٹ ئل ر مکی پا عاشیہ سے کی کیا ين سا تح ہی شل عا مکی 
ټړ تاس بانس موم ہو تا کہ مطاف ن سے مم حک رج قصوو نی بل ہکوئی ناص ل مكاحاشيه ہو جاہ گا 
ہن و ا کر تشبه ہو تا گا لے آپ نے اس سے شي فرمایااور ہے بھی ہو سلتا ےک ایک 
چان چارا ۸ مویہ ا پنےا ے فيد _ 


a 0‏ ہت لص بل دہ شش وی ا یں 
مو تل يكن اگ رد جا یع موں نوو ہ جات مون ول _ 

وو وہ وھ ا ان ارد کے ے سونا یہنا ہار ہیں 
سے مین اکر سونے کے بن مول اور وہ م کے سا د نہ لكت ہوں فو فقہاء نے ا کی اسازت دی سے 
اس وجہ سك اك حیٹیت کی ہے انار شم بھی جدكل ماع سے اس لے ا لک اجاز تد ےد یگئی۔ 
EY (+)‏ فقهاء نے دوس رک وجہ ہے بیان کی ےک د مم کا لياش اصل میں جنت كا لبال ے: 
وَبَامكم فِا حبر یہ لبا یور االو را بجنت یش پاک لےگاء جن تک تق ت کی یاد دعالى مول ر ے۔ 
يهال د نیا یں بھی تھوڑاسار م مو اوذ جن میس آت كه پور اہو نا چا نے اور بر سو سي کاک يور اكت ہوگا 
دیاس ف ہو ل کا يي جد كاك جحنت مس ہوگاء جن کا وق پیر اہو کا لو جن تك نھ تکی پاٹ 
ذل لئ اجاز تا دےدگی۔ 


انم شلا اور صا شيل نكا مھ سب ......ائمہ خا اور صا ین کے بال ريثم کے بسر بصنا 


ناجا ۃتے۔ 


اک تلائ اور صا مل نكل و ...... ا نکی وليل حضرت مز یف کی صد یٹ ہے اس می 
الفاظ ل :أن نجلس عليه اال پر ٹین سے بھی نع فرمایا۔ 
امام ابو حفيقم ر حم الت کان ہب 53 امام ايو عفیفہ کے زديك ر مم بر بناجا ے۔ 
امام ابو عذیضہ دحم لق کی و سبل .....ا نکی دی یہب ےک این سعد نے طبقات میں راشد 
مول جن عامر سے روا تکیا ےک می نے رت این عبا نکی مند برد مكفيك كل ےک ری تق جس پر 
وه تيك لات تے۔اىی طرح حطرت عبد الثد بن عام سك اده ل ماک تیر ہے رواب کیا ےکہ ان 
کے ٹین نکی جلا ری مکی تی ابت مات یہ بھی آ تاس ےک ححضرت سعد بن الاو تا نے حرست حير الث جن 
عام مکو ای سے يح فررايا تخأكم ہے اٹھادو- . 
امام ابو عیفہ ر مہ الشد فرءا سن ہی کہ حضرت سعد ین الى و قا نے خضرت بد اد بن عا کو اس 
وج سے نع ف ایا تیک ہے کش صمح مکی ق یل سے تھا یو چ سے نمی كل اناي[ ہے۔ ححضرت عب الذد بن 
عام يه جعت تے اور اہر کہ اور حابر بھی ا نكو لیے کے لے آتے ہوں کے کی نکی نے مع تيب كيا 

۱ ہے د کی س کہ دہ جا ء: كنت ے اور خضرت سعد بن الى و قاع کے شي كرس ےکی تو جیہ ب ہک گن ہ کہ مم 

کی وجہ سے کیاے چنائجیہ خض روایتوں میں ہہ تر کی ل حضرت سعدر ی الث تخالى عد نے قرايا 
کہ میس کی پابتاکہ ثم ان ل وگوں شل شاءل ہو جا ن کے بارے میں ق رآ نکر كبنا سب :أذهبتم فى 
حبيلوتكم الدنیا واستمشعتم بھا جب رعال ان چت روایجوں ست الام ابو عطيفه رم اله نے د سم ب ٹن 
کے جو از ير اتد لا كياسج »بال ضرت مذ يف دك عد بیث نسل ٹیس جل و ی سے کی بی ےا لکاجو اب ہہ سے 
کہ اصل می ر م سح كل حد نيل بہت سمارے حاب روا يه تک ر ہے ہیں کان ان یش ےک یک روات شیپ 
تن سے یکا کر یں ء يعن ب كاذ كر صرف ححضرت حذ یف کی رواييت میں نے ہے بھی ب اکر 

سے اور يمر حرمت طز یضہ ر ی القد عت کیا دای تک بہت کی سند يل ہیں سب سند يل سب طرق بی ے 
کرے سے ای ہیںء صرف جم بن عاز مکی روایت می ر شم پہ ٹن ہکا بھی وکر سے ليان دوروابیت کنل 
کر نے میں فردہیں۔ 

۱ وى جرب ٹہ ے اور ثت ہکا تفرد بھی مقبول ہو ا ے تدك زیادت بھی مقبول ہو کی سے مین یہاں 
ایک بات فو مہ ےک ان کے مقا سيه میس قات کی بت بڑ کی آخ د اد سے دوس راب كم جرب بان حازم کے بار سه 
يل آ تا کہ ہہ اکر چہ ت ہیں لین اوم عل جکشزت تلا ہو جاتے تھ ء غلطيال بم ت ہو ال یں اس ے 
یکن ےک کنیا موجو دسي کہ یہاں بھی جرم بین حازم سے ی ہ وكق سے اس ك ایام ابو حفيفد حم اش نے 


كا rr^‏ اعم 


الل روای تک يباور ای پر تحمل شبد لکیا۔ ا سک ایک وجب بھی مو کق س کہ بج بن ماز کال 
امام اب نیف رہ الفہ سے تل (0 ")سال بعد ہو اہے نو ہو علنا کہ امام صاحب کے انال کے بعد یا نکی" 
4وہ طابر سج كه ايام اجب ان اعاد یش کے مكلف میں جو آپ کے زہانے تک ددایت ہو ری من اکر بعد 
یش کس كول امكو می بات م اق ہے تؤاام ابو حفيفه رہ الا ال کے مكلف ں ہیں۔ امام ابو عيفر حمر" 
اشر کے انال تك أن نجلس غليه وال ر وای تک ول زكر موجوو یس تھا۔ مجر حال دونوں قول ہیں جوا زک 
بھی سب ء امام ابو فيفر حص الثد جواز کے قا تل ہیں اور عدم جوا كا بھی سے اور اتا لکا تقاضاي كم آدى 
اختلاف سے کل ہا ےاورایی جز کواخقار ین كر نسل کے جو اذ اور عر مجو از مل اختلاف مو 

ش حط رت على ى الث تحال عن ہک روات کے الفائط:أهديتُ لرسول اللہ یل خُلَه سيراء-ا یکو 
دو طر لے سے روا تک یاگیا سے ایک فو کہ مو صوق صغ بل خْلَةُ سیر اء اور دوس می روایت اضافت 
کے سا تھ سے سن حل سیراء “لوال صورت می موصو کی مف کی طرف اضاشت مو ` 


اك تفاسير:- 
a 0‏ سیر ا ہک لف آغی ري كالول ايك تیر ب ےکہ ای کی ڑ اجو نا أن ر میاہو۔ 
)ایی تفی ریہ بھی کہ کا انہر کا مو اور بظاہر ان دونول ٹس سكول ممق یہاں مراد 
ہے اور تی رين یکی ہیں يان دو ظا ہر یہاں مراد کی یں۔ 
) ديبانكالفظ ر وایات مل آر اے تود باج بھی ویار مکی ایک خاص کمک کہا بات ہے جو دلہاےے . 
سے دا جانا ہے اوداك آ پکپڈڑ ےک کی ال ركان ب جل کے بل شاد ی ياه کپڑروں کے لك . 
وكا يل بھی انگ مول ہیں ا نکوبقامیں ل دبا کے لے تريدنا سے ووه آپ كنال ککپٹرے دكا میں کے اور 
لت هي رٹ رش 
(0948-----وعن أسماءً بنت أبى بكر: أنها أخرجت جُبّةَ طیالِسّة کسر 
.ا وَانِيةَ لها لبنةُ دیباجء وفرجيها مکفوقین بالديباج» وقالت: هذه جيه رسول الله 
صلی الله عليه وسلم كانت عند عائشةً فلما فبضت قبضتهاء و كان النبى صلی 
الله عليه وسلم يلبسُهاء فنحنٌ نغسِلّها للممرضى نستشفى بها (رواه مسلم) 
مر کی حر ت اسماء نت الى بكرت الث تخا نہاے ددایت سك انہوں نے ایک 
طیلسا کی ےکا ج ڈکالاجوکس کی کے انرا کا ا اس يرد یبا كاك يبان تالور ل نے اس کے 


ظ | 
دو غكانول )كود یمان برد يها تكاحاشيه لگاہو ا هاا وتتضرت اء ن ےکا اہ ہے سول اش ملا 
جب سے جو ضر عا کشر شی الث تتا ى عنها کے يال تھااور بج بطرت صاش ی ارش عنياكا 
اتال ہو ان یش نے اسے ابن قتف ل لے لیاد ر یکر كم عا تزا ی کو پہناکرتے تے 
اور كما كو بباروں کے لے دحو ہیں ارال کے ذر لع شفاعا ص لکرت ہیں۔ 
نی اہ كود وکر ا كا الى مر پیش كو يليا جات ہے يام ريغل کے خسم پر ڈالا جانا سے جس سے م بش 
تدر ست ہو جاج ے۔ تضور ارس صلی اٹہ علیہ و حلم کے لاس سے متحلق وو ( لا )لفط لت جلت آتے ہیں 


ایک اتا يتل اور دومن اجب ان دوفول عل زر شت کیہ ےکہ ہے دوفول حل ہو لپا ی موسة ہیں زار . 


اوررداءکی طر ان کے تيبل ہوتے اوردو مرا ےک ی دكا لبه ہوتے تھ اد ٹاگو کا بھی جن حصہ ان 
مم ھپ جات تھا لیکن فر قکیاے؟ 

یس اور جر میں فرق سے 1 ۱ 
ر0 2900 کی ت ری یا ےک ل ىه لزيد کی یں یا چ یز تک کے ور 
درک سلائ یکا ہو تھا اور ور ميان میں بض او قا تكو ججز بھی کر دی جالى تھی جن كا مطلب ہے واكم جب 


ري 
مت ...ضس في فرق یا نکیا ہک يل سك كاف داكيل بابل ہوتے ہیں ادر مخ می ذكاف 
۱ و لي ١‏ َ‫ 


دونو فرق قريب قرب ين كل ياد فرق ان یش كه 

. يبال عد یث کے الفائظ ”جبة طهالسسة کسرو انی“ ہیں